اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 20:36
مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ بھارت کی سپریم کورٹ کا غیر منصفانہ فیصلہ خالصتان تحریک! دہشت گرد بھارت کے خاتمے کا آغاز سلام شہداء دفاع پاکستان اور کشمیری عوام نیا سال،نئی امیدیں، نیا عزم عزم پاکستان پانی کا تحفظ اور انتظام۔۔۔ مستقبل کے آبی وسائل اک حسیں خواب کثرت آبادی ایک معاشرتی مسئلہ عسکری ترانہ ہاں !ہم گواہی دیتے ہیں بیدار ہو اے مسلم وہ جو وفا کا حق نبھا گیا ہوئے جو وطن پہ نثار گلگت بلتستان اور سیاحت قائد اعظم اور نوجوان نوجوان : اقبال کے شاہین فریاد فلسطین افکارِ اقبال میں آج کی نوجوان نسل کے لیے پیغام بحالی ٔ معیشت اور نوجوان مجھے آنچل بدلنا تھا پاکستان نیوی کا سنہرا باب-آپریشن دوارکا(1965) وردی ہفتۂ مسلح افواج۔ جنوری1977 نگران وزیر اعظم کی ڈیرہ اسماعیل خان سی ایم ایچ میں بم دھماکے کے زخمی فوجیوں کی عیادت چیئر مین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا دورۂ اُردن جنرل ساحر شمشاد کو میڈل آرڈر آف دی سٹار آف اردن سے نواز دیا گیا کھاریاں گیریژن میں تقریبِ تقسیمِ انعامات ساتویں چیف آف دی نیول سٹاف اوپن شوٹنگ چیمپئن شپ کا انعقاد یَومِ یکجہتی ٔکشمیر بھارتی انتخابات اور مسلم ووٹر پاکستان پر موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات پاکستان سے غیرقانونی مہاجرین کی واپسی کا فیصلہ اور اس کا پس منظر پاکستان کی ترقی کا سفر اور افواجِ پاکستان جدوجہدِآزادیٔ فلسطین گنگا چوٹی  شمالی علاقہ جات میں سیاحت کے مواقع اور مقامات  عالمی دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ پاکستانی شہریوں کے قتل میں براہ راست ملوث بھارتی نیٹ ورک بے نقاب عز م و ہمت کی لا زوال داستا ن قائد اعظم  اور کشمیر  کائنات ۔۔۔۔ کشمیری تہذیب کا قتل ماں مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ اور بھارتی سپریم کورٹ کی توثیق  مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ۔۔ایک وحشیانہ اقدام ثقافت ہماری پہچان (لوک ورثہ) ہوئے جو وطن پہ قرباں وطن میرا پہلا اور آخری عشق ہے آرمی میڈیکل کالج راولپنڈی میں کانووکیشن کا انعقاد  اسسٹنٹ وزیر دفاع سعودی عرب کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  پُرعزم پاکستان سوشل میڈیا اور پرو پیگنڈا وار فئیر عسکری سفارت کاری کی اہمیت پاک صاف پاکستان ہمارا ماحول اور معیشت کی کنجی زراعت: فوری توجہ طلب شعبہ صاف پانی کا بحران،عوامی آگہی اور حکومتی اقدامات الیکٹرانک کچرا۔۔۔ ایک بڑھتا خطرہ  بڑھتی آبادی کے چیلنجز ریاست پاکستان کا تصور ، قائد اور اقبال کے افکار کی روشنی میں قیام پاکستان سے استحکام ِ پاکستان تک قومی یکجہتی ۔ مضبوط پاکستان کی ضمانت نوجوان پاکستان کامستقبل  تحریکِ پاکستان کے سرکردہ رہنما مولانا ظفر علی خان کی خدمات  شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن ہو بہتی جن کے لہو میں وفا عزم و ہمت کا استعارہ جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا ہے جذبہ جنوں تو ہمت نہ ہار کرگئے جو نام روشن قوم کا رمضان کے شام و سحر کی نورانیت اللہ جلَّ جَلالَہُ والد کا مقام  امریکہ میں پاکستا نی کیڈٹس کی ستائش1949 نگران وزیراعظم پاکستان، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر اور  چیف آف آرمی سٹاف کا دورۂ مظفرآباد چین کے نائب وزیر خارجہ کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  ساتویں پاکستان آرمی ٹیم سپرٹ مشق 2024کی کھاریاں گیریژن میں شاندار اختتامی تقریب  پاک بحریہ کی میری ٹائم ایکسرسائز سی اسپارک 2024 ترک مسلح افواج کے جنرل سٹاف کے ڈپٹی چیف کا ایئر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد کا دورہ اوکاڑہ گیریژن میں ''اقبالیات'' پر لیکچر کا انعقاد صوبہ بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں مقامی آبادی کے لئے فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد  بلوچستان کے ضلع خاران میں معذور اور خصوصی بچوں کے لیے سپیشل چلڈرن سکول کاقیام سی ایم ایچ پشاور میں ڈیجٹلائیز سمارٹ سسٹم کا آغاز شمالی وزیرستان ، میران شاہ میں یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد کما نڈر پشاور کورکا ضلع شمالی و زیر ستان کا دورہ دو روزہ ایلم ونٹر فیسٹول اختتام پذیر بارودی سرنگوں سے متاثرین کے اعزاز میں تقریب کا انعقاد کمانڈر کراچی کور کاپنوں عاقل ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کوٹری فیلڈ فائرنگ رینج میں پری انڈکشن فزیکل ٹریننگ مقابلوں اور مشقوں کا انعقاد  چھور چھائونی میں کراچی کور انٹرڈویژ نل ایتھلیٹک چیمپئن شپ 2024  قائد ریزیڈنسی زیارت میں پروقار تقریب کا انعقاد   روڈ سیفٹی آگہی ہفتہ اورروڈ سیفٹی ورکشاپ  پی این فری میڈیکل کیمپس پاک فوج اور رائل سعودی لینڈ فورسز کی مظفر گڑھ فیلڈ فائرنگ رینجز میں مشترکہ فوجی مشقیں طلباء و طالبات کا ایک دن فوج کے ساتھ روشن مستقبل کا سفر سی پیک اور پاکستانی معیشت کشمیر کا پاکستان سے ابدی رشتہ ہے میر علی شمالی وزیرستان میں جام شہادت نوش کرنے والے وزیر اعظم شہباز شریف کا کابینہ کے اہم ارکان کے ہمراہ جنرل ہیڈ کوارٹرز  راولپنڈی کا دورہ  چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کی  ایس سی او ممبر ممالک کے سیمینار کے افتتاحی اجلاس میں شرکت  بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر ایچ آر ایچ کی جوائنٹ سٹاف ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر دفاع کی یوم پاکستان میں شرکت اور آرمی چیف سے ملاقات  چیف آف آرمی سٹاف کا ہیوی انڈسٹریز ٹیکسلا کا دورہ  آرمی چیف کا بلوچستان کے ضلع آواران کا دورہ  پاک فوج کی جانب سے خیبر، سوات، کما نڈر پشاور کورکا بنوں(جا نی خیل)اور ضلع شمالی وزیرستان کادورہ ڈاکیارڈ میں جدید پورٹل کرین کا افتتاح سائبر مشق کا انعقاد اٹلی کے وفد کا دورہ ٔ  ائیر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد  ملٹری کالج سوئی بلوچستان میں بلوچ کلچر ڈے کا انعقاد جشن بہاراں اوکاڑہ گیریژن-    2024 غازی یونیورسٹی ڈیرہ غازی خان کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ پاک فوج کی جانب سے مظفر گڑھ میں فری میڈیکل کیمپ کا انعقاد پہلی یوم پاکستان پریڈ انتشار سے استحکام تک کا سفر خون شہداء مقدم ہے انتہا پسندی اور دہشت گردی کا ریاستی چیلنج بے لگام سوشل میڈیا اور ڈس انفارمیشن  سوشل میڈیا۔ قومی و ملکی ترقی میں مثبت کردار ادا کر سکتا ہے تحریک ''انڈیا آئوٹ'' بھارت کی علاقائی بالادستی کا خواب چکنا چور بھارت کا اعتراف جرم اور دہشت گردی کی سرپرستی  بھارتی عزائم ۔۔۔ عالمی امن کے لیے آزمائش !  وفا جن کی وراثت ہو مودی کے بھارت میں کسان سراپا احتجاج پاک سعودی دوستی کی نئی جہتیں آزاد کشمیر میں سعودی تعاون سے جاری منصوبے پاسبان حریت پاکستان میں زرعی انقلاب اور اسکے ثمرات بلوچستان: تعلیم کے فروغ میں کیڈٹ کالجوں کا کردار ماحولیاتی تبدیلیاں اور انسانی صحت گمنام سپاہی  شہ پر شہیدوں کے لہو سے جو زمیں سیراب ہوتی ہے امن کے سفیر دنیا میں قیام امن کے لیے پاکستانی امن دستوں کی خدمات  ہیں تلخ بہت بندئہ مزدور کے اوقات سرمایہ و محنت گلگت بلتستان کی دیومالائی سرزمین بلوچستان کے تاریخی ،تہذیبی وسیاحتی مقامات یادیں پی اے ایف اکیڈمی اصغر خان میں 149ویں جی ڈی (پی)، 95ویں انجینئرنگ، 105ویں ایئر ڈیفنس، 25ویں اے اینڈ ایس ڈی، آٹھویں لاگ اور 131ویں کمبیٹ سپورٹ کورسز کی گریجویشن تقریب  پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں 149ویں پی ایم اے لانگ کورس، 14ویں مجاہد کورس، 68ویں انٹیگریٹڈ کورس اور 23ویں لیڈی کیڈٹ کورس کے کیڈٹس کی پاسنگ آئوٹ پریڈ  ترک فوج کے چیف آف دی جنرل سٹاف کی جی ایچ کیومیں چیف آف آرمی سٹاف سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر خارجہ کی وفد کے ہمراہ آرمی چیف سے ملاقات کی گرین پاکستان انیشیٹو کانفرنس  چیف آف آرمی سٹاف نے فرنٹ لائن پر جوانوں کے ہمراہ نماز عید اداکی چیف آف آرمی سٹاف سے راولپنڈی میں پاکستان کرکٹ ٹیم کی ملاقات چیف آف ترکش جنرل سٹاف کی سربراہ پاک فضائیہ سے ملاقات ساحلی مکینوں میں راشن کی تقسیم پشاور میں شمالی وزیرستان یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد ملٹری کالجز کے کیڈٹس کا دورہ قازقستان پاکستان آرمی ایتھلیٹکس چیمپیئن شپ 2023/24 مظفر گڑھ گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ   خوشحال پاکستان ایس آئی ایف سی کے منصوبوں میں غیرملکی سرمایہ کاری معاشی استحکام اورتیزرفتار ترقی کامنصوبہ اے پاک وطن خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل (SIFC)کا قیام  ایک تاریخی سنگ میل  بہار آئی گرین پاکستان پروگرام: حال اور مستقبل ایس آئی ایف سی کے تحت آئی ٹی سیکٹر میں اقدامات قومی ترانہ ایس آئی  ایف سی کے تحت توانائی کے شعبے کی بحالی گرین پاکستان انیشیٹو بھارت کا کشمیر پر غا صبانہ قبضہ اور جبراً کشمیری تشخص کو مٹانے کی کوشش  بھارت کا انتخابی بخار اور علاقائی امن کو لاحق خطرات  میڈ اِن انڈیا کا خواب چکنا چور یوم تکبیر......دفاع ناقابل تسخیر منشیات کا تدارک  آنچ نہ آنے دیں گے وطن پر کبھی شہادت کی عظمت "زورآور سپاہی"  نغمہ خاندانی منصوبہ بندی  نگلیریا فائولیری (دماغ کھانے والا امیبا) سپہ گری پیشہ نہیں عبادت ہے افواجِ پاکستان کی محبت میں سرشار مجسمہ ساز بانگِ درا  __  مشاہیرِ ادب کی نظر میں  چُنج آپریشن۔ٹیٹوال سیکٹر جیمز ویب ٹیلی سکوپ اور کائنات کا آغاز سرمایۂ وطن راستے کا سراغ آزاد کشمیر کے شہدا اور غازیوں کو سلام  وزیراعظم  پاکستان لیاقت علی خان کا دورۂ کشمیر1949-  ترک لینڈ فورسز کے کمانڈرکی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کاپاکستان نیوی وار کالج لاہور میں 53ویں پی این سٹاف کورس کے شرکا ء سے خطاب  کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے ،جنرل سید عاصم منیر چیف آف آرمی سٹاف کی ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کی وفات پر اظہار تعزیت پاکستان ہاکی ٹیم کی جنرل ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیف آف آرمی سٹاف سے ملاقات باکسنگ لیجنڈ عامر خان اور مارشل آرٹس چیمپیئن شاہ زیب رند کی جنرل ہیڈ کوارٹرز میں آرمی چیف سے ملاقات  جنرل مائیکل ایرک کوریلا، کمانڈر یونائیٹڈ سٹیٹس(یو ایس)سینٹ کام کی جی ایچ کیو میں آرمی چیف سے ملاقات  ڈیفنس فورسز آسٹریلیا کے سربراہ جنرل اینگس جے کیمبل کی جنرل ہیڈکوارٹرز میں آرمی چیف سے ملاقات پاک فضائیہ کے سربراہ کا دورۂ عراق،اعلیٰ سطحی وفود سے ملاقات نیوی سیل کورس پاسنگ آئوٹ پریڈ پاکستان نیوی روشن جہانگیر خان سکواش کمپلیکس کے تربیت یافتہ کھلاڑی حذیفہ شاہد کی عالمی سطح پر کامیابی پی این فری میڈیکل  کیمپ کا انعقاد ڈائریکٹر جنرل ایچ آر ڈی کا دورۂ ملٹری کالج سوئی بلوچستان کمانڈر سدرن کمانڈ اورملتان کور کا النور اسپیشل چلڈرن سکول اوکاڑہ کا دورہ گورنمنٹ کالج یونیورسٹی فیصل آباد، لیہ کیمپس کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ منگلا گریژن میں "ایک دن پاک فوج کے ساتھ" کا انعقاد یوتھ ایکسچینج پروگرام کے تحت نیپالی کیڈٹس کا ملٹری کالج مری کا دورہ تقریبِ تقسیمِ اعزازات شہدائے وطن کی یاد میں الحمرا آرٹس کونسل لاہور میں شاندار تقریب کمانڈر سدرن کمانڈ اورملتان کورکا خیر پور ٹامیوالی  کا دورہ مستحکم اور باوقار پاکستان سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں اور قربانیوں کا سلسلہ سیاچن دہشت گردی کے سد ِباب کے لئے فورسزکا کردار سنو شہیدو افغان مہاجرین کی وطن واپسی، ایران بھی پاکستان کے نقش قدم پر  مقبوضہ کشمیر … شہادتوں کی لازوال داستان  معدنیات اور کان کنی کے شعبوں میں چینی فرم کی سرمایہ کاری مودی کو مختلف محاذوں پر ناکامی کا سامنا سوشل میڈیا کے مثبت اور درست استعمال کی اہمیت مدینے کی گلیوں موسمیاتی تبدیلی کے اثرات ماحولیاتی تغیر پاکستان کادفاعی بجٹ اورمفروضے عزم افواج پاکستان پاک بھارت دفاعی بجٹ ۲۵ - ۲۰۲۴ کا موازنہ  ریاستی سطح پر معاشی چیلنجز اور معاشی ترقی کی امنگ فوجی پاکستان کا آبی ذخائر کا تحفظ آبادی کا عالمی دن اور ہماری ذمہ داریاں بُجھ تو جاؤں گا مگر صبح کر جاؤں گا  شہید جاتے ہیں جنت کو ،گھر نہیں آتے ہم تجھ پہ لٹائیں تن من دھن بانگِ درا کا مہکتا ہوا نعتیہ رنگ  مکاتیب اقبال ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم ذرامظفر آباد تک ہم فوجی تھے ہیں اور رہیں گے راولپنڈی میں پاکستان آرمی میوزیم کا قیام۔1961 چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا ترکیہ کا سرکاری دورہ چیف آف ڈیفنس فورسز آسٹریلیا کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات چیف آف آرمی سٹاف کا عیدالاضحی پردورۂ لائن آف کنٹرول  چیف آف آرمی سٹاف کی ضلع خیبر میں شہید جوانوں کی نماز جنازہ میں شرکت ایئر چیف کا کمانڈ اینڈ سٹاف کالج کوئٹہ کا دورہ کامسیٹس یونیورسٹی اسلام آبادکے ساہیوال کیمپس کی فیکلٹی اور طلباء کا اوکاڑہ گیریژن کا دورہ گوادر کے اساتذہ اورطلبہ کاپی این ایس شاہجہاں کا مطالعاتی دورہ سیلرز پاسنگ آئوٹ پریڈ کمانڈر پشاور کور کی دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کرنے والے انسداد دہشتگردی سکواڈ کے جوانوں سے ملاقات کما نڈر پشاور کور کا شمالی و جنوبی وزیرستان کے اضلاع اور چترال کادورہ کمانڈر سدرن کمانڈ اور ملتان کور کا واٹر مین شپ ٹریننگ کا دورہ کیڈٹ کالج اوکاڑہ کی فیکلٹی اور طلباء کا اوکاڑہ گیریژن کا دورہ انٹر سروسز باکسنگ چیمپیئن شپ 2024 پاک میرینز پاسنگ آؤٹ پریڈ 
Advertisements

ہلال اردو

ہوا وطن پہ جو قرباں، وہ میرا بیٹا ہے

اپریل 2024

کیپٹن سید حیدر عباس شہید(تمغہ بسالت)کی والدہ محترمہ سیدہ نصرت زہرا بڑے فخرو انبساط سے بیان کررہی تھیں کہ میرا بیٹا حیدر عباس ابھی صرف چار سال کا تھا کہ اسے سکول میں یومِ دفاعِ پاکستان (6 ستمبر) کی تقریب کے لیے منتخب کرلیا گیا اور کہا گیا کہ آپ نے کل فوجی آفیسر کی یونیفارم میں آنا ہے۔ درجن بھر بازاروں میں تلاش کے باوجود جب اتنی چھوٹی وردی نہ ملی تو اس کی جسامت کے قریب کی وردی خرید کر، میں نے ساری رات اسے مختلف جگہوں سے کاٹ اور ادھیڑ کر اپنے بیٹے کے چھوٹے سے جسم کے مطابق ڈھال دیا۔ اگلے روز، 6 ستمبر کو جب حیدر عباس اس وردی کو زیبِ تن کر کے تقریب میں پہنچا تو ہر کسی نے چشمِ بد دور کہہ کر اس کا استقبال کیا اور ٹیبلو انچارج نے بے ساختہ اِن الفاظ میں خراجِ تحسین پیش کیا کہ بظاہر حیدر عباس فقط چار سال کا نوخیز بچہ نظر آتا ہے مگر جوش و جذبے اور اٹھان میں مکمل جوان فوجی آفیسر دکھائی دیتا ہے۔



حیدرعباس کے والد محترم سید عباس حسن نے اپنے نورِ نظر کی مدح سرائی کرتے ہوئے کہا، میرا یہ لختِ جگر پرائمری سکول سے ہی بہترین مقرر،  ہاکی کا پھرتیلا کھلاڑی، برق رفتار تیراک اور آغازِ زندگی ہی سے قابل ترین طالب علم رہا۔ کم سنی میں انتہائی شرارتی تھا۔ مگر چھٹی جماعت سے اس نے سنجیدہ ہونا شروع کر دیا۔ وہ اپنے بچپن ہی سے پراعتماد اور ارادوں میں پختہ دکھائی دیا۔ والد کے لہجے میں شہید بیٹے کے لیے بے پناہ شفقت و شیرینی تھی۔ پچیس سال چار ماہ کے کیپٹن کی زندگی کا ایک ایک لمحہ ان کے ذہن کے پردہ پر اجاگر ہوتا نظر آرہا تھا۔ بقول ان کے وہ 21 اکتوبر 1996 کو کراچی میں پیدا ہوا۔ دادا، دادی اور نانی کی صحبت سے فیض حاصل کیا، 2001 سے لے کر 2008 تک حبیب پبلک سکول سے تعلیم حاصل کی- ہمیشہ جماعت میں A-1 گریڈ سے کامیاب ہوا اور والدین سے فرمائش کی کہ اب میری اگلی منزل کیڈٹ کالج ہے۔ لہٰذا وہ صرف ساڑھے بارہ سال کی عمر میں کیڈٹ کالج لاڑکانہ روانہ ہو گیا۔ والدِ مکرم خود اسے اپنی گاڑی میں لاڑکانہ چھوڑ کر آئے۔ پھر پانچ سال کیڈٹ کالج لاڑکانہ میں گزارنے کے بعد A-1گریڈ کے ساتھ ایف ایس سی تک کی تعلیم اعزاز کے ساتھ مکمل کی اور گھر آنے سے قبل ہی پی ایم اے لانگ کورس کے لیے درخواست دی۔ والد کو پتا چلا تو انہوں نے اپنا خیال ظاہر کیا کہ ضروری تو نہیں کہ تم کاکول کے لیے منتخب ہو جاؤ، لاکھوں طالب علم کوشش کرتے ہیں مگر صرف گنتی کے کچھ امیدواروں کو چنا جاتا ہے۔ 
تمہارے نمبر اتنے اعلیٰ ہیں کہ تمہیں میڈیکل کالج میں بھی آسانی سے داخلہ مل جائے گا۔ لہٰذا متبادل پیشے کے طور پر میڈیکل کالج کے لیے بھی درخواست دے دو تاکہ وقت ضائع نہ ہو۔ مگر اس نے کہا "نہیں، میرا انتخاب ہوجائے گا!" اسکی شخصیت کے اعتماد نے یہاں بھی کرشمہ دکھایااوراسے پی ایم اے کاکول اکیڈمی کے لیے چن لیا گیا۔ والد نے انگلیوں کی پوروں پر گِن کر بتایا کہ حیدر عباس نے درجہ شہادت پر فائز ہونے تک صرف پچیس سال چار مہینے کی عمر پائی، جس میں وہ مجموعی طور پر ہمارے ساتھ فقط تیرہ سال رہا۔ وہ  اس تمام عرصے میں ایک دن، دو دن، ہفتہ یا زیادہ سے زیادہ مہینہ، مہمانوں کی طرح وقت گزارتا اور ہمیں اداس کر کے واپس اپنی یونٹ روانہ ہو جاتا۔
نومبر 2014 میں گھر کے تمام افراد، والدین، دونوں بھائی اور دونوں بہنیں، اسے چھوڑنے کے لیے کراچی سے ایبٹ آباد گئے۔ طویل سفر کی تھکان سے چور ماں نے مسکراتے ہوئے پوچھا، "بیٹا یہ تو بتاؤ کہ بھلا ماں کس طرح یہ لمبی مسافتیں طے کر کے اپنے لختِ جگر سے ملنے یہاں آیا کرے گی؟" حیدر نے ہنستے ہوئے جواب دیا، "اماں آپ دیکھ رہی ہیں اکیڈمی اورکالج کس قدر خوبصورت اور روح افزا مقام پر واقع ہیں، اللہ کریم! خیر کرے گا یہ وقت بہت تیزی سے گزر جائے گا اور پھر آپ میری پاسنگ آؤٹ کے لیے یہاں تشریف لائیں گے۔ بس اماں آپ دعا کریں کہ میں تربیت کے دوران کبھی زخمی نہ ہوں اور اپنی تعلیم و تربیت کے تمام مراحل کامیابی سے بروقت مکمل کر کے کامیاب ہو جاؤں۔"
والد بتا رہے تھے کہ زندگی کے کسی موقع پر اس کے لبوں پر شکوہ نہیں آیا۔ اب ہمیں بھی آہستہ آہستہ یقین ہو چلا تھا کہ یہ مقدس پیشہ سپاہ گری اس کی سوچوں کا محوراور اوڑھنا بچھونا ہے۔ وہ کبھی یونیفارم میں گھر پر نہیں آیا۔ مگر جب بھی آیا اپنی چال ڈھال سے چاق چوبند سپاہی کے روپ میں ہماری نظروں میں جچنے لگا۔ اِس مختصر سی زندگی میں ہم نے اسے صرف دو مرتبہ وردی میں دیکھا۔ پہلی مرتبہ پاسنگ آؤٹ پریڈ کے دوران، 16 اپریل 2016 کو جب وہ اپنے پورے134 پی ایم اے لانگ کورس کے ہمراہ نعرہ تکبیر  اللہ اکبرکے فلک شگاف نعروں میں خدائے بزرگ و برتر کی گواہی دیتا ہوا پریڈ سیکٹر میں داخل ہوا۔ مدھر بینڈ کی دھنوں میں، پاس آؤٹ ہونے والے سپوتوں کا جوش و جذبہ دیدنی تھا۔ ہمارے بیٹے کو لائٹ ائیر ڈیفنس بٹالین میں کمیشن ملا، یہ دن ہمارے خاندان کے لیے جشن کاروز تھا۔
سبھی سینئرز اور جونئیرز شروع ہی سے نوخیز لیفٹیننٹ حیدر عباس کی قائدانہ صلاحیتوں، جذبۂ ایثار اور پیشہ ورانہ خوبیوں کے معترف ہو گئے۔ ضرورت کے وقت اپنی یونٹ کے جوانوں کی مدد کرنا اور ان کی تربیت کے معیار کو بہتر سے بہتر بنانا، حیدر عباس کا طرۂ امتیاز تھا۔ یہاں تک کہ وہ جولائی 2018 میں ایس ایس جی کورس کی مشکل ترین مہمات کو سر کرنے کے لیے تربیلا پہنچ گیا۔ مارچ 2019 میں پاسنگ آؤٹ ہونا تھا مگر دو ماہ قبل ہی ماں سے پرزور اصرار کر دیا کہ آپ سب نے میری پاسنگ آؤٹ میں ضرور شامل ہونا ہے۔ یہ اس کی دوسری پاسنگ آؤٹ تھی اور ہمارے لیے بھی دوسرا موقع تھا کہ ہم نے اپنی زندگی میں دوبارہ اسے یونیفارم میں دیکھا اور بے انتہا خوش ہوئے۔ حیدر عباس وردی کی حرمت کے بارے میں بہت حساس تھا۔ وہ کبھی بھی یونیفارم پہن کر گھر نہیں آیا اور نہ کبھی اپنی خوبصورت وردی کی نمائش کسی اور  جگہ پر کی۔ پہلی مرتبہ ہمارے پڑوسیوں کو بھی حیدر عباس کے ایس ایس جی میں کمانڈو ہونے کا علم اس وقت ہوا جب حیدر عباس کی شہادت کے بعد اس کی یونٹ کے آفیسرز اورجوانوں نے نوخیز شہید کی تعزیت و تدفین کے لیے ہمارے غریب خانے پر آنا شروع کیا۔ والد بیک وقت غمی اور خوشی کے آنسو آنکھوں میں لیے خدا کا شکر ادا کرتے ہوئے محوگفتگو تھے کہ میرے اس بیٹے کی سوچ بچپن ہی سے بڑی منفرد اور عظیم تھی۔ ایک مرتبہ حیدر عباس کی جبکہ وہ اپنی عمر کے لحاظ سے ابھی کم سن ہی تھے، اپنے لاڈلے چھوٹے چچا سے عملی بحث چل نکلی، مباحثے کا موضع تھا حیات و ممات، ذہین عباس حیدر نے گھریلو ادبی مباحثے کو اپنے اس مختصر سے جملے میں سمیٹتے ہوئے اور دریا کوکوزے میں بند کرتے ہوئے جاوداں بنا دیا، ''انسان نے زندگی جیسی بھی گزاری ہو مگر موت اچھی ہونی چاہیے۔ اگر موت اچھی ہو گی تو بری سے بری زندگی بھی اچھی شمار ہو گی۔''
اپنی شہادت سے چند روز قبل حیدر عباس نے اپنی ماں کو ذہنی طور پر تیار کرنے کے لیے کہا ماں مجھے ڈر بالکل نہیں لگتا ماں نے بھی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا کہ ماشاء اللہ میرے بیٹے تم بہادر فوجی جوان ہو، تمہیں ڈر لگنا بھی نہیں چاہیے۔ اب بیٹے نے شہادت کی اشارتاً خبر دیتے ہوئے کہا ماں مجھے قبر سے بالکل بھی ڈر نہیں لگتا۔ ماں نے مضطرب ہو کر دل پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا بیٹا آج 27 دسمبر ہے تمہاری چھٹیاں ختم ہو رہی ہیں، کل والدین کی شادی کی سالگرہ ہے ایک دن کی اور چھٹی لے لو اور سالگرہ کی تقریب میں شمولیت کر کے جائو۔ ساتھ ہی عید بھی ہے لہٰذا ہمارے ساتھ چلو اور عید کی خریداری بھی کر لو۔ اب حیدر عباس نے کسی تجربہ کار بزرگ محبِ وطن سپاہی کی طرح پرانا جملہ دہرایا۔ ''ماں، جوان میری فیملی اور یونٹ میرا گھر ہے۔ لہٰذا پردیسی، مسافر اور اپنے خانہ بدوش بیٹے کو رخصت ہونے کی اجازت دو۔'' اللہ حافظ کہا اور کوئٹہ کی جانب روانہ ہو گیا۔ آج اس کی شہادت کے سوادو سال بعد محسوس ہو رہا ہے کہ ہمارے ملک کے تمام شہیدوں، غازیوں کے ذوق وشوق، ولولے، حوصلے اور جذبائے  شہادت مشترک ہوتے ہیں۔
ماں اپنے بیٹے کی شادی کے بارے میں سوچ رہی تھی اور بیٹا کسی اور دھن میں مگن نظر آتا تھا۔ ایک دن اچانک ماں نے خواب دیکھا کہ حیدر عباس اپنے مرحوم دادا، دادی کے درمیان کسی چھوٹے بچے کی مانند لیٹا ہوا ہے اور سینے پر ہاتھ رکھ کر زخمِ جگر کو چھپا رہا ہے۔ جیسے وہ اپنا زخم بزرگوں کو دکھا کر پریشان نہ کرنا چاہتا ہو۔ خواب بہت پریشان کن تھا۔ ماں ذہنی طور پر انتہائی مضطرب تھی کہ اس خواب کی نجانے کیا عجیب تعبیر سامنے آنے والی ہے۔
بلوچستان کے علاقے میں عباس حیدر کا زیادہ تر رابطہ اپنے بھائی اسد عباس سے رہتا۔ وہ انہیں اپنی خیریت بھجواتا رہتا۔شہید کے حوالے سے ہمیں معلوم ہوا کہ وہ اپنے ایک کمانڈو ساتھی جو حوالدار تھا، نے اُنہیں کہا کہ بلوچستان کے سرحدی علاقے میں وطن دشمن دہشت گرد آئی ای ڈی کے ذریعے سب سے پہلے قیادت کرنے والی گاڑی کو نشانہ بناتے ہیں۔ صاحب، آپ شادی شدہ ہیں اس لیے میں نہیں چاہتا کہ آپ کی جان کو نقصان پہنچے، لہٰذا آپ اپنی گاڑی کو پیچھے لے آئیں اور میری گاڑی کو فوجی قافلے کی قیادت کرنے دیں۔ اگر مجھے کچھ ہو گیا تو خیر ہے۔ میں چھڑا ہوں۔ ہمارے دشمن بھی ہماری اس روایت سے واقف ہیں کہ فوج میں کوشش کی جاتی ہے کہ امکانی شہادت کے موقع پر جوان افسروں پر اور افسر جوانوں پر سبقت لے جائیں۔
حیدرعباس نے فوج میں کیپٹن بن کر اور وہ بھی کمانڈو الصمصام بٹالین میں لڑنے کا فیصلہ اپنے شوق اور مرضی سے کیا تھا۔ انہوں نے ہر موقع پر اپنے جوانوں کی پیشہ ورانہ مہارت کو عملی طور پر نکھارنے اور آزمانے کا نصب العین ہمیشہ پیش نظر رکھا۔ آپ کے جوان بھی بخوشی آپ کی قیادت میں کسی بھی پر خطر معرکے سے نبرد آزما ہونے کا حوصلہ و عزم اپنی جانوں سے بڑھ کر عزیز رکھتے تھے۔ انہوں نے اپنے بہترین نشانہ بازوں کو اچھی طرح اعلیٰ پائے کا ماہر بنا کر ایسے پرخطر حساس راستوں پر تعینات کیا تھا کہ دشمن کو اپنی سانسیں رکتی اور اکھڑتی ہوئی محسوس ہوتی تھیں۔ کشمیر میں تعیناتی کے دوران بھی ان کی فہم و فراست پر مبنی جنگی منصوبہ بندی پر عمل پیرا ہوتے ہوئے الصمصام بٹالین نے کافی حد تک دہشت گردی کے امکانات کو معدوم کر دیا تھا۔ ذاتی طور پر کیپٹن حیدرعباس  نے اپنے جوانوں کے لیے ایسی حکمت عملی اپنائی اور شب و روز انہیں ایسی مشقیں کروائیں کہ ان کی جنگی صلاحیتوں اور پیشہ ورانہ مہارت میں قابلِ قدر اضافہ ہوا۔
الصمصام کمانڈو بٹالین، سپیشل سروسز گروپ کے قابلِ رشک اور لائق کیپٹن حیدرعباس نے بیرون ملک بھی پاکستان آرمی کی نمائندگی کی اور قطر میں منعقدہ 10 روزہ مشقوں میں حصہ لیا، جہاں دنیا کی صفِ اول کی اسپیشل فورسز نے شرکت کی۔ وہاں بھی انہوں نے اپنی ذمہ داریاں احسن طریقے سے سرانجام دیں اور ملک و ملت کے ساتھ ساتھ پاک فوج کے سپیشل سروسز گروپ کے قد کاٹھ میں قابلِ قدر اضافہ کیا۔ ان کے بہترین آفیسر بننے میں ان کے شوق مطالعہ کا بھی بڑا عمل دخل تھا۔ بلوچستان سرحدی آپریشن کے دوران بھی حیدر  نے مختصر سے وقت میں 52 کتابیں پڑھیں۔ جبکہ 200 کے قریب کتابوں کے مطالعے سے اپنے بٹالین ہیڈ کواٹر زاٹک میں لطف اندوز ہو چکا تھا۔ والد نے آگاہ کیا کہ وہ میرے گھر کی لائبریری کی تمام نایاب کتب پہلے ہی پڑھ چکا تھا۔ اس کی یاداشت ایسی تھی کہ جو سطر اس کی چشم بینا سے گزرتی اس کے ذہن پر نقش ہو جاتی۔  اس لحاظ سے اسے بجا طور پر صاحبِ سیف و قلم سپاہی کہا جاسکتا ہے۔
19 فروری 2022 کو کیپٹن سید حیدر عباس دیگر چار لڑاکا دستوں کے ہمراہ خفیہ طور سے سول بسوں پر سبی کے لیے روانہ ہوئے، کمانڈنگ آفیسر لیفٹیننٹ کرنل محمد قمر اعجاز، تمغہ بسالت کو کوئٹہ سے پہلی پرواز میں جبکہ کیپٹن سید حیدر عباس اور ان کی ٹیم کو تیسری پرواز میں سبی سے طے شدہ ہدف پر ہیلی ڈراپ کیا جانا تھا۔ اس اہم ترین خفیہ مشن میں پہلی ٹیموں کا فرض ممکنہ دہشت گردوں کے فرار کے راستوں کو مسدود کرنا تھا۔ یہ ٹیمیں ایک دوسرے سے 500 سے 600 میٹر کے فاصلے پر موجود تھیں۔ روانگی سے قبل کیپٹن حیدر عباس نے اپنے ساتھیوں کو تلقین کی کہ وہ باوضو رہیں اور جس نماز کا وقت آئے ایک دوسرے کی حفاظت کرتے ہوئے پڑھ لیں۔ نجانے کونسی نماز زندگی کی آخری نماز ہو جائے۔ ہدف پر اترنے کے بعد کیپٹن سید حیدر عباس نے حالات کا جائزہ لیا اور اپنی ٹیم کو دو سیکشن میں تقسیم کیا۔کیونکہ دہشتگردوں کا فائر ہدف کے اطراف سے آ رہا تھا۔ لہٰذا انہوں نے مزید آنے والی ٹیموں کا انتظار کیے بغیرکارروائی کا فیصلہ کیا تاکہ دہشتگردوں کے فائر کے باعث ہدف کے اطراف میں موجود ٹیموں کو نقصان نہ پہنچے۔
کیپٹن سید حیدر عباس اپنی ٹیم کے ایک سیکشن کو لے کر آگے بڑھے جبکہ دوسرے سیکشن کو فائر کور اور کمک کے لیے رکھا۔اس موقع پر انہوں نے اپنے سیکشن کی قیادت کرتے ہوئے یکے بعد دیگرے 3کمپائونڈ کلیئر کیے اوروہاں موجود بھاری مقدار میں گولہ بارود اپنے قبضے میں لیا۔
یہاں کیپٹن سید حیدر عباس شہید کے سامنے یہ موقع تھا کہ وہ مزید ٹیموں کے آنے کے بعد دہشتگردوں کا تعاقب کریں۔ تاہم، زمینی حقائق کودیکھتے ہوئے وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ دہشتگرد بہترین کور اور علاقے سے زیادہ باخبر ہونے کی وجہ سے موجود دستوں کو شدید نقصان پہنچا سکتے تھے۔ لہٰذا ایک شجاع اور ذمہ دار افسر کی حیثیت سے وہ سینہ سپر ہوگئے اور اپنی ٹیم کو لے کر'' فائر اور موو'' کی تکنیک کے تحت آگے بڑھتے ہوئے دہشتگردوں کی پوزیشن کا تعین کیا تاکہ انکو کیفرِ کردار تک پہنچا سکیں۔  
کیپٹن سید حیدر عباس اور انکی ٹیم کی پیش قدمی اور فائرنگ سے کچھ دہشتگرد چھپے ہونے کے باوجود زخمی ہوئے اور بزدلی سے فرار ہونے کے لیے شدید برسٹ فائر کرنے لگے۔کیپٹن سید حیدر عباس اور انکی ٹیم نے فوری طور پر زمین پر چھلانگ لگا کر عارضی کور لیا۔ تقریباً ایک منٹ کے بعد کیپٹن حیدر عباس شہید نے اپنی جان کی پرواہ نہ کرتے ہوئے انتہائی استقامت اور قیادت کے جذبے کے تحت اٹھنے میں پہل کی اور اپنے ساتھیوں سے کہا کہ وہ بھگوڑے دہشتگردوں کو ٹھکانے لگانے کے لیے آگے بڑھ رہے ہیں۔انکے ساتھیوں نے اس موقع پر کہا کہ وہ آگے جاتے ہیں لیکن کیپٹن حیدر عباس شہید نے پاک فوج کی قائدانہ روایات کے مطابق ایک جری کمانڈر کی حیثیت سے انہیں کور دینے کا کہا اور دہشتگردوں کی سمت میں فائرنگ کرتے ہوئے خود آگے بڑھے۔
 یہی وہ لمحہ تھا جب یہ شجاع اور فرض شناس نوجوان افسر اپنی انتہائی کامیابی سے ہمکنار ہوا اور شہادت پائی۔کیپٹن سید حیدر عباس شہید کو انتہائی کم فاصلے پر چھپے ہوئے دہشتگردوں کی طرف سے ایک گولی چہرے کی بائیں جانب لگی جو انکے سر سے پار ہو گئی۔ بعد ازاں انٹیلی جنس کے ذریعے معلوم ہوا کہ دہشتگردوں کو اپنے ایک ساتھی کی گولیوں سے چھلنی لاش قرب و جوار کے علاقے میں ملی جو یقینا کیپٹن حیدر عباس شہید سے فائرنگ کے تبادلے میں زخمی ہوا اور فرار ہوتے ہوئے کیفر کردار کو پہنچا۔
کیپٹن سید حیدر عباس کی پہلی نماز جنازہ کوئٹہ میں ادا کی گئی اور دوسری کراچی کی امام بارگاہ میں۔نماز میں شریک ہونے والے افراد گواہی دیتے ہیں کہ وہاں اتنی بڑی نمازجنازہ اس سے پہلے کبھی نہ پڑھی گئی۔ ایسے محسوس ہو رہا تھا جیسے کراچی کی کثیر آبادی اپنے اپنے علاقوں کی نمائندگی کے لیے وطن کے ہیرو کو آخری خراجِ تحسین پیش کرنے کے لیے اُمنڈ آئی ہو۔ وادی حسین کے خوبصورت قبرستان میں ان کی تدفین ہوئی۔ حیدرعباس کے بھائی اسد عباس نے اُن کو لحد میں اتارا، ماں خوشی کے آنسو بہاتی ہوئی اظہار تشکر کچھ اس انداز سے ادا کررہی تھی۔
'حیدر تم میرے شیر دلیر بیٹے ہو اور تم نے والدین اور اپنے بہن بھائیوں کا سر فخر سے بلند کر دیا اور اب ہم تمہاری وجہ سے پہچانے جائیں گے۔ خدا حافظ میرے لال میں نے تمھیں خداوندِذوالجلال کے سپرد کیا۔'
شہید کیپٹن سید حیدر عباس کی بے مثل شجاعت، بے لوث حب الوطنی، قیادت کے شاندار مظاہرے اور فرض کے لیے جان سے گزر جانے کے انمول جذبے کے اعتراف میں تمغہ بسالت سے نوازا گیا۔