متفرقات

سِتارہِ سَحر آثار

سپہ سالار کے نام۔نَقدِ وَفا، حَرفِ دُعا

ہماری سِپہ کے سالار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
سِتارہِ سَحر آثار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
صَمِیم عَزم کے کُہسار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
اَے مَردِ زِندہ و بیدار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
اَے اُس گھرانے کے فَرزَند، جِس پہ نازاں ہے 
نِشانِ حیدرِ کَرّارؓ، تُجھ پہ رَحمت ہَو! 
ہمارے طِفل ہوں زخمی، سپاہی یا شہری 
سبھی کے مُونس و غمخوار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
کروڑوں ہم وَطَنوں کے دِلوں کی اَے دھڑکن! 
بہت ہے تجھ سے ہمیں پیار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
تِرے سبب ہے نہایت بُلند ہِمّت فوج
ٍہے اِس کا اَوج پہ معیار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
سِتم شِعار، وطن دشمنوں کی سَرکوبی 
بہت تھا معرکہ دُشوار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
جسے کبھی کوئی باطل گِرا نہیں سکتا
ہے تُو وہ آہنی دیوار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
صَدآفرین کہ تاج اَور تَختِ شاہی سے 
نہیں ہے تجھ کو سَروکار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
تُو اِستعارہِ فَتحِ مُبین کہلائے 
عَدُو سے بَرسَرِ پیکار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
تِرا یہ خواب ہَو پورا کہ رَشک سے دیکھیں 
زمینِ پاک کو اَغیار، تُجھ پہ رَحمت ہَو! 
ہر ایک لمحہ تُو اللہ کی اماں میں رہے 
سلامتی ہو لگاتار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
خصوصی لُطفِ رَسولِ کریمؐ پانے کو 
ہَو آپؐ کا تجھے دیدار، تُجھ پہ رَحمت ہَو
ترے لئے ہے مُروّت کا دِل سے نذرانہ 
کہے ہیں اِس نے جو اَشعار، تُجھ پہ رَحمت ہَو

یہ تحریر 37مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP