09
March

Rising Indian Defence Budget

Written By: Dr. Mujeeb Afzal

On February 01, 2017, the Indian Finance Minister, Arun Jaitley, presented the annual budget for the year 2016-17 in the Lok Sabha. It includes allocation of 51 billion dollars for the salaries and pensions of the defence personnel and expenditure for the modernization programmes of the Armed Forces. These allocations represent 2.25 percent of the GDP (gross domestic product), and a 5.6 percent increase in the 2016-17 defence budget. This article is an attempt to understand the nature and targets of the new Indian budget, its meaning in the emerging strategic milieu that is demanding and according a new role to India and its impact on the already existing power disequilibrium between India and Pakistan.


The Indian defence budget for 2016-17 is higher than that of 2015-16, which was 36 billion dollars and was 1.75 percent of the GDP. The present budget would have been even higher if the expenditure on pensions, border security forces and nuclear and missile development had been included in it. Besides, the allocations for research and development and for Defence Ordnance Factories have been shifted from the Ministry of Defence to the capital budget. In spite of this shift, the capital expenditure has received an increase of 20.6 percent as compared to the previous allocations. If only pensions had been included in it, this would be 2.3 to 2.4 percent of the GDP. Despite this, the apportionment for defence in this budget is about 12.78 percent of the total expenditure of the government of India, that is 21.47 lac crore. In line with the past practice, the Army, which is perceived to be the main instrument against China and Pakistan, has received 52 percent, followed by the Air Force with 22 percent and Navy's 16 percent while 5 percent has been allocated to DRDO (Defence Research and Development Organization). The upward spending on defence is a deep-rooted trend in the behaviour of the Indian state. In the 1960s, it had a defence budget of 600 million dollars and it was 2.1 percent of the GDP. Subsequently, it jumped up to 4.5 percent of the GDP; that was meant to assert India as a real strategic power at the regional and international levels. In the 1990s, the defence budget rose to 5 percent of the GDP; and in real terms it was 7.5 billion dollars. After that, its economy was on the rise by more than 7 percent and India planned to acquire capability to fight a two-front war with both China and Pakistan. During 1995-2005, the Indian defence budget grew on average over 5.5 percent annually. Its overall defence spending registered an increase of 30 percent; and in 2001, its budget was around 11.1 billion dollars. By 2012 India’s defence budget was growing by 13 and 19 percent although its GDP growth was about 7.6 percent. A significant push came in 2014, when Finance Minister P. Chidambaram announced a 10 percent increase in the defence budget and took the budget figures to $36.3 billion. India’s sustained efforts have contributed to its strategic importance. At present, it has a standing force of nearly 1.5 million personnel and its defence budget is the fourth largest in the world after the U.S., China and the UK.

 

India under the Modi administration is trying to seize the vulnerability of Pakistan to change its behaviour with reference to plebiscite in Kashmir and its demand for a fair treatment in the South Asian state system.

India, under the Hindu nationalist government of Prime Minister Narendra Modi, has witnessed a sharp rise in the Indian defence budget which is justified with the help of two emotive themes: one, it is meant to reform the accumulated obsolescence of the country’s strategic infrastructure; and two, it is to ensure the promise of autonomy and self-sufficiency in the defence production by ‘Make in India’ programme. It is argued that a large part of the Indian defence equipment is of little use for an emerging major power because it is of low quality and has aged as well. Moreover, the average infantry soldier of India is technologically at least one generation behind in comparison to his counterpart in the modern armies of the industrialized states. Therefore, its protagonists contend that if India wishes to balance both China and Pakistan and also play the role of a major power at the regional and international level, then it needs to change its old low-tech weapon systems. Additionally, it is considered essential that a major power like India should have more autonomous standing by reducing its dependence on imports; that it should achieve greater self-sufficiency in the production of sophisticated defence equipment. Consequently, successive defence budgets have provided lavish funds for domestic defence research and development as well as defence industry. In the present budget, the DRDO, which is responsible for the development of nuclear and missile systems, has received 14819 crores. This organization is involved in the development of short range 700 kms Agni-I, intermediate range 2,000 kms and Agni-II surface-to-surface missiles. It is also developing contemporary weapon-locating radar and the main battle tank (MBT), the Arjun, for the Army. In recent years, India has opened up its domestic weapons industry to foreign investment; and the foreign investment limit in the domestic defence industry has been raised from 26 percent to 49 percent. Apart from this, India is the largest weapons importer in the world; in just one year (2013), it spent $6 billion on buying equipment. India is expected to spend $100 billion over the next decade on a defence modernization programme. Its armed forces desire to get 22 Apache helicopters, 50 Chinook helicopters, 197 light utility helicopters, 135 lightweight howitzers, 6 submarines and 16 multirole helicopters for the Navy. It has already approved a project worth 13 billion dollars to increase its national defence preparedness. The Indian Defence Acquisition Council (DAC) has decided to build within India six submarines, purchase 8,356 anti-tank guided missiles from Israel, 12 upgraded Dornier surveillance aircraft with improved sensors from Hindustan Aeronautics Limited and 362 infantry fighting vehicles.


India’s economy is on the rise. It has grown from a contested regional power to one of the pre-eminent regional powers along with China and Japan. It has more resources at its disposal to spend on the defence sector. Although in terms of GDP the defence spending has decreased from 2.9 percent in 2009 to 2.3 percent in 2015 – now around 2.25 percent of GDP – but in terms of resources it has reached the capacity of 51 billion dollars. The resources available to its defence institutions are more than their capacity to absorb; for example, the utilization of the defence budget in 2014-15 and 2015-16 was 95 percent and 91 percent, respectively. Similarly, it has repeatedly underspent funds that were allocated for capital acquisition; this was 11 percent in 2012-13, 9 percent in 2013-14, 13 percent in 2014-15 and 15 percent in 2015-16. At the domestic level this trend may reflect bureaucratic incompetence but at the external level it indicates the rising Indian comfort to accumulate and exert power. This trend becomes even more significant with the decline of its poverty indicators from 44 percent to 26 percent within the last twenty years. This argument should be read with the fact that India faces no immediate threat from any of its neighbours near or far from its border. It is strategically in a comfortable state and faces no threat to its survival and extended interest from within or abroad. According to the logic of power, it is moving towards domination over others. The continuous rise in the defence budget reflects this trend in the behaviour of India regionally and internationally. It has serious territorial and water disputes with Pakistan and China. In line with the logic of power it has closed the door of negotiation with Pakistan and demonstrates no particular urgency to resolve its issues with China as well. Though it is too early to declare India a major international power or even regional hegemon, its share in the international defence spending was 1 percent in 1995 and 3 percent in 2015. Notwithstanding the Indian low international strategic standing, its arrogant attitude in its relation with neighbours is a cause for grave concern.


India’s exaggerated claims of power and consequent stubborn diplomatic behaviour is the result of two developments: one, the rise of Hindu nationalists to power at the domestic level; and two, its evolving strategic cooperation with the USA at the international level. Since its independence, India has considered itself a major player at the international level. It believes that it is its legitimate right to be a permanent member of the United Nations Security Council like China, in order to have a meaningful role in the governance of the international system. With the leadership of its first Prime Minister Pundit Jawaharlal Nehru, India attempted to play a major role at the international level as an opponent of the power politics and the champion of the rights of the Afro-Asian people against western economic and political imperialism. At the same time, it struggled to attain economic and strategic power to assert its claim of a major power in a forceful manner. India under Nehru and his successors exerted to achieve national cohesion on the principles of composite-culture, secularism and liberal democracy and at the international level it sought strategic autonomy by staying away from the power politics of the Cold War between the Soviet Union and USA. At the regional level, Nehru’s India wanted to impose the Delhi view of one strategic unit for South Asia and wished to keep it free from the influence of outside powers. After the Indo-China border clash of 1962, India tilted more towards the Soviet Union than the USA for technology transfer, heavy industry and sophisticated weapon systems. The Hindu nationalists challenged Nehru’s vision of India as an attempt to impose a western vision to deprive its people of their Hindu tradition and heritage. They presented the concept of Hindutva and integral-humanism based on the ethos of Hinduism that they argued were based on common blood, common laws and rites, and common culture of the Hindu people. It was argued that in the past India was subject to foreign subjugation of the Muslim invaders followed by the British imperialists because of its internal fragmentation. The Hindutva ethos is considered the only way to evolve a cohesive national identity that will provide the requisite Shakti-power to defend India. At the international level, the Hindu nationalists find the integral-humanism closer to the capitalist system. They aspire to expand their relations with the West and consider themselves the natural allies of the USA. Simultaneously, they want to increase India’s military power and assert its regional and international role. Modi government shares the view of the Hindu nationalists and wants to build a strong Indian national identity based on the ethos of Hindutva in which Hindu and Indian interests take primacy over any other consideration at the domestic and regional levels and see in the post-Cold War era an ideal opportunity to attain the rightful place for India by building closer ties with the West particularly USA. The internal and external opponents of Hindutva are advised to accept the new realities of Indian power and adjust themselves with the priorities of Hindus and India.

 

The continuous increase in the Indian defence budget is not good news for Pakistan. India remains, in terms of its strategic capabilities, the principal threat to its security. The growing conventional asymmetry between the two states undermines the regional stability and negatively impacts upon the balance of strategic deterrence.

In the post-Cold War era, the rise of China as a potential strategic power and the good performance of Indian economy are the two factors that are determining the India-U.S. relations. India perceives the U.S. as an ally in future for two reasons: one, as a possible source of modern weapon systems and technology; and two, as a power that can provide an existing strategic structure to channelize the rising Indian influence at regional and international levels. It may facilitate India’s admission into such international institutions as Nuclear Suppliers Group (NSG) easy and assure permanent membership of the UN Security Council. On the other hand, the U.S. looks at India as a good rising market for its goods both civil as well as military, as a balancing factor for the rising Chinese influence in the Afro-Asian countries, and share the burden of security at the regional level especially against potential strategic competition from China. The U.S. is willing to upgrade the strategic potential of India to achieve these objectives and extend active diplomatic support to India to get the membership of international institutions that may formalize the regional power status of India as a useful ally. That is the reason successive U.S. administrations especially that of Barack Obama have strongly supported India's case for the NSG and Security Council membership. At the domestic level the U.S. political elite has enthusiastically received support for the alliance with India. The U.S. Congress has passed the India "Defence Technology and Partnership Act" that provided a strong legal framework for the Indo-U.S. defence relations and formalized India’s status as a major partner of the U.S. On its part the Obama administration instituted the Defence Technology and Trade Initiative (DTTI) and established an "India Rapid Reaction Cell" in the Pentagon to deal with bureaucratic hurdles in the way of strategic cooperation between the two states. Additionally, President Obama encouraged the coordination with India on an annual basis for the development of military contingency plans for addressing threats to mutual security interests of the two countries. India sees a great opportunity for the strengthening of its technological industrial base with the help of U.S. assistance and technology. The Indian flagship indigenous projects such as the aircraft and tanks have not been very successful; therefore, it would be happy to use facilities under the DTTI structure for the U.S.-India defence trade. The strategic cooperation with the U.S. will be difficult for India; it will generate an impression of India as a contract ally who is paid to protect the U.S. regional interest especially against China. India is internally a diverse soft-state that cannot afford to have open hostility with China and expose its national integration for others’ strategic gains. That is why it has accepted the Logistics Exchange Memorandum of Agreement (LEMOA) with the U.S. that allows the two countries to access each other’s supplies, spare parts, and services from military bases and ports but has refused joint patrol of U.S. and Indian Navies in the Indo-Asia-Pacific waters. Despite certain reservations, the Indian strategic alliance with the U.S. can help India establish a regional hegemonic relationship.


The continuous increase in the Indian defence budget is not good news for Pakistan. India remains, in terms of its strategic capabilities, the principal threat to its security. The growing conventional asymmetry between the two states undermines the regional stability and negatively impacts upon the balance of strategic deterrence. The recent increase in the Indian defence budget has taken place when the Modi government has taken an increasingly belligerent stance towards Pakistan. It is repeatedly using hostile language and violent clashes are reported along the Line of Control (LOC) and the Working Boundary. The changed international strategic environment places Pakistan in a disadvantageous position. It uses to balance India in conventional term with the help of better trained manpower and western sophisticated weapon system. The U.S. tilt towards India disturbs greatly the strategic calculations of Pakistan. It is gradually finding it difficult to balance rising India with its mere 7 billion dollar defence budget and becoming more and more dependent on nuclear deterrence. The nuclear weapons are essential for the deterrence purpose and cannot be used for fighting a conventional war. In an asymmetrical conventional balance of power Pakistan is becoming more and more dependent on the nuclear weapons which limit the strategic options of a state to defend its autonomy. Therefore, military capabilities are essential for conventional defence and internal security of a state. India under the Modi administration is trying to seize the vulnerability of Pakistan to change its behaviour with reference to plebiscite in Kashmir and its demand for a fair treatment in the South Asian state system. It has refused to negotiate with Pakistan and is putting pressure through threats of hot pursuit in Kashmir in order to call, what the Indian strategic thinkers have described a nuclear bluff. At the international level, India under Modi is using its new-found economic power and closeness with the U.S. to create diplomatic difficulties on the issue of war against terrorism and is attempting to put constraints in the access to high-end technology. Though the Indian challenges are not very great at this moment but in future if the asymmetry in the economic strength continues to expand, India will be in a position to create serious problems for the security and extended national interests of Pakistan. Additionally, if the strategic tensions surge between the U.S. under President Donald Trump and China, then Pakistan will be forced to take the Chinese side and preserve its strategic alliance with China. This probability can greatly increase Indian access to the Western markets and technology and can hurt Pakistan’s strategic options.


The economic rise of India is a significant phenomenon for the regional and international political calculations. Gradually, it will have more resources available for investment in its armed forces, although it will still be treated at the international level as a trading nation and an almost insignificant strategic player. But at the regional level, its increased military muscle might create serious security risks for the sovereign existence of the medium and small states of South Asia. The states of South Asia will be forced to increase their defence budgets and look for external alliances or surrender to the Indian dictates. Pakistan, the second largest state of the South Asian state system, will face the same dilemma though at a lesser level. It will have to increase its resources and widen its cooperation with the regional powers. Before doing that, it must strengthen its domestic politico-economic and social structures and then develop alliances at the regional and international levels.

 

The writer is on the faculty of Quaid-i-Azam University (School of Politics and International Relations)

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
13
March

آپریشن رَدّا لفساد

Published in Hilal Urdu March 2017

تحریر: علی جاوید نقوی

پاک فوج نے ملک بھرسے دہشت گردوں کے خاتمے کے لئے آپریشن ردالفساد شروع کردیاہے،اوریہ کامیابی سے جاری ہے۔اس آپریشن کااعلان ہوا توملک بھرمیں اس کاخیرمقدم کیاگیا۔عوام کے تمام طبقات کی خواہش اورمطالبہ تھا کہ دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کوکسی خاص علاقے تک محدود نہ رکھاجائے، دہشت گرد جہاں اورجس علاقے میں بھی چھپے ہوں انھیں نشانہ بنایا جائے۔ اب نہ صرف دہشت گردوں کاخاتمہ کیاجائے گا،بلکہ ان کے سہولت کاروں اورغیرقانونی اسلحے کاکام کرنے والوں کوبھی پکڑاجائے گا۔پاکستان کے بیس کروڑ عوام کی نگاہیں فوج پرلگی ہیں اورانھیں یقین ہے اس آپریشن کے بعد امن وامان کی صورتحال میں مزید بہتری آجائے گی۔دہشت گردی کے خلاف جنگ میں عوام اورسکیورٹی اداروں نے بے مثال قربانیاں دی ہیں اورعزم وہمت کی مثالیں قائم کی ہیں،ان قربانیوں کوپوری دنیا نے سراہا ہے۔عوام کے حوصلے بھی بلند ہیں اور وہ ہرمحاذپرفوج کے ساتھ کھڑے نظرآئے ہیں۔

 

urduoptradufsad.jpgدہشت گردوں کے خلاف اب تک مرحلہ وار کئی کامیاب آپریشن ہوچکے ہیں،یہ آپریشن سوات ،باجوڑ ایجنسی،شمالی اورجنوبی وزیرستان،خیبرایجنسی اور اورکزئی ایجنسی میں کئے گئے ،ضرب عضب کے نتیجے میں کافی بہتری آئی، لیکن نیشنل ایکشن پلان پرسست روی سے عمل ہونے کے باعث بہت سے پہلو باقی رہ گئے۔دہشت گردوں کومکمل شکست دینے کے لئے ضروری ہے کہ ریاست کے چاروں عناصر،مقننہ،عدلیہ، فوج اورمیڈیاایک پیج پرہوں۔قوم ان سب کی پشت پرہو ۔دہشت گردی کے خلاف سب کی سوچ ایک جیسی ہو۔اگرکسی بھی ادارے کاکوئی شخص کسی قسم کی کوتاہی کاذمہ دار ہوتواسے بھی سزادی جائے۔ اگرہم سوفیصد نتائج چاہتے ہیں تو سکیورٹی فورسز کے ساتھ ساتھ باقی اداروں کوبھی متحرک ہوناہوگا۔خوش قسمتی سے اس وقت پوری قوم دہشت گردوں کے خلاف متحد ہے ریاست کے تمام عناصر کی سوچ ایک ہے کہ ان دہشت گردوں کے ساتھ سختی سے نمٹنا جائے اور ایک بے رحم آپریشن کیا جائے، جو دہشت گردوں کی نسلیں اور ان کے سرپرست بھی یاد رکھیں۔ماضی میں ہماری کمزوریوں کا فائدہ ہمارے دشمنوں نے اٹھایا،اب ہمیں اس کاموقع نہیں دیناچاہئے۔دوسری طرف ہمیں دشمن کی کمزوریوں سے بھی فائدہ اٹھا نے کی ضرورت ہے اب اس جنگ کوخود دشمن کے ملک میں دھکیل دینا چاہئے، بعض اوقات اینٹ کاجواب پتھرسے دیناضروری ہوجاتاہے۔ ہم سب اس بات کوبھی بخوبی جانتے ہیں کہ دہشت گرداپنی شکلیں اورطریقہ کاربدل چکے ہیں۔یہ چاہے کسی شکل اورروپ میں ہوں ان کاسدباب ضروری ہے۔ ایک اہم پہلو دہشت گردی کے لئے آنے والا پیسہ ہے۔دہشت گردوں کے مالی وسائل پرضرب لگانابھی ضروری ہے۔ غیرقانونی طریقوں سے پاکستان آنے والے پیسوں کے علاوہ کرپشن ،جرائم اوراسمگلنگ کاپیسہ بھی دہشت گردی میں استعمال ہو رہا ہے۔ اس پرکنٹرول کرنابھی بہت ضروری ہے۔ غیرقانونی پیسے کی آمد بند ہو جائے تودہشت گردوں کودستیاب وسائل بھی ختم ہوجائیں گے۔غیرقانونی پیسے کے بغیرمنظم دہشت گردی ممکن نہیں۔بہت سے کیسز میں جرائم پیشہ افراد دہشت گردوں کے ساتھی اورسہولت کاربنے ہیں ،وہ بھاری معاوضے کے عوض کچھ بھی کرنے کوتیارہوتے ہیں ۔اُنھیں اس سے غرض نہیں کہ ان دھماکوں سے ملک کو کتنا نقصان ہورہاہے،کتنے بچے یتیم ہو رہے ہیں، اورکتنے سہاگ اجڑ رہے ہیں۔


اس ساری صورتحال میں میڈیا کوبھی دیگراداروں کی طرح اپنا رول متعین کرنا ہو گا،دہشت گرداوران کے سہولت کار کسی ہمدردی کے مستحق نہیں۔بعض اوقات ایک دوسرے سے بازی لے جانے کے چکرمیں صحافتی اخلاقیات اور اصولوں کو پس پشت ڈال دیا جاتاہے۔یہ رویہ درست نہیں۔ کارکن صحافی تنظیمیں اورمیڈیا مالکان کواپنے رول کافیصلہ خودکرناہوگا۔ دہشت گردی کے خلاف اس جنگ میں کسی غلطی کی گنجائش نہیں۔ ہم سب کوایک سوچ کے ساتھ آگے بڑھنا ہوگا اپنی ذمہ داروں کااحساس کرناہوگا،تب ہی کامیابی ممکن ہے۔


عوامی رائے یہ ہے کہ دہشت گردوں کے خلاف بے رحم آپریشن ہونا چاہئے، اگرفوجی عدالتیں مدت ختم ہونے کے فورًا بعد بحال کردی جاتیں اور دہشت گردوں کوسزائے مو ت دینے کاسلسلہ جاری رہتا توشایدانھیں دوبارہ سر اٹھانے کاموقع نہ ملتا،لیکن بدقسمتی سے بعض حلقوں کی طرف سے نہ صرف سستی کا مظاہرہ کیا گیا بلکہ فوجی عدالتوں کے خلاف بیانات دے کرانہیں متنازعہ بنانے کی کوشش کی گئی ۔ ایسے قوانین بنانے کی ضرورت ہے کہ دہشت گردوں کے ساتھ ساتھ ان کے سہولت کاروں اورہمدردوں کوبھی سخت سزائیں دی جاسکیں ۔دہشت گردوں سے نمٹنے کے لئے نئی قانون سازی اوربعض قوانین میں تبدیلی ناگزیر ہے۔


پاکستان کے قبائلی عوام اوران کے نمائندے ایک عرصے سے مطالبہ کررہے ہیں کہ ان علاقوں کو قومی دھارے میں شامل کیا جائے۔پاکستان کے موجودہ قوانین کادائرہ قبائلی علاقوں تک بڑھا دیا جائے ۔لاہور اورکراچی میں جرائم کی جوسزا ہے ،قبائلی علاقوں میں بھی وہی ہو۔بعض سیاسی جماعتیں اس حوالے سے مصلحتوں کاشکارنظرآتی ہیں۔ دنیا بھرمیں جوممالک دہشت گردی کاشکارہوئے ،وہاں سکیورٹی فورسز کااستعمال کرنے کے ساتھ ساتھ سیاسی وسماجی حوالوں سے بھی اصلاحات لائی گئیں ،قانون سازی بھی کی گئی ۔زندگی کے ہرشعبے نے اس پہلو پرتوجہ دی پھرکہیں جاکردہشت گردی پرقابوپایا گیا۔ ہمارے یہاں بدقسمتی یہ رہی ہے کہ سکیورٹی فورسز سے یہ توقع بھی کی جاتی ہے کہ وہ دہشت گردوں کوختم کرنے کے ساتھ ساتھ باقی سیاسی وسماجی معاملات کوبھی ٹھیک کریں۔جبکہ ایک مربوط نیشنل ایکشن پلان اوراختیارات کے بغیر ایساممکن ہی نہیں۔ یہ بھی دیکھا گیاہے کہ چندعلاقوں میں آپریشن شروع کیاگیاتوبچ جانے والے دہشت گرد دوسرے علاقوں میں منتقل ہوگئے۔اسے روکنے کے لئے کوئی انتظام نہیں کیا گیا۔ پنجاب کے بعض علاقوں کے بارے میں کہا جا رہا تھا کہ یہاں دہشت گردوں کی محفوظ پنا ہ گاہیں ہیں۔پنجاب میں رینجرز کوآپریشن کے اختیارات ملنے کے بعد امید ہے کہ دہشت گردوں اوران کے سہولت کاروں کی یہ محفوظ پناہ گاہیں ختم کردی جائیں گی۔دہشت گرد ملک بھرمیں غیرقانونی طورپرمقیم افغان مہاجرین کو اپنے مقاصد کے لئے استعمال کررہے ہیں۔ایسے مہاجرین کوواپس افغانستان بھجوا دیناچاہئے جو پاکستانیوں کی مہمان نوازی کاصلہ دہشت گردی کی شکل میں دے رہے ہیں۔دہشت گردی کی موجودہ لہرکے تانے بانے افغانستان سے ملتے ہیں،ٹھوس معلومات اورشواہد کے بعد پاک فوج نے دہشت گردوں کے بعض ٹھکانے مکمل طورپرتباہ کردئیے ہیں،لیکن سازشوں کے اس کھیل کے جلد ختم ہونے کی توقع نہیں ۔

دہشت گردی کے خاتمے کے لیے ضروری ہے کہ دہشت گردوں کوہرجگہ نشانہ بنایاجائے۔

لشکرجھنگوی ،مجلس الاحرار اورٹی ٹی پی کی ڈوریں ،افغانستان اوربھارت سے ہلائی جارہی ہیں۔

دہشت گرد تنظیموں کی سرپرست اعلی بھارتی خفیہ ایجنسی ’’را ‘‘ ہے۔

اس بات کوبھی ذہن میں رکھناچاہیے کہ دشمن ،افغان فورسز کو پاکستان کے خلاف الجھاناچاہتاہے۔

دہشت گردوں کے ساتھ ساتھ انھیں فنڈنگ کرنے والوں کوبھی ختم کرنے کی ضرورت ہے۔

پاکستانی فوج اپنی مہارت اورصلاحیتوں کے باعث دنیا کی بہترینا فواج میں شامل ہے۔

پاکستان کے 20کروڑ عوام دہشت گردی کے خاتمے کے لیے فوج کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں ۔

ماضی کی طرح پاکستان کا مستقبل بھی روشن ہے۔

افغانستان اورخطے میں امن قائم رکھنے کے لئے چین، پاکستان،افغانستان اورتاجکستان کے درمیان ایک فوجی معاہدہ اورالائنس موجود ہے ۔اس کاایک اہم اجلاس گزشتہ سال اگست میں ہواتھا،جس میں یہ فیصلہ کیاگیا تھا کہ چاروں ممالک خطے میں دہشت گردی کے خاتمے کے لئے مل کرکام کریں گے۔چین میں ہونے والے اجلاس میں چاروں ممالک کے آرمی چیف موجودتھے۔افغان آرمی چیف نے یقین دلایا تھا کہ وہ دیگرممالک سے تعاون کریں گے۔ تاہم افغان فوج اور حکومت پربھارت کے بڑھتے ہوئے اثرورسوخ کے باعث اس بات کاخدشہ محسوس کیا جارہاتھا کہ افغانستان دہشت گردی کے خاتمے کے لئے مؤثراقدامات نہیں کرے گا۔اب بھی اس بات کاامکان زیادہ ہے کہ افغان حکومت دہشت گردوں کے کیمپ ختم کرنے کے بجائے پاکستان کے خلاف الزام تراشی کاسلسلہ جاری رکھے ،یہ خدشہ بھی موجود ہے کہ افغان فوج، بھارتی خفیہ ایجنسی کی کسی چال کاشکارہوجائے اورپاکستان کے خلاف ہی جارحیت کربیٹھے۔یہ خطرہ بہرحال موجودہے۔ہمیں چین کے تعاون سے افغانستان کواس بات کے لئے رضامند کرنا ہو گاکہ وہ الزام تراشی اورکسی دوردراز ملک کے مفادات کاتحفظ کرنے کے بجائے اپنے عوام کے مفادات کودیکھے۔ افغان حکومت کے منفی رویے کاخمیازہ افغان عوام کوبھگتناپڑ ے گا۔افغانستان میں لشکر جھنگوی،ٹی ٹی پی اورجماعت الاحرارکے تربیتی کیمپ موجود ہیں۔ان سب دہشت گردوں کی سرپرست اعلی بھارتی خفیہ ایجنسی ’’را ‘‘ ہے۔افغان حکومت کی غیرسنجیدگی کااندازہ اس بات سے بھی لگایاجاسکتاہے کہ پاکستان نے افغانستان میں موجود دہشت گردوں کے خلاف کارروائی کے لئے ایک فہرست افغانستان کے حوالے کی توجواب میں افغان حکومت نے اپنی ایک فہرست کابل میں موجود پاکستانی سفارت کارکوپکڑا دی۔


پاکستان کے دشمن پاکستان کی اقتصادی ترقی اورکامیابیوں سے پریشان ہیں۔چین اورپاکستان کے درمیان شروع ہونے والا اقتصادی راہداری منصوبہ، سی پیک ایک گیم چینجرمنصوبہ ہے۔ بعض دشمنوں کاخیال تھا کہ پاکستان اپنے مسائل اورمشکلات پرقابونہیں پاسکے گا ،لیکن معاملہ بالکل الٹ نکلا ،پاکستان نے نہ صرف درپیش چیلنجزکا مقابلہ کیابلکہ خودکومضبوط بھی کیا۔سی پیک منصوبے نے پاکستان کے لئے ترقی کے دروازے کھول دئیے ہیں،جس سے بھارت کی نیندیں اڑگئی ہیں ۔


آپریشن ردالفساد اورپہلے کیے جانے والے آپریشنزمیں ایک بڑا اوربنیادی فرق یہ ہے کہ پہلے تمام آپریشنزٹارگٹڈ آپریشن تھے اورخاص علاقوں تک محدودرہے لیکن ردالفسادملک بھرمیں چھپے ہوئے فسادیوں کے خلاف ہے ۔سیاسی جماعتوں ،رہنماؤں اوردانشوروں اورادیبوں کے ساتھ ساتھ علمائے کرام نے بھی آپریشن ردالفساد کی حمایت کی ہے ،تمام مکاتب فکرکے علمائے کرام اس بات پرمتفق ہیں کہ دہشت گردی کرنے والے اورانھیں سہولتیں فراہم کرنے والے یادہشت گردوں کی کسی طرح بھی حمایت کرنے والے فسادفی الارض کے مرتکب ہورہے ہیں، تمام مکاتب فکرکے جید علمائے کرام نے نہ صرف فسادیوں کے خلاف فتوی دیا ہے بلکہ سکیورٹی فورسزکے شانہ بشانہ ان دہشت گردوں سے لڑنے کابھی اعلان کیاہے۔


بائیس فروری کولاہورمیں آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ کی صدارت میں ہونیوالے اجلاس میں دہشت گردوں سے نمٹنے کے لئے اہم فیصلے کئے گئے۔ اس اجلاس میں پنجاب کے تمام کورکمانڈرزاورڈی جی رینجرزبھی موجود تھے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق اس آپریشن کا مقصد دہشت گردوں کی باقیات اور دہشت گردی کے چھپے ہوئے خطرے کے خلاف بلاتفریق کارروائی کرنے کے علاوہ اب تک کی کارروائیوں میں حاصل ہونی والی کامیابیوں کو مستحکم اور سرحدوں کی سکیورٹی کو یقینی بنانا ہے۔ پاک فضائیہ، بحریہ، سول آرمڈ فورسز اور دیگر سکیورٹی و قانون نافذ کرنے والے ادارے دہشت گردی کی لعنت کے خاتمے کے لئے کوششیں جاری رکھیں گے۔پنجاب رینجرز کی طرف سے وسیع البنیاد سکیورٹی اور انسداد دہشت گردی کے آپریشن بھی کئے جائیں گے۔ ملک بھر میں عسکریت پسندوں کے خلاف کارروائیاں جاری رکھنے کے علاوہ سرحدوں کی مؤثر نگرانی پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔ایک اہم بات یہ بھی ہے کہ آپریشن ’ردالفساد‘ کے تحت ملک بھر کو اسلحے سے پاک کیا جائے گا۔ گولہ و بارود پر کنٹرول بھی کیا جائے گا۔اگران تمام نکات اورفیصلوں پرغورکیاجائے تویہ دہشت گردی کے خاتمے کے لئے انتہائی اہم ہیں۔


دہشت گردوں اورجرائم پیشہ افراد کے خلاف اب تک جتنے آپریشن کیے گئے ہیں اکثر کامیاب ہوئے ہیں۔اگرصرف کراچی آپریشن کاہی تنقیدی جائزہ لیں تویہ آپریشن بھی اپنے اہداف میں کامیاب رہا۔کراچی میں ٹارگٹ کلنگ میں بھی کمی آئی ہے اورکراچی کی رونقیں بھی لوٹ آئی ہیں۔ جوبازارخوف کے باعث سرشام بندہوجاتے تھے اب وہاں رات گئے تک لوگوں کی چہل پہل رہتی ہے۔ گزشتہ سال 2016 میں 2015 کے مقابلے میں ٹارگٹ کلنگ میں 72فیصد کمی آئی۔ انسپکٹرجنرل سندھ پولیس کی جاری کی جانے والی ایک رپورٹ میں اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ فورسز کے کامیاب آپریشن کے باعث کراچی میں امن وامان کی صورتحال ماضی کے مقابلے میں بہت بہترہے۔نہ صرف ٹارگٹ کلنگ بلکہ بھتہ خوری ،ڈکیتی اورقتل کے واقعات بھی بہت کم ہوگئے ہیں۔اسی طرح سوات ،شمالی وجنوبی وزیرستان،باجوڑ اورقبائلی علاقوں میں آپریشن کے بعد حالات بہتر ہورہے ہیں ،اگران اعداد وشمار کودیکھا جائے توصورتحال بہت حوصلہ افزأ ہے۔جہاں تک دہشت گردی کی موجودہ لہر کاتعلق ہے یہ ختم ہوتے دہشت گردوں اوران کے سہولت کاروں کی آخری کوشش ہے ۔ فسادیوں کے خلاف جاری آپریشن ردالفساد سے امید ہے کہ ان کاجلد خاتمہ ہوجائے گا۔قوم پورے جذبے کے ساتھ فوج کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔پاکستان کامستقبل پاکستان کے ماضی کی طرح روشن ہے۔

اخبارات اورٹی وی چینلز سے وابستہ رہے ہیں۔آج کل ایک قومی اخبارمیں کالم لکھ رہے ہیں۔قومی اورعالمی سیاست پر آٹھ کتابیں شائع کرچکے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
13
March

فاٹا کی پسماندگی۔ وسیع تر اصلاحات کی ضرورت

Published in Hilal Urdu March 2017

تحریر: عقیل یوسف زئی

سات قبائلی ایجنسیوں پر مشتمل پاکستان کے سرحدی علاقے یعنی فاٹا میں اصلاحات کا مطالبہ کئی دہائیوں سے چلا آرہا ہے اور مختلف ادوار میں اس مقصد کے لئے حکومت کی جانب سے تبدیلیاں یا اصلاحات لانے کے لئے کمیٹیاں بھی تشکیل دی گئیں تاہم افسوسناک امر یہ ہے کہ اصلاحات کا عمل محض اعلانات تک محدود رہا اور کسی بھی حکومت نے عملاً ایسی کوئی کوشش نہیں کی کہ اس اہم ترین جغرافیائی یونٹ کو مین سٹریم پالیٹکس یا سسٹم کا حصہ بنایا جائے اور غالباً اسی غفلت یا رویّے کا نتیجہ ہے کہ فاٹا ماضی میں نہ صرف یہ کہ انتہاپسندوں کا مرکز بنا رہا بلکہ یہاں کے لاکھوں عوام بنیادی انسانی حقوق اور ضروریاتِ زندگی سے بھی محروم رہے۔ برٹش راج نے ایک منظم منصوبہ بندی کے تحت بعض دیگر نوآبادیات کی طرح فاٹا کو بھی اس مقصد کے لئے بفر زون کے طور پر تخلیق کیا کہ اس سرحدی پٹی کو برٹش انڈیا یعنی ہندوستان اور روس (سوویت یونین) کے درمیان حدِ فاصل کے طور پر استعمال میں لایا جائے اور اس مقصد کے لئے اس علاقے میں خصوصی یا کالونین قوانین بنائے گئے۔ قبائل پر ایسے قوانین اور ضابطے لاگو کئے گئے جن کی آج بھی مہذب دنیا میں مثال نہیں ملتی۔ 1947 سے قبل متحدہ ہندوستان میں بھی درجنوں ایسے علاقے تھے جہاں اس نوعیت کے قوانین موجود تھے۔ تاہم آزادی کے بعد ایسے علاقوں کو نئی ریاستوں کے مروجہ قوانین کے اندر لایا گیا اور ان علاقوں کے عوام کو دوسرے علاقوں جیسے حقوق اور وسائل دیئے گئے۔ بدقسمتی سے فاٹا کو ان قانونی اور انتظامی تبدیلیوں یا اصلاحات سے بوجوہ محروم رکھا گیا اور یہ علاقے تا حال کالونین سسٹم کے ذریعے چلائے جارہے ہیں۔ یہاں یہ بات قابلِ ذکر ہے کہ پاکستان کے بعض حکمرانوں نے بھی جمہوریت پسند ہونے کے باوجود جمہوری ادوار میں بھی یہاں کے عوام کو کالونین سسٹم سے نکالنے کی کوئی کوشش نہیں کی گئی بلکہ حالت تو یہ رہی کہ ذوالفقار علی بھٹو جیسے لیڈر نے اپنے دورِ اقتدار میں فاٹا میں بعض ایسے علاقے بھی شامل کرائے جو کہ ان کی حکومت سے قبل خیبر پختونخوا (صوبہ سرحد) کا حصہ تھے۔ ان کے دورِحکومت تک فاٹامیں ایجنسیوں کی تعداد چار یا پانچ تھی۔ انہوں نے یہ تعداد چھ یا سات کردی مگر اس کی کوئی خاص وجہ بتانے سے گریزکیا اور ایسا کرنے سے قبل متعلقہ علاقوں کے عوام سے ان کی رائے معلوم کرنے کی کوئی کوشش بھی نہ کی۔ کہنے کا مقصد یہ ہے کہ متعدد اہم لیڈروں نے بھی فاٹا کو مین سٹریم میں لانے کی کوشش تو درکنار ان علاقوں میں موجود کالونین قوانین کو آزادی کے باوجود دوسرے علاقوں تک توسیع دینے یا پھیلانے کا رویہ اختیارنہیں کیا اور بعض ایجنسیاں70 کی دہائی میں قائم کی گئیں۔ بعض ماہرین کے مطابق جناب بھٹو نے یہ اقدامات افغانستان کے ساتھ تعلقات کے تناظر میں اٹھائے تھے۔ فاٹا کے عوام کا یہ کہہ کر جذباتی استحصال کیا جاتا رہا کہ وہ آزاد اور غیور قبائل ہیں یا یہ کہ وہ پاکستانی سرحدوں کے بے تنخواہ سپاہی یا محافظ ہیں۔ مگر ان کے بنیادی حقوق یا ضروریات کا کسی بھی حکومت نے کوئی خیال نہیں رکھا اور ان کی انسانی حقوق کی عملاً حالت یہ رہی کہ وہ 90 کی دہائی تک بالغ رائے دہی کی بنیاد پر الیکشن میں ووٹ ڈالنے کے حق سے بھی محروم تھے اور یہ حق بھی کسی جمہوری حکومت یا حکمران کی بجائے مرحوم سردار فاروق احمدخان نے نگران وزیرِاعظم کے طور پر ان کو دیا۔ سال1988 کے بعد جمہوری حکومتیں تسلسل کے ساتھ آتی رہیں اور ان حکومتوں کی پارلیمانی ضروریات یعنی تشکیل میں فاٹا کے آزاد ممبران اسمبلی کا ہر دور میں بنیادی کردار رہا۔ تاہم افسوسناک بات یہ رہی کہ ان حکومتوں یا پارلیمانی قوتوں نے نومنتخب قبائلی ارکان کو دوسرے آئینی حقوق کے علاوہ اس حق سے بھی محروم رکھا کہ وہ فاٹا کے لئے کی جانے والی قانون سازی میں حصہ لیں۔ یہ غالباً دنیا کا وہ واحد علاقہ رہا جس کے نمائندے اپنے ہی علاقے یا عوام کے لئے قانون سازی میں حصہ لینے سے محروم تھے اور یہ سلسلہ تا دمِ تحریرکسی تبدیلی کے بغیر جاری ہے۔ ان کے ساتھ دوسرا مذاق یہ ہوتا رہا کہ ان کو مروجہ پارلیمانی سسٹم یا سیٹ اپ کے ذریعے چلانے کے بجائے براہِ راست صدرِ مملکت کے بعض صوابدیدی اختیارات میں دیا گیا اور کسی بھی اہم فیصلے سے قبل فاٹا کے نمائندوں‘ اسمبلی یا عوام سے ان کی رائے لینے کی ضرورت ہی ختم کردی گئی۔ فاٹا کو 70 یا 80کی دہائی میں ایک پالیسی کے تحت ان گروپوں کا مرکز بنانے کی کوشش کی گئی جو کہ افغانستان میں پاکستان مخالف سرگرمیوں کی روک تھام کے لئے قائم کئے گئے تھے تاہم اس وقت غالباً حکمرانوں کو یہ اندازہ نہیں تھا کہ ایسا کرنے سے فائدے کے بجائے نقصان زیادہ ہوگا اور بعد میں80 کی دہائی میں کرم ایجنسی اور بعض دیگر علاقوں میں بعض ممالک کی پراکسی وارز کے جس سلسلے کا آغاز ہوا اس کے اثرات اور نتائج پاکستان ابھی تک بھگت رہا ہے۔ کرم ایجنسی میں فرقہ واریت کی ایسی بنیاد رکھی گئی جس نے بعد کے ادوار میں پورے ملک تک اپنی شاخیں پھیلائیں اور اس علاقے کے فرقہ ورانہ اثرات نے دوسرے علاقوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لئے رکھا۔ ڈیورنڈ لائن کے نام نہاد تنازعے کی بنیاد پر فاٹا میں افغانستان کی مبینہ مداخلت کا سلسلہ بھی کسی وقفے کے بغیر جاری رہا اور کئی دہائیوں تک حالت یہ رہی کہ افغانستان کی حکومت سے قبائل کی نہ صرف وزارت قائم رہی بلکہ یہاں کے عوام کے لئے مختلف شعبوں میں کوٹہ سسٹم بھی رکھا جاتا رہا۔ اس طریقہ کار کا نتیجہ یہ نکلا کہ یہ علاقہ متنازعہ ہونے کے ساتھ ساتھ اپنی نوعیت کی عجیب وغریب انتظامی حیثیت کی پیچیدگیوں کا شکار رہا اور جب افغان جہاد کی تیاریاں شروع ہوگئیں تو اس علاقے کو فرنٹ ایریا کی اہمیت حاصل ہو گئی۔

 

1947 سے قبل متحدہ ہندوستان میں بھی درجنوں ایسے علاقے تھے جہاں اس نوعیت کے قوانین موجود تھے۔ تاہم آزادی کے بعد ایسے علاقوں کو نئی ریاستوں کے مروجہ قوانین کے اندر لایا گیا اور ان علاقوں کے عوام کو دوسرے علاقوں جیسے حقوق اور وسائل دیئے گئے۔ بدقسمتی سے فاٹا کو ان قانونی اور انتظامی تبدیلیوں یا اصلاحات سے بوجوہ محروم رکھا گیا اور یہ علاقے تا حال کالونین سسٹم کے ذریعے چلائے جارہے ہیں۔

90 کی دہائی میں جب قبائل کو بالغ رائے دہی کی بنیاد پر ووٹ ڈالنے کا حق دیا گیا تو آج کی اصلاحات کی طرح اس وقت بھی ’’سٹیٹس کو‘‘ کے حامی عناصر نے شور مچایا کہ قبائل جمہوری نظام سے نابلد ہیں اس لئے یہ تجربہ ناکام ثابت ہوگا۔ تاہم 1997 کے الیکشن میں ریکارڈ امیدوار میدان میں نکل آئے اور تنقید کاروں کے دعوے اس وقت غلط ثابت ہوئے جب باجوڑ ایجنسی کے ایک حلقے میں نہ صرف یہ کہ پورے ملک کی سطح پر ریکارڈ ووٹ ڈالے گئے بلکہ متعدد قبائلی علاقوں میں خواتین نے بھی ووٹ پول کئے۔ ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ اس کامیاب تجربے کے بعد فاٹا میں اصلاحات کے لئے عملی اقدامات کئے جاتے مگر بوجوہ ایسا کرنے سے گریز کیا گیا۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ فاٹا کی تقریباً تمام ایجنسیاں بعد کے حالات کے باعث انتہا پسندی کے مراکز میں تبدیل ہوگئیں اور یہاں کے عوام کو جو محدود حقوق حاصل تھے وہ ان سے بھی محروم ہوگئے۔ سال 2001 کے بعد پھر سے ضرورت اس بات کی تھی کہ نئے حالات اور تقاضوں کے تناظر میں فاٹا کو مین سٹریم پالیٹکس اور سسٹم کا حصہ بنانے کے لئے ٹھوس اقدامات کئے جاتے اور یہاں سے کالونین قوانین اور ظالمانہ رواجوں کا خاتمہ کیا جاتا۔ ضرورت اس بات کی تھی کہ انگریز کے ایف سی آر قوانین کو فوراً ختم کیا جاتا اور اس اہم جغرافیائی علاقے کی ترقی اور خوشحالی کے لئے حقوق پیکیجز کا اعلان کیا جاتا۔ مگر ایسا کرنے کی ضرورت ہی محسوس نہیں کی گئی اور جب سرحدی تبدیلیوں کے تناظر میں پاک فوج کو پہلی بار فاٹا میں تعینات کیا گیا تو علم ہوا کہ یہاں کا انفراسٹرکچر تباہ حال‘ انتہائی فرسودہ اور ناقابلِ برداشت حالات سے دوچار ہے اور یہ علاقہ (فاٹا) زندگی اور سہولیات کی دوڑ میں ملک کے دیگر علاقوں سے بہت پیچھے ہے۔ سال 2003 میں اقوامِ متحدہ کے ایک ادارے نے فاٹا کو دنیا کا پسماندہ ترین علاقہ قرار دیا اور جب عالمی اداروں نے اس کی ترقی اور انفراسٹرکچر کی بحالی کے لئے فنڈز دینے شروع کئے تو کرپٹ ترین پولیٹیکل انتظامیہ کے وارے نیارے ہوگئے اور ایک وقت میں حالت یہ رہی کہ پشاور کے گورنر ہاؤس میں پولیٹیکل ایجنٹ اور دیگر افسران کی تعیناتی کے لئے کروڑوں کی باقاعدہ بولیاں لگنی شروع ہوگئیں۔ یہ سلسلہ تاحال جاری ہے اور یہ شرمناک حقیقت سب کو معلوم ہے کہ کسی بھی پولیٹیکل ایجنٹ کی تعیناتی کے لئے تین سے دس کروڑ تک کی بولی لگائی جاتی ہے۔ نائن الیون کے بعد جو امداد آتی رہی وہ متعلقہ حکام کے لئے ایک باقاعدہ کاروبار کی شکل اختیار کی گئی اور اس کاروبار میں پشاور اسلام آباد کے متعلقہ افسران‘ قبائلی مالکان اور منتخب نمائندے پولیٹیکل انتظامیہ کے شراکت دار بنے۔ فاٹا کے ساتھ سب سے بڑی زیادتی یہ کی جاتی رہی کہ اس کو این ایف سی ایوارڈ اور دیگر فورمز کا حصہ نہیں بنایا گیا بلکہ انتظامی اور اقتصادی طور پر اسے کوٹہ سسٹم کی طرز پر چلایا جاتا رہا۔2001 کے بعد گزشتہ چند برسوں تک اتنی بڑی آبادی کو نو سے بیس ارب روپے کے انتہائی قلیل بجٹ پر ٹرخایا جاتا رہا اور اس میں بھی آدھا بجٹ کرپٹ انتظامیہ کے اکاؤنٹس میں چلاجاتا تھا۔ ایف سی آر اور ایسے دیگر قوانین کے ذریعے قدم قدم پر عوام کے بنیادی حقوق کی پامالی کا سلسلہ جاری رہا۔ عدالتی نظام کی حالت اتنی شرمناک رہی کہ اگر کسی باشندے نے کسی فیصلے کے خلاف اپیل کرنا ہوتی تو اسے بھی اس اتھارٹی (پولیٹیکل ایجنٹ) کے پاس جانا پڑتا تھا جس نے اسے سزا سنائی ہوتی ہے۔ عدالتی نظام نہ ہونے کے باعث لاکھوں عوام پولیٹیکل انتظامیہ کے رحم و کرم پر رہے اوراجتماعی ذمہ داری کے انتہائی فرسودہ نظام کے باعث ہر روز سیکڑوں لوگ جبرو ستم کا نشانہ بنتے گئے۔ ترقی کی حالت کیا رہی اس کا اندازہ محض اس ایک مثال سے لگایا جاسکتا ہے کہ 70 لاکھ سے زائد کی آبادی کے اتنے وسیع وعریض علاقے میں آج ایک بھی یونیورسٹی موجود نہیں ہے۔ فاٹا کی سب سے ترقی یافتہ ایجنسی یعنی خیبر ایجنسی کی حالت یہ ہے کہ فروری 2017تک یہاں کے ہسپتالوں میں ایک میں بھی سٹی سکین مشین موجود نہیں تھی۔ یوں پورے فاٹا میں ایک بھی کالج موجود نہیں ہے اور65 فیصد علاقے بجلی جیسی سہولت سے محروم ہیں۔ فوج نے علاقے میں لاتعداد منصوبے شروع کئے ہیں جن میں متعدد بڑے طبی یونٹس‘ سڑکیں اور کیڈٹ کالجز شامل ہیں مگر سول حکومتوں کی کارکردگی انتہائی مجرمانہ رہی اور حالت یہ رہی کہ حال ہی میں پاکستان سے واپس جانے والے یو این ڈی پی کے ایک کنٹری ڈائریکٹر نے اقوامِ متحدہ کو اپنی ایک رپورٹ میں بتایا کہ فاٹا اکیسویں صدی میں بھی دنیا کے پسماندہ ترین علاقوں میں سرِ فہرست ہے اور یہاں کے عوام افریقہ کے بعد پسماندہ ممالک سے بھی بہت پیچھے ہیں۔ سال2013 کے الیکشن میں فاٹا کے بعض امیدواروں نے عوام کے مسلسل اصرار پر فاٹا میں وسیع اصلاحات کے ایجنڈے پر حصہ لیا تو عوام نے ان کو بھاری مینڈیٹ سے اسمبلیوں میں بھیجا۔ اسی دوران سال 2014 کے دوران جب نیشنل ایکشن پلان کا قیام عمل میں لایا گیا تو اس کے نکات میں تقریباً تین ایسے نکات تھے جن میں کہا گیا کہ فاٹا سے انتہا پسندی اور پسماندگی ختم کرنے کے لئے ٹھوس اقدامات کئے جائیں گے اور اسے مین سٹریم کا حصہ بنایا جائے گا۔ اس عزم کو عوام اور اکثر سیاسی قوتوں کی آشیرباد حاصل رہی۔ تاہم بدقسمتی سے سول حکومت نے اس جانب کوئی خاص توجہ نہیں دی اور آپریشن سے لے کر ٹی ڈی پیز اور بحالی کے کاموں تک سب معاملات فوج کے کندھوں پر ڈالے رکھے۔ ممبران اسمبلی نے اس رویے کو سینیٹ اور قومی اسمبلی میں مخاطب کیا اور ملٹری اسٹیبلشمنٹ کا اصرار بڑھتا گیا تو حکومت نے اصلاحات کے لئے ایک پانچ رکنی کمیٹی قائم کر دی جس نے تین ماہ تک فاٹا کی تمام ایجنسیوں کے دورے کرکے عوام‘ منتخب نمائندوں اور صاحب الرائے حلقوں سے ان کی رائے اور تجاویز معلوم کیں اور جب حکومت کو رپورٹ پیش کی گئی تو اس کا خلاصہ یہ تھا کہ فاٹا میں وسیع تر بنیادی اصلاحات نہ صرف یہاں کے جنگ زدہ عوام بلکہ پاکستان کے امن‘ استحکام اور خوشحالی کے لئے بھی ناگزیر ہیں۔ انتظامی تبدیلی کے بارے میں تین آپریشنز تجویز کئے گئے جن میں الگ صوبے کا قیام اورصوبہ خیبر پختونخوا میں ادغام بھی شامل تھا۔ رپورٹ میں تقریباً75فیصد رائے صوبے میں فاٹا شمولیت کے حق میں سامنے آئی اور اس رائے کو اکثریتی عوامی نمائندوں کے علاوہ ملک کی تقریباً تمام بڑی سیاسی قوتوں کی کھلی حمایت حاصل ہوئی جن میں پیپلزپارٹی‘ تحریکِ انصاف‘ جماعت اسلامی‘ عوامی نیشنل پارٹی‘ قومی وطن پارٹی‘ نیشنل پارٹی اور متعدد دیگر شامل ہیں۔ افسوسناک امر یہ ہے کہ جب فاٹا کے ممبران نے ادغام اور دیگر اصلاحات کے لئے کمیٹی کی سفارشات اور عوامی مطالبات کے تناظر میں ایک بل اسمبلی میں پیش کیا اور اس کو تائید حاصل ہوئی تو دوچھوٹی جماعتوں نے بوجوہ اس کی مخالفت شروع کی جس کے باعث حکومت ابہام کا شکار ہوئی اور اپنی دو اتحادی جماعتوں کے دباؤپر مصلحت یا تاخیر کا شکار ہوگئی۔ اس سے قبل صوبہ خیبر پختونخوا کی اسمبلی سے دو قراردادوں کے ذریعے متفقہ طور پر مطالبہ کیا کہ فاٹا کو صوبے کا حصہ بنایا جائے۔ جو اس جانب اشارہ تھا کہ صوبے کے عوام بھی اپنے قبائلی بھائیوں کو گلے لگانے کے لئے تیار بلکہ بے تاب ہیں۔ نئے تقاضوں اور حالات کے تناظر میں جس قومی اتفاقِ رائے کا قیام سامنے آیا ہے اس کو پاکستان کی مقتدر قوتوں کی حمایت بھی حاصل ہے کیونکہ ان کو حالات کا بخوبی ادراک ہے اور وہ چاہتی ہیں کہ فاٹا کو پُرامن‘ خوشحال اور محفوظ بنایا جائے تاہم بعض نام نہاد سیاسی قوتوں کے رویے نے معاملے کو متنازعہ بنادیا ہے جس پر قبائلی عوام کا شدید ردِ عمل سامنے آیا ہے اور وہ اپنے بنیادی حقوق کے لئے پھر سے جدوجہد کرنے نکل آئے ہیں۔

انتظامی تبدیلی کے بارے میں تین آپریشنز تجویز کئے گئے جن میں الگ صوبے کا قیام اورصوبہ خیبر پختونخوا میں ادغام بھی شامل تھا۔ رپورٹ میں تقریباً75فیصد رائے صوبے میں فاٹا شمولیت کے حق میں سامنے آئی اور اس رائے کو اکثریتی عوامی نمائندوں کے علاوہ ملک کی تقریباً تمام بڑی سیاسی قوتوں کی کھلی حمایت حاصل ہوئی

سیاسی مبصرین کا متفقہ خیال اور رائے ہے کہ مزید تاخیر یا بہانوں کے بجائے اکثریتی رائے اور مخصوص حالات کا احترام اور ادراک کرتے ہوئے فاٹا کو اندھیروں‘ فرسودہ قوانین‘ کولونین گورننس اور پسماندگی سے نکالنے کے لئے فوری اور ٹھوس اقدامات کئے جائیں اور یہاں کے عوام کو وہ حقوق دیئے جائیں جو کہ پشاور‘ لاہور‘ کراچی اور کوئٹہ کے عوام کو حاصل ہیں۔ جو اقلیتی حلقے ریفرنڈم یا الگ صوبے کا مطالبہ پیش کررہے ہیں۔ ان کے مطالبے کا نہ تو کوئی سیاسی جواز ہے اور نہ ہی ان کی تجاویز کو سیاسی یا عوامی تائید حاصل ہے۔ ان کا مقصد فاٹا کے ایک بہتر مستقبل کو پھر سے سوالیہ نشان بنانا ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ یہ علاقہ حسبِ معمول وارزون بنا رہے اور یہاں کے بے بس ‘ فرسودہ قوانین‘ کرپٹ انتظامیہ اور نان اسٹیٹ ایکٹرز کے رحم و کرم پر ہو۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ یہ اصلاحات اتفاقِ رائے کی بجائے کثرت رائے کے فارمولے کے تحت عمل میں لائی جائیں اور ایک ایسے فاٹا کی بنیاد رکھی جائے جہاں امن و خوشحالی اور استحکام آئے۔

مضمون نگار ممتاز صحافی اور تجزیہ نگار ہیں۔آپ ایک نجی چینل پر حالات حاضرہ کا پروگرام بھی پیش کرتے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
09
March

Atrocities in Kashmir: The Way India is Muzzling People

Written By: Sylvie Lasserre

Three days after the attack on an Indian military base in Uri on September 18, 2016, the Indian media reported the arrest of two Pakistani school children living in a village within an hour's walk from the Line of Control (LoC), which they had inadvertently crossed, having lost their way. During this attack, 17 soldiers were killed as well as the three militants. India, of course, immediately accused Pakistan, who rejected the claim saying: "No sane individual can suggest that Mujahideen carried out this attack to damage the Kashmiri cause”.


Yet, reassuring news for the families of the teenagers came out as, according to the Hindustan Times, an Indian daily, it was a mistake and the two 16 years old boys, Ahsan Khursheed and Faisal Hussain Awan, were expected to be repatriated the following day: "After careful investigation, we established that the boys said the truth and had no criminal intent," an official, under cover of anonymity, confessed to the famous daily.

 

atrocitesinkashminr.jpgHowever, the teenagers did not reappear, and a few days later, the Indian media were radically changing the story: sixteen-year-old boys became 19-year-old men who, after interrogation, reportedly guided the terrorists, although the teenagers were arrested on September 21, which was three days after the Uri attack. One knows what interrogations can be in Jammu and Kashmir... One had to accuse Pakistan, these teenagers were “perfect” to constitute the missing "proof".


Indeed, strangely, the Uri attack occurred just four days before Nawaz Sharif’s speech at the United Nations General Assembly on September 22. When one wants to kill his dog, one says that he is rabid. In fact, this is what happened: the Indian delegation to the General Assembly of the United Nations represented by the Foreign Minister Sushma Swaraj, Modi being absent, brandished Uri attack as "the worst attack on human rights" to justify the violence and atrocities committed in Jammu and Kashmir.

 

Despite the curfew, the Kashmiris regularly go out on the street, braving the Indian security forces which do not hesitate to fire. Since July, more than a hundred civilians have been killed, about ten thousand wounded, several hundreds of whom have lost their eyesight due to the pellet shots of the Indian Army, including women and children.

According to a Pakistani security report, some extracts of which were reported by the Pakistani newspaper The News, "The attack was deliberately designed and carried out by some sections of the Indian security establishment, in order to deflect perceived pressure at the UN over the Kashmir uprising". And indeed, the recent uprisings in Kashmir are totally indigenous and are conducted by a new generation of Kashmiris who have risen up against the occupation of India and demand freedom. Burhan Wani is their symbol.


Moreover, the Indian government seemed so annoyed at the perspective of its atrocities in Jammu and Kashmir appearing under the spot light at the General Assembly of the United Nations that it used illegal means to silence the human rights defenders who were to talk at the 33rd UN Human Rights Council in Geneva: On the morning of September 14, Khurram Parvez, a well-known Kashmiri human rights defender, was detained at Delhi Airport and prevented from taking his flight to Geneva. "I was stopped at the immigration desk. I told them that there was no charge against me and that therefore they could not prevent me from leaving the territory. But they replied that they knew nothing more and only carried out the orders," deplored Khurram Parvez. The following day, September 15, he was arrested at his home without charge and released two and a half months later: "They detained me illegally for 76 days before releasing me, thanks to international pressure and the decision of the High Court of Justice of Jammu and Kashmir, which stated that my arrest was illegal," said the human rights activist, who is also president of the Asian Federation Against Involuntary Disappearances (AFAD), adding that “they were also about to arrest Parvez Imroz and Kartik Murukutla, two human rights lawyers who were travelling to Geneva as well, but on another flight. An administrative error went in their favour and they were able to take their flight and deliver their report". In fact, India had to prevent them at any cost from denouncing the atrocities committed by the Indian Army on the civilian population of Jammu and Kashmir.

atrocitesinkashminr1.jpgHuman rights abuses by the Indian Army are recurrent in Jammu and Kashmir. The population, which claims its right to self-determination, lives in perpetual fear of the army, especially since the turmoil of the summer of 2016 following the death of Burhan Wani, the young and adulated commander of Hizb-ul-Mujaheedin, killed on July 8, 2016 by Indian security forces. Here, everybody is convinced that the 22-year-old militant was murdered – as the witnesses testify – and not killed in a fight as the army claims.
On the day of the funeral, an impressive human tide, nearly 200,000 angry people, some waving the Pakistani banner, participated in the burial of Burhan Wani whose body was wrapped in the Pakistani flag although they were in Kashmir administered by India. In fact, there, some people dream of becoming a part of Pakistan. On July 15, as protest movements rumbled in the valley, the Indian state imposed a curfew that lasted 79 days. Mobile networks and the internet were also paralyzed.


Despite the curfew, the Kashmiris regularly go out on the street, braving the Indian security forces which do not hesitate to fire. Since July, more than a hundred civilians have been killed, about ten thousand wounded, several hundreds of whom have lost their eyesight due to the pellet shots of the Indian Army, including women and children. Raids in villages, arbitrary and illegal detentions, enforced disappearances, acts of torture against civilians succeed one another in the valley. Testimonies of the brutality of soldiers abound, such as this one, for example: "First the electricity was cut off, then the soldiers began to attack our house, they beat us, including my ten-year-old niece," told a man to Agence France-Presse (AFP) from his hospital bed. "During the raid, the army and the Special Operations Group (SOG) men entered the houses, ransacked supplies and beat the occupants, injuring a dozen people, including women and children. The soldiers also took some 30 young people with them to their camp where they were beaten," said the residents of a village where the lifeless body of a 30-year-old school teacher, Shabir Ahmad Mangoo, beaten to death, was found in the streets on the morning of a raid. It should be noted that the number of soldiers deployed in Jammu and Kashmir is over 700,000, which is one soldier for about 15 civilians, making it the most militarized region in the world.


How far will the greatest "democracy" in the world go in order to continue its abuses against the population without grabbing the attention of the international community? If it could hinder Khurram Parvez, who is an Indian citizen, India could not prevent Nawaz Sharif, the Prime Minister of Pakistan, from attending the 33rd United Nations General Assembly, where he devoted half his speech to the violation of human rights in Jammu and Kashmir: "On behalf of the Kashmiri people; on behalf of the mothers, wives, sisters, and fathers of the innocent Kashmiri children, women and men who have been killed, blinded and injured; on behalf of the Pakistani nation, I demand an independent inquiry into the extra-judicial killings, and a UN fact finding mission to investigate brutalities perpetrated by the Indian occupying forces, so that those guilty of these atrocities are punished".


After Uri attack followed what India calls "surgical strikes" against Pakistan, from the other side of the LoC, that have killed dozens of innocent civilians. In fact, many villagers, including children, were hit by the Indian soldiers. On October 24, 2 people including an infant were killed. On the 28th, three people, one woman and one girl were killed; on November 19, four teenagers; four days later, eight passengers on a bus were killed and nine injured and on December 16 a school bus was targeted leaving one child dead and four injured. The killings have continued ever since.


Today, more than four months after the abduction of Ahsan Khursheed and Faisal Hussain Awan, their families are extremely desperate and still without any news. However, a glimmer of hope is beginning to emerge since an official from the Indian National Investigation Agency (NIA) began to speak anonymously to the Indian press. According to him, there was no evidence of guilt at the end of January and he mentioned the possibility that the boys "may have been frightened or constrained when they gave their first testimony." By the end of January, a senior official of the Union Home Ministry told The Hindu, an Indian daily: “We will decide on the fate of the two Pakistani boys in a month. So far, there is no evidence of them having guided the terrorists to the Uri camp. We are still verifying the details and their antecedents”.


Meanwhile, the elder brother of Faisal Hussain Awan, Ghulam Mustafa Tabassum, who is a medical practioner working in Lahore, is multiplying the contacts in order to try to find some providential help and get the two boys freed. As a last chance, he has written to Narendra Modi, the Prime Minister of India. But there is still no news. Ghulam Mustafa Tabassum told Indian media that their mother could not sleep anymore, and that he had to tell her lies, like: the boys were fine, well treated and fed and kept in a juvenile centre and that he could talk to them on the phone from time to time. The truth is that they are trapped by the political game of India and that no news regarding them and their health has emerged.


As for now, brutalities and human rights violations against the Kashmiri population continue in Jammu and Kashmir, despite regular denunciations to the United Nations.

The writer is a renowned French journalist.

Email:This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it..

 

Follow Us On Twitter