05
April

China and Russia: Forces for Peace in Afghanistan?

Written By: Didier Chaudet

When one talks about Afghanistan’s regional environment, one thinks first of Iran, Pakistan, and Central Asian countries: they have been the ones suffering the most of the Afghan wars and foreign interventions. But it would be a mistake to forget two other neighbours, less connected to Afghanistan by history, human links or cultural ties, but with greater means at their disposal to influence the fate of this country: China and Russia. Indeed, the Chinese-Afghan border is only 92.45 kilometres long, according to the website of the Chinese Ministry of Foreign Affairs. And as for Russia, it is not one of Kabul’s neighbours in the geographical sense of the world. It can be considered so only if one takes into account the symbiotic relationship between the Russian Federation and its “Near Abroad” in terms of security. But those two Great Powers have shown a greater interest in Afghanistan recently, and they seem to share a political will to invest in resolving the never-ending civil war.

 

chniaanrusia.jpg‘Security’ seems the key word to understand the Afghan foreign policy of those two regional Great Powers. And their recent diplomatic choices could have a positive impact on Pakistani national interests.

 

Russia: A Diplomatic Evolution of Afghanistan and Pakistan
The Russian evolution on the Afghan issue is particularly striking, from a rejection to accept any talks with the Taliban to a support for an inter-Afghan reconciliation. On December 27, 2016, Russia, with China and Pakistan, called for “integrating the armed opposition into peaceful life” and said it will support the idea to get Afghan Taliban leaders delisted from UN sanctions’ list. It is oversimplification to believe, like some American sources seem to do, that there is an “alliance” between the Kremlin and the Taliban. The reality is much more pragmatic: the Russians have accepted that the Taliban were not merely terrorists, but rather rebels representing a political force in Afghanistan, a force strong enough to make a pure military solution for the Afghan conflict strictly impossible.


The best way to understand the Russian evolution is the Chinese influence on this subject: clearly the Kremlin has been influenced by Beijing’s initiative towards Afghanistan. Broadly speaking, this evolution can be seen as Russia adapting to a geopolitical situation that has evolved over the last few years. Most importantly, there is a specific jihadist risk for Central Asia and Russia in Afghanistan now: Daesh. This is very clear from the discovery of a Russia-Taliban dialogue in December 2015, and the press release following the meeting in December 2016 reminded above: the Russians see the Taliban as the best option to fight ISIS in Afghanistan, as the Afghan legal government seems unable or unwilling to make it a priority. For Zamir Kabulov, the head of the Asia and Middle East department of the Russian foreign ministry and special envoy of the Russian president to Afghanistan, there are now 10,000 IS fighters in Afghanistan, and as he said to Russia Today in April 2016,“They are being trained against Central Asia and Russia”.


Even if the Russian numbers about IS in Afghanistan seem overblown, the Kremlin is right to worry about Daesh. After Arabic, Russian is the most important language in the so-called ‘Caliphate’. Militants from the Northern Caucasus became well-known fighters fighting for this terrorist organization or for Al-Qaeda’s branch in Syria. If one focuses on Central Asian fighters alone, numbers can still be a source of concern for the post-soviet countries: between 3000 and 5000 so called jihadists have travelled to fight for Al-Baghdadi in Iraq and Syria since 2013. And many of them were recruited in Russia itself, while they were working there, which means that ISIS has been able to build some sort of network, at least for recruiting, in the country. The fear that those terrorists could come to Afghanistan in order to strike later, Russian and Central Asian interests, is not a fantasy: from December 2016 to February 2017, Iranian authorities arrested individuals passing through their country to go to Afghanistan to fight in the name of the Islamic State of Khurasan Province (ISKP), following Daesh’s orders. A view is that ‘ISKP’ in Afghanistan is partly made up of anti-Pakistan Taliban formerly from the TTP and Central Asian jihadists from the ‘Islamic Movement of Uzbekistan’, it is clear that Daesh will seize any opportunity to strike Russia’s post-Soviet southern neighbours. In Afghanistan itself, it represents at least 7000 to 8500 militants (fighters and the ones supporting them) according to the Royal United Service Institute (RUSI). And despite some important victories won against the ISKP by the Taliban, it seems to be able to resist any action to eliminate it from the Afghan battlefield. Actually, the terrorist attack against a military hospital in Kabul, on March 8, 2017, that caused the death of nearly 50 people, is proof that Daesh is resourceful and could be a source of worries for Afghanistan and its regional environment.


Besides, Russia had to adapt to real geopolitical evolutions on the ground. To stick to a policy close to the one from India – opposing any talk with the Taliban – would not change the military situation on the ground, and the fears related to security in Central Asia. If the Russian “big brother” is unable to deliver concrete actions that could help protect its Near Abroad, the Central Asian leaders would have to look elsewhere for protection. Therefore, the Russian fear to lose its influence on them should not be underestimated. It was very clear when Moscow seemed to panic over the proposal of a military bloc between China, Pakistan, Afghanistan, and Tajikistan, made by General Fang Fenghui, the Chief of General Staff of the Chinese Army, in March 2016. The notion of this becoming a “Central Asian NATO” spread in the Russian media, with some Russian analysts seeing the Chinese proposal as a way to put Central Asia under its influence. The Chinese were able to calm such wild theories, but such a reaction proved that Russia is uneasy with China's rise. The fears caused in Central Asia because of the Afghan issue, and the fact that China is getting involved there, made it difficult for Russia to not do the same. Their previous approach did not help to make them more influent, and going against the Chinese involvement would make no sense, as China stays an important global ally to Moscow. Hence the only choice the Kremlin had was to strengthen its influence, reassure the Central Asians, and stay relevant on the Afghan issue. An evolution that looks a lot like the Chinese policy towards Afghanistan, as we will see in the second part of this analysis.

 

China: Looking for Peace in the Name of the “Big Picture”
China does not have a policy to mingle in another state’s internal affairs. It follows such a non-ideological vision of international relations much more strictly than Russia nowadays. Still, China showed concern and desire to influence positively the Afghan issue before the Russians themselves.


It is linked to concerns related to internal stability and security, most particularly in Xinjiang. It was clearly said by the Chinese Foreign Minister himself, Wang Yi, during a visit to Afghanistan in February 2014. The visit was as significant as its previous visit had been in 2002, when he was, then, the Vice Foreign Minister. It was the symbol of a rising concern to see Uyghur jihadists using Afghanistan to strike on Chinese soil. The local tensions in Xinjiang are manageable, and could be taken care of through police work against separatists and through the economic choices China has made to develop the region. Indeed, even if there is a fear of separatist/terrorist anti-China activities in Xinjiang, this territory is much more stabilized than North Caucasus in Russia. But the situation might become more volatile if “professional” jihadists/terrorists come from overseas. And they very much could. Li Wei, head of the counterterrorism research at the China Institute of Contemporary International Relations (CICIR) said during an interview in April 2016 that 300 Uyghur jihadists were affiliated with ISIS. Uyghur jihadists have associated themselves with Uzbek radicals from the Islamic Movement of Uzbekistan (IMU) and Islamic Jihad Union (IJU), who have been very active in Afghanistan, especially in the north. Al-Zawahiri, Al Qaeda’s leader, and al-Baghdadi, so-called “Caliph” for ISIS, have both recently declared that China was one of their enemies. It has been confirmed by propaganda videos made by Daesh and Al-Qaeda’s branch in Syria, respectively on February 25 and 27, 2017. Hence, the terrorist threat targeting China specifically has become more serious over the last few years; and China can only share Russia’s fears exposed above. Besides, during the same few years, Xinjiang has become even more important with the Silk Road Economic Belt project. This importance has been clearly proved this year, as the region’s authorities will inject no less than USD 24.8 billion in local infrastructure, mostly roads. It is more than the total funding for such infrastructure between 2011 and 2015. Clearly, Beijing is serious about making Xinjiang an important part of the One Belt, One Road Project. Hence, to counter any risk for its stability is of paramount importance.


In order to protect its own interests, China decided to push for peace in Afghanistan, still the best way to avoid the latter’s instability to be a weapon in Uyghur separatists and in Daesh’s hands. It seems Beijing carries the understanding that the Afghan Taliban are a part of the Afghan political spectrum, even after the fall of the “Afghan Emirate” (according to American sources like Foreign Policy). Since 2012 the exchanges between Chinese emissaries and the Taliban seem to have been more regular. At first to protect Chinese interests; then, from 2014, Chinese diplomacy has been an active force supporting a peace process between the Kabul government and the Taliban. The USA had failed to make its ideas of peace-talks a reality after Hamid Karzai, the then-president of Afghanistan, derailed American-led project in June 2013. Beijing clearly became part of such effort by being one of the states associated to the Quadrilateral Coordination Group, with Afghanistan, Pakistan and the USA. It met officially the first time in January 2016, but seemed to have been clearly limited by different views on what the peace process should be, the Americans and part of the Afghan government having difficulties to accept a true negotiation with what it implies, i.e., finding a compromise. The fact that the Americans killed the then-leader of the Taliban, Mullah Mansour, in May 2016, a few days after the last meeting of the QCG, is proof enough of a difference of perception of how peace should be achieved. Nowadays it seems that China is the main power truly active to achieve peace in order to solve the Afghan issue. It continues to talk to the Taliban: a delegation led by the Taliban Qatar office chief Sher Abbas Stanikazai visited China in February 2017, to discuss with Beijing the possibility to revive the peace process.

 

A Positive Evolution for Pakistan
Of course, Beijing’s policy is clearly in tune with Pakistan’s national interests. China, contrary to the USA or India, does not put blame of Afghan problems on Islamabad. On the contrary, it works with Pakistan on its Afghan policy. From the Fifth Heart of Asia Conference in 2015, it became clear that Chinese officially considered Pakistani involvement in the peace process as necessary for such process to have a chance to work. It appears clearly that, contrary to part of the Afghan elites in Kabul and to the American leadership, Beijing has understood that Pakistan had knowledge and some influence over part of the Afghan Taliban at least, but no full control over them. This more subtle, less simplistic approach from the Chinese made them understand that the Pakistani idea opposing a fragmentation of the Afghan Taliban was the right approach, as Taliban with a weak leadership would be unable to impose peace on their rank and file. Broadly speaking, Chinese diplomatic victory in Afghanistan would also be a victory for Pakistan.


Actually, Afghanistan gives another opportunity for Beijing to work together, with their diplomacies strongly aligned. The military cooperation between the two countries is already strong, and seems to have been further strengthened by the Chief of Army Staff Qamar Javed Bajwa’s three-day recent trip to China. And, of course, there is the CPEC: the China-Pakistan Economic Corridor at the core of the “One Belt,One Road Project" is itself at the heart of President Xi’s diplomacy. On this project, the shared Chinese-Pakistani initiative for Afghan peace is particularly important: a stable Afghanistan would be helpful to make the CPEC a success, and also to diminish the possibilities for Baloch separatists to find external support.


This changing evolution in Russia’s policy revolving Afghanistan problem has also been a good news for Pakistan. It should be remembered that the erstwhile USSR had been an antagonist for Pakistan. In 1971, the Kremlin gave weapons and helped organize training camps for guerilla forces against the Pakistan Army in East Pakistan, soon to become Bangladesh, in 1971. And after the Cold War, the Russians continued to have an unbalanced foreign policy towards South Asia. Russian's recent evolution in foreign affairs does not mean that Pakistan and Russia would become “allies” in no time: this simplistic approach would not take into account the fact that pro-India forces in Moscow are still strong and active. But such evolution means that they should arrive to a point where India-Russia links do not pose hurdles anymore to a good Russia-Pakistan bilateral relationship. Since 2007, when the then Prime Minister Mikhail Fradkov paid a three-day visit to Pakistan, there is a slow but constant positive evolution in the diplomatic relations between the two countries. Working on the Afghan issue together will strengthen this trend in the long term.


The regional environment nowadays makes it clear that the countries in Afghan neighbourhood are in agreement that there is a need of an Afghan peace process, as military force alone cannot change the situation. The only ones that seem to oppose such an approach, shared by Russia, China, Pakistan, as well as Iran, are ‘disconnected’ from Afghan reality. They see this country only through the lens of their opposition to other nations: India first, but also the USA. The former is on a quest to be the only great power in its regional environment. And to be more than an economic power, it needs to break the opposition of the other regional power in its neighbourhood, i.e., Pakistan. It sees China’s desire to gain back its role as a natural Asian Great Power as a threat to its own ambitions. As for the Americans, even if they gave their blessing to the idea of an Afghan peace process since the beginning of this decade, they seem unwilling to accept that other great powers could be capable of being “honest brokers” the USA was unable to be itself. Some, in Washington D.C. also have a problem with the Afghan policy designed in Beijing and in Moscow, as it includes Iran and Pakistan as part of the solution, not of the problem. Those two countries have often been used as scapegoats by Americans and some of their Afghan colleagues as an easy explanation for their common inability to win against the Taliban.


Hopefully, such division will soon disappear: with the danger that is Daesh, and the other hotspots in the world, to find a common ground for peace and stability in this region. The Americans, in particular, have lost 2300 soldiers so far in a war that has been costing the astronomical sum of 1.5 trillion dollars. Despite the temptation to oppose Russia and China, it should be easy for cooler heads to prevail. It would be good news for the Afghan regional environment as a whole, but also for the Afghan people itself.

 

The writer is the Editing Director of CAPE (Center for the Analysis of Foreign Policy). He is also a non-resident Scholar for IPRI (Islamabad Policy Research Institute). He is a specialist of geopolitical/security-related issues in Central Asia and South-West Asia (Iran, Afghanistan, Pakistan).
 
10
April

پُرامن اور بہتر مستقبل کی شاہراہ پر گامزن شمالی وزیرستان

Published in Hilal Urdu April 2017

تحریر: عقیل یوسف زئی

ممتاز صحافی اور تجزیہ نگار عقیل یوسف زئی کے حالیہ دورۂ وزیرستان کے بعد ہلال کے لئے خصوصی تحریر

شمالی وزیرستان ہر دور میں مختلف تحاریک‘ سرگرمیوں اور جنگوں کا مرکز رہا ہے۔ یہاں پر صدیوں سے مقیم پشتون قبائل کا اپنا الگ مزاج اور طرز حیات رہا ہے۔ اس پس منظر نے اس علاقے کو دوسروں سے ممتاز بنا دیا ہے اور غالباً اسی کا نتیجہ ہے کہ نائن الیون کے بعد شمالی وزیرستان عالمی سیاست کے علاوہ تبصروں، خبروں اور تجزیوں کا بڑا مرکز بنا رہا۔ بنوں سے کچھ ہی فاصلے پر واقع یہ ایجنسی طویل عرصے تک نہ صرف ریکارڈ درون حملوں بلکہ غیرملکی جنگجوؤں اور جہادی تنظیموں کی آماجگاہ بنی رہی۔ اسی ایجنسی کو اس حوالے سے بھی بین الاقوامی اہمیت حاصل ہے کہ اس کے آخری سرے پر غلام خان نامی وہ کراسنگ پوائنٹ یا سرحد موجود ہے جس کے ذریعے افغانستان اور سنٹرل ایشیا تک آسانی کے ساتھ پہنچا جا سکتا ہے۔ شمالی وزیرستان ایجنسی کا ہیڈکوارٹر میران شاں بنوں سے محض 61کلومیٹر جبکہ غلام خان 79کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ غلام خان سے کچھ فاصلے پر خوست صوبہ واقع ہے۔ میران شاہ سے کابل 277، دوشنبہ 860 جبکہ تاشقند 1414کلومیٹر کے فاصلے پر ہیں۔ اس سے یہ اندازہ لگانا اور بھی آسان ہو جاتا ہے کہ شمالی وزیرستان کا یہ عالمی روٹ پاکستان‘ بلکہ پورے برصغیر اور وسط ایشیا کے لئے سب سے مناسب اور قریب ترین راستہ ہے۔ 2001کے بعد جب افغانستان میں ایک پیچیدہ اور علاقائی جنگ کا آغاز کیا گیاتو جنوبی اور شمالی وزیرستان پر مشتمل یہ اہم جغرافیائی پٹی اس سے بری طرح متاثر ہوئی۔ پاکستانی طالبان کے علاوہ عرب‘ ازبک‘ چیچن اور تاجک جنگجو تنظیموں نے اس پورے علاقے کو یرغمال بنا کر رکھ دیا اور اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ یہاں کے لاکھوں قبائلی باشندوں ان کے مشران‘ تعلیم یافتہ حلقوں اور تاجروں کو دوطرفہ حملوں اور دباؤ کا سامنا کرنا پڑا۔ دوسری طرف ڈرون حملوں کے ذریعے یہاں کے باشندوں کو بدترین عدم تحفظ اور خوف سے دو چار ہونا پڑا۔ اگر یہ کہا جائے کہ شمالی وزیرستان اپنے لوگوں کے لئے کئی برسوں تک نوگوایریا بنا رہا تو غلط نہیں ہو گا۔ ایک وقت میں یہ علاقہ فقیر آف ایپی کی جدوجہد اور مزاحمت کے باعث برطانیہ اور اس کے مخالف کیمپ کے لئے جتنی اہمیت اختیار کر گیا تھا‘ نائن الیون کے بعد ویسی ہی صورتحال پھر سے بنی رہی۔ اور شمالی وزیرستان اپنوں کے علاوہ غیروں کی سازشی سرگرمیوں اور جنگوں کا مرکز بنا رہا۔ 10تحصیلوں پر مشتمل اس ایجنسی کے اہم مراکز یا علاقوں میں میران شاہ کے علاوہ میر علی‘ رزمک‘ شوال‘دتہ خیل اور غلام خان شامل ہیں۔ یہ ایک پرخطر پہاڑی خطہ مگر انتہائی خوبصورت علاقہ ہے جبکہ یہاں رہنے والے قبیلے نہ صرف صدیوں پر محیط تاریخ رکھتے ہیں بلکہ ان کو خطے کی سیاست اور معیشت کے علاوہ ثقافت کے فروغ میں ہر دور میں بڑی اہمیت حاصل رہی ہے۔ 2002 کے بعد امریکہ اور اس کے اتحادی مسلسل اصرار کرتے رہے کہ اس ایجنسی میں بھرپور آپریشن کرایا جائے تاہم اس کا آغاز 2014میں کیا گیا۔ جو کہ نہ صرف کامیاب رہا بلکہ اس پر عالمی اطمینان کی شرح بھی تسلی بخش رہی اور اب یہ علاقہ ریاستی رٹ میں لایا جا چکا ہے۔ جون 2014 کو شروع کئے گئے آپریشن کے نتیجے میں 10لاکھ کے لگ بھگ لوگ بنوں‘ ڈی آئی خان‘ کوہاٹ اور پشاور سمیت دیگر علاقوں میں نقل مکانی کر گئے۔ فورسز نے مرحلہ وار مختلف علاقوں میں کارروائیاں کیں جہاں پر موجود مضبوط دہشت گرد ٹھکانے تباہ کئے گئے۔ نوگوایریاز کو ریاستی رٹ میں لایا گیا اور ان علاقوں میں مستقل طور پر فورسز تعینات کی گئیں جہاں سے طالبان لشکروں کی دو طرفہ آمدورفت اور سرگرمیاں ممکن تھیں۔ عوام نے حکومت اور فورسزکا ساتھ دینے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی بلکہ امن اور ریاستی رٹ کی خواہش میں نہ صرف یہ کہ جان و مال دے کے بے مثال قربانیاں دیں بلکہ ڈھائی سال تک مہاجرت کے مصائب بھی خندہ پیشانی سے برداشت کئے۔ اس وقت حالت یہ ہے کہ تقریباًتمام علاقے میں ریاستی رٹ بحال کی جا چکی ہے۔ لیویز نہ صرف پوری صلاحیت کے ساتھ فوج کی معاونت کر رہی ہیں بلکہ تمام سرکاری ادارے بھی تیزی کے ساتھ فعال ہونے لگے ہیں۔ آپریشن سے قبل سول اداروں کا علاقے میں وجود ہی ختم ہو کر رہ گیا تھا ۔ 80فیصد علاقے پر لشکروں یا جہادی تنظیموں کا قبضہ اور غلبہ تھا بلکہ سرکاری دفاتر اور اہلکار جان بچانے کے لئے بنوں میں ڈیرے ڈال چکے تھے۔ آپریشن کے بعد سرکاری اداروں کی بحالی پر توجہ دی گئی اور ویران دفاتر پھر سے بحال ہونے لگے۔ اگرچہ اب بھی حکومت کوسہولیات کی فراہمی اور اداروں کی بھرپور معاونت میں کئی مشکلات اور دشواریوں کے علاوہ فنڈز اور وسائل کی کمی جیسے حالات کا سامنا ہے تاہم یہ بات خوش آئند ہے کہ ریاستی ادارے کی واپسی کے علاوہ زندگی کی رونقیں تیزی کے ساتھ بحال ہوتی نظر آ رہی ہیں اور تعمیر نو کا کام بھی جاری ہے۔ سرکاری سرپرستی میں‘ فوجی حکام کی معاونت کے ساتھ‘ بحالی اور تعمیر کا کام سست ہی سہی مگر کافی حد تک اطمینان بخش قرار دیا جا رہا ہے۔

puramanaurbehter.jpg
23مارچ کی تقریبات کے سلسلے میں میران شاہ کے یونس خان سپورٹس کمپلیکس میں ایک شاندار پریڈ کے علاوہ کھیلوں اور ثقافتی پروگرامز کا انعقاد کیا گیا جس میں اعلیٰ فوجی حکام‘ اہلکاروں کے علاوہ تقریباً 20ہزار مقامی لوگ‘ طلباء اور نوجوان شریک ہوئے۔ اس تقریب میں دوسروں کے علاوہ جنرل آفیسرز کمانڈنگ میجر جنرل اظہر حیات اور پولیٹیکل ایجنٹ کامران آفریدی بطور خاص شریک ہوئے۔ جنرل اظہر حیات نے اس موقع پر کہا کہ وہ امن کے قیام میں فورسز کے کردار کے علاوہ عوام کی معاونت اور قربانیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیںٖ جن کے عزم اور کوششوں سے نہ صرف علاقے سے دہشت گردوں کا خاتمہ ممکن ہوابلکہ متاثرین کی واپسی اور تعمیر نو کی سرگرمیوں کا آغاز بھی ہوا۔ ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں نے جرگوں، جنازوں اور سرکاری تنصیبات کے علاوہ تعلیمی مراکز اور ہسپتالوں کو بھی نہیں بخشا۔ تاہم اب ان کو پھر سے یہاں گھسنے نہیں دیا جائے گا اور اس خطے کو امن اور ترقی سے ہمکنار کرکے مثالی اور پرامن علاقہ بنایا جائے گا۔ بعد ازاں صحافیوں سے تفصیلی بات چیت میں پی اے کامران آفریدی نے ان فیصلوں کی تفصیلات بتائیں جو کہ حکومت نے علاقے کی ترقی کے لئے شروع کر رکھی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عسکری حکام کی معاونت اور مشاورت سے عوام کے تحفظ اور علاقے کی ترقی کے لئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لائے جا رہے ہیں تاکہ ماضی کے حالات و واقعات کی تلافی کی جا سکے۔


جی او سی میجر جنرل اظہر حیات اور پی اے کامران آفریدی نے صحافیوں کے ساتھ اپنی خصوصی نشستوں کے دورران بتایا کہ افغانستان جانے والے وزیرستانی باشندوں کی واپسی کے لئے بہت جلد ایک نئے مرحلے کا آغاز کیا جائے گا تاکہ ان کو باعزت طریقے سے ان کے علاقوں میں واپس لا کر بسایا جائے۔ ان کے بقول تقریباً 90فیصدآئی ڈی پیز واپس آ چکے ہیں۔ اب ان کی بحالی اور علاقے کی تعمیر نو پر توجہ دی جا رہی ہے اور کوشش کی جا رہی ہے کہ بحالی اور تعمیر نو کے سلسلے کو تیز کرنے کے لئے اسلام آباد اور پشاور کے اعلیٰ حکام اور اداروں کو زیادہ سے زیادہ وسائل کی فراہمی پر قائل کیا جائے تاکہ عملی اقدامات کے ذریعے نہ صرف یہ کہ برسوں تک حالات کے جبر کا شکار ہونے والے لوگوں کو بنیادی سہولتیں فراہم کی جا سکیں بلکہ ان کو یہ باورکرایا جائے کہ حکومت امن کے قیام اور سہولیات کی فراہمی میں سنجیدہ ہے۔ دونوں اعلیٰ حکام نے بتایا کہ شمالی وزیرستان کے لوگوں کے اقتصادی مسائل حل کرنے اور غلام خان سرحد کو دوبارہ کھولنے کے لئے بھی اقدامات کئے جا رہے ہیں تاکہ اس روٹ کو پھر سے فعال بنایا جائے اور اس کے ذریعے مقامی آبادی کو کاروبار کے مواقع فراہم کئے جائیں۔ دونوں اعلیٰ عہدیداروں نے یہ بھی بتایا کہ جن لوگوں کے گھر، مارکیٹیں اور دکانیں متاثر ہو ئیں ان کی از سر نو تعمیر کا کام شروع ہے اور حکومت اس سلسلے میں نقصانات کے ازالے کے لئے قابل ذکر اور اطمینان بخش اقدامات اٹھا رہی ہے۔ ان کے مطابق یہ کوشش کر رہے ہیں کہ شمالی وزیرستان کے ٹی ڈی پیز کو مردم شماری کے دوران وزیرستان ہی کے شہری قرار دینے کے لئے متعلقہ اداروں کے ساتھ ایک فارمولے کے پلان کے ذریعے یقینی بنایا جائے تاکہ ان کے شہری حقوق اور وسائل کا حصہ دار بننے کا راستہ ہموار کر کے انہیں ہر قسم کے وسائل اور حقوق سے مستفید کیا جائے۔ ان کے مطابق سول اور عسکری ادارے باہمی مشاورت کے ذریعے جہاں ایک طرف علاقے کے امن اور ریاستی رٹ کی بحالی کے لئے یکسو ہو کر کام کر رہے ہیں وہاں تعمیر نو اور بحالی کے منصوبوں میں بھی مشاورت سے کام لیا جا رہا ہے اور کوشش کی جا رہی ہے کہ وزیرستان کے انتظامی ڈھانچے کے علاوہ یہاں کی معاشرت اور معیشت کو بھی اپنے پاؤں پر کھڑا کیا جائے۔


قبل ازیں مقامی عمائدین، صحافیوں اور سیاسی کارکنوں نے آپریشن کو کامیاب قرار دیتے ہوئے امن کے قیام پر مکمل اعتماد اور اطمینان کا اظہار کیا تاہم انہوں نے تعمیر نو اور بحالی کے منصوبوں اور کاموں کو مستقل امن کے لئے ناگزیر قرار دیتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ عوام کی شکایات اور ضروریات کا خیال رکھتے ہوئے شمالی وزیرستان کے لئے جاری منصوبوں کی رفتار تیز کرنے کے لئے فنڈز کی فراہمی کو یقینی بنائے اور جن لوگوں کے گھروں، مارکیٹوں اور کاروبار کو نقصان پہنچا ہے اس کی فوری تلافی کی جائے ان کے مطابق وہ کبھی بھی نہیں چاہیں گے کہ شدت پسند یا ان کے حامی پھر سے ادھر کا رخ کریں کیونکہ یہ لوگ انسانیت، پاکستانیت اور قبائل کے دشمن رہے ہیں اور ان کے منفی عزائم نے اس خطے کے عوام کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ان لوگوں کو وہ حقوق اور وسائل دیئے جائیں جو کہ پاکستان کے دوسرے شہریوں اور علاقوں کو حاصل ہیں۔ انہوں نے 23مارچ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ آئندہ بھی ایسے پروگرامز ہوتے رہیں گے تاکہ اس جنگ زدہ وزیرستان کے باسیوں کو خوشی اور تفریح کے مواقع ملتے رہیں اور ایسے پروگرامز کے ذریعے عوام اور ریاستی اداروں کو یکجا ہونے کا موقع بھی ملتا رہے ۔


قدرتی وسائل میں قبائل برابر کے حصہ دار
فاٹا اور وزیرستان کی تاریخ میں غالباً پہلی دفعہ یہ فیصلہ سامنے آیا ہے کہ قدرتی وسائل یا معدنیات جن علاقوں میں دریافت ہوں گے وہاں کے مقامی باشندوں یا عوام کو نہ صرف ایک مناسب رائلٹی دی جائے گی بلکہ ترجیحی بنیادوں پر ان کو ملازمتیں بھی دی جائیں گی۔ اس سلسلے میں شمالی وزیرستان کے متعلقہ حکام نے گزشتہ دنوں تحصیل بویہ کے علاقے محمد خیل میں دریافت کے گئے قیمتی معدنیات (کاپر) کی آمدن میں سے مقامی قبائل یا لوگوں میں 18فیصد کی رائلٹی کے چیک تقسیم کئے۔ حکام کے مطابق معدنیات اور دیگر قدرتی ذخائر جس بھی علاقے میں دریافت ہوں گے‘ وہاں کے عوام کو 18فیصد کے حساب سے رائلٹی دی جائے گی اور لیزنگ کمپنیوں کو باقاعدہ اس فیصلے کا پابند بنایا گیا ہے۔ ان کے مطابق ایک فارمولے کے تحت یہ فیصلہ بھی کیا گیا ہے کہ جس علاقے میں معدنیات کا کوئی مرکز دریافت ہو گا وہاں کے عوام کو ملازمتیں دی جائیں گی اور لیبر اور ٹرانسپورٹ کی سہولتیں بھی ان کو دی جائیں گی تاکہ اس طریقے سے مقامی آبادی کو نہ صرف پروڈکشن میں حصہ دار بنایا جائے بلکہ ان کو روزگار اور ملازمتوں کے مواقع بھی فراہم کئے جائیں۔ حکام کے مطابق وزیرستان میں کرومائیٹ ، کاپر‘ کوئلے، تیل،جپسم اور متعدد دیگر قدرتی معدنیات کے لامحدود وسائل، ذخائر موجود ہیں اور ان ذخائر کی لیزنگ کا سلسلہ تیزی کے ساتھ جاری ہے۔ دیگان نامی علاقے میں بھی رائلٹی کی مد میں گزشتہ دنوں لوگوں میں چیک تقسیم کئے گئے۔


شمالی وزیرستان میں 60ہزارسکیورٹی اہلکار متعین
اعلیٰ سرکاری حکام کے مطابق شمالی وزیرستان میں فوج اور پیراملٹری فورسز کی بڑی تعداد متعین کی گئی ہے جبکہ اہم علاقوں کے پہاڑوں پر درجنوں مورچے بھی بنائے گئے ہیں تاکہ علاقے اور یہاں کے عوام کو محفوظ بنایا جائے۔ حکام کے مطابق اس وقت اس اہم ایجنسی میں تقریباً 60ہزار سکیورٹی اہلکار موجود ہیں جن میں 35000 لیویز بھی شامل ہیں۔ لیویز‘ فوجی جوانوں کے شانہ بشانہ سڑکوں اور چوٹیوں پر فرائض سرانجام دے رہے ہیں اور ان کی فعالیت اور کارکردگی کو عوام کے علاوہ فوجی حکام بھی سراہتے آ رہے ہیں۔


آپریشن ضرب عضب کے باقاعدہ آغاز سے قبل شمالی وزیرستان سے غلام خان کراسنگ پوائنٹ کے ذریعے افغانستان والے ہزاروں خاندانوں کی پاکستان واپسی کا دوبارہ آغاز اپریل کے پہلے ہفتے کے دوران متوقع ہے اس مقصد کے لئے اعلیٰ سول اور فوجی حکام کے درمیان ایک باقاعدہ شیڈول کے لئے تیاریاں آخری مراحل میں ہیں۔ اعلیٰ فوجی اور سول حکام نے گزشتہ روز میران شاہ میں غیررسمی بات چیت کے دوران بتایا کہ افغانستان جانے والے متاثرین کی واپسی میں تاخیر اس لئے ہوئی کہ ایک تو ان کی غیرمعمولی چیکنگ لازمی تھی جس کے لئے غیرمعمولی وقت درکار تھالہٰذا واپسی دو تین مراحل میں مکمل ہوئی ان مراحل کے دوران لوگوں کے درمیان تعداد کم رہی جبکہ دوسری وجہ یہ تھی کہ پاکستان میں مسلسل حملوں کی وجہ سے سرحد سیل کی گئی اور متاثرین کی بحالی میں بعض انتظامی رکاوٹیں حائل رہیں تاہم توقع کی جانی چاہئے کہ متاثرین کی واپسی کا سلسلہ پھر سے شروع ہو سکے گا اور اب کی بار کوشش کی جائے گی کہ تمام لوگ واپس آ جائیں ۔متعلقہ حکام نے استفسار پر بتایا کہ آپریشن سے قبل یا اس کے دور ان شمالی وزیرستان سے تقریباً 12000 خاندان غلام خان کے راستے افغانستان کے سرحدی صوبے خوست منتقل ہو گئے تھے۔ آپریشن کی تکمیل اور ٹی ڈی پیز کی واپسی کے اعلان کے بعد دو تین مراحل کے دوران تقریباً 1800سے زائدخاندان اپنے علاقوں میں واپس آ گئے۔ تاہم 9000 کے قریب خاندان اب بھی افغانستان میں مقیم ہیں۔ حکام کے مطابق اگر ملک میں دہشت گرد حملوں کا سلسلہ نہیں چل پڑتا اور حالات نارمل رہتے تو اب تک ان خاندانوں کو واپس لایا جا چکا ہوتا۔ اگر چہ غیرمعمولی صورت حال کے باعث یہ سلسلہ تاخیر کا شکار ہوا تاہم اب ان کی واپسی کے لئے ایک اور فیز کا آغاز ہونے والا ہے جس کے دوران ان کی واپسی اور بحالی کو یقینی بنایا جائے گا۔ حکام نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ غلام خان کے کراسنگ پوائنٹ کو دوبارہ کھولنے کے آپشن اور امکان کا بھی اعلیٰ سطحی جائزہ لیا جا رہا ہے کیونکہ شمالی وزیرستان اور جنوبی وزیرستان کے ہزاروں افراد کا روزگار اور کاروبار اس روٹ سے وابستہ ہے اور حکومت کی کوشش ہے کہ ایک مربوط طریقہ کار کے مطابق دونوں جانب کی عام آمدورفت کے علاوہ تجارت کا سلسلہ بھی جلد بحال ہو سکے۔


بنوں اور بعض دیگر علاقوں میں آباد ٹی ڈی پیز کی مکمل واپسی کے بارے میں کئے گئے سوال کے جواب میں متعلقہ حکام کا کہنا تھا کہ یہ سلسلہ کسی رکاوٹ کے بغیر جاری ہے اور روزانہ کی بنیاد پر ٹی ڈی پیز کی واپسی اور بحالی کا سلسلہ جاری ہے تاہم دوسری طرف مقامی عمائدین صحافیوں اور متاثرین کا کہنا ہے کہ امن و امان کی بحالی کے باوجود ٹی ڈی پیز کی واپسی سست روی کا شکار ہے اور اس کی ایک بنیادی وجہ یہ ہے کہ ہزاروں گھر مسمار کئے جا چکے ہیں اور گھروں کی تعمیر کے لئے جو طریقہ کار وضع کیا گیا ہے اس میں چند خامیاں بھی ہیں۔ ان کے مطابق اب بھی تقریباً 40فیصد ٹی ڈی پیز واپسی کے منتظر ہیں جو واپس آ گئے ہیں ان میں سے کچھ یا تو رشتہ داروں کے ہاں ٹھہرے ہوئے ہیں یا عارضی بنیادوں پر خیمے لگا کر حکومتی امداد کا انتظار کر رہے ہیں۔ ان ذرائع کے مطابق ابھی حکومتی کارندوں کے مزید کام کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ پاک فوج نے اپنا رول ادا کردیا ہے۔ اب باقی اداروں پر منحصر ہے کہ وہ روایتی سست روی اور بیوروکریٹک ڈیلے کی وجہ سے حاصل شدہ کامیابیوں کے ثمر حاصل کریں‘ نہ کہ اپنے عمل سے اُن کے حُسن کو گہنا دیں۔

مضمون نگار ممتاز صحافی اور تجزیہ نگار ہیں۔آپ ایک نجی چینل پر حالات حاضرہ کا پروگرام بھی پیش ک رتے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

’’اے مری سَر زمیں !‘‘
کس قدر پُرکشش‘ کس قدر دلنشیں‘ یہ بہاریں تری‘ یہ نظارے ترے
تُو ہے کتنی حسیں‘ اے مری سَرزمیں‘ کوہ و صحرا تلک کتنے پیارے ترے
تُوہے ماں کی طرح مُونس و مہرباں‘ تجھ سے آباد و شاداں ہمارا جہاں
تُو نسیمِ سحر از کراں تا کراں‘ تُجھ میں اُڑتے پھریں ہم غبارے ترے
تُجھ سے جب بھی کبھی دُور جانا پڑا‘ دل جدائی میں تیری تڑپتا رہا
ہم سراپا وفا‘ بندگانِ صفا‘ تُوہے دریا تو ہم ہیں کنارے ترے
تجھ کومیلی نظر سے جو دیکھے کوئی‘ تُجھ سے دَست و گریباں جو ہو مُدعی
اُس سے ہو جائے اپنی لڑائی کھلی‘ ہم ہیں شمشیر کے تیز دھارے ترے
تیری بنیاد دینِ مبیں پر پڑی‘ تو عطائے خدا‘ تو دعائے نبیﷺ
فکرِ اقبالؒ ‘ و قائدؒ کے صدقے ملی‘ تیرا اصغر پرےؔ جائے وارے ترے
خواجہ محمداصغر پرے

*****

 
10
April

بنگلہ دیش میں بڑھتی ہوئی تعصب کی آگ

Published in Hilal Urdu April 2017

تحریر: ڈاکٹر شائستہ تبسم

1971ء کے واقعات اور سقوطِ ڈھاکہ پاکستان کی تاریخ کا ایک انتہائی تکلیف دہ اور سیاہ باب ہے۔بنگلہ دیش آج کی دنیا کی حقیقت ہے ۔ پاکستان نے بہت جلد بنگلہ دیش کو تسلیم کرلیا تھا اور دونوں ممالک نے مختلف معاہدوں پر بھی رضامندی سے دستخط کئے تھے۔ لیکن بنگلہ دیشی حکومت کی طرف سے نہ ختم ہونے والے الزامات کا ایک ایسا سلسلہ شروع ہو گیا جس نے وقت کے ساتھ ساتھ شدت اختیار کرلی ہے۔ خاص کر موجودہ بنگلہ دیشی حکومت گزشتہ تمام حکمرانوں پر بازی لے گئی ہے۔


مارچ کے پہلے ہفتے میں حکومت بنگلہ دیش نے پارلیمنٹ میں ایک قرار داد پیش کی جو بلا مخالفت منظور ہوگئی۔ اس قرارداد میں25 مارچ کا دن ’’یومِ نسل کشی‘‘ کے طور پر منانے کی منظوری دی گئی۔یہ دن 25 مارچ 1971 کے دن کی یاد میں منایا جائے گا جب بقول حکومتِ بنگلہ دیش افواجِ پاکستان نے آپریشن سرچ لائٹ کے تحت بنگالیوں کا قتل عام کیا اور بلاامتیاز بنگالیوں کو موت کے گھاٹ اُتار دیا۔


25مارچ کو افواجِ پاکستان کی جانب سے کی جانے والی نسل کشی کی حقیقت کیا ہے۔ بنگلہ دیش حکومت کی طرف سے لگایا گیا یہ الزام کہ تین لاکھ نہتے بنگالیوں کا قتل عام کیا گیا۔ کیا واقعی یہ حقیقت ہے یا فسانہ۔۔۔ ان سب سوالات کے جوابات کے لئے بہتر ہے کہ ایک غیر جانبدارانہ اور غیر جذباتی تحقیق کی جائے اور پوری دیانتداری سے گزرے ہوئے حالات کا جائزہ لیا جائے۔

Genocide
یا نسل کشی کا مطلب ایک منظم سازش کے تحت کسی گروہ یا قوم کی پوری نسل کو ختم کردیناہے۔ اس گروہ کی بنیاد نسلی یا مذہبی ہو سکتی ہے۔ جن کو بے دریغ اور بلاتفریق صرف ایک خاص گروہ سے تعلق کی بنیاد پر موت کے گھاٹ اُتار دیاجائے تاکہ اس گروہ کا خاتمہ ہو سکے۔ 90 کی دہائی میں یوگوسلاویہ کے ٹکڑے ٹکڑے ہونے کے بعد سربیا اور کروشیا نے بوسنیا میں مسلمانوں کی نسل کشی کے دوران لاکھوں افراد کو موت کے گھاٹ اُتارا۔ بنگلہ دیش میں یہ خیال 1990 کی دہائی کے بعد زیادہ شدو مد سے اُبھرا۔


اب جبکہ تین لاکھ بنگالیوں کے نام نہاد قتل عام کی یاد میںیومِ نسل کشی منانے کا اعلان کیاگیا ہے بذاتِ خود ناقابلِ یقین ہے۔ یہ تین لاکھ کی تعداد کا حوالہ بنگلہ دیش کے سابق صدر مجیب الرحمن کے ڈیوڈفراسٹ کو دیئے گئے انٹر ویو میں استعمال کیا گیا تھا جو آج کے بنگلہ دیش میں آسمانی صحیفے کے طور پر بار ہا استعمال کیا جاتا ہے۔ روزنامہ ہندو نے بھی حمود الرحمن کمیشن کی رپورٹ کا حوالہ دیا ہے جس میں یہ تعداد 26,000 ہے۔ کلکتہ سے تعلق رکھنے والی شرمیلا بوس
نے اپنی کتاب
Dead Reckoning:Memories Of 1971
میں تیکنیکی سوالات اٹھائے ہیں۔ ان کے مطابق یہ یک طرفہ تصویر ہے۔ کیونکہ اس نوعیت کا کوئی واقعہ اس طرح ہوا ہی نہیں تھا۔ ان کے مطابق سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اتنی بڑی تعداد میں ہلاک ہونے والوں کی لاشیں کہاں گئیں۔ انہوں نے تین لاکھ کی تعداد کو ایک جھوٹ قرار دیا اور کہا کہ اتنی بڑی تعداد میں ہلاکتیں کسی سطح پر ثابت نہ ہوسکیں اور نہ ہی کسی سرکاری رپورٹ میں اس تعداد کا حوالہ یا ثبوت موجود ہے۔ خاص کر ڈھاکہ یونیورسٹی میں ہونے والے واقعے کے بارے میں شدید تحفظات موجود ہیں۔ بین الاقوامی میڈیا سے بھی اس تعداد کی تصدیق نہیں ہوسکی۔ ڈاکٹر سجاد حسین جو کہ ڈھاکہ یونیورسٹی اور راج شاہی یونیورسٹی کے اس وقت کے وائس چانسلر تھے انہوں نے اپنی یادداشتیں
The Wastes of Time
کے نام سے شائع کرائی ہیں۔ انہوں نے یہ واضح نشاندہی کی ہے کہ اس وقت ڈھاکہ یونیورسٹی میں تاریکی اور سائے کا راج تھا۔ اساتذہ کے آفس اور کلاس روم مکتی باہنی کے کیمپ میں تبدیل ہو چکے تھے جہاں مسلح تربیت اور ساتھ ہی پاکستان سے محبت کرنے والوں کے لئے ٹارچر سیل قائم کئے گئے تھے۔ جہاں تک تدریسی سٹاف کا قتل اورطلباء سے جھڑپ اور قتل کا معاملہ ہے اس کے بارے میں ڈاکٹر شرمیلا بوس نے لکھا ہے کہ ان تمام واقعات کی کوئی تفصیل نہیں ملتی بلکہ حقیقتاً جھڑپ کا آغاز بنگالی طلبہ کا غیر بنگالی طلبہ پر حملے سے ہوا تھا جس کو قابو میں لانے کے لئے پاک فوج کے دستے ڈھاکہ یونیورسٹی میں داخل ہوئے۔ اگر ڈاکٹر سجاد حسین کی کتاب کا تفصیل سے جائزہ لیا جائے تو معاملات، خاص کر بنگالی طلبہ کا جنون اور نفرت بہت واضح طور پر سمجھ آتے ہیں۔ بنگالی عوام کا قتلِ عام اور ملک میں انتشار کی اس پوری کہانی میں بھارت کا کہیں ذکر نہیں ہے۔ بھارت کا پوری تحریک میں انتہائی اہم اور فعال رول تھا۔ اس بات کا اعادہ مختلف بھارتی لیڈران نے عوام اور ذرائع ابلاغ کے سامنے کیا ہے، جس میں مرار جی ڈیسائی‘ راہول گاندھی‘ بنگلہ دیش کے سابق سپیکر شوکت علی اور بھارتی ڈی جی ایف آئی میجر جنرل زیڈ اے خان شامل ہیں، کہ بھارت کا بنگلہ دیش تحریک میں مدد کرنے کا مقصد پاکستان توڑنا تھا۔ اس کے ساتھ ساتھ شدید انتشار پھیلانا- عوامی رائے کو پاکستان مخالف کرنے کے لئے آسان ہدف نہتے عوام ہی بنے کیونکہ جب عوام کے جان و مال کو خطرہ ہوگا تب ہی نفرت کی آگ زیادہ بھڑکے گی اور مخالفت زیادہ پھیلے گی۔ اس انتشار کی ذمہ داری، جیسا کہ اس معاملے میں ہوا اگر پاکستان پر ڈال دی جائے تو ایسی نفرت اور انتشار پر قابو پانا تقریباً ناممکن ہو جاتا ہے۔


ایک سوال یہ اٹھتا ہے کہ کیا بھارتی مداخلت صرف1970 اور1971میں شروع ہوئی۔ یقیناًیہ سازش سالوں پہلے تیار کی گئی تھی اور اس پر عمل درآمد بھی کئی سال پہلے شروع ہوچکا تھا۔1970 میں تو بھارتی حکومت کھل کر سامنے آئی تھی کئی سالوں سے اسلحے کی برآمد اور مسلح تربیت شروع ہو چکی تھی۔ ساتھ ہی بھارتی جاسوسی کی نتظیم را کے افراد مشرقی پاکستان میں نفرت پھیلانے کا کام شروع کر چکے تھے۔ پاکستان کو توڑنا بھارت کا اولین ہدف رہا ہے۔ کیا آج کے بنگالی اسکالر کو یہ بات سمجھ میں نہیں آتی کہ کیا اس ہدف کی تکمیل میں بھارت نے ہر ممکن حربے استعمال نہ کئے ہوں گے چاہے اس کے لئے کتنے ہی بنگالیوں کو قتل کرنا پڑا ہو یا عورتوں کی بے حرمتی کرنی پڑی ہو۔


مشرقی پاکستان کی علیحدگی میں مکتی باہنی کا کردار بہت اہم ہے۔ ان کو بھارت کی مکمل حمایت حاصل تھی۔ مکتی باہنی کی فوجی تربیت اور اسلحہ کہاں سے آیا۔ یہی نہیں مکتی باہنی کی صورت میں ایک بہت بڑی تعداد میں بھارتی فوجی لڑائی میں شامل تھے۔ مکتی باہنی وہ دہشت گرد تنظیم تھی جس نے عوام کا بے دریغ قتل عام اور لوٹ مار کی۔ خاص کر دیہاتوں اور چھوٹے قصبوں میں اور دور دراز علاقوں میں جہاں وہ بے یارومددگار تھے۔ کئی شہری علاقوں میں نہتے بنگالیوں کو پاک فوج نے بچایا۔ ڈھاکہ گزٹ کے اگست‘ دسمبر1971 کاReview کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ تقریباً 76,000 کی تعداد میں بنگالی مرد اور عورتوں کو مکتی باہنی اور عوامی لیگ کے کارکنوں نے موت کے گھاٹ اتارا ( منیراحمد
‘(Bangla Desh Myth Exploded
سب سے اہم بات جس کی نشاندہی شرمیلابوس نے بھی کی ہے کہ مرنے والوں کی زیادہ تعداد بہاریوں یا غیر بنگالیوں کی تھی جو یقیناًپاکستان فوج کا نشانہ نہیں بنے تھے۔ بقول بنگلہ دیشی حکام کے پاک فوج بنگالیوں کا قتل عام کررہی تھی تو کیا اس تین لاکھ کی تعداد میں زیادہ تر بہاریوں یا غیر بنگالوں کی ہے جو کہ بلاشبہ مکتی باہنی کے تعصب کا شکار ہوئے۔


ایک اور اہم نکتہ جو بارہا اٹھایا جاتا ہے۔ وہ نہتے اور غیر تربیت یافتہ ہونے کا ہے۔ مکتی باہنی کے افراد نہ ہی نہتے اور نہ ہی غیر تربیت یافتہ تھے بلکہ وہ ببانگِ دہل اور مسلح جدو جہد کررہے تھے۔ آج بھی 1971 کی یادداشتوں میں مکتی باہنی کے رضاکاروں کی تربیت اور مسلح کرتے ہوئے تصاویر موجود ہیں۔ جس سے اس تنظیم کی ساخت اور مقاصد کے بارے میں کوئی شبہ نہیں رہتا۔ اس بات کا اعادہ مجیب الرحمن نے اپنی 9 جنوری1972کی تقریر میں کیا تھا۔ انہوں نے مکتی باہنی کے چھاپہ ماروں سے ہتھیار پھینکنے کی اپیل کی مگر اس یقین دہانی کے ساتھ کہ دشمنوں کا صفایا کرنے کی ذمہ داری باضابطہ فورسز کے حوالے کردی جائے گی۔ ایک طرف تو بنگلہ دیش ایک مغالطے میں تین لاکھ افراد کے قتل کی ذمہ داری پاک فوج پر ڈال رہی ہے لیکن ان لاتعداد غیر بنگالی‘ پاکستان سے محبت کرنے والے افراد اور ان کے خاندانوں کا جس طرح قتل عام کیا گیا ان کے خون کا حساب کون دے گا جو تعصب کی بھینٹ چڑھ گئے اور جن کی قربانیوں کا کہیں ذکر نہیں ہے۔ جیسا کہ مجیب الرحمن کی 9 جنوری کی تقریر سے واضح ہے کہ ملکی سطح پر باضابطہ دہشت گردی کا اعلان اور حکم دے دیا گیا تھا۔


اس تعصب اور نفرت کی آگ صرف شہروں اور سویلین علاقوں تک محدود نہ تھی بلکہ بنگالی فوجیوں نے اپنے ساتھی غیر بنگالی فوجیوں کو انتہائی بے دردی سے قتل کیا۔ جن کی تعداد بھی تاریخ کے صفحات سے غائب کردی گئی یا وہ بھی پاک فوج کے کھاتے میں ڈال دی گئی۔


اس تمام معاملے کی ایک غیر جانبدارانہ ریسرچ کی ضرورت ہے لیکن ایک اور مسئلہ یہ ہے کہ پچھلے47 سالوں میں بنگلہ دیش میں یہ معاملہ قوم پرستی پر مبنی دیومالائی بن چکا ہے۔ بنگلہ دیش میں پاکستان اور اس کی حمایت میں بات کرنا ایک جرم بنا دیا گیا ہے۔ خاص کر جب حال ہی میں پاکستان سے محبت کے جرم میں سیاسی لیڈران کو تختہ دار تک پر چڑھا دیا گیا۔ جب کہ ان کا جرم بھی ثابت نہ ہو سکا تھا۔ آج بنگلہ دیش کی شیخ حسینہ کی حکومت ایک جمہوری آمریت کی مثال ہے۔ وہاں حکومت مخالف بڑی سیاسی جماعتیں خاص کر بی این پی اور جماعت اسلامی جن مقدمات میں الجھی ہوئی ہیں اُن میں سے زیادہ تر کا تعلق1971 کے واقعات سے ہے ایسے وقت میں یہ جماعتیں اپنی بقا کی جدو جہد میں ہیں اور خود کو زیادہ محب وطن ثابت کرنے پر زور دے رہی ہیں۔ لہٰذا ایسے وقت میں جب ملک میں سیاسی دہشت گردی کی فضا قائم ہو‘ پاکستان پر جمع کی ہوئی قرار داد کی مخالفت کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ اس کے باوجود 350 کے ایوان میں 56 اراکین نے بحث میں حصہ لیا۔


موجودہ حکومت پاکستان مخالفت پر اپنا سارا زور لگائے ہوئے ہے پاکستان مخالف اقدامات کرکے بھارت سے زیادہ تعلقات بڑھائے جارہے ہیں۔ تاکہ نہ صرف سیاسی بلکہ معاشی فوائد بھی حاصل کئے جاسکیں۔ یہ ایک الگ عنوان ہے کہ بھارت اور بنگلہ دیش کے تعلقات آگے جاکر کن کن مسائل اور پیچیدگیوں کا شکار ہونے جارہے ہیں۔بلکہ فی الوقت شیخ حسینہ اپنے آئندہ ماہ اپریل میں شروع ہونے والے دورے پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔


بھارت اور بنگلہ دیش کا ایک مشترکہ مقصد یقیناًنہ صرف پاکستان کو دنیا بھر کے سامنے ایک
rogue
ریاست کے طور پر پیش کرنا ہے بلکہ ساتھ ہی پاک فوج کو ناتجربہ کار اور غیر پیشہ ورانہ ادارہ ثابت کرنا بھی ہے۔
موجودہ بنگلہ دیشی حکومت نفرت کا ایک ایسا جال بُن رہی ہیں جس میں آہستہ آہستہ پوری قوم پھنستی جارہی ہے۔ یہ قوم پرستی جس کی بنیاد پر اُنہوں نے پاکستان سے علیحدگی کی اسی طرح کی نفرت ہی کے بل بوتے پر پروان چڑھتی ہے۔ متعصب قوم پرستی کی ایک صاف مثال جرمن قوم اور ہٹلر کی ہے۔ جو اپنے تعصب اور قوم پرستی میں اتنا آگے بڑھ گئے کہ یہ قوم پرستی دوسری قوموں سے برتری اور انتقام کی صورت اختیار کرگئی کہ جرمن کو تباہی وبربادی کا سامنا کرنا پڑا۔ شیخ حسینہ کا طرزِ حکومت اور ان کی بنگالی قوم پرستی اور نفرت اس ملک و قوم کو کہیں اس نہج پر نہ لے جائے جہاں سے واپسی کا کوئی راستہ نہ بچے۔

مضمون نگار کراچی یونیورسٹی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کی چیئرپرسن ہیں۔
اساتذہ کے آفس اور کلاس روم مکتی باہنی کے کیمپ میں تبدیل ہو چکے تھے جہاں مسلح تربیت اور ساتھ ہی پاکستان سے محبت کرنے والوں کے لئے ٹارچر سیل قائم کئے گئے تھے۔ جہاں تک تدریسی سٹاف کا قتل اورطلباء سے جھڑپ اور قتل کا معاملہ ہے اس کے بارے میں ڈاکٹر شرمیلا بوس نے لکھا ہے کہ ان تمام واقعات کی کوئی تفصیل نہیں ملتی بلکہ حقیقتاً جھڑپ کا آغاز بنگالی طلبہ کا غیر بنگالی طلبہ پر حملے سے ہوا تھا جس کو قابو میں لانے کے لئے پاک فوج کے دستے ڈھاکہ یونیورسٹی میں داخل ہوئے

*****

ایک سوال یہ اٹھتا ہے کہ کیا بھارتی مداخلت صرف1970 اور1971میں شروع ہوئی۔ یقیناًیہ سازش سالوں پہلے تیار کی گئی تھی اور اس پر عمل درآمد بھی کئی سال پہلے شروع ہوچکا تھا۔1970 میں تو بھارتی حکومت کھل کر سامنے آئی تھی کئی سالوں سے اسلحے کی برآمد اور مسلح تربیت شروع ہو چکی تھی۔ ساتھ ہی بھارتی جاسوسی کی نتظیم را کے افراد مشرقی پاکستان میں نفرت پھیلانے کا کام شروع کر چکے تھے۔

*****

 
06
April

Kashmiris and Their Right to Self-Determination

Written By: Tooba Khurshid

Kashmir dispute is a major source of tension between India and Pakistan since 1947. The issue is also one of the oldest items on the agenda of the United Nations (UN). Despite numerous significant resolutions and debates on Kashmir, the issue still stands unresolved. Many people believe that it is a territorial dispute, however, owing to its human dimension, the issue has become a humanitarian crisis which warrants early resolution and demands right of the people to self-determination. 

 

kasmirantheirr.jpgIn Indian Occupied Kashmir (IOK) defenceless Kashmiris are subjected to massacres, encounters, detention, arrests and tortures. Whenever Kashmiris demanded their rights, they have been subjected to massive abuses. Gross human rights violations perpetrated by Indian Occupational Forces since July 8, 2016 had resulted in deaths of 177 civilians. More than 19310 people have been injured in human rights abuses. Indiscriminate use of force and pellets against unarmed civilians has become a state policy of India. An estimated 7398 people have been hit by pellet guns so far, at least 1180 are partially blinded, 309 are on verge of becoming blind and 42 have lost eyesight completely. Unprecedented massacre of Kashmiris by Indian Occupational Forces have made the region a very dangerous place. Indian endeavours to kill the courage and strength of people of IOK are well documented by Indian as well as international human rights organizations. Amnesty International in its 2016 and 2017 human rights report criticized India for excessive and arbitrary use of force against unarmed civilians and called it 'inherently inaccurate and indiscriminate.' Despite, the brutalizing of innocent Kashmiris by Indian atrocities continues with impunity.


The right of self-determination, that people of IOK are demanding, is enshrined in numerous UN resolutions passed over Kashmir which upholds their right to determine their future freely.

UN Resolutions Passed over IOK

UNSCR 47, April 21, 1948

"Noting with satisfaction that both India and Pakistan desire that the question of the accession of Jammu and Kashmir to India and Pakistan should be decided through democratic method of a free and impartial plebiscite"

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/RES/47(1948))

 

UNCIP resolution August 13, 1948

Part III: “Pakistan and India reaffirm that future status of the state of Jammu and Kashmir shall be determined in accordance with will of the people and to that end, upon acceptance of the Truce Agreement both Governments agree to enter into consultations with the Commission to determine fair and equitable conditions" whereby such free expression will be assured.”

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/1100)

 

UNCIP resolution January 5, 1949

"Question of accession of Jammu and Kashmir should be decided through the democratic methods of free and impartial plebiscite"

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/1196)

 

UNSCR 80, March 14, 1950

"To exercise all of the powers and responsibilities devolving upon UNCIP by reason of existing resolutions of the Security Council and by reason of agreements of parties embodied in UNCIP resolutions of August 13, 1948 and January 5 1949"

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/RES/80(1950))

 

UNSCR 91, March 30, 1951

"Reminding the governments and authorities concerned of the principle embodied in its resolutions 47 (1948) of 21 April 1948... and UNCIP resolutions of 13 August 1948 and 5 January 1949 that the final disposition of the state of Jammu and Kashmir will be made in accordance with the will of people expressed through the democratic method of a free and impartial plebecsite…"

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/RES/91(1951))

 

UNSCR 98, December 23, 1952

"Recalling the provisions of UNCIP resolutions of August 13, 1948 and January 5, 1949 which were accepted by the Governments of India and Pakistan and which provided that the question of the accession of the state of Jammu and Kashmir would be decided through democratic method of a free and impartial plebiscite conducted under the auspices of UN"

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/RES/98(1952)

 

UNSCR 122, January 24, 1957

"Reminding the Governments and authorities concerned of the principle embodies in its resolutions 47 (1948) of 21 April 1948... 80 (1950) of 14 March 1950...91 (1951)...UNCIP resolutions of 13 August 1948 and 5 January 1949 that the final disposition of the state will be made in accordance with the will of the people expressed through the democratic methods of a free and impartial plebiscite...Reaffirm the affirmation in its resolutions of 47, 1948, 1949, 91 and 98"

(http://www.un.org/en/ga/search/view_doc.asp?symbol=S/RES/122(1957)

Source: http://www.un.org/en/sc/documents/resolutions/

 

However, India is crushing this fundamental right of Kashmiris through excessive use of force and whatever is happening in IOK is the worst form of subjugation of humanity.


Moreover this right is also inherently available to the people of IOK under other international declarations. United Nations Charter Article (1) acknowledged the development of friendly relations among nations based on respect for the principle of equal rights and self-determination of peoples as one of the Organization’s objectives. This principle is also referred to in Article (55) of UN Charter, Article (15) of the Universal Declaration of Human Rights, Declaration on the Granting of Independence to Colonial Countries and Peoples Adopted by General Assembly resolution 1514 (XV), Article (1) of International Covenant on Economic, Social and Cultural Rights (ICESCR) and Article (1) of the International Covenant on Civil and Political Rights (ICCPR). In these Declarations human rights are deemed universal rights shared by the whole of mankind.


Furthermore, by virtue of right of self-determination to indigenous people and against any colonial subjugation Kashmiris have the right to determine their future. Article (3) of UN Declaration on the Rights of Indigenous Peoples states that “Indigenous peoples have the right to self-determination. By virtue of that right they freely determine their political status and freely pursue their economic, social and cultural development”. Also Article (2) of Declaration on the Granting of Independence to Colonial Countries and Peoples which declares that "All peoples have the right to self-determination; by virtue of that right they freely determine their political status and freely pursue their economic, social and cultural development".


India, through various commitments, had also agreed to hold a plebiscite in IOK.

Indian Commitment to Hold Plebiscite in IOK

October 27, 1947

“In regard to accession also, it has been made clear that this is subject to reference to people of State and their decision.” (Telegram No. 402-Primin-2227 by Jawaharlal Nehru dated 27 October 1947 to Prime Minister of Pakistan repeating telegram addressed to Prime Minister of United Kingdom)

http://www.thehindu.com/news/national/They-can-file-a-charge-posthumously-against-Jawaharlal-Nehru-too-Arundhati-Roy/article15718475.ece

 

October 28, 1947

“…….the people of Kashmir would decide the question of accession. It is open to them to accede to either Dominion then.” (Telegram No.413 dated 28 October 1947 by Jawaharlal Nehru addressed to Prime Minister of Pakistan)

http://www.thehindu.com/news/national/They-can-file-a-charge-posthumously-against-Jawaharlal-Nehru-too-Arundhati-Roy/article15718475.ece

 

November 21, 1947

“We are anxious not to finalize anything in a moment of crisis and without the fullest opportunity to be given to the people of Kashmir to have their say. It is for them ultimately to decide. And let me make it clear that it has been our policy all along that where there is a dispute about the accession of a state to either Dominion, the accession must be made by the people of that state.”

(Letter No. 368-Primin dated 21 November 1947 to Prime Minister of Pakistan by Jawaharlal Nehru), J. C. Aggarwal, S. P. Agrawal, Modern History of Jammu and Kashmir: Ancient times to Shimla Agreement (Concept Publishing Company, 1995), p. 469

 

August 16, 1950

“The most feasible method of ascertaining the wishes of the people was by fair and impartial plebiscite.” (in telegram dated 16 August 1950 Jawaharlal Nehru addressed to the U.N. Representative for India and Pakistan: S/1791 : Anne 1(B))

http://www.na.gov.pk/en/content.php?id=85

 

February 12, 1951

“We have taken the issue to the United Nations and given our word of honour for a peaceful solution. As a great nation, we cannot go back on it. We have left the question for final solution to the people of Kashmir and we are determined to abide by their decision.” (Statement by Jawaharlal Nehru in the Indian Parliament, 12 February 1951)

http://www.na.gov.pk/en/content.php?id=85

 

June 26, 1952

"I want to stress that it is only the people of Kashmir who can decide the future of Kashmir. It is not that we have merely said that to the United Nations and to the people of Kashmir; it is our conviction and one that is borne out by the policy that we have pursued, not only in Kashmir but everywhere. " (Statement by Jawaharlal Nehru in the Indian Parliament, June 26, 1952),

http://www.na.gov.pk/en/content.php?id=85

 

August 20, 1953

“People seem to forget that Kashmir is not a commodity for sale or to be bartered. It has an individual existence and its people must be the final arbiters of their future.”

(Joint press communiqué of the Prime Ministers of India and Pakistan issued in Delhi after their meeting on 20 August 1953), http://www.na.gov.pk/en/content.php?id=85J. C. Agarwal, S. P. Agrawal, Modern History of Jammu and Kashmir: Ancient times to Shimla Agreement (Concept Publishing Company, 1995), p. 469

 

May 18, 1954

“But so far as the Government of India is concerned, every assurance and international commitment in regard to Kashmir stands.” (Statement by Jawaharlal Nehru in the Indian Council of States; 18 May 1954),

http://www.na.gov.pk/en/content.php?id=85

 

March 31, 1955

“We had given our pledge to the people of Kashmir, and subsequently to the United Nations; we stood by it and we stand by it today. Let the people of Kashmir decide.” (Statement by Jawaharlal Nehru in the Indian Parliament, 31 March 1955),

http://www.na.gov.pk/en/content.php?id=85

 

Despite, India over the years backed away from its commitment to hold a plebiscite. All the above legal justification establishes the fact that denial by India of the inalienable rights of self-determination cannot be permitted. No one country can decide the future of the people of Jammu and Kashmir and Indian claims over IOK are illegitimate, repressive and unproven. Indian non-implementation of UN resolutions cannot negate the fact that final disposition of the IOK will be made in accordance to the people's aspirations expressed through democratic methods of an impartial plebiscite.


The right to self-determination for the people of IOK is imperative but is not different than anywhere else. What makes the issue different than other parts of the world is the Indian inflexible attitude and reluctance to agree on any viable course to hold a plebiscite. Such resistance to self-determination, as shown by India, results from the fact that a considerable number of currently existing states still exercise authoritarian power, and hardly respect the aspirations or expectations of people. Indian barbarism in IOK has exposed the Indian democracy as "fake" because democracies never allow or facilitate violence. Despite Indian brutalities events of past years have made it very clear that people of IOK stood firm for their right to self-determination and against Indian tyranny. However, given the level of atrocities perpetrated by India, it is for all civilized and responsible states of international community to ask India to stop the bloodshed and send a clear message of the necessity of upholding the sanctity of UN resolutions. To ensure peace and stability in the region it is pertinent to stand by the Kashmiris in their just cause.

 

The writer is a Research Fellow at Institute of Strategic Studies, Islamabad (ISSI).

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

Follow Us On Twitter