10
October

Between the Brothers: Pak-Iran Relations

Written By: Ambassador (R) Khalid Aziz Babar

THE first 32 years of Pakistan-Iran relations were marked by cordiality and friendship. Iran was the first country to recognise Pakistan and Mohammad Reza Shah Pahlavi was the first Head of State to visit Pakistan in March 1950. In May 1950, a treaty of friendship was signed by Prime Minister Liaquat Ali Khan and the Shah. Both countries were allies of the United States and closely cooperated with each other in the political and military fields. Iran supported Pakistan on the Kashmir issue and backed it during the 1965 and 1971 wars. 

 

However, the intensity of the cordiality started to wane after the Islamic revolution in Iran in 1979. The relations gradually became tense, complex, and difficult. From a close ally of the United States, Tehran became an enemy of Washington overnight due to the latter’s close relationship with the Shah’s regime. Although, Pakistan did not waste any time in recognizing the Islamic revolution, Tehran started to view Pakistan with suspicion due to its military cooperation with the United States following the Soviet invasion of Afghanistan in 1979.

 

betthebroth.jpgThe ties strained after the withdrawal of the Soviet forces from Afghanistan in 1988. While Iran supported the Persian speaking Afghan leader of the Northern Alliance Ahmed Shah Masood, Pakistan favoured the Pashtun leader of Hezb-e Islami, Gulbuddin Hekmatyar.


The relations further dipped in 1998 after Tehran accused the Taliban of killing 11 Iranian diplomats, 35 Iranian truck drivers and an Iranian journalist in Mazar-i-Sharif and deployed over 300,000 troops on the Afghan border and threatened to attack Afghanistan. This also strained relations with Pakistan.


The worst period of relations was after the emergence of the Jundallah group, a Sunni faith Iranian militant group blamed for several deadly bombing attacks inside Iran. On October 18, 2009, the Iranian city of Sarbaz in Sistan-Baluchestan was attacked by a suicide bomber, killing 42 people including senior Iranian security personnel and tribal chiefs. Former President Mahmoud Ahmadinejad accused ‘some elements in Pakistan’ of involvement. Tehran also blamed the United States, Britain, Saudi Arabia for being behind Jundallah attacks. During this period, a number of other factors caused further anguish in Tehran such as the U.S. drone flights close to the Iranian border taking off from Pakistan’s Shamsi Airfield; frequent border skirmishes between the Iranian border guards and smugglers and terrorist elements at the Sarawan and other border points, and Iran’s disquiet over Pakistan’s support to Bahrain security forces.


Although on November 19, 2010, Iran's Supreme Leader Ayatollah Ali Khamenei appealed to Muslims worldwide to support the freedom struggle in Jammu and Kashmir, Iran’s support to Pakistan on the Kashmir issue has been diminishing since then.


The relations took a positive turn after 2011 following Pakistan’s decision to ask the U.S. to vacate the Shamsi Airbase and subsequent elimination of the Jundallah. Former President Zardari visited Iran five times from 2011 to 2013, one of which was to participate in the ground breaking ceremony of the construction of the Iran-Pakistan gas pipeline project.


Following the agreement on the nuclear issue between the West and Iran, we can now restart the gas pipeline project. The accord envisages to supply 750 million cubic feet of natural gas per day to Pakistan, which can also be used for the production of 4,000 Megawatts (MW) of power generation per day. Iran is already supplying 74 MW of electricity to Pakistan’s border town of ‘Mand’ and adjoining areas. The second electricity project is the supply of 100 MW of electricity to the port city of ‘Gwadar’.
There are several other initiatives which should be pursued by both sides vigorously such as the opening of new border crossing posts at Gabd-Rimdan point, close to the Gwadar Port, and Mand-Pashin point around the middle of the 900 km border. The opening of the two new border posts will significantly boost bilateral trade as goods trucks from Karachi will be able to cross into Iran within a day. Currently, there is only one border post at Taftan–Mirjaveh point and trucks from Karachi have to go to Quetta first and then to Taftan border post, making the journey to Iran at least twice as long compared to the direct route along the Makran Coastal Highway to Gabd-Rimdan border point. Trade between the two countries is currently insignificant accounting for less than half a billion dollars. An agreement to open the two new posts was reached in Tehran in 2011 during talks between former President Mahmoud Ahmadinejad and former Prime Minister Yousaf Raza Gillani. However, the agreement was not implemented by the Iranians due to bureaucratic hurdles. According to a news report, an agreement was again reached during President Rouhani’s visit to Islamabad in March this year.


There have also been discussions on a number of other projects in the past such as the construction of the crude oil pipeline, up gradation of 633 kms Quetta-Zahidan railway track, construction of 143 km Noushki-Dalbandin Highway, and supply of 1,000 MW of electricity from Zahidan to Quetta through a transmission line. These projects could be examined again.


Strain in relations with Iran gives space to India to exploit the situation and stab us in the back by orchestrating terrorist attacks, and involving us in proxy wars with our neighbours. Iran and India are already cooperating in the development of the strategic Chabahar Port, which is close to our Gwadar Port, and the construction of a road link from Chabahar into Afghanistan, bypassing Pakistan. Iran also appears to be overlooking the subversive activities of the Indian consulate in Zahidan which is engaged in planning terrorist attacks inside Balochistan. The issue of Kulbushan Yadav capture from Iranian soil impling use of Iranian soil against Pakistan is a new thorn in Pak-Iran relation that must be removed.


At the minimum, the most important challenge for us today is to keep our borders with Iran free from tension and to have cordial relations with Tehran. Pakistan-Iran border of around 900 km is the largest stretch of our border on which Pakistan has not deployed its regular troops, saving us millions of rupees annually which otherwise would have been spent on stationing and maintaining troops on the border between the two countries. Pakistan must not allow this situation to change. And, the same formula also applies to Iran, too.

 

The writer served as Ambassador to the Islamic Republic of Iran from 2011 to 2013.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
10
October

RISING CHINA

Written By: Dr. Ahmad Rashid Malik

It was predicted in the last quarter of the previous century that the 21th century would be an Asian century. The rise of Japan and other vibrant Asian Tigers made the prediction come true, while the rise of Chinese economy remained the most phenomenal component. While the strength of other powers has often eroded for political reasons and compatibility problems, China has constantly been on ascending trajectory. For these reasons, China avoids tensions in world politics and prefers a peaceful role in defusing conflicts in war zones. As China leads the Asian dream, it is safe to say that the future of Asia belongs to China and the Chinese century would be an Asian century.


China does not aspire for hegemony and it has not been the objective of Chinese foreign policy for the past 67 years. The concept of hegemony is contrary to Chinese culture, values and interests. China believes in peace, mutual cooperation, trust-building, and peaceful coexistence and is considerate and careful of its fourteen neighbors. A peaceful neighborhood diplomacy together with economic cooperation in bilateral, regional, and global context is the hallmark of the rise of China since 1949.

 

risingchinea.jpgIt took at least 22 years for China to convince many other nations including the United States that the emergence of the People’s Republic of China was peaceful and not hegemonic in nature. The United States made a breakthrough with China in 1971 and President Richard Nixon visited China in the following year and both sides established full diplomatic relations in 1979. A year earlier China had introduced economic reforms. As soon as China’s diplomatic, political, and economic isolation ended in the world, it started emerging as a global economic power. Within 32 years, China replaced Japan as the second most powerful Asian economy in 2010 in world arena. This further symbolized the rise of Asian Century after Japan.


Chinese economy has become truly global. It is world’s second largest economy and accounts for 15% share in global Gross Domectic Product (GDP), yet it is a developing economy with a huge potential to grow in future – though it is a centrally-planned, yet it is market-based competitive economy. Chinese economy has quadrupled since the 1970s and has the potential to double in the next decade. Today, China is the largest economy by Purchasing Power Parity (PPP), replacing the United States in 2014. China’s GDP is approaching U.S. $11 trillion. China’s foreign reserves are touching down to U.S. $3.7 trillion, the biggest of any nation’s reserves. The economy is still fast growing making it the fastest sustained expansion of a major economy in human history.


By 2015, China achieved all the Millennium Development Goals (MDGs) for a population of 1.3 billion people. This is another attribution to this great nation. For many Asian nations with relatively small population and abundance of natural resources, that could not meet the MDGs and live under poverty and economic pressures, China is an economic model. China has markedly reduced social imbalances by presenting a true socialist economy for a large population.

 

 

risingchinea1.jpgChina has the second largest GDP after the United States in nominal terms. In 1978 Chinese GDP was only U.S. $148 billion that rose to U.S. $11 trillion in 2016. In the same year, Chinese exports were U.S. $10 billion comprising roughly raw materials; imports were almost the same. In 2015, Chinese exports turned around U.S. $2.2 trillion, making China world’s leader in exports.


The rise of China is also the rise of its investments. On the investment side, China received only U.S. $200 million from all global sources in 1980 but today China is the single largest recipient of foreign investment i.e., U.S. $136 billion. China is the third largest source of outward investment in the world. Chinese outbound investments continue to surge and are fast becoming a pillar of global economy. These investments greatly influence Europe, Asia, Africa and America. China’s global outbound investment exceeds U.S. $1 trillion. China expects an investment of U.S. $30 billion in the United States this year while last year, China invested U.S. $15 billion. Chinese are the biggest buyers of U.S. property – in U.S. real estate, Chinese firms have invested as much as over U.S. $300 billion.


With the Chinese economic ascendance a new world order would also be unfolding, challenging many old norms not suitable for developing Asian countries. China has shown positive indication to reshape global financial architecture. The formation of the Asian Infrastructure Investment Bank (AIIB) and the Silk Road Fund, founded in 2014, are two explicit examples. So far 57 countries have joined the bank. These financial institutions are closely linked with the One Belt, One Road (OBOR) initiative. CPEC is the flagship project of the OBOR offered to Pakistan in 2013 and 51 agreements worth U.S. $46 billion were signed when President Xi Jinping visited Pakistan in 2015. China has already emerged as the largest import and export destination of Pakistani goods.


China is the largest trading partner of many countries. Over 124 countries have more trade with China than the United States. China has replaced the Western-dominated trading system that has been practiced for centuries, which includes the United States, European Union, ASEAN, Russia, Japan, South Korea, Australia, and many other developed and developing countries. This also almost brought about an end to the American-dominated bipolarity in world politics.


China is not a military threat to the Asia-Pacific region, it is rather a balancer. There are some misperceptions about the rise of China in the South China Sea and these deliberate efforts are intended to damage the soft image of China. Chinese military is not confronting any specific enemy in the Asia-Pacific region except safeguarding its vital national interests. Tension exists mainly in the South China Sea with Japan and some other regional countries. There is, however, no direct confrontation with the United States and Russia. The Chinese preference is for a peaceful resolution of island issues in the South China Sea.


Instead of confrontation, China offers the “21st Century Maritime Silk Road” initiative under OBOR to enhance the prosperity and peace by engaging them in a productive manner as seeking hegemony is not the Chinese objective in the region. A large number of regional countries have been supportive of the Chinese trading and economic initiative. Chinese military initiatives are balancing the global power shift in the region instead of creating a vacuum or a tilt in favor of traditional dominating powers. No power alone could set forth the rules for domination of the system while China appears a challenger to these efforts. This creates fear in the mind of traditional powers as they are not yet ready to accept China as a balancer.


The international system in which Japan has grown and challenged Western economic hegemony after World War II no longer exists. The American-Soviet confrontation provided ample room for Japan’s economic ascendance during the Cold War. A decade before the end of the Cold War, China made preparations for its rise. Japan gained American support to have its share in the balancing act together with old and new allies. They are in a transition and there’s confusion in devising strategic and economic strategies to answer to the challenge they feel that comes from China. It is time to realize that a foreign-dominated and poverty-ridden China no longer exists in Asia-Pacific. The United States and her allies have to accommodate China in the long-run as new China is a reality and hope for future peace and prosperity.

 

The writer is Senior Research Fellow at the Institute of Strategic Studies (ISS), Islamabad.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
08
November

امریکہ ،بھارت فوجی معاہدے

تحریر: ڈاکٹر شائستہ تبسم

امریکہ، بھارت کے درمیان
Logistic Exchange Momorandum of Agreement
کے تحت فوجی تعاون کے معاہدے پر واشنگٹن میں دستخط ہوئے۔
LEMOA
معاہدے کے مطابق امریکہ اور بھارت نہ صرف ایک دوسرے کے فوجی اڈے استعمال کر سکیں گے بلکہ ایک دوسرے کی فوجی تنصیبات کو مشترکہ دشمن اور مذہبی دہشت گردی کے خلاف بھی استعمال کریں گے۔ بھارتی حکومت نے فوجی اور سیاسی تجزیہنگاروں سے گزارش کی کہ اس معاہدے کو مستقل بنیادوں پر فوجی معاہدہ نہ سمجھا جائے۔ بلکہ یہ صرف ایک لاجسٹک سہولت ہے جو امریکی، بری، بحری اور فضائی جہازوں کو دی جائے گی۔ جس سے دونوں ممالک کی خودمختاری کم نہ ہو گی۔ امریکہ بھارت میں نہ ہی کوئی فوج اور نہ ہی کوئی فوجی جہاز مستقل طور پر کھڑا کرے گا۔ یعنی جو بھی سہولت ہو گی وہ وقتی یا وقت پڑنے پر استعمال کی جائے گی۔ آج کے سائنسی دور میں کوئی بھی زمین کا ٹکڑا جو صرف لاجسٹک سہولت دے وہ وقت پڑنے پر فوجی اڈے کا کردار بھی ادا کر سکتا ہے۔ کیونکہ اس پوری لاجسٹک سہولت میں ایندھن کی فراہمی کے علاوہ اور بھی لاتعداد اشیاء جو باہمی آپریشن‘ انسانی ہمدردی کے طور پر مددیا ریلیف آپریشن میں چاہئیں ہوں‘ موجود ہوتی ہیں۔ یعنی لاجسٹک سہولت کا دائرہ کار وسیع سے وسیع تر کیا جا سکتا ہے۔ دراصل یہ لاجسٹک سہولت دونوں ممالک کے درمیان مستقبل کے کسی بھی فوجی تعاون کے معاہدے کا پہلا قدم ہے۔
1950کی دہائی میں جب پاکستان امریکہ کے ساتھ فوجی معاہدے میں شامل ہوا تھا تو بھارت نے ایک سفارتی مہم کے ذریعے پاکستان کا غیرجانبدار تحریک
(NAM)
میں راستہ روکا تھا اور آج بھارتی حکومت یہ تاثر دینے کی کوشش کر رہی ہے کہ یہ وقتی سہولیات ہیں۔ امریکہ نے 20ویں صدی کے دوسرے حصے میں دنیا کے معاشی اور
Strategic
اُفق پر اسی طرح کے تقریباً 800فوجی اڈوں سے حکمرانی کی تھی۔ مستقل فوجی اڈے امریکہ کے لئے زیادہ سودمند نہ ثابت ہوئے۔ اس لئے امریکہ نے لاجسٹک سہولیات کاطریقہ استعمال کیا۔ بھارت میں
LEMOA
پر اس لئے زیادہ تنقید کی جا رہی ہے کیونکہ خیال یہ کیا جا رہا ہے کہ اس سے امریکہ کو زیادہ فائدہ ہو گا۔ حالانکہ ایسا نہیں ہے۔ رسائی دونوں ممالک کو حاصل ہو گی۔ لہٰذا اس سہولت کے ذریعے اپنی مرضی کی طاقت کا توازن اس خطے میں قائم کیا جا سکتا ہے۔


اس معاہدے سے جنوبی ایشیا پرہونے والے اثرات جلد ہی سامنے آجائیں گے۔ ماضی میں کی گئی تمام کوششیں اب کامیاب ہوتی نظر نہیں آتیں۔ ایک ملک جو پہلے ہی اپنے آپ کو سکیورٹی مہیا کرنے والا سمجھتا ہو اورجس کی خطے کے باقی چھوٹے ممالک سے تعلقات برابری کی بنیاد پر نہیں بلکہ ایک پولیس مین جیسے ہوں تو آنے والے وقت کا اندازہ لگانا مشکل نہیں۔ ایک عالمی طاقت سے معاہدے کے بعد بھارت نے اپنے اس رول کی تصدیق بھی کر دی۔
صورتحال مزید تشویشناک اس لئے بھی ہے کہ امریکہ اور بھارت نے مشترکہ اعلامیہ میں پاکستان پر دہشت گردوں کی سرحدی دراندازی کا الزام لگایا ہے۔ ان سب کے بعد امریکہ یا دنیا یہ کیسے امید کر سکتی ہے کہ بھارت پاکستان کے ساتھ اپنے معاملات میں لچک دکھائے گا۔ بلکہ اس کی پالیسی میں زیادہ خود سری اور سختی آ جائے گی۔ پہلے بھی تمام رابطے اور کوششیں پاکستان ہی کی طرف سے کی جاتی رہی ہیں اور وہ بھارت کی غیرلچکدار پالیسی کی وجہ سے کامیاب نہیں ہو سکی ہیں۔ یعنی جنوبی ایشیا میں آج تک کی جانے والی کوششیں ضائع ہوتی نظرآرہی ہیں۔
اس غیرمتوازن طاقت میں افغانستان، بھارت اور امریکہ کا ساتھی ہے۔ پاکستان سے ممبئی اور پٹھانکوٹ حملوں میں ملوث افراد کے خلاف مزید اقدامات کا مطالبہ دراصل امریکہ بھارت ہم آہنگی اور پاکستان کو خطے میں تنہا کرنے کی طرف ایک قدم ہے اور اس میں افغانستان کی موجودہ حکومت ان کے ساتھ ہے۔ سہ فریقی مذاکرات میں پاکستان کو شامل نہ کرنا افغانستان کی تیزی سے بدلتی ہوئی صورت حال کو خراب کرے گا۔ افغانستان میں برسرپیکار افغان گروپس کو مذاکرات کی میز پر لانے میں اور مذاکرات کو نتیجہ خیز بنانے میں پاکستان کی جگہ بھارت کو دینا ایک بہت سنگین غلطی ہونے جا رہی ہے۔ بھارت، امریکہ اور افغانستان حکومت کو یہ ماننا چاہئے کہ افغانستان مزید خانہ جنگی کا متحمل نہیں ہو سکتا اس لئے یہ چار بلکہ پانچ فریقی مذاکرت ہونے چاہئیں۔ خانہ جنگی سے سب سے زیادہ متاثر افغانستان ہو گا اور اس کے اثرات پاکستان پر بھی مرتب ہو گے۔ تو کیا یہ تجزیہ بالکل ٹھیک نہیں ہو گاکہ امریکہ دراصل افغانستان میں چین اور روس پر نظر رکھنے کے ارادے سے آیا تھا ۔ نہ ہی امریکہ کو کبھی افغانستان کے معاملات کو ٹھیک کرنے میں دلچسپی رہی ہے اور نہ ہی اس وجہ سے پھیلنے والی دہشت گردی سے امریکہ براہ راست متاثر ہوا۔ امریکہ کی پالیسی چین فوکسڈ ہے اور یہی ایک مشترکہ مفاد ہے جو بھارت اور امریکہ کو اتنا قریب لے آیا ہے۔


کشمیر میں بھارت کی ظالمانہ پالیسی کو مزید تقویت ملنے کی امید کی جا سکتی ہے۔ دنیا کا الیکٹرانک میڈیا، اخبارات اور انسانی حقوق کی تنظیمیں بھارتی مظالم کی رپورٹنگ کر رہی ہیں جبکہ پاکستان اس مسئلے کو عالمی سطح پر اٹھاچکا ہے۔ ایسے میں بھارت امریکہ کے دفاعی معاہدے کا سیاسی فائدہ اٹھائے گا۔ اگر امریکہ اور اس کے اتحادی بھارت کو عالمی سطح پر تنقید کا نشانہ نہ بنائیں تو پاکستان کی کوششوں کو آسانی سے پس پشت ڈال دیا جائے گا۔ یہیں بھارت کو مزید موقع مل جائے گا کہ وہ سفاکیت سے کشمیریوں کی تحریک کو دبائے۔ یعنی بھارت نے ایک دفاعی معاہدے سے کتنی بڑی سیاسی چال چلی ہے امریکہ اس نئے تعلق کے بعد بھارت کی کسی بھی پالیسی پر اعتراض نہیں اٹھائے گا چاہے وہ انسانی حقوق کی کتنی ہی خلاف ورزی کیوں نہ کر رہا ہو۔ جیسا کہ اب بھارت کشمیریوں پر مظالم ڈھا رہا ہے اور بین الاقوامی قوانین کی کھلی خلاف ورزی کی جا رہی ہے۔ لیکن بڑی طاقتوں خاص کر امریکہ کو اپنا سیاسی مفاد زیادہ اہم نظر آتا ہے۔ اس لئے نہ پہلے اور نہ اب مسئلہ کشمیر یا کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی پر امریکہ اور اس کے اتحادی بین الاقوامی سطح پر پاکستان کے موقف کی حمایت نہیں کریں گے۔ یہ مفادات کی سیاست ہے نہ کہ اصولوں کی۔ بھارت اس معاہدے کے ذریعے امریکہ کو جانبدار کرنے میں کامیاب ہو جائے گا۔ اس طرح اسے اپنی دوسری پالیسیوں میں بھی گرین سگنل مل جائے گا۔ چاہے وہ کشمیری ہوں یا خطے کے دوسرے چھوٹے ممالک ۔ چین اور بھارت دونوں عالمی طاقت بننے کے خواہش مند ہیں۔ پچھلے کئی سالوں سے دونوں کی جانب سے یہ دوڑ جاری ہے۔ چنانچہ آنے والے سالوں میں دونوں کے مفادات کا ٹکراؤ لازم ہے۔ خاص کر اس وقت جب چین ون بیلٹ‘ ون روڈ پالیسی کے تحت سی پیک منصوبے پر اربوں ڈالر لگا رہا ہے۔ امریکہ سی پیک پر نظر رکھنے کے لئے بھارت کے ان فوجی اڈوں کی سہولت کو بآسانی استعمال کر سکے گا اور چین کی گوادر اور
South China Sea
میں بحری آمدورفت پر بھی نظر رکھ سکے گا۔
امریکہ
Pacific
خطے کی طرف ایک ایسے عظیم اتحاد کی طرف بڑھ رہا ہے جس میں جاپان، فلپائن اور آسٹریلیا پہلے ہی موجود ہیں۔ امریکہ بھارت اتحاد ایک دو طرفہ معاہدہ ہے۔ لیکن یہ معاہدہ اس اتحادی ڈھانچے کو مضبوط کرے گا۔ جبکہ پاکستان چین روس اور جنوبی کوریا اس اتحاد سے باہر ہیں۔ یہ اس لئے بھی تشویشناک ہے کہ اس سے ملتی جلتی صورت حال جنگ عظیم اول اور جنگ عظیم دوئم سے پہلے پیدا ہوئی تھی۔ جب یورپ کے ممالک دو بڑے عظیم اتحادوں میں بٹ گئے تھے۔ امریکہ کو چین اور روس کی بڑھتی ہوئی دوستی اور دونوں ممالک کا دنیا میں ابھرتا ہوا کردار دراصل عظیم اتحاد کی طرف لے جا رہا ہے۔ لیکن اس سے جنوبی ایشیا کے ممالک اور دنیا کے دوسرے ممالک کیا بھگتنے جا رہے ہیں کسی کو اس کی پروا نہیں ہے۔


فوجی اڈے کسی بھی قسم کی فوری پیش قدمی خاص کر دشمن تک آسانی اور برق رفتاری سے پہنچنے کا ایک ذریعہ ہوتے ہیں۔ دشمن کو دباؤ میں رکھنے کا یہ ایک کارآمد حربہ ہے۔ بھارت میں اس طرح کی سہولت امریکہ کو بین الاقوامی
Strategic System
پر حاوی کر دے گی او رکسی بھی مدمقابل خاص کر چین اور روس کو ابھرنے سے روکنے میں اہم ہو گی۔ امریکہ کے لئے مستقل اڈے زیادہ سودمند ثابت نہ ہوئے اس لئے امریکہ نے لاجسٹک سہولت کا حل تلاش کیا۔ یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ
LEMOA
سے امریکہ کو زیادہ فائدہ ہو گا ایسا نہیں ہے یہ
Operational Excess
دونوں ممالک کو ہو گی۔ اس کے ذریعے خطے میں اپنی مرضی کا طاقت کا توازن بنایا جا سکتا ہے۔ اور بھارت مستقبل میں اس سہولت کا خطے میں استعمال کر سکتا ہے۔
اس معاہدے کی مزید مضبوطی اور اس تعاون میں پیش رفت آنے والے ردعمل سے بھی تقویت پائے گی۔ ردعمل روس اور ممکن ہے شمالی کوریا کی جانب سے کسی قسم کے اتحاد کی صورت میں آئے۔ ایسے ردعمل میں حالات مزید خراب ہونے کی صورت میں امریکہ کو دی گئی سہولیات صرف
Operational
حد تک ہی محدود رہیں گی یا ان میں مزید گہرائی بھی آ سکتی ہے۔

مضمون نگار کراچی یونیورسٹی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کی چیئرپرسن ہیں۔

شہداء کے نام

 

تمہارے لہو کی خوشبو مہک رہی ہے چار سُو
میرے من کی آرزُو چہک رہی ہے چار سُو
*
اس وطن کی آن کو تم نے جو شان دی
اے میرے مجاہدو! تم نے اپنی جان دی
*
تم نے ملک کے نام کو سر بلند کر دیا
ہم کو اس بات کا پھر پابند کر دیا
*
ہم نے اس ملک کو اِک نکھار دینا ہے
چار سُو محبت کا یہ پیغام دینا ہے
*
حوالدار قاضی محمد اخلاق 

*****

 
08
November

بنگلہ دیش: نفرت کی آگ اور انتقامی پھانسیاں

تحریر: میمونہ حسین

بنگلہ دیش کی موجودہ حکومت انتقامی رویوں کو ہوا دیتے ہوئے نہ صرف پاکستان کا نام اور پاکستان سے محبت کرنے والوں کو جیلوں میں ڈال رہی ہے۔ بلکہ پاکستان سے محبت کرنے کی پاداش میں دھڑادھڑ پھانسیاں دے کر ظلم و ستم کی گھناؤنی مثالیں بھی قائم کر رہی ہے۔
اس وقت تک جماعت اسلامی کے پانچ رہنماؤں کو پھانسیاں دی جا چکی ہیں جن میں مولانا مطیع الرحمن نظامی‘ عبدالقادر ملا‘ محمدقمرالزمان‘ علی احسن مجاہد اور میرقاسم شامل ہیں جبکہ بی این پی کے رہنما صلاح الدین قادر کو بھی پھانسی دی گئی۔ جماعت اسلامی کے سابق امیر پروفیسر غلام اعظم اور مولانا عبدالکلام محمدیوسف کو جیل میں تشدد کرکے شہید کردیا گیا۔ ان پھانسی پانے والے رہنماؤں سے یہ کہا گیا کہ آپ کی سزا معاف ہو سکتی ہے اگر آپ یہ بات لکھ کر دیں کہ ہمیں پاکستان اور افواجِ پاکستان سے نفرت ہے جوبے گناہ بنگالیوں کے قتل میں ملوث تھی اور ہم پر جو الزامات لگائے گئے ہیں وہ سب کے سب سچ ہیں تو آپ صدرِ مملکت سے رحم کی اپیل کرسکتے ہیں۔ لیکن سب رہنماؤں نے نہ صرف انکار کیا بلکہ ان کا یہ کہنا تھا کہ یہ جو الزامات عائد کئے گئے ہیں سب جھوٹ ہیں۔ رحم کی اپیل کا مطلب یہ ہوگا کہ تمام جھوٹ کو سچ مان لیاگیا۔ اس لئے ہم اس جھوٹ کو نہیں مانتے ہمیں پھانسی ہی منظور ہے۔
عبدالقادر ملا‘ جو جماعت اسلامی کے مرکزی اسسٹنٹ جنرل سیکرٹری بھی رہے۔ 1996سے2008 تک رکنِ پارلیمنٹ رہے اور دنیا کے 500مؤثر ترین مسلمانوں کی فہرست میں ان کا نام شامل رہا ان کو 2دسمبر2013 میں پھانسی دے دی گئی۔ محمدقمرالزمان بھی جماعت اسلامی کے جنرل سیکرٹری رہے۔ انہوں نے ہمیشہ سچ کابول بالا کیا۔ پیشے کے لحاظ سے یہ صحافی اور مصنف تھے۔ ان کو 11 اپریل 2015 کو پھانسی دی گئی۔

 

چوہدری معین الدین پر ان کی غیرحاضری میں مقدمہ چلایا گیا ان کو 3نومبر 2013 کو سزائے موت سُنا دی گئی۔ وہ عالمی اسلامی ادارہ مسلم ایڈ کے سابق چیئرمین اور برطانوی ادارے نیشنل ہیلتھ سروسز کے سابق ڈائریکٹر ہیں۔ پروفیسر غلام اعظم جو بنگلہ دیش جماعت اسلامی کے سابق امیرتھے، کو 15جون 2013 کو 90 سال کی قیدسنائی گئی مگرپروفیسر غلام اعظم تشدد برداشت نہ کرسکے اور91 برس کی عمر میں 23اکتوبر2014 کو جیل ہی میں انتقال کرگئے۔ جماعت اسلامی کے ایک اور سابق جنرل سیکرٹری علی احسن مجاہد کو17 جولائی 2013 کو سزائے موت سنائی گئی۔ جبکہ22 نومبر2015 کو ان کو پھانسی دے دی گئی۔ علی احسن مجاہد 2007 تک بنگلا دیش کے رکن پارلیمنٹ اور سوشل ویلفیئر کے وفاقی وزیر رہے۔ صلاح الدین چوہدری جو بی این پی کے رہنما اور7 بار رکن پارلیمنٹ منتخب ہوئے ان کو یکم اکتوبر2013 کو سزائے موت سنائی گئی جبکہ22نومبر2015 کو ان کو بھی پھانسی دے دی گئی۔ وہ اپنی پارٹی کی سٹینڈنگ کمیٹی کے رُکن اور پارٹی سربراہ بیگم خالدہ ضیاء کے پارلیمانی امور کے مشیر بھی رہے۔

 

bangladesh.jpgعلم حدیث کے ممتاز ماہر اور جماعت اسلامی کے مرکزی نائب امیر مولانا عبدالکلام محمدیوسف پر ابھی مقدمہ چل رہا تھا کہ وہ جیل کی اذیتیں برداشت نہ کر پائے اور2 فروری 2014 کو جیل میں ہی انتقال گئے۔2نومبر2014 کو جماعت اسلامی کے مرکزی رہنما اور اسلامی بینک کے ڈائریکٹر اور ڈگانتا میڈیا کارپوریشن کے چیئرمین ابنِ سینا ٹرسٹ کے بانی‘ رابطہ عالمی اسلامی کونسل کے ڈائریکٹر میرقاسم کو سزائے موت سنا دی گئی اور انہیں 3 ستمبر2016 کو پھانسی دے دی گئی۔ ان سب رہنماؤں پر غداری‘ قتلِ عام‘ خواتین کی بے حرمتی‘ زنا اور لوٹ مار سمیت نہایت بیہودہ الزامات عائد کرکے انہیں موت کے گھاٹ اُتار دیا گیا۔ نام نہاد وار کرائم ٹربیونل قائم کیا گیا اور پھر اس میں مقدمات چلائے گئے۔ لیکن مقدمات میں بھی یہ ثابت ہوا کہ ان الزامات میں کوئی حقیقت نہیں تھی۔ اسی وجہ سے بنگلہ دیشی حکومت نے حکومتی مشینری کا استعمال کرتے ہوئے جعلی گواہ تیار کرکے ان رہنماؤں کو دفاع کے حق سے محروم کرکے اپنی منشا کے مطابق عدالتوں سے فیصلے کروائے۔ وہ مقدمات جو انٹرنیشنل وار کرائم ٹربیونل میں چلائے گئے، عالمی قوانین و انصاف سے تصادم ہیں۔ غیر ملکی حکومتوں اورانسانی حقوق کی تنظیموں نے اسے غیرقانونی قرار دیا ہے۔ اس ٹربیونل کا پہلا چیف جسٹس محمدنظام الحق جو ایک متعصب شخص تھا وہ پہلے ہی دن سے اُن رہنماؤں کے خلاف تھا۔20 سال پہلے جب وہ وکیل تھا تو اس نے عوام کے سامنے ایک ڈرامہ کیا‘ خود ہی عدالت لگائی اور خود ہی پاکستان کے لئے نرم گوشہ رکھنے والے تمام رہنماؤں کو سزائے موت دینے کا اعلان کردیا۔ اس وقت تولوگ اس کے اس ڈرامے پر ہنسے لیکن 20 سال بعد اس کا یہ خواب پورا ہو گیا جب اُسے اس ٹربیونل کا صدر بنایاگیا تو وہ بے حد خوش تھا۔ مگر اچانک ہی اس سے استعفیٰ لے لیاگیا۔ کیونکہ حسینہ واجد یہ نہیں چاہتی تھی کہ اس کے منصوبے کی قلعی کھلے۔ حقیقت یہ تھی کہ جسٹس نظام الحق اور بنگالی قانون دان ضیاء الدین کے درمیان
SKYPE
پر ٹربیونل گفتگو اور ای میلز غیر ملکی جریدے تک پہنچ گئیں اور انہوں نے تمام گفتگو اورای میلز شائع کردیں۔ جس میں جسٹس نظام نے واضح طور پر کہا کہ حسینہ واجد بھارت کی مدد سے حکومت چاہتی ہے تاکہ وہ بھارت مخالف رہنماؤں کا خاتمہ کرکے اپنے باپ کا بدلہ لے سکے۔گفتگو تو بہت لمبی ہے جو یہاں ایک مضمون میں لکھنا ممکن نہیں لیکن سب سے بڑی بات42 برس بعدقائم ہونے والا یہ ٹربیونل‘ مقدمات اور پھانسیاں19 اپریل 1974 کو طے پانے والے سہ طرفی معاہدے کی خلاف ورزیاں ہیں جن کے فریقین پاکستان‘ بھارت اور بنگلہ دیش تھے۔


اس معاہدے میں واضح طور پر یہ طے پایا تھا کہ 195 جنگی قیدی جو گرفتار ہیں ان پر بنگلہ دیشی حکومت غداری کا مقدمہ چلا سکتی ہے اور انہیں قانون کے مطابق سزا دے سکتی ہے۔ مگر اب جن لوگوں کو پھانسیاں دی جارہی ہیں ان کا نام نہ تو ان 195 جنگی قیدیوں میں شامل ہے نہ ہی ان کے خلاف کئی عشروں تک کوئی مقدمہ درج نہ ہوا بلکہ یہ تو رکن پارلیمنٹ بھی رہے اور خالدہ ضیاء کے دور میں اہم عہدوں پر بھی فائز رہے۔اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ حسینہ واجد نے ان اہم رہنماؤں پر اچانک مقدمات درج کرکے انہیں پھانسیاں دینے کا سلسلہ کیوں شروع کردیا؟


اس کا جواب یہ ہے کہ سابق بھارتی وزیرِاعظم من موہن سنگھ نے بنگلہ دیش کا دورہ کرنے سے پہلے 30 جون2011 میں نئی دہلی میں بنگلہ دیشی اور بھارتی صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بنگلا دیش سے ہمارے تعلقات اچھے ہیں لیکن ہمیں اس چیز کا لحاظ رکھنا پڑے گا کہ بنگلا دیش کی کم از کم 25فیصد آبادی اعلانیہ طور پر اسلام پسندوں سے وابستہ ہے اور یہ لوگ بھارت کے مخالف اور پاکستان کے حق میں ہیں اس لئے بنگلہ دیش کا سیاسی منظرنامہ کسی وقت بھی تبدیل ہوسکتا ہے اس لئے ان رہنماؤں کو گرفت میں لانے کی ضرورت ہے اس کے بعد بھارت نے بنگلہ دیش کے اندر اپنی کارروائیاں اور مداخلت مزید تیز کردی اور بھارت کی ایماء پر ان معزز رہنماؤں کو گرفتار کرکے پھانسیاں دینے کا سلسلہ شروع کردیا۔


اگر ہم اس صورت حال کا جائزہ لیں تو ہم اس نتیجے پر پہنچتے ہیں کہ حسینہ واجد کی حکومت، بنگلہ دیش کی سب سے منظم اور بڑی سیاسی جماعت، جماعتِ اسلامی سمیت تمام مخالف قوتوں کو ختم کرنے کی کوشش کرکے خود کشی کرنے جارہی ہے۔ اگر ان قوتوں کو ملک کے سیاسی منظر نامے سے باہر رکھا گیا تو یقیناًان کے کارکن زیرِ زمین چلے جائیں گے اورایسی سرگرمیاں شروع کر سکتے ہیں جس سے پورا ملک عدمِ استحکام کا شکار ہوجائے گا۔ اس سلسلے میں بنگلہ دیش کی ایک اہم سیاسی جماعت، جماعت اسلامی کے ساتھ ساتھ تعصبانہ اور انتقامی رویہ حسینہ واجد کی حکومت کے خطرناک ایجنڈے کو ظاہر کرتا ہے۔سب سے پہلے بنگلہ دیش کے الیکشن کمیشن نے انتخابات میں حصہ لینے والی پارٹیوں کی فہرست سے جماعت اسلامی کا نام خارج کردیا ہے اور حکومت نے جماعتِ اسلامی کو کالعدم قرار دے کر اس کی سیاسی سرگرمیوں پر پابندی لگا دی ہے اور اب بنگلہ دیش کے لوگوں کے پاس اپنی بقاء کی جنگ لڑنے کے سوا کوئی آپشن نہیں اور اسی وجہ سے کچھ اسلام پسند حلقے پاکستان سے الحاق کی باتیں کررہے ہیں۔
بنگالی حکومت بنگلہ دیش میں آج جو نفرت کے بیچ بوئے جا رہی ہیں کل آنے والی نسلوں کو یہ فصل کاٹنا ہوگی۔ تب اس خونریزی کو روکنا مشکل ہو گا۔

مضمون نگار ایک قومی اخبار میں کالم لکھتی ہیں

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

Follow Us On Twitter