اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 15:08
اداریہ۔ جنوری 2024ء نئے سال کا پیغام! اُمیدِ صُبح    ہر فرد ہے  ملت کے مقدر کا ستارا ہے اپنا یہ عزم ! روشن ستارے علم کی جیت بچّےکی دعا ’بریل ‘کی روشنی اہل عِلم کی فضیلت پانی... زندگی ہے اچھی صحت کے ضامن صاف ستھرے دانت قہقہے اداریہ ۔ فروری 2024ء ہم آزادی کے متوالے میراکشمیر پُرعزم ہیں ہم ! سوچ کے گلاب کشمیری بچے کی پکار امتحانات کی فکر پیپر کیسے حل کریں ہم ہیں بھائی بھائی سیر بھی ، سبق بھی بوند بوند  زندگی کِکی ڈوبتے کو ’’گھڑی ‘‘ کا سہارا کراچی ایکسپو سنٹر  قہقہے اداریہ : مارچ 2024 یہ وطن امانت ہے  اور تم امیں لوگو!  وطن کے رنگ    جادوئی تاریخ مینارِپاکستان آپ کا تحفظ ہماری ذمہ داری پانی ایک نعمت  ماہِ رمضان انعامِ رمضان سفید شیراورہاتھی دانت ایک درویش اور لومڑی پُراسرار  لائبریری  مطالعہ کی عادت  کیسے پروان چڑھائیں کھیلنا بھی ہے ضروری! جوانوں کو مری آہِ سحر دے مئی 2024 یہ مائیں جو ہوتی ہیں بہت خاص ہوتی ہیں! میری پیاری ماں فیک نیوزکا سانپ  شمسی توانائی  پیڑ پودے ...ہمارے دوست نئی زندگی فائر فائٹرز مجھےبچالو! جرات و بہادری کا استعارہ ٹیپو سلطان اداریہ جون 2024 صاف ستھرا ماحول خوشگوار زندگی ہمارا ماحول اور زیروویسٹ لائف اسٹائل  سبز جنت پانی زندگی ہے! نیلی جل پری  آموں کے چھلکے میرے بکرے... عیدِ قرباں اچھا دوست چوری کا پھل  قہقہے حقیقی خوشی
Advertisements

زہرا نور بٹ

NA

Advertisements

ہلال کڈز اردو

پانی زندگی ہے!

جون 2024

 اللہ تعالیٰ کی اس نعمت کو ضائع ہونے سے بچائیں
زینب اور زہراکھانے کی میز پر بیٹھیں عمار بھائی کا انتظار کر رہی تھیں۔اسی اثنا میں باہر سے سکول وین کا ہارن سنائی دیا۔ دونوں نے شورمچا دیا،’’ بھائی آ گئے، بھائی آ گئے۔‘‘
عمارنے گھر میں داخل ہوتے ہی سب کو بلند آوازسےسلام کیا۔جواب میں زینب اور زہراسمیت سب نے جواب دیا... ’’ وعلیکم السلام! ‘‘ 
 ’’بیٹا!خیریت تو تھی....آج بہت دیر سے گھر پہنچے؟‘‘ بابا نے فکرمندی سے پوچھا۔



 ’’بابا!آج سڑک پر اس قدر ٹریفک تھی کہ بس کچھ نہ پوچھیں۔ رہی سہی کسر پانی کے ٹینکروں نے پوری کر دی اور ہماری وین آہستہ آہستہ بلکہ یوں کہیے کہ رینگتے ہوئے گھر پہنچی۔‘‘عمار تھکے ہوئے انداز میں بولا۔
’’اچھا تو پھر جلدی سے یونیفارم تبدیل کرو اور منہ ہاتھ دھو کر کھانے کی میز پر آجائو، کب سے تمہاری بہنیں تمہارا انتظارکررہی ہیں۔‘‘امی نے میز پر کھانا رکھتے ہوئے کہا۔
جب سب میز پر کھانا کھانے میں مصروف تھے، بابا جان کچھ سوچتے ہوئے بولے، ’’ آبادی بڑھنے سے ہمارے وسائل میں کمی آرہی ہے۔ خاص طور پر دنیا کو پانی کی کمی کا سامنا ۔ چونکہ ہمارے شہر کے مختلف علاقوں میں پانی ختم ہوگیا ہے اس لیے اسے شاید دوردراز علاقوں سے ٹینکروں کےذریعے پانی سپلائی کیا جارہا ہے۔
زینب نے حیرانی سے پوچھا، ’’بابا جان!پانی کی کمی؟ وہ کیسے؟ ہمارے گھر میں تو پانی کی کبھی کمی نہیں ہوئی۔‘‘
 ’’پیاری بیٹی!اس وقت تک تو اللہ تعالیٰ نے اس نعمت کو ہمیں وافر مقدار میں عطا کیا ہے۔ لیکن بہت سے علاقوں میں لوگوں کو پانی کے بحران کا سامنا ہے۔‘‘ بابا نے جونہی اپنی بات ختم کی تو امی گلاس میں پانی ڈالتے ہوئے بولیں، ’’بچو!پانی ہماری زندگی ہے مگر ہم اکثر اسے ضائع کردیتے ہیں۔پانی کا استعمال احتیاط سے نہ کیا جائے تو پھر پانی کے ٹینکر منگوانے پڑتے ہیں۔ اسی لیے پانی بھی ایک دولت ہے،جس کا تحفظ بہت ضروری ہے۔‘‘
امی کی بات سن کر زہرا بولی: ’’ یہ تو سبھی جانتے ہیں کہ پانی زندگی ہے اور زمین کا اکہتر  فیصد حصہ پانی پر مشتمل ہے۔ پھر پانی کیسے کم ہو سکتا ہے؟‘‘
 ’’آپ کی بات ٹھیک ہے بیٹی !لیکن اس میں سے 97  فیصد پانی نمکین ہے جو پینے کے لیے ٹھیک نہیں۔ صرف تین فیصد ایسا ہے جسے ہم پی سکتے ہیں۔ جب ہم پانی کے تحفظ کی بات کرتے ہیں تو اسی تین فیصد کی بات کررہے ہوتے ہیں۔‘‘
زینب جو غور سے یہ باتیں سن رہی تھی، بولی: ’’بابا جان! یہ بتائیں کہ ہم پانی کو سمجھداری سے کیسے استعمال کریں؟ ویسے میں توپانی بہت احتیاط سے استعمال کرتی ہوں۔ ‘‘
بابا جان زینب کی بات پر مسکراتے ہوئے بولے، ’’زینب!آپ کا سوال بہت اہم ہے۔پہلے تو ہمیں یہ احساس کرنا ہوگا کہ بہت سے لوگوں کو پانی پینے کے لیے بھی نہیں ملتا۔ وہ دوردراز علاقوں سے لا کر اسے پینے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ دوسری بات بڑھتی آبادی پر قابو پانا ہوگا کیونکہ یہ وسائل کی کمی کا باعث ہے۔ جتنی آبادی زیادہ ہوگی، اس کی ضروریات پوری کرنے کے لیے پانی بھی اتناہی درکار ہوگا۔اب بات کرتے ہیں کہ ہم اللہ کی اس نعمت کو ضائع ہونے سے کیسے بچائیں تو سب سے پہلے یہ کام اپنے گھر سے شروع کریں۔ آپ نے دیکھا ہوگا کہ لوگ اکثر نلکے سے پا ئپ لگا کر گھروں کے درودیوار اور گا ڑیوں کو گھنٹوں دھوتے رہتے ہیں، اسی طرح لان میں پودوں کو پانی دینے کے لیے پائپ کو کھلا چھوڑ دیا جاتاہے۔ جب گھر کی ٹینکی خالی ہوتی ہے تو ہمیں اس کا احساس ہوتا ہے۔‘‘بابا جان کی بات ختم ہوئی تو امی گویا ہوئیں۔
’’پیارے بچو!ہمیں پانی ضائع ہونے سے بچانا چاہیے۔یاد رکھیں، ہم  گھرمیں ہوں یا کھیل کے میدان میں، سکول میں ہوں یا مسجد میں، پانی کو احتیاط سے استعمال کریں۔ وضو کرتے ہوئے پانی کو زیادہ استعمال نہ کیا جائے۔ نہاتے ہوئے شاور کھولنے کے بجائے ایک بالٹی پانی سے باآسانی نہایا جا سکتا ہے۔ دانت صاف کرتے ہوئے اکثر پانی کی ٹوٹی کھول دیتے ہیں،یہ بھی بری بات ہے۔‘‘ امی نے بات ختم کی توبابا کو ان کے ابو کی بات یاد آگئی۔وہ بولے، ’’بچو!مجھے اچھی طرح یاد ہے کہ جب آپ کے دادامرحوم کبھی دیکھتے کہ نلکے سے خواہ مخواہ پانی بہہ رہا ہے تو وہ ناراض ہو جاتے تھے۔ گھر میں ہر کسی کو تلقین کرتے کہ ’’پانی ضائع مت کرو، اسے معمولی شے نہ سمجھو۔‘‘
 تینوں بچوںنے عہد کیا کہ وہ اللہ کی اس نعمت کو ضائع نہیں کریںبلکہ دوسروں کو بھی ایسا کرنے کی تلقین کریں گے۔بابا جان نے تینوں کو شاباش دی اور چشمہ لگا کر اخبار کا مطالعہ کرنے لگے۔
 

مضمون 214 مرتبہ پڑھا گیا۔

زہرا نور بٹ

NA

Advertisements