اداریہ

نیا سال نئے عزم کے ساتھ

نیا سال، نئی اُمنگیں اور نئے خواب لے کر آتا ہے۔  قومیں نئے سال کی منصوبہ بندی کرتی ہیں۔ پاکستانی قوم بھی نئے سال میں اس عزم کے ساتھ داخل ہو رہی ہے کہ وہ قومی وقار، ملکی سلامتی اور سبز ہلالی پرچم ہمیشہ سربلند رکھے گی۔ حال ہی میں اسلامی ممالک کے17 ویں وزرائے خارجہ اجلاس کا انعقاد اسلام آباد میں ہوا۔اجلاس کا انعقاد ایسے وقت ہوا ہے جب جنوبی ایشیا کا ایک اہم ملک افغانستان عالمی سطح پر تنہائی کا شکار ہوتا جارہا ہے اور اُسے انسانی بحران سے بچاناہے۔ دُنیا کی توجہ اس جانب مبذول کرانے کی اشد ضرورت تھی جس میں پاکستان سُرخر و رہا۔پاکستان آئندہ بھی اسی جذبے اور اولو العزمی کے ساتھ اندرونی اور بیرونی دونوں محاذوں پر اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔یہ امر بھی اپنی جگہ حقیقت ہے کہ پاکستان نے قیامِ امن کے لئے اپنے ہزاروں شہریوں کی قربانیاں دی ہیں اور اب اس پاک سرزمین کو دفاعی، جغرافیائی اور معاشی اعتبار سے مضبوط سے مضبوط تر بنانے کا خواہاں ہے کہ بہترین دفاعی صلاحیت اور مستحکم معیشت کسی بھی ریاست کی سالمیت میں اولین کردار ادا کرتے ہیں۔الحمد ﷲ افواج پاکستان اور قوم  ہمیشہ کی طرح باہم مل کر ملک کی سلامتی اور امن کو یقینی بنائے رکھیں گی۔
نئے سال میں پاکستان بطورِ ریاست یہ عزم بھی کئے ہوئے ہے کہ وہ بھارتی غیر قانونی زیرِ قبضہ کشمیر(IIOJK)پر بھارتی تسلط کی نہ صرف بھرپور مذمت کرتا رہے گا بلکہ مسئلہ کشمیر کے اقوامِ متحدہ کی منظور کردہ قراردادوں کے مطابق حل کے لئے بھی عالمی سطح پر اپنا کردار ادا کرنے سے پیچھے نہیں ہٹے گا۔پاکستان الحمدﷲ مثبت سمت کی جانب گامزن ہے۔ دہشتگردی کے خلاف جنگ میں ریاست جس طرح سرخرو ہوئی، اُس کے ثمرات خطے میں بالعموم اور اندرونی سطح پر بالخصوص واضح طور پرنظر آ رہے ہیں۔ قبائلی علاقہ جات ، قبائلی اضلاع  میں تبدیل ہو کر صوبہ خیبر پختونخوا کا حصہ بن چکے ہیں۔ اب سابق قبائلی علاقہ جات کے لوگوں کوبھی صحت ، تعلیم، روزگار اور دیگر وہ تمام سہولیات حاصل ہیں جو دیگر اضلاع کو حاصل ہیں۔ اسی طرح صوبہ بلوچستان جو ترقی میں پیچھے رہ گیا تھا ، وہاں کی ترقی اور خوشحالی کے لئے بھی بہت سے منصوبے پایۂ تکمیل تک پہنچ چکے ہیں اور متعدد منصوبے زیرِ تکمیل ہیں۔ صوبہ بلوچستان میں شاہراہوں کی تعمیر، صحت اور تعلیم کی سہولیات کے ساتھ ساتھ معاشی سرگرمیوں کو فروغ دینے میں بھی وفاق، صوبائی حکومت اور افواج ِپاکستان اہم کردار ادا رکررہی ہیں۔ سی پیک کے تحت بہت سے منصوبے صوبہ بلوچستان کو دیئے گئے ہیں۔ بین الاقوامی معیار کے مطابق تعمیر کی گئی گوادر پورٹ ملکی سطح کے ساتھ ساتھ مقامی علاقوں کی سطح پر بھی معاشی سرگرمیوں کو فروغ دے گی۔
بلاشبہ باہمی اتحادو یگانگت اور یکجہتی وہ عوامل ہیں جو پاکستان کو بین الاقوامی سطح پر ایک اہم اور مضبوط ملک کے طور سے سامنے لانے میں کارفرما ہوں گے۔بانیٔ پاکستان قائداعظم محمدعلی جناح نے 17 اگست1947 کو اپنے خطاب میں کہاتھا ''پاکستان کی سرزمین میں زبردست خزانے چھُپے ہوئے ہیں مگر اس کو ایسا بنانے کے لئے جو ایک مسلمان قوم کے رہنے سہنے کے قابل ہو، ہمیں اپنی قوت اور اپنی محنت کے زبردست ذخیرے کا ایک ایک ذرہ صرف کرنا پڑے گا اور مجھے اُمید ہے کہ تمام لوگ اس کی تعمیر و ترقی میں دل و جان سے حصہ لیں گے۔''  ہمیں بطورِ پاکستانی اورریاست کے ذمہ دارشہریوں کے طور پر ملک کی تعمیر و ترقی میں حصہ ڈالنا ہے اور وطنِ عزیز پاکستان کو ہر میدان میں آگے لے کر جانا ہے۔
  پاکستان ہمیشہ زندہ باد
 

یہ تحریر 48مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP