07
June

Pak-Afghan International Border and Regional Security

Written By: Zamir Akram

Moreover, and this is the crucial point, if the U.S. and the Afghan government are really serious about their accusations, they need to cooperate with Pakistan to ensure that the Pak-Afghan border is sealed and no movement takes places by anyone in either direction. The fact that Kabul continues to refuse such cooperation exposes its malafide intentions. Indeed, its refusal to cooperate indicates that it wants to keep the border porous and unchecked so that TTP and Da’esh terrorists can be infiltrated into Pakistan. In this the Indians also have an obvious vested interest.

The Afghan government’s refusal to cooperate with Pakistan to monitor and control the Pakistan-Afghanistan border coupled with its sponsorship of anti-Pakistan terrorist groups of the TTP which are also colluding with elements of ISIS/Daesh in Afghanistan, pose a severe security threat to not only Pakistan but also to other regional states including China, Iran and Russia, apart from Afghanistan itself. But the multiple powerbrokers in Kabul, with clear instigation and support from New Delhi, instead of recognizing their own long term national interest in cooperating with Pakistan, are more intent upon using the porous border to try and destabilize Pakistan. This leaves Pakistan with the only option to forcibly and unilaterally seal the Pak-Afghan border and tightly regulate any movement across it. This is not only in Pakistan’s interest but also in the interest of regional security.


From Pakistan’s security perspective there are both external and internal compulsions for securing its border with Afghanistan. The worst case security scenario for Pakistan is to face simultaneous confrontation on both its western and eastern borders with Afghanistan and India. On the eastern front, Pakistani troops have been engaged for decades in protecting the country’s border with India while being in direct confrontation with Indian troops on the volatile Line of Control (LoC) and Working Boundary with Indian Occupied Kashmir. Given the ongoing popular uprising in occupied Kashmir against Indian occupation, this disputed territory continues to pose a security threat for Pakistan. At the same time, the situation on the western border with Afghanistan has been deliberately destabilized with unprovoked attacks on Pakistani border posts by Afghan troops, the most recent being the firing on a Pakistani census team near the Chaman border in Balochistan. Even worse is the sanctuary given by Afghanistan to TTP terrorist groups close to the border who are encouraged and enabled to cross over this border to carryout terrorist attacks in Pakistan.

pakafghanintborder.jpgWhat makes this situation worse is the active collusion between the Afghan and Indian intelligence agencies that finance, arm and support TTP terrorists based in Afghanistan as well as Baloch insurgents and separatists. In fact, such Indo-Afghan collusion is part of the strategic Indian objective to use pliant Afghan factions and their territory to destabilize Pakistan. Indeed, this has been the Indo-Afghan geo-political objective since the independence of Pakistan when immediately thereafter Afghanistan was the only country that objected to Pakistan’s UN membership and started the Pushtunistan bogey in a vain effort to undermine Pakistan’s territorial integrity. Since then Afghan leaders, even those better disposed towards Pakistan like the Taliban, have also refused to accept the internationally recognized sanctity and legality of the border with Pakistan. In the contemporary environment, such Afghan obduracy over the status of the border has become a self-defeating and an untenable proposition for them since they joined the Indians in accusing Pakistan of promoting “cross-border terrorism” but at the same time do not “recognize” the border.


At the internal level, the threat to Pakistan’s security stems from terrorism in Pakistan spawned by terrorists belonging to the TTP and Daesh with sanctuary and support from within Afghanistan. Pakistan government’s initial efforts to find a political solution through dialogue with the TTP groups failed to reduce terrorist incidents and only encouraged them to intensify their attacks against civilian and military targets especially in FATA. It was only after the brutal attack on the Army Public School in Peshawar on December 16, 2014, that the futile dialogue option was abandoned and military operations started against TTP terrorists through Zarb-e-Azb and continues now through Operation Radd-ul-Fasaad. However, while TTP sanctuaries in FATA and the border areas have been cleansed by these military operations, the remnants of the TTP have crossed over the border into adjoining areas of Afghanistan such as Nangarhar and Paktia from where they are being openly supported and armed by the Afghan and Indian intelligence agencies, thereby enabling them to continue launching terrorist attacks within Pakistan across the unregulated border. The presence of nearly 3 million Afghan refugees in Pakistan also provides these terrorists the cover and space to infiltrate and conduct terrorist activities. At the same time, both Kabul and New Delhi are arming and financing separatist groups, especially insurgent Baloch organizations, to carry out acts of sabotage and terrorism within Pakistan. A prime target for them is to derail the infrastructure projects in Pakistan related to the operationalization of the China-Pakistan Economic Corridor (CPEC). As a result, Pakistan has been forced to raise a Special Security Division, military force to protect the CPEC projects and the personnel involved, especially Chinese nationals.

 

Moreover, under international law and the Durand Line agreement, Pakistan remains well within its rights to control, restrict and deny the so-called “easement rights” for tribes living on both sides of the border, which are not part of the original agreement but evolved over time as a practice to facilitate interaction and movement of the tribes without travel documents or visas. However, since these easement rights are now being violated and abused by local tribes as well as others to engage in terrorism, smuggling, drug trafficking, weapons' transfers and unchecked movement of refugees, Pakistan is legally justified to control and even curtail such movement.

The border agreement and international law also do not prevent Pakistan from taking any measures, such as fencing, visas' requirements and border checks to regulate movement in either direction across the border.

The roots of these external and internal security challenges for Pakistan that also today affect the entire region are complex and multi-dimensional. At the heart of this conundrum is, of course, the hegemonic Indian obsession to dominate the whole of South Asia. This has consistently propelled New Delhi to instigate tensions between Pakistan and Afghanistan as a part of its overall pursuit of regional domination, a strategy in which Kabul, for the most part, has been a willing partner. With the current Indo-Afghan strategic partnership agreement, such collaboration has now been institutionalized.


But this underlying security threat for Pakistan has been complicated over the last three decades due to factors largely beyond Pakistan’s control. The Soviet invasion of Afghanistan in 1979 confronted Pakistan with twin problems – the presence of the Red Army on its borders at a time when the Soviet Union and India were close military allies; and the influx of more than 3 million Afghan refugees, many of whom are still in Pakistan. With help from Pakistan, the U.S. and other countries, the Afghan Mujahideen successfully compelled the Soviets to withdraw after almost 10 years of fighting. Unfortunately, however, the U.S. and its partners abandoned Afghanistan thereafter, which quickly degenerated into a decade long civil war among different Afghan factions and war lords. This period also witnessed the growth of religious extremism and the growth of terrorist groups involving fighters from various parts of the world including Arab countries in particular. To protect its interests against involvement of regional players such as India and Iran, Pakistan gravitated towards the emerging Afghan power bloc, the Taliban, as the best option to bring peace and stability to Afghanistan. Meanwhile, the lawless and unstable Afghan situation with growth of extremism, terrorism, drugs and weapons, permeated into Pakistan via its porous border with Afghanistan and through the vehicle of the unchecked movement of refugees, drug lords, smugglers and criminals. Not just the Pak-Afghan border areas but even Pakistan’s major cities were infected with this malaise.

 

Ensuring effective border controls will be crucial for the successes of Pakistan’s military operations to contain and defeat terrorism by the TTP and its Daesh collaboration based in Afghanistan. It would also be critical for the safe operations of the CPEC by neutralizing the terrorist activities of Baloch terrorists from their Afghan safe havens. Apart from Pakistan, effective border controls will also be essential for the interests of regional countries, especially China, Iran and Russia, which are also threatened by Afghan based TTP and Daesh terrorists.

The failure of the Taliban to restore peace in their country and to gain international acceptability was confounded by their toleration of terrorist groups like Al-Qaeda which eventually, after the 9/11 attacks in the U.S., brought about their downfall and the American presence in Afghanistan, in pursuit of their “War on Terror”. Despite initial American gains to dislodge the Taliban and “drain the Afghan swamp,” military operations over the next 15 years have been only partially successful. While Al-Qaeda has been mainly disabled, it has not been destroyed. Instead, the U.S. and its NATO partners have become embroiled in an endless stalemate with the Taliban, which has provided space for the Al-Qaeda and now increasingly Da’esh to make inroads into Afghanistan.


While there are multiple reasons for this American failure in Afghanistan, the important outcome for Pakistan has been the lack of effective coordination between the U.S. and Pakistan from the very beginning of U.S. operations, which allowed hundreds of Al-Qaeda terrorists and the Taliban to cross the Afghan border into Pakistan and go underground in the tribal areas and even in the cities, using the lure of money and (misguided) ideology to gain local support as well as recruits. As a partner in this counter-terrorism campaign led by the U.S., Pakistan conducted several military operations and intelligence based raids to ferret out these terrorists but the much vaunted “hammer and anvil” tactics between Pakistan and American forces did not really take effect as there was hardly any U.S., NATO or Afghan presence on the other side of the border to catch or kill terrorists fleeing Pakistani operations. For instance, there were over 1000 Pakistani military posts all along the border but only 118 U.S./Afghan posts on the other side. The oft promised and much needed equipment from the Americans for Pakistani forces, such as helicopters and night vision equipment, was also in very short supply, inhibiting Pakistan’s capabilities.


At the same time, American/NATO tactics within Afghanistan, with indiscriminate use of force, especially air-power and drones, caused huge collateral damage. To make matters worse, there was greater emphasis on use of force rather than efforts to win Afghan hearts and minds. The result has been the ability of the Taliban to not only regroup but also to find willing fighters for their cause. These factors continue to prolong the stalemate in Afghanistan with the Taliban being able to extend their sphere of control, especially since the drawdown of U.S. and NATO troops and the incapacity of the Afghan army to take charge.


In this deteriorating environment, the U.S. and its Afghan allies have made common cause by blaming Pakistan and using it as a scapegoat for their failure. These allegations are contrary to ground realities because the Taliban operations are deep within Afghan territory, as far north of Pakistan as Kunduz and Mazar-e-Sharif, which the Taliban simply cannot launch from Pakistan. In fact they now control more than 45% of Afghan territory and do not need to operate from Pakistan. Moreover, and this is the crucial point, if the U.S. and the Afghan government are really serious about their accusations, they need to cooperate with Pakistan to ensure that Pak-Afghan border is sealed and no movement takes places by anyone in either direction. The fact that Kabul continues to refuse such cooperation exposes its malafide intentions. Indeed, its refusal to cooperate indicates that it wants to keep the border porous and unchecked so that TTP and Daesh terrorists can be infiltrated into Pakistan. In this the Indians also have an obvious vested interest. What the U.S. seeks to gain is, however, most intriguing.
On the other hand, Pakistan’s intentions and actions amply demonstrate that Islamabad is genuine in its efforts to ensure foolproof border management with Afghanistan which also underscores its bonafides regarding cross-border terrorism allegations. The positions of both sides in this regard, therefore, deserve closer scrutiny.


Pakistan inherited the 2611 km border with Afghanistan from the British Indian government at the time of independence in 1947. This border, demarcated by a British official, Sir Mortimer Durand and hence also called the Durand Line, was agreed to by Afghanistan’s Amir Abdul Rehman in 1893. It was subsequently reaffirmed by the British and the Afghans in the Anglo-Afghan Treaty of 1921. Since then the Durand Line has been accepted internationally as the border, which, under the Vienna Convention on the Law of Treaties has been inherited by the succeeding State of Pakistan from the British. It was only in 1949, that the Afghans unilaterally declared that they considered the Durand Line border as an “imaginary line” and refused to accept it as the international border. However, under international law and under the UN Charter such Afghan claims have no basis in law or fact.


Moreover, under international law and the Durand Line agreement, Pakistan remains well within its rights to control, restrict and deny the so-called “easement rights” for tribes living on both sides of the border, which are not part of the original agreement but evolved over time as a practice to facilitate interaction and movement of the tribes without travel documents or visas. However, since these easement rights are now being violated and abused by local tribes as well as others to engage in terrorism, smuggling, drug trafficking, weapons' transfers and unchecked movement of refugees, Pakistan is legally justified to control and even curtail such movement.


The border agreement and international law also do not prevent Pakistan from taking any measures, such as fencing, visas' requirements and border checks to regulate movement in either direction across the border.


Despite the negative stance taken by successive Afghan governments regarding the border, including promotion of the so-called Pashtunistan issue and sanctuary given to dissident Baloch and Pushtoon groups, as well as the inflow of Afghan refugees into Pakistan following the Soviet invasion of Afghanistan in 1979, the problem of border management did not arise for the most part until Kabul started accusing Pakistan of supporting Taliban attacks in Afghanistan. As a result, in 2006, Pakistan decided to fence parts of the border and installed a biometric system at the Chaman border crossing in 2007 as a pilot project. However, the Afghans reacted violently with mobs attacking Pakistani posts. In 2013, clashes erupted between Pakistan and Afghan troops when Pakistan tried to repair a gate at the Gursal military post. It is also important to note that after the Afghan forces assumed greater control of the border areas following draw-down of U.S./NATO troops from the area, there has been a sharp rise in cross-border shelling and attacks on Pakistani positions. Afghan forces also resorted to firing to prevent installation of a fence by Pakistan despite being 30 metres inside Pakistan territory at Torkham which led to closure of the border for 5 days.


After the APS attack which was clearly planned and executed by TTP groups based in Afghanistan, there was a renewed determination to ensure an end to terrorist infiltration from that country. The National Action Plan adopted in 2015 called for more effective border controls which began to be implemented with the installation of a gate at the Torkham border alongwith requirement for passports and visas for all Afghans entering Pakistan. Again the Afghans resorted to unprovoked firing which led to the death of a Pakistani army officer. Similar incidents of violence by Afghan soldiers and organized mobs also took place on the Chaman border during this period.


This trend has continued despite numerous flag meetings between officials of the two sides and tripartite meetings between Pakistani, U.S. and Afghan military officials as well as efforts made by the Advisor for Foreign Affairs and the Army Chief directly with the Afghan leadership. The U.S. military Commander in Afghanistan has also been involved in this process. But all these efforts by Pakistan have not met with any lasting success.


In its latest attempt in border management, Pakistan has resorted to unilateral steps in view of Afghan refusal to cooperate, with installation of vigilant border controls at the 2 major entry points at Torkham and Chaman as well at Arandu in Chitral, at Ghulam Khan in North Wazirstan, Angoor Adda in South Waziristan, Nawa Pass in Mohmand, Gursal in Bajaur, and Kharlachi in Kurram. Apart from passport and visa controls there is also going to be selective fencing of certain border areas.


Ensuring effective border controls will be crucial for the successes of Pakistan’s military operations to contain and defeat terrorism by the TTP and its Daesh collaboration based in Afghanistan. It would also be critical for the safe operations of the CPEC by neutralizing the terrorist activities of Baloch terrorists from their Afghan safe havens.


Apart from Pakistan, effective border controls will also be essential for the interests of regional countries, especially China, Iran and Russia, which are also threatened by Afghan based TTP and Daesh terrorists. However, a big question remains over the intentions and role of the U.S. If Washington is really interested in defeating terrorism, particularly the emerging threat posed by the TTP-Daesh combined, it should actively cooperate with Pakistan and other regional powers to neutralize these groups. So far it has not done so and does not seem inclined in that direction. Instead the U.S. continues to harp on the allegations of Pakistani support to the Afghan Taliban, a charge with which they are now also accusing Russia and Iran. Meanwhile no real effort is being made by the U.S. to reverse the Indo-Afghan backing for terrorists operating against Pakistan and which also threaten other regional countries. This policy is doomed to fail even if the U.S. increases its troop levels in Afghanistan since the stalemate with the Taliban will continue and a few thousand more American troops will not be able to accomplish what the U.S. and NATO forces have failed to achieve despite fighting at full strength for 16 years. The only solution for the U.S. lies in cooperating with Pakistan to end Afghan-Indian support for TTP-Daesh terrorism against Pakistan and to support an intra Afghan dialogue to end the military stalemate in that country and leading to a political solution.


From Pakistan’s security perspective, there is a need to toughen its policy of dealing with Afghan based terrorists and if the Afghans and the Americans remain obdurate, the fight may have to be taken into Afghan territory to destroy terrorist bases in keeping with the international law principle of hot pursuit. Pakistan would also need to upgrade its border controls with greater resort to fencing vulnerable parts of the border and even using land mines where considered necessary. As long as these steps are taken within Pakistani territory, Pakistan would be acting well within the parameters of international law and the border agreement with Afghanistan. At the same time together measures would need to be taken to ensure the permanent return of Afghan refugees to their country.

 

The writer is a former Ambassador of Pakistan.

Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
08
June

افغانستان کی موجودہ صورتحال ۔ اندیشے اور لائحۂ عمل

Published in Hilal Urdu June 2017

افغان امور کے ماہر‘ ممتاز صحافی اور تجزیہ نگار عقیل یوسف زئی کی تحریر

افغانستان اور پاکستان کے تعلقات اس کے باوجود بہتر نہیں ہوپارہے کہ دونوں ممالک کو نہ صرف ایک جیسے حالات خصوصاً دہشت گردی کا سامنا ہے بلکہ ان کے درمیان بہتر تعلقات علاقے اور خطے کے امن اور استحکام کے لئے بھی ناگزیر ہیں۔ حال ہی میں جب لندن اجلاس کے تناظر میں طویل وقفے کے بعد دونوں ممالک کے حکام کے رابطے بحال ہونا شروع ہوگئے تو پاکستان نے جذبہ خیرسگالی کے تحت جہاں ایک طرف نہ صرف سپیکر قومی اسمبلی کی قیادت میں ایک اعلیٰ سطحی پارلیمانی وفد کابل بھیجا بلکہ اعلیٰ ترین سطح کے عسکری وفود بھی کابل گئے جہاں انہوں نے اعلیٰ حکومتی عہدے داران‘سیاستدانوں اور حکمرانوں سے تفصیلی ملاقاتیں کیں اور اس عزم کا اظہار کیا کہ پاکستان اپنے اس پڑوسی اور برادر ملک کے ساتھ بہتر اور دوستانہ تعلقات کا خواہاں ہے۔ پارلیمانی وفد میں پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کے اہم رہنما شامل تھے جن میں تین کا تعلق پشتون قوم پرست جماعتوں سے تھا‘ تاہم اس دورے کے بھی وہ نتائج سامنے نہیں آئے جس کی توقع کی جارہی تھی۔ وفد میں شامل قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب خان شیرپاؤ کے مطابق دورے کے اختتام پر طے پایا تھا کہ افغان حکومت نیک خواہشات اور خیرمقدمی کلمات پر مشتمل ایک اعلامیہ جاری کرے گی تاہم افغان حکومت نے ایسا کرنے سے گریز کیا۔ وفد کے بعض ارکان کے مطابق افغان صدر اشرف غنی کے ساتھ ان کی تقریباً پانچ گھنٹے پر مشتمل طویل نشست ہوئی جس کے دوران انہوں نے متعدد بار سخت لہجہ اور رویہ بھی اپنایا تاہم وفد کے ارکان ان کو مسلسل یہ یقین دہانی کراتے رہے کہ ماضی کی شکایات کے بجائے موجود حالات اور مستقبل کے چیلنجز کے تناظر میں آگے بڑھا جائے۔ ان ارکان کے مطابق سینٹ کے چیئرمین نے تو میزبانی کے آداب کو بھی خاطر میں نہ لاتے ہوئے ملاقات کے دوران سخت رویہ اپنایا اور یکطرفہ الزامات لگائے‘ تاہم پاکستانی وفد نے صبرو تحمل کا مظاہرہ کیا اور ان پر زور دیا کہ وہ مثبت اور دوستانہ طرزِ عمل اپنائیں۔ وفد نے حکومت پاکستان کی طرف سے ڈاکٹر اشرف غنی اور سابق افغان صدر حامد کرزئی کو دورہ پاکستان کی الگ الگ دعوتیں بھی دیں اور وزیر اعظم کا خصوصی پیغام بھی سپیکر قومی اسمبلی کے ذریعے افغان صدر کو پہنچایا۔ حامدکرزئی نے خلافِ توقع یہ دعوت قبول کرلی اور توقع کی جارہی ہے کہ وہ پاکستان کا دورہ کریں گے تاہم ابھی وفد کی واپسی ہوئی ہی تھی کہ ڈاکٹر اشرف غنی نے ایک بیان میں مؤقف اپنایا کہ وہ پاکستان کا دورہ اس وقت تک نہیں کریں گے جب تک پاکستان‘ ان کے بقول‘ بعض ان افراد کی حوالگی یا گرفتاری کا وعدہ پورا نہیں کرتا جو کہ افغان حکومت ایک فہرست کی صورت میں دے چکی ہے۔ حالانکہ ایسی ہی ایک فہرست پاکستان بھی افغان حکومت کو دے چکا ہے۔ جناب اشرف غنی کے اس غیرلچک دار رویے اور مشروط طرزِ عمل نے اعلٰی سطحی پاکستانی وفد کے دورۂ کابل کی امیدوں اور نتائج پرپانی پھیر دیا اور یہ نتیجہ اخذ کیا جانے لگا کہ افغان حکمران شاید مصالحت یا مذاکرات کے موڈ میں نہیں ہیں۔ اسی دوران جب افغانستان کے نمائندہ صحافیوں کا ایک وفد پاکستان کے دورے پر آیا تو دوسروں کے علاوہ ڈی جی آئی ایس پی آر نے بھی ان کے اعزاز میں ایک استقبالیہ دیا جس کے دوران انہوں نے دیگر اعلیٰ حکام کی موجودگی میں کئی گھنٹوں تک افغان صحافیوں کی شکایات اور تجاویز کو بڑے غور سے سنا اور ان کو یقین دہانی کرائی کہ پاکستان ایک ذمہ دار ملک کی حیثیت سے افغانستان کے امن کے لئے اپنا مثبت کردار ادا کرتا رہے گا۔ اس نشست کے علاوہ ایسے ہی جذبات کا اظہار مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے بھی کیا تھا۔ یہ طرزِعمل اس کوشش کا ایک اظہار تھا جس کے ذریعے افغان حکمرانوں‘ سیاستدانوں اور میڈیا کو یہ پیغام دینا تھا کہ پاکستان بہت سے تحفظات اور خدشات کے باوجود اچھے تعلقات کا خواہاں ہے۔


ابھی اس تمام پیشرفت پر تبصرے اور تجزیئے جاری تھے کہ چمن بارڈر پر دونوں ممالک کی فورسز کے درمیان باقاعدہ جھڑپیں ہوئیں جبکہ اسی شام افغان فورسز نے طورخم بارڈرپر بھی حملے کئے۔ اس افسوسناک واقعے کے نتیجے میں متعدد شہریوں کے علاوہ فورسز کے کئی اہلکار جاں بحق ہوگئے اور پاکستان کو ایک بار پھر چمن بارڈر بند کرنے کا اقدام اٹھانا پڑا۔ افغان حکام خصوصاً قندھار کے سکیورٹی انچارج نے اس نازک ایشو پر ایک ذمہ دار عہدیدار کے رویے کے برعکس ایسا طرزِ عمل اختیار کیا جس سے کشیدگی میں مزید اضافہ ہوا اور اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ مصالحت اور متوقع مذاکرات کے امکانات ایک بار پھر معدوم ہوگئے۔ تصادم کے بارے میں دونوں ممالک کے الگ الگ بیانات اور الزامات پر بحث کئے بغیر اس کا خلاصہ یوں بیان کیا جاسکتا ہے کہ قندھار کے سکیورٹی انچارج نے اپنی فورسز کے علاوہ عوام کو مشتعل کرنے میں بھی کوئی کسر نہیں چھوڑی اور وہ ایک حکومتی عہدیدار کے بجائے ایک ایسے راہنما دکھائی دیئے جو کہ جلتی آگ پر مٹی کا تیل ڈالنے کا ماہر ہو۔ افغان حکام نے اس موقع پر حد بندی یا سرحدی حدود کا ایشو بھی اٹھایا جو کہ مزید تلخی کا سبب بن گیا اور معاملات بگڑتے رہے۔ اس تمام معاملے کے دوران افغان میڈیا نے بھی ایشوز کو مزید بگاڑنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی اور یوں یکطرفہ طور پر کشیدگی کو مزید ہوا دینے کی کوشش کی گئی۔ دو مطالبات پھر سے دہرائے گئے ۔ ایک تو یہ کہ پاکستان حقانی نیٹ ورک اور بعض دیگر کے خلاف مزید کارروائیاں کرے اور دوسرا یہ کہ لسٹ میں شامل ان 90 افراد کی حوالگی یا گرفتاری کا اقدام اٹھاجائے جو کہ بقول افغان حکومت کے پاکستان میں چھپے ہوئے ہیں اس کے جواب میں پاکستان کا موقف یہ رہا کہ مطلوب افراد پاکستان کے بجائے افغانستان میں ہیں‘ اس لئے ان کے خلاف کارروائی کی جائے اور یہ کہ اگر ایسے افراد یہاں پائے گئے جو کہ افغانستان پر حملوں میں ملوث ہیں تو کارروائی سے قطعاً گریز نہیں کیا جائے گا۔ ایک اور مسئلے کو بھی شدت کے ساتھ میڈیا اور عوامی حلقوں کی سطح پر اٹھایا گیا اور وہ یہ تھا کہ ڈیورنڈ لائن کے سٹیٹس پر بحث کا آغاز کیا گیا۔ شعوری طور پر کوشش کی گئی کہ اس معاملے پر افغانستان کے علاوہ پاکستان کے بعض قوم پرست حلقوں کو بھی اشتعال دلایاجائے۔ اس طرزِ عمل نے مسئلے کو اور بھی خراب کرکے رکھ دیا کیونکہ پاکستان بارڈر مینجمنٹ کے معاملے پر افغان حکام کو اپنے مؤقف سے آگاہ کرچکا تھا اور اس ضمن میں عملی اقدامات بھی کئے جاچکے ہیں۔


دفاعی ماہرین کا خیال ہے کہ افغانستان کا یہ طرزِ عمل اپنا ایک مضبوط پس منظر رکھتا ہے اور اس کے متعدد اسباب اور عوامل ہیں۔ ان کے مطابق افغانستان کی حکومت اور اسٹیبلشمنٹ میں اب بھی ایک سے زائدلابیاں اس کوشش میں ہیں کہ دونوں ممالک کو قریب نہ آنے دیا جائے بلکہ کشیدگی کوبھی ہوا دی جائے اور اس کے لئے مختلف قسم کے الزامات اور اقدامات کے ذریعے راستہ بھی ہموار کیا جائے۔ ان ماہرین کے مطابق ان لابیوں یا حلقوں کو بھارت کے علاوہ بعض دیگر ممالک کی سرپرستی بھی حاصل ہے جو کہ افغانستان کے راستے پاکستان پر دباؤ بڑھانا چاہ رہے ہیں اور چاہتے ہیں کہ تعلقات کشیدہ رہیں۔ اس قسم کے لوگ نہ صرف اسٹیبلشمنٹ میں موجود ہیں بلکہ ان کا میڈیا میں بھی بہت اثر و رسوخ ہے اور میڈیا کے بعض اداروں کو اسی مقصد کے لئے باقاعدہ سپانسر بھی کیا جاتا ہے۔

 

افغانستان کے اداروں کی غیر فعالیت اور مخلوط حکومت کے درمیان انڈر سٹینڈنگ کا فقدان بھی ہے تاہم افغان حکمران اور عوام اس کے اعتراف یا اصلاح کے بجائے پاکستان ہی کو ذمہ دار قرار دے کر اپنی سیاسی اور ادارہ جاتی نااہلی پر پردہ ڈالنے کے رویے پر گامزن ہیں۔

حال ہی میں کابل کادورہ کرنے والے ممتاز صحافی ہارون الرشید نے اس ضمن میں رابطے پر بتایا کہ کابل میں انہوں نے عبداﷲ عبداﷲ‘ حنیف اتمراور حامدکرزئی سمیت دیگر اعلی عہدیداران سے بات چیت کی ۔اکثریت کا خیال تھا کہ افغانستان کے خراب حالات کی ذمہ داری محض پاکستان پرہی عائد ہوتی ہے۔ حالانکہ ان کو بتایا گیا کہ جب بھی مذاکراتی عمل کا آغاز ہوتا ہے یا پاکستان افغان طالبان کو میز پر بٹھانے کی کوشش کرتا ہے‘ ایوانِ صدر یا ایسے دوسرے کسی دفتر سے کوئی ایسا بیان جان بوجھ کر جاری کردیا جاتا ہے جو کہ اس پورے عمل کو سبوتاژ کرنے کا سبب بنتا ہے۔ ہارون الرشید کے مطابق اس تاثر میں افغان میڈیا کا بہت بڑا کردار ہے اور اس کے ذریعے مسلسل یہ پراپیگنڈہ کیا جا رہا ہے کہ پاکستان ہی خرابی کا سبب ہے۔ اس پراپیگنڈے کو بھارت کے علاوہ ایران اور امریکہ کی آشیربادبھی حاصل ہے تاہم پاکستان کے سفارتی حلقے اس کو کاؤنٹر کرنے میں بوجوہ ناکام دکھائی دیتے ہیں اور یوں 80 فیصد لوگ پاکستان کے خلاف ہوگئے ہیں۔
سینئر تجزیہ نگار اور اینکر حسن خان کے مطابق ان کے دورۂ کابل کے دوران معلوم ہوا کہ پاکستان کے خلاف افغان حکمرانوں اور عوام کی نفرت میں پہلے کے مقابلے میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔ اور چمن تصادم کو نہ صرف بہت زیادہ اچھالا گیا بلکہ ڈیورنڈ لائن(انٹرنیشنل بارڈر) کو متنازعہ بنانے کی مسلسل کوشش بھی کی گئی۔ ایک سوال کے جواب میں حسن خان کا کہنا تھا کہ اس بار انہوں نے عبداﷲ عبداﷲ اور حامدکرزئی کو پاکستان کے بارے میں کافی بہتر اور مثبت پایااوردونوں لیڈروں نے ملاقاتوں کے دوران اس بات کو تسلیم بھی کیا کہ ہر خرابی کی ذمہ داری پاکستان پر ڈالنے کا رویہ شاید درست نہیں ہے بلکہ بعض دیگر عوامل بھی بدامنی اور عدمِ استحکام کا سبب بنے ہوئے ہیں۔ ان کے مطابق حامد کرزئی پاکستان کے بارے میں مثبت بات کررہے تھے اور ان کی توپوں کا رخ امریکہ کی جانب تھا۔


دونوں سینئرصحافیوں کے مطابق بدامنی اور عدمِ استحکام کی ایک بڑی وجہ افغانستان کے اداروں کی غیر فعالیت اور مخلوط حکومت کے درمیان انڈر سٹینڈنگ کا فقدان بھی ہے تاہم افغان حکمران اور عوام اس کے اعتراف یا اصلاح کے بجائے پاکستان ہی کو ذمہ دار قرار دے کر اپنی سیاسی اور ادارہ جاتی نااہلی پر پردہ ڈالنے کے رویے پر گامزن ہیں۔ اس کے باوجود پاکستان کی کوششیں ہونی چاہئیں کہ بحالی تعلقات کی کوششیں جاری رکھی جائیں تاکہ تلخی یا کشیدگی کے نتیجے میں پاکستان کے مخالف ممالک کو یہ موقع نہ ملے کہ وہ افغانستان یا اس کی سرزمین کو پاکستان کے خلاف استعمال کریں۔


سنٹرل ایشیا کے دروازے پر واقع افغانستان کے صوبہ بلخ کے دارالحکومت مزار شریف میں کئے گئے طالبان حملے میں 150 سے زائد افراد جاں بحق جبکہ درجنوں دیگر زخمی ہوگئے جس کے بعد افغانستان کی سکیورٹی سے متعلق سوالات شدت سے سراٹھانے لگے تو ان کے وزیرِ دفاع اور آرمی چیف نے اپنے عہدوں سے استعفے دے دیئے جو کہ افغان صدر اشرف غنی نے قبول بھی کئے۔ افغان طالبان نے حملے کی ذمہ داری قبول کرلی ہے جو کہ اس جانب واضح اشارہ ہے کہ طالبان کی نہ صرف یہ کہ قوت بڑھتی جارہی ہے بلکہ ان کی کارروائیاں جنوبی اور مشرقی افغانستان یا پشتون بیلٹ تک محدود نہیں رہی ہیں۔ اس سے قبل قندوز میں طالبان نے جہاں ایک طرف چار بار کامیاب حملے کئے وہاں انہوں نے کئی روز تک صوبائی دارالحکومت کو اپنے قبضے میں بھی لئے رکھا۔ جبکہ ہرات بھی مسلسل حملوں کی زد میں ہے اور یہاں پر اب بھی حملے اور جوابی حملے جاری ہیں۔ یہ تینوں صوبے اس حوالے سے انتہائی اہمیت کے حامل ہیں کہ ان کو سنٹرل ایشیا اور ایران کے گیٹ ویز کے پس منظر میں اہم سمجھا جاتا ہے۔ مزار شریف‘ بلخ‘ قندوز اور پنج شیر کو نہ صرف انتہائی جغرافیائی اہمیت حاصل ہے ‘بلکہ افغانستان کی 50 فیصد سے زائد بیورو کریسی کا تعلق بھی ان ہی صوبوں سے رہا ہے اور اکثر نان پشتون لیڈروں کے نہ صرف یہ آبائی علاقے ہیں بلکہ یہ ان کی قوت کے مراکز بھی ہیں۔ روس کے ساتھ جنگ کے علاوہ نائن الیون اور اس سے قبل طالبان کے داخلے جیسے اہم ادوار کے دوران بھی مزار شریف اور بعض دیگر شمالی علاقے جنگوں کے براہِ راست اثرات سے محفوظ رہے۔ اور یہی وجہ ہے کہ یہ علاقے تعلیم‘ سہولیات اور ترقی کے حوالے سے دوسرے صوبوں سے کافی آگے ہیں۔ شمالی افغانستان کے لیڈروں کی ہمیشہ یہ کوشش رہی کہ ان علاقوں کو جنگوں اور حملوں سے دور رکھا جائے اور سال2015 کے وسط تک وہ اس کام میں کامیاب بھی رہے تاہم 2016 کے دوران طالبان اور ان کے اتحادیوں نے ان علاقوں کا نہ صرف رخ کیا بلکہ یہاں پر خوفناک حملے بھی کرائے اور حالیہ حملے اسی سلسلے کی کڑی ہیں اس بار فرق یہ سامنے آیا ہے کہ طالبان نے علاقے کی سب سے بڑی فوجی چھاؤنی میں بغیر کسی مزاحمت کے گھس کر 150 سے زائد افراد کو زندگی سے محروم کردیا۔ حملہ آوروں نے کئی گھنٹوں تک چھاؤنی کے اندر رہ کر فورسز سے مقابلہ کیا اور یہ مقابلہ اس وقت تک جاری رہا جب تک آخری حملہ آور زندہ رہا۔افغان طالبان کے ہاتھوں‘ مساجد‘ مزارات اور تعلیمی اداروں کو اس نوعیت کے حملوں کا نشانہ بنانے کی روایت بہت کم رہی ہے تاہم اس بار انہوں نے مسجد میں نماز پڑھنے والوں کو بطورِ خاص ٹارگٹ کیا اور اس سے قبل بھی بعض ایسے حملے مشاہدے میں آئے ہیں جن سے ثابت یہ ہوتا ہے کہ پاکستان کی طرح اب وہاں بھی ماضی کی روایات کے برعکس کوئی بھی طبقہ حملوں سے محفوظ نہیں رہا ہے۔


افغانستان کے علاوہ امریکہ سمیت پوری دنیا میں نہ صرف یہ کہ اس حملے کی شدید مذمت کی گئی بلکہ دو اعلیٰ ترین ریاستی ذمہ داران کے استعفوں کا عوامی سطح پر خیرمقدم بھی کیاگیا تاہم کابل کے باخبر حلقوں کا کہنا ہے کہ یہ استعفے افغان چیف ایگزیکٹو ڈاکٹر عبداﷲ عبداﷲ اور شمال کے طاقتور کمانڈر رشید دوستم کے کہنے پر اور دباؤ پر دیئے گئے ہیں۔ مزار شریف کو جغرافیائی اور دفاعی ماہرین پورے خطے کا جغرافیائی مرکز سمجھتے ہیں کیونکہ اس سے کچھ فاصلے پر ازبکستان اور تاجکستان کی سرحدیں واقع ہیں جبکہ یہ کابل‘ ہرات اور قندوز کو آپس میں ملانے کا ایک بڑا ذریعہ بھی ہے۔ اقوامِ متحدہ کی سال2013 کی ایک رپورٹ کے مطابق صوبہ بلخ میں 60 فیصد تک تاجک جبکہ 15 فیصد اُزبک رہ رہے ہیں۔ ان کے مقابلے میں ترکمان اور پشتون دس دس فیصد کے تناسب سے یہاں رہائش پذیر ہیں۔ رواں برس کے دوران دونوں سنٹرل ایشین سٹیٹس نے مزار شریف اور بعض دیگر شمالی علاقوں کے لئے بڑے اہم منصوبے منظور کئے اور خیال کیا جارہا ہے کہ اس بیلٹ کو جغرافیائی اہمیت کے تناظر میں غیر معمولی توجہ اور ترقی دی جارہی ہے۔ حالیہ حملے نے اس تمام عمل کے مستقبل کو سوالیہ نشان بنا دیا ہے اور عالمی میڈیا کے بعض باخبر حلقوں کا کہنا ہے کہ شمالی افغانستان میں حملوں کی تعداد میں اضافہ ایک عالمی اور علاقائی گیم کا حصہ ہے اور اس گیم کو بیرونی طاقتوں کی سرپرستی حاصل ہے۔ کابل میں قائم کولیشن گورنمنٹ کی وزارتوں کی عجیب و غریب تقسیم‘ ان کے درمیان کوآرڈینیشن کے فقدان اور شمال کو شیئرز سے زیادہ حکومتی عہدے دینے کے فارمولے جیسے اقدامات کو بھی افغان اداروں اور فورسز کی ناکامی کے اسباب میں شامل کیا جارہا ہے۔ تاہم سب سے بڑا سوال اب بھی وہی ہے کہ اس قسم کے حملوں کی آڑ میں امریکہ یا بعض دیگر طاقتیں افغانستان کو پھر سے میدانِ جنگ بنانے تو نہیں آرہی ہیں؟ ننگر ہار پر عین ماسکوکانفرنس کے دوران مدر آف آل بم گرانے کا امریکی اقدام اور کانفرنس میں امریکہ کی شرکت سے انکار کے علاوہ بعض دیگر اقدامات اور بیانات کو بھی اسی تناطر میں دیکھا جارہا ہے۔ بظاہر محسوس یہ ہو رہا ہے کہ جنگ کا دائرہ افغانستان کے تقریباً تمام صوبوں یا علاقوں تک پھیلایاگیا ہے اور پانچ سرحدیں ایسی ہیں جہاں طالبان نہ صرف یہ کہ پہنچ چکے ہیں بلکہ وہ اپنا اثر و رسوخ بھی بڑھا رہے ہیں اور کامیاب حملے بھی کررہے ہیں۔ پاکستان اور ایران کے بعد اب ازبکستان اور تاجکستان کی سرحدیں بھی غیر محفوظ ہوگئی ہیں اور اگر صورتحال یہی رہی تو اس کے اثرات بعض دیگر سنٹرل ایشین سٹیٹس کے علاوہ روس پر بھی پڑیں گے۔


یہ حالات ایک ایسے افغانستان کا منظر نامہ پیش کررہے ہیں جہاں نہ صرف یہ کہ سول وار کی شدت میں مزید اضافے کا خدشہ ہے بلکہ یہ یقینی خطرہ بھی موجود ہے کہ شاید امریکہ اپنی فورسز اور ان کے اختیارات میں مزید اضافہ کرے اور اس کے نتیجے میں دوسری عالمی اور علاقائی طاقتیں اپنے مفادات کے لئے میدان میں اُترآئیں۔ دوسری طرف داعش کا پھیلاؤ اور پاکستان‘ افغانستان کی نئی نسل میں مقبولیت کی اطلاعات بھی پریشان کن ہیں۔ حملوں کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے ان ریاستوں کے علاوہ عالمی طاقتیں کیا حکمت عملی طے کرتی ہیں‘ مستقبل کے منظر نامے اور صورتحال کا انحصار اسی پر ہے۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

ضرب عضب کے جوان


دیکھو مرے وطن کے جوانوں کو اِک نظر
سینہ ہے یا فولاد یا پھر شیر کے جگر
باطل ٹھہر نہ پائے کبھی ان کے سامنے
لڑتے ہیں کیسے جم کے ماؤں کے یہ پسر
سایہ ہو میری فوج پہ ربِّ جلیل کا
ہوتی رہے یہ کامراں، تا عمر، تاحشر
کیسے ہوں یہ صفات بیاں اِن کی اے حکیمؔ
ہیبت ہے بس عدو کے لئے ان کی اک نظر

حکیم شہزاد

*****

 
07
June

Waziristan at Peace

Written By: Jennifer McKay

North Waziristan was the last of the seven tribal agencies, along with Swat, to be cleared. Operation Zarb-e-Azb has been successful with the Army, Frontier Corps and Air Force, carrying out courageous and intensive operations. Along the way, there have been many sacrifices. Several hundred soldiers were martyred during operations. Their families will always grieve their loss but all should always remember their sacrifice in making the country safer.

A new kind of normalcy is taking root in North Waziristan. After years of being at the mercy of terrorist groups, the local people are finally free to build a new and better life. The rapid change in this once ‘no-go’ area is impressive.


What’s happening in North Waziristan is too extensive to do justice to in one article. This perspective will be the first of three in a series to provide insights into this, until now, rarely visited area. Driving from Bannu through Mir Ali into Miranshah on new roads, through valleys scattered with date palms, and surrounded by the extraordinary rugged beauty of the hills and mountains, is exhilarating. Arrival in Miranshah and touring around brings many surprises about this spectacular and intriguing region.


North Waziristan was the last of the seven tribal agencies, along with Swat, to be cleared. Operation Zarb-e-Azb has been successful with the Army, Frontier Corps and Air Force, carrying out courageous and intensive operations. Along the way, there have been many sacrifices. Several hundred soldiers were martyred during operations. Their families will always grieve their loss but all should always remember their sacrifice in making the country safer.

 

Miranshah is just few kilometres away from the Afghanistan border. With what was then a porous border, terrorists who managed to flee the Army would cross into Afghanistan when the chase got too hot. What I have never quite understood, is why with all the criticism of Pakistan "not doing enough", and at a time when there were massive numbers of U.S. and international forces in Afghanistan, as well as the Afghan Army, so little was done to stop them when they fled across the border or those from the Afghan side attempted to infiltrate into Pakistan. One can only speculate.

Several thousand terrorists were killed. Others were captured or surrendered. Many were not Pakistanis. Uzbeks, Chechens, and other nationalities joined forces and based themselves with local terrorists amongst the local population in North Waziristan. The level of capability of the terrorist groups is far removed from the common perception. Their operations were quite sophisticated. But that does not flatter their intelligence, merely highlights the level of their capacity and monstrosity. Networks of tunnels under houses and markets, barbaric slaughter rooms, ingenious camouflage of air circulation for the tunnels and underground war rooms were discovered during the operations. A sophisticated media centre with multiple screens, communications’ equipment, and a medical centre were hidden under a mosque.


A walk-through of a reconstruction of a terrorist ‘markaz’ with General Officer Commanding, North Waziristan, Major General Hassan Hayat, showed just what the Army was facing. A relatively innocent-looking building – similar to many – could ingeniously disguise a maze of tunnels and huge caches of weapons. A display of just a fraction of the weapons, communication equipment, explosives, suicide vests, gas cylinders and other deadly equipment for vehicle-borne-explosives and improvised explosive devices, gives rise to the thought of what would have happened if just a fraction of the massive cache had made its way into the cities and villages of Pakistan. Terrorists were buying explosives as they would buy spices from the market.

 

wazirstanpeace.jpgUnder the markaz were rooms where young suicide bombers spent their time preparing for what they were told would be paradise. Viewing a room decorated with photos of pretty girls, beautiful scenery, carpets and cushions, one could only wonder about the state of a child’s mind as he prepared to meet a ghastly end. The boys were kept intoxicated to keep them under the power of their handlers. The barbarism and sheer cowardice of sending children to their death, taking their innocence with them, is beyond the comprehension of any normal human being.


One thing that I found almost comical amongst the paraphernalia captured by the Pakistan Army, were wigs – long, black, curly wigs. This does conjure up some interesting visions of the purpose of such glamour-enhancing objects. Perhaps even terrorists fall victim to the perils of vanity or perhaps they just wanted to look scary in their videos. No other cosmetic enhancements were sighted.

 

The majority of families have returned home and more will follow soon including those who moved across the border to stay with families in Afghanistan. Life is returning to normal. Families and communities are busy rebuilding, restocking their animals, and planting crops. Freedom has come at a price but there is a determination to live in peace and become a prosperous and educated region.

Miranshah is just few kilometres away from the Afghanistan border. With what was then a porous border, terrorists who managed to flee the Army would cross into Afghanistan when the chase got too hot. What I have never quite understood, is why with all the criticism of Pakistan "not doing enough", and at a time when there were massive numbers of U.S. and international forces in Afghanistan, as well as the Afghan Army, so little was done to stop them when they fled across the border or those from the Afghan side attempted to infiltrate into Pakistan. One can only speculate.


The border is now secured. New forts have been built on mountains and ridges. The crossing points are closed and a ‘smart’ fence is being constructed on the Pakistan side of the border. The terrain is a challenge for the erection of such a barrier. Mountains, valleys and crevices form a chain that stretches the entire length of the border. The new Border Management arrangements will do much to reduce the movement of terrorists from Afghanistan into Pakistan and for local felons to flee.


Miranshah today would be unrecognizable to those who served there in earlier times. The market is bustling and a new shopping centre is under construction by a private investor. A modern bus terminal that will be a comfortable starting place for journeys to other cities like Lahore is also about to begin construction.


In the cantonment, trees, including many varieties of fruit trees, and flowers have been planted, the streets are immaculate, and in the midst of all this, stands a small Christian Church. It is hard to imagine that only a short time ago, this whole area was under attack from rockets, and that the tanks I saw parked near beautiful flowering trees were in live action.

 

wazirstanpeace1.jpgWhile there is little doubt that some profited from the presence of the terrorist groups, others who had no option but to stay through the dreadful times of terror, abuse and intimidation, were courageous. Through courage and determination, they managed to adapt to their circumstances and survive to see the onset of peace.


Millions of people were displaced from their homes for their own protection as military operations were launched to defeat the terrorists. There was no other option to ensure civilian safety. When the Army moved the population out to launch the military operations, many lost their homes, their livestock, crops, and livelihoods. Some were fortunate that in displacement they could stay with host families or even rent a house elsewhere. But for others, it was the indignity of a camp for displaced persons. Try to imagine a Pakistani summer or winter in a tent with your whole family. It would be very unpleasant indeed.


The process to return home takes time, as families cannot return until a village is de-notified and basic facilities are reconstructed by the Army and government to facilitate resettlement. On arrival at the checkpoint for North Waziristan, all family members undergo biometric checking and clearance to ensure they receive their proper entitlements and can move about. The process is efficient and when I visited, there were only very small queues. No weapons are allowed and vehicles are inspected for compliance with the rules. The biometric checking process is mandatory every time any person enters or leaves the area to ensure that security is maintained.


The majority of families have returned home and more will follow soon including those who moved across the border to stay with families in Afghanistan. Life is returning to normal. Families and communities are busy rebuilding, restocking their animals, and planting crops. Freedom has come at a price but there is a determination to live in peace and become a prosperous and educated region.


Women often suffer most in conflict and complex emergencies. Not being used to living in camps where there is little privacy is particularly difficult. I spoke with many women and girls about the tough times and how they see their future. A number of well-equipped Women’s Vocational Training Centres have been established for women and girls to learn dressmaking, knitting, cookery, and techniques for hair and beauty treatments. Each centre has a bright and cheerful nursery for babies and small children to be cared for and entertained while their mothers are in class. The kitchens in the women’s centres would be the envy of any chef in a major city.


Away from the men, the women are talkative, warm, and engaging. There were emotional moments as they shared their stories. An elderly lady in a village that had been in a terrorist stronghold and the scene of significant operations, told me, “I only have Allah now. My family is all dead.” Hugging me tightly, she went on to whisper, “But I have peace, too”. Surrounded by the women and the children of the village, it was clear that she also would be nurtured and cared for by her community.


Another woman told me of the terrible times she faced when the terrorists kidnapped her husband. In between tears remembering what it was like, she managed to smile when she said, “but look now, we have peace at last and we thank the Army for making us safe. Our girls are going to school and learning so much. They will have a better life than me”.


Fathers waited patiently at the school gate for their daughters. One man told the GOC how happy he was that his daughter was going to school and asked if the Army would build yet another girls’ school in his nearby village. It is not possible to have a school in every village but the villages are close together so it is never too far to travel. It is heartening to see that education is a top priority for parents for both their boys and their girls and the Army has a campaign to get all children to school. There is even a Montessori school opening in the area. A beautiful place surrounded by trees and fields, close to a stream, it will be a wonderful place for children to learn.

 

Away from the men, the women are talkative, warm, and engaging. There were emotional moments as they shared their stories. An elderly lady in a village that had been in a terrorist stronghold and the scene of significant operations, told me, “I only have Allah now. My family is all dead.” Hugging me tightly, she went on to whisper, “But I have peace, too”. Surrounded by the women and the children of the village, it was clear that she also would be nurtured and cared for by her community.

Health and education are paramount. In the Boya and Degan area, malaria and leishmaniasis – a painful and debilitating illness caused by sandflies – are problematic. A new small hospital, staffed by Army medical officers, locals and lady health workers, is addressing these issues. The hospital also has cardiac and other equipment including blood-testing facilities not previously available in the area. The presence of these facilities will make a great difference to the health of the local people.


In Miranshah, an impressive hospital is now operational with numerous facilities never previously available. A women’s wing is also under construction. Mir Ali too has a new hospital. Nutrition is a problem not only in FATA but also across the country. A nutrition clinic, operated by an NGO has opened at the Miranshah Hospital. This is a great step forward to improve the nutritional aspects of child health. This is particularly important when 43 percent of children in Pakistan are feeling the effects of stunting due to poor nutrition. More assistance will be needed in the future for the health of the people of Waziristan. Telemedicine is helping fill some of the gaps but more doctors, including gynaecologists and other specialists, nurses, medicines and facilities will make a significant difference.


The crucial question many ask is: “Is this sustainable peace?” I believe so. Peace does not happen overnight. Suspicions and old family feuds are likely to still be present but are now managed. Peace building is a long process but the enthusiastic work done so far by the Army to rebuild and rehabilitate North Waziristan is some of the best I’ve seen. In a short span of time, great roads, schools for boys and girls, hospitals and clinics, model villages, 149 solar water-pumping stations, a Post Office, and PTCL are now all operational. Four schools have been designated as Golden Arrow Army Public Schools and these will be replicated elsewhere in FATA.


The Younus Khan Sports Complex with its beautiful cricket stadium, jogging track, children’s park, and sports courts is impressive and beautifully laid out. On Pakistan Day 2017, 8,000 people gathered in the stadium for the festivities. Astounding really, when you think that not so long ago, this was a place too dangerous to move. The locals' love of sports is apparent everywhere. Smaller sports stadiums have been built in a number of areas and wherever you drive, children and adults are out in the fields or any available space, playing cricket.


As much as some would find this surprising, the potential for tourism is substantial. The beautiful historic hill station of Razmak, at an altitude similar to Murree, is thriving again and surprisingly, even has a very modern coffee shop that would not look out of place in Islamabad or Lahore. The Cadet College has reopened and the students have returned after being evacuated to other Cadet Colleges several years ago when rocket attacks and kidnapping threats made life too perilous. But now Razmak is at peace and thriving. The beautiful vistas and highland climate, and the good roads, provide the opportunity for a whole new industry; Tourism. There are even plans for a festival there in July.


New crops have been planted across the agency. The first crop of potatoes will be harvested with an expected yield of 1,500 tons, providing both nutrition and income for locals. Tunnel and vertical farms have been established for vegetable crops. Poultry and fish farms are becoming prosperous. A million new trees are taking root and will provide fruit, shade, and stabilization on hillsides. Most importantly, the community is engaged in the process every step of the way. Pine nuts, olives, and other ‘gourmet’ ingredients provide potential high-return markets and exports.


The youth are engaged in learning skills at vocational centres that will provide them with ‘work-ready’ capabilities and certificates in carpentry, electricals, vehicle repairs, and other trades. Construction of roads and infrastructure, and copper mining at Degan, are providing new jobs. Private investors are starting to see the commercial opportunities. Additional infrastructure, particularly electricity, is needed and the government will need to address this costly challenge.


Winning peace in such a historically troubled area has been an enormous challenge but many are now starting to see what extraordinary achievements have been made. Speaking recently at the Royal Military Academy, Sandhurst, at an event to mark the 70th independence anniversary of Pakistan, the Commander British Field Army, Lieutenant General Patrick Nicholas Sanders said, “Pakistan had made breathtaking gains against terrorists and extremists in tribal areas unmatched in over 150 years”. He went on to say that Pakistan Army had done more than anyone to combat extremism and terrorism and the achievements were extraordinary.


The Army is doing an impressive job leading the reconstruction and rehabilitation work alongside the FATA Secretariat, the Political Agent and his team. Bilateral and multilateral donors, humanitarian and development organisations are also working in support of initiatives and are continuing to extend their projects now that the area is opening up. The FATA Reforms are underway although these may take some time to be fully implemented.


To build on these massive achievements, it is also up to the broader community to support peace in North Waziristan and other regions of FATA through ‘adopting’ schools, clinics, and other initiatives that provide long-term benefits for stability. North Waziristan may seem remote from the cities of Pakistan but peace in this once-troubled area, also means peace in the cities.

 

The writer is Australian Disaster Management and Civil-Military Relations Consultant, based in Islamabad where she consults for Government and UN agencies. She has also worked with ERRA and NDMA.

Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
09
June

پاکستان۔ بالخصوص کراچی میں امن ہر قیمت پر ۔مگر کیسے

Published in Hilal Urdu June 2017

تحریر: محمود شام

قلم کا قرطاس سے‘ذہن کا انگلیوں سے‘ سوچ کا تحریر سے رشتہ جوڑتے نصف صدی سے زیادہ عرصہ ہوگیا ہے‘ مگر ایسا انتشار‘ ایسی انارکی اور بے یقینی کبھی نہیں دیکھی تھی‘ نہ اتنی تشویش محسوس کی تھی۔ہر جانے والا دن‘ ہر ڈوبنے والا سورج بہت سی اُمیدیں لے کر ڈوب جاتا ہے۔ آرزوئیں رخصت ہوجاتی ہیں۔ اتنی شدت پسندی پہلے کبھی مشاہدہ نہیں کی تھی۔ مذہبی انتہا پسندی بھی عروج پر ہے۔ سیاسی وفاداریوں میں بھی انتہائی شدت ہے بلکہ ایک جنون ہے۔ سیاسی لیڈروں کی پالیسیاں غلط ہوں یا درست‘ ان کے کارکن اور عہدیدار ان کی ہر بات پر آمَنَّا و صَدَّقْنَا کہتے ہیں۔ لیڈر دن کو رات کہے تو یہ بھی لازم ہے کہ دن کو رات مانیں۔ اپنے ذہن کا استعمال ممنوع ہے۔ اسی لئے معاشرے میں ہر طرف ایک افراتفری کی کیفیت نظر آرہی ہے۔ نفسا نفسی بھی ہے۔ اکثریت کی زندگی بہت کٹھن ہوگئی ہے۔

bilkhasooskarachi.jpg
ایک طرف تو یہ عدم استحکام ہے۔ کوئی قوم کو ایک سمت میں لے جانے والا نہیں ہے۔ کسی سیاسی جماعت نے قومی مفادات اور قومی روڈ میپ کا تعین نہیں کیا ہے۔ ایسی صورتِ حال میں جب سرحدوں کے اس پار سے بھی دھمکیاں ملنے لگیں تو دل یہ سوچنے اور ذہن اپنے آپ سے سوال کرنے پر مجبور ہوجاتا ہے کہ کیا ہم محفوظ ہاتھوں میں ہیں۔ یہ سب کچھ اچانک نہیں ہورہا ہے۔ ہم نے جب سے دوسروں کی لڑائیاں لڑنا شروع کی ہیں ‘ جب سے دوسروں کے مفادات کے تحفظ کو اپنی ذمہ داری سمجھا ہے‘ جب سے بڑی طاقتوں کے آلۂ کار بننے شروع ہوئے ہیں‘ ہماری سرحدیں مخدوش ہونے لگی ہیں۔ ہمارے شہروں میں شدت پسندی کا غلبہ ہونے لگا ہے۔ مذہب آپس میں بیر رکھنا نہیں سکھاتا۔ اسلام سلامتی کا مذہب ہے۔ امن کا دین ہے۔ انسانوں کے درمیان محبت پیدا کرتا ہے۔ ہمارے رسول اکرمﷺ ؐ کو اللہ تعالیٰ نے دونوں جہانوں کے لئے رحمت بناکر اتارا ہے۔اسلام کو صوفیائے کرام اور اولیائے عظام نے پیار اور محبت سے دنیا میں پھیلایا۔ اب بھی غیر مسلم پیارے نبیﷺ کے اسوۂ حسنہ اور اچھے مسلمانوں کے کردار کو دیکھ کر اسلام قبول کررہے ہیں۔ لیکن اس مملکت خداد میں مسلمان مسلمان کو جس طرح ہلاک کرنے لگے تھے اور مذہب کا نام استعمال کرکے دوسروں کو تہ تیغ کیا جارہا تھا اس سے بہت زیادہ خوف و ہراس پھیل گیا تھا۔

 

فوجی کارروائی کے ذریعے وقتی طور پر تو استحکام اور امن آجاتا ہے۔ جیسے کہ کراچی میں آگیا ہے لیکن اگر یہاں کے دو کروڑ باشندوں کو صبح شام ٹریفک کی مشکلات پیش ہوں گی ان کے کئی کئی گھنٹے سڑکوں پر گزریں گے۔ لاکھوں کا پیٹرول ضائع ہوگا‘ تو ان کے ذہن پھر بپھرے دریا بن جائیں گے۔ دنیا بھر میں اصول ہوتا ہے کہ فوجی آپریشن کے ذریعے حاصل ہونے والی کامیابیوں کو سول ادارے اپنی فرض شناسی اور دیانت داری سے مستحکم کرتے ہیں ۔ اس کا فقدان نظر آرہا ہے۔

یہ فرقہ پرستی مسلک دشمنی اور اپنے عقیدے کو دوسرے پر مسلط کرنے کا سلسلہ بتدریج ہوا ہے‘ اچانک نہیں ہوا۔ اسے روکنے کی کوشش نہیں کی گئی۔ بلکہ مختلف مقتدر حلقوں کی طرف سے اس کی سرپرستی بھی کی گئی۔ پھر یہ بھی ہوا کہ ہمارے ملک کو اللہ تعالیٰ نے نوجوان اکثریت کی جس نعمت سے نوازا تھا‘ اس کو ہم نے اپنے غلط رویوں ‘ پالیسیوں اور صحیح قیادت نہ ہونے کی بدولت اپنے لیے ایک زحمت بنالیا۔ نوجوان بلا شبہ ایک طاقت ہیں‘ توانائی ہیں‘ ایک دریا ہیں جس میں طغیانی آئی ہوتی ہے۔ اگر اس کے کنارے پختہ نہ بنائے جائیں‘ دریاؤں میں سے ریت نہ نکالی جائے‘ پانی کے لئے گنجائش نہ بڑھائی جائے تو وہ کناروں سے بغاوت کردیتے ہیں‘ چھلک جاتے ہیں‘ آس پاس تباہی مچادیتے ہیں۔ اگر ان کی سوچ سمجھ کر منصوبہ بندی کی جائے ‘ بند باندھے جائیں‘ نہریں نکالی جائیں تو وہ زمین کو زرخیز بنادیتے ہیں۔ نوجوانوں کے ذہن بھی بپھرے ہوئے دریاؤں کی مانند ہیں۔ جہاں ناانصافی بڑھ جائے‘ نفرتوں کے سلسلے ختم نہ ہوں‘ انسانیت کی قدر نہ ہو۔ میرٹ پرروزگار نہ ملے‘ وہاں پھر یہ دریا کناروں سے اچھلنے لگتے ہیں۔ ہر معاشرے میں مقامی طور پر بھی ایسے مافیاز موجود ہوتے ہیں جنہیں دشمن ایجنسیوں کی حمایت بھی حاصل ہوجاتی ہے۔ وہ ان نوجوانوں کو اپنے حلقۂ عاطفت میں لے لیتے ہیں۔ یہ نوجوان کسی ایسی پناہ یا سہارے کی تلاش میں ہوتے ہیں۔ کچھ تنظیمیں انہیں نسلی بنیادوں پر گمراہ کرتی ہیں۔ کچھ زبان کا استحصال کرکے انہیں بغاوت پر اُکساتی ہیں۔ جب سے دنیا میں مختلف واقعات کو بہانہ بناکر مسلمانوں اور اسلام کے خلاف جارحیت شروع ہوئی ہے‘ مغرب نے کبھی جمہوریت کے قیام کا عذر تراش کر‘ کبھی شدت پسندی کا الزام لگاکر مختلف اسلامی ملکوں میں فساد برپا کئے ہیں۔ بعض مسلم حکمران مغربی جارح قوتوں کے گماشتے بن گئے۔ مسلم ممالک میں زیادہ تر شہری آزادیاں نہیں ہیں۔ آج کا پڑھا لکھا مسلم نوجوان اپنے حکمرانوں سے خوش نہیں ہوتا۔ وہ بغاوت کرنے کے لیے سڑک پر آتا ہے تو اسے پابہ زنجیر کردیا جاتا ہے۔ فلسطین اور کشمیر میں تو نصف صدی سے ظلم و ستم ڈھائے جارہے تھے۔ اکثر مسلمان حکمران ہر جبر و تشدد خاموشی سے دیکھ رہے تھے۔بہت سی تنظیموں نے مسلم نوجوانوں کے ان باغیانہ رُجحانات سے فائدہ اٹھایا اور انہیں شدت پسندی کا راستہ دکھایا۔ بے بس اور بے کس نوجوانوں کو ہتھیار دے کر طاقت ور ہونے کا احساس دلایا اور کہا گیا کہ یہ راستہ جنت کا راستہ ہے۔

 

نظریات کی کشمکش زوروں پر ہے۔ تنازعات بڑھ رہے ہیں۔عدالتیں تصفیوں میں بہت دیر لگاتی ھیں۔ حکومتوں کی پہلی کوشش تو یہ ہونی چاہئے کہ سماج میں ٹہراؤ ہو۔ معاملات پہلے تو پولیس اسٹیشن جانے سے پہلے طے ہوں۔ بزرگ اپنا کردار ادا کریں۔ پولیس تک بات پہنچے تو وہ مصالحت کروائیں۔ عدالت تک جانے سے گریز کیا جائے ۔ عدالت میں آجائے تو وہ جلد از جلد فیصلے دیں۔

یہ سارے ملے جلے رُجحانات چاہے وہ لسانی حوالے سے شدت پکڑ رہے تھے یا نسلی اعتبار سے یا پھر فرقہ وارانہ وابستگی کے حوالے سے‘ انہوں نے پُر امن شہروں کو تشدد اور ہلاکت خیزیوں کا مرکز بنادیا۔ کراچی میں لسانی حوالہ لاشیں گراتا رہا۔ بلوچستان میں نسلی شناخت۔ کے پی کے‘ فاٹا‘ جنوبی پنجاب میں مذہبی شدت پسندی۔ پھر فوج اور قوم نے مل کر ان ساری شدتوں‘ عصبیتوں کے خاتمے کا پروگرام بنایا ۔ پارلیمنٹ نے بھی اس عزم کی توثیق کی۔ ضرب عضب کا آغاز کیا گیا۔ فاٹا میں اور دوسرے علاقوں میں انتہا پسندوں اور دہشت گردوں کے ٹھکانے فوجی کارروائی سے ختم کئے گئے۔ اس کے لئے فاٹا کے ہزاروں رہائشیوں کواپنے ہی گھروں سے بے دخل ہونا پڑا۔ کیمپوں میں زندگی گزارنی پڑی۔ ان قابل فخر پاکستانیوں نے یہ قربانی صرف اسی لئے دی کہ پاکستان پُر امن ہوجائے۔ انسانی خون بہنا بند ہوجائے۔ مسلمان مسلمان کو‘ پاکستانی پاکستانی کو ہلاک نہ کرے۔ ہمارے نوجوان دشمنوں اور غیروں کے ہاتھوں میں نہ کھیلیں۔
اب موجودہ سپہ سالار‘ چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر باجوہ نے دو ٹوک الفاظ میں کہا ہے کہ پاکستان میں اور بالخصوص کراچی میں ہر قیمت پر امن قائم کیا جائے گا۔


ضرب عضب کے ساتھ ساتھ آپریشن ردّالفساد شروع کردیا گیا ہے۔ میں کراچی میں رہتا ہوں۔ میں نے 90کے عشرے میں ایسے دن بھی دیکھے ہیں جب چند گھنٹوں میں ہی پچاس ساٹھ سے زیادہ لاشیں گرادی جاتی تھیں۔ ہم نے حکیم محمد سعید شہید جیسے سچے پاکستانی بھی انہی وحشیانہ وارداتوں میں کھوئے۔ کتنے ہی ڈاکٹر شہید کئے گئے۔ سیاسی شخصیتوں کی جانیں لے لی گئیں۔ بعض تنظیموں نے ایک دوسرے کے کارکن بیدردی سے مارے۔ ہم تو خیر رہتے ہی کراچی میں تھے۔ لیکن ان وارداتوں اور خونریزی کے باعث دوسرے ملکوں سے سرمایہ کاروں نے پاکستان آنا چھوڑ دیا۔ خاص طور پر کراچی میں کاروباری میٹنگ کرنے سے منع کرتے تھے۔ زیادہ تر دوبئی میں ملنے کو ترجیح دیتے تھے۔
پاک فوج کی طرف سے پارلیمنٹ کی قرارداد کی روشنی میں اور منتخب حکومت سے مشاورت کے بعد کراچی آپریشن نے بہت کامیابیاں حاصل کیں۔ کیونکہ اس میں کراچی کے شہریوں‘ تاجروں ‘ صنعتکاروں‘ دانشوروں‘ ادیبوں‘ شاعروں‘ علمائے حق اور سیاسی کارکنوں نے بھرپور ساتھ دیا۔ رینجرز سے مکمل تعاون کیا گیا۔ اس میں رینجرز کو بھی قربانیاں دینا پڑیں۔ مگر رفتہ رفتہ کراچی کی رونقیں بحال ہونے لگیں۔ شہریوں کے دل سے خوف رفتہ رفتہ جاتا رہا ‘اب ساحل پر پھر وہی ہجوم دکھائی دینے لگے ہیں۔ سیمینارز‘ کنسرٹس کا سلسلہ بحال ہوگیا ہے۔ کتاب میلے منعقد ہورہے ہیں۔ یونیورسٹیوں‘ کالجوں اورسکولوں میں پھر سرگرمیاں شروع ہوگئی ہیں۔


کراچی ابھی تک 1960 اور 1970 والا تو واپس نہیں آیا ہے لیکن بڑی حد تک شہریوں کا اعتماد واپس آگیا ہے۔ کارخانوں میں ساری شفٹیں کام کررہی ہیں۔ بازاروں اور مارکیٹوں میں خریداروں کے ہجوم نظر آتے ہیں۔ مگر بہتر حکمرانی کا خواب اب بھی شرمندۂ تعبیر نہیں ہوا ہے۔ صوبائی حکومتیں اپنے لئے تو خود مختاری مانگتی ہیں۔ لیکن بلدیاتی اداروں کی خود مختاری سلب کرلیتی ہیں۔ کراچی میں امن تو بحال ہوگیا ہے‘ لیکن بلدیاتی اداروں اور صوبائی حکومت کے درمیان اختیارات کی جنگ نے شہریوں کی زندگی اجیرن بنارہی ہے۔ کچرا اٹھانے کا بندوبست نہیں ہورہا ہے۔ شہر کی ساری سڑکیں کھدی پڑی ہیں۔ ٹریفک ہر وقت جام رہتا ہے۔ صبح ہو‘ دوپہر یاشام بڑی بڑی سڑکوں پر گاڑیاں دوڑتی نہیں‘ رینگنے پر مجبور ہوتی ہیں۔ کوئی تدبر یا حسن انتظام نہیں ہے۔
شہریوں کا ذہنی سکون برباد ہورہا ہے۔ یہ بحث ہوتی رہتی ہے کہ پاک فوج کے آپریشن۔ رینجرز کی مسلسل کاوشوں سے قائم ہونے والا امن خراب حکمرانی‘ شہریوں کی پریشانی‘ پبلک پرائیویٹ سہولتوں کی عدم فراہمی کے باعث پھر بد امنی میں نہ بدل جائے۔


فوجی کارروائی کے ذریعے وقتی طور پر تو استحکام اور امن آجاتا ہے۔ جیسے کہ کراچی میں آگیا ہے لیکن اگر یہاں کے دو کروڑ باشندوں کو صبح شام ٹریفک کی مشکلات پیش ہوں گی ان کے کئی کئی گھنٹے سڑکوں پر گزریں گے۔ لاکھوں کا پیٹرول ضائع ہوگا‘ تو ان کے ذہن پھر بپھرے دریا بن جائیں گے۔ دنیا بھر میں اصول ہوتا ہے کہ فوجی آپریشن کے ذریعے حاصل ہونے والی کامیابیوں کو سول ادارے اپنی فرض شناسی اور دیانت داری سے مستحکم کرتے ہیں ۔ اس کا فقدان نظر آرہا ہے۔


اسی طرح ملک بھر میں ضرب عضب پھر ردّالفساد کے ذریعے حاصل ہونے والی کامیابیوں کو بھی متعلقہ صوبائی حکومتیں ہی مستحکم اور دیرپا کرسکتی ہیں۔ ’ردّالفساد‘ کی اصطلاح بہت وسیع معانی رکھتی ہے۔ مذہبی حوالے سے بھی اور انتظامی نکتہ نظر سے بھی۔ جسے بہت سے شدت پسند اپنے نقطۂ نظر سے جہاد کہتے ہیں‘ جنت کا راستہ خیال کرتے ہیں‘ وہ علمائے حق کے نزدیک فساد ہے۔ اسکا ردّ بہت ضروری ہے۔ اس ردّالفساد کے ذریعے پنجاب‘ سندھ‘ کے پی کے اور بلوچستان سب جگہ ہی کارروائیاں کی جارہی ہیں۔ بہت سے مقامات پر پہلے سے کارروائی کرکے بڑی مقدار میں گولہ بارود‘ ہتھیار پکڑ کے ان دہشت گردوں کے ممکنہ حملوں کو ناکام بنادیا گیا۔ اب تک ہزاروں کی تعداد میں ایسے مشکوک افراد پکڑے جاچکے ہیں‘ ان کے خلاف مقدمات تیار کرکے عدالتوں میں پیش کئے جارہے ہیں۔ ان آپریشنوں کی کامیابی کی شہادت اس امر سے مل سکتی ہے کہ اب پہلے کی طرح بم دھماکوں کی وارداتیں نہیں ہورہیں۔ پبلک مقامات‘ مساجد‘ بازار اور حساس تنصیبات اب محفوظ ہوتی جارہی ہیں۔ پارلیمنٹ کی قرارداد اور سیاسی فوجی قیادت نے ملک کر حکمتِ عملی مرتب کی جسے نیشنل ایکشن پلان کا نام دیا گیا اس میں سے فوری نوعیت کی کارروائی تو ہورہی ہے۔ دہشت گردوں کا صفایا ہورہا ہے۔ فوجی عدالتوں سے سزائیں بھی ہورہی ہیں۔ سزائے موت پر عملدرآمد بھی ہورہا ہے۔


لیکن اس کے ساتھ ساتھ یہ بھی ضروری ہے کہ ان تمام عوامل اور اسباب کا بھی خاتمہ کیا جائے جن کی وجہ سے فساد برپا ہوتا ہے‘ جن محرومیوں سے مجبور ہوکر نوجوان لسانی‘ نسلی اور مذہبی شدت پسند تنظیموں کا آلۂ کار بنتے ہیں۔خاص طور پر بے روزگار نوجوان کو ماہانہ معقول تنخواہ بھی دی جاتی ہے اور اس کے اہل خانہ کی مالی مدد بھی کی جاتی ہے۔


پاکستان میں ایک محتاط اندازے کے مطابق قریباً 12کروڑ افراد 15سے 25سال تک کی عمر کے ہیں۔ یہ قدرت کا بہت بڑا احسان ہے۔ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے‘ یہ ہماری طاقت ہیں‘ توانائی ہیں۔ لیکن مقامی حکومتوں کی بے اختیاری‘ صوبائی حکومتوں کی غیر ذمہ داری اور سیاسی قیادت کی لا پروائی سے یہ قیمتی اثاثہ بوجھ بن رہا ہے۔ ہمارے کونسلروں‘ میئروں‘ چیئرمینوں کی ذمہ داری ہے ۔ قومی اور صوبائی اسمبلی کے ارکان کا قومی فریضہ ہے کہ وہ اپنے اپنے علاقے میں نوجوانوں کی سرگرمیوں کا جائزہ لیں۔ ان کی معاشی کیفیت سے آگاہی حاصل کریں۔ان نوجوانوں کو اگر مناسب تعلیم ملے اور موزوں تربیت تو وہ پاکستان کو حقیقت میں ایشیا کا ٹائیگر بناسکتے ہیں۔ یہ بنیادی طور پر سیاسی قیادتوں کی ذمہ داری ہے۔ پھرہماری غریب اکثریت کو قدم قدم با اثر افراد کے مظالم کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔ جاگیردار اپنے علاقے میں سکول نہیں کھلنے دیتے۔ ہر صوبے کے دیہی علاقوں میں کئی ہزار اسکول بند پڑے ہیں۔ عمارتیں ہیں مگر وہاں کچھ اور ہورہا ہے۔ اسکول ہیں‘ طالب علم ہیں مگر ٹیچر نہیں ہیں۔ پولیس‘ مقامی ایم این اے‘ ایم پی اے کی مرضی سے تعینات ہوتی ہے۔ اس لئے وہ قانون کے مطابق کارروائی کرنے کے بجائے ایم این اے‘ ایم پی اے کا حکم مانتی ہے جس سے نا انصافی جنم لیتی ہے۔ اکثریت کی زندگی اجیرن ہوجاتی ہے ۔ قانون کا نفاذ یکساں نہیں ہوگا۔نا انصافیوں ‘ زیادتیوں اور ظلم کے شکار خاندان ہی پھر شدت پسندوں کا ہتھیار بنتے ہیں اور جب اس کے ساتھ مذہب کا سہارا مل جائے تو یہ اشتراک خطرناک ہوجاتا ہے۔جہالت اور جذباتیت بڑا خطرناک گٹھ جوڑ ہے۔ ملک میں جہالت بھی بہت ہے اور جذباتیت بھی۔ تعلیم ہی انسان کو دلیل کا استعمال سکھاتی ہے۔ برداشت پیدا کرتی ہے۔تحمل کا درس دیتی ہے۔ پاکستانی قوم مزاجاً جذباتی ہے۔ اس لئے وہ آسانی سے چند خود غرض سیاستدانوں اور مذہبی سوداگروں کے ہاتھوں میں کھلونا بن جاتی ہے۔ شایدحکمران طبقے کا ایک حصہ یہ چاہتا ہی نہیں ہے کہ یہ قوم پڑھے لکھے ۔ کیونکہ اگر یہ پڑھ لکھ گئی تو ان کے ہاتھ سے نکل جائے گی۔
پاکستان میں کسی بھی بھائی بہن بزرگ سے پوچھا جائے تو وہ فوج کے اس عزم کی مکمل تائید کرتا ہے کہ ملک میں اور بالخصوص کراچی میں امن ہر قیمت پر۔ امن کسی بھی قوم کی ترقی کے لیے ناگزیر ہوتا ہے۔ پُر سکون ماحول بھی سرمایہ کاری اور نئی صنعتوں کے لئے سازگار ہوتا ہے۔ فوج نے اپنا یہ عزم بڑی حد تک پایۂ تکمیل کو پہنچادیا ہے۔ آج 2017 کے نصف میں 2015-2016 اور اس سے پہلے کے پُر آشوب برسوں کی نسبت حالات بہت زیادہ پُر امن اور پُر سکون ہیں۔ لیکن اگر ان عوامل اور محرّکات کے خاتمے کے لیے کوششیں نہ کی گئیں جن کے باعث 90-80 کے عشروں اور اکیسویں صدی کے اوائل میں شدت پسندی اور افراتفری اور انتشار پیدا ہوا‘ جسے بڑی قربانیاں دے کر پاک فوج‘ رینجرز اور پولیس نے بحال کیا ہے۔ جس کے لئے ہمارے فوجی جوانوں اور افسروں نے بھی قربانیاں دی ہیں۔ پولیس والے بھی شہید ہوئے ہیں۔ اور عام شہریوں‘ بچوں‘ بزرگوں۔ ماؤں بہنوں کا خون بھی بہا ہے تو یہ خونریزی دوبارہ بھی شروع ہوسکتی ہے۔ سکولوں‘ کالجوں اور یونیورسٹیوں میں نصاب کا جائزہ لینا ہوگا۔ مساجد اور مدارس کے خطبات کو بھی دیکھنا ہوگا۔ میڈیا پر بھی نظر رکھنا ہوگی‘ وہاں کوئی تربیت ہے نہ نصب العین‘ وہ مجرموں اور دہشت گردوں کو ہیرو اور شاندار انسان بناکر پیش کرتے ہیں۔ ان کو بہت زیادہ با اثر دکھاتے ہیں۔


نظریات کی کشمکش زوروں پر ہے۔ تنازعات بڑھ رہے ہیں۔عدالتیں تصفیوں میں بہت دیر لگاتی ہیں۔ حکومتوں کی پہلی کوشش تو یہ ہونی چاہئے کہ سماج میں ٹھہراؤ ہو۔ معاملات پہلے تو پولیس اسٹیشن جانے سے پہلے طے ہوں۔ بزرگ اپنا کردار ادا کریں۔ پولیس تک بات پہنچے تو وہ مصالحت کروائیں۔ عدالت تک جانے سے گریز کیا جائے ۔ عدالت میں آجائے تو وہ جلد از جلد فیصلے دیں۔
ہر ادارے کو اس قومی جہاد میں اپنا کردار بھرپور انداز میں ادا کرنا ہوگا۔ تب ہی ہم ہر قیمت پر قائم کئے گئے امن سے فائدہ اٹھاسکیں گے۔ ملک میں استحکام پیداکرسکیں گے۔

مضمون نگار نامورصحافی‘ تجزیہ نگار‘ شاعر‘ ادیب اور متعدد کتب کے مصنف ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

Follow Us On Twitter