متفرقات

پیغام

لیفٹیننٹ راجہ خاور شہاب کی شہادت پر لکھی گئی ایک نظم

راجہ محمد سلیم عادل

2مارچ 2017کو لیفٹیننٹ راجہ خاور شہاب نے جانی خیل بنوں میں شدت پسندوں سے لڑتے ہوئے جام شہادت نوش فرمایا۔ اس مایہ ناز سپوت کا تعلق کھوئی رٹہ موضع دھڑہ کے راجپوت خاندان سے تھا۔ شہادت کے وقت شہید کی عمر صرف 23برس تھی۔

بہار آنے کو ہے 
خزاں کا طلسم
ٹوٹنے کو ہے
تہہِ خاک ہے ابھی لیکن
فصلِ بہار پھوٹنے کو ہے
تم درندۂ صفت ہو تو کیا غم
دھرتی کے سینے سے نغمہ
جھرنا بن کر بہتا ہے
ہمیں آواز دیتا ہے
وہ ہم سے اب بھی کہتا ہے
میرے نغمے یہ میرا جلترنگ
وقت کے دھارے پہ رکھا
کب سے ہے
لہو پیتے درندوں سے
میں آشنا پرانا ہوں
انہیں کہہ دو کہ میں تو
وقت کے دھارے پہ رکھا
اِک زمانہ ہوں
اس ارض وطن کی خاطر
جو موت ملی ہے مجھ کو
اس موت کا میں دیوانہ ہوں

یہ تحریر 59مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP