تو سلامت رہے تا قیامت وطن

تحریر: غزالہ یاسمین

6 ستمبرہماری قومی تاریخ کا وہ روشن باب ہے جس میں افواج پاکستان اور قوم کی جرات و بہادری کی ایسی داستانیں رقم ہیں جن سے آج بھی ہم اپنے ولولوں اور جذبوں کو روح تازہ بخشتے ہیں۔ یقیناًاس روزہم نے ثابت کردیا کہ پاکستان کوئی ترنوالہ نہیں اورقوم اپنی آزادی اور خودمختاری کا تحفظ کرنا جانتی ہے۔ ہرسال انہی ولولوں کی روشنی میں دفاع وطن کا اعادہ کرتی ہے۔ اس سال پوری قوم نے ’’ دفاع وطن بقائے وطن ‘‘کے عزم کے ساتھ یہ دن بڑے جوش و خروش سے منایا۔سچ بھی یہی ہے کہ جب جب زندہ قومیں اپنے دفاع کے عزم کو دہراتی ہیں، یاد کرتی ہیں تو اسی میں اس قوم کی بقا کا راز پوشیدہ ہوتا ہے۔قوم نے ملک بھر میں مختلف تقریبات میں روایتی جذبے سے اپنا یہ عزم دہرایا۔ اس سلسلے میں جنرل ہیڈ کوارٹر زراولپنڈی میں منعقد ہونے والی تقریب نقطہ عروج تھی جس نے وطن کے کونے کونے کو’’ دفاع وطن بقائے وطن‘‘ کے لازوال جذبے سے سرشار کردیا۔ تقریب میں شہدا ء اور غازیوں کو بھرپور انداز میں سلام عقیدت پیش کرنے کے ساتھ ساتھ ان کے کارناموں کو اجاگر کیا گیا۔ اس کے علاوہ دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشن ردالفساد سے جو ’’نوید نو‘‘ پیدا ہوئی اس کی اہمیت اور کامیابیوں کو بیان کیا گیا۔شہداء کی شہادت اوران کے اہل خانہ اور لواحقین کے جذبات کے اظہار پر ہر آنکھ پُرنم تھی۔


چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ تقریب کے مہمان خصوصی تھے۔ ان کے خطاب نے حاضرین اور پوری قوم کے جذبوں کوجلا بخش دی۔ انہوں نے شہداء اور غازیوں کی قربانیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ پوری قوم شہدا ء اور ان کے لواحقین کی احسان مندہے۔ ان کے پیاروں کی قربانیوں کی بدولت آج ہم اس مقام پر ہیں جہاں وطن پر چھائے اندھیرے چھٹ رہے ہیں۔اور ایک روشن مستقبل کی کرنیں نمودار ہور ہی ہیں۔شہداء کا خون ہم پر قرض ہے ۔ میں غازیوں کا بھی مشکور ہوں جنہوں نے اپنے جسموں پر تو گہرے زخم کھائے مگر وطن کو توانارکھا۔ یوں آج کا دن تجدید عہد اور تجدید وفا کا بھی ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہماری قومی زندگی بے شک مشکلات کا شکار سہی مگر دفاع وطن ہمار ا قومی امتیاز ہے ۔جب تک ہمارے بزرگوں کا حوصلہ اور ہمارے جوانوں کی جرات برقرار ہے پاکستان کو کوئی بھی نقصان نہیں پہنچا سکتا ۔اس جذبے کا تعلق صرف جنگ سے ہی نہیں بلکہ قومی ترقی کے ہر پہلو سے ہے۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان نے بہت کر لیا ۔اب دنیا ’’ڈو مور‘‘ کرے۔ انہوں نے کہا کہ مسلط جنگ کو ہم منطقی انجام تک پہنچائیں گئے۔عالمی طاقتیں اپنی ناکامیوں کا ذمہ دا ر ہمیں نہ ٹھہرائیں ۔ ہم امریکہ سے برابری کے تعلقات چاہتے ہیں ،امداد نہیں اور افغان جنگ ہم پاکستان میں نہیں لڑ سکتے ۔انہوں نے مزید کہا کہ جہاد صرف ریاست کا حق ہے ۔بھٹکے ہوئے لوگ جہاد نہیں فساد کر رہے ۔انہوں نے کہا کہ قوم کا ہر شہری ردالفساد کا سپاہی ہے ۔فوج قوم کی حمایت کے بغیر کچھ نہیں کر سکتی ۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ہم اپنے ملک کو امن گہوارہ بنا کر دم لیں گئے۔ کیوں کہ آج کا نوجوان ہمار ا حقیقی سرمایہ ہے ۔ہم آنے والی نسلوں کو دہشت گردی سے پاک پاکستان دینا چاہتے ہیں۔


پاک چین دوستی کے حوالے سے چیف آف آرمی سٹاف کا کہنا تھا کہ سی پیک پاک چین دوستی کا مظہر ہے اور خطے کا سرمایہ اور امن کی ضمانت ہے ۔ اس کو مکمل کرنا ایک قومی فریضہ ہے اور افواج پاکستان اس کو پایہ تکمیل تک پہنچانے میں اپنا بھرپور حصہ ڈال رہی ہے۔جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاکستانی میڈیا کو بھی خراج تحسین پیش کیا جس نے دہشت گردوں کا اصل چہرہ قوم کے سامنے بے نقاب کر کے قومی یکجہتی میں کلیدی کردار اد ا کیا ہے ۔کشمیر کے حوالے سے واضع موقف کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کشمیر پاک و ہند کی تقسیم کا نامکمل ایجنڈا ہے ۔ مقبوضہ کشمیرکے عوام پچھلی کئی دہائیوں سے آزادی کی جدوجہد کر رہے ہیں۔اور ہم ان کی اس جدوجہد کی حمایت کرتے ہیں۔


جنرل قمر جاوید باجوہ کے خطاب میں بہت سے پیغامات موجود تھے جنہوں نے قوم کو ہمت اور جرات بخشنے کے ساتھ ساتھ اطمینان بھی بخشا کہ افواج پاکستان ملک کو درپیش ہر خطے سے آگاہ اور ان سے نمٹنے کی بھرپور صلاحیتوں سے لیس ہیں۔ اس موقع پر قومی نغموں نے بھی حاضرین کے لہو کو گرمائے رکھا اور وہ اس شاندار تقریب کے اعلیٰ معیار، ترتیب اور انتظامات کی داد دیئے بغیر نہ رہ سکے۔


تقریب میں پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل ذکا اللہ ، چیف آف ائر سٹاف ائر چیف مارشل سہیل امان ،سابق آرمی چیفس جنرل (ریٹائرڈ) راحیل شریف ، جنرل (ریٹائرڈ) اشفا ق پرویز کیانی کے علاوہ سیاسی قیادت جن میں اسپیکر قومی اسمبلی سردارایازصادق، وزیر دفاع خرم دستگیر ، وزیر خارجہ خواجہ آصف ، اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ، سینٹ میں قائد ایوان راجہ ظفر الحق ، وزیر داخلہ احسن اقبال ، وزیر ماحولیات مشاہد اللہ خان، وزیر مملکت اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب اور مختلف ممالک کے سفیروں اور دفاعی اتاشیوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔آخر میں تقریب میں شامل تمام افراد نے یاد گارشہداء پر پھول نچھاور کرتے ہوئے دفاع وطن کے لیے جانیں قربان کرنے والے شہداء کو خراج تحسین پیش کیا۔

youmedifaewaten.jpg

 
Read 294 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Follow Us On Twitter