جنوری 2018
شمارہ:01 جلد :55
تحریر: یوسف عالمگیرین
وطن سے محبت کے انداز منفردہوا کرتے ہیں۔ مختلف طبقات اور عوام اپنی دھرتی کے ساتھ اپنے اپنے انداز سے جُڑے ہوئے ہوتے ہیں اور ملکی ترقی و وقار کے لئے سرگرم عمل رہتے ہوئے اپنا کردار ادا کرتے ہیں۔ افواجِ پاکستان ملک کی سرحدوں کی حفاظت کا فریضہ انجام دیتی ہیں تو عوام اُن کے شانہ بشانہ رہتے ہوئے ان کے حوصلے بڑھاتے ہیں۔ اسی طرح جب عوام اور ملک کو اندرونی محاذ پر افواج....Read full article
 
تحریر: جاوید حفیظ
ایک نقطہ نظر یہ بھی ہے کہ افغانستان میں مکمل امن سے وہاں سپر پاور کے عسکری وجود کا جواز ختم ہو جائے گالہٰذا اصل ہدف یہ بھی ہو سکتا ہے کہ تھوڑی بہت بدامنی بھی چلتی رہے مگر غیرملکی افواج کا جانی نقصان نہ ہو۔ بظاہر یہ دونوں متضاد ہدف لگتے ہیں تو پھر افغانستان میں سپر پاور لمبے عرصے تک کیوں رہنا چاہتی ہے۔ بظاہر....Read full article
 
 alt=
تحریر: ڈاکٹرشائستہ تبسّم
امریکی صدر ٹرمپ نے یروشلم کو، جہاں بیت المقدس واقع ہے، اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرلیا اور امریکی سفارت خانہ کی تل ابیب سے یروشلم منتقلی کا بھی اعلان کردیا۔ اس اعلان نے پوری دنیا میں تہلکہ مچا دیا۔ اسرائیل کے سوا شائد ہی کوئی ملک ہو جس نے امریکی صدر اور انتظامیہ کے اس فیصلے کی مخالفت یا مذمت نہ کی ہو۔ یہ فیصلہ نہ ہی کوئی انجانے میں کی گئی غلطی ہے اور نہ ہی جلد بازی کا ....Read full article
 
تحریر: ڈاکٹر رشید احمدخان
کسی ملک کی خارجہ پالیسی پر اُس ملک کے اندرونی حالات کا گہرا اثر ہوتا ہے۔ بلکہ خارجہ پالیسی دراصل اس ملک کے داخلی حالات کا عکس ہوتی ہے۔ مگر اس کے ساتھ یہ بھی حقیقت ہے کہ جغرافیائی محلِ وقوع یا بیرونی سٹریٹجک ماحول بھی ملکوں کے اندرونی سیاسی حالات پر اثر انداز ہوتا ہے۔....Read full article
 
تحریر: خالد محمود رسول
کچھ سوالات بظاہر جتنے سادہ اور آسان ہوتے ہیں ان کے جواب اتنے ہی پیچیدہ اور مشکل ہوتے ہیں۔ ان میں سے ایک سوال یہ بھی ہے کہ پاکستان کا معاشی مستقبل کیا ہے ؟ گلاس آدھا خالی ہے یا آدھا بھرا ہوا ۔ اس موضوع پر سوچتے ہوئے ہمیں یہ مشہور مقولہ بہت یاد آیا۔ کسی رجائیت پسند سے پوچھیں تو وہ اگر مگر کے لوازمات کے ساتھ تان امید پر توڑے گا، ہاں اگر کسی بیزار اور یاسیت پسند سے پوچھ بیٹھیں .....Read full article
 
تحریر: عبد الستار اعوان
اب تک گئو رکھشکوں کے حملوں کے جتنے بھی واقعات پیش آئے ہیں ان کی تحقیقات کا آغاز ایسے نکتے سے کیاجاتا ہے جس سے ملزموں کے بچ نکلنے کی راہیں کھل جاتی ہیں ۔کسی مسلمان کے قتل کو جنونی ہندوئوں کی کارستانی قرار دینے کے بجائے اسے مشتعل ہجوم کے ہاتھوں قتل ....Read full article
 
تحریر: حسینہ معین
میری زندگی کے راستے میں بے شمار موڑ آتے رہے ہیں۔ اچانک ہی راستہ بدل جاتا ہے۔ منظر تبدیل ہوتا ہے۔ کبھی کچھ بہت اچھا لگتا ہے۔ کبھی دل بیٹھ جاتا ہے۔ کچھ دن پہلے اچانک مردان سے ایک فون کال آئی۔ وائس پرنسپل مردان گرلز کیڈٹ کالج سے شمع جاوید بول رہی تھیں۔ انہوں نے اپنا تعارف کرایا تو مجھے یاد آ گیا کہ ہم تین چار سال پہلے ان سے مل چکے تھے۔ جب وہ.....Read full article
 
تحریر: یاسر پیرزادہ
میں ساڑھے تین ہزار سال قبل مصر میں پیدا ہوا۔میں فرعون تھا۔میں ایک عظیم الشان سلطنت کا شہنشاہ تھا ، ہزاروں کنیزیں اور غلام میرے تصرف میں تھے، میرے منہ سے نکلا ہوا ہر حرف خدائی حکم سمجھا جاتا تھا۔ میرے سپہ سالار،فوج کے جوان،امور مملکت کے نگران،وزیر،مشیر،درباری،سرکاری اہلکار سب نے میری ذاتی وفاداری کا حلف اٹھا رکھا تھا۔میرے ایک اشارے پر لوگوں....Read full article
 
تحریر: عزخ
ارے یہ تو شہیدوں کے نا م ہیں جن کے لہو سے آزادی کے دیپ روشن ہیں۔ شمار کرنا شروع کئے تو تعداد 4570 سے تجاوز کر گئی ،ابھی مزید جگہ خالی ہے اور سلسلہ وصل ووفاہنوز جاری۔ جس قوم میں قطار در قطار خون کا نذرانہ پیش کرنے والے موجود ہوں وہ کیوں کر ایک ہجوم رہ سکتی ہے۔ یقینا یہ اعلانِ آمدِ بہارالرجال ہے اس مقدس و محترم....Read full article
 
تحریر: انور شمیم
مملکتِ خداداد پاکستان کا قیام ہمارے آباء واجداد کی بے شمار قربانیوں کا ثمر ہے۔ اسی تسلسل میں استحکام وطن کے لئے ہمارے جانباز ہمیشہ اپنا آج قوم کے کل کے لئے قربان کرتے چلے آئے ہیں۔ دشمن چاہے کھل کر سامنے آئے یا دہشت گردی کے پردے میں چھپ کر وار کرے، افواج پاکستان کے جری جوانوں نے ہر محاذ پر سیسہ پلائی دیوار بن کر اس کے مذموم عزائم کو ہمیشہ ناکام بنایا ہے۔ ....Read full article
 
تحریر: پروفیسر ڈاکٹر معین الدین
ایک ناتواں کمزور اور لاغر بوڑھا 52سال کی قید بامشقت دشمن کے ملک میں گزار کر واپس اپنے ہیڈکوارٹر آتا ہے، وہاں موجود فوجی افسر کو فولادی استقلال کے ساتھ سلیوٹ کرتا ہے۔ اس کی کٹی ہوئی زبان کچھ کہنے سے قاصر ہوتی ہے۔ مگر عقابی چمک دار آنکھیں کہتی ہیں کہ سپاہی مقبول حسین اپنی ڈیوٹی پر حاضر ہے سر! سپاہی مقبول حسین ایک گمشدہ قوم کا سپاہی ہے۔ یہ وہ زمانہ تھا جب پاکستان.....Read full article
 
تحریر: ازکیٰ کاظمی
''ماں میں نے وہاں پرخون کا انگوٹھا لگایا ہوا ہے'' میں جب بھی اسے مزیدگھر رُکنے کو کہتی وہ ہمیشہ یہی کہا کرتا، کیپٹن جنید شہیدکی والدہ کی آنکھوں میں آنسو جبکہ چہرے پر ضبط کی طمانیت تھی ۔ وہ بات کرتے کرتے باربار اپنی آنکھوں کو جھپکتیں کہ کہیں ضبط نہ ٹوٹ جائے۔ تبھی مجھے یہ محسوس ہوا کہ وطن سے محبت کا جذبہ کسی طبیب یا مفکر کے مشوروں یا مصلحتوں سے نہیں بلکہ مائوں کے شِیر.....Read full article
 
تحریر: محمد امجد چوہدری
سیالکوٹ کینٹ میں خصوصی بچوں کی تعلیم و تربیت اور بحالی میں پیش پیش ایسا ادارہ جس کے طالب علموں نے قومی اور بین الاقوامی سطح پر پاکستان کا وقار اور پرچم بلند کیا

انسان ہونا سب سے بڑی نعمت ہے اور جو جسمانی و ذہنی لحاظ سے نارمل ہے اسے اللہ تعالیٰ کا بے حد شکر گزار ہونا چاہئے۔ ہمارے اردگرد ایسے انسان بھی بستے ہیں جو ''عام'' نہیں ہوتے.....Read full article

 
رپورٹ: میجر صبور احمد
پاک آرمی میوزیم راولپنڈی اپنی شانداروجاذبِ نظر عمارت کے ساتھ جنر ل ہیڈ کوارٹرزکے قریب واقع ہے۔ یہ ہمار ے قیمتی عسکری ورثے اورتاریخ کا عکاس ہے۔ اس کا قیام 1961میں عمل میں لایا گیا جس کا بنیادی مقصد پاک فوج کے عسکری ورثے کا تحفظ کرنا تھا۔ تاہم وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ ضرورت محسوس کی گئی کہ میوزیم کو منظم تاریخی ترتیب میں پیش کیاجائے تا کہ یہ سیاحوں کے لئے مزید....Read full article

تحریر: لیفٹیننٹ کرنل ضیاء شہزاد
صاحبو! ہم تو لگی لپٹی رکھے بنا کہے دیتے ہیں کہ دنیا کا لذیذ ترین کھانابھی لنگر کے پکوان کے سامنے پانی بھرتا ہے۔ آپ سوچ رہے ہوں گے کہ یہ کوئی مرغ مسلم سے مزیّن کھانا ہو گا۔ نہیں حضور ایسا بالکل بھی نہیں بلکہ یہ تو بسا اوقات تندوری روٹی کے ساتھ تڑکے والی دال پر ہی مشتمل ہوتا ہے۔ لنگر کی اس دال کا مزہ فوجی کو ایسا اسیر کر کے چھوڑتا ہے کہ پھر اسے چاہتے ہوئے بھی ........Read full article
 
تحریر: افتخارمجاز
قیام پاکستان کا مقصد محض ایک الگ تھلگ خطہ ارض کا حصول نہیں تھا بلکہ ایسی نظریاتی مملکت کو وجود میں لانا تھا جہاں کے رہنے والے نہ صرف اپنے عقائد و نظریات اور مذہب کے مطابق اپنی ترقی و خوشحالی کے خواب دیکھ سکیں بلکہ ان خوابوں کی عملی تعبیر بھی پائیں۔ یہی وہ نصب العین تھا جس کے لئے قوم نے لاکھوں جانوں اور لاتعداد عصمتوں کی قربانیاں دی تھیں مگر ہماری بدقسمتی کہ قیام پاکستان.....Read full article
 
تحریر: ڈاکٹر سیدہ صدف اکبر
اچھی اور صحت مند زندگی صرف اچھا کھانے پینے کا نام نہیں ہے بلکہ اس میں اچھی اور مثبت دماغی صحت، ایک صحت مند شخصیت اور ایک صحت مند طرز زندگی بھی شامل ہے جس میں اپنی صحت کا خیال رکھتے ہوئے مختلف بیماریوں سے تحفظ حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ اس میں صفائی، متوازن خوراک، طرز زندگی، .....Read full article
 
تحریر: انوار ایوب راجہ
''کرامت حسین کو یونیورسٹی میں سب کیری کہتے تھے اور وہ ان چند ایک نوجوانوں میں سے تھا جو آئی ڈینٹٹی کرائسس کا شکار تھے۔ کرامت عرف کیری اچھا طالب علم تھا مگر بہت کچے ذہن کا تھا۔ وہ اپنی برطانوی شناخت، اپنی پاکستانی شناخت اور اپنے مذہبی عقائد کے درمیان ایک سینڈویچ تھا اور یہی اس کا المیہ تھا۔'' ولی بھائی خاموش ہوئے تو میں نے پوچھا ''اس کیری کا ہم سے کیا تعلق ؟....Read full article
 
تحریر: مونا خان
ترکی استنبول کے مختصر دورے میں ہم نے بہت سی چیزیں نوٹس کیں گو کہ وقت کم تھا اور مقابلہ سخت ۔۔۔ لیکن پھر بھی کچھ نہ کچھ دیکھ ہی لیا ہم نے بھی۔ اسلامی تعاون تنظیم کے ہنگامی غیر معمولی اجلاس میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے جانے کی تیاری کی تو ہم نے بھی بوریا بستر باندھ لیا کہ بھیا ہم بھی ساتھ جائیں گے کہ آخر دیکھیں تو مسلم امہ ٹرمپ پر کیسے دبائو ڈالے گی۔لیکن ٹرمپ بھی نا۔ مجال ہے....Read full article
Read 232 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Follow Us On Twitter