شعر و ادب

اقبال

یوں ہاتھ نہیں آتا وہ گوہرِ یک دانہ!
یک رنگی و آزادی اے ہمتِ مردانہ!
یا سنجر و طغرل کا آئینِ جہانگیری
یا مردِ قلندر کے اندازِ ملُوکانہ!
یا حیرت فارابی، یا تاب و تبِ رومی
یا فکرِ حکیمانہ، یا جذبِ کَلیمانہ!
یا عقل کی رُوباہی، یاعشقِ یداللّٰہی
یا حیلۂ افرنگی، یا حملۂ تُرکانہ!
یا شرعِ مسلمانی، یا دیر کی دربانی
یا نعرئہ مستانہ، کعبہ ہو کہ بتخانہ!
مِیری میں، فقیری میں، شاہی میں، غلامی میں
کچھ کام نہیں بنتا بے جرأتِ رندانہ!
اقبال


خودی کے زور سے دنیا پہ چھا جا
مقامِ رنگ و بُو کا راز پا جا
برنگِ بحرِ ساحل آشنا رہ! 
کفِ ساحل سے دامن کھینچتا جا
(اقبال)

یہ تحریر 40مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP