متفرقات

وہ جو راہِ حق کے مسافر ہوئے

میجر طیب عزیز شہید کی اہلیہ محترمہ عائشہ طیب کے قلم سے ہلال کے لئے خصوصی تحریر

طیب شہید کا رتبہ بلند‘ اُن کا مقام اعلیٰ ہے یہی ایک سوچ ہے جو ہمیں حوصلہ دیتی ہے کہ آنسو نہ بہائیں۔ یہی وجہ تھی کہ شہادت پہ نہ کسی کو بین کرنے دیا اور نہ زور سے رونے دیا کہ یہ رتبہ ہر کسی کا مقدر نہیں۔ اسی سوچ نے ہر مشکل گھڑی میں کھڑے رہنے اور ہمت نہ ہارنے کا حوصلہ دیا۔ ہر لمحہ جب اُن کی اشد ضرورت محسوس ہوئی تو اسی جذبے سے دل کی ڈھارس بندھی کہ ہم شہدا ء کے وارث ہیں۔

26ستمبر2008 جمعۃ المبارک اور ماہِ رمضان عام لوگوں کے لئے محض ایک تاریخ ہے جو آئی اور گزر گئی‘ مگرہمارے لئے اس کے معانی بہت کٹھن اور انمٹ ہیں کہ یہ ایسا دن اور ایسی تاریخ ثابت ہوئی جس نے ہمارے زندگی کا رُخ ہی موڑ دیا۔ میرے لئے 26ستمبر عام دن نہیں۔ یہ وہ دن ہے جس دن میرے ہم سفر طیب نے جامِ شہادت نوش کیا۔ ان کی شہادت برحق ہے وہ تو اس عظیم مرتبے پرفائز ہو گئے کہ ہم اُن کی شہادت پررشک کرتے ہیں۔ لیکن آنکھ کا اشک بار ہونا ایک فطری عمل ہے۔ ان کی شہادت بھی ایک حقیقت ہے مگر اس دل کا کیا کیجئے جو مانتا ہی نہیں کہ ہم اس ہستی سے محروم ہوگئے ہیں جو انتہائی شفیق‘ ملنسار اور پیار کرنے والی تھی۔ فاطمہ اورعنائیہ ( وہ بیٹی جو دنیا میں اُن کی شہادت کے بعد آئی) نہیں جانتیں کہ باپ کی شفقت کسے کہتے ہیں اور باپ کیسا ہوتا ہے۔ اُن کے وہم و گمان میں بھی وہ الفت نہ ہوگی جو باپ اپنی بیٹیوں سے کرتے ہیں۔ مگر نہیں ان کا باپ زندہ ہے کہ وہ شہید ہے۔ ہمیں شعور بھلے نہ ہو‘ مگر حق یہی ہے کہ وہ امر ہے۔

ترجمہ: اور جو لوگ اﷲ کی راہ میں مارے جائیں انہیں مردہ نہ کہو بلکہ وہ زندہ ہیں لیکن تمہیں ان کا شعور نہیں۔

(سورۃ البقرہ آیت 154)

طیب عزیز اپنے نام کی تفسیر اور اپنوں کا عزیز اور پیارا تھا اور ہمیشہ رہے گا۔

طیب 12مارچ1977 کو باغ آزاد کشمیر کے ایک فوجی گھرانے میں پیدا ہوئے۔ اُن کے والد کرنل محمد عزیز خان بھی ایک فوجی افسر تھے جو اُن کے بچپن میں ہی وفات پا گئے تھے‘ ہر فوجی گھرانے کی روایت کی طرح اُن کے بڑے (مرحوم) بھائی کی شدید خواہش تھی کہ طیب بھی آرمی آفیسر بنیں۔ طیب نے بھی انتہائی جانفشانی اور محنت سے اُن کی اس آرزو کو پورا کرنے کے لئے دن رات محنت کی اور برن ہال سے اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعدPMA کے لئے منتخب ہو گئے۔پاسنگ آؤٹ کا دن والدہ اور گھر والوں کے لئے باعثِ فخر تھا۔ طیب نے پاس آؤٹ ہونے کے بعد اپنے والد کی پیروی کرتے ہوئے اُن کی یونٹ 10 اے کے رجمنٹ جوائن کی جو اُن ایام میں بجوات سیکٹر میں تعینات تھی۔ اُن دنوں دشمن کے تیور کافی بگڑے ہوئے تھے اور گولہ باری روزانہ کا معمول تھا۔ یوں آغاز سے ہی وہ معرکہ حق و باطل میں حصہ دار بنے اور اپنی یونٹ کے ساتھ دشمن کا مردانہ وار مقابلہ کیا۔

فاطمہ اورعنائیہ ( وہ بیٹی جو دنیا میں اُن کی شہادت کے بعد آئی) نہیں جانتیں کہ باپ کی شفقت کسے کہتے ہیں اور باپ کیسا ہوتا ہے۔ اُن کے وہم و گمان میں بھی وہ الفت نہ ہوگی جو باپ اپنی بیٹیوں سے کرتے ہیں۔ مگر نہیں ان کا باپ زندہ ہے کہ وہ شہید ہے۔ ہمیں شعور بھلے نہ ہو‘ مگر حق یہی ہے کہ وہ امر ہے۔

اپنی عسکری زندگی کے شروع سے ہی طیب انتہائی جاں فشانی سے اپنے فرائضِ منصبی کی ادائیگی میں مصروف رہے۔ 2004 تک اپنی یونٹ کے ساتھ پنوں عاقل میں بھی رہے۔ بعد ازاں 2 سال کی مدت کے لئے یو این مشن کے ساتھ لائبیریا میں تعینات رہے۔ اسی دوران اکتوبر2005 میں جب قیامت خیززلزلہ آیا تو آزاد کشمیر سے تعلق رکھنے کی بناء پر رخصت پر واپس آئے۔ ان دنوں 10 اے کے رجمنٹ ریلیف ورک کا حصہ تھی۔ چنانچہ طیب نے بھی امدادی کارروائیوں میں دن رات ایک کرکے اپنے لوگوں سے تعلق کا حق صحیح معنوں میں ادا کیا جس کا ثبوت اُن کی شہادت پر اُن تمام دور دراز کے رہائشی لوگوں کا اجتماع تھا جو اپنے سپوت کو آخری نذرانہ پیش کرنے اور اُن کا آخری دیدار کرنے کے لئے اُن کا جسدِ خاکی باغ پہنچنے سے پہلے موجود تھے۔

یواین سے واپسی کے بعد2006 میں ان کی پوسٹنگ سکول آف انفنٹری اینڈ ٹیکٹکس کوئٹہ میں بطورِ انسٹرکٹر ہوئی۔ جہاں سے ان کو اکتوبر2007 میں یونٹ کے ساتھ بنوں پوسٹ کیا گیا جو اُن کے فوجی کیریئر کی آخری پوسٹنگ ثابت ہوئی۔ وہیں سے باجوڑ آپریشن کے لئے روانہ ہوئے اور ایسے گئے کہ جامِ شہادت نوش کرکے ہی پلٹے۔ باجوڑ میں لوئی سم وہ مقام ہے جہاں انہوں نے جامِ شہادت نوش کیا۔ اس مقام پر اُن سے منسوب ایک چیک پوسٹ ہے۔ جس دن سے طیب باجوڑ کے لئے بنوں سے روانہ ہوئے اُس دن سے کسی لمحہ قرار نہ تھا۔ ہر رات اُن کی خیریت کے فون کا انتظار اور پھر فون کے بعد چند لمحوں کا قرار اور پھر سارا دن اگلی کال کا انتظار جو بالآخر26 ستمبر2008 بمطابق 25رمضان المبارک کے افطار سے کچھ دیر پہلے اُن کی شہادت کی اطلاع پر اختتام پذیر ہوا۔

طیب شہید کا رتبہ بلند‘ اُن کا مقام اعلیٰ ہے یہی ایک سوچ ہے جو ہمیں حوصلہ دیتی ہے کہ آنسو نہ بہائیں۔ یہی وجہ تھی کہ شہادت پہ نہ کسی کو بین کرنے دیا اور نہ زور سے رونے دیا کہ یہ رتبہ ہر کسی کا مقدر نہیں۔ اسی سوچ نے ہر مشکل گھڑی میں کھڑے رہنے اور ہمت نہ ہارنے کا حوصلہ دیا۔ ہر لمحہ جب اُن کی اشد ضرورت محسوس ہوئی تو اسی جذبے سے دل کی ڈھارس بندھی کہ ہم شہدا ء کے وارث ہیں اور یہ رتبہ بھی متقاضی ہے کہ ہم اپنے شہید کی طرح اُن مسائل اور مشکلات کے آگے ڈٹ جائیں جیسے وہ دشمنوں کے آگے سینہ سپر ہوئے۔ طیب کی شہادت کے بعد2010 میں انہیں حکومت کی طرف سے ستارۂ بسالت سے نوازا گیا۔ جو ہم سب کے لئے عزت و وقار کا باعث ہے۔

بیٹے کی یاد میں

میجر خالد شہید کی اہلیہ محترمہ عطیہ خالد کی پشاور کے شہداء کے لئے ایک نظم

دیکھ کے خالی بچپن کا وہ جھولا تیرا

چھو کے ہر ایک ایک کھلونا تیرا

بیتے حسین لمحوں کو یاد کرتی ہے

کہ تیری یاد مجھے سرشار کرتی ہے

گرنا وہ اٹھا کے پہلے قدم کا تیرا

ماں کہہ کر پکارنا وہ ہردم تیرا

ماں تجھے یاد کرتی ہے

تو کہیں سے آ جائے فریاد کرتی ہے

بستہ‘ یونیفارم اور وہ لنچ بکس تیرا

ہر دم دکھائی دیتا ہے مجھے عکس تیرا

انجینئر بن کے خدمت کرنے کا وہ عزم تیرا

مگر چھوڑ کے یوں چلے جانا وہ بزم تیرا

لمحہ لمحہ وہ دن یاد کرتی ہے

توکہیں سے آ جائے یہ فریاد کرتی ہے

رائیگاں نہ جائے خون کا کوئی قطرہ تیرا

عطیۂ خداوندی ہے شہادت کا رتبہ تیرا

قوم کی حیات کہہ کے تجھے یاد کرتی ہے

کہ تیری یاد مجھے سرشار کرتی ہے

ماں تجھے یاد کرتی ہے

تو کہیں سے آ جائے فریاد کرتی ہے

یہ تحریر 86مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP