Super User

Super User

The Directorate of Inter-Services Public Relations (known by its acronym ISPR) (Urdu: شعبہٴ تعلقات عامہ‎) is an administrative military organization within the Pakistan Defence Forces that coordinates military information with the media and the civil society. The ISPR is now headed by 2-star rank officer Major General Asim Saleem Bajwa who took over from Major General Athar Abbas in June 2012

Website URL: http://www.ispr.gov.pk

20
April

Written By: Asma Ishaq

A fine morning in the city and you expect to see the typical urban kaleidoscope each morning; life carrying on briskly in its various aspects but the best sight to see are the kids and teenagers coming to school with a smile on their face. The most beautiful thing that can be seen vividly in the bright eyes are their dreams. Carrying their bags, paying regards to every teacher who comes across them, they are what usually people would call the future generation and as a matter of fact – the future assets. Their mornings start in the same manner everywhere in the world. It is one of the most beautiful scenes to observe when the children come to school particularly for the teachers it feels almost akin to a blessing. Yes! teachers, whose prime responsibility is generally understood as imparting lessons of their respective subjects. It is understood, maintained and executed in every corner of the world, however, teaching and the impact of teaching should not be limited to the boundaries of a class or that of a school. While a young learner must be facilitated in scoring higher grades, simultaneously he or she should be trained to become a skilled individual for leading a meaningful life.


Teaching is one of the many professions practiced in the society yet the nobility of this profession makes it imperative to be respected as an institution in itself. Teaching should not be considered or practiced as a ‘randomly chosen’ profession. Ask any passionate teacher, and the answer would be, “It is a huge responsibility as it falls in the hands of a teacher whether to shape a young mind as an optimist or a pessimist towards his or her life.” The reasons are obvious because an adept and responsible teacher will definitely work as a tactful surgeon who understands the working of the young minds in order to free them of the social ills and from any form of negativity.


Making one’s students well-versed in a subject is the prime objective of any teacher. The analytical study about classrooms suggests that in every class there sits a group of students comprising the born genius, sharp learners, average and below average learners. Any successful teacher enters the class with an intention to execute the lesson plan that caters to all above students’ learning needs. Another tradition quite common these days is that teachers focus a little more on the ones who strive harder or are weak in retaining the content knowledge. Generally, this is good. However, this is also a fact that very few teachers prepare lesson plans to impart successful human skills and values that are the need of every born genius, sharp learner as well as average and below average learners. It might be a surprise to many but it has been observed that any teenager who struggles against any of his or her challenges of a teenage life does not necessarily fall only in the average or below average category of students, they can be or are to be in the genius category as well.


Unfortunately, schools have clearly laid down guidelines, with less or no stake of teachers, on how to teach students. This practice of excluding teachers from the process has a damaging impact on the society. There are some school systems and passionate teachers but the damage requires a great deal of dedication and determination from them. The students may grow to become engineers, doctors, pilots and soldiers etc. but a teacher first needs to educate them in becoming a leader in their respective environment, a pragmatic decisionmaker, a dynamic thinker and, above all, an inspirational human to the people around.


Teachers are nation builders, guides, instructors and, most importantly, pillars of any society. The vital role of a pillar that a teacher plays in the society is nothing else than to make their students aspire to be an inspiration in every endeavor they embark upon. The features that must be instilled in a student’s grooming include; firstly, they should be trained to have dignity yet with humility. Next, to have a strong character which does not fall victim to any social ill in the society. An important point to remember is that directionless young kids are more prone to the onslaught of any negative challenge that they might face in their lives therefore grooming them to be direction-oriented proves as a great bulwark. The teachers have a critical role in making their students believe that they are capable of achieving anything they want to.


Teaching is called the only Prophetic profession and surely it gives solace to the soul. A teacher’s profession becomes much more rewarding when they see their students emerge as an inspiration to people around them rather than seeing them just being inspired by others. All students have wonderful inspirational young minds having different dreams for their future. The potentials that have been bestowed by the Creator are there, all the faculties are there too, the only other thing required is to have them believe in their ability to do what they want to do and be kind of an inspiration to the rest.
The shoulders of teachers, weighed down by the immense responsibility, feel light when their students grow up as positive and progressive individuals. The happy faces, bright eyes and incandescent smiles are a blessing to any teacher. It is pertinent to mention here that this is both an award and reward for the teacher in itself.


Last but not the least, one magical factor to make the young ones aspire to utilize the given potentials given to them by the Creator and have them believe that He is there to help them achieve every goal in their lives.

 

The writer is English language and literature teacher at the Army Public School-Faisal, Karachi.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
19
April

You Matter

Published in Blog

Written By: Zainab Amir

Why do you feel lonely? Why do you feel distressed? Why do you feel as if you mean nothing to the ones you love? Why do you feel as if you are a useless piece of a lifeless soul? Why do you feel such emotions?


Why? Oh, it is because that is what life is about.
Life is and will be full of obstacles, adversities, fake people, lies, bad grades, and most importantly challenges. We all have and will continue to face them. But if we fail one of them, why do we decide to give up? Why do we end our lives for a challenge that we weren't able to pass?
Life is a precious thing. We all have it so we could live, to share our emotions, our feelings, our thoughts, perspectives, love, to cherish the moments and to appreciate the nature. But if we fail in one aspect of life, does that mean we are going to give up? Does that mean we give up on our dreams? Giving up means killing your hopes and your dreams. Why? Was it that hard? Keep this thing in your mind that there are always going to be hardships in life. All we have to do is to develop that certain maturity in ourselves so we can pass it. If we can't, then try again and again. There will be a certain point where you will get where you're going. And then you will look back and see that you overcame all the obstacles and succeeded. Yes, you did it. You will feel every atom in your body vibrating with joy. That feeling is called happiness.


Now think if there were no challenges, don't you think that would have been boring? Life means to define yourself, to tell the world that you are capable of accomplishing things that you want to. Focus on the bright side. Life is all about telling who you are by giving pure evidence about yourself and you can not define yourself unless you challenge yourself. Prove that yes you are capable of many things.
Every person in this world is different and so are you. You were born to stand out. Everyone is capable of different things, all you got to do is to just prove it. Nothing is impossible.


An individual can do anything, because nothing in this world is impossible and will never be.
Just believe in yourself and keep moving forward.


You are loved. You have a significance in this world. You deserve to be happy.
You matter!

 

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
 
06
April
اپریل 2018
شمارہ:04 جلد :55
تحریر: یوسف عالمگیرین
وطنِ عزیز میں 78واں یومِ پاکستان ملی جوش و خروش کے ساتھ منایا گیا۔ یوں منٹو پارک لاہور میں 23مارچ 1940کو منظور ہونے والی قرارداد کی گونج 2018 کے پاکستان بھر میں سنائی دے رہی تھی کہ یہ مملکتِ خداداد اس قرارداد کے منظور ہونے کے ٹھیک سات برس بعد1947میں معرضِ وجود میں آ گئی تھی۔ یومِ پاکستان کے موقع پر ملک بھر میں قومی تقریبات کا انعقاد کیا جاتا ہے لیکن سب سے بڑی قومی تقریب....Read full article
 
تحریر: عقیل یوسف زئی
یہ بات کافی خوش آئند اور حوصلہ افزا ہے کہ 2016-17 کے دوران افغانستان اور پاکستان کے تعلقات میں جو کشیدگی پیدا ہوگئی تھی رواں برس اس میں نہ صرف نمایاں کمی آگئی ہے بلکہ بہتر تعلقات کی جانب اہم پیش رفت بھی جاری ہے۔ اعلیٰ ترین سفارتی اور عسکری وفود کے تبادلوں اور نتیجہ خیز بات چیت کا جوسلسلہ سال 2018 کے پہلے ہفتے سے چل نکلا تھا اس نے بداعتمادی کے ماحول کو کافی حد تک تبدیل کردیا....Read full article
 
 alt=
تحریر: طاہرہ حبیب جالب
1937کے الیکشن کے بعد تقریباً پورے ہندوستان پر کانگریس اور متعصب بنیئے کی حکومت قائم تھی۔ مسلم اقلیتی صوبوں میں کانگریسی حکومتوں کے خاتمے پر مسلم لیگ نے قائداعظم محمد علی جناح کی ہدایت پر 22دسمبر 1939کو ملک کے طول و عرض میں یومِ نجات منایا۔ اس وقت تک برصغیر میں مسلمانوں کے سیاسی مستقبل کے بارے میں کئی تجویزیں اورسکیمیں منظر....Read full article
 
تحریر: محمد کامران خان
گزشتہ کئی ماہ سے بھارتی فورسز کی جانب سے لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باونڈری کی خلاف ورزیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ہر دوسرے تیسرے دن بھارت کی جانب سے بلا اشتعال فائرنگ کی جاتی ہے جس سے سرحد سے ملحقہ دیہات میں مقیم معصوم جانیں ضائع ہوتی ہیں۔املاک کو نقصان پہنچتا ہے اور سرحدی گائوں میں رہنے والے جو کہ زیادہ تر غریب کاشتکار ہوتے ہیں ایک ہمہ وقت خوف اور نفسیاتی....Read full article
 
تحریر: خورشید ندیم
سماج کے لئے ایک نظامِ اقدار کی ضرورت ہوتی ہے، جس طرح ریاست کے لئے قانون کی۔ قانون خارجی سطح پر ایک قوتِ نافذہ کا تقاضاکرتا ہے اور سیاسیات کا مسلمہ اصول یہ ہے کہ یہ قوت ریاست ہی کے پاس ہوتی ہے۔ سماج کے ہاتھ میں اخلا قی قوت ہوتی ہے جس کا ماخذ اس کا نظامِ اقدارہے۔ جب کوئی شخص اس نظام سے بغاوت کرتا ہے تو سماج اپنی اس اخلاقی قوت کی مدد سے اسے واپس نظام کے دائرے میں.....Read full article
 
تحریر: عزخ
سے دشمن ہمیں دنیا کی نظروں میں ناقابل اعتبار، قصور وار اور نالائق ریاست ثابت کرنے پرتُلا بیٹھا تھا۔ عین اُس وقت ریاست کے مرکزِ ثقل کی قوت نے کمزور پڑنے سے انکار کر دیا اور گُریز یت کی منفی طاقتوں کا سّدِباب کیا۔ پاک فوج بِلا کسی تخصیص وتمیز ، قوم کی پوری آبادی کی نمائندگی کرتی ہے جس میں گلگت سے گوادر، کیماڑی تا کشمیر، چترال تا چھاچھرو کے جوان اپنا تن،من اوردھن قربان کرنے اورخون ....Read full article
 
تحریر: غزالہ یاسمین ، ازکی کاظمی ازکیٰ کاظمی
راولپنڈی اسلام آباد کے سنگم پر واقع شکر پڑیاں گرائونڈ ہمیشہ کی طرح ولولوں اور جذبوں کی بھرپور عکاسی کررہا تھا۔ افواج پاکستان کے جدید ہتھیاروں سے لیس چاق چوبند دستے بڑے وقار سے ایستادہ تھے۔ ان کے شانہ بشانہ دوست ممالک اردن اور متحدہ عرب امارات کے فوجی دستوں کی شرکت نے ان لمحات کو مزید یادگار بنا دیا تھا ۔ سری لنکا کے صدر متھری پالا سری سینا پاکستان ڈے پریڈ میں.....Read full article
 
تحریر: شوکت نثار سلیمی
میں نے اس نوجوان سے کہا میں نے بیٹے کو پاکستان کے پرچم میں لپٹے ہوئے تابوت میں وصول کر لیا، یہ کہتے ہوئے میری رگوں میں دوڑنے والا خون جم سا گیا۔ یہ لمحات کتنے جاں گسل ہوتے ہیں جب شہادت کے بعد جوان بیٹوں کو والدین کے حوالے کیا جاتا ہے۔ ایسے جان گداز وقت میں تو شاید فلک بھی ترساں و خیزاں ہوتا ہو گا....Read full article
 
تحریر: سلمان عابد
کسی بھی ریاست کے قومی سکیورٹی بحران یا اس کو درپیش چیلنج کو سمجھنا ہو تو ہمیں ریاست کے مجموعی نظام کو سمجھنا ہوگا کہ یہ ریاستی نظام کیسے چل رہا ہے۔ کیونکہ قومی سکیورٹی کے بحران کا حل کسی سیاسی تنہائی میں ممکن نہیں ہوگا۔ بنیادی غلطی جو کی جاتی ہے وہ معاملات کو یکطرفہ نظر سے دیکھ کر حکمت عملی کو تیار کرنا ہوتا ہے۔ ایک دلیل دی جاتی ہے کہ اگر ہمیں سکیورٹی کے بحران کو ....Read full article
 
تحریر: ندیم بخاری
دنیا کے تقریباً ہر خطے کے لوگ مختلف وجوہات کی وجہ سے ہجرت کرتے رہتے ہیں۔ شاید اسی وجہ سے بین الاقوامی طورپر تارکینِ وطن کی کوئی باقاعدہ تعریف و تشریح موجود نہیں ہے۔ انگریزی زبان میںترکِ وطن، ہجرت، نقل مکانی، جلا وطنی وغیرہ جیسے الفاظ کی تعریف بہت واضح ہے۔ اُردو میں معاملہ ذرا مختلف ہے۔ اردو میں قانونی تعریف کم اور مذہبی، جذباتی، احساساتی اور تصوراتی معنی زیادہ ملتے ہیں....Read full article
 
تحریر: خالدمحمودرسول
بجٹ بظاہر تو مالی اعداد و شمار کا گورکھ دھندہ ہے جسے جاننے والے ہی جانتے ہیں لیکن اس کا اثر اس قدر ہمہ گیرہوتا ہے کہ ہر عام خاص ایک حد تک اس میں دلچسپی ضرور لیتا ہے۔ ہر نئے بجٹ پر ماہرین اعدا و شمار کا دبستان کھول کر مالی اشاریوں کی بوچھاڑ کر دیتے ہیں۔ حکومت کے طرفدار بجٹ کی خوبیاں بتاتے نہیں تھکتے اور اس بات پر داد طلب بھی رہتے ہیں کہ اس قدر مشکل حالات میں ایسا عوام دوست.....Read full article
 
تحریر: ملیحہ خادم
علامہ اقبال اور پاکستان لازم و ملزوم ہیں۔ جہاں اقبال کا ذکر آئے گا وہاں پاکستان کا ذکر ضرور آئے گا اسی طرح جب جب پاکستان کی بات ہوگی تب تب علامہ اقبال کی بات بھی ہوگی، اقبال کے بغیر پاکستان کی تاریخ ادھوری ہے۔ آپ مفکر پاکستان اور مصلح قوم بن کر ابھرے اور تاریخ میں امر ہوگئے- پاکستان کی جغرافیائی سرحدوں کے تعین سے پہلے ہی فکر اقبال نے اس ملک کی نظریاتی سرحدوں کا تعین کردیا تھا۔.....Read full article
 
تحریر: ڈاکٹر صفدر محمود
ایک ہوتا ہے ظاہری حُسن اور دوسرا ہوتا ہے باطنی حُسن۔ حُسن بہر حال متاثر کرتا ہے لیکن تجربہ بتاتا ہے کہ باطنی حسن کا تاثر دیرپا ہوتا ہے جبکہ ظاہری حُسن کا اثر دیرپا نہیں ہوتا۔ منظر بدل جاتا ہے اورظاہری حسن نظروں سے اوجھل ہو جاتا ہے لیکن باطنی حسن منظر بدلنے کے باوجود ایک یاد بن کر، ایک خوشگوار حیرت یا تاثر بن کر زندگی کا حصہ بن جاتاہے۔ ظاہری حسن کا تعلق قدرتی مناظر، ماحول، انسانی شخصیت .....Read full article
 
تحریر: فرخ سہیل گوئندی
پاکستان میں اب ترکی جانا فیشن اور سٹیٹس سمبل بن گیا ہے اور اس رجحان کا آغاز تب ہوا جب ترک ڈرامے ہماری سکرینوں تک پہنچے۔ جب میں نے پہلی مرتبہ ترکی کی سرزمین کو چُھوا تب ترکی جانے والے کو ہمارے ہاں مشکوک نظروں سے دیکھا جاتا تھا یعنی ایسا نوجوان جو ترکی کے راستے، یورپ میں گم ہوجائے۔....Read full article

تحریر: صائمہ بتول

مختلف ڈکشنریوں کے مطابق
Harassment
کے معنی متشدّدانہ دبائو، غیر معمولی طور پر اپنے سے نیچا دکھانا، متعصبانہ رویّے، غیر مہذب جسمانی حرکات، جنسی دعوت دینے والے پوشیدہ لین دین، زبانی کلامی و جسمانی حرکات سے کسی کی عزت، غیرت اور حمیت کا تقاضا کرنا کسی بھی ناجائز مہربانی کے عوض کسی کو نیچا دکھانا وغیرہ ہیں........Read full article
 
تحریر: ڈاکٹر صدف اکبر
پُر سکون نیند انسانی جسم، دماغ اور ذہن کے لئے ازحد ضروری ہے۔ کیونکہ پُرسکون نیند انسانی نفسیات اور جسمانی اعضاء کے بہتر طور پر کام کرنے میں اہم کرادار ادا کرتی ہے اور انسان دن بھر اپنے آپ کو توانا اور فریش محسوس کرتے ہوئے اپنے کام بخوبی سرا نجام دیتا ہے۔ تحقیقات کے مطابق بے خوابی جسے ہم انسو منیا کہتے ہیں۔ جدید دور کا ایک تحفہ ہے۔ انسومنیا یعنی نیند کا نہ آنا۔ اس بیماری سے.....Read full article
 
تحریر: یاسر پیرزادہ
محفل اپنے عروج پر تھی، لوگ نہایت دلچسپی سے اس ماڈرن ''بابے'' کی گفتگو سن رہے تھے، بابا تو میں نے یونہی کہہ دیا ورنہ اس کی عمر پیتالیس سے زیادہ نہیں تھی، تراشیدہ داڑھی میں کچھ سفید بال نظر آ رہے تھے، آنکھوں پر چشمہ تھا جس کے فریم کا مقصد اس کے سوا کچھ نہیں تھا کہ عمر میں پانچ برس کا اضافہ ہو جائے، البتہ شلوار قمیص کی جگہ موصوف نے پینٹ کوٹ پہن رکھا تھا اور ہاتھ میں .....Read full article
 
تحریر: ڈاکٹر ہما میر
موسم سرما کو پہننے، اوڑھنے اور کھانے پینے کا موسم بھی کہا جاتا ہے۔ عمومی خیال ہے کہ کھانے کا مزہ سردیوں میں ہی ہے۔ پاکستان میں سردیوں کی سوغات چکن، کارن سوپ، گرم اُبلے انڈے، مونگ پھلیاں اور گچک ہے۔ کسی زمانے میں ریڑھی پہ ڈرائی فروٹ بھی خوب بکا کرتے تھے۔ چلغوزے ،پستے ،اخروٹ، کشمش اور بادام، ان میں چلغوزے نسبتاً مہنگے ہوتے تھے۔ پھر کئی دکانوں پر کاجو بھی دستیاب تھے جو اب .....Read full article
 
تحریر: محمد ظہیر بدر
علم و دانش سے بہرہ ور اور تاریخ کے پیچ و خم کوتحقیق کی نظر سے دیکھنے والے اس حقیقت سے آگاہ ہیں کہ برِصغیر کی تاریخ میں سرسید اور علی گڑھ … ہمارے تابناک ماضی، شکست و زوال اور مد و جزر اسلام کی یاد داری کا اہم جزوہیں۔ نامور محقق شیخ اکرام نے کہا تھا، تحریک علی گڑھ کے سارے پھل میٹھے تھے۔ اسی تحریک سے اردو ادب و صحافت اور سیاست کے شہسوار وں نے جنم لیا۔چنانچہ.....Read full article
 
تحریر: کنول زہرا
کراچی جو کبھی خوف کی علامت سمجھا جاتا تھا جہاں شہر کی سڑکوں پر دہشت کے سناٹوں کا راج تھا اور روشنیوں کے شہر کی رونقیں مانند پڑگئی تھیں ایسالگتا تھا جیسے اس شہر کی مسکراہٹیں اب کبھی لوٹ کر نہیں آئیں گی مگر حالات کبھی ایک سے نہیں رہتے 25 مارچ2018 کو ایسے محسوس ہوا جیسے کراچی ایک بار پھر سے روشنیوں کا شہر بن گیا ہے۔ شہرکی سڑکوں پر سناٹا تو اُس دن بھی تھا مگر یہ سناٹا....Read full article
06
April

تحریر: کنول زہرا

کراچی جو کبھی خوف کی علامت سمجھا جاتا تھا جہاں شہر کی سڑکوں پر دہشت کے سناٹوں کا راج تھا اور روشنیوں کے شہر کی رونقیں مانند پڑگئی تھیں ایسالگتا تھا جیسے اس شہر کی مسکراہٹیں اب کبھی لوٹ کر نہیں آئیں گی مگر حالات کبھی ایک سے نہیں رہتے 25 مارچ2018 کو ایسے محسوس ہوا جیسے کراچی ایک بار پھر سے روشنیوں کا شہر بن گیا ہے۔ شہرکی سڑکوں پر سناٹا تو اُس دن بھی تھا مگر یہ سناٹا کچھ مثبت طرز کا تھا کیونکہ اس روز نیشنل اسٹیڈیم 9 سال بعد دوبارہ آباد ہوا تھا۔ کرکٹ اپنے اصل گھر منی پاکستان کراچی میں ایک بار پھر لوٹ آیا ۔ سال 2018 کا آغاز ہوتے ہی پاکستان کرکٹ بوڈر کی جانب سے پی ایس ایل کے فائنل میچ کا انعقاد کراچی میں کئے جانے کا اعلان شہر قائد میں رہنے والوں کے لئے مسرت کا باعث تھا۔ 16مارچ تک ہی کراچی میں پی ایس ایل فائنل کی ٹکٹیں فروخت ہوچکی تھیں جو اس بات کی غمازی تھی کہ شہری کس بے چینی سے اس لمحے کا انتظار کررہے تھے۔فائنل کھیلنے کا دن آیا تو اہلیانِ کراچی کا جوش قابلِ دید تھا۔ نیشنل سٹیڈیم کراچی، شائقینِ کرکٹ سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا۔ جہاں ہر سو سبز ہلالی پرچم تھے اورپاکستان زندہ باد کے نعرے تھے۔ میگاایونٹ سے لطف اندوز ہونے کے لئے انتظامیہ نے شہریوں کی سہولت کے لئے 40 ہزار سے زائد افراد کے بیٹھنے کا انتظام کیا تھا جبکہ اپنا آنکھوں دیکھا حال بیان کروں تو میں نے وہاں جتنے لوگوں کو بیٹھے دیکھا اتنے ہی شائقین کو کھڑے بھی دیکھا۔ اس روز صحیح معنوں میںکراچی کو امن کے کھیل میں رقص کرتے دیکھااورکراچی والوں کا جوش ہی الگ تھا۔ قابلِ تعریف بات یہ کہ نیشنل اسٹیڈیم میں یہ جوش وخروش اسلام آباد یونائیٹڈ اور پشاور زلمی کے درمیان کھیلے گئے میچ کے دوران دیکھنے میں آیا۔ کراچی کی عوام نے کراچی گنگز کی ٹی شرٹس پہن کر اپنے شہر کی رونقوںکی بحالی کا جشن منایا۔ میچ شروع ہونے سے قبل روایت کے مطابق سارے شائقین نے قومی جذبے کے ساتھ پاکستان کا ترانہ پڑھا۔

pasfinalkarachi.jpg
اس بات سے سب واقف ہیں کہ کراچی میں 2013 سے رینجرز آپریشن کا آغاز ہوا تھا جو تاحال جاری ہے۔ پروردگار کے کرم سے اس کے مثبت نتائج بھی مل رہے ہیں۔ اب کراچی میں شٹرڈاون ہڑتالیں نہیں ہوتیں بلکہ زندگی خوشحال ہے۔ اب کراچی میں مادرِوطن کے خلاف نعرے نہیں لگتے بلکہ پاکستان زندہ باد کی گونج ہے۔اب کراچی میں ریاست کی رٹ کو چیلنج کرنے والوں کے جھنڈے نظر نہیں آتے بلکہ عام عوام کے ہاتھوں میں سبز ہلالی پرچم دکھائی دیتا ہے۔ یقینا یہ پاکستان سکیورٹی فورسز کی کامیابی ہے جن کی انتھک محنت اور لازوال قربانیوں کی بدولت ہم کراچی سمیت پورے پاکستان میں امن کا قیام دیکھ رہے ہیں۔ پاکستان سپر لیگ کے فائنل کے موقع پر سیاسی و شوبز شخصیات سمیت افواج پاکستان کی جانب سے کور کمانڈر کراچی لیفٹیننٹ جنرل شاہد بیگ مرزا، ڈی جی رینجرز سندھ میجر جنرل محمد سعید اور ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے خصوصی شرکت کی۔ اس موقع پر انہوں نے کراچی کے عوام کو بہت نظم و ضبط والے شہری کہا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کراچی کے عوام کی خوشی دیکھ کر دلی اطمینان ہورہا ہے۔ اس ایونٹ کے اختتام پر آرمی چیف قمر جاوید باجوہ نے بھی کراچی کے شہریوں کے جوش اور نظم و ضبط کو سراہا۔


اس میں کوئی دو رائے نہیں ہے کہ کراچی سمیت پورے ملک کا امن ہمارے سکیورٹی اداروں کی ہی بدولت ہے۔ یہاں یہ کہنا ضروری سمجھتی ہوں کہ شہرقائد سے پاکستان آرمی بہت زیادہ پیار کرتی ہے اسی لئے وہ نہ صرف امن کے قیام کے لئے کمربستہ ہے بلکہ ابرِرحمت کے بعد نکاسی آب کا کام بھی پاکستان رنیجرز اور پاک افواج کرتی نظر آتی ہیں۔
بہرحال خوشی اس بات کی ہے کہ پاکستان سپر لیگ کا فائنل خوش اسلوبی کے ساتھ اپنے انجام کو پہنچا۔ اس کے پرامن اختتام پر پوری دنیا کو یہ پیغام ملا کہ پاکستان دہشت گرد ملک نہیں بلکہ دہشت گردی کا ستایا ملک ہے۔یہاں کے لوگ موت کے کھیل سے نہیں بلکہ کرکٹ اور ہاکی کے کھیلوں سے پیار کرتے ہیں۔کراچی سمیت پاکستان کا کونا کونا امن کے قیام پر پر سکون ہے اور اس امن کو مستقل خیمہ زن رکھنے کا خواہش مند ہے۔ پاکستان میں کرکٹ کا لوٹ آنا اور نیشنل اسٹیڈیم کراچی میں سبز ہلالی پرچموں کے ساتھ خوش اسلوبی سے فائنل ہونا اس بات کی دلیل ہے کہ دہشت گردی ہار گئی ہے اور پاکستان جیت گیا ہے۔ امن کا یہ قیام سکیورٹی فورسز کی بے شمار خدمات کی بدولت ممکن ہوا ہے۔

 

Follow Us On Twitter