اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 03:16
مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ بھارت کی سپریم کورٹ کا غیر منصفانہ فیصلہ خالصتان تحریک! دہشت گرد بھارت کے خاتمے کا آغاز سلام شہداء دفاع پاکستان اور کشمیری عوام نیا سال،نئی امیدیں، نیا عزم عزم پاکستان پانی کا تحفظ اور انتظام۔۔۔ مستقبل کے آبی وسائل اک حسیں خواب کثرت آبادی ایک معاشرتی مسئلہ عسکری ترانہ ہاں !ہم گواہی دیتے ہیں بیدار ہو اے مسلم وہ جو وفا کا حق نبھا گیا ہوئے جو وطن پہ نثار گلگت بلتستان اور سیاحت قائد اعظم اور نوجوان نوجوان : اقبال کے شاہین فریاد فلسطین افکارِ اقبال میں آج کی نوجوان نسل کے لیے پیغام بحالی ٔ معیشت اور نوجوان مجھے آنچل بدلنا تھا پاکستان نیوی کا سنہرا باب-آپریشن دوارکا(1965) وردی ہفتۂ مسلح افواج۔ جنوری1977 نگران وزیر اعظم کی ڈیرہ اسماعیل خان سی ایم ایچ میں بم دھماکے کے زخمی فوجیوں کی عیادت چیئر مین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا دورۂ اُردن جنرل ساحر شمشاد کو میڈل آرڈر آف دی سٹار آف اردن سے نواز دیا گیا کھاریاں گیریژن میں تقریبِ تقسیمِ انعامات ساتویں چیف آف دی نیول سٹاف اوپن شوٹنگ چیمپئن شپ کا انعقاد یَومِ یکجہتی ٔکشمیر بھارتی انتخابات اور مسلم ووٹر پاکستان پر موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات پاکستان سے غیرقانونی مہاجرین کی واپسی کا فیصلہ اور اس کا پس منظر پاکستان کی ترقی کا سفر اور افواجِ پاکستان جدوجہدِآزادیٔ فلسطین گنگا چوٹی  شمالی علاقہ جات میں سیاحت کے مواقع اور مقامات  عالمی دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ پاکستانی شہریوں کے قتل میں براہ راست ملوث بھارتی نیٹ ورک بے نقاب عز م و ہمت کی لا زوال داستا ن قائد اعظم  اور کشمیر  کائنات ۔۔۔۔ کشمیری تہذیب کا قتل ماں مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ اور بھارتی سپریم کورٹ کی توثیق  مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ۔۔ایک وحشیانہ اقدام ثقافت ہماری پہچان (لوک ورثہ) ہوئے جو وطن پہ قرباں وطن میرا پہلا اور آخری عشق ہے آرمی میڈیکل کالج راولپنڈی میں کانووکیشن کا انعقاد  اسسٹنٹ وزیر دفاع سعودی عرب کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  پُرعزم پاکستان سوشل میڈیا اور پرو پیگنڈا وار فئیر عسکری سفارت کاری کی اہمیت پاک صاف پاکستان ہمارا ماحول اور معیشت کی کنجی زراعت: فوری توجہ طلب شعبہ صاف پانی کا بحران،عوامی آگہی اور حکومتی اقدامات الیکٹرانک کچرا۔۔۔ ایک بڑھتا خطرہ  بڑھتی آبادی کے چیلنجز ریاست پاکستان کا تصور ، قائد اور اقبال کے افکار کی روشنی میں قیام پاکستان سے استحکام ِ پاکستان تک قومی یکجہتی ۔ مضبوط پاکستان کی ضمانت نوجوان پاکستان کامستقبل  تحریکِ پاکستان کے سرکردہ رہنما مولانا ظفر علی خان کی خدمات  شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن ہو بہتی جن کے لہو میں وفا عزم و ہمت کا استعارہ جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا ہے جذبہ جنوں تو ہمت نہ ہار کرگئے جو نام روشن قوم کا رمضان کے شام و سحر کی نورانیت اللہ جلَّ جَلالَہُ والد کا مقام  امریکہ میں پاکستا نی کیڈٹس کی ستائش1949 نگران وزیراعظم پاکستان، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر اور  چیف آف آرمی سٹاف کا دورۂ مظفرآباد چین کے نائب وزیر خارجہ کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  ساتویں پاکستان آرمی ٹیم سپرٹ مشق 2024کی کھاریاں گیریژن میں شاندار اختتامی تقریب  پاک بحریہ کی میری ٹائم ایکسرسائز سی اسپارک 2024 ترک مسلح افواج کے جنرل سٹاف کے ڈپٹی چیف کا ایئر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد کا دورہ اوکاڑہ گیریژن میں ''اقبالیات'' پر لیکچر کا انعقاد صوبہ بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں مقامی آبادی کے لئے فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد  بلوچستان کے ضلع خاران میں معذور اور خصوصی بچوں کے لیے سپیشل چلڈرن سکول کاقیام سی ایم ایچ پشاور میں ڈیجٹلائیز سمارٹ سسٹم کا آغاز شمالی وزیرستان ، میران شاہ میں یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد کما نڈر پشاور کورکا ضلع شمالی و زیر ستان کا دورہ دو روزہ ایلم ونٹر فیسٹول اختتام پذیر بارودی سرنگوں سے متاثرین کے اعزاز میں تقریب کا انعقاد کمانڈر کراچی کور کاپنوں عاقل ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کوٹری فیلڈ فائرنگ رینج میں پری انڈکشن فزیکل ٹریننگ مقابلوں اور مشقوں کا انعقاد  چھور چھائونی میں کراچی کور انٹرڈویژ نل ایتھلیٹک چیمپئن شپ 2024  قائد ریزیڈنسی زیارت میں پروقار تقریب کا انعقاد   روڈ سیفٹی آگہی ہفتہ اورروڈ سیفٹی ورکشاپ  پی این فری میڈیکل کیمپس پاک فوج اور رائل سعودی لینڈ فورسز کی مظفر گڑھ فیلڈ فائرنگ رینجز میں مشترکہ فوجی مشقیں طلباء و طالبات کا ایک دن فوج کے ساتھ روشن مستقبل کا سفر سی پیک اور پاکستانی معیشت کشمیر کا پاکستان سے ابدی رشتہ ہے میر علی شمالی وزیرستان میں جام شہادت نوش کرنے والے وزیر اعظم شہباز شریف کا کابینہ کے اہم ارکان کے ہمراہ جنرل ہیڈ کوارٹرز  راولپنڈی کا دورہ  چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کی  ایس سی او ممبر ممالک کے سیمینار کے افتتاحی اجلاس میں شرکت  بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر ایچ آر ایچ کی جوائنٹ سٹاف ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر دفاع کی یوم پاکستان میں شرکت اور آرمی چیف سے ملاقات  چیف آف آرمی سٹاف کا ہیوی انڈسٹریز ٹیکسلا کا دورہ  آرمی چیف کا بلوچستان کے ضلع آواران کا دورہ  پاک فوج کی جانب سے خیبر، سوات، کما نڈر پشاور کورکا بنوں(جا نی خیل)اور ضلع شمالی وزیرستان کادورہ ڈاکیارڈ میں جدید پورٹل کرین کا افتتاح سائبر مشق کا انعقاد اٹلی کے وفد کا دورہ ٔ  ائیر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد  ملٹری کالج سوئی بلوچستان میں بلوچ کلچر ڈے کا انعقاد جشن بہاراں اوکاڑہ گیریژن-    2024 غازی یونیورسٹی ڈیرہ غازی خان کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ پاک فوج کی جانب سے مظفر گڑھ میں فری میڈیکل کیمپ کا انعقاد پہلی یوم پاکستان پریڈ انتشار سے استحکام تک کا سفر خون شہداء مقدم ہے انتہا پسندی اور دہشت گردی کا ریاستی چیلنج بے لگام سوشل میڈیا اور ڈس انفارمیشن  سوشل میڈیا۔ قومی و ملکی ترقی میں مثبت کردار ادا کر سکتا ہے تحریک ''انڈیا آئوٹ'' بھارت کی علاقائی بالادستی کا خواب چکنا چور بھارت کا اعتراف جرم اور دہشت گردی کی سرپرستی  بھارتی عزائم ۔۔۔ عالمی امن کے لیے آزمائش !  وفا جن کی وراثت ہو مودی کے بھارت میں کسان سراپا احتجاج پاک سعودی دوستی کی نئی جہتیں آزاد کشمیر میں سعودی تعاون سے جاری منصوبے پاسبان حریت پاکستان میں زرعی انقلاب اور اسکے ثمرات بلوچستان: تعلیم کے فروغ میں کیڈٹ کالجوں کا کردار ماحولیاتی تبدیلیاں اور انسانی صحت گمنام سپاہی  شہ پر شہیدوں کے لہو سے جو زمیں سیراب ہوتی ہے امن کے سفیر دنیا میں قیام امن کے لیے پاکستانی امن دستوں کی خدمات  ہیں تلخ بہت بندئہ مزدور کے اوقات سرمایہ و محنت گلگت بلتستان کی دیومالائی سرزمین بلوچستان کے تاریخی ،تہذیبی وسیاحتی مقامات یادیں پی اے ایف اکیڈمی اصغر خان میں 149ویں جی ڈی (پی)، 95ویں انجینئرنگ، 105ویں ایئر ڈیفنس، 25ویں اے اینڈ ایس ڈی، آٹھویں لاگ اور 131ویں کمبیٹ سپورٹ کورسز کی گریجویشن تقریب  پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں 149ویں پی ایم اے لانگ کورس، 14ویں مجاہد کورس، 68ویں انٹیگریٹڈ کورس اور 23ویں لیڈی کیڈٹ کورس کے کیڈٹس کی پاسنگ آئوٹ پریڈ  ترک فوج کے چیف آف دی جنرل سٹاف کی جی ایچ کیومیں چیف آف آرمی سٹاف سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر خارجہ کی وفد کے ہمراہ آرمی چیف سے ملاقات کی گرین پاکستان انیشیٹو کانفرنس  چیف آف آرمی سٹاف نے فرنٹ لائن پر جوانوں کے ہمراہ نماز عید اداکی چیف آف آرمی سٹاف سے راولپنڈی میں پاکستان کرکٹ ٹیم کی ملاقات چیف آف ترکش جنرل سٹاف کی سربراہ پاک فضائیہ سے ملاقات ساحلی مکینوں میں راشن کی تقسیم پشاور میں شمالی وزیرستان یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد ملٹری کالجز کے کیڈٹس کا دورہ قازقستان پاکستان آرمی ایتھلیٹکس چیمپیئن شپ 2023/24 مظفر گڑھ گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ   خوشحال پاکستان ایس آئی ایف سی کے منصوبوں میں غیرملکی سرمایہ کاری معاشی استحکام اورتیزرفتار ترقی کامنصوبہ اے پاک وطن خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل (SIFC)کا قیام  ایک تاریخی سنگ میل  بہار آئی گرین پاکستان پروگرام: حال اور مستقبل ایس آئی ایف سی کے تحت آئی ٹی سیکٹر میں اقدامات قومی ترانہ ایس آئی  ایف سی کے تحت توانائی کے شعبے کی بحالی گرین پاکستان انیشیٹو بھارت کا کشمیر پر غا صبانہ قبضہ اور جبراً کشمیری تشخص کو مٹانے کی کوشش  بھارت کا انتخابی بخار اور علاقائی امن کو لاحق خطرات  میڈ اِن انڈیا کا خواب چکنا چور یوم تکبیر......دفاع ناقابل تسخیر منشیات کا تدارک  آنچ نہ آنے دیں گے وطن پر کبھی شہادت کی عظمت "زورآور سپاہی"  نغمہ خاندانی منصوبہ بندی  نگلیریا فائولیری (دماغ کھانے والا امیبا) سپہ گری پیشہ نہیں عبادت ہے افواجِ پاکستان کی محبت میں سرشار مجسمہ ساز بانگِ درا  __  مشاہیرِ ادب کی نظر میں  چُنج آپریشن۔ٹیٹوال سیکٹر جیمز ویب ٹیلی سکوپ اور کائنات کا آغاز سرمایۂ وطن راستے کا سراغ آزاد کشمیر کے شہدا اور غازیوں کو سلام  وزیراعظم  پاکستان لیاقت علی خان کا دورۂ کشمیر1949-  ترک لینڈ فورسز کے کمانڈرکی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کاپاکستان نیوی وار کالج لاہور میں 53ویں پی این سٹاف کورس کے شرکا ء سے خطاب  کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے ،جنرل سید عاصم منیر چیف آف آرمی سٹاف کی ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کی وفات پر اظہار تعزیت پاکستان ہاکی ٹیم کی جنرل ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیف آف آرمی سٹاف سے ملاقات باکسنگ لیجنڈ عامر خان اور مارشل آرٹس چیمپیئن شاہ زیب رند کی جنرل ہیڈ کوارٹرز میں آرمی چیف سے ملاقات  جنرل مائیکل ایرک کوریلا، کمانڈر یونائیٹڈ سٹیٹس(یو ایس)سینٹ کام کی جی ایچ کیو میں آرمی چیف سے ملاقات  ڈیفنس فورسز آسٹریلیا کے سربراہ جنرل اینگس جے کیمبل کی جنرل ہیڈکوارٹرز میں آرمی چیف سے ملاقات پاک فضائیہ کے سربراہ کا دورۂ عراق،اعلیٰ سطحی وفود سے ملاقات نیوی سیل کورس پاسنگ آئوٹ پریڈ پاکستان نیوی روشن جہانگیر خان سکواش کمپلیکس کے تربیت یافتہ کھلاڑی حذیفہ شاہد کی عالمی سطح پر کامیابی پی این فری میڈیکل  کیمپ کا انعقاد ڈائریکٹر جنرل ایچ آر ڈی کا دورۂ ملٹری کالج سوئی بلوچستان کمانڈر سدرن کمانڈ اورملتان کور کا النور اسپیشل چلڈرن سکول اوکاڑہ کا دورہ گورنمنٹ کالج یونیورسٹی فیصل آباد، لیہ کیمپس کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ منگلا گریژن میں "ایک دن پاک فوج کے ساتھ" کا انعقاد یوتھ ایکسچینج پروگرام کے تحت نیپالی کیڈٹس کا ملٹری کالج مری کا دورہ تقریبِ تقسیمِ اعزازات شہدائے وطن کی یاد میں الحمرا آرٹس کونسل لاہور میں شاندار تقریب کمانڈر سدرن کمانڈ اورملتان کورکا خیر پور ٹامیوالی  کا دورہ مستحکم اور باوقار پاکستان سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں اور قربانیوں کا سلسلہ سیاچن دہشت گردی کے سد ِباب کے لئے فورسزکا کردار سنو شہیدو افغان مہاجرین کی وطن واپسی، ایران بھی پاکستان کے نقش قدم پر  مقبوضہ کشمیر … شہادتوں کی لازوال داستان  معدنیات اور کان کنی کے شعبوں میں چینی فرم کی سرمایہ کاری مودی کو مختلف محاذوں پر ناکامی کا سامنا سوشل میڈیا کے مثبت اور درست استعمال کی اہمیت مدینے کی گلیوں موسمیاتی تبدیلی کے اثرات ماحولیاتی تغیر پاکستان کادفاعی بجٹ اورمفروضے عزم افواج پاکستان پاک بھارت دفاعی بجٹ ۲۵ - ۲۰۲۴ کا موازنہ  ریاستی سطح پر معاشی چیلنجز اور معاشی ترقی کی امنگ فوجی پاکستان کا آبی ذخائر کا تحفظ آبادی کا عالمی دن اور ہماری ذمہ داریاں بُجھ تو جاؤں گا مگر صبح کر جاؤں گا  شہید جاتے ہیں جنت کو ،گھر نہیں آتے ہم تجھ پہ لٹائیں تن من دھن بانگِ درا کا مہکتا ہوا نعتیہ رنگ  مکاتیب اقبال ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم ذرامظفر آباد تک ہم فوجی تھے ہیں اور رہیں گے راولپنڈی میں پاکستان آرمی میوزیم کا قیام۔1961 چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا ترکیہ کا سرکاری دورہ چیف آف ڈیفنس فورسز آسٹریلیا کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات چیف آف آرمی سٹاف کا عیدالاضحی پردورۂ لائن آف کنٹرول  چیف آف آرمی سٹاف کی ضلع خیبر میں شہید جوانوں کی نماز جنازہ میں شرکت ایئر چیف کا کمانڈ اینڈ سٹاف کالج کوئٹہ کا دورہ کامسیٹس یونیورسٹی اسلام آبادکے ساہیوال کیمپس کی فیکلٹی اور طلباء کا اوکاڑہ گیریژن کا دورہ گوادر کے اساتذہ اورطلبہ کاپی این ایس شاہجہاں کا مطالعاتی دورہ سیلرز پاسنگ آئوٹ پریڈ کمانڈر پشاور کور کی دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کرنے والے انسداد دہشتگردی سکواڈ کے جوانوں سے ملاقات کما نڈر پشاور کور کا شمالی و جنوبی وزیرستان کے اضلاع اور چترال کادورہ کمانڈر سدرن کمانڈ اور ملتان کور کا واٹر مین شپ ٹریننگ کا دورہ کیڈٹ کالج اوکاڑہ کی فیکلٹی اور طلباء کا اوکاڑہ گیریژن کا دورہ انٹر سروسز باکسنگ چیمپیئن شپ 2024 پاک میرینز پاسنگ آؤٹ پریڈ 
Advertisements

پروفیسر ڈاکٹر قمر اقبال

Advertisements

ہلال اردو

تصانیف اقبال کے ناموں کے معانی و مفاہیم 

اپریل 2023

 علامہ محمد اقبال ہمارے قومی شاعر، عظیم  رہبر و رہنما، مفکراسلام، مصور پاکستان، دانائے راز، ترجمان حقیقت اور حکیم الامت ہیں۔ان کی اردو اور فارسی شاعری علم و حکمت کا بیش بہا خزانہ اور امت مسلمہ کے لیے راہ نمائی کا ایک روشن اور مستقل ذریعہ ہے۔ جس طرح غلامی کے دور میں فکر اقبال نے ہماری رہنمائی کی اور اس فکر کی روشنی میں ہم نے آزادی کے راستے کا تعین کیا اور غلامی کی زنجیریں توڑنے میں کامیاب ہوئے بالکل اسی طرح آج بھی علامہ کی فکر اپنی دلکش فلسفیانہ شاعری کی صورت میں ہمارے تمام تر قومی مسائل کا حل پیش کرتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وطن عزیز میں آج بھی سب سے زیادہ پڑھے جانے والے شاعر علامہ اقبال ہی ہیں۔ اہل وطن ان کے کلام سے لطف اندوز ہونے کے ساتھ ساتھ ایمانی حرارت، سوز و گداز، فلاحِ قوم کا درس،جہد مسلسل کا پیغام، اتحاد و اتفاق کا سبق اور تعمیر وطن کا جوش  و جذبہ بھی حاصل کرتے ہیں۔ یہ بات انتہائی خوش آئند ہے کہ ہماری قوم اپنے قومی شاعر کے کلام کو عزیز رکھتی ہے اور ان کی کتابوں کو حرزجاں بنائے ہوئے ہے۔یہ بات بھی اطمینان بخش ہے کہ ہم چھوٹی جماعتوں ہی سے علامہ اقبال کی اکثر کتابوں کے ناموں سے واقف ہوجاتے ہیں مگر یہ امر حیرت انگیز ہے کہ ان کتابوں کے ناموں کے معنی سے زیادہ تر لوگ واقف نہیں اور نہ ہی اس ضمن میں اب تک کوئی باقاعد اور مرتب کوشش کی گئی ہے۔زیر نظر مضمون میں یہی کمی پوری کرنے کی کوشش کی گئی ہے اور علامہ اقبال کے شعری مجموعوں کے ناموں کے معنی پہلی بار مرتب انداز میں پیش کیے جا رہے ہیں۔شاعر مشرق کے شعری مجموعوں کے ناموں کے معنی جان لینے سے نہ صرف علامہ کے کلام کا لطف دوبالا ہو گا بلکہ علامہ کے پیغام کا حقیقی مقصد و مدعا بھی سمجھ میں آئے گا اور استفادے کی بہتر صورت پیدا ہوگئی۔ 
بانگ درا 
بانگ" کے معنی آواز کے ہیں جبکہ "درا" گھنٹی  کو کہتے ہیں،وہ گھنٹی جو قافلے کے کوچ یعنی روانگی کا اعلان کرنے کے لیے بجائی جاتی ہے تاکہ سوئے ہوئے اور غافل لوگ بیدار ہوں اور قافلے کے ساتھ مل کر منزل کی جانب روانہ ہو جائیں۔لہٰذا "بانگ درا" کے معنی ہوئے قافلے کے سوئے ہوئے لوگوں کو جگانے والی گھنٹی کی آواز۔علامہ اقبال نے اپنے پہلے شعری مجموعے کا نام "بانگ درا" رکھا تو اس سے ان کی یہی مراد ہے کہ اس کتاب کی شاعری قوم کے سوئے ہوئے لوگوں کو بیدار کرنے، انہیں ان کا مقصد یاد دلانے اور قوم کے ساتھ مل کر آگے سے آگے بڑھنے پر تیار کرنے والی شاعری ہے۔اقبال نے اس بات کا اظہار اسی کتاب کے ایک شعر میں یوں کیا ہے
اقبال کا ترانہ بانگِ درا ہے گویا 
ہوتا ہے جادہ پیما پھر کارواں ہمارا
"جادہ پیما" کے معنی ہیں چلنا یا روانہ ہونا یعنی اقبال کی شاعری نے بانگ درا کا کام کیا ہے اور اس کی وجہ سے قوم کا قافلہ بیدار ہو کر اپنی منزل کی جانب چل پڑا ہے۔بانگ درا علامہ اقبال کی اردو شاعری کا پہلا مجموعہ ہے جو 1924 میں شائع ہوا۔علامہ اقبال نے اسے تین حصوں میں تقسیم کیا ہے
حصہ اول ابتداسے 1905 تک کا کلام 
حصہ دوم 1905 سے 1908 تک کا کلام 
حصہ سوم 1908سے 1924 تک کا کلام
    ''بانگ درا'' بہت سے ادارے چھاپ رہے ہیں مگر شیخ غلام علی اینڈ سنز لاہور اور اقبال اکادمی لاہور سے چھپے ہوئے مجموعے مستند اور کافی حد تک اغلاط سے مبرا سمجھے جاتے ہیں۔
 بال جبریل 
جبریل( علیہ السلام) اللہ تعالیٰ کے ایک مقرب فرشتے کا نام ہے۔انبیا پر وحی لانا ان کے ذمہ ہے۔انہیں فرشتوں کا سردار کہا جاتا ہے۔اللہ تعالیٰ نے انہیں بے شمار قوتوں اور طاقتوں سے نوازا ہے۔وہ پلک جھپکنے میں آسمان سے زمین پر اور زمین سے آسمان پر جا سکتے ہیں۔قرآن پاک میں انہیں "زبردست قوت/ توانائی والا" "امین" اور "روح القدس" کہا گیا ہے۔
     "بال" کے معنی "پر" یعنی(Wing)کے ہیں۔اس طرح "بال جبریل" کے معنی ہوئے جبریل کے پر۔لہٰذا علامہ اقبال نے جو اپنی کتاب کا نام "بال جبریل" رکھا تو اس سے ان کی مراد یہ ہے کہ اس کتاب میں ایسی شاعری ہے کہ جس پر عمل کر کے افرادِ قوم جبریل کے پر یعنی جبریل کی سی قوتیں حاصل کر سکتے ہیں۔علامہ خود فرماتے ہیں 
جب اس انگارہ خاکی میں ہوتا ہے یقیں پیدا 
تو کر لیتا ہے یہ بال و پر روح الامیں پیدا 
'انگارہ خاک'سے مراد ہے مٹی سے بنا ہوا انسان یعنی جب انسان اپنی خودی بیدار کر کے اللہ کی دی ہوئی طاقت پر کامل یقین رکھتا ہے تو بندے کا ہاتھ اللہ کا ہاتھ بن جاتا ہے اور پھر کائنات اس کے اشاروں پر چلنے لگتی ہے اور وہ ہمسایہ جبریل امیں بن جاتا ہے۔  بال جبریل 1935 میں شائع ہوئی علامہ اقبال کا فکر و فن اپنے عروج پر نظر آتا ہے    
 اس مجموعے میں اقبال کی بہترین طویل نظمیں موجود ہیں۔ جن میں "مسجد قرطبہ"۔ "ذوق و شوق" اور "ساقی نامہ" شامل ہیں۔اس مجموعے میں زیادہ تر اقبال کی غزلیات شامل ہیں جو اقبال کے اردو کلام کا بہترین نمونہ ہیں۔
ضرب کلیم
ضرب کے معنی چوٹ  کے ہیں جب کہ کلیم اللہ تعالیٰ کے اوالعزم پیغمبر، حضرت موسیٰ علیہ السلام کا لقب ہے۔
اللہ تعالیٰ نے آپ کو عصا کا معجزہ عطا کیا تھا۔آپ نے اپنا عصا دریا نیل پر مارا تو وہ دو حصوں میں تقسیم ہو گیا اور راستہ بن گیا، اسے چٹان پر مارا تو بارہ چشمے پھوٹ پڑے۔یہی عصا اژدھا بن کر فرعون کے جادوگروں کے سانپوں کو کھا گیا۔
لہٰذا 'ضرب کلیم' کا مطلب ہوا حضرت موسیٰ علیہ السلام کی چوٹ جوانہوں نے اپنے زمانے کے ظالم  بادشاہ فرعون ،جو اپنے آپ کو رب کہلاتا تھا،"اور اس کے لشکر پر لگائی تھی۔ "ضرب کلیم دراصل اللہ تعالیٰ کی عطا کی ہوئی روحانی قوت کی علامت ہے۔اس نام سے علامہ اقبال کی مراد یہی ہے کہ یہ کتاب امت مسلمہ کو دور حاضر کے فتنوں کے خلاف روحانی قوت عطا کرے گی اور مسلمان اس کے ذریعے اپنی خودی بیدار کر کے اس دور کی فرعونی طاقتوں  پر کاری  ضرب لگائیں گے۔   
' دورِحاضر' دراصل اقبال کی ایک مخصوص اصطلاح ہے جس سے مراد وہ خرابیاں اور گمراہیاں  ہیں جو مغرب نے روحانیت کے مقابلے میں مادیت پر مبنی فکر کے ذریعے دنیا بھر میں پھیلائی ہیں اور جن کی وجہ سے دنیا روزبروز اخلاقی اور روحانی پستی کا شکار ہوتی جا رہی ہے۔ یہ کتاب امت مسلمہ کو اسی الحادی اور لادینی تہذیب کے خلاف  ضرب کلیم حاصل کرنے کے طریقے بتاتی ہے۔  
علامہ اقبال نے کتاب کے سرورق پر خود یہ الفاظ  لکھے ہیں۔
"اعلان جنگ دور حاضر کے خلاف"
 کتاب کے پہلے ہی صفحے پر موجود یہ شعر بھی کتاب کے نام اور مقصد کو واضح کرتا ہے 
ہزار چشمہ ترے سنگِ راہ سے پھوٹے 
 خودی میں ڈوب کے ضربِ کلیم پیدا کر
ضرب کلیم پہلی بار 1936میں چھپی تھی۔ 
اسرارِ خودِی
اسرار خودی علامہ اقبال کا پہلا فارسی مجموعہ کلام ہے جو 1915 میں شائع ہوا۔"اسرار" کے لغوی معنی ہیں راز،بھید اور پوشیدہ بات اور خودی کے لغوی معنی ہیں انا پرستی،خود پرستی،خودمختاری، خودسری،خودغرضی،نخوت اور تکبر  کے ہیں جب کہ علامہ اقبال نے اس لفظ کو غرور و تکبر کے بجائے بالکل نئے معنوں یعنی احساسِ نفس تعینِ ذات،احساس غیرت مندی،جذبہ خودداری،اپنی صلاحیتوں کو پہچاننے اور انہیں استعمال میں لاتے ہوئے آگے سے آگے بڑھنے کے معنی میں استعمال کیاہے۔اس طرح "اسرار خودی" کا مطلب ہوا "اپنے آپ کو پہچاننے اور اپنی ذات میں چھپی صلاحیتوں کو دریافت کرنے کے راز" علامہ اقبال نے اس کتاب میں اپنا فلسفہ خودی تفصیلاً بیان کیا ہے اور ان رازوں سے پردہ اٹھایا کہ جن کے ذریعے انسان اپنی صلاحیتوں کو پہچان کر، انہیں استعمال میں لاتے ہوئے قرب الہٰی کی اس منزل تک پہنچ سکتا ہے کہ جہاں ساری کائنات اس کی دسترس میں آ کر اس کے اشاروں پر رقص کرنے لگتی ہے۔ 
خودی کی جلوتوں میں مصطفائی
خودی کی خلوتوں میں کبریائی
زمین و آسمان و کرسی و عرش
خودی کی زد میں ہے ساری خدائی 

رموز بے خودی 
" رموز بے خودی" علامہ اقبال کا دوسرا فارسی مجموعہ کلام ہے جو 1918 میں شائع ہوا۔ 
رموز" رمز کی جمع ہے جس کے معنی پوشیدہ بات، اشارے اور بھید کے ہیں جبکہ "بے خودی" کے لفظی معنی تو بے خود ہونے یعنی اپنے آپ کو بھول جانے کی کیفیت، اپنے آپ میں نہ رہنا، عالم بے خبری،بے ہوشی، از خود رفتگی اور اپنے فرائض و مقاصد سے بے خبری کے ہیں مگر حکیم الامت نے اس لفظ کو بھی نئے معانی عطا کئے ہیں اور فرد کے جماعت کے ساتھ وابستہ رہتے ہوئے اپنی تربیت یافتہ خودی کی صلاحیتوں کو قوم کے 
لیے وقف کر دینے کو "بے خودی" کا نام دیا ہے۔
اس طرح رموز بے خودی کا مطلب ہوا: "افراد کے ذریعے قوم کی مضبوطی فلاح و بقا اور تعمیر و ترقی کے رازیہ کتاب "اسرار خودی" کا تسلسل ہے۔اس میں علامہ اقبال نے بتایا ہے کہ افراد کی بقا  قوم سے اور قوم کا وجود اور مقدر افراد سے وابستہ ہے۔
فرد قائم ربط ملت سے ہے تنہا کچھ نہیں 
موج ہے دریا میں اور بیرون دریا کچھ نہیں 
اور
افراد کے ہاتھوں میں ہے اقوام کی تقدیر 
ہر فرد ہے ملت کے مقدر کا ستارا
رموز بے خودی فارسی زبان میں انہی اردو اشعار کی بے مثال اور شاندار تفسیر ہے۔
اسرار و رموز 
1923 میں اسرار خودی اور رموز بے خودی کو "اسرار و رموز"کے نام سے یکجا شائع کیا گیا۔ 
اس کے بعد سے یہ اسی نام سے یکجا ہی شائع ہو رہی ہیں۔
پیامِ مشرق 
"پیام مشرق" شاعر مشرق علامہ محمد اقبال کا تیسرا فارسی مجموعہ کلام ہے  جو 1923 میں شائع ہوا۔یہ دراصل معروف جرمن شاعر گوئٹے کے "دیوان مغرب" کا جواب ہے۔گوئٹے عظیم دانشور اور بلند پایہ شاعر تھا۔وہ مغربی تہذیب کے کھوکھلے پن اور بے معنی ہلچل اور ہنگامہ خیزی سے بیزار اور یورپ میں "تحریک مشرقی" کے زیر اثر مشرقی علم وادب بالخصوص حافظ شیرازی سے بہت متاثر تھا اور مشرق کی پر سکون فضاؤں کا دلدادہ تھا۔چنانچہ اس نے یورپی شاعری میں، مشرقی اندازِ فکر متعارف کروانے کی کوشش کی اور دیوان مغرب کے نام سے اپنا دیوان شائع کیا۔ 
    علامہ اقبال،خواجہ حافظ کے اسلوب اور گوئٹے کے فکر وفن سے متاثر تھے۔ چنانچہ انہوں نے"دیوان مغرب"کے سو سال بعد اس کا جواب لکھا اور "پیام مشرق" کے نام سے مغرب کو مشرق کا پیغام دیا۔لہٰذا "پیام مشرق" کے معنی ہوئے "مشرق کا پیغام:اہل مغرب کے نام"۔دیباچے میں علامہ اقبال نے خود  اسے مشرقی دنیا کی طرف سے جہانِ مغرب کے لیے ایک تحفہ قرار دیا۔اس کتاب میں علامہ اقبال کا فکر و فن اپنے عروج پر دکھائی دیتا ہے۔یہ کتاب دراصل مادہ پرست مغرب کو مشرقی (اسلامی) روحانیت کا پیغام یا یوں کہیے کہ یہ مغرب کے الحاد اور لادینیت کو رب واحد کے سامنے جھک جانے اور دین کی طرف آنے کا پیغام ہے۔
زبور عجم 
زبورِ عجم علامہ اقبال کا چوتھا فارسی مجموعہ کلام ہے جو 1927 میں شائع ہوا۔"زبور" کے لغوی معنی ٹکڑے،کتاب یا مکتوب کے ہیں جبکہ اصطلاح میں یہ اس الہامی کتاب کا نام ہے جو حضرت دائود علیہ السلام پر نازل ہوئی۔"عجم" سے مراد غیر عربی علاقے مثلاً برصغیر اور ایران وغیرہ ہیں۔عام طور پر یہ لفظ ایران کے لیے استعمال ہوتا ہے جس کی زبان فارسی ہے۔زبور میں شروع سے آخر تک اللہ تعالیٰ کی حمد و ثنا، عظمت اور بڑائی بیان ہوئی ہے اور علامہ اقبال کی اس کتاب کا بھی یہی رنگ ہے،اس میں عارفانہ اور حکیمانہ انداز میں اللہ تعالیٰ کی حمد و ثنا بیان کی گئی ہے اور عارفانہ یا حکیمانہ کلام کو بھی مجازی معنوں میں الہامی کلام کہہ دیا جاتا ہے۔لہٰذا زبور عجم کے معنی ہوئے عجم کی زبور یا فارسی زبان کی زبور یا یوں کہیے کہ فارسی زبان کی الہامی یعنی عارفانہ و حکیمانہ کتاب جس میں اللہ تعالی کی حمد و ثنا اور کبریائی کے نغمے پیش کیے گئے ہیں۔ یہ علامہ اقبال کی اہم ترین کتاب ہے جس کے بارے میں انہوں نے خود فرمایا ہے کہ
    اگر ہو ذوق تو خلوت میں پڑھ زبور عجم 
    فغانِ  نیم  شبی بے نوائے  راز نہیں
جاوید نامہ 
جاوید نامہ علامہ اقبال کا پانچواں فارسی مجموعہ کلام ہے جو 1932 میں شائع ہوا۔اس کا شمار علامہ اقبال کی بہترین، سب سے بلند پایہ اور عالمانہ کتابوں میں ہوتا ہے۔وہ اسے اپنی زندگی کا حاصل سمجھتے تھے۔ یہ دراصل ان کا خیالی سفر نامہ ہے جس میں ان کے رہبر و رہنما،مولانا روم انہیں مختلف سیاروں اور افلاک کی دوسری جانب کی سیر کرواتے ہیں۔اس سفر میں علامہ اقبال نے اپنا نام زندہ رود(یعنی ہمیشہ بہنے/قائم رہنے والا دریا)رکھا ہے۔اس سفر میں علامہ مختلف مشاہیر اور بعض خیالی کرداروں سے ملتے اور گفتگو کرتے ہیں اور حقائق ومعارف کے دریا بہاتے چلے جاتے ہیں۔ ایسے حقائق و معارف کہ جن کا تعلق عالم بالا یا "جہانِ دیگر" سے ہے۔اس کتاب میں حکیم الامت نے مومن کو عشقِ حقیقی کے ذریعے قرب الٰہی کی منزل تک پہنچنے اور سلطان یعنی اللہ کی عطا کی ہوئی قوت حاصل کر کے زمان و مکان پر غالب آ جانے اور ہمیشہ کی  زندگی حاصل کرلینے کے طریقے بتائے ہیں۔اسی لیے اس کا نام"جاوید نامہ" رکھا۔ "جاوید"کے معنی دائم یعنی ہمیشہ رہنے والے کے ہیں جب کہ "نامہ" تحریر کے معنوں میں آتا ہے۔لہٰذا "جاوید نامہ" کے معنی ہوئے: "ہمیشہ کی زندگی حاصل کرنے کے طریقے بتانے والی تحریر، کلام یا کتاب"۔ سرسری نظر سے دیکھنے والے اس نام کا ماخذ علامہ اقبال کے فرزند، جاوید اقبال کا نام بتاتے ہیں۔اس طرح ان کے نزدیک "جاوید نامہ" کے معنی ہیں"جاوید کے لیے لکھا ہوا کلام۔"
مسافر 
"مسافر" علامہ اقبال کا چھٹا فارسی مجموعہ کلام ہے جو 1934 میں شائع ہوا۔ علامہ اقبال نے 1933 میں افغانستان کے بادشاہ نادر شاہ کی دعوت پر،تعلیمی اصلاحات پر مشورے کے لیے،مولانا سید سلیمان ندوی اور سر راس مسعود کی معیت میں افغانستان کا دورہ کیا۔واپسی پر علامہ اقبال نے اپنے اس دورے کے تاثرات مثنوی "مسافر" کی شکل میں قلم بند کیے۔پہلے پہل یہ مثنوی 1934 میں شائع ہوئی مگر 1936 میں اسے علامہ اقبال کی ایک اور مثنوی "پس چہ باید کرد اے اقوام شرق" کے ساتھ شائع کیا گیا اور اس کے بعد سے یہ دونوں مثنویاں یکجا شائع ہورہی ہیں۔"مسافر" کے معنی "سفر کرنے والا" کے ہیں اور یہاں اس سے مراد آزاد اسلامی ملک افغانستان کا سفر کرنے والے مسافر  علامہ اقبال ہیں جو ہمیں حریت، خودداری اور قوم کی پاسبانی کا سبق دے رہے ہیں۔علامہ اقبال اس مثنوی میں ایک ایسے مسافر کے طور پر سامنے آتے ہیں کہ جو خود مسافر ہے مگر قوم کی رہبری اور رہنمائی کا فریضہ انجام دے رہا ہے۔وہ اپنے سفر کے حالات و واقعات اور مقامات کی تفصیل بیان کرنے کی بجائے مختلف مقامات اور واقعات کو اپنے فلسفہ زندگی سے مربوط کرتے ہیں۔وہ ہر مقام، ہر موقعے اور ہر واقعے سے،مسلمان کے لیے،خودی کی بیداری، ملت سے رابطے کی استواری،ملت کی تشکیلِ نو اور عظمت رفتہ کی بازیافت کا سبق کشید کرتے ہیں۔اس طرح یہ شاہکار اور معرکةا لآرا  مثنوی،اپنے قاری کے لیے خودی اور اس کی بے پناہ صلاحیتوں کی دریافت اور ملت کی آزادی اور فلاح و بقا کے جوش و جذبے کی بیداری کا ذریعہ بن جاتی ہے۔
پس چہ باید کرد ای اقوام شرق 
پس چہ باید کرد اے اقوام شرق" علامہ اقبال کا ساتواں فارسی مجموعہ کلام ہے جو 1936 میں شائع ہوا۔اس مجموعے میں علامہ اقبال کی دو مثنویاں،ایک تو یہی پس چہ باید کرد اے اقوام شرق اور دوسری "مسافر"شامل ہیں۔ "شرق" یعنی مشرق علامہ اقبال کی ایک خاص اصطلاح ہے جسے وہ اپنے کلام میں اسلام یا امت مسلمہ کے لیے استعمال کرتے ہیں۔اس طرح اس عنوان کے معنی یہ ہوئے کہ "تو اے اقوام مشرق (امت مسلمہ)اب کیا کرنا چاہیے"۔ یہ کتاب علامہ اقبال کی آخری عمر کے پختہ افکار اور گہری بصیرت کی حامل ہے۔ اس میں علامہ نے امت مسلمہ کو یورپ کی مکاری اور  ظلم و استبداد کے مقابلے اور غلامی کی زنجیروں کو کاٹ کر روشن مستقبل حاصل کرنے کے طریقوں سے آگاہ کیا ہے اور اس کے مسائل کا حل بتایا ہے۔
پس چہ باید کرد اے اقوام شرق
باز روشن می شود ایام شرق
ترجمہ: "تو اے اقوام شرق اب کیا کرنا چاہیے؟  تاکہ مشرق کے ایام پھر سے روشن ہو جائیں"۔ 
اس کتاب میں علامہ اقبال کے تمام افکار و نظریات کا خلاصہ آ گیا ہے اور یہ ایسی روشن تعلیمات سے مالامال ہے کہ جن پر عمل پیرا ہوکر آج بھی مسلمان ذلت کی پستیوں سے نکل کر ایک روشن مستقبل کی بلندیوں کو چھو سکتے ہیں۔
ارمغان حجاز 
''ارمغان حجاز''علامہ اقبال کا آخری شعری مجموعہ ہے جو ان کی زندگی میں ترتیب پا چکا تھا مگر ان کی وفات کے بعد نومبر 1938 میں شائع ہوا۔یہ اردو اور فارسی دونوں زبانوں کے کلام پر مشتمل ہے۔"ارمغان" تحفے کو کہتے ہیں جبکہ "حجاز" عرب کے اس حصے کا نام ہے جس میں مکہ معظمہ اور مدینہ منورہ واقع ہیں،جہاں سے حضورۖ کے نور نبوت نے اللہ تعالیٰ کے آخری دین،اسلام سے سارے عالم کو روشن کیا۔اس طرح "ارمغان حجاز" کا مطلب ہوا "حجاز کا تحفہ" یعنی اس اسلام (قرآن اور اسوہ حسنہ)کا تحفہ جو اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہمارے آقا و مولا حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے امت کو دیا تھا۔اقبال بانگ درا میں خود فرماتے ہیں کہ :

عجمی خم ہے تو کیا مے تو حجازی ہے مری
نغمہ ہندی ہے تو کیا لے تو حجازی ہے مری 
یعنی میری شاعری اگر اردو اور فارسی زبان میں ہے تو اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا میں پیغام تو حجازی یعنی اسلام کا دے رہا ہوں۔ایک اور جگہ فرماتے ہیں
گر دلم آئینہ بے جوہر است
ور بحرفم غیر قرآں مضمر است 
روز محشر خوار و رسوا کن مرا 
بے نصیب از بوسہ پاکن مرا 
یعنی اگر میں نے اپنے کلام میں قرآن کے سوا کچھ اور پیش کیا ہو تو اے میرے آقا ۖ قیامت کے دن مجھے رسوا ہونے دیجیے اور اپنے پا مبارک کے بوسے سے بے نصیب رکھیے۔ 
ارمغان حجاز"قوم کے لیے حکیم الامت کا آخری تحفہ ہے جو اسلام کے حقیقی پیغام،حجاز کے پرفضا نغموں اور ہمارے ہادی و رہنما حضورۖ کی بے پایاں محبت کے سوز و گداز سے مملو ہے۔
آیئے اس تحفے کی قدر کریں اسے حرزِجاں بنائیں اور اس کے اس پیغام کو عام کریں کہ :
دیں ہاتھ سے دے کر اگر آزاد ہو ملت 
ہے ایسی تجارت میں مسلماں کا خسارا ||


مضمون نگار ایک معروف ماہر تعلیم ہیں۔ اقبالیات اور پاکستانیات سے متعلق امور میں دلچسپی رکھتے ہیں۔
[email protected]


 

پروفیسر ڈاکٹر قمر اقبال

Advertisements