اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 20:06
مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ بھارت کی سپریم کورٹ کا غیر منصفانہ فیصلہ خالصتان تحریک! دہشت گرد بھارت کے خاتمے کا آغاز سلام شہداء دفاع پاکستان اور کشمیری عوام نیا سال،نئی امیدیں، نیا عزم عزم پاکستان پانی کا تحفظ اور انتظام۔۔۔ مستقبل کے آبی وسائل اک حسیں خواب کثرت آبادی ایک معاشرتی مسئلہ عسکری ترانہ ہاں !ہم گواہی دیتے ہیں بیدار ہو اے مسلم وہ جو وفا کا حق نبھا گیا ہوئے جو وطن پہ نثار گلگت بلتستان اور سیاحت قائد اعظم اور نوجوان نوجوان : اقبال کے شاہین فریاد فلسطین افکارِ اقبال میں آج کی نوجوان نسل کے لیے پیغام بحالی ٔ معیشت اور نوجوان مجھے آنچل بدلنا تھا پاکستان نیوی کا سنہرا باب-آپریشن دوارکا(1965) وردی ہفتۂ مسلح افواج۔ جنوری1977 نگران وزیر اعظم کی ڈیرہ اسماعیل خان سی ایم ایچ میں بم دھماکے کے زخمی فوجیوں کی عیادت چیئر مین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا دورۂ اُردن جنرل ساحر شمشاد کو میڈل آرڈر آف دی سٹار آف اردن سے نواز دیا گیا کھاریاں گیریژن میں تقریبِ تقسیمِ انعامات ساتویں چیف آف دی نیول سٹاف اوپن شوٹنگ چیمپئن شپ کا انعقاد یَومِ یکجہتی ٔکشمیر بھارتی انتخابات اور مسلم ووٹر پاکستان پر موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات پاکستان سے غیرقانونی مہاجرین کی واپسی کا فیصلہ اور اس کا پس منظر پاکستان کی ترقی کا سفر اور افواجِ پاکستان جدوجہدِآزادیٔ فلسطین گنگا چوٹی  شمالی علاقہ جات میں سیاحت کے مواقع اور مقامات  عالمی دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ پاکستانی شہریوں کے قتل میں براہ راست ملوث بھارتی نیٹ ورک بے نقاب عز م و ہمت کی لا زوال داستا ن قائد اعظم  اور کشمیر  کائنات ۔۔۔۔ کشمیری تہذیب کا قتل ماں مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ اور بھارتی سپریم کورٹ کی توثیق  مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ۔۔ایک وحشیانہ اقدام ثقافت ہماری پہچان (لوک ورثہ) ہوئے جو وطن پہ قرباں وطن میرا پہلا اور آخری عشق ہے آرمی میڈیکل کالج راولپنڈی میں کانووکیشن کا انعقاد  اسسٹنٹ وزیر دفاع سعودی عرب کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  پُرعزم پاکستان سوشل میڈیا اور پرو پیگنڈا وار فئیر عسکری سفارت کاری کی اہمیت پاک صاف پاکستان ہمارا ماحول اور معیشت کی کنجی زراعت: فوری توجہ طلب شعبہ صاف پانی کا بحران،عوامی آگہی اور حکومتی اقدامات الیکٹرانک کچرا۔۔۔ ایک بڑھتا خطرہ  بڑھتی آبادی کے چیلنجز ریاست پاکستان کا تصور ، قائد اور اقبال کے افکار کی روشنی میں قیام پاکستان سے استحکام ِ پاکستان تک قومی یکجہتی ۔ مضبوط پاکستان کی ضمانت نوجوان پاکستان کامستقبل  تحریکِ پاکستان کے سرکردہ رہنما مولانا ظفر علی خان کی خدمات  شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن ہو بہتی جن کے لہو میں وفا عزم و ہمت کا استعارہ جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا ہے جذبہ جنوں تو ہمت نہ ہار کرگئے جو نام روشن قوم کا رمضان کے شام و سحر کی نورانیت اللہ جلَّ جَلالَہُ والد کا مقام  امریکہ میں پاکستا نی کیڈٹس کی ستائش1949 نگران وزیراعظم پاکستان، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر اور  چیف آف آرمی سٹاف کا دورۂ مظفرآباد چین کے نائب وزیر خارجہ کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  ساتویں پاکستان آرمی ٹیم سپرٹ مشق 2024کی کھاریاں گیریژن میں شاندار اختتامی تقریب  پاک بحریہ کی میری ٹائم ایکسرسائز سی اسپارک 2024 ترک مسلح افواج کے جنرل سٹاف کے ڈپٹی چیف کا ایئر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد کا دورہ اوکاڑہ گیریژن میں ''اقبالیات'' پر لیکچر کا انعقاد صوبہ بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں مقامی آبادی کے لئے فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد  بلوچستان کے ضلع خاران میں معذور اور خصوصی بچوں کے لیے سپیشل چلڈرن سکول کاقیام سی ایم ایچ پشاور میں ڈیجٹلائیز سمارٹ سسٹم کا آغاز شمالی وزیرستان ، میران شاہ میں یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد کما نڈر پشاور کورکا ضلع شمالی و زیر ستان کا دورہ دو روزہ ایلم ونٹر فیسٹول اختتام پذیر بارودی سرنگوں سے متاثرین کے اعزاز میں تقریب کا انعقاد کمانڈر کراچی کور کاپنوں عاقل ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کوٹری فیلڈ فائرنگ رینج میں پری انڈکشن فزیکل ٹریننگ مقابلوں اور مشقوں کا انعقاد  چھور چھائونی میں کراچی کور انٹرڈویژ نل ایتھلیٹک چیمپئن شپ 2024  قائد ریزیڈنسی زیارت میں پروقار تقریب کا انعقاد   روڈ سیفٹی آگہی ہفتہ اورروڈ سیفٹی ورکشاپ  پی این فری میڈیکل کیمپس پاک فوج اور رائل سعودی لینڈ فورسز کی مظفر گڑھ فیلڈ فائرنگ رینجز میں مشترکہ فوجی مشقیں طلباء و طالبات کا ایک دن فوج کے ساتھ روشن مستقبل کا سفر سی پیک اور پاکستانی معیشت کشمیر کا پاکستان سے ابدی رشتہ ہے میر علی شمالی وزیرستان میں جام شہادت نوش کرنے والے وزیر اعظم شہباز شریف کا کابینہ کے اہم ارکان کے ہمراہ جنرل ہیڈ کوارٹرز  راولپنڈی کا دورہ  چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کی  ایس سی او ممبر ممالک کے سیمینار کے افتتاحی اجلاس میں شرکت  بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر ایچ آر ایچ کی جوائنٹ سٹاف ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر دفاع کی یوم پاکستان میں شرکت اور آرمی چیف سے ملاقات  چیف آف آرمی سٹاف کا ہیوی انڈسٹریز ٹیکسلا کا دورہ  آرمی چیف کا بلوچستان کے ضلع آواران کا دورہ  پاک فوج کی جانب سے خیبر، سوات، کما نڈر پشاور کورکا بنوں(جا نی خیل)اور ضلع شمالی وزیرستان کادورہ ڈاکیارڈ میں جدید پورٹل کرین کا افتتاح سائبر مشق کا انعقاد اٹلی کے وفد کا دورہ ٔ  ائیر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد  ملٹری کالج سوئی بلوچستان میں بلوچ کلچر ڈے کا انعقاد جشن بہاراں اوکاڑہ گیریژن-    2024 غازی یونیورسٹی ڈیرہ غازی خان کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ پاک فوج کی جانب سے مظفر گڑھ میں فری میڈیکل کیمپ کا انعقاد پہلی یوم پاکستان پریڈ انتشار سے استحکام تک کا سفر خون شہداء مقدم ہے انتہا پسندی اور دہشت گردی کا ریاستی چیلنج بے لگام سوشل میڈیا اور ڈس انفارمیشن  سوشل میڈیا۔ قومی و ملکی ترقی میں مثبت کردار ادا کر سکتا ہے تحریک ''انڈیا آئوٹ'' بھارت کی علاقائی بالادستی کا خواب چکنا چور بھارت کا اعتراف جرم اور دہشت گردی کی سرپرستی  بھارتی عزائم ۔۔۔ عالمی امن کے لیے آزمائش !  وفا جن کی وراثت ہو مودی کے بھارت میں کسان سراپا احتجاج پاک سعودی دوستی کی نئی جہتیں آزاد کشمیر میں سعودی تعاون سے جاری منصوبے پاسبان حریت پاکستان میں زرعی انقلاب اور اسکے ثمرات بلوچستان: تعلیم کے فروغ میں کیڈٹ کالجوں کا کردار ماحولیاتی تبدیلیاں اور انسانی صحت گمنام سپاہی  شہ پر شہیدوں کے لہو سے جو زمیں سیراب ہوتی ہے امن کے سفیر دنیا میں قیام امن کے لیے پاکستانی امن دستوں کی خدمات  ہیں تلخ بہت بندئہ مزدور کے اوقات سرمایہ و محنت گلگت بلتستان کی دیومالائی سرزمین بلوچستان کے تاریخی ،تہذیبی وسیاحتی مقامات یادیں پی اے ایف اکیڈمی اصغر خان میں 149ویں جی ڈی (پی)، 95ویں انجینئرنگ، 105ویں ایئر ڈیفنس، 25ویں اے اینڈ ایس ڈی، آٹھویں لاگ اور 131ویں کمبیٹ سپورٹ کورسز کی گریجویشن تقریب  پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں 149ویں پی ایم اے لانگ کورس، 14ویں مجاہد کورس، 68ویں انٹیگریٹڈ کورس اور 23ویں لیڈی کیڈٹ کورس کے کیڈٹس کی پاسنگ آئوٹ پریڈ  ترک فوج کے چیف آف دی جنرل سٹاف کی جی ایچ کیومیں چیف آف آرمی سٹاف سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر خارجہ کی وفد کے ہمراہ آرمی چیف سے ملاقات کی گرین پاکستان انیشیٹو کانفرنس  چیف آف آرمی سٹاف نے فرنٹ لائن پر جوانوں کے ہمراہ نماز عید اداکی چیف آف آرمی سٹاف سے راولپنڈی میں پاکستان کرکٹ ٹیم کی ملاقات چیف آف ترکش جنرل سٹاف کی سربراہ پاک فضائیہ سے ملاقات ساحلی مکینوں میں راشن کی تقسیم پشاور میں شمالی وزیرستان یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد ملٹری کالجز کے کیڈٹس کا دورہ قازقستان پاکستان آرمی ایتھلیٹکس چیمپیئن شپ 2023/24 مظفر گڑھ گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ   خوشحال پاکستان ایس آئی ایف سی کے منصوبوں میں غیرملکی سرمایہ کاری معاشی استحکام اورتیزرفتار ترقی کامنصوبہ اے پاک وطن خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل (SIFC)کا قیام  ایک تاریخی سنگ میل  بہار آئی گرین پاکستان پروگرام: حال اور مستقبل ایس آئی ایف سی کے تحت آئی ٹی سیکٹر میں اقدامات قومی ترانہ ایس آئی  ایف سی کے تحت توانائی کے شعبے کی بحالی گرین پاکستان انیشیٹو بھارت کا کشمیر پر غا صبانہ قبضہ اور جبراً کشمیری تشخص کو مٹانے کی کوشش  بھارت کا انتخابی بخار اور علاقائی امن کو لاحق خطرات  میڈ اِن انڈیا کا خواب چکنا چور یوم تکبیر......دفاع ناقابل تسخیر منشیات کا تدارک  آنچ نہ آنے دیں گے وطن پر کبھی شہادت کی عظمت "زورآور سپاہی"  نغمہ خاندانی منصوبہ بندی  نگلیریا فائولیری (دماغ کھانے والا امیبا) سپہ گری پیشہ نہیں عبادت ہے افواجِ پاکستان کی محبت میں سرشار مجسمہ ساز بانگِ درا  __  مشاہیرِ ادب کی نظر میں  چُنج آپریشن۔ٹیٹوال سیکٹر جیمز ویب ٹیلی سکوپ اور کائنات کا آغاز سرمایۂ وطن راستے کا سراغ آزاد کشمیر کے شہدا اور غازیوں کو سلام  وزیراعظم  پاکستان لیاقت علی خان کا دورۂ کشمیر1949-  ترک لینڈ فورسز کے کمانڈرکی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کاپاکستان نیوی وار کالج لاہور میں 53ویں پی این سٹاف کورس کے شرکا ء سے خطاب  کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے ،جنرل سید عاصم منیر چیف آف آرمی سٹاف کی ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کی وفات پر اظہار تعزیت پاکستان ہاکی ٹیم کی جنرل ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیف آف آرمی سٹاف سے ملاقات باکسنگ لیجنڈ عامر خان اور مارشل آرٹس چیمپیئن شاہ زیب رند کی جنرل ہیڈ کوارٹرز میں آرمی چیف سے ملاقات  جنرل مائیکل ایرک کوریلا، کمانڈر یونائیٹڈ سٹیٹس(یو ایس)سینٹ کام کی جی ایچ کیو میں آرمی چیف سے ملاقات  ڈیفنس فورسز آسٹریلیا کے سربراہ جنرل اینگس جے کیمبل کی جنرل ہیڈکوارٹرز میں آرمی چیف سے ملاقات پاک فضائیہ کے سربراہ کا دورۂ عراق،اعلیٰ سطحی وفود سے ملاقات نیوی سیل کورس پاسنگ آئوٹ پریڈ پاکستان نیوی روشن جہانگیر خان سکواش کمپلیکس کے تربیت یافتہ کھلاڑی حذیفہ شاہد کی عالمی سطح پر کامیابی پی این فری میڈیکل  کیمپ کا انعقاد ڈائریکٹر جنرل ایچ آر ڈی کا دورۂ ملٹری کالج سوئی بلوچستان کمانڈر سدرن کمانڈ اورملتان کور کا النور اسپیشل چلڈرن سکول اوکاڑہ کا دورہ گورنمنٹ کالج یونیورسٹی فیصل آباد، لیہ کیمپس کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ منگلا گریژن میں "ایک دن پاک فوج کے ساتھ" کا انعقاد یوتھ ایکسچینج پروگرام کے تحت نیپالی کیڈٹس کا ملٹری کالج مری کا دورہ تقریبِ تقسیمِ اعزازات شہدائے وطن کی یاد میں الحمرا آرٹس کونسل لاہور میں شاندار تقریب کمانڈر سدرن کمانڈ اورملتان کورکا خیر پور ٹامیوالی  کا دورہ
Advertisements

علی جاوید نقوی

مضمون نگاراخبارات اورٹی وی چینلزکے ساتھ وابستہ رہے ہیں۔آج کل ایک قومی اخبارمیں کالم لکھ رہے ہیں۔قومی اورعالمی سیاست پر اُن کی متعدد کُتب شائع ہو چکی ہیں۔ [email protected]

Advertisements

ہلال اردو

ایس آئی ایف سی کے منصوبوں میں غیرملکی سرمایہ کاری معاشی استحکام اورتیزرفتار ترقی کامنصوبہ

جون 2024

•    غیرملکی سرمایہ کاری کے ساتھ ماہرین،جدیدترین مشینری ،ٹیکنالوجی اورآلات بھی پاکستان آرہے ہیں۔
•    وہ دن دور نہیں جب پاکستان میں الیکٹرک گاڑیاں بھی بنناشروع ہوجائیں گی۔ چین کی سب سے بڑی الیکٹرک گاڑیوں کی کمپنی بی وائے ڈی نے پاکستان میں جدید الیکٹرک گاڑیاں بنانے کے لیے سرمایہ کاری کا اعلان کیا ہے۔
•    آئندہ چند سال میں 50ارب ڈالر سے 100ارب ڈالرتک کی غیرملکی سرمایہ کاری کی امید ہے۔
•    پاکستان  مثبت سمت میں آگے بڑھ رہا ہے اور بہت جلد جی 20 ممالک کا حصہ بن جائے گا۔ہماری منزل اس سے بھی آگے ہے۔
•    یہ گیم چینجرمنصوبے جہاں پاکستانی معیشت میں ایک انقلاب لائیں گے وہیں خطے اوردنیا بھرکی ترقی کے لیے بھی مفید ثابت ہوں گے۔


                                                             


 خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کے قیام کے بعد سے غیرملکی سرمایہ کاری میں کئی گنااضافہ ہواہے۔سپیشل انویسٹمنٹ فیسیلی ٹیشن کونسل (ایس آئی ایف سی )کے تحت پوری حکومتی مشینری ون ونڈو کے ذریعے غیرملکی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کررہی ہے۔مجھے یقین ہے کہ غیرملکی سرمایہ کاری ماضی کے تمام ریکارڈ توڑ دے گی۔ غیرملکی سرمایہ کاری سے نئے ادارے بنیں گے،فیکٹریاں لگیں گی،لوگوں کوروزگار ملے گا۔جدیدٹیکنالوجی اورمشینری آئے گی اورپاکستان تیزی سے ترقی کرے گا۔اس جدت سے پاکستانی مصنوعات کامعیاربھی بہترہوگا۔چین،سعودی عرب،متحدہ عرب امارات،قطر،بحرین سمیت کئی دوست ممالک نے اربوں ڈالرزکے منصوبوں میں سرمایہ کاری کی یقین دہانی کرائی ہے،خصوصاً برادرملک چین کی سرمایہ کاری نے پوری دنیا کوحیران کردیاہے۔یہ گیم چینجرمنصوبے جہاں پاکستانی معیشت میں ایک انقلاب لائیں گے وہیں خطے اوردنیا بھرکی ترقی کے لیے بھی مفید ثابت ہوں گے۔
    میں اکثر سوچتا تھا اگرفوج معیشت بہتربنانے کابیڑا اٹھائے اورحکومت کی مدد کرے تو معاشی بحران پرقابوپایاجاسکتاہے،صرف چند سال میں ہی پاکستان، ترقی کے ریکارڈ قائم کرسکتاہے۔یہ بہت اہم بات ہے کہ ایس آئی  ایف سی قائم کی گئی اورفوج، ملکی معیشت کوبحران سے نکالنے کے لیے آگے آئی۔پوری دنیا پاکستانی افواج کی صلاحیتوں کااعتراف کرتی ہے۔ڈی جی آئی ایس پی آر لیفٹیننٹ جنرل احمد شریف بھی اپنے ایک بیان میں کہہ چکے ہیں کہ '' افواج کی صلاحیتوں کو معیشت کی بہتری کے لیے دنیا بھر میں استعمال کیا جاتا ہے لیکن پاکستان میں جھوٹ اورپروپیگنڈا اس قدر بڑھ گیا ہے کہ ایسے مثبت اقدام کو بھی تنقید کی نظر سے دیکھا جاتا ہے''۔
      ہم جانتے ہیں غیرملکی سرمایہ کار پاکستان آنے کو  تیارہیں لیکن  انھیں شکایت تھی کہ ان کے منصوبے سرخ فیتے کاشکار ہوجاتے ہیں،بعض سرکاری افسران انھیں اتنا گھُماتے ہیں کہ وہ اپنے سرمائے سمیت واپس جانے میں ہی عافیت سمجھتے ہیں۔ آج کے دورمیں امریکا،کینیڈا ،یورپ سمیت دنیا کے کسی بھی ترقی یافتہ ملک کی شہریت سرمائے کے بل بوتے پرحاصل کی جاسکتی ہے۔مقابلے کے اس دور میں ہمیں بھی دوسروں سے آگے بڑھ کرمراعات اورسہولتیں دینا ہوں گی۔خصوصی سرمایہ کاری کونسل  نے اپنے قیام کے صرف ایک سال کے عرصے میں انتظامی، پالیسی سازی اور رابطہ کاری کی سطح پر بیش بہا خدمات انجام دی ہیں۔سعودی عرب کی جانب سے بڑی سرمایہ کاری پر رضامندی اور پاکستان کے اقتصادی ماحول پر اعتماد ان کوششوں کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ ایس آئی ایف سی ایک ایسا ادارہ ہے جہاں اعلیٰ پیشہ ورانہ صلاحیت کے حامل سول اور فوجی افسران مل کر ملک کی معیشت کو بہتر بنانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔
     خصوصی سرمایہ کاری کونسل کی بدولت وہ دن دور نہیں جب پاکستان میں الیکٹرک گاڑیاں بھی بنناشروع ہوجائیں گی۔یہ الیکٹرک گاڑیاں نہ صرف ہماری ضرورت پوری کریں گی بلکہ انھیں ایکسپورٹ کرنے کا بھی پلان ہے۔ چین کی سب سے بڑی الیکٹرک گاڑیوں کی کمپنی بی وائے ڈی نے پاکستان میں جدید الیکٹرک گاڑیاں بنانے کے لیے سرمایہ کاری کا اعلان کیا ہے۔اس سے پاکستان کی آٹوانڈسٹری بھی بے حد ترقی کرے گی۔ہم جانتے ہیں کہ چین آٹوانڈسٹری میں پوری دنیا کو پیچھے چھوڑ چکاہے اوردنیا کی قیادت کررہاہے۔



    غیرملکی سرمایہ کاری کاایک بڑافائدہ یہ ہوتاہے کہ اسے عالمی معیشت کاحصہ سمجھاجاتاہے۔ سرمائے کے ساتھ غیرملکی ماہرین کی خدمات بھی حاصل ہوجاتی ہیں۔ سوچ کے نئے زاویے، معاملات کومختلف انداز سے دیکھنے کاموقع ملتاہے۔نئے پراجیکٹس  شروع ہونے کے باعث مقامی لوگوں اورماہرین کوبھی روزگارکے مواقع ملتے ہیں ،ایک مقابلے کی صورتحال پیدا ہوتی ہے۔سب سے اہم بات یہ ہے کہ تجربہ کارماہرین کے ساتھ ساتھ نئے آلات،جدید مشینری اورٹیکنالوجی بھی ملک میں آتی ہے۔کورین کمپنی ڈائیووکی جانب سے موٹروے کی تعمیر کی مثال ہمارے سامنے ہے،کورین انجینئرزکے ساتھ کام کرکے ہمارے ماہرین نے بھی بہت کچھ سیکھا، بعد میں وفاقی اورصوبائی حکومتوں نے کئی ترقیاتی منصوبے ان مقامی ماہرین کی مدد سے ہی مکمل کیے۔یہ الگ بات ہے کہ چند دہائیوں پہلے یہی کورین ہمارے ماہرین سے سیکھ کرگئے تھے ،پاکستان کے پانچ سالہ منصوبوں کی کاپی کی اورآج دنیا کی بڑی معیشت بن گئے ہیں۔ہم انتشار اورغیریکسوئی کاشکار ہوکر اقتصادی ترقی میں پیچھے رہ گئے۔
   ایس آئی ایف سی کاہدف پچاس ارب ڈالر کی غیرملکی سرمایہ کاری پاکستان لاناہے۔جبکہ  کونسل کی کارکردگی اتنی بہترہے کہ آئندہ چند سال میں سوارب ڈالرکی سرمایہ کاری بھی پاکستان آسکتی ہے۔غیرملکی سرمایہ کار پاکستان کی نئی اورپرکشش پالیسیوں سے فائدہ اٹھانے کے لیے تیارہیں۔ ہم جانتے ہیں کہ براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کا ملکی تعمیر و ترقی اور خوشحالی میں نمایاں کردار ہوتا ہے۔ ایس آئی ایف سی کی کوششوں سے چندماہ میں ہی غیر ملکی براہ راست سرمایہ کاری میں 52 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ مارچ میں 51.7 فیصد اضافے کے ساتھ براہ راست غیرملکی سرمایہ کاری بڑھ کر 258 ملین ڈالر رہی جبکہ گزشہ سال کے اسی مہینے کے دوران 170 ملین ڈالرتھی۔
    ایک رپورٹ کے مطابق خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کے زیر اہتمام اسلام آباد میں پاکستان کے سب سے بڑے آئی ٹی پارک کی منظوری دی جاچکی ہے جس سے اسلام آباد میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کا منظر بدل جائے گا۔یہ اہم منصوبہ پاکستان کے ٹیک لینڈ سکیپ کے لیے ایک نمایاں سنگ میل ہے جو جدت اور ترقی کے بے مثال مواقع فراہم کرے گا۔یہ آئی ٹی پارک پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کا حصہ ہے، جس کے تحت تقریباً 6 ہزار فری لانسرز کو جدید ترین سہولیات فراہم کرنا اور ای سروسز کے ذریعے ملکی معیشت میں اپنا حصہ ڈالنا ہے۔اس پروجیکٹ کا مقصد ایک ایسا ماحول فراہم کرنا ہے جہاں آئی ٹی انڈسٹری تیز ی سے ترقی کرے۔
    بیرک گولڈ انٹرنیشنل کے پاکستان اور بلوچستان کے ساتھ ہونے والے معاہدے کو ایس آئی ایف سی کے پلیٹ فارم سے مزید وسعت دی جارہی ہے۔ ریکوڈک میں دوست ممالک کو سرمایہ کاری کے لیے راغب کیا جا رہا ہے۔ایس آئی ایف سی سیکرٹریٹ کے مطابق دوست ممالک سے ریکوڈک میں ایک ارب ڈالر تک کی سرمایہ کاری کا امکان ہے۔کینیڈا کی کمپنی بلوچستان میں مجموعی طور پر 5.6 ارب ڈالر کی کان کنی میں سرمایہ کاری کر رہی ہے۔ منصوبے میں جورکاوٹیں آرہی ہیں انھیں ایس آئی ایف سی کے پلیٹ فارم سے ہی دور کیا جا رہا ہے۔
     پاکستان میں زرعی انقلاب لانے کے لیے ایک بڑے منصوبے' گرین پاکستان انیشیٹو' پربھی کام شروع کردیاگیاہے۔اس کا بنیادی مقصدپاکستانی زراعت کوترقی دینا،معیاربہترکرنا،فی ایکڑپیداوار بڑھانا اور زراعت میں غیر ملکی سرمایہ کاری لانا ہے ۔ زرعی شعبے میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کار نئے قوانین کے تحت  سو فیصد کارپوریٹ فارمز کے مالک بن سکتے ہیں۔ انہیں زمین لیز اور ٹرانسفر کرنے کی بھی مکمل آزادی حاصل ہو گی۔
      مظفر گڑھ میں ناردرن پاور جنریشن کمپنی لمیٹڈ نے ایک چینی فرم ننگبو گرین لائٹ انرجی کے ساتھ 200 ملین ڈالر کے مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے ہیں۔ منصوبے سے موجودہ تھرمل پاور پلانٹ کو اپ گریڈ کر کے 300 میگاواٹ کے سولر پاور منصوبے میں تبدیل کیا جائے گا۔ منصوبے سے 14 روپے فی یونٹ کے حساب سے سالانہ 400 ملین یونٹ بجلی پیدا ہونے کی توقع ہے۔ خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کے تعاون سے ملک میں 10 ارب ڈالر سے زائد کی سرمایہ کاری سے نئی آئل ریفائنری کے قیام کے معاہدے پر بھی دستخط ہو چکے ہیں۔کراچی میں  129 ایکڑ  زمین پر ایس آئی ایف سی کے ذریعے رئیل اسٹیٹ منصوبہ بنانے کے لیے کام شروع کر دیا گیا ہے۔ 
    ہم جانتے ہیں کہ کرنسی مافیا اورہنڈی کے غیر قانونی کام میں ملوث عناصر نے ڈالرزاورغیرملکی کرنسی کامصنوعی بحران پیدا کررکھا تھا۔ایس آئی ایف سی کی کوششوں سے ڈالرسمیت غیرملکی کرنسیوں کی اُونچی اڑان کوقابو کرلیاگیاہے۔اسی طرح اسمگلروں کے گرد بھی گھیرا تنگ کردیاگیاہے جس سے ان کی چیخیں سنائی دے رہی ہیں۔سمگلنگ میں کمی ہوئی ہے اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف کارروائیاں بھی کی جارہی ہیں۔ ایک سال سے کم عرصے میں معیشت میں بہت مثبت تبدیلی آئی ہے۔معاشی تجزیہ نگار اس بات کوبھی تسلیم کرتے ہیں کہ ایس آئی ایف سی کے پلیٹ فارم پروزیراعظم،آرمی چیف، چاروں صوبوں کے وزرائے اعلیٰ اور اہم عہدیدار اکٹھے بیٹھتے ہیں جو کسی دوسرے پلیٹ فارم پر ممکن نہیں۔ ملک میں غیر ملکی سرمایہ کاری اور معاشی بحالی کے لیے اسی ماحول کی ضرورت تھی۔اس سے ملکی وغیرملکی سرمایہ کاروں کااعتماد بحال ہورہاہے۔ خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل معدنیات، توانائی، انفارمیشن ٹیکنالوجی اور دیگر شعبوں میں غیر ملکی سرمایہ کاری کے مختلف منصوبوں پربھی کام کر رہی ہے۔ اس ضمن میں ایس آئی ایف سی  ڈومیسٹک ڈسپیوٹ ریزولیوشن کے طریقہ کار کو مضبوط بنانے سمیت سرمایہ کاروں کو مزید سہولت فراہم کرنے کے لیے مختلف پالیسیز کی منظوری دے چکی ہے۔
     میں قارئین کوایس آئی ایف سی کے قیام اورتنظیم کے حوالے سے مختصراً بتادیتاہوں کہ سرمایہ کاری میں حائل رکاوٹوں کودور کرنے اور غیر ملکی سرمایہ کاری کے فروغ کے لیے وفاقی حکومت اور فوج کے تعاون سے 17 جون 2023 کو خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کا قیام عمل میں لایا گیا تھا۔اس کونسل کے سربراہ وزیراعظم ہیں۔،سپیشل انویسٹمنٹ فیسی لیٹیشن کونسل کی اعلیٰ ترین کمیٹی میں وزیراعظم، چیف آف آرمی سٹاف،چاروں صوبوں کے وزرائے اعلیٰ،بعض وفاقی وزراء اور سینیئر حکام  شامل ہیں۔ کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی میں وفاقی اورصوبائی کابینہ کے اراکین، بیوروکریسی کے بعض سینیئر افسران اور پاک فوج کے نمائندوں کوبھی شامل کیا گیا ہے۔ ایس آئی ایف سی کی تیسری کمیٹی عمل درآمد کمیٹی کہلاتی ہے۔ اس کونسل کے اغراض و مقاصد میں دوست ممالک سے سرمایہ کاری لانا ہے۔ان شعبوں میں دفاع، زراعت، معدنیات، انفارمیشن ٹیکنالوجی، ٹیلی کمیونیکیشن اور توانائی کے شعبے شامل ہیں۔ کونسل نے سنگل ونڈو  پلیٹ فارم کے طور پر کام شروع کردیاہے تاکہ کاروبار کرنے میں آسانی پیدا کی جاسکے۔فوج کی جانب سے  اس مقصد کے لیے ہر قسم کے تعاون کو یقینی بنانے کی بات کی گئی ہے۔ خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی کااجلاس وفاقی وزیرمنصوبہ بندی کی صدارت میںگاہے بگاہے ہوتارہتاہے،جس میں سرمایہ کاری کے حوالے سے مختلف شعبوں کے امور کا جائزہ لیاجاتاہے۔جہاں بھی فوری اقدام کی ضرورت ہو وزیراعظم کوآگاہ کیاجاتاہے تاکہ بزنس ٹوبزنس اورگورنمنٹ ٹوگورنمنٹ آنے والی  رکاوٹوں کودورکیاجائے۔
     ایس آئی ایف سی کی ویب سائٹ کے مطابق کونسل کا وژن پاکستان کی معاشی بحالی میں اپنا کردار ادا کرنا ہے۔ یہ کونسل ملک میں ملکی اور غیر ملکی ذرائع سے سرمایہ کاری کے حجم کو نمایاں طور پر بڑھانا چاہتی ہے تاکہ ملک میں میکرو اکنامک استحکام کا حصول، سماجی و اقتصادی خوشحالی اور دنیا کی دیگر اقوام کے درمیان پاکستان کے نمایاں مقام کا دوبارہ حصول ممکن بنایا جا سکے۔وزیراعظم اور آرمی چیف جنرل سید عاصم منیر سرمایہ کاروں کااعتماد بحال کرنے کے لیے ان سے متعدد ملاقاتیں کرچکے ہیں۔اس سے صنعتکاروں کے اعتماد میں اضافہ ہواہے۔صنعتکاروں کی تجاویز پرعمل کیاجارہاہے اورانکی شکایات فوری طورپردور کی گئی ہیں۔ 
    ہم جانتے ہیں کہ انفارمیشن ٹیکنالوجی میں سرمایہ کاری کے لیے پانچ بڑے منصوبوں اوردرجنوں چھوٹے منصوبوں پرکام جاری ہے۔صوبائی حکومتیں بھی اپنے اپنے طورپرکام کررہی ہیں۔صوبے بھی مختلف منصوبوں پرکام کررہے ہیں۔ ایس آئی ایف سی کے قیام سے پہلے غیرملکی سرمایہ کار پیچیدہ نظام کی وجہ سے پیش آنے والی اپنی مشکلات کاذکر کرچکے ہیں۔غیرضروری  سرکاری ضابطوں، نوکر شاہی کی رکاوٹوں اور ادارہ جاتی اصلاحات نہ ہونے کی وجہ سے غیرملکی سرمایہ کاری مسلسل گر رہی  تھی۔پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے اورنیا کاروبارشروع  کرنے کے لیے کئی کڑی شرائط تھیں،کئی اداروں سے منظوری لینا پڑتی تھی۔ جس کی وجہ سے  انٹرپرینیورشپ کی حوصلہ شکنی ہورہی تھی۔ایک رپورٹ کے مطابق برآمد کنندگان کااپنی مصنوعات بیرون ملک بھیجنے کے لیے تقریباً 13 اداروں سے واسطہ  پڑتا ہے جب کہ درآمد کنندگان کو سامان منگوانے کے لیے لگ بھگ 60 اداروں کو مختلف قسم کی دستاویزات جمع کرانا پڑتی ہیں۔ برآمد کنندگان کی تجاویز پرحکومت ان غیرضروری رکاوٹوں کوختم کررہی ہے۔



     ملک کے ٹیکس نظام سے متعلق ایک رپورٹ میں کہا گیا کہ یہ نظام انتہائی پیچیدہ ہے۔ٹیکس ریٹرن جمع کرانے  اور ایف بی آر کے ساتھ کاروبار رجسٹرڈ کرنے کے لیے پیشہ ورانہ ٹیکس ماہرین کی خدمات حاصل کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ ان مسائل کے حل اور خدمات تک رسائی کے لیے  ڈیجیٹلائزیشن نہیں کی گئی تھی جبکہ دوسری طرف دنیا بھر کے ممالک نے کئی دہائیوں پہلے ہی عوامی خدمات کو ڈیجیٹلائزڈ کرلیا ہے۔بہرحال دیرآید درست آید، اب اس پرکام شروع کردیاگیاہے۔آئی ایم ایف نے بھی ایف بی آر کی کارکردگی بہتربنانے کے لیے کچھ تجاویز دی ہیں۔ایف بی آر ہماری معیشت میں ریڑھ کی ہڈی ہے۔ایف بی آر کے ذریعے ہی تمام ٹیکسز اکٹھے ہوتے ہیں۔ایک رپورٹ کے مطابق ایف بی آر اورکراچی پورٹ پرہزاروں ارب کی ٹیکس چوری ہورہی ہے۔ خصوصی سرمایہ کاری کونسل ان مسائل کوحل کرنے کی بھی کوشش کررہی ہے۔وزیراعظم بھی ایف بی آر کے سینیئرحکام سے  ملاقاتیں کررہے ہیں تاکہ ایک طرف ٹیکسوں کی چوری روکی جائے تودوسری طرف غیرملکی سرمایہ کاروں کوسہولتیں فراہم کی جائیں،ملکی وغیرملکی سرمایہ کاروں کوخوفزدہ نہ کیاجائے۔
  اس بات میں کوئی شک نہیں کہ ماضی میں حکومتوں کی تبدیلی کے ساتھ ہی ترجیحات بھی تیزی سے بدلتی رہی ہیں ۔ان تبدیلیوں کے باعث معاشی استحکام نہیں آسکا۔ سرمایہ کار کنفیوژن کاشکار رہتے ہیں کہ نجانے کب کون سی پالیسی آجائے۔سیاسی انتشار اوربدلتی معاشی پالیسیوں کے باعث ایک غیر یقینی ماحول پیدا ہوتا ہے جس سے نہ صرف ملکی سرمایہ کاری بلکہ کاروبار کی توسیع اور غیر ملکی سرمایہ کاری کی بھی حوصلہ شکنی ہوتی ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق  شرح مبادلہ کی پالیسیوں، محصولات اور ٹیکسز میں متواتر تبدیلیوں نے پاکستان کے اقتصادی ماحول میں ایک غیر یقینی صورتِ حال پیدا کر رکھی تھی۔یہ پالیسیاں ماضی میں بار بار ناکام ہوئیں لیکن حکومت مختلف نتائج کی توقع رکھتے ہوئے اکثر ان ہی پالیسیوں کا سہارا لیتی رہتی ہے۔ ان پالیسیوں سے پیدا ہونے والا بگاڑ بہت زیادہ ہے اور اس سے لوگ اپنی سرگرمیاں غیر دستاویزی انداز میں جاری رکھنے پر مجبور ہوتے ہیں۔اب ان مسائل کاادراک کرکے اس پرقابوپایاجارہاہے۔
     ایس آئی ایف سی کی بدولت ملکی وغیرملکی سرمایہ کاری سے مصنوعات کامعیار بھی بہترہوگا۔ پاکستانی مصنوعات دنیا کے ترقی یافتہ ممالک کی مصنوعات کامقابلہ کرسکیں گی۔ ایک امریکی نیوزویب سائٹ نے بھی ایس آئی ایف سی کی کارکردگی کوسراہاہے۔اس نے اپنی رپورٹ میں اعتراف کیاہے کہ اس خصوصی کونسل کے تحت چولستان میں 50 ہزار ایکڑ رقبے پر گندم، کینولا، باجرہ اور کپاس کی کاشت کا پروگرام ہے۔ اس کے لیے 37 ارب 55 کروڑ روپے کی رقم درکار ہوگی اور اس پروگرام کا مقصد ملک سے غذائی قلت کے خاتمے کو یقینی بنانا، ملازمتوں کے نئے مواقع پیدا کرنا اور درآمدی بل کم کرنا ہے۔اس طرح لائیوسٹاک کے سیکٹر میں 20 ہزار جانوروں کی استعداد کے کارپوریٹ ڈیری فارم قائم کیے جانے  پر72 ارب روپے کا خرچہ آئے گا۔ اس کے علاوہ کارپوریٹ فیڈلاٹ فارم بنا کر 30 ہزار جانور رکھے جائیں گے۔اس سے مقامی ضروریات کو پورا کرنے اور برآمد کرنے کے لیے15 ہزار ٹن گوشت ملے گا۔ اس پروجیکٹ پر 58 ارب خرچ ہوں گے۔ اسی طرح کے الگ منصوبے میں 10 ہزار اونٹوں پر مشتمل کیمل فارم بھی قائم کیا جائے گا جس پر لاگت کا تخمینہ 37 ارب 70 کروڑ روپے ہے اور یہ سالانہ 20 لاکھ لیٹر دودھ کے ساتھ 450 ٹن گوشت بھی فراہم کرنے کا ذریعہ بنے گا۔
   شہروں میں ٹیکنالوجی زونز کے قیام عمل میں لانے کا منصوبہ بھی ہے۔ راولپنڈی سے کراچی اور گوادر تک  فائبر نیٹ ورک کا قیام اور متحدہ عرب امارات کے تعاون سے کلاؤڈ انفراسٹرکچر کے لیے  سرمایہ کاری کو راغب کیا جائے گا۔ ملک میں اسمارٹ فونز کی تیاری کے لیے75 ہزار افراد کو ٹریننگ دینے کا منصوبہ بھی ہے تاکہ سمارٹ موبائل فونز تیار کرکے انہیں خلیجی ممالک، افریقہ اور وسطی ایشیاکی مارکیٹوں میں فروخت کیا جاسکے۔
     اسی طرح کان کنی کے میدان میں بلوچستان کے ضلع چاغی میں تانبے اور سونے کے ذخائر، خضدار میں سیسے اور جست کی تلاش کے لیے لائسنس کے اجراء کے علاوہ تھرپارکر میں کول فیلڈ کی اپ گریڈیشن، گلگت  بلتستان میں مختلف دھاتوں کے لیے کان کنی اور مائننگ مشینری کی اسمبلنگ کے لیے پلانٹس کا قیام بھی منصوبے میں شامل ہے۔
    توانائی کے شعبے میں حکومت اس کونسل کے ذریعے 1320 میگاواٹ کے  کوئلے سے چلنے والا پاور پلانٹ، دریائے پونچھ پر 132 میگاواٹ کے ہائیڈرو پاور پراجیکٹ، دیامیر بھاشا پراجیکٹ، پنجاب میں سولر پاور پراجیکٹس اور 500 کلو واٹ کے ڈبل سرکٹ ٹرانسمیشن لائن کے قیام کے منصوبے مکمل کرنا چاہتی ہے۔
     وزیراعظم شہبازشریف ایک تقریب میں بتاچکے ہیں کہ '' خلیجی ممالک کے سرمایہ کار پاکستان میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کے لیے تیار ہیں اور انھیں  سہولیات کی فراہمی اور مدد کے لیے پاکستان نے یہ کونسل تشکیل دی ہے۔ جس رفتار سے یہ کونسل کام کر رہی ہے انہوں نے اس رفتار سے کام ہوتا کبھی نہیں دیکھا اور اگر یہ جاری رہا تو بہت جلد پاکستان ترقی کی نئی منازل طے کرے گا۔
     ایس آئی ایف سی کے قیام کے بعد پاکستان اس وقت مثبت سمت میں آگے بڑھ رہا ہے اور بہت جلد جی 20 ممالک کا حصہ بن جائے گا۔ہماری منزل اس سے بھی آگے ہے، پاکستان اپنی معاشی مشکلات پرقابوپاکر آئندہ چند دہائیوں میں ہی دنیا کی پانچ بڑی معیشتوں میں شامل ہوجائے گا۔ عالمی ادارے بحران سے نکلنے کی  پاکستان کی حیرت انگیزصلاحیت اوربہترہوتی کارکردگی پرحیران ہیں۔ 


مضمون نگاراخبارات اورٹی وی چینلزکے ساتھ وابستہ رہے ہیں۔آج کل ایک قومی اخبارمیں کالم لکھ رہے ہیں۔قومی اورعالمی سیاست پر اُن کی متعدد کُتب شائع ہو چکی ہیں۔
[email protected]

مضمون 423 مرتبہ پڑھا گیا۔

علی جاوید نقوی

مضمون نگاراخبارات اورٹی وی چینلزکے ساتھ وابستہ رہے ہیں۔آج کل ایک قومی اخبارمیں کالم لکھ رہے ہیں۔قومی اورعالمی سیاست پر اُن کی متعدد کُتب شائع ہو چکی ہیں۔ [email protected]

Advertisements