اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 10:37
اداریہ۔ جنوری 2024ء نئے سال کا پیغام! اُمیدِ صُبح    ہر فرد ہے  ملت کے مقدر کا ستارا ہے اپنا یہ عزم ! روشن ستارے علم کی جیت بچّےکی دعا ’بریل ‘کی روشنی اہل عِلم کی فضیلت پانی... زندگی ہے اچھی صحت کے ضامن صاف ستھرے دانت قہقہے اداریہ ۔ فروری 2024ء ہم آزادی کے متوالے میراکشمیر پُرعزم ہیں ہم ! سوچ کے گلاب کشمیری بچے کی پکار امتحانات کی فکر پیپر کیسے حل کریں ہم ہیں بھائی بھائی سیر بھی ، سبق بھی بوند بوند  زندگی کِکی ڈوبتے کو ’’گھڑی ‘‘ کا سہارا کراچی ایکسپو سنٹر  قہقہے اداریہ : مارچ 2024 یہ وطن امانت ہے  اور تم امیں لوگو!  وطن کے رنگ    جادوئی تاریخ مینارِپاکستان آپ کا تحفظ ہماری ذمہ داری پانی ایک نعمت  ماہِ رمضان انعامِ رمضان سفید شیراورہاتھی دانت ایک درویش اور لومڑی پُراسرار  لائبریری  مطالعہ کی عادت  کیسے پروان چڑھائیں کھیلنا بھی ہے ضروری! جوانوں کو مری آہِ سحر دے مئی 2024 یہ مائیں جو ہوتی ہیں بہت خاص ہوتی ہیں! میری پیاری ماں فیک نیوزکا سانپ  شمسی توانائی  پیڑ پودے ...ہمارے دوست نئی زندگی فائر فائٹرز مجھےبچالو! جرات و بہادری کا استعارہ ٹیپو سلطان اداریہ جون 2024 صاف ستھرا ماحول خوشگوار زندگی ہمارا ماحول اور زیروویسٹ لائف اسٹائل  سبز جنت پانی زندگی ہے! نیلی جل پری  آموں کے چھلکے میرے بکرے... عیدِ قرباں اچھا دوست چوری کا پھل  قہقہے حقیقی خوشی اداریہ۔جولائی 2024ء یادگار چھٹیاں آئوبچّو! سیر کو چلیں موسم گرما اور اِ ن ڈور گیمز  خیالی پلائو آئی کیوب قمر  امید کا سفر زندگی کا تحفہ سُرمئی چڑیا انوکھی بلی عبدالرحیم اور بوڑھا شیشم قہقہے
Advertisements

ہلال کڈز اردو

کِکی

فروری 2024

وہ سردیوں کی ایک خوبصورت دوپہر تھی۔اسکول کی چھٹی کے بعد زین اور ارحا جیسے ہی گھر کے دروازے پر پہنچے، انہوں نے بلی کے ایک بچے کو گھر کے باہر رکھے گملوں کے پیچھے چھپتے ہوئے دیکھا۔
’’دیکھئے بھائی! وہاں ایک بلی کا بچہ چھپا ہوا ہے۔‘‘ ارحا گملوں کی طرف اشارہ کرتی ہوئی پُرجوش انداز میں بولی۔
’’اوہ! یہ زخمی ہے!‘‘ زین نے ایک گملے کے پیچھے جھانکتے ہوئے کہا۔
زین نے آگے بڑھ کر بچے کو اٹھا لیا۔ وہ بھورے رنگ اور نیلی آنکھوں والا ایک پیارا بلی کا بچہ تھا۔وہ سہما ہوا تھا اور سردی سے کانپ رہا تھا۔ اس نے زین کو رحم طلب نگاہوں سے دیکھا ، جیسے کہہ رہا ہو، ’’مجھے سردی لگ رہی ہے... میں بھوکا ہوں.... مجھے گھر کے اندر لے چلو...‘‘
’’اسے کہاں سے اٹھا لائے ہو؟ ‘‘ امی نے زین کے ہاتھوں میں بلی کے بچے کو دیکھ کر منہ بنایا۔ انہیں بلیاں پسند نہیں تھیں۔
’’امی، یہ زخمی ہے! ‘‘ ارحا جلدی سے بولی۔ ’’ہم اس کے زخموں پر دوائی لگائیں گے۔‘‘
زین اور ارحا نے بلی کے بچے کے زخموں کو صاف کیا اور دوائی لگائی، اسے پینے کے لیے گرم دودھ دیا اور آتش دان سے گرمی پہنچائی۔
چند ہی گھنٹوں کی دیکھ بھال کے بعد بچے کی حالت خاصی بہتر ہو گئی۔
’’اب یہ ٹھیک ہو گیا ہے! ‘‘ امی بولیں۔ ’’اندھیرا ہونے سے پہلے اسے باہر چھوڑ آئو۔‘‘
’’نہیں نہیں امی!... اسے گھر ہی میں رہنے دیجیے!‘‘ زین التجائیہ انداز میں بولا۔
’’ دیکھیے امی! یہ کتنا پیارا ہے!‘‘ ارحا نے زین کا ساتھ دیتے ہوئے کہا ۔ ’’ہم اسے خود سے دور نہیں کرنا چاہتے۔‘‘
بچوں کی ضد کے آگے امی نے ہتھیار ڈال دیے لیکن بلی کا بچہ انہیں ایک آنکھ نہیں بھاتا تھا۔
زین اور ارحا نے بلی کے بچے کو ’’کِکی‘‘ کا نام دیا۔ چند ہی دنوں میں کِکی ان سے خاصا مانوس ہو گیا۔
ایک روز کِکی نے میز پر چڑھنے کی کوشش کرتے ہوئے امی کا قیمتی گلدان توڑ دیا۔ امی بہت غصہ ہوئیں، کِکی سہم گیااور دھیرے دھیرے چلتا ہوا گھر سے باہر نکل گیا۔
زین اور ارحا اسکول سے گھر واپس آئے تو کِکی کو موجود نہ پا کر پریشان ہوگئے اور اسے ڈھونڈنے کے لیے گھر سے باہر نکل گئے۔
کچھ ہی دیر میں انہوں نے کِکی کو تلاش کر لیا، وہ جھاڑیوں کے بیچ اداس بیٹھا تھا۔ زین اور ارحا اسے واپس گھر لے آئے۔
.........
ایک شام کا واقعہ ہے۔ سردی اپنے عروج پر تھی۔ زین کو موسمی بخارچڑھا، رفتہ رفتہ شدت بڑھتی گئی، اور لاکھ کوشش کے باوجود بخار کی شدت میں کمی نہ آئی۔ اس صورتحال پر امی خاصی فکر مند دکھائی دیتی تھیں۔ اتفاق سے اس روز ابو کسی کام سے دوسرے شہر گئے ہوئے تھے۔
ان حالات میں کِکی زین کے بستر کے اردگرد ہی رہتا، کبھی کبھی امی کی نظروں سے بچ کر بستر پر چڑھ جاتا اور میائوں میائوں کی آوازیں نکال کر زین کو اپنی جانب متوجہ کرنے کی کوشش کرتا۔
امی کِکی کی آوازوں سے الجھن محسوس کر رہی تھیں۔انہوں نے کِکی کو کمرے سے نکال کر دروازہ بند کر دیا۔وہ ٹوٹے ہوئے دل کے ساتھ برآمدے میں جا بیٹھا۔امی جب کسی کام سے دروازہ کھول کر باہر آتیں، کِکی دوڑ کر زین کے کمرے میں داخل ہونے کی کوشش کرتا، لیکن ناکام رہتا۔
کچھ دیر بعد کِکی گھر کے عقبی حصے کی طرف چلا گیا، زین کے کمرے کی ایک کھڑکی اس طرف کھلتی تھی۔ متعدد کوششوں کے بعد آخر کار وہ کھڑکی کی چوکھٹ تک پہنچنےمیں کامیاب ہو گیا لیکن سردی کی وجہ سے کھڑکی بند تھی۔
کِکی کھڑکی کے بند شیشوں کے پیچھے سے زین کو فکرمند نگاہوں سے دیکھتا رہا۔ امی نے ایک سرسری نظر اس پر ڈالی اور پھر زین کی طرف متوجہ ہو گئیں۔
شام سے رات اور رات سے صبح ہو گئی۔ کِکی کھڑکی کی چوکھٹ پر بیٹھا رہا  جبکہ امی زین کے سرہانے بیٹھے بیٹھے تھک کر سو گئیں۔
صبح ہوئی تو زین کا بخار اتر چکا تھا۔ امی نے اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کیا لیکن جیسے ہی ان کی نظر کھڑکی پر پڑی، ان کی آنکھیں پھٹی کی پھٹی رہ گئیں۔کِکی اب بھی کھڑکی کی چوکھٹ پر بیٹھا زین کومسلسل دیکھے جا رہا تھا، اسے ٹھنڈ کا احساس تھا نہ بھوک اور پیاس کی فکر۔
ایک بلی کے بچے کی انسان سے محبت کا یہ عالم دیکھ کر امی کا دل پسیج گیا۔ انہوں نے فوراً کھڑکی کھول دی۔
کِکی نے پہلے کھڑکی سے کمرے میں چھلانگ لگائی اور پھر سیدھا زین کے بستر پر... وہ زین کے گرد چکر لگاتا رہا۔
امی کی آنکھیں بھر آئیں، کِکی سے ان کی بیزاری اب محبت میں تبدیل ہو چکی تھی۔ انہوں نے کِکی کو اٹھا یا اور اسے پیار کرنے لگیں۔
’’کِکی اب ہمارے ساتھ ہی رہے گا۔ ‘‘ امی پُرجوش لہجے میں بولیں۔ ’’میں اس کے لیے گرم دودھ لے کر آتی ہوں۔‘‘
کِکی کے ساتھ پہلی بار امی کا یہ محبت بھر اانداز دیکھ کر زین اور ارحا بے ساختہ مسکرا دیے۔