متفرقات

وزن اور حرارے

مٹاپے کی بنیادی وجہ یہ ہوتی ہے کہ ہم جو غذا کھاتے ہیں اور اس سے جو حرارے بنتے ہیں وہ پوری طرح استعمال نہیں ہوتے۔ یہ غیر استعمال شدہ حرارے جسم میں فاضل چربی کی صورت میں جمع ہو کر وزن بڑھانے کا سبب بنتے ہیں۔ حراروں یا کیلوریز کی صورت ہر شخص کے لئے مختلف نوعیت کی ہوتی ہے۔ طبعی ماہرین مناسب وزن برقرار رکھنے کے لئے کسی بھی شخص کے یومیہ حراروں کے تعین کے لئے مختلف حسابات کی روشنی میں اندازہ لگاتے ہیں۔ اس سلسلے میں متعلقہ فرد کا قد‘ وزن‘ عمر، صنف اور جسمانی سرگرمیوں کی حدود اور پریشان کن صورتیں مثلاً کوئی عارضہ یا جسمانی تکلیف کو بھی پیش نظر رکھا جاتا ہے۔ اگر آپ اندازہ لگانا چاہتے ہیں کہ آپ کے جسم کو یومیہ کتنے حراروں کی ضرورت ہے تو اس کا سب سے آسان طریقہ یہ ہے کہ آپ اپنے وزن (پونڈ میں) کو درجہ ذیل کے مطابق ضرب دیں۔ اگر آپ کسی حد تک مستعد زندگی گزار رہے ہیں یعنی ہلکی پھلکی ورزش ہفتے میں ایک یا دو دن کر لیتے ہیں تو ایسی صورت میں اپنے وزن کو 13.5 سے ضرب دیں۔ اگر آپ درمیانی حد کے اندر مستعدی کے ساتھ زندگی گزار رہے ہیں یعنی معتدل قسم کی ورزش مثلا ہفتے میں 3سے 5دن تیز قدمی میں دلچسپی لیتے ہیں تو آپ کو اپنے مطلوبہ حراروں کو جاننے کے لئے اپنے وزن کو 15.5 سے ضرب دینا ہو گی۔

 

اگر آپ بہت سرگرم زندگی گزار رہے ہیں یعنی ہفتے میں 7دن مشقت والی ورزش یاکھیلوں میں حصہ لیتے ہیں تو اپنے وزن کو 17سے ضرب دیں۔ اگر آپ کی زندگی زیادہ ہی محنت و مشقت سے بھرپور ہے اور انتہائی سرگرم ہے یعنی روزانہ بے انتہا مشقت والی ورزش یا کھیلوں میں حصہ لینے کے علاوہ بھی مشقت والا کام کرتے ہیں تو پھر آپ کو مطلوبہ کیلوریز کے بارے میں آگاہی حاصل کرنے کے لئے اپنے وزن کو 19 سے ضرب دینی چاہئے۔

مثال کے طور پر اگر ایک خاتون کا وزن 145پاؤنڈ ہے تو اسے روزانہ 1950 حراروں کی ضرورت ہو گی جس کی مدد سے وہ اپنا وزن برقرار رکھ سکتی ہے۔ حساب یوں لگایا گیا۔ 1950=145*13.5

اگر آپ اپنا وزن کم کرنا چاہتے ہیں تو اس مقصد کے حصول کے لئے روزانہ اپنی خوراک میں ابتدا میں 250 کیلوریز کم کرنا شروع کر دیں۔


[email protected]

یہ تحریر 94مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP