06
November

Armed Forces’ Support to CPEC

Published in Hilal English

Written By: S. M. Hali

It is heartening that the Armed Forces of Pakistan have pledged to not only support CPEC but safeguard it with their resources so that the mega project achieves fruition.

China-Pakistan Economic Corridor (CPEC) is the flagship project of President Xi Jinping’s visionary One Belt, One Road (OBOR) mega development venture. CPEC commences from the deep sea port of Gwadar and terminates at Kashgar in the Xinjiang province of China, from where it merges into OBOR and fans out to the Central Asian States to the north and through mainland China to the east. OBOR is also known as the New Silk Road (NSR) and its essential component is the Maritime Silk Road.

 

armedforcessup.jpgThe CPEC holds hope for the people of Pakistan but has also given rise to controversies based on fallacies created by few objectors. The current government, which is the prime mover for the project in Pakistan, has tried to allay doubts regarding the mega project. It has also explained its various dimensions, which somehow have been overlooked by a few fickle minded people. Finally, broad consensus appears to have been reached and the project is gradually moving forward.


It is imperative to realize the OBOR or the NSR project, of which the CPEC is but one part since it promises prosperity and development not only for China and Pakistan but also for many countries located on the ancient Silk Road, particularly the landlocked Central Asia. This project has pinned hopes for progress, prosperity, growth and development on an infrastructure akin to the historic Silk Road. The zeal is cognisable because developing industries demand new markets; technological innovations facilitate international cooperation; better transportation and logistics increase trade efficiency; and growing energy demands require international cooperation. The advent of New Silk Road projects will act as a catalyst towards generating regional cooperation, building political flexibility, enhancing economic growth, offering trade diversifications, investing in transportation, mining and energy sectors.

 

armedforcessup1.jpgCentral Asian Republics bounded by the closed economy of the erstwhile USSR and limited by their geographical location, offering inadequate connectivity, are now being presented with an epoch making opportunity to play their destined roles in world economy. Their enthusiasm knows no bounds because suddenly they are being proffered the unique opportunity to become part of not one but a wide array of infrastructures, circumnavigating the entire globe. Traditionally, it was envisaged that media had shrunk the world to a global village and now it is the Silk Road concept which is bringing nations, races, continents and people closer in a tight-knit community sharing their resources of production, services, energy, information and understanding.


The CPEC is a comprehensive 15 year development project between Pakistan and China spanning 2015-2030 that entails the linking of Gwadar Port to China’s north-western region of Xinjiang through highways, railways, oil and gas pipelines, and an optical fiber link. Strategic energy cooperation between the two countries had been implemented before the proposal of the conception of the corridor. During the former Chinese Premier Wen Jiabao’s visit to Pakistan in December 2010, the National Energy Administration (NEA) of China and the Ministry of Petroleum and Natural Resources of Pakistan issued a Memorandum of Understanding (MoU) on the establishment of energy working-group mechanism. The first meeting of this group was held in August 2011, during which both sides had a thorough exchange of views on the development of electricity, coal, oil, gas and new energy industries. A cooperative program was generated to help Pakistan alleviate energy shortages at the second meeting in Pakistan in May 2012. The group was absorbed in the framework of the CPEC in 2013. At the third meeting in January 2014, both the countries reached consensus on nuclear power, electricity, coal and renewable energy, and agreed to set up a research team to promote energy cooperation for the construction of the CPEC, mainly including coal exploitation, oil and gas extraction, mining and transportation, and electric wire net arrangement, etc.


It is worth mentioning that Pakistan Army had already explored the possibilities of an inter-linked road network in 1997.¹ President Xi Jinping envisaged the project in 2013; subsequently, it was floated in Pakistan during the visit of China’s Prime Minister Li Keqiang in May 2013. Although Pakistan had just undergone General Elections in 2013, Premier Li met Pakistan’s Caretaker Prime Minister, President Zardari and Prime Minister designate Nawaz Sharif to reach important consensus on planning and constructing the CPEC. In February 2014, Pakistan’s President Mamnoon Hussain visited China to discuss the plans for an economic corridor in Pakistan. During Prime Minister Sharif’s visit to China in July 2013, the construction of the CPEC was reiterated. April 2015 was a historic month for Sino-Pakistan relations when Chinese President Xi and Pakistani Prime Minister Sharif signed an agreement worth USD 46 billion for the CPEC.


A discussion on the technical, financial and logistical dimensions of CPEC is beyond the scope of this article but it is imperative to note that the mega project faces a number of challenges. Major threat to the CPEC is from the risks to Pakistan’s security and stability. Militants in the tribal areas, insurgency in Balochistan, violence in Karachi, and growing religious extremism are believed to be serious causes of concern.


India has strong reservations regarding the CPEC – prior to the Indian Prime Minister Narendra Modi’s visit to Beijing in September 2014 – it formally registered a strong protest against the construction of CPEC. According to Indian media, Chinese Ambassador to New Delhi was summoned by the External Affairs’ Ministry and informed that since the project was also being routed through Kashmir over which India staked claims, it had serious reservations.² President Xi had dismissed the objections, describing the economic corridor as a “commercial project.”³


Reportedly, in addition to opposing the CPEC, Indians have unleashed their spy agency RAW to sabotage the project. Pakistan’s Ministry of Interior officials have stated that their Chinese counterparts in a special briefing have expressed these fears. The arrest of Commander Kulbhushan Jadhav, a senior RAW operative from Balochistan proved Pakistan’s allegations correct. Commander Jadhav sang like a canary and divulged that he is a serving Indian Navy officer, who had been recruited to operate from Chabahar in Iran and establish a terror network in Balochistan, to enlist Baloch youth, train them for the use of deadly weapons, arm and incite them to wreak havoc to sabotage CPEC. Commander Jadhav’s incarceration, trial and sentencing may have impeded Indian machinations but reportedly, contingency plans have been put in place and RAW is working overtime to disrupt CPEC.


Besides India, there are other detractors of CPEC and OBOR. According to the ‘String of Pearls’ theory, coined in 2005 by the U.S. consulting firm Booz Allen Hamilton, China will try to expand its naval presence by building civilian maritime infrastructure along the Indian Ocean periphery.⁴ This corridor is one of the many mega-projects planned by China in Central, South and South-East Asia for expanding its political and economic influence to counter the relatively better established U.S. sphere of influence in the region. The U.S. has a similar agenda in the form of ‘Pivot to Asia’, which is aimed at countering China’s economic and military expansion in Asia-Pacific. According to a report published in 2013 by the London-based policy think tank Chatham House, ‘The increasing complexity of the Asia-Pacific region demands U.S. attention, and the United States remains well-positioned to play a pivotal role in the region through the 21st century.’ Resultantly, the U.S. has partnered itself with key players in the region such as India, Japan, Indonesia and Singapore to prevent China from spreading its influence.


The big power game has placed Pakistan in a unique position. It can potentially balance the major power rivalries and promote trade cooperation in the region as it enjoys good relations with both the West and China. Historically, there is precedence when a similar initiative had been taken by General Yahya Khan’s regime in 1970 that brought the two great powers China and the U.S. on the diplomatic table and, in current scenario a trade-oriented diplomacy by Pakistan can help reduce the complexities of this rivalry.


The U.S. opposition to CPEC and OBOR has now come out in the open with Secretary of Defence Jim Mattis’ briefing to the Senate Armed Services Committee that the U.S. opposes the OBOR project since it runs through disputed territory. $56 billion China-Pakistan Economic Corridor (CPEC), an important element of OBOR passes through Pakistan’s northern areas, which India claims is part of the disputed Jammu and Kashmir territory.


Paradoxically, the OBOR and CPEC are development projects and aim to bring economic prosperity to the region including the residents of Jammu and Kashmir. Contrast this with the Muslim population of Indian Occupied Kashmir, who are facing a reign of terror since 1947 and are currently being targeted with pellet guns for raising slogans of freedom. According to international and independent human rights organizations, the incessant use of pellet guns has martyred more than 200 Kashmiris and blinded over 3,600 youth. Instead of taking cognizance of the brutality faced by Kashmiris under Indian subjugation, the U.S. begrudges the development of Jammu and Kashmir.


It is heartening that the Armed Forces of Pakistan have pledged to not only support CPEC but safeguard it with their resources so that the mega project achieves fruition.


Pakistan Army has deployed the Special Security Division (SSD), a newly raised division of Pakistan Army tasked with providing security to the under construction CPEC and the workforce employed on the project. Operating under the command of a Major General, the 15,000 men force will guard CPEC and provide aerial support and state-of-the-art surveillance and monitoring systems to pre-empt terror attacks. The unit comprises 9 army composite battalions (9,000 personnel) and six civil armed forces (CAFs) wings (6,000 personnel). The security force consists of highly trained Special Forces potent enough to counter any threat emerging to the mega project of CPEC. The first convoy of goods shipped from Kashgar was guarded during transit by units of the Pakistan Army all the way to Gwadar, from where the containers were put on board different merchant vessels bound for various destinations.

Contrast this with the Muslim population of Indian Occupied Kashmir, who are facing a reign of terror since 1947 and are currently being targeted with pellet guns for raising slogans of freedom. According to international and independent human rights organizations, the incessant use of pellet guns has martyred more than 200 Kashmiris and blinded over 3,600 youth. Instead of taking cognizance of the brutality faced by Kashmiris under Indian subjugation, the U.S. begrudges the development of Jammu and Kashmir.


Pakistan Navy has also taken up the cudgel to secure the CPEC from maritime threats. To meet the challenge, PNS Akram, established at Gwadar, serves as a surveillance station and is considered the eyes and ears of Pakistan Navy, from where it monitors activities at the Gwadar Port as well as in the North Arabian Sea.


For the protection of Gwadar, there is also PNS Siddiq in Turbat, which is the primary airbase for fixed wing aircraft. The unit also provides facility to anchor to foreign naval units. Additionally, there is PNS Makran at Pasni, which is the secondary airbase for naval aviation and is used for both rotary wing and fixed wing aircraft. The naval base at Jiwani is another surveillance station coordinating with the maritime headquarters in Karachi. The 3rd and 4th battalions have been raised to protect the Gwadar Port and provide harbour defence.


Besides ensuring the maritime security of Gwadar Port, Pakistan Navy has been entrusted with the defence of the fish harbour, the entire hammerhead-shaped peninsula, including Koh-i-Batil, and the Chinese nationals residing in Gwadar. To safeguard the Gwadar Port, the navy has also raised the maritime security Task Force-88 on December 13, 2016. The area of responsibility of Task Force-88 starts from Gwadar Bay to Basol, extending seaward up to six nautical miles from the baseline of Pakistan. This includes the approaches to Gwadar Port as well.


Pakistan Air Force (PAF) is fully committed to provide impregnable security to CPEC project, which is of great strategic significance in synergy with sister services and other law enforcement agencies. PAF has a comprehensive security plan catering to Intelligence, Surveillance and Reconnaissance (ISR) capability, which is essential for smooth completion of CPEC projects. The same was amply demonstrated in Operation Zarb-e-Azb. PAF has full capability to effectively undertake specialized roles of medical evacuation, search and rescue operations, area scanning and kinetic operations on CPEC.


Recently, Air Headquarters hosted a one-day symposium on “CPEC vis-à-vis Opportunities for Aviation Industry and Way Forward”. It was concluded that in effect, aviation is destined to play a principal role in generation of sustenance of economic dynamics. The unexplored aerial dimension of CPEC will be the real game changer for Pakistan. This dimension will exponentially expand the reach of CPEC and would be a key element in making Pakistan the next business hub of Asia. Air Silk Route and plans to meet the future aviation requirements will necessitate the establishment of New Aviation Maintenance, Repair and Overhaul (MRO) setups, trained manpower, new airlines, joint ventures and rightly placed infrastructure to handle the need of future economic hub of South Asia. The formation of a working group under the Joint Cooperation Committee of Pakistan Air Force and Aviation Division can lead the integration of aviation dimension in CPEC.


While the government and the nation are geared to reap the benefits accruing from CPEC, the Armed Forces of Pakistan have picked up the gauntlet to ensure the security requisite for the successful completion of this mega project.

 

The writer is a former Group Captain from Pakistan Air Force who also served as Air and Naval Attaché at Riyadh (KSA).

Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

1. When an internal research paper was prepared for the GHQ Rawalpindi called “The Army’s Role in Nation Building” by Brigadier Riaz Ahmed Toor. This paper highlighted the need to develop a strong transportation network across all provinces by linking Gwadar and Karachi with the rest of the country for both peacetime and wartime periods. The CPEC’s road network project can be considered as the true practical face of this research paper published some 20 years ago. Hassan Khan, ‘Is China-Pakistan Economic Corridor really a game changer?’, Pakistan Today (Lahore), June, 13, 2015
2. NDTV report, “Before PM Narendra Modi's Trip, India Objects to China’s $46 Billion Economic Corridor with Pakistan”, May 12, 2015. http://www.ndtv.com/india-news/before-pms-trip-india-objects-to-chinas-46-billion-economic-corridor-with-pak-762533
3. “India raises objections over China Pakistan Economic Corridor”, The Express Tribune (Karachi), May 12, 2015.
4. Virginia Marantidou, “Revisiting China's 'String of Pearls' Strategy’, Issues & Insights, vol. 14, no. 7. Washington: D.C. Centre for Strategic & International Studies (Washington DC), June 24, 2014.

 
06
November

Breaking Ice in a Frosty Relation

Published in Hilal English

Written By: Hassan Khan

It was amidst this environment that General Bajwa took a one-day sojourn to Kabul. The visit has phenomenal immediate effects and is called to be an ice breaker in long frosty relation of the two countries.

 

Commenting on the maiden visit of Pakistan Chief of Army Staff General Qamar Javed Bajwa to Kabul and meetings with Afghan President Dr. Ashraf Ghani, Afghanistan’s Ambassador to Pakistan Dr. Hazrat Omar Zakhelwal in his tweet termed the exchanges as “candid, positive, respectful, constructive and encouraging meeting in a long time. I'm proud to have played a facilitating role in all this.”


Indeed, Omar Zakhelwal should be the most proud person on the occasion. Because his long untiring background work for more than a year not only materialized the visit of Pakistan’s top soldier to Kabul but also made it a highly successful one by simultaneously working on his own president who had, otherwise, adopted a very tough and inflexible position vis-a-vis contacts with Pakistan.

 

breakingice.jpgGeneral Bajwa visited the Afghan capital on October 1 amidst highly tense environment when prospect of talks on subjects like peace, stability and cooperation in countering terrorism were dim due to ongoing distrust and blame game.


“I believe,” Afghan Ambassador Omar Zakhelwal told a delegation of Pakistani journalists at his residence in Islamabad, “the visit was highly successful keeping in view its immediate results.”


What are the immediate results? “The instant effect is on the highly negative narratives against Pakistan prevalent both at official and non-official levels in Kabul.”


The bilateral relations between the two neighboring countries were touching the lowest ebbs since April this year when President Dr. Ghani categorically declared, “Kabul will no longer seek Pakistan’s role in peace talks with Taliban.” Ghani severed direct contacts with Pakistani top leadership following the deadly terrorist attack on Afghan security forces headquarters in Kabul on April 19.


Dr. Ashraf Ghani – believed to be a hard nut to crack – visited Pakistan only once in November 2014 just a month after taking oath as head of the state. Since then he has rejected official invitations to come to Pakistan twice.


In May this year a delegation of senior Pakistani politicians visited Kabul under the leadership of National Assembly Speaker Ayaz Sadiq and extended an invitation to the Afghan President to visit Pakistan.


“I will not go to Pakistan till the perpetrators behind the attacks on Mazar-i-Sharif, American University [in Kabul] and Kandahar attacks are handed over to Afghan authorities and until Islamabad takes concrete action against Afghan Taliban militants on Pakistani soil,” Ghani was quoted as saying while unequivocally rejecting the invitation.


The fact is the long disengagement between top political and military leadership of both countries has widened the gulf of mistrust between the two neighbors and led to more misunderstandings and misconceptions.


People of both the countries started believing what their respective government leaders were telling them about the worsening security situations on both sides of the border.


Afghans primarily accuse Pakistan to be providing sanctuaries and safe havens to the Afghan Taliban and the dreaded Haqqani network. Both the militant groups are believed to be the perpetrators in a number of deadly terrorist attacks inside Afghanistan targeting security forces and innocent civilians.


Similarly negative narratives are also widespread on this side of the international border. Almost every Pakistani seemed to be convinced that Afghan government and its intelligence agency are providing safe sanctuaries to terrorists and their outfits who are launching terrorist attacks inside Pakistan and killing innocent civilians.


This situation has reached a level where leaderships of both the countries never feel shy of accusing each other freely at international forums for the prevailing instability in the region.


The ears of Pakistanis are still buzzing with the nasty venomous speech of Dr Ashraf Ghani, who pointing finger at Pakistani delegation at Heart of Asia Conference in Amritsar, thundered, "We need to identify cross-border terrorism and a fund to combat terrorism. Pakistan has pledged $500m for Afghanistan's development. This amount can be spent to contain extremism…. As a Taliban figure said recently, if they had no sanctuary in Pakistan, they wouldn't last a month."


In November the same year, Afghanistan joined India to boycott SAARC Summit scheduled to be held in Islamabad which resulted in its postponement.

 

Pakistan’s position on resolution on the Afghan conflict via dialogue is gaining popularity and finding more takers now. There is now increasing realization that there is no military solution to the conflict. And there is a need of pursuing the course of sustained dialogue in order to restore complete peace and stability to the war ravaged country.

It was amidst this environment that General Bajwa took a one-day sojourn to Kabul. The visit has phenomenal immediate effects and is called to be an ice breaker in long frosty relation between the two countries.


The visit of the top commander to Afghan capital followed a very important meeting of national security committee in Islamabad that fully authorized him to take decisions.


Besides, having an impact – as stated by the Afghan ambassador – on the prevalent negative narratives against Pakistan, the other immediate visible impression was softening of the very tough-going Dr. Ashraf Ghani and other senior Afghan leadership including former President Hamid Karzai who has otherwise left no opportunity to chastise and accuse Pakistan for every wrong – minor or major – on Afghan soil.


“I call, once again on Pakistan to intensify the state-to-state dialogue with us to secure regional peace and security,” said Dr. Ghani while speaking to Senior Officials Meeting (SOM) in Kabul. He also urged Taliban militia leadership to shun violence and join the peace process.


Terming the development as a ‘beginning of new era,’ Ghani was quoted as saying, “Good opportunities of cooperation are [being] provided and both countries should get the most out of the current situation.”


It seemed a complete U-turn by Afghan President from his earlier hardline position on ‘not-engaging Pakistan’ in any way until it hands over perpetrators of terrorist attacks in Afghanistan.


Former Afghan President Hamid Karzai called the development as an opportunity for Pakistan and Afghanistan to sit together like brothers and resolve their differences through talks. “I want Pakistan to increase friendship and cooperation with Afghanistan,” Karzai said in an interview with BBC.


These are, no doubt, positive vibes emanating from Kabul. In another major policy shift the Afghan President accepted an invitation – extended by the Pakistan military chief – of visiting Pakistan at an appropriate time.


The visit, if materialized at the earliest, will cement the broken bilateral ties and provide a good opportunity to the leadership to work together for achieving common objectives of peace and stability.
Pakistan’s position on resolution of the Afghan conflict via dialogue is gaining popularity and finding more takers now. There is now increasing realization that there is no military solution to the conflict. And there is a need of pursuing the course of sustained dialogue in order to restore complete peace and stability to the war ravaged country.


Another important aspect of General Bajwa’s visit was not being restricted to the security side of relations with Afghanistan, it included all issues concerning the bilateral relationship.


A statement issued by Afghan’s Presidential office stated General Bajwa and Dr. Ghani discussed ‘various important issues including security in region, bilateral relationships, peace and stability, anti-terror efforts, business and transit relationships, and mid-term and long-term relationships between Afghanistan and Pakistan.’


A similar statement from General Headquarters via ISPR, referring to the same issues, stated, “…issues related to long-term peace, cooperation against shared threats, coordination between respective counter-terrorism campaigns to restrict space for non-state actors, intelligence sharing, trade and commerce, and people-to-people contacts were discussed.”


However, one must be mindful of the fact that such interactions between top leadership of both the countries in the past also led to an environment of euphoria and lofty rhetoric.
If past is the witness, this not the first time that both sides, as they did again on October 1, vowed to forget the past and work hard for a better future.


Simultaneously, Pakistan’s leadership also needs to be cautious in raising expectations of ordinary Afghans vis-a-vis measures for restoring peace in the war-torn country and sanctuaries of Afghan militants.


There shall also be restraints in issuing statements from leadership level loaded with lofty promises like ‘new season of relationship’, ‘forgetting the past’, ‘moving ahead’, ‘shrinking space for anti-state actors’ etc. In the past the same were instrumental in hiking expectations of ordinary Afghans. Instead a realistic approach be adopted to normalizing relations with an important neighbor whose peace and stability equally guarantees Pakistan’s own security and stability.


However, instead of sounding cynical by all standards the current understanding between the leadership of both the countries is a big step in the right direction. And again there is nothing to doubt the sincerity of the leadership of both the countries in working together with dedication and devotion to ensure peace, stability and economic prosperity in both the countries. The need is to pursue the peace efforts with perseverance and determination, not succumbing to stray happenings on either side of the border.


However, last but not the least, both the leaderships shall be vigilant to the spoilers of good brotherly relationships between Islamabad and Kabul. Because there is no shortage of such elements within both countries coupled with some foreign ‘friends’ whose interests in the region are ensured only when both Pakistan and Afghanistan are at daggers drawn positions.

 

The writer is a senior journalist, analyst and anchorperson.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
10
January

مکالمہ۔تشدّدپسندانہ رویوں کا تریاق

تحریر: ڈاکٹر منہاس مجید

جب بھی فرقہ وارانہ تنازعات کی بات ہوتی ہے تو مغربی ممالک اُسے چودہ سو سال پہلے خلفائے راشدین کے انتخاب کو بنیاد بنا کر پیش کرتے ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ سنی شیعہ مسلمان صدیوں تک، باوجود اجتہادی اور فقہی اختلافات کے، باہمی ہم آہنگی کے ساتھ رہتے رہے ہیں۔ لیکن بدقسمتی سے ان اختلافات نے عالمِ اسلام میں بالعموم اور رفتہ رفتہ مشرقِ وسطیٰ میں بالخصوص فرقہ واریت کی شکل اختیار کرلی جس کی مثال سولہویں صدی میں سلطنت فارس اور سلطنت عثمانیہ کی آپس میں جنگیں تھیں‘ تاہم وہ محدود تھیں۔ موجودہ شیعہ سنی تنازعات جو کہ ابتدا میں معمولی نوعیت کے ہوتے ہیں کچھ عرصہ بعد تشدد کی انتہائی شکل اختیار کر لیتے ہیں مگر ختم پھر بھی نہیں ہوتے اور بڑھے چلے جا رہے ہیں۔ان کے ختم نہ ہونے کی وجہ یہ ہے کہ وہ تنازعہ جو کسی مخصوص جگہ پر محدود لوگوں کے درمیان شروع ہوا تھااس کے بعد بیرونی عناصر کی مداخلت سے بین الاقوامی صورت اختیار کرچکا ہے۔ اس کی وجوہات اندرونی اور بیرونی مداخلت دونوں ہیں۔ اس لئے یہ ضروری ہے کہ بیرونی مداخلت سے پیشتر ہم عالمِ اسلام میں موجودہ خامیوں کا مشاہدہ کریں۔


تاریخ گواہ ہے کہ پہلی جنگِ عظیم سے ہی مشرقِ وسطیٰ میدانِ جنگ بنا ہوا ہے۔1919 کے مصری انقلاب سے لے کر ترکی کی جنگِ آزادی (1919-1923)تک، عراق کرد تنازعہ (1919-2003)، سعودی عرب یمن جنگ (1934)، عراقی شیعہ بغاوت(1935-36) اور پھر دوسری جنگِ عظیم سے لے کر عراق ایران جنگ اور اس کے بعد کے واقعات جو مسلم ممالک کے درمیان باعث تنازعات رہے ہیں اور ابھی تک یہ سلسلہ جاری ہے۔ مغربی دنیا آج بھی انہی جنگوں کا حوالہ دیتی ہے اور مسلمانوں کو موردِ الزام ٹھہراتی ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ بیسویں صدی کے اواخر میں جبکہ امریکہ اور سوویت یونین کے درمیان سرد جنگ اختتام کو پہنچ رہی تھی‘ اس سرد جنگ میں مسلم ممالک کو دونوں طاقتوں نے اپنے مقاصد کے لئے استعمال کیا اور ان کے قدرتی وسائل سے بھرپور استفادہ کیا۔ سلیم راشد اپنی کتاب ’’تہذیبوں کا تصادم‘‘ میں لکھتے ہیں کہ اشتراکیت کے خاتمے کے بعد مغرب ایک نئے دشمن کی تلاش میں تھا جس پر وہ اپنے ہتھیاروں کا استعمال کرسکے اور ان کے لئے اسلام اور مسلم امہ سے بہتر دشمن اور کوئی نہیں ہو سکتا تھا۔ اسی بات کا اعتراف شیرین ہنٹر نے بھی اپنی کتاب’’ دی فیوچر آف اسلام اینڈ ویسٹ‘‘ میں کیا ہے کہ اشتراکیت کے خاتمے کے بعد اسلام مغرب کے لئے دشمن ہوگا۔ آج فرقہ واریت کی جب بات ہوتی ہے تو ان مذکورہ باتوں کو نظر انداز کرکے فقط مسلمانوں کے اندرونی تنازعات اور اختلافات کو ہی سبب گردانا جاتا ہے اور داعش یا اس طرح کی مسلح تنظیموں کے وجود کو انہی اختلافات کا نتیجہ قرار دیا جاتا ہے۔


9/11کے بعد امریکہ کے افغانستان پر حملے کے ساتھ ساری دنیادہشت گردی کی لپیٹ میں آجاتی ہے لیکن مٹھی بھر دہشت گردوں کا الزام سارے مسلمانوں پرلگایا گیا کیونکہ وہ مٹھی بھر لوگ’’ مسلمان‘‘ تھے۔ عراق پر حملہ ہوا۔ تیونس، لیبیا، شام، مصر، لبنان عرب سپرنگ کی لپیٹ میں آئے لیکن وہاں وہ امن قائم نہ ہو سکا جیسا کہ امریکہ کی بظاہرخواہش تھی کیونکہ امریکہ کی ڈیموکریٹک پیس تھیوری کے مطابق جہاں جمہوریت ہوگی، وہاں امن ہوگا اور جہاں حکمران مطلق العنان
(Autocratic)
ہیں، وہاں نا انصافی ہوگی۔ جہاں تک مذہبی اقلیتوں کا تعلق ہے چاہے وہ شیعہ سنی ہوں یا دیگر غیر مسلم ان کے ساتھ امتیازی سلوک برتا جاتا ہے اور ان کی آپس میں لڑائیاں جاری رہتی ہیں۔ مغربی ممالک نے جہاں جہاں اپنی آزاد اقدارمتعارف کرانے کے لئے مسلح جارحیت کا راستہ اپنایا ہے وہاں امن قائم نہیں ہو سکا بلکہ یہ جارحیت مزید بدامنی پھیلنے کا باعث بنی ہے۔


اگر مشرقِ وسطیٰ کا جائزہ لیا جائے تو عراق اور شام میں حکومتی اختیار ختم ہونے پر فرقہ وارانہ تنازعات کا دوبارہ ظہور ہوا جس کے نتیجے میں داعش منظم ہوئی اور عراق میں سنی صوبوں اور شام کے مشرقی علاقوں میں پھیل گئی۔ داعش نے شام میں ریاستی عملداری کے خاتمے اور عراق میں سنی برادری کو سیاسی دھارے سے علیحدہ کرنے کا بروقت اور پورا فائدہ اٹھایا ہے اور یہ ایک حقیقت ہے کہ جہاں کہیں بھی وہ علاقے جو حکومتی دسترس سے باہر رہے ہیں تو اس خلانے دہشت گرد تنظیموں کو یہ موقع فراہم کیا ہے کہ وہاں وہ اپنے مراکز قائم کریں اور وہیں سے وہ دہشت گردی کو پھیلا سکیں۔ اس کے علاوہ ریاستی عملداری کے ختم ہونے سے بیرونی عناصر فائدہ اُٹھا کر اپنے مقاصد پورا کرتے ہیں جیسا کہ عراق اور شام کی صورت حال میں ایران، سعودی عرب، ترکی، قطر، امریکہ، روس اور دیگر ممالک کی مداخلت ہے۔ جب ہم عرب سپرنگ کی بات کرتے ہیں تو یہ تیونس سے لے کر بحرین تک حکمرانوں کے خلاف بغاوت کی تحریک کا نام ہے۔ ان کا پہلا مطالبہ آزادی، انصاف اور خوشحالی تھی۔ لیکن بدقسمتی سے یہ تحریک بھی فرقہ وارانہ تنازعات کا شکار ہوگئی اور اس ناسور نے مختلف ممالک کو فوری طور پر اپنی گرفت میں لے لیا۔اس آگ نے عالمِ اسلام کو دو دھڑوں میں تقسیم کردیا اور ہر ایک فریق دوسرے فریق سے خوفزدہ ہے۔ ایک دوسرے کے خلاف شکوک و شبہات مزید مضبوط ہو رہے ہیں۔ جب شام میں سنی بشارالاسد کی حکومت سے برسرپیکارہیں تو ان کو سعودی عرب اور قطر کی معاونت حاصل ہے دوسری جانب شامی حکومت کو ایران کی بھرپور حمایت حاصل ہے جس میں مالی اور عسکری دونوں تعاون شامل ہیں۔ اسی طرح غیر ریاستی عناصر حزب اﷲ کو ایران جبکہ لیبیا کی رضاکارانہ فورس کو سعودی عرب کا تعاون حاصل ہے۔ بحرین کی شیعہ آبادی جو حکومت کے خلاف بغاوت کر رہی ہے اس کو ایران اور شام کی مدد حاصل ہے جبکہ بحرین کی حکومت کو سعودی عرب کا تعاون حاصل ہے۔ یاد رہے کہ بحرین میں شیعہ آبادی کے خلاف حکومت کا جانبدارانہ رویہ نیا نہیں ہے لیکن عرب سپرنگ ان پر بھی اثر انداز ہو اہے۔


عراق اور شام کے حالیہ تنازعے نے فرقہ وارانہ وفاداریوں کو عیاں کردیا ہے۔ عموماً سیاسی تنازعات فرقہ واریت کا روپ اختیار کرلیتے ہیں۔ مشرق وسطیٰ جیسا کہ ہم مشاہدہ کررہے ہیں ایران اور سعودی عرب کے درمیان ڈرامائی انداز میں ایک نئی سرد جنگ کی طرف جارہا ہے۔ جہاں دونوں اس خطے میں اپنی بالا دستی کے لئے کوشش کر رہے ہیں۔ اب یہ پراکسی وار کی صورت اختیار کر رہا ہے۔ ہر د و فریق فرقہ واریت کی اس جنگ میں اپنے مخالف فریق کے خلاف مکمل تعاون کر رہے ہیں۔ شام،یمن، عراق سب جگہ صفِ اول کی جنگ فرقہ وارانہ بنیادوں پر لڑی جارہی ہے یعنی شیعہ بمقابلہ سنی حالانکہ یہ ایک فیکٹر ہے جو ہمیں ہر سطح پر نظر آتا ہے۔ اِن تنازعات کی وجہ دیگر بہت سے سٹریٹیجک ایشوز بھی ہیں اور غیر ملکی مداخلت بھی۔


لبنان اور کویت میں عارضی امن تو قائم ہے لیکن فرقہ واریت کی چنگاری کو کبھی بھی ہوا لگ سکتی ہے۔ مسلم دنیا کا آپس میں اختلاف یعنی شیعہ بلاک اور سنی بلاک میں تقسیم ہونا داعش جیسی تنظیم کو پیدا کرنے کا باعث بنا ہے جو بغیر کسی تفریق کے مغرب، شیعہ سنی، ایران حتیٰ کہ سعودی عرب کو بھی اپنا دشمن سمجھتی ہے۔


ان واقعات کے تناظر میں مغربی ممالک، بالخصوص امریکہ، کے بدلتے کردار کو نظرانداز نہیں کیا جاسکتا۔ امریکہ کے صدر اوبامہ نے اعتراف کیا ہے کہ لیبیا میں کرنل قذافی کو معزول کرنے کے بعد کی صورت حال کی پیش بندی نہ کرنا ان کے عہدِ صدارت کی بدترین غلطی تھی۔ عراق پر حملے کو مغربی سکالرز تاریخ کی ایک بہت بڑی غلطی قرار دے چکے ہیں۔ اوبامہ حکومت کے ایران کے ساتھ کئی دہائیوں کے اختلافات اور پابندیوں کے بعد جوہری توانائی اور دیگر امور پر بات چیت اگرچہ امریکہ کے قومی مفاد میں ہے لیکن مذاکرات کے راستے کو اپنانا اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ اسلحے کا استعمال اختلافات کوحل کرنے کا طریقہ نہیں ہے۔ یہ بات بھی یاد رکھیں کہ اس خطے میں جاری بحران کو حل کئے بغیر نکلنا بھی ان پُر تشدد واقعات اور دہشت گردی کی وجہ ہے۔


المختصر یہ بات تو طے ہے کہ امتِ مسلمہ میں دیگر مذاہب کے ماننے والوں کی طرح مختلف مسالک اور فرقے موجود ہیں اور ان کے آپس میں کچھ بنیادی اور کچھ فروعی اختلافات کی وجہ سے تنازعات اور اندرونی چپقلش کا ماحول موجود رہتا ہے مگر موجودہ صورتحال میں اور بالخصوص مشرقِ وسطی میں جاری لڑائیاں کچھ اور خفیہ عوامل کی نشان دہی کرتی ہیں۔ تاہم اب ہم اپنا محاسبہ کرنے کے بجائے سارا الزام دوسروں پر ڈال کر بری الذمہ نہیں ہوسکتے۔ چہ جائیکہ ہم وہ حالات پیدا کریں کہ دوسرے ہماری مدد کے بہانے آکر معاملات کو اور خراب کریں ہمیں چاہئے کہ ہم سب مل کر فی الفور آپس میں مکالمے کا آغاز کریں۔ آپس میں مکالمہ اس نیت کے ساتھ کہ ہم نے مل کر امن و آشتی کے ساتھ رہنا ہے ایک دوسرے کے عقائد اور نظریات کا احترام کرنا ہے اور اپنی موجودہ اور آئندہ آنے والی نسلوں کو اندرونی جنگ و جدل سے ہر حال میں بچانا ہے۔ اگر ہم اپنے معاشروں میں بات کرنے کی روایت کی حوصلہ افزائی اور تشدد کی ہر شکل کی حوصلہ شکنی کریں تو امیدِ واثق ہے کہ مسلم آبادیاں آپس میں بقائے باہمی کے اصولوں پر عمل پیرا ہو کر امن و آشتی کے ساتھ رہ سکتی ہیں۔ اس بات کی بھی شدید ضرورت ہے کہ
Diversity
یعنی تنوع کو خدا تعالیٰ کی تخلیق کا ایک امر سمجھیں اور یک رنگی‘ یک نسلی اور یک مذہبی ایجنڈے کے بجائے ایک دوسرے کی مثبت صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کریں۔ معاشرے مختلف طبقات اور رنگ و نسل سے مل کر ہی بنتے ہیں یہ مسلمان علماء کرام‘ دانشوروں اور حکمرانوں کا فرض بنتا ہے کہ وہ نہ صرف مسلمانوں میں موجود فرقہ بندیوں کو تشدد اور جنگ کے راستے پر جانے سے روکیں بلکہ اپنے معاشروں میں بسنے والے دیگر مذاہب کے ماننے والوں کا بھی احترام کریں۔ یاد رکھیں کہ اندرونی جنگیں باقی تمام طرح کی لڑی جانے والی جنگوں سے زیادہ تباہ کن اور ہلاکت خیز ہوتی ہیں۔ بحیثیت پاکستانی ہمیں مشرقِ وسطیٰ کی صورتِ حال اور اُس میں جاری پراکسی وارز
(Porxy Wars)
کا بہت گہری نظر سے تجزیہ کرنا چاہئے اور اس طرح کی جنگ کو پاکستان سے ہر حال میں دُور رکھنا چاہئے۔ پاکستان کی افواج نے ابھی تک تمام غیرریاستی دہشت گرد گروپوں کا کامیابی سے مقابلہ کیا ہے مگر اس خطرے کا سدِباب سماجی اور سیاسی سطح پر بھی نہایت ضروری ہے۔ ہمیں ایک پرامن معاشرہ درکار ہے جو صرف پُر امن بقائے باہمی کے اصولوں پرعمل سے ہی تشکیل دیا جا سکتا ہے اور مکالمہ ان تمام کوششوں کی کنجی ہے۔ ہمیں مکالمے کی طاقت سے تشدد کے رویوں کو روکنا ہو گا۔ آیئے آپس میں بات کریں اور اس موجودہ ہلاکت خیزی کے طوفان کو روکیں جس سے ہماری دشمن قوتیں مسلسل فائدہ اٹھا رہی ہیں۔

مضمون نگار یونیورسٹی آف پشاور کے ڈیپارٹمنٹ آف انٹرنیشنل ریلیشنز میں اسسٹنٹ پروفیسر ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
10
January

پاکستان ترکی تعلقات، پس منظر وپیش منظر

تحریر: فرخ سہیل گوئندی

ترکی کی سرحدیں تو پاکستان سے نہیں ملتیں لیکن یہ حقیقت ہے کہ ترکی اور پاکستان کے دل آپس میں ملتے ہیں۔ ترکیہ جمہوریہ، دنیا کا ایک ایسا منفرد ملک ہے جس کے باسیوں کے تعلقات سرزمینِ پاکستان میں بسنے والے لوگوں سے قیامِ پاکستان 1947ء بلکہ قراردادِ لاہور 1940ء سے بھی پہلے تاریخ میں نمایاں طور پر ملتے ہیں۔ اس کا سب سے بڑا ثبوت جنگ عظیم اوّل میں تب دیکھنے کو ملا جب بکھرتی سلطنتِ عثمانیہ کو ابھرتی مغربی سامراجی طاقتوں نے ترکوں کو اپنے وطن سے محروم اور ترک قوم کو مٹانے کے لئے سرزمین ترکیہ پر یلغار کردی۔ مختلف مغربی طاقتوں نے بچے کھچے ترکی کو لوٹ کا مال سمجھ کر بندر بانٹ کرنا چاہی اور اس کے لئے جنگ گیلی پولی برپا کی گئی، جس میں غیرمتوقع طور پر ترک لیفٹیننٹ کرنل مصطفی کمال نے مغربی دنیا کی اتحادی افواج کو شکست فاش سے دوچار کردیا اور یہیں سے مصطفی کمال کو پاشا کا لقب ملا۔ اس دوران سرزمینِ متحدہ ہندوستان میں بسنے والے لوگوں نے برطانوی سامراج کے خلاف ایک یادگار تحریک برپا کی۔ تب ترکی آزادی کی جنگ لڑ رہا تھا، اپنی بقا کی آخری اور فیصلہ کن جنگ، جس کی قیادت غازی مصطفی کمال پاشا اتاترک کررہے تھے۔ برصغیر میں چلنے والی اس ترک دوست تحریک کو ’’تحریک خلافت‘‘ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ غازی مصطفی کمال پاشا نے جنگی میدانوں میں مغربی استعماری طاقتوں کے تمام منصوبوں کو خاک میں ملا دیا۔


یہ وہ زمانہ تھا جب برصغیر کے لوگ اپنی آزادی کے لئے متحد ہورہے تھے اور مسلمانانِ برصغیر کے قائد محمد علی جناحؒ ، تحریک آزادی کو ایک نئے دھارے پر ڈال رہے تھے۔ بعد میں جنم لینے والی ریاستِ پاکستان کی ترکیہ جمہوریہ سے تعلقات کی بنیادیں یہیں سے اُستوار ہوئیں۔ ترکوں نے اپنی جنگ کامیابی سے جیتی اور عوامی جمہوری انقلاب برپا کرکے 1923ء میں ترکیہ جمہوریہ کی بنیاد رکھ دی۔ یہ مسلم دنیا کی واحد جمہوریت ہے جو کسی سامراج یا نوآبادیاتی نظام کی
Legacy
نہیں۔ مصطفی کمال پاشا نے جہاں ایک طرف مغربی استعماری قوتوں کو شکست دی تو دوسری طرف ایک آئینی جمہوری ریاست کا قیام اپنی قیادت کے تحت مکمل کیا۔ علامہ اقبال ؒ جنہیں ہم برصغیر میں مسلمانوں کی ریاست (پاکستان) کا فکری بانی کہتے ہیں، وہ ترکی میں مصطفی کمال پاشا کے تصورِ ریاست سے کس قدر متاثر تھے، اس پر ذرا غور کرنے کی ضرورت ہے۔

 

pakturktal.jpg’’ترکوں کے سیاسی اور مذہبی افکار میں اجتہاد کا جو تصور کام کررہا تھا، اسے عہد حاضر کے فلسفیانہ خیالات سے اور زیادہ تقویت پہنچی اور جس سے اس میں مزید وسعت پیدا ہوتی چلی گئی۔ مثال کے طور پر حلیم ثابت ہی کا نظریہ ہے جو اس نے اسلامی قانون کے بارے میں قائم کیا اور جس کی بنیاد اس نے جدید عمرانی تصورات پر رکھی‘‘ اور’’پھر اگر اسلام کی نشاۃ ثانیہ ناگزیر ہے، جیساکہ میرے نزدیک قطعی طور پر ہے، تو ہمیں بھی ترکوں کی طرح ایک نہ ایک دن اپنے عقلی اور ذہنی ورثے کی قدرو قیمت کا جائزہ لینا پڑے گا۔‘‘
علامہ محمد اقبال
، (The Reconstruction of Religious Thought in Islam)
صفحہ 121 اقبال اپنے بنیادی سیاسی فلسفے میں ترکیہ جمہوریہ کو اپنے لئے مشعلِ راہ قرار دیتے ہیں۔مفکرِ پاکستان علامہ اقبال اور بانئ ترکی مصطفی کمال پاشا اتاترک کا سالِ وفات 1938ء ہی ہے۔ جب جدید ترکی کے بانی غازی مصطفی کمال پاشا کا انتقال ہوا تو بانئ پاکستان محمد علی جناح ؒ نے اس عظیم رہبر کے انتقال پر آل انڈیا مسلم لیگ کو درج ذیل حکم نامہ جاری کیا۔
"I request Provincial, District and Primary Muslim Leagues all over India to observe Friday the 18th of November as Kemal Day and hold public meetings to express deepest feeling of sorrow and sympathy of Musalmans of India in the irreparable loss that the Turkish Nation has suffered in the passing away of one of the greatest sons of Islam and a world figure and the saviour and maker of Modern Turkey--- Ghazi Kemal Ataturk."
Date: 11-11-1938 (Quaid-e-Azam Papers, National Archives of Pakistan)
اس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ دونوں قوموں کے تعلقات کس قدر گہری سطح پر قائم ہوئے۔ مفکرِ پاکستان اور بانئ پاکستان، جدید ترکی کے قائد مصطفی کمال پاشا کے حامی ہی نہیں بلکہ اُن کی قائدانہ صلاحیتوں کے مداح بھی تھے، جسے ہمارے رجعت پسند حلقوں نے جان بوجھ کر ڈھانپنے کی کوشش کی ہے۔


قیامِ پاکستان کے بعد قائداعظم محمد علی جناحؒ ، پاکستان کے پہلے گورنر جنرل بنے تو ترکیہ جمہوریہ نے اپنے ایک معروف ترک شاعر و ادیب اور دانشور یحییٰ کمال کو پاکستان میں اپنا سفیر نامزد کیا۔ پاکستان میں ترکی کے پہلے سفیر نے بانئ پاکستان کو 4مارچ 1948ء کو سفارتی اسناد پیش کیں۔ اس موقع پر قائد اعظم محمدعلی جناحؒ نے فرمایا:


’’کئی تاریخی میدانِ جنگوں میں آپ کے لیڈر کے کارنامے، آپ کے انقلاب کی کامیابی، عظیم اتاترک کا ابھرنا اور ان کا کیریئر، اپنے اعلیٰ تدبر سے ان کا آپ کو ایک قوم کی تعبیر دینا، حوصلہ مندی اور پیش بینی، ان تمام واقعات سے پاکستان کے عوام بخوبی واقف ہیں۔ درحقیقت برصغیر کے مسلمانوں میں سیاسی شعور کی بیداری کے آغاز ہی سے ، آپ کے ملک میں رونما تبدیلیوں کا یہاں عوام پوری ہمدردی اور دلچسپی سے مشاہدہ کرتے رہے ہیں ۔‘‘
اس کے بعد تاریخی، سماجی اور روحانی طور پر دونوں قوموں کے مابین تعلقات سفارتی سطح پر بھی قائم ہوگئے۔ ترکی اور پاکستان نے ہردور میں ثابت کیا ہے کہ دونوں ممالک کے مابین تعلقات میں کبھی کمی نہیں آئی۔ اگر ان تعلقات کا جائزہ لیں تو ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ جب ترک قوم کسی مشکل کا شکار ہوئی تو پاکستانیوں نے بلا جھجک ترکوں کی حمایت کی اور اسی طرح ترکوں نے پاکستان کی۔ ترکی اور یونان کے درمیان قبرص کے مسئلے پر پاکستان نے روزِ اوّل سے ہی ترکوں کو کسی بھی عالمی رکاوٹ کو خاطر میں لائے بغیر سپورٹ کیا۔ جب 1974ء میں ترکی نے وزیراعظم بلندایجوت (مرحوم) کی حکومت میں قبرصی ترک عوام کو جاری خانہ جنگی سے نجات دلوانے کے لئے آپریشن کیا تو پاکستان نے کھل کر ترک حکومت کا ساتھ دینے کا اعلان کر دیا ۔ اس وقت پاکستان میں ذوالفقار علی بھٹو کی حکومت تھی اور انہوں نے ترکی کی ہر طرح سے مدد کا سرکاری سطح پر اعلان کیا۔ مسئلہ قبرص پر ترکی کے ساتھ تنازعاتی ملک چونکہ یونان تھا، اس لئے پاکستان کی جانب سے ترکی کی بھر پور حمایت کرنے پر یونان نے ہزاروں پاکستانیوں کو بحری کمپنیوں سے فارغ کردیا۔ ایک ملاقات کے دوران میرے دوست جناب بلند ایجوت (مرحوم) نے مجھے بتایا کہ جب مجھے یہ خبر ملی کہ یونانی بحری کمپنیوں میں کام کرنے والے پاکستانیوں کو یونانیوں نے فوری طور پر ملازمتوں سے فارغ کردیا ہے تو میں نے اسی وقت سرکاری حکم نامہ جاری کیا کہ ان متاثرین کو ترک بحری کمپنیوں میں ملازمتیں دے دی جائیں۔ اسی طرح ترکی، پاکستان کے ساتھ ہر عالمی محاذ پر ساتھ کھڑا نظر آتا ہے۔ دونوں پاک بھارت جنگوں 1965ء اور 1971ء اور کشمیر کے مسئلے پر ترکی نے بلالحاظ پاکستان کے موقف کی حمایت کی ہے۔


سرد جنگ کے زمانے میں دونوں ممالک آر سی ڈی اور سینٹو جیسے علاقائی اتحاد میں شامل رہے تو تب بھی دوست تھے اور جب یہ عالمی اتحاد ختم ہوئے تب بھی باہمی دوستی میں کمی نہ آئی۔ آج ترکی، دنیا میں ابھرتا ہوا ایک اہم ملک ہے، اس تناظر میں بھی دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی نوعیت مزید مستحکم ہوتی چلی جا رہی ہے۔ انقرہ، جدید ترکی کا دارالحکومت ہے اور اس جدید شہر کے وسط میں سب سے بڑی اور اہم شاہراہ بانئ پاکستان محمد علی جناحؒ کے نام سے منسوب ہے، ’’جناح جاہ دیسی‘‘ اور دلچسپ بات یہ ہے کہ اسی شاہراہ پر بھارت کا سفارت خانہ ہے۔ ذرا تصور کریں، ترکی میں بھارتی سفارت خانے کی تمام دستاویزات پر جب ’’جناح جاہ دیسی‘‘ لکھنا ہوتا ہے تو بھارتیوں کی کیا کیفیت ہوتی ہوگی۔ پاکستان میں مینارِ پاکستان، فیصل مسجد، داتا گنج بخش مسجد سمیت متعدد عمارات ترک معماروں کا کام ہیں اور اسلام آباد سے لے کر لاڑکانہ تک متعدد شاہراہیں، بانئ ترکی اتاترک کے نام سے منسوب ہیں۔


اس بدلتی دنیا میں جو یک محوریت سے مختلف علاقائی، تجارتی اور سٹریٹجک پارٹنرشپ میں بدل رہی ہے، ترکی اور پاکستان دو اہم ممالک ہیں۔ پاکستان جغرافیائی طور پر جنوبی ایشیا کا اہم ترین ملک اور مسلم دنیا کی واحد ایٹمی طاقت اور مسلم دنیا کی طاقت ور ترین وار مشینری رکھنے والا ملک ہے۔ اس خطے میں پاکستان کی جغرافیائی حیثیت ایک سنگم کی سی ہے جو جنوبی ایشیا، وسطی ایشیا اور مشرقِ وسطیٰ کے دہانے پر بدلتی دنیا میں نیا کردار حاصل کررہا ہے۔ عوامی جمہوریہ چین کے ساتھ تعلقات اور چین کا بڑھتا ہوا عالمی کردار اِن تعلقات کو اوربھی بڑھا رہا ہے۔ ایسے ہی ترکی مشرقِ وسطیٰ کاایشیا اور یورپ کے سنگم پر واقع ملک ہے۔ تعلیم، ٹیکنالوجی اور مضبوط معیشت کے ساتھ ساتھ پاکستان کے بعد دوسری اہم وار مشینری رکھنے والا، نیٹو کا دوسرا بڑا حصہ دار ہے۔ لہٰذا ان دونوں ممالک کے تاریخی تعلقات اب اس بدلتی دنیا میں ایک نیا علاقائی اور عالمی توازن بنانے میں نظرانداز نہیں کئے جاسکتے۔


اگر ہم اس سارے خطے پر سرسری نگاہ دوڑائیں تو اس خطے میں اہم ترین ممالک میں چین، روس، بھارت، پاکستان اور ترکی یک محوریت سے ملٹی پولر دنیا میں فیصلہ کن کردار ادا کرتے جا رہے ہیں۔ اس میں ترکی اور پاکستان تقریباً تمام علاقائی اور عالمی معاملات میں ایک صف میں کھڑے ہیں۔ دونوں ممالک کے یہ آئیڈیل تعلقات درحقیقت ایک فطری اتحادی کے طور پر دیکھے جاسکتے ہیں۔ اگر افغانستان کے مسئلے میں ترکی اپنے ازبک نسلی تعلقات کے حوالے سے اور نیٹو کا رکن ہونے کے ناتے ایک خاص سیاسی مقام رکھتا ہے تو اسی طرح افغانستان، پاکستان کی خارجہ پالیسی کا اہم ترین ستون ہے۔ 9/11 کے بعد ترکی اور پاکستان، افغانستان کے مسئلے پر ایک دوست اور اتحادی کے طور پر بیشتر معاملات میں ایک موقف پر رہے اور ہم نے دیکھا دونوں دوست ممالک افغانستان میں عالمی طاقتوں کی حکمت عملی کے علاوہ اپنے طور پر بھی مصروفِ کارہے۔ یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ دونوں ممالک بڑی عالمی طاقتوں کے علاوہ بھی کئی علاقائی اور عالمی معاملات کو سلجھانے میں کوشاں ہیں۔


ترکی اور پاکستان متعدد شعبوں میں شریکِ کار ہیں خصوصاً دفاعی حوالے سے، لیکن ان گہرے تعلقات سے ہم مزید فوائد بھی حاصل کرسکتے ہیں۔ خصوصاً تعلیم، صحت، صنعت، تجارت اور زراعت کے شعبوں میں۔ پاکستان بنیادی طور پر ایک زرعی ملک ہے اور پاکستان کی زراعت کو جدید بنیادوں پر کھڑا کرنے کے لئے ترکی کی زرعی ترقی و صنعت سازی سے مستفید ہوا جا سکتا ہے اور اسی طرح تعلیم و تحقیق کے شعبوں میں بھی۔ میں پچھلی تین دہائیوں سے ترکی کی سیاست، تاریخ، ثقافت، تہذیب اور معاشرت کو سمجھنے میں مصروف ہوں۔ میرا یہ یقین ہے کہ اگر ہمارے پالیسی ساز، درج بالا شعبوں میں، ایک دوسرے سے تیزرفتاری سے تعاون بڑھائیں تو پاکستان اس منزل کو چند سالوں میں چھو سکتا ہے جس کا خواب ہر پاکستانی دیکھتا ہے، یعنی ایک جدید تعلیم یافتہ، صنعتی اور مضبوط معیشت رکھنے والا ملک۔ ضرورت صرف سنجیدگی اور فیصلہ کرنے کی ہے۔ اس حوالے سے ترکی میں پاکستان کے سفیر سہیل محمود کا یہ جملہ بڑی اہمیت رکھتا ہے کہ پاکستان ترکی تعلقات شان دار تاریخ رکھتے ہیں لیکن اہم بات یہ ہے کہ ان تعلقات کو مزید مستحکم اور نتیجہ خیز بنانے کے لئے ہمہ وقت آبیاری کی ضرورت ہے۔ سہیل محمود، انقرہ میں اور ترک سفیر صادق بابر گرگن پاکستان میں سفارتی حوالے سے بے مثال کردار ادا کررہے ہیں۔ ان دونوں سفارت کاروں کو میں نے ان دو روایتی دوستوں کے تعلقات کو سفارتی سرگرمیوں کے حوالے سے عروج پر پایا لیکن ان سفارتی کوششوں کے علاوہ پاکستان کے حکمرانوں کی طرف سے ان شعبوں میں تعاون کے لئے مزید اقدامات کی ضرورت ہے جو ہماری حکومت کے ایجنڈے میں زیادہ نمایاں نہیں، یعنی تعلیم، ٹیکنالوجی، علمی وادبی تحقیق، زراعت اور صنعت۔ اور اسی طرح ہم ترکوں کے ساتھ متعدد شعبوں میں اپنے تجربات شیئر کرسکتے ہیں، خصوصاً اعلیٰ تعلیم یافتہ ڈاکٹرز اور آئی ٹی کے شعبے میں۔ اگر دونوں ممالک میں اہل فکر ودانش سے متعلق لوگوں کا
Exchange
پروگرام شروع کر دیا جائے تو دونوں ممالک جلد ہی اس مقام پر پہنچ سکتے ہیں جس سے یہ اہم مسلم ریاستیں دیگر مسلم دنیا کی رہنمائی کرسکتی ہیں۔

مضمون نگار معروف صحافی ‘ کالم نگار اور متعدد کتابوں کے مصنف ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

Follow Us On Twitter