مقبوضہ کشمیر میں ناکام انڈین الیکشن ڈرامہ

Published in Hilal Urdu May 2017

تحریر: علی جاوید نقوی

غیرملکی ذرائع ابلاغ نے اس بات کی تصدیق کی کہ پولنگ سٹیشن سنسان پڑے رہے۔کئی پولنگ بوتھز پرایک ووٹ بھی نہ ڈالاگیا۔ٹوٹل ٹرن آؤٹ چھ فیصد سے بھی کم رہایہ گزشتہ کئی دہائیوں سے بھی کم ترسطح ہے۔ دنیا کی کسی بھی جمہوریت میں اتنے کم ٹرن آؤٹ کودرست نہیں سمجھا جاتا اور نہ ہی اتنے کم ووٹ لینے والوں کوعوام کانمائندہ کہاجاسکتا ہے۔

 

مقبوضہ کشمیر میں انڈین الیکشن ڈرامہ بُری طرح فلاپ ہوگیاہے۔ کٹھ پتلی انتظامیہ کی نگرانی میں ان نام نہادضمنی انتخابات میں حصہ لینے والے امیدوار بھی منہ چھپاتے پھررہے ہیں۔ایک رپورٹ کے مطابق بھارتی سرکار نے مقبوضہ وادی میں انتخابی ماحول بنانے کے لئے پیسے دے کر جعلی امیدوارکھڑے کئے،انتخابی مہم چلانے کے لئے بھی انھیں بھاری رقوم فراہم کی گئیں تاکہ غیرملکی میڈیا اورمبصرین کویہ تاثردیا جاسکے کہ مقبوضہ کشمیر میں مکمل امن ہے اورکشمیری انتخابات میں بڑھ چڑھ کرحصہ لے رہے ہیں۔


ضمنی انتخابات کے موقع پربہت سخت انتظامات کئے گئے تھے۔بھارتی فوج نے ڈرادھمکا کرلوگوں کوپولنگ سٹیشنزلانے کی کوشش کی ۔کئی جگہ اعلانات کئے گئے کہ سیکورٹی فورسز چیک کریں گی کس نے ووٹ ڈالااورکس نے نہیں۔لیکن ان سب ہتھکنڈوں کے باوجود الیکشن کاڈرامہ بری طرح فلاپ ہوگیا۔خود بھارتی میڈیا اورتجزیہ نگاروں کوبھی یہ اندازہ ہوگیا ہے کہ مقبوضہ کشمیربھارت کے کنٹرول میں نہیں رہا۔ آٹھ لاکھ بھارتی فوج تمام ترطاقت استعمال کرنے کے باوجود، کشمیریوں کوغلام بنانے میں ناکام ہوگئی ہے ۔مقبوضہ کشمیر میں کوئی ایک شخص بھی ایسا نہیں جوبھارتی غلامی کے لئے تیارہو۔ہرشخص کی زبان پرآزادی کانعرہ ہے۔ بھارتی الیکشن کمیشن بھی کم ترین ٹرن آؤٹ اورعوامی بائیکاٹ سے پریشان ہے ، جس کے بعداننت ناگ میں ہونے والاضمنی الیکشن ملتوی کرکے اب 25مئی کوکرانے کااعلان کیاگیاہے۔

 

1غیرملکی ذرائع ابلاغ نے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ووٹنگ والے دن پولنگ اسٹیشنز سنسان پڑے تھے۔
2ضمنی الیکشن میں حصہ لینے والے امیدواربھی منہ چھپاتے پھررہے ہیں۔
3بوڑھے، نوجوان بیٹوں کی نعشیں اٹھارہے ہیں لیکن ان کے چہروں پرخوف اورمایوسی کی بجائے آزادی کی امید ہے۔
4مسئلہ کشمیر حل کرانے کے لئے بھارت،امریکہ سمیت، تمام ممالک کی پیشکشیں مستردکرچکاہے۔
5عالمی برادری کوطے کرناچاہئے بھارت اقوام متحدہ کی قراردادوں پرعمل نہیں کرتاتواس کے ساتھ کیاسلوک کیا جائے،دوہرا معیارختم ہوناچاہئے۔
6بھارت ایک نام نہاد سیکولرریاست سے انتہاپسندہندوریاست کی طرف بڑھ رہاہے۔
7پیلیٹ گن اتنی ہی خطرناک ہے جتنے کیمیائی ہتھیار۔

بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح نے کہاتھاکہ کشمیر پاکستان کی شہہ رگ ہے۔کوئی اپنی شہہ رگ سے کیسے دستبردار ہوسکتاہے۔آج مقبوضہ کشمیر میں جگہ جگہ پاکستانی پرچم لہرارہے ہیں،کشمیریوں کے دل پاکستان کی محبت سے لبریز ہیں۔ کشمیری عوام نے بھارتی تشدداورخوف وہراس پھیلانے کے باوجود ان نام نہاد ضمنی انتخابات کاحصہ بننے سے انکارکردیاہے۔مقبوضہ کشمیرکے نوجوانوں کامقبول نعرہ ’’پاکستان زندہ باد،کشمیر بنے گاپاکستان‘‘ بن چکا ہے۔ کشمیری نوجوانوں کی محبت کا عالم یہ ہے کہ وہ بھارتی فوجیوں کی گولیوں کی بوچھاڑمیں پاکستانی قومی ترانے کوانتہائی جوش وجذبے کے ساتھ پڑھتے ہیں،پاکستانی کرکٹرز جیسا یونیفارم پہنتے ہیں اورسبزہلالی پرچم اپنے گھروں پرلہراتے ہیں۔بھارتی فوج انھیں مارتی پیٹتی ہے، گرفتارکرتی ہے،اٹھالے جاتی ہے، لیکن وہ باربارپاکستان سے اپنی محبت کااظہارکررہے ہیں۔ایک کشمیری نوجوان نے الجزیرہ ٹی وی کوانٹرویودیتے ہوئے بتایاکہ’’ بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں ہماری ماؤں،بہنوں کی عزت محفوظ نہیں، وہ ہمارے مذہب ’اسلام‘ سے نفرت کرتے ہیں،ہم سے نفرت کرتے ہیں، ہم بھارت کے ساتھ نہیں رہ سکتے‘‘۔بی بی سی سے گفتگوکرتے ہوئے ایک نوجوان نے کہا’’ہمیں الیکشن نہیں آزادی چاہئے‘‘۔کٹھ پتلی سیاست دان بھی اب اس بات کوسمجھ گئے ہیں کشمیری نوجوان الیکشن نہیں،حق خودارادیت چاہتے ہیں۔کشمیری نوجوان مختلف طریقوں سے بھارت سے اپنی نفرت کااظہارکررہے ہیں۔ بھارتی وزیراعظم جس کشمیری نوجوان کودہشت گرد کہتے ہیں وہ برہان وانی شہید ،کشمیری نوجوانوں کاہیرو ہے۔برہان وانی کی شہادت کے بعد سے ہونے و الے احتجاج میں اب تک ایک سوسے زیادہ کشمیری شہید اور سولہ ہزار زخمی ہوچکے ہیں۔ نام نہادانتخابات رکوانے کے لئے احتجاج میں شہیداورزخمی ہونے والوں کی تعداد اس کے علاوہ ہے۔

maqboozakashmirmain.jpg
بھارت میں ہندوقوم پرستی کواُبھارکرووٹ لینے والی بھارتیہ جنتاپارٹی ،مقبوضہ کشمیر میں بے بس نظرآتی ہے۔بی جے پی نے کامیابی کے لئے سرکاری مشینری کے ساتھ ساتھ لالچ اوردھونس سمیت ہرحربہ آزمایا لیکن وہ کشمیر ی حریت پسندوں اورحریت کانفرنس کورام نہ کرسکی ۔الیکشن کے دن بھارتی فوج اور دیگر فورسز کشمیریوں کوزبردستی ووٹ ڈالنے کے لئے مجبور کرتی رہیں ،لیکن کشمیریوں نے انھیں مسترد کردیا۔ کئی جگہ ووٹ ڈالنے کے لئے نوجوانوں کوتشدد کانشانہ بنایاگیا۔ ایسا لگ رہاتھا مقبوضہ کشمیر میں انتخابات نہیں ہورہے بلکہ فوجی مشقیں ہورہی ہیں۔ جگہ جگہ ناکے ،فوج کی گشت اورووٹ ڈالنے کے لئے کشمیریوں سے پوچھ گچھ کی جاتی رہی۔ غیرملکی ذرائع ابلاغ نے اس بات کی تصدیق کی کہ پولنگ سٹیشن سنسان پڑے رہے۔کئی پولنگ بوتھز پرایک ووٹ بھی نہ ڈالاگیا۔ٹوٹل ٹرن آؤٹ چھ فیصد سے بھی کم رہایہ گزشتہ کئی دہائیوں سے بھی کم ترسطح ہے۔ دنیا کی کسی بھی جمہوریت میں اتنے کم ٹرن آؤٹ کودرست نہیں سمجھا جاتا اور نہ ہی اتنے کم ووٹ لینے والوں کوعوام کانمائندہ کہاجاسکتا ہے۔کشمیریوں کی ایک بڑی تعداد ایسی بھی ہے جس نے احتجاجاََ ووٹ بھی نہیں بنوایا ہوا،وہ موجودہ بھارتی انتخابی عمل اورکٹھ پتلی ریاستی حکومت کوتسلیم ہی نہیں کرتے۔وہ جماعتیں اورکٹھ پتلی حکومت جوکل تک ریاستی جبراورتشددمیں برابرکی شریک تھیں ،کشمیری عوام کی ہمدردیاں اورووٹ حاصل کرنے کے لئے اب تشدد اورقتل عام کی مذمت کررہی ہیں۔چند سال پہلے بھارت نے تحریک آزادی کشمیر کوکمزورکرنے کے لئے ایک نیا حربہ استعمال کیا۔ مقبوضہ کشمیر کے بعض علاقوں میں مسلمانوں کی آبادی کم کرنے کے لئے دوسری ریاستوں سے بھارتی شہریوں کولاکرآبادکیاگیا،انھیں خصوصی مراعات دی گئیں۔ لیکن پھربھی بھارت اپنی برتری قائم نہ کرسکا۔
اس وقت ہزاروں کشمیر ی نوجوان بھارتی قید میں ہیں۔ جن کاجرم بھارتی تسلط سے آزادی اورجعلی انتخابات کابائیکاٹ ہے،یہ نوجوان چاہتے ہیں کہ انھیں حق خودارادیت دیا جائے تاکہ وہ اپنے مستقبل کافیصلہ خود کرسکیں۔ خود بھارتی میڈیا اس بات کوتسلیم کرتا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کی اکثریت بھارت سے آزادی چاہتی ہے۔ماضی میں بھارت سے وفادری دکھانے والے فاروق عبداللہ بھی یہ بات کہہ رہے ہیں کہ’’ مقبوضہ کشمیر بھارت کے ہاتھوں سے نکل چکاہے اوربھارت کومقبوضہ کشمیر پرپاکستان سے بات کرنا ہوگی ،ورنہ کچھ نہیں بچے گا‘‘۔سوشل میڈیااور ٹی وی چینلزپروہ فوٹیج بہت دیکھی گئیں جن میں بھارتی فوجوں کودیکھ کرخواتین اوربچے گھروں میں چھپنے کے بجائے آزادی کے نعرے لگاتے ہوئے گلیوں اورسڑکوں پرنکل آئے،جواب میں بھارتی فوجیوں نے ان نہتے کشمیریوں پرپیلیٹ گن کاظالمانہ استعمال کیا۔اس پیلیٹ گن کے بارے میں بی بی سی نے اپنی رپورٹ میں اعتراف کیا کہ ’’پیلٹ گن مارتی نہیں زندہ لاش بنادیتی ہے ‘‘۔ان پیلٹ گنوں کے باعث درجنوں بچے اورنوجوان عمر بھر کے لئے دیکھنے کی صلاحیت سے محروم ہوگئے ہیں۔افسوسناک بات یہ ہے کہ انسانی حقوق کی تنظیموں نے بھارت کے اس ظالمانہ اقدام کے خلاف مؤثرآوازنہیں اٹھائی،میرے خیال میں پیلیٹ گن اتنی ہی خطرناک ہے جتنے کیمیائی ہتھیار۔


بھارت ایک طرف سلامتی کونسل میں مستقل نشست اورویٹو پاور کاامیدوار ہے تو دوسری طرف اس کی حالت یہ ہے کہ وہ اقوام متحدہ کی قراردادوں پرعملدرآمد کرنے کوتیارنہیں۔کیاعالمی برادری کوبھارت پراعتماد کرناچاہئے؟ہرگز نہیں، بھارت عالمی برادری کااعتماد کھوچکا ہے۔اس کارویہ جارحانہ اورعلاقائی بالا دستی کاہے۔وہ نیپال،بھوٹان اوربنگلہ دیش کی طرح دیگرریاستوں کوبھی اپنی سٹیٹس بناناچاہتاہے۔بھارت کایہ جارحانہ رویہ نہ صرف خطے بلکہ پوری دنیا کے لئے بڑاخطرہ ہے۔


یہ وقت ہے کہ امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کوبھی سوچناچاہئے کہ اتنی زیادہ امریکی نوازشات کے باوجود ،بھارت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے امریکہ کی پیشکش بھی قبول کرنے کوتیارنہیں۔ جبکہ پاکستان مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اقوام متحدہ سمیت تمام دوست ممالک کی پیشکش کوقبول کرتارہاہے۔بھارتی رویہ عجیب وغریب ہے۔عالمی برادری مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنی مصالحت کی پیشکش کرتی ہے توبھارت کہتا ہے یہ دوطرفہ مسئلہ پاکستان اوربھارت کے درمیان ہے۔پاکستان مسئلہ کشمیر حل کرنے کاکہتاہے تو بھارت پینترا بدل کرموقف اختیارکرتا ہے کہ یہ کوئی مسئلہ ہی نہیں ہے اوروہ اس پر بات چیت نہیں کرے گا۔ لیکن کیایہ بھارتی چالاکیاں عالمی امن اورجنوبی ایشیاکے لئے تباہ کن نہیں؟عالمی برادری کوخاموشی اختیارکرنے کی بجائے اپنامؤثررول ادا کرناچاہئے۔ جوملک، چاہے وہ بھارت ہویاکوئی اور،اقوام متحدہ کی قراردادوں کوتسلیم نہیں کرتا اس پرپابندیاں عائد کردینی چاہئیں تاکہ دوسرے ممالک کوبھی نصیحت ہو۔ مسئلہ کشمیر یابھارت کے معاملے میں دوہرامعیار ،پوری دنیا کے لئے تباہ کن ثابت ہوگا۔


دنیا اس حقیقت سے آگاہ ہے کہ مقبوضہ کشمیر پربھارتی کنٹرول بھارتی فوجیوں کے جبروتشدد کی وجہ سے ہے۔جس دن بھارت مقبوضہ کشمیر سے اپنی فوجیں واپس بلائے گا،مقبوضہ کشمیر کے عوام اپنافیصلہ سنا دیں گے ۔کشمیریوں کے دل، دلی کے لئے نہیں اسلام آباد کے لئے دھڑکتے ہیں۔

 

سوشل میڈیااور ٹی وی چینلزپروہ فوٹیج بہت دیکھی گئیں جن میں بھارتی فوجوں کودیکھ کرخواتین اوربچے گھروں میں چھپنے کے بجائے آزادی کے نعرے لگاتے ہوئے گلیوں اورسڑکوں پرنکل آئے،جواب میں بھارتی فوجیوں نے ان نہتے کشمیریوں پرپیلیٹ گن کاظالمانہ استعمال کیا۔اس پیلیٹ گن کے بارے میں بی بی سی نے اپنی رپورٹ میں اعتراف کیا کہ ’’پیلٹ گن مارتی نہیں زندہ لاش بنادیتی ہے ‘‘۔ان پیلٹ گنوں کے باعث درجنوں بچے اورنوجوان عمر بھر کے لئے دیکھنے کی صلاحیت سے محروم ہوگئے ہیں۔افسوسناک بات یہ ہے کہ انسانی حقوق کی تنظیموں نے بھارت کے اس ظالمانہ اقدام کے خلاف مؤثرآوازنہیں اٹھائی،میرے خیال میں پیلیٹ گن اتنی ہی خطرناک ہے جتنے کیمیائی ہتھیار۔

بھارتیہ جنتاپارٹی کی فرقہ وارانہ اورقومیت پرمبنی سوچ نے بھی نہ صرف کشمیریوں بلکہ بھارت کی دیگرمذہبی اقلیتوں کویہ سوچنے پرمجبورکردیا ہے کہ بھارت میں ان کامستقبل کیاہے؟مذہبی اقلیتیں عملاً دوسرے درجے کی شہری بن چکی ہیں۔آج بھارت میں آپ کسی مسلمان یاغیرہندوپرالزام لگادیں کہ اس نے گائے ،جسے سرکاری طورپرمقدس جانور قرار دے دیا گیاہے ، ’’بے حرمتی‘‘ کی ہے۔بس انتہاپسند ہندو اورریاست دونوں فورا حرکت میں آجائیں گے۔ اخبارات روزانہ ایسی خبروں سے بھرے ہوتے ہیں ،مسلمان نوجوانوں کوگائے کے معاملے میں کس طرح تشدد کانشانہ بنایاجاتاہے ۔بھارتی لوک سبھا کے بعض اراکین کھلے لفظوں میں کہہ رہے ہیں ’’انسانی جان کی قیمت گائے سے زیادہ نہیں ‘‘۔ بھارت بہت تیزی سے ایک نام نہاد سیکولرریاست سے ہندوریاست کاسفر طے کررہاہے۔جہاں کروڑوں انسانوں کی زندگیاں غیرمحفوظ ہوگئی ہیں۔ہمیں اس خدشے کوبھی مدنظررکھناہوگاکہ ہندووانہ پالیسیوں اورمظالم سے تنگ آ کر روہنگیا مسلمانوں کی طرح، بھارتی مسلمان اورغیرہندوبڑی تعدادمیں پاکستان اوربنگلہ دیش ہجرت کرسکتے ہیں۔حادثاتی طورپروزیراعظم کامنصب سنبھالنے والے کسی شخص سے یہ توقع نہ رکھی جائے کہ وہ جواقدامات کررہاہے اسے اُن کے سائیڈایفیکٹس کااندازہ بھی ہوگا۔
کچھ ہمیں اپنے گریبان میں بھی جھانکنے کی ضرورت ہے،ہم اپنے کشمیری بھائیوں کے لئے کیاکررہے ہیں،سرکاری طورپرکشمیریوں کی شہادت پراخباری ردعمل جاری کردیاجاتاہے اس کے بعد اس وقت تک ایک خاموشی ،جب تک مزید کشمیری نوجوانوں کی شہادت کی خبرنہیں آجاتی۔ہمیں اپنے رویے کوتبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔ہمیں اپنے اندریہ احساس پید اکرنے کی ضرورت ہے کہ ہم کشمیریوں کی امیدوں کامرکز ہیں۔کیاہمیں علم نہیں کشمیر کمیٹی کے چیئرمین ،مسئلہ کشمیر عالمی سطح پراجاگرکرنے کے لئے کیا اقدامات کررہے ہیں۔ سوائے خاموش رہنے کے۔ مجھے یاد ہے جب اُس وقت کی وزیراعظم بے نظیر بھٹو نے بزرگ سیاست دان اوربابائے اپوزیشن نواب زادہ نصراللہ خان کوکشمیر کمیٹی کاچیئرمین بنایاتوانہوں مسئلہ کشمیر کواپنااوڑھنابچھونابنالیا۔کئی ممالک کے دورے کئے،ان کی ہرگفتگو،ہرخطاب اورہرانٹرویو کاآغاز مسئلہ کشمیر کواجاگرکرنے سے ہوتاتھا۔ ان کی بیٹھک کے دروازے کشمیریوں اورکشمیری رہنماؤں کے لئے کھلے رہتے تھے۔
مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اب تک کئی فارمولے اورحل پیش کئے جاچکے ہیں،بہت سے بیک ڈورچینلز اورڈپلومیسی اختیارکی جاچکی ہے۔لیکن ان سب کوششوں کے باوجود مسئلہ کشمیر جوں کا توں اپنی جگہ موجود ہے۔ اس میں سب سے بڑا کردار بھارت کاہے ،جومیں نہ مانوں والی پالیسی پرعمل پیرا ہے۔بہت سے حکمرانوں کادعوی ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کے حل تک پہنچ گئے تھے لیکن پھرکوئی نہ کوئی ایساواقعہ ہوگیا کہ ساری محنت پرپانی پھرگیا۔


بھارت سرکار نے الیکشن کے انعقاد کوکامیاب بنانے کے لئے آل پارٹیز حریت کانفرنس کے رہنماؤں کوجیلوں میں ڈال دیا، سیکڑوں کارکنوں کوگرفتارکرلیا۔ آل پارٹیز حریت کانفرنس کامؤقف واضح ہے ’’نام نہاد انتخابات، حق خود ارادیت کامتبادل کسی صورت نہیں ہوسکتے‘‘۔ ایک طرف بھارتی مراعات اورپیشکشیں ہیں اوردوسری طرف مشکلات ،اذیتیں اورصعوبتیں ہیں۔ کشمیر ی، بھارتی غلامی سے آزادی کے لئے جان ومال کی قربانی دینے کاعزم کرچکے ہیں۔آج بوڑھے کشمیر ی اپنے جوان بیٹوں کی نعشیں اٹھارہے ہیں لیکن ان کے چہروں پرملال اورافسردگی نہیں ایک نئی صبح اوربھارت سے آزادی کی امید ہے۔

مضمون نگار اخبارات اورٹی وی چینلز سے وابستہ رہے ہیں۔آج کل ایک قومی اخبارمیں کالم لکھ رہے ہیں۔قومی اورعالمی سیاست پر آٹھ کتابیں شائع کرچکے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
Read 549 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Follow Us On Twitter