شعر و ادب

ہنگو کا کمسِن شہید

میرے معصوم سپاہی‘ مِرے کم عُمر شہید
سوچتا ہوں تِری تصویر کَشی کیسے کروں!
تُجھ کو تعبیر کروں شیر کی بے جِگری سے؟
یا کہ شاہیں کی تُجھے تیز نگاہی کہہ دوں
کیسے کہہ دوں!
کیسے کر د وں یہ مراتب میں تنزّل تیرے؟
شیر لڑتا ہے فقَط بھوک مِٹانے کے لئے
آنکھ شاہیں کی زمیں بوس رہے ہر لحظہ 
سوچتا ہوں !
تُجھے افلاک کا سُورج کہہ دوں!
نور کا‘ زیست کا‘ ایثار کا مخرج کہہ دوں!
جس کی کِرنوں سے اندھیروں کو ضیا 60 مِلتی ہے
سبزہ و گُل کو‘ بہاروں کو بقا مِلتی ہے
جس کی حِدّت سے لہو گر م رگِ جاں میں رہے
جَلوہ افروز جو شہروں میں‘ بیاباں میں رہے
وہ جو‘ دُنیا کے اندھیروں کو مِٹانے کے لئے
کُچھ بھی معلو م نہیں‘ سوختہ جاں ہے کب سے
کیسے خُورشید کو ہمد وش کروں تُجھ سے مگر؟
اُس کو صدیوں سے سرِ شام قضا آتی ہے
اُس کے چہرے پہ زمانوں سے گہن لگتا ہے
تن بہ تقدیر ہے!
پا بہ زنجیر ہے سُورج‘ اُسے معلوم نہیں! 
سچ کی راہوں پہ ہے کِس طور سے چلتے جانا
کیسے باطِل کے ا ندھیروں سے ہے لڑتے جانا
کیسے کہہ دوں تُجھے سورج مِرے کم عُمر شہید!!
سوچتا ہوں ‘تُجھے صُبح کا ستارہ کہہ دوں
چودھویں رات کا پُر نُو ر نظّارہ کہہ دوں
کہکشا و60ں کا سُبک گام مسافر کہہ دوں
عالمِ ہست کی ہر شے کا تفاخر کہہ دوں
کیسے کہہ دوں؟
میں ہوں انگشت بدنداں کہ کیسے کہہ دوں!
استعارے تِری توصیف نہیں کر پاتے
لفظ کمتر ہیں بیاں تُجھ کو کریں تو کیسے؟
تُو تو بس تُو ہے؛ شہیدِرَہِ عِرفان ہے تُو
پا بہ نور ایک تجَلّی ہے؛ خُود افشان ہے تُو
رشک کرتا ہے فَلَک آج شہادت پہ تِری
ناز کرتی ہے زمیں آج شجاعت پہ تِری
کہکشاں‘ انجم و خُورشید و قَمر تُجھ پہ فِدا
دورِ گردوں کی ہر اِک شام و سحر تُجھ پہ فِدا
سوچتا ہو ں تِری توصیف بیاں کیسے کروں
لفظ اُتھلے ہیں‘ اِنہیں رطب لِساں کیسے کروں
میرے معصوم سپاہی ‘ مِر ے کم عُمر شہید 
سوچتا ہوں تِری تصویر کشی کیسے کروں!

یہ تحریر 25مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP