دو ہزار سولہ - نوجوانانِ پاکستان

تحریر : محمود شام

یہ تو پوری دُنیا جانتی ہے کہ پاکستان ایک نوجوان ملک ہے۔
ایک ایٹمی طاقت ہے۔
اس کی آبادی کا 60 فی صد 15 سے 35 سال کی عمر کے پاکستانیوں پر مشتمل ہے۔
بہت کم ملکوں کو یہ توانائی، طاقت اور جوانی میسر ہے۔
اللہ تعالیٰ کی اس نعمت پر ہم پاکستانی جتنا بھی شکر کریں، کم ہے۔


قوموں کی زندگی میں ساٹھ ستر سال کچھ نہیں ہوتے۔ قوم بننے میں صدیاں لگ جاتی ہیں۔ قدرت نے ہمیں بے حساب خزانے عطا کئے ہیں۔ نوجوان آبادی تو اس میں سر فہرست ہے۔ پہاڑوں، ریگ زاروں اور میدانوں میں چھپے تیل، تانبے، سونے، گیس اور قیمتی پتھر انمول ذخیرے ہیں۔ ان معدنیات کو برآمد کرنے کے لئے بھی نوجوانوں کی ضرورت ہوتی ہے۔ جوان ذہن، جوان جسم، جاں دل سوز۔


آج ہمارے مخاطب ہمارے یہی بیٹے بیٹیاں، پوتے پوتیاں، نواسے نواسیاں ہیں جنہیں ہم اپنا مستقبل کہتے ہیں، جنہیں اب تک ہم نے وہ پُر سکون، محفوظ، پُرامن اور خیال افروز معاشرہ نہیں دیا۔ جس کے وہ اکیسویں صدی میں حقدار ہیں۔ ہم نے انہیں سفر کے وہ ذرائع اور وسائل نہیں دیئے جو ان کے ہم عمر شہریوں کو امریکہ، یورپ، چین اور دوسرے علاقوں میں میسر ہیں جن کا مشاہدہ وہ اس وقت کرتے ہیں جب بیرونِ ملک جاتے ہیں یا وہ فلموں میں، ٹی وی پر، انٹرنیٹ کے ذریعے دیکھتے ہیں۔ ہم ان کے قصور وار ہیں۔ وہ ہم سے جواب طلب کرسکتے ہیں۔ لیکن وہ ہمارا اثاثہ ہیں، ہمارا سرمایہ ہیں، ہمارا روشن مستقبل ہیں۔ ہمیں اُمید نہیں یقین ہے کہ وہ جب عملی زندگی میں قدم رکھیں گے، تو ان کے ذہن جدید علوم سے آراستہ ہوں گے۔ اپنی تعلیم، انٹرنیٹ، ٹی وی چینلوں کے ذریعے وہ درپیش چیلنجوں کے مقابلے کی تربیت حاصل کرچکے ہوں گے۔ وہ مسائل کی شناخت بھی کرچکے ہوں گے۔ ان کے حل کے راستے بھی ان کے سامنے ہوں گے۔ حالات سے پنجہ آزما ہونے کے لئے ہماری یہ نسل ہم سے بہتر ہوگی۔


ہمیں اپنی کوتاہیوں پر شرمندہ بھی ہونا چاہئے، اپنے نوجوانوں سے معذرت بھی کرنی چاہئے۔ ہم ملک کو زیادہ آگے کیوں نہیں بڑھا سکے۔ ہماری گزشتہ نسلوں نے ہمیں ورثے میں بہت کچھ دیا ہے، ہمیں غلط اور صحیح کی تفریق بھی بتائی تھی، یہ بھی سکھایا تھا کہ ترقی کی منزل کو کون سے راستے جاتے ہیں۔


بیسویں صدی کے آغاز میں کیا ہمیں یہ بانگ درا نہیں سنائی دی تھی؟ اس وقت کے فلسفی، شاعر اور دل درد مند رکھنے والے اقبالؔ نے کیا ہمیں خبردار نہیں کیا تھا؟
کبھی اے نوجواں مسلم! تدبّر بھی کیا تونے
وہ کیا گردوں تھا تو جس کا ہے اک ٹوٹا ہوا تارا
تجھے اس قوم نے پالا ہے آغوش محبت میں
کچل ڈالا تھا جس نے پاؤں میں تاج سرِ دارا


اقبالؔ ہماری نسل کو براہِ راست بھی مخاطب کرتے تھے۔ بہت سے آزادی کے متوالے، سر فروش، بھی اقبالؔ کا یہ درد ہم تک پہنچاتے تھے۔
تمدّن آفریں، خلّاقِ آئینِ جہاں داری
وہ صحرائے عرب یعنی شتر بانوں کا گہوارا
غرض میں کیا کہوں تجھ سے کہ وہ صحرا نشیں کیا تھے
جہاں گیر و جہاں دار و جہاں بان و جہاں آرا


ان دو مصرعوں میں کتنی صدیاں سمودی گئی ہیں۔ خلفائے راشدین، بنی اُمیہ، بنو عباسیہ، عثمانیہ، سب کی تگ و دو، بصیرت، سفارت، متانت اس ایک مصرع میں بیان کردی گئی ہے۔ غور کیجئے، یہ لفاظی نہیں ہے، جذباتیت نہیں

ہے، حقیقت ہے، تاریخ ہے، جہاں گیر، جہاں دار، جہاں بان، جہاں آراء۔ کیا ہمیں اب ضرورت نہیں ہے کہ سیکھیں جہاں داری کیا ہے؟ جہاں دار کون ہوتا ہے؟ جہاں بانی کیسے ہوتی ہے؟ جہان آرائی کی حدیں کہاں تک ہیں؟!!!
اقبالؔ ہمیں جھنجھوڑتا ہے۔ ہمارے دل اور ذہن پر دستک دیتا ہے۔
گنوادی ہم نے جو اسلاف سے میراث پائی تھی
ثریا سے زمیں پر آسماں نے ہم کو دے مارا
ہماری نسل نے ان مصرعوں میں گونجتے سناٹوں کو محسوس کرنے کی کوشش ہی نہیں کی۔
حکومت کا تو کیا رونا کہ وہ اک عارضی شے تھی
نہیں دُنیا کے آئینِ مسلّم سے کوئی چارا
مگر وہ علم کے موتی کتابیں اپنے آباکی
جو دیکھیں ان کو یورپ میں تو دل ہوتا ہے سی پارا


ہمیں تو بانئ پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح بھی احساس دلاتے رہے، ہماری توانائی کا‘ فیصلہ سازی میں ہماری اہمیت کا، نئی مملکت خدادادِ پاکستان کو ترقی یافتہ اقوامِ عالم کی صفوں میں لے جانے کی ذمہ داریوں کا۔
ذرا غور سے سنیں۔ 12 اپریل 1948ء کو وہ پشاور میں اسلامیہ کالج کے طلبہ سے خطاب کرتے ہوئے کتنی اہم باتیں کہہ رہے ہیں۔ منزل کی طرف جانے والے اصل راستے دکھارہے ہیں۔ پاکستان بننے کے صرف آٹھ ماہ بعد، اپنی رحلت سے چھ ماہ پہلے۔


’’ اس موقع پر فطری طور پر جو خیال میرے ذہن میں چھایا ہوا ہے، وہ تحریکِ پاکستان کے دوران طالب علم برادری کی طرف سے ملنے والی مدد ہے۔ خاص طور پر اس صوبے سے ( یعنی کے پی کے۔ اس وقت شمال مغربی سرحدی صوبہ)۔ میں اس صوبے کے عوام کے اس بے مثال اور بر وقت صحیح فیصلے کی اہمیت نہیں بھول سکتا، جو انہوں نے گزشتہ برس ریفرنڈم کے ذریعے پاکستان میں شمولیت کے لئے دیا تھا، اس میں بھی طلبہ کا ہی زیادہ حصّہ تھا۔ مجھے اس حقیقت پر فخر ہے کہ اس صوبے کے عوام کبھی بھی، کسی طرح بھی، پاکستان کے حصول اور آزادی کی جدوجہد میں پیچھے نہیں رہے۔
اب جب ہم نے اپنی قومی منزل حاصل کرلی ہے۔ آپ یقیناًتوقع کررہے ہوں گے کہ میں آپ کو بتاؤں، نصیحت کروں کہ اب ہمارے سامنے اس نئی مملکت کی تعمیر کا انتہائی مشکل اور اہم چیلنج ہے۔ ہمیں اس کو دُنیا کے چند عظیم ترین ملکوں میں سے ایک بنانا ہے۔‘‘


قائدِ اعظم خطاب تو پشاور میں طلبہ سے کررہے تھے لیکن ان کی مخاطب مشرقی اور مغربی پاکستان دونوں بازوؤں میں نوجوان برادری تھی۔ وہ قیامِ پاکستان میں ان کی جدو جہد پر بار بار نوجوانوں کا شکریہ بھی ادا کررہے تھے۔ اب وہ چاہتے تھے کہ اس جذبے سے وہ استحکام پاکستان کے لئے بھی اپنی توانائیاں صرف کریں۔


’’ کیا میں کہہ سکتا ہوں کہ آپ نے اپنا کردار انتہائی شان سے ادا کیا۔ اب جب آپ نے اپنا مقصد حاصل کرلیا ہے۔ اب حکومت آپ کی ہے، ملک آپ کا ہے، جہاں آپ ایک آزاد شہری کی حیثیت سے زندگی گزار سکتے ہیں۔‘‘


آگے دیکھئے۔ یہ نکتہ بہت ہی اہم ہے۔
’’ اب ملک کے سیاسی، سماجی اور اقتصادی مسائل کے لئے آپ کی ذمہ داریاں اور نقطۂ نظر تبدیل ہوجانا چاہئے۔ اب وقت کا تقاضا یہ ہے اور یہ مملکت آپ سے توقع رکھتی ہے کہ اب نظم و ضبط کا معقول احساس پیدا کریں۔ آپ کا کردار قابلِ رشک ہو۔ معاملات میں پہل آپ کا شعار ہو۔ اور تعلیمی پس منظر انتہائی ٹھوس۔ ‘‘


غور کیجئے! 67سال پہلے بانئ پاکستان بر صغیر کے بے مثل قائد اس وقت کے نوجوانوں کو کیا سمجھارہے ہیں۔ کن غلط فہمیوں کی نشاندہی کررہے ہیں جو آ ج کے رویوں پر بھی صادق آتی ہے۔
’’ میں آپ کو خبردار کرنا چاہتا ہوں کہ آپ کے اقدامات، نا پُختہ اطلاعات، نعروں یا لفاظی پر مبنی نہیں ہونے چاہئیں۔ انہیں دل پر نہ لیں، طوطے کی طرح نہ رٹیں۔ آپ کی درسگاہ آپ کو جو تربیت دیتی ہے، اس کا فائدہ اٹھائیں۔ اپنے آپ کو آنے والی نسلوں کے لیڈر بننے کے لئے تیار کریں۔ یہ غلط خیال دل سے نکال دیں کہ طلبہ کو کوئی نہیں سمجھا سکتا۔ کوئی نئی بات نہیں بتا سکتا کیونکہ وہ پہلے سے بہت کچھ جانتے ہیں، یہ اندازِ فکر بہت نقصان دہ ہے۔‘‘


نوجوانوں کو ان کی اہمیت سے آگاہ کرتے ہوئے قائدِ اعظم نے فرمایا۔
’’ آپ کو اندازہ ہونا چاہئے کہ آپ کے لئے نئے شعبے، نئے محکمے اور نئے آفاق انتظار کررہے ہیں، نئے مواقع دستیاب ہیں جہاں لامحدود امکانات ہیں۔ آپ کو اپنی توجہ سائنس،کمرشل بینکنگ، انشورنس، صنعت اور ٹیکنیکل ایجوکیشن پر مرکوز کرنی چاہئے۔‘‘


کون کہہ سکتا ہے کہ ہماری نسل کو حقیقی مسائل سے آگاہ نہیں کیا گیا تھا۔ ہماری غلطیوں اور خامیوں کی نشاندہی نہیں کی گئی تھی۔ قائدِ اعظم، قائدِ ملّت اور دوسرے اکابرین نے ہمیں ملک کو درپیش چیلنجوں کا شدت سے احساس دلایا تھا، راستے بھی سُجھائے تھے۔


میں اپنی نسل اور اپنے ہم عصروں کی طرف سے آج کے نوجوانوں سے معذرت کرتے ہوئے یہ عرض کرنا چاہوں گا کہ آپ انتہائی خوش قسمت ہیں کہ آپ پاکستان میں پیدا ہوئے ہیں، پاکستان میں رہتے ہیں، اس عظیم مملکت کے شہری ہیں، اس حسین، خوبصورت اور فطرت کے خزانوں سے مالا مال وطن کے بیٹے بیٹیاں ہیں۔ مایوس ہونے کی کوئی ضرورت نہیں ہے، نا اُمیدی کا کوئی جواز نہیں ہے، اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو انتہائی اہم جغرافیائی حیثیت سے نوازا ہے۔ کبھی تدبّر کریں، غور کریں کہ مشرقِ وسطیٰ سے مشرقِ بعید جانے والوں کو پاکستان کے دروازے سے گزرنا پڑتا ہے، ایشیا سے یورپ جانے کے لئے بھی یہی راستہ ہے۔ چین کیوں قراقرم سے گوادر تک اقتصادی راہداری تعمیر کررہا ہے۔ یہ اس کی ضرورت بھی ہے۔ لیکن اس سے فائدہ تو ہم پاکستانیوں کو ہوگا۔ کئی ہزار کلومیٹر پٹی پر کتنے ہوٹل کھلیں گے۔ کتنے کارخانے تعمیر ہوں گے۔ کتنے پاکستانیوں کو روزگار ملے گا۔
کیا آپ اس کے لئے تیار ہیں۔ کیا آپ نے چینی زبان سیکھ لی ہے۔


اس راہداری کی تعمیر کے دوران جن شعبوں میں مہارت اور تربیت درکار ہوگی، قائدِ اعظم نے 67 برس پہلے ان کی واضح نشاندہی کی تھی۔ کیا آپ نے کبھی غور کیا۔ یہ جاننے کی کوشش کی کہ دُنیا میں کئی ملکوں میں عمر رسیدہ افراد کی تعداد بڑھ رہی ہے۔ امریکہ، کینیڈا، برطانیہ، بیلجیم، فرانس، جرمنی، جاپان میں 70 برس سے زیادہ عمر کے مرد اور خواتین اکثریت میں ہیں۔ وہ اگر چہ صحت مند ہیں، بہت سے کام اس بڑھاپے میں بھی کرلیتے ہیں لیکن پھر بھی روزمرہ زندگی میں ایسے کئی ضروری شعبے ہیں جہاں انہیں نوجوانوں کی ضرورت رہتی ہے۔ آپ انٹرنیٹ دیکھتے ہیں، بین الاقوامی ٹی وی چینل دیکھتے ہیں، ریڈیو سنتے ہیں، آپ کو یہ جاننا چاہئے کہ وہاں کن شعبوں میں تربیت یافتہ افراد کی ضرورت ہے۔ یہ سب شعبے 67 سال پہلے بھی نوجوانوں کا انتظار کررہے تھے، اب بھی یہ شعبے نوجوانوں کے منتظر ہیں۔ آپ سارے کام کرلیتے ہیں۔ آپ بہت جدو جہد کرتے ہیں بڑی محنت کرتے ہیں۔ آپ میں بہت توانائی ہے لیکن آپ میں سے اکثر کا تعلیمی اور تربیتی پس منظر مضبوط نہیں ہے۔ الیکٹریشن ہیں مگر سند نہیں ہے۔ پلمبر ہیں مگر ڈپلوما نہیں ہے، آپ کے گھریلو حالات ایسے تھے کہ پڑھائی درمیان میں ہی چھوڑنا پڑی۔ کام شروع کرچکے، اس میں مہارت بھی حاصل ہوگئی۔ لیکن آپ کے پاس کوئی تصدیق نامہ نہیں ہے۔ غیر ممالک میں باقاعدہ اسناد درکار ہوتی ہیں۔ یہ ہماری نسل کی کوتاہی ہے، حکمرانوں کی غفلت ہے کہ ووکیشنل ایجوکیشن (پیشہ ورانہ تربیت) کے ادارے بہت کم تعداد میں ہیں۔ اس لئے ہمارے جو محنت کش دوسرے ملکوں میں جاتے ہیں، انہیں اُجرت کم ملتی ہے۔ حالانکہ وہ ہُنر مندی میں کسی سے بھی پیچھے نہیں ہیں۔


میں تو کئی بار لکھ چکا ہوں۔ تمہاری جرأتوں کو داد دے چکا ہوں۔ اے جوانانِ وطن! تم جو اپنے دمکتے چہروں، تمتماتی پیشانیوں، جگمگاتی آنکھوں، لچکتے بازوؤں، ستواں جسموں کے ساتھ کرکٹ سٹیڈیموں کے باہر کبھی ٹکٹوں کے انتظار میں کھڑے نظر آتے ہو، کبھی تماشائیوں کی صورت میں اپنے کھلاڑیوں کی اچھی گیند اور پُر زور ہٹ پر پورے جوش اور محبت سے تالیاں بجاتے دکھائی دیتے ہو، معلوم نہیں تم نے کبھی اپنی طاقت، اپنی اہمیت اور اپنی افادیت کا احساس کیا ہے یا نہیں۔ اس وقت اسٹیڈیموں کی رونق تم سے ہے، کھلاڑیوں کی آمدنی تمہاری آمد سے بڑھتی ہے۔ مثالی نظم و ضبط، تحمل سے قوم کا سر تم نے بلند کیا ہے۔ میں تمہاری آنکھوں میں یہ جوش، یہ عزم، یہ چمک، تمہارے بازوؤں میں یہ برق، تمہارے جسموں میں توانائی، تمہاری پیشانیوں پہ یہ ولولے کتنے برسوں سے دیکھتا آرہا ہوں اور انہیں نہ جانے کس کس کی طاقت بنتے پایا ہے۔ تاریخ میں کتنے موڑ آئے ہیں، کبھی ہم روئے ہیں، کبھی مسکرائے ہیں۔ پتہ نہیں تم نے کبھی مڑ کر دیکھا کہ نہیں۔جب تمہاری طاقت مملکت کے مفاد میں استعمال کی گئی تو ہم سب مسکرائے، خوشیاں ہمارا مقدّر بنیں، جب تمہاری طاقت کسی ذات کے مفاد میں خرچ کی گئی تو وہ شخصیت تو مسکرائی مگر قوم روتی رہی ہے۔ تم ہمارے بازو ہو، ہمارا حوصلہ ہو، تم جہاں بھی ہو، کراچی، لاہور، پشاور، کوئٹہ، اسلام آباد، مظفر آباد، ملتان، حیدر آباد، سکھر، سیالکوٹ، فیصل آباد، کوہاٹ، مردان، سبّی، لاڑکانہ، خانیوال، نوابشاہ، گھوٹکی، گجرات، روجھان جمالی، جھنگ۔۔۔۔۔ تمہاری نگاہیں بلند ہیں، سخن دلنواز ہیں، جاں پُر سوز ہے۔ تم کہاں نہیں ہو، تم وہاں بھی ہو جہاں وطن کی سرحدیں افغانستان سے ملتی ہیں، وہاں بھی ہو جہاں ایران کی سرحدیں ہم سے ملتی ہیں، جہاں بھارت کی طویل سرحد ہماری سرحد کے ساتھ چلتی ہے، لائن آف کنٹرول چلتی ہے، وہاں بھی تم ہی ہو، کہیں کھیتوں میں ہریالی تم سے ہے، کہیں ملوں کی مشینیں تمہارے دم سے رواں ہیں، کہیں تمہاری موجودگی اور ہر وقت چوکنّے رہنا کتنی آبادیوں کے لئے تحفظ اور سکون کی ضمانت ہے۔ سکولوں، کالجوں، یونیورسٹیوں، دینی مدرسوں میں زندگی تم سے ہے، سرکاری سیکرٹریٹ ہوں، پرائیویٹ کمپنیوں کے دفاتر، سب تمہاری وجہ سے چل رہے ہیں۔ ایک طرف کم سنوں کے لئے تم ایک اُمید ہو، آگے بڑھنے کی وجہ ہو۔ دوسری طرف ڈھلتی عمروں کے لئے تم ایک سہارا ہو۔ اے جوانانِ پاکستان کبھی تم نے جائزہ لیا کہ تمہاری حدّت سے کتنی فصلیں پکیں اور انہیں کاٹ کر کون کون لے گیا۔ مجھ جیسے پاکستانی سیاست کے طالب علم گواہ ہیں کہ کس طرح قائدین تمہارے کندھوں پر سوار ہوکر صدارتی محلّات، وزارتِ عظمیٰ کے ایوانوں میں داخل ہوگئے۔ تم آہنی گیٹوں کے باہر اپنی تمنّاؤں، محرومیوں اور خوابوں کے ساتھ کھڑے رہ گئے۔ تم وطن کی بہار ہو، فصل گل ہو، رنگتیں ہو، خوشبوئیں ہو، مگر ایک دوسرے سے بٹے ہوئے ہو، دور دور ہو۔ قومی سیاسی پارٹیاں ہوں۔ ان کی مقبولیت ہر دلعزیزی تمہارے دم سے ہوتی ہے۔ مذہبی جماعتوں کا دباؤ تمہاری حمایت سے بڑھتا ہے۔ علاقائی تنظیمیں اپنے پروگرام تمہارے بل بوتے پر پیش کرتی ہیں۔ لسانی تنظیموں کی زبان میں روانی تم سے آتی ہے۔ ان پارٹیوں، جماعتوں، تنظیموں کے سربراہ تو آپس میں ملتے رہتے ہیں لیکن تمہیں کبھی آپس میں ملنے کا موقع نہیں ملتا۔


امیروں کے اونچے علاقے ہوں، وہاں زندگی تم سے ہوتی ہے، کاریں بھگاتے ہوئے، بریکیں لگاتے ہوئے، موبائل فونوں پہ پہروں انگریزیائی اُردو بولتے ہوئے، ایک ہلچل تم سے رہتی ہے۔ متوسط طبقوں میں بغیر سائلنسر کی موٹرسائیکلوں سے اپنے ہونے کا احساس تم ہی دلاتے ہو۔ کبھی ٹیوشنیں پڑھاکر اپنی تعلیم کا خرچ پورا کرتے ہو۔ کچی آبادیوں میں، کچی عمروں میں کبھی خوانچے لگاتے ہوئے، کبھی ہوٹلوں، ریستورانوں پر مصروفِ خدمت، منی بسوں میں لٹکتے، ساتھ ساتھ بھاگتے، ٹرانسپورٹروں کی تجوریاں تم ہی بھرواتے ہو۔ کبھی رکشہ دوڑاتے ہو، کبھی ٹیکسی چلاتے ہوئے موت کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالتے ہو، کبھی سیٹھوں، جاگیرداروں، صاحبوں کی لینڈ روورز، کاریں چلاتے، صاف کرتے ہو۔ تم سب ہمارا فخر ہو، ہمارا غرور ہو۔ کبھی تم نے سوچا کہ تم نہ ہو تو یہ سب کچھ چل سکتا ہے؟ زندگی رواں رہ سکتی ہے؟تم وقت کے سینے میں دھڑکتے ہو، جو تم نہ ہو تو زمانے کی سانس رُک جائے، تم جہاں بھی ہو اور تم کہاں نہیں ہو۔ تم ہی پاکستان ہو، تم ہی اس مملکت کا مستقبل ہو۔ اس سفر کی منزل ہو، تحریکِ پاکستان تمہارے عزم سے چلی تھی، پاکستان کا قیام تمہاری پُر جوش شرکت کا نتیجہ تھا اور اب پاکستان کا استحکام بھی تمہاری ہمتوں اور کوششوں سے ہوگا۔ زمانے کے قبیلے کی آنکھ کا تارہ وہی ہے جس کا شباب بے داغ اور ضرب کاری ہے جو ستاروں پر کمند ڈالتا ہے۔


منزلیں بھی منتظر ہیں، ہدف بھی موجود ہیں، ماں کی آغوش بھی ہے، تمہیں شناخت دینے والی مملکت بھی ہے، تمہیں نام دینے والی زمین بھی ہے، دُنیا میں تمہارے کتنے ہم عمر ہیں جو زمین کے لئے ترستے ہیں جن کو وطن کی چھاؤں میسر نہیں ہے۔ تمہیں تو اللہ نے کتنے، کھلے سر سبز میدان، میلوں میل بہتے دریا، ٹھاٹھیں مارتے سمندر، فطرت کے شاہکار ساحل ، سونا اُگلتی زمینیں، گیس، تیل، ریگ زار، برف پوش پہاڑ بخشے ہیں۔ سربراہوں کا کلچر بدلنے کی ضرورت ہے اور تم میں اس کی اہلیت ہے۔ تمہاری آنکھوں میں یہ سپنے ہیں، تمہارے بازوؤں میں یہ بجلیاں ہیں۔
آخر میں پھر اقبال کے الفاظ میں مخاطب ہوکر اجازت چاہوں گا۔


نہیں ہے نا اُمید اقبالؔ اپنی کشتِ ویراں سے
ذرا نم ہو تو یہ مٹی بہت زرخیز ہے ساقی

مضمون نگار نامورصحافی‘ تجزیہ نگار‘ شاعر‘ ادیب اور متعدد کتب کے مصنف ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
Read 1179 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Follow Us On Twitter