08
February

‘Yes’ to Criteria Based Approach Only!

Written By: Ghazala Yasmin Jalil

India and Pakistan have been seeking the membership to the Nuclear Suppliers Group (NSG), which is a group comprising 48 states that seeks to regulate nuclear trade with the view to prevent proliferation of nuclear weapons and related technology. Both India and Pakistan formally applied for the membership in 2016 which was denied. There were two meetings in 2016, one in June and one in November where the question of membership of non-Nuclear Non-Proliferation Treaty (NPT) states was debated. There has been intense lobbying from both countries to sway the votes in their favour. The NSG has mainly been divided among those who want to admit India immediately, creating an exception for it, and those who oppose membership on exceptional basis and instead argue for criteria-based approach to NSG membership.


The existing criteria for NSG membership requires states to be either a party to the NPT, or a member of the Nuclear-Weapon-Free-Zone (NWFZ), have comprehensive International Atomic Energy Agency (IAEA) safeguards, and have good non-proliferation standing as well as have the capacity to export nuclear items. One criterion on which both India and Pakistan clearly fail is that they are not party to the NPT.

 

Given the grossly discriminatory nature of the proposal many countries like China, Turkey, New Zealand, Brazil, Ireland, Austria, Belarus, Italy, Switzerland among others have raised objections to the proposed criteria developed by Grossi. The objections have ranged from procedural aspects such as lack of transparency and selective engagement but also over the clear absence of impartiality and objectivity of the proposal. Russia has also called for greater transparency and the need for due process of consultations.

The U.S. has led the campaign to welcome India to the club on exceptional basis. The U.S. also won an India-specific waiver from the NSG in 2008 for export of nuclear technologies for its nuclear energy programme. This was followed by civil nuclear deals with the U.S., France, the UK and most recently with Japan. In effect, the 2008 waiver was partly motivated by commercial gains. It had politico-strategic significance as well. It was part of U.S. grand design of building India up as a regional power and a strategic counterweight to China. India is central to the U.S. Pivot to Asia policy, forcefully promoting India’s case for NSG is, thus, part of the U.S. larger geostrategic design.


The U.S. gained the waiver for India on non-proliferation arguments that the regime would be strengthened with India’s membership. However, India has clearly disregarded the essential norms of non-proliferation by keeping its nuclear reactors outside IAEA safeguards, continuing to produce fissile materials, continuing to refuse signing the Comprehensive Nuclear-Test-Ban Treaty (CTBT), and continuing to pursue modernization of nuclear armament, including sea-based nuclear capability and development of thermonuclear weapons. This is a clear disregard for the non-proliferation norms.


In 2008, some members of the NSG did express concern about India expanding its nuclear arsenal by diverting the fissile materials for the production of nuclear weapons. There are also international reports on how India has expanded its nuclear arsenal after the NSG waiver. During a U.S. senate hearing, Senator Markey said, “Since 2008, when we also gave them the exemption, India has continued to produce fissile materials for its nuclear programme virtually unchecked. At that time Pakistan warned us that the deal would increase the chances of the nuclear arms race in South Asia”.


There has been growing support within NSG for developing criteria for non-NPT states. China has led the campaign for a criteria-based approach. In the November 2016 meeting in Vienna, China proposed a two-point approach for induction of new non-NPT states to the NSG. Step one would be to find a solution applicable to all non-NPT applicants through consultations. Step two would be to discuss admission of specific non-NPT countries into the NSG. Chinese Foreign Ministry spokesman said that Chinese stance was that ‘the solution should be non-discriminatory, applicable to all non-NPT members and must not damage the core value of the NSG as well as the authority, effectiveness and integrity of the NPT’. According to reports, during the Vienna meeting about a quarter of NSG members supported the criteria-based approach, while another quarter supported India’s sole entry into the group and the other half did not take any specific positions. Besides China, the countries that supported the criteria-based approach included Russia, Brazil, Austria, New Zealand, Ireland and Turkey.


Argentinian Ambassador Rafael Grossi, who was appointed Special Envoy by the NSG chairperson to develop a consensus regarding the entry issue, presented a nine-point proposal for NSG membership on December 6, 2016. There are a number of issues with these points which largely favour India and seem tailored to win membership for India while keeping Pakistan out of NSG.


One point of the proposed membership criteria is regarding the separation of current and future civilian and nuclear facilities. India has already notified a separation plan as part of the requirements of the 2008 NSG waiver. Pakistan has separate military and civilian facilities but has not formally notified its separation plan to IAEA. At present, if the current proposal is adopted, this point would make Pakistan technically ineligible for NSG membership.

 

In the unlikely event that Grossi’s criteria is adopted then India can claim that it has already taken all measures according to NSG guidelines, while leaving Pakistan at a disadvantage. The biggest problem with the latest proposed criteria is that it seems tailor-made to smuggle India in the group. It would not only be discriminatory but would also make a mockery of the non-proliferation regime and principles. This would be of grave concern for Pakistan which is lobbying hard for a non-discriminatory approach to the issue whereby it hopes to get admitted to the group alongside India.

The second point proposes that states must have signed IAEA’s Additional Protocol. This point also favours India since it has already signed the Additional Protocol. In principle Pakistan has no problem with signing the Additional Protocol but it would take some time which means that India would have advantage over this point as well. Another point is that the candidate must commit to not conduct any nuclear explosion in future. Both India and Pakistan are eligible as per this criterion if they undertake not to conduct nuclear tests in the future. In fact, Pakistan has time and again proposed to India simultaneous signature of the CTBT and even a regional test ban agreement. All such proposals have been rejected by India.


Another point is a commitment not to use any item transferred either directly or indirectly from an NSG Participating Government or any item derived from transferred items in unsafeguarded facilities or activities. Both India and Pakistan can easily fulfil this criterion.


The most interesting point is: “An understanding that due to the unique nature of the non-NPT party applications, [non-NPT applicant] would join a consensus of all other participating governments on the merits of any non-NPT party application.” The last clause implies that there is a pre-condition on India that it will not oppose Pakistan’s entry. This clause has the inbuilt assumption that India would be admitted first, while Pakistan may enter later when it fulfills the new criteria. It is imperative that a simultaneous rather than sequential consideration of the two countries’ applications should take place. Once India is a member, it would not let Pakistan become a member. The countries that are lobbying for India’s entry into the group could lobby to keep Pakistan out as well.


Given the grossly discriminatory nature of the proposal many countries like China, Turkey, New Zealand, Brazil, Ireland, Austria, Belarus, Italy, Switzerland among others have raised objections to the proposed criteria developed by Grossi. The objections have ranged from procedural aspects such as lack of transparency and selective engagement but also over the clear absence of impartiality and objectivity of the proposal. Russia has also called for greater transparency and the need for due process of consultations. Pakistan has also rejected the proposal. Pakistani Foreign Office spokesman Nafees Zakaria said: “This would be clearly discriminatory and would contribute nothing in terms of furthering the non-proliferation objectives of the NSG.” He further said that Pakistan continues to emphasize the imperative for a non-discriminatory criteria-based approach for the NSG membership of non-NPT states in a non-discriminatory manner which would also advance the objective of strategic stability in South Asia.


In the unlikely event that Grossi’s criteria is adopted then India can claim that it has already taken all measures according to NSG guidelines, while leaving Pakistan at a disadvantage. The biggest problem with the latest proposed criteria is that it seems tailor-made to smuggle India in the group. It would not only be discriminatory but would also make a mockery of the non-proliferation regime and principles. This would be of grave concern for Pakistan which is lobbying hard for a non-discriminatory approach to the issue whereby it hopes to get admitted to the group alongside India.


Even international analysts see these proposals as very flexible and in essence designed to accommodate India. Daryl Kimball of Arms Control Association in the U.S. says: “The formula outlined in Grossi’s draft note sets an extremely low bar on NSG membership and its wording is vague and open to wide interpretation. Furthermore, this formula would not require India to take any additional non-proliferation commitments beyond the steps to which it committed in September 2008 ahead of the NSG’s country-specific exemption for India for civil nuclear trade.”7


The Obama administration has tried its best to win NSG membership for India. However, it is now upto the new U.S. administration on how aggressively it wants to pursue the matter. The NSG Chair has postponed the scheduled December informal NSG meeting till February 2017. During this period, he intends to engage in further consultations in an effort to develop consensus. For the time being Pakistan has scored a small success by working with principal countries to prevent India’s membership on preferential basis. However, the struggle for impartial and equal treatment as an aspiring member for NSG is far from over for Pakistan.


The matter of India and Pakistan's membership of the NSG will remain a much debated and pressing one. For Pakistan, it would be prudent to be well prepared once the matter of membership is debated by the NSG. According to the latest proposal, the separation of civilian and military nuclear facilities and signing of the IAEA additional protocol are two main issues over which Pakistan’s candidature may be rejected. Pakistan should formally notify IAEA of its separation plan of civilian and nuclear facilities and signing and ratifying the additional protocol to the safeguards agreement so that Pakistan can enhance its credentials for NSG membership.

 

The writer is a Research Fellow at the Institute of Strategic Studies, Islamabad and focuses on nuclear and arms control & disarmament issues.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

4,7 Daryl Kimball, “NSG Membership Proposal Would Undermine Nonproliferation,” Arms Control Association, December 21, 2016, https://www.armscontrol.org/blog/ArmsControlNow/2016-12-21/NSG-Membership-Proposal-Would-Undermine-Nonproliferation

 
09
February

Reconfigurable Warships – A Step Towards Building Pakistan an Affordable Navy

Written By: Usman Ansari

A reconfigurable family of corvettes that can replace a range of less capable vessels and provide a more credible and robust defence during wartime will certainly allow Pakistan to efficiently and cost effectively safeguard CPEC and its EEZ as well as Extended Continental Shelf from aggression.

For Pakistan a powerful navy is an essential guarantor of its seaward defence and prosperity. Its economy relies overwhelmingly on the sea as some 90 percent by volume and 70 percent by value of its trade is seaborne. This will only increase in importance when the China-Pakistan Economic Corridor (CPEC) becomes fully operational. However, though balanced and capable, the navy is presently understrength, and cannot meet this requirement without expansion and considerable modernization. This may appear daunting as out of the three services the navy is the most expensive in terms of unit/running costs of its platforms, and expansion/modernization will require tens of billions of dollars. Achieving this critical requirement need not be a quandary though. A base-line multi-role platform (reconfigurable from Offshore Patrol Vessel to fully armed warship) to be operated by Pakistan Navy and Maritime Security Agency (MSA), to replace a range of vessels operating in territorial waters and Extended Economic Zone (EEZ), will deliver long term lower operational costs and guarantee a credible conventional deterrent against aggression.

reconfigwarship.jpgThe workhorses of the Pakistani fleet are the destroyers and frigates that operate on the outer periphery of the EEZ and beyond. However, Pakistan Navy and MSA also operate a larger number of smaller vessels that can be replaced with a single multi-role design to lower long-term operational costs and increase Pakistan’s defencive capabilities. When the need arose to maintain operational requirements within restricted budgets, some countries examined more affordable multi-role platforms (generally corvettes/OPVs or light frigates) to sustain numbers/presence in less threatening environments. Unfortunately, a true multi-role capability is expensive, leading to acquisition of lightly armed patrol vessels for fisheries’ protection, search and rescue, pollution control, EEZ policing, and other coastguard type duties. However, though more affordable to acquire/operate they have limited war fighting capability. Consequently, when purchased instead in place of fully capable warships, the navy will probably not be able to fulfil its main role of national defence due to being inadequately equipped. Under these circumstances a resource constrained nation essentially cannot 'afford' a ship that cannot fight, as necessity dictates every ship be able to defend itself and actively participate in wartime operations. This is especially true for Pakistan Navy, which faces threats having to undertake anti-submarine/anti-surface warfare in a heavy electronic warfare measures and high air/missile threat environment, (and expect saturation missile attacks under these conditions). This, therefore, requires an affordable design that can replace a range of vessels and perform the full spectrum of roles, but still be credibly armed for wartime.


‘Affordable’ can be defined in terms of acquisition or operational costs. Low acquisition costs generally mean higher through-life operational costs. The formula is generally reversed when considering high acquisition costs mainly due to the cost of advanced technologies that help reduce operational/through-life expenditure. An affordable warship today could be powered by an integrated electric or combined diesel propulsion system, be highly automated to reduce manning levels, and be equipped with sophisticated radar and other sensors in an integrated mast for air and surface search, acquisition and fire control. Weaponry would consist of a package to deal with the conceivable spectrum of threats, such a ship would be expected to act alone or in conjunction with other warships. However, the physical footprint of some weaponry and sensors could dictate the feasibility of their inclusion on smaller vessels such as corvettes, requiring dedicated space for mission dependent modules. Consequently such designs may have common baseline weaponry such as a medium calibre gun, remotely operated small calibre guns, a gun and missile CIWS, and possibly ASW rocket launchers. There can be a temptation to only rely on a gun CIWS for air defence, but they are not (and never should be) the first line of defence against air threats, especially not in the environment Pakistan Navy operates. ASW rockets like the RDC-32 can be used against unmanned underwater/swimmer delivery vehicles. Further weaponry, such as varying anti-ship missile loads, ASW torpedoes, and mines, can be installed as and when required. Advanced air/surface search radar, electro-optical sensors, and hull-mounted sonar, would be pre-requisites on a baseline design, with additional modular sensors such as active towed array sonar for example, installed as and when required. However, even with this ability to swap or leave out equipment, including the previous list of characteristics in a ship design will see its cost rapidly escalate, therefore making a low tech single role vessel more attractive despite its inferiority.


However, meeting the expense of a multi-role capability can be mitigated by the modular concept of retaining dedicated space for mission dependent modules, but choosing not to include systems until they become affordable under the 'fitted for but not with' concept. This allows for systems to be installed when they become available, but does not delay service entry of the vessel itself, therefore having a reduced impact on operational availability especially at the lower end of the threat spectrum. Such a design could also have a dedicated reconfigurable stern compartment able to accept mission dependent equipment. For example, in the OPV role for the MSA this may include an 11m RHIB; for MCMV missions it could include a dedicated counter mine module to locate, classify, and destroy mines; or an active towed array sonar package for ASW operations. This space could also accommodate anti-ship/land attack missiles if they could be raised and fired through the flightdeck. Additionally space could also be used for containerized mission payloads. Such flexibility would allow one baseline design, configurable per mission requirements, to replace a range of vessels usually tasked with patrol and defence of territorial, EEZ and adjoining waters.


Additionally, propulsion options can further reduce costs. Gas turbines have high fuel consumption and are thus expensive to run, contributing to high operational costs. However, integrated electric propulsion has the benefit of reducing operational costs due to the lower levels of maintenance required. It also frees up internal space for other use due to the ability to place the diesel or other engines/generators in alternative areas, and the electric motors thereby reducing the length of the drive shafts. Acquisition costs are high however, but propulsion costs can also be reduced if alternative fuels are considered. Research is ongoing into various possibilities including organic biofuels such as biodiesel or that derived from plants such as camelina, organic derived additives such as ethanol, or even breaking down sea water. Pakistan’s sugarcane industry can produce ethanol in quantity, and this plus other biofuel alternatives such as biodiesel must be explored. At the very least, diesels are an affordable, economical, and reliable propulsion option that considerably reduce operational costs.


Including or excluding helicopters (the most powerful and flexible weapons on any warship), can also reduce costs as they entail added expense of acquisition, maintenance, and operations through fuel and expandables, plus crew training. However, a modular design, allowing vessels to be built with or without a hangar will allow operations requiring longer range/endurance to be handled by vessels equipped with a hangar to embark a helicopter. Missions closer to shore could be handled by those only built with a flight deck to allow resupply, plus refuelling and rearming shore-based ASW helicopters. Alternatively, operating rotary UAVs could keep overall costs down, but still maintain a larger operational footprint.


Warship designers presently offer platforms configurable to customer requirements. However, these are commonly built to certain specifications, and generally not reconfigurable once in service. The Danish STANFLEX system achieves this to a large extent as it allows mission specific modules and equipment to be included as and when required. Newer (some as yet un-built) warship designs have incorporated such concepts to achieve multirole flexibility. Of note in this regard is the U.S. experience of the Littoral Combat Ship Programme and its efforts to achieve this level of reconfigurable flexibility. Despite the programme’s teething troubles the concept is still the way forward. Unfortunately, most western designs are generally quite large, and have excessively high acquisition and operational costs, especially for Pakistan which needs such vessels in volume. However, such a concept is still a realistic option for Pakistan, one that features the above characteristics that will enable it to be fully multi-role, able to undertake the full spectrum of peacetime patrol to ‘hot’ conflict operations. This may require a tailor made solution with maximum public/private industrial involvement, but lacking the necessary domestic design experience Pakistan’s naval planners will have to seek foreign co-operation, which, due to financial and geopolitical reality narrows the field down to China and Turkey. China is an increasingly capable warship designer and its Type-056 corvette/OPV could form the basis for such a design. As a source of affordable technology co-operation with China would make such a programme feasible.


Whereas navies can be convinced of the need to spend money to save it (and lives) though, high acquisition costs may potentially deter decision-makers, (who generally think short term). However, the prospect of affordably delivering a credible defence capability at lower operational cost, (plus a steady work for KSEW that ultimately benefits local industry and the national exchequer), is a powerful counter argument. A reconfigurable family of corvettes that can replace a range of less capable vessels and provide a more credible and robust defence during wartime will certainly allow Pakistan to efficiently and cost effectively safeguard CPEC and its EEZ as well as Extended Continental Shelf from aggression.

 

The writer is currently Chief Analyst for the British-based naval news monthly, Warships international Fleet Review. He is also Pakistan’s correspondent for the U.S.-based Defence News and has contributed in various international defence publications.
 
10
February

نیوکلیئر سپلائرز گروپ اور بھارتی سیاست

تحریر: مستنصر کلاسرا

1974میں بھارتی ایٹمی تجربے نے خاص طور پر جنوبی ایشیا میں ایک بے چینی پیدا کر دی تھی۔ یہ تجربہ اس خطے میں پاکستان اور بھارت کے درمیان ایٹمی ہتھیاروں کی پیداوار اور پھراس کی مسلسل بڑھوتری کی پہلی کڑی ثابت ہوا۔ یہ ایک ایسا وقت تھا جس نے ایک غیرایٹمی خطے کو ایٹمی دوڑ میں شامل کر دیا۔ بھارت کے اس اقدام نے اقوام عالم کو ایک ایسا ادارہ بنانے پر مجبور کر دیا جو مختلف ممالک کے درمیان ہونے والے ایٹمی کاروبار کی شناخت اور پرامن مقاصد کے نام پر پیدا ہونے والے شکوک وشبہات کو دور کر سکے۔ ان تمام عوامل کو مدنظر رکھتے ہوئے اقوام عالم ایک ادارہ بنانے میں کامیاب ہوئیں جسے نیوکلیئر سپلائیرز گروپ کا نام دیا گیا۔


نیوکلیئرسپلائرز گروپ کے رکن ممالک میں امریکہ، جاپان، چین، برطانیہ، ترکی اور کینیڈا سمیت کم و بیش 48ممالک شامل ہیں۔ سال 2016-17 کے لئے این ایس جی کی صدارت ریپبلک آف کوریا کے پاس ہے۔ اس گروپ میں شامل ہونے کے لئے چنداصول و ضوابط بنائے گئے ہیں جو درج ذیل ہیں۔
i۔ ایٹمی مواد ترسیل کرنے کی مکمل صلاحیت۔
ii۔ این ایس جی کی طرف سے دی گئی تمام ہدایات پر پابندی اور ان پر من و عن عمل کرنا۔
iii۔ ایک یا ایک سے زیادہ نیوکلیئرنان پرولیفریشن معاہدوں کا پابند ہونا۔
iv۔ مقامی برآمدات کے کنڑول سسٹم کی مکمل پاسداری این ایس جی کی مکمل ہدایات کے مطابق کرنا۔
v۔ مہلک ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ اور ان کی ترسیل کی مشینری کی بیرونی منتقلی کو روکنے کی عالمی کوششوں کی حمایت کرنا۔
یہ وہ چند بنیادی اصول و ضوابط ہیں جن کے تحت کوئی ملک اس گروپ کا رکن بن سکتا ہے۔ اب اگر کوئی ملک ان ضوابط کو بالائے طاق رکھ کر اس گروپ میں شامل ہونے کی خواہش کرے گا تو یہ ان ممالک کے ساتھ ناانصافی ہو گی جو ان ضوابط پر عمل کرنے کے بعد اس گروپ میں شامل ہوئے اور دوسرا اس گروپ کی اپنی شفافیت پر سوال اٹھنا شروع ہو جائیں گے۔
نیوکلیئرسپلائرزگروپ میں شامل ہونے کے لئے بہت ہی سادہ سے اصول و ضوابط وضع کئے گئے ہیں جن پر کوئی بھی ملک پورا ترنے کے بعد اس گروپ میں شامل ہو سکتا ہے۔ پاکستان اور بھارت کے اس گروپ میں شامل ہونے کی خواہش نے ایک عجیب سازشی فضا پیدا کر دی ہے۔ خاص طور پر 2008 میں بھارت کو دی گئی چند خاص رعایات کے بعد تو یہ صورتحال اور مسموم ہوتی جا رہی ہے۔ دیگر اسباب کے علاوہ سب سے اہم اور بڑی وجہ مغرب میں موجود کاروباری لابی ہے جو کہ مستقبل قریب میں بھارت کو ایک ابھرتی ہوئی معیشت کے طور پر دیکھ رہی ہے۔ دوسری وجہ رعایات دینے کی یہ بھی ہو سکتی ہے کہ جیسا کہ نیوکلیئرسپلائرزگروپ کا سب سے بڑا مقصد ایٹمی ٹیکنالوجی کی ترسیل ان ممالک میں روکنا ہے جو یا تو پہلے سے اسے استعمال کر رہے ہیں یا پھر بین الاقوامی ایٹمی تحفظ کے ادارے کے قوانین کے مطابق عمل نہیں کر رہے جن میں بھارت بھی شامل ہے۔ بھارت میں ایسے واقعات ہو چکے ہیں جن کو مدنظر رکھ کر یہ کہا جا سکتا ہے کہ ان کا ایٹمی مواد یا ری ایکٹر ابھی مکمل کنٹرول میں نہیں ہے۔


نئے بدلتے حالات اور عالمی برتری کی دوڑ میں امریکہ اور بھارت ایک دوسرے کے قریب آرہے ہیں۔ اس بات پر کسی کو شک نہیں کہ امریکہ اور بھارت سول نیوکلیئرڈیل کے بعد اب ایک دوسرے کے سٹریٹجیک پارٹنرز ہیں۔ نیوکلیئرسپلائرز گروپ میں شمولیت کے حوالے سے بھی بھارت کو امریکی پشت پناہی اور حمایت حاصل تھی۔ ایک اور بات جو یہاں قابل ذکر ہے کہ اگرچہ 11اور 12نومبر 2016کو این ایس جی کے حوالے سے ایک میٹنگ ہوئی تھی اور مختلف ممالک کی رائے کو اگر مدنظر رکھیں تو بھی بھارت کی مخالفت میں بہت سے ممالک تھے جن میں خاص طور پر آئرلینڈ، چین اور آسٹریا نے بھارت کے خلاف اپناموقف بدلنے سے انکار کیا اور اصول و ضوابط پر اترنے والے تمام ممالک کو اس میں شامل کرنے پر زور دیا۔ یہاں ایک اور بات قابل ذکر ہے کہ نومبر 2016میں این ایس جی کی میٹنگ سے پہلے تک اگر بھارت این ایس جیمیں شمولیت کے لئے بڑے ممالک کی حمایت حاصل کرنے میں ناکام رہا تو پھر اس نے دوبارہ سے اس گروپ میں شامل ہونے کی درخواست کیوں دے دی؟ شاید وہ اس لئے کہ نیوکلیئرسپلائرزگروپ میں شامل ہونے کی اپنی خواہش زندہ رکھ سکے۔ بالکل اسی طرح اب یہ وقت کی ضرورت ہے کہ پاکستان کو بھی اس گروپ میں شامل ہونے کی اپنی کوششوں کو تیز کرنا چاہئے۔


نیوکلیئرسپلائرزگروپ کے تناظر میں بھارت اور امریکہ کی جانب سے یہ تاثر بھی عام کرنے کی کوشش کی گئی کہ چین نے پاکستان کو این ایس جی میں شمولیت پر اُکسایا اور پاکستان تو جیسے نیوکلیئرگروپ میں شامل ہونا ہی نہیں چاہتا تھا۔ یہ تاثر پروپیگنڈے پر مبنی ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ پاکستان نے تو بھارت کی اس گروپ میں شمولیت سے پہلے ہی 2004میں
Export Control Act
پر عمل شروع کر دیا تھا۔ ایک اور تاثر جو پاکستان کے خلاف دیا گیا کہ پاکستان نے صرف بھارت کو دیکھتے ہوئے این ایس جی میں شمولیت کی درخواست دی یہ بھی سراسرجھوٹ کا ایک پلندا اور من گھڑت بات تھی کیونکہ این ایس جیمیں شمولیت کے قواعد و ضوابط کے مطابق پاکستان کو بتایا گیا کہ کوئی بھی
Non-NPT
ملک اس گروپ میں شامل ہونے کی اہلیت نہیں رکھتا لیکن جب بھارت کو امریکہ کی طرف سے مئی میں اس گروپ میں شامل ہونے کے لئے درخواست دینے کا کہا گیا تو پاکستان نے 6دنوں کے اندر اندر 300صفحات پر مشتمل ایک مکمل دستاویز بنا کر اس گروپ میں شامل ہونے کی درخواست دی۔ اس سے صاف ظاہر تھا کہ پاکستان نے اپنا ہوم ورک پہلے سے کیا ہوا تھا۔ ظاہر ہے بھارت اگر
Non-NPT
ہوتے ہوئے اس گروپ میں شامل ہونے کے لئے درخواست دے سکتا ہے جس کا اپنا نیوکلیئرپروگرام بھی بین الاقوامی ایٹمی ایجنسی کے قوانین کے مطابق محفوظ نہیں سمجھا جاتا تو پاکستان کے نیوکلیئر پروگرام کے بارے میں تو دنیا محفوظ اور موثر ہونے کا اعتراف بھی کرتی ہے تو پھر پاکستان یا دیگر ایسی اہلیت کے ممالک اس گروپ میں شامل ہونے کی خواہش کا اظہار کیوں نہیں کر سکتے۔ یہ تو اب بین لاقوامی کمیونٹی کو سوچنا ہو گا کہ چند ممالک کے ساتھ برتی گئی ناانصافی دنیا میں عدم توازن بڑھائے گی اور دنیا میں کشیدگی میں اضافے کا باعث بنے گی۔

نیوکلیئرسپلائرزگروپ میں شامل ہونے کے لئے بہت ہی سادہ سے اصول و ضوابط وضع کئے گئے ہیں جن پر کوئی بھی ملک پورا ترنے کے بعد اس گروپ میں شامل ہو سکتا ہے۔ پاکستان اور بھارت کے اس گروپ میں شامل ہونے کی خواہش نے ایک عجیب سازشی فضا پیدا کر دی ہے۔ خاص طور پر 2008 میں بھارت کو دی گئی چند خاص رعایات کے بعد تو یہ صورتحال اور مسموم ہوتی جا رہی ہے

*****

نومبر 2016میں این ایس جی کی میٹنگ سے پہلے تک اگر بھارت این ایس جیمیں شمولیت کے لئے بڑے ممالک کی حمایت حاصل کرنے میں ناکام رہا تو پھر اس نے دوبارہ سے اس گروپ میں شامل ہونے کی درخواست کیوں دے دی؟ شاید وہ اس لئے کہ نیوکلیئرسپلائرزگروپ میں شامل ہونے کی اپنی خواہش زندہ رکھ سکے۔ بالکل اسی طرح اب یہ وقت کی ضرورت ہے کہ پاکستان کو بھی اس گروپ میں شامل ہونے کی اپنی کوششوں کو تیز کرنا چاہئے۔

*****

 
09
September

بھارتی فوج اور دریدہ مقبوضہ کشمیر

تحریر: سِلوی لاسر

جونہی ہم سڑک کے ساتھ ساتھ مڑتی بل کھاتی گلیوں کی طرف قدم اٹھاتے تو اچانک خود کو پتھر کی دیواروں کے درمیان پاتے۔ جس سے پتہ چلتا کہ ان دیواروں سے ملحق اینٹوں سے بنی رہائش گاہیں ایستادہ ہیں۔ جوں جوں ہم بلندی پر جا رہے تھے خوبصورت پہاڑوں کے درمیان شام کے ملگجے میں ڈوبا آزاد جموں و کشمیر کا دارالحکومت، مظفر آباد ہماری آنکھوں کے سامنے آہستہ آہستہ ابھر رہا تھا۔ نیلگوں فضا میں اڑتی رنگ برنگی پتنگوں نے خوبصورت وادی کو اور بھی دلکش بنا دیا تھا۔ ایک چرواہا اپنی بھیڑوں کی رسی پکڑے گزر رہا تھا۔ ہم شہر میں موجود کشمیری مہاجر ین کے ایک کیمپ میں پہنچے یہاں اس طرح کے کل دس کیمپ قائم ہیں جہاں تقسیم ہندوستان کے بعد پاکستان اور بھارت کے درمیان پیدا ہونے جانے والے تنازعہ جموں کشمیر کے متاثرین آباد ہیں۔
اس وقت ریاست جموں و کشمیر کے ایک حصے پر بھارت قابض ہے جبکہ دوسرا حصہ جہاں ہم موجود تھے، آزاد جموں و کشمیر کہلاتا ہے جو پاکستان کے زیرکنٹرول ہے۔ دونوں حصوں کو 740 کلو میٹر طویل لائن آف کنٹرول جدا کرتی ہے۔


کہنے کو تو ہم ایک کیمپ میں تھے تاہم یہ شہر کی کسی معروف جگہ کی طرح لگتا تھا۔ حکومت آزادکشمیر نے ہر خاندان کو اپنا گھر تعمیر کرنے کے لئے جگہ الاٹ کی ہے۔ اب یہ ’’کیمپ‘‘ مستقل رہائش گاہوں کی شکل اختیار کرچکے ہیں اس لئے کہ کوئی نہیں جانتا کہ دونوں ممالک کے درمیان تنازعے کا یہ طوفان کب تھمے گا۔ ان گھروں کی بالکونیوں سے سارے شہر کا نظارہ کیا جاسکتا ہے۔ چھتوں پر رکھی ٹینکیاں اس بات کی نشاندہی کرتی ہیں کہ انہیں تازہ پانی اور دیگر سہولیات میسر ہیں۔ البتہ بعض جگہوں پر ترپالیں بھی نظر آتی ہیں جن پر یو این ایچ سی آر (یواین ہائی کمیشن برائے مہاجرین) کی مہر ثبت ہے جو ہمیں اس حقیقت سے آگاہ کرتی ہے کہ یہاں مقبوضہ کشمیر سے ہجرت کرنے والے 142 خاندان بستے ہیں۔
لائن آف کنٹرول پر بھاری تعداد میں افواج تعینات ہیں۔ صدر کلنٹن نے 2000 ء میں اسے دنیا کا خطرناک ترین مقام قراردیا تھا۔ بعد ازاں 2004ء میں بھارتی فوج نے یہاں دوہری خاردار تار لگا کر آس پاس بے شمار بارودی سرنگیں بچھا دیں اور اسے تھرمل کیمروں اورنقل و حرکت پر نظر رکھنے والے آلات اور الارم سے لیس کردیا۔ اس طرح اس متنازعہ پٹی کو عارضی بارڈر میں تبدیل کردیا گیا ہے۔ بظاہر تو یہ سرحدی لکیر ہے تاہم عالمی سطح پر اسے باقاعدہ بارڈر تسلیم نہیں کیا جاتا۔ بھارت نے 1948ء میں اقوام متحدہ کی منظور کردہ قرار داد پر کبھی عملدرآمد نہیں کیا جس کے مطابق جموں و کشمیر کے بھارت یا پاکستان سے الحاق کا فیصلہ صرف اور صرف ایک آزاد اور غیر جانبدار استصواب رائے سے ہی ممکن ہے۔

 

bhartifojaur.jpgہم نے 70 ڈگری کی عمودی پہاڑی پر چڑھنا جاری رکھا۔ ایک نوجوان سمیر سے ملاقات ہوئی جو کشمیری مہاجرین کی ایسوسی ایشن کا نائب صدر ہے۔ اس نے بتایا کہ آزاد جموں و کشمیر کی حکومت یہاں کے باسیوں کو یہ اراضی قیمتاََ مہیا کرنے کا پروگرام بنا رہی ہے تاکہ مہاجرین واقعی اسے اپنا گھر محسوس کریں۔ بات چیت کرتے ہوئے وہ مجھے ایک مکان میں لے گیا۔ جہاں ایک ایسا خاندان آباد تھا جو یہاں بسنے والے دوسرے خاندانوں کی طرح بہت سارے سانحات سے دوچار ہوچکا ہے۔ عمودی جگہ پر جس ٹیرس میں ہم داخل ہوئے تھے وہاں سے نشیب میں وادی اور پہاڑوں کا نظارہ انتہائی دلکش تھا۔ اپنے مخصوص دیدہ زیب کشمیری لباس میں ملبوس دو ننھی منی بچیاں ہمیں دیکھ رہی تھیں۔ ہمیں آتا دیکھ کر گھر کی خواتین نے خود کو باورچی خانے میں چھپا لیا۔


ایک مضبوط اور طویل القامت شخص، جس کے چہرے سے شفقت نمایاں تھی، نے ہمیں اپنے مہمان خانے میں آنے کی دعوت دی۔ بظاہر مسرور، اس نے سب سے پہلے مجھے اپنی ماں کے بارے میں بتایا جو دو ہفتے قبل ہی مقبوضہ کشمیر سے آئی تھی۔ اس نے بتایا کہ وہ پچھلے 24 سال سے اپنی ماں کا چہرہ نہیں دیکھ سکا تھا۔ اسی دوران گلبہار نے اپنی شلوار کا پائنچا اٹھایا اور اپنی مصنوعی ٹانگ میرے سامنے کردی۔ اداسی اس کے چہرے سے نمایاں ہونے لگی۔ ٹانگ کے مصنوعی حصے کواتار کر گھٹنے سے اوپر تک کٹی ٹانگ دکھاتے ہوئے بولا: ’’ لائن آف کنٹرول کو پار کرتے ہوئے میرا پاؤں بھارتی فوج کی بچھائی بارودی سرنگ پر آگیا تھا۔‘‘


یہ بارودی سرنگیں 1947، ساٹھ و ستر کی دہائی اور معرکہ کارگل کے دوران لائن آف کنٹرول کے ساتھ ساتھ بچھائی گئی تھیں۔ اکثر و بیشتر شہری اور کسان ان کا شکار بن جاتے ہیں۔ مون سون کی بارشوں اور بھارتی فوج کے پاس ریکارڈ نہ ہونے کے باعث بہت سی مائنز زمین کے اندر ہی ادھر ادھر سرک کر غائب ہوجاتی ہیں۔ صرف ضلع پونچھ میں 100 بچوں سمیت 550 افراد ان کی وجہ سے لقمۂ اجل بن چکے ہیں۔
Cluster Munition Monitor Landmine and
کی ایک رپورٹ کے مطابق تنازعے کے آغاز سے اب تک مائنز اور ای آر ڈبلیو یعنی جنگی آتشیں مواد سے 3184 لوگ متاثر ہوئے۔ ان میں 2004ء سے لائن آف کنٹرول کے بھارتی قبضے والے علاقوں میں مرنے والے 1079 افراد بھی شامل ہیں۔
’’نوے کی دہائی کے ابتدائی دنوں میں ، مَیں وہاں سے فرار ہوا۔‘‘ گلبہار نے ماضی کو کریدتے ہوئے بتایا۔دُکھ اور کرب سے اس کی آواز بمشکل نکل رہی تھی۔
’’ہمارے گروپ میں دس افراد تھے۔ میرے ساتھ میری بیوی اور ایک بچہ بھی تھا۔ دوسرے سات افراد کی حالت بھی مجھ سے مختلف نہ تھی۔ ہم نے ہر قیمت پر وہاں سے بھاگنا تھا۔ جونہی ہم نے لائن آف کنٹرول پار کی، میرا پاؤں ایک مائن پر آ گیا۔‘‘ گلہبار جو پہلی حالت سے باہر آ چکا تھا، ایک لمبی سانس بھرتے ہوئے پھر گویا ہوا:
’’بھارتی فوج میرا پیچھا کررہی تھی۔ میں گرفتار ہونے سے بچنے کے لئے اِدھر اُدھر چھپتا پھرتا رہا۔ کبھی دوستوں اور کبھی رشتہ داروں کے ہاں پناہ لیتا ۔ لیکن ہر مرتبہ انہیں میرے قدموں کے نشان مل جاتے۔ آخرکار میں نے محسوس کرلیا کہ اب میرے پاس مقبوضہ کشمیر کو چھوڑنے کے سوا کوئی راستہ نہیں بچا۔ میں اپنی ماں کو بھی الوداع نہ کہہ سکا۔ اسے کچھ خبر نہیں تھی کہ میں کہاں ہوں۔ میں اپنا سر چھپانے کے لئے ہاتھ پیر مار رہا تھا۔ ہمیں لائن آف کنٹرول پر پہنچنے میں دو دن لگے۔ جب میں مائن پھٹنے سے زخمی ہوا تو پاک فوج نے میری دیکھ بھال کی۔ انہوں نے اپنے ہسپتال میں میرا علاج معالجہ کیا اور پھر ہمیں مظفرآباد لے آئے۔‘‘ گلبہار کوئی لیڈر تو نہ تھا۔ اس کا جرم صرف اتنا تھا کہ اس نے 1990ء کے احتجاجی مظاہروں میں حصہ لیا تھا۔
اس کے برعکس سمیر جو ایک لیڈر تھا، اس نے بات آگے بڑھاتے ہوئے کہا: ’’ہمارا جرم صرف اتنا ہے کہ ہم نے حق خودرادیت کے لئے آواز اٹھائی۔ یہ اقوام متحدہ کی قرارداد ہے، یہ ہمارا حق ہے۔ اپنی آزادی کے لئے آواز بلند کرنا کوئی جرم نہیں! یہ ہر انسان کا بنیادی حق ہے۔ اس وقت، بھارتی فوج ہر گھر پر چھاپے مار رہی ہے، نوجوانوں کو زبردستی گرفتار کررہی ہے، لوگوں کو مار رہی ہے، انہیں جیلوں میں ڈال رہی ہے اور انہیں قتل کر رہی ہے!‘‘


گل بہار نے بتایا: ’’ آپ لیڈر ہیں یا نہیں، بھارتی فوج کے لئے یہ کوئی معنی نہیں رکھتا۔ ہم تحریک کا حصہ تھے اس لیے وہ ہمیں گرفتار کرنے کے لئے آ پہنچے۔‘‘
1987ء کے انتخابات میں بھارتی سرکار کی دھاندلی کے بعد مقبوضہ کشمیر کے مسلمانوں میں، جو آبادی کا 80 فی صد ہیں، غصے کی شدید لہر دوڑ گئی۔ وادی میں احتجاجی مظاہروں کا ایک سلسلہ شروع ہوگیا جسے بھارتی فوج نے بربریت سے کچل دیا۔ 20 جنوری 1990ء کو بھارتی فوج نے سری نگر کے گاوکدل پل پر مظاہرین پر گولیوں کی بوچھاڑ کردی۔یہ قتل عام کشمیری تاریخ میں سیاہ ترین باب کے طور پر محفوظ ہے۔


اس سانحے میں زندہ بچ جانے والوں کی داستانیں بڑی درناک ہیں۔ بھارتی فوجی زمین پر گرے زخمیوں کو قتل کر رہے تھے۔ جان بچانے کے لئے پل سے چھلانگ لگانے والوں کو ہمیشہ ہمیشہ کے لئے پانی نے اپنے دامن میں لے لیا۔ سرکاری اعداد و شمار میں صرف 28 افراد ہی قتل کے زمرے میں لکھے گئے۔ لیکن مختلف ذرائع کے مطابق جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 50 سے 287 تک تھی۔ اگلے مہینوں میں کشمیر میں غیرملکی ذرائع ابلاغ پر پابندی عائد کردی گئی۔ یہ آئندہ کئی برسوں تک کشمیریوں کے لئے تاریک اور ڈراؤنے خواب کی شروعات تھی۔ چھاپے، زبردستی گرفتاریاں، جبری طور پر لاپتہ اور غائب کرنے کے واقعات، تشدد۔۔۔۔ 1987ء اور 1995 ء کے دوران 76 ہزار افراد کو گرفتار کیا گیا جن میں سے صرف دو فی صد کو سزائیں سنائی گئیں۔ (عالمی کرائسز گروپ رپورٹ 2003
from the Past, Kashmir learning)
ایک نوجوان چائے لے آیا۔ ایک ننھی لڑکی بھی دروازے پر نمودار ہوئی۔ وہ دونوں گلہبار کا بیٹا اور بیٹی تھے۔ اس وقت گلبہار کے چھ بچے ہیں جن میں سے آخری پانچ مظفرآباد میں پیدا ہوئے۔


آج کل کتنی رقم سے گزراوقات ہورہی ہے؟ اس سوال پر گلہبار بولا: ’’حکومت پاکستان مہاجرین کو ماہانہ 15 سو روپے فی کس گزارہ الاونس دیتی ہے۔ آئی سی آر سی (انٹرنیشنل کمیٹی آف ریڈ کراس) کے ساتھ کام کرنے سے قبل میں مصنوعی اعضاء بنایا کرتا تھا لیکن تین سال پہلے یہ منصوبہ اپنے انجام کو پہنچ گیا اور اس وقت میرے پاس کوئی کام نہیں‘‘۔
چہرے کے تیکھے خدوخال والی ایک باوقار بوڑھی عورت کمرے میں داخل ہوئی۔ اُس نے دیوار کے ساتھ بچھے قالین پر بیٹھنے سے قبل میرا بوسہ لیا۔سترسالہ آمینہ، گلبہار کی والدہ ہیں جو دو ہفتے قبل ہی آزاد جموں و کشمیر پہنچی تھیں۔ انہوں نے پہلی بار یہ علاقہ دیکھا تھا۔ ’’24 سال سے میں اپنے بیٹے کو دیکھنے کے لئے ترس رہی تھی۔ جب بھی پاسپورٹ کے حصول کے لئے جاتی میری درخواست رد کردی جاتی۔ اس انکار کی وجہ صرف یہی تھی کہ متعلقہ حکام جانتے تھے کہ میرا بیٹا دوسری جانب (آزاد جمو ں و کشمیر میں) رہتاہے۔ میں نے بھی ہمت نہ ہاری۔ میں دوسری جگہ منتقل ہوگئی اور نئے پتے سے پاسپورٹ اور ویزے کے لئے درخواست دے ڈالی۔ اس دفعہ مجھے ویزہ مل گیا۔ ’’آپ گلبہار سے کس طرح ملیں؟ ‘‘ میں نے پوچھا۔
’’میں بذریعہ بس واہگہ کے راستے پاکستان پہنچی۔ میں نے فوراً اپنے بیٹے کو پہچان لیا۔‘‘ وہ بولی۔


گلبہار بولا: ’’ہمارے لئے یہ اتنا بڑا لمحہ تھا کہ میں بیان کرنے سے قاصر ہوں۔24 سال بعد‘ گلے ملے تو آنکھیں چھلکنا ایک قدرتی امر تھا۔‘‘
بوڑھی عورت بولی:’’ میرے پاس دو ماہ کا ویزہ ہے‘ لیکن میں ایک ماہ مزید قیام کے لئے درخواست ضرور دوں گی‘‘
تب وہ لائن آف کنٹرول کی دوسری طرف (مقبوضہ کشمیر) روانہ ہوجائیں گی اور ممکن ہے پھر کبھی لوٹ کر نہ آسکیں۔۔۔ ان کے رابطے کا واحد ذریعہ فون ہوگا۔ ہمیشہ کی طرح گلبہار ہی کو رابطہ کرنا پڑے گا۔ کیونکہ ’’صرف پاکستان سے ہی وہ کال کرسکتے ہیں۔بھارت سے یہاں کال نہیں ہوسکتی۔‘‘
چھوٹی بچی اپنی دادی ماں کے ساتھ چپکی بیٹھی تھی جو اسے صرف دو ہفتے قبل ہی ملی تھیں۔
’’آپ کا یہاں مستقل قیام کا ارادہ کیو ں نہیں‘‘؟ میرے سوال پر بوڑھی عورت مسکراتے ہوئے بولی:
’’وہاں جیل میں میرا ایک بیٹا بھی ہے۔ اس کے علاوہ میرے بھائی اور دوسرے رشتہ داربھی ہیں۔۔۔ میں یہاں نہیں رہ سکتی۔‘‘
آمینہ بھی دگر گوں حالات کی چکی سے گزر چکی ہیں۔ اُنہوں نے بتایا : ’’میں بیوہ ہوں‘ میرے تیسرے بیٹے کو بھارتی فوج نے مار ڈالا۔ زندگی کے چار سال میں نے چھپ چھپ کر گزارے۔ جب حالات ذرا بہتر ہوئے تو مجھے معلوم ہوا کہ میرا دوسرا بیٹا بھی جیل میں ہے۔ صرف ایک دفعہ میں اسے مل سکی۔ کئی دفعہ مجھ سے پوچھ گچھ کی گئی۔ میرا بیٹا (گلبہار) دوسری طرف (آزاد جمو ں وکشمیر) رہتا تھا! مجھے اپنے پوتے پوتیوں کے بارے میں کوئی خبر نہ تھی۔ اور یہ سب کیونکر ہوا؟ صرف اس لئے کہ ہم نے آزادی کامطالبہ کیا تھا۔‘‘
پوچھ گچھ کے دوران کیا کبھی آپ کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔؟


’’میں بیان نہیں کرسکتی۔۔۔ میرے پاس الفاظ نہیں۔۔۔‘‘ گلبہار ماں کے بازؤں کو دکھاتے ہوئے بولا: ’’دیکھئے ان کے بازوؤں کا ایک ٹکڑا لٹک رہا ہے‘ مسل پوری طرح سے الگ ہوچکا ہے۔‘‘
ماں بولی: ’’وہ گلبہار کی جگہ کے بارے میں جاننا چاہتے تھے۔وہ بار بار یہی سوال دہراتے کہ گلبہار کہاں چھپا ہے۔ میں نے اُنہیں بتایا کہ مجھے اُ س کے بارے میں کچھ علم نہیں۔ بھارتی فوج کو کسی کا پاس نہیں تھا۔انہوں نے کھڑکیاں توڑ دیں۔ دروازوں کواکھاڑ دیا۔ حتیٰ کہ وہ عمر یا کسی اور چیز کا لحاظ رکھے بغیر بچوں اور عورتوں کو مارتے پیٹتے۔ بھارتی فوج کو ماؤں کی پروا تھی نہ بہنوں کی۔۔۔ پوچھ گچھ کے دوران انہوں نے ہم سے ایساسلوک روا رکھا کہ جیسے کہ ہم مرد ہوں۔ایک دن وہ ہماری ایک ہمسائی کو گرفتار کرکے لے گئے‘ ہم نے اُسے دوبارہ کبھی نہیں دیکھا۔ یہ 1994-95 کی بات ہے۔ میں دنیا کو یہ بات بتانا چاہتی ہوں کہ جیساہم پاکستان میں محسوس کرتے ہیں‘ کاش ہم دوسری طرف بھی ایسا ہی محسوس کرسکتے! اگرچہ بھارت جمہوریت کا دعویٰ کرتا ہے مگر وہاں ایسا ہونا ناممکن ہے۔۔۔ ’’صرف آزادی‘‘ اُس نے فیصلہ کن انداز میں کہا۔


’’دی گارڈین‘‘ میں شائع ہونے والی وکی لیکس کی منکشف شدہ رپورٹ کے مطابق2005ء میں آئی سی آر سی نے نئی دہلی میں موجودامریکی سفارتکاروں کو مقبوضہ کشمیر میں بھارتی پولیس اور سکیورٹی فورسز کی جانب سے تشدد کے بڑھتے ہوئے واقعات اور پابندِ سلاسل کئے جانے والے افراد کے سوچے سمجھے قتل کے بارے میں آگاہ کیا تھا۔ مگر انہوں نے اس سلسلے میں چپ سادھے رکھی۔ گارڈین ہی کے مطابق2001 ء اور2004ء میں آئی سی آر سی کی ٹیموں نے مقبوضہ جموں و کشمیر کے قید خانوں کا دورہ کیا اور 1296 قیدیوں سے علیحدگی میں ملاقات کی۔ ایسا لگتا تھا کہ171 قیدیوں سے ناروا سلوک کیا گیا جبکہ681کو معلومات اگلوانے کے چکر میں تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔ (ان میں بہت سے کارکن نہ تھے)۔ قتل اور جبری غائب کرنے کے واقعات بھی بہت بڑی تعدادمیں ہیں۔


38سالہ سمیر بھی دل کی بھڑاس نکالنا چاہتا تھا۔ وہ رنجیدہ دکھائی دے رہا تھا۔ وہ کیمپ میں نہیں رہتا بلکہ ایک جاب کے سلسلے میں شہر میں مقیم ہے۔ اُس نے بتایا کہ ’’میں مہاجرین کی سماجی اعانت کا نائب صدر ہوں یہاں مقیم بہت سے افراد کی طرح میں بھی90 کی دہائی میں یہاں پہنچا۔ اُس وقت میری عمر19 سال تھی۔ میں بھی مقبوضہ جموں وکشمیر سے ہوں۔ میں سری نگرمیں رہتا تھا اور تحریکِ آزادی کے آغاز کے وقت میں سٹوڈنٹ لیڈر تھا۔ اس کے فوراََ بعد بھارتی حکام نے ہمارے گھروں پر چھاپے مار کر گرفتاریاں شروع کردیں۔ تمام رہنماء اور ان کے ساتھیوں کو گرفتار کرلیا گیا۔ جب ہم نے پہلے اجتماع کا انعقاد کیا، تو میں وادی کا انتہائی مطلوب شخص بن گیا۔ تین دفعہ میں ان کے ہتھے چڑھتے چڑھتے بچا۔ آخر میں پاکستان (آزاد کشمیر) جانے کے سوامیرے پاس کوئی راستہ نہ بچا تھا۔


وہ انسان نہ تھے، وہ مجھے قتل کردیتے یا پھر تشدد کا نشانہ بناتے۔ ہر روزسڑکوں پر ہمیں پندرہ سے بیس لاشیں ملتیں۔۔۔۔ کیوں؟ ۔۔۔ ’’ ادھر آپ تقریر کریں، ادھر وہ آپ کا نام نوٹ کرلیتے۔ وہ ہم سب کو جانتے تھے، گرفتار کرلیتے ، پہاڑوں پر لے جا کر قتل کردیتے اور لاش سڑک پر پھینک دیتے۔‘‘
’’ یہ تمام ہتھکنڈے ہمارا راستہ تو نہ روک سکے البتہ ہمارے دلوں میں بھارتی فوج کے خلاف مزید نفرت اور حق خودارادیت کے لئے لڑ مرنے کے ہمارے جذبے میں اضافے کا باعث ضرور بنے۔ ہم اپنے بنیادی حقوق کے حصول تک اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے۔ انہوں نے ہمارے گھر بار تباہ کردیئے، ہماری خواتین سے بدسلوکی کی اور ہمیں قتل کررہے ہیں۔۔۔ ظلم و بربریت نے ہمارے جذبوں کو اور بھی بڑھا دیا ہے۔ پچیس سال سے ہم جدوجہد کررہے ہیں، اگر ہم اپنی منزل حاصل نہ کرسکے، تو ہمارے بچے ہمارے مشن کو جاری رکھیں گے۔ ہمارے خاندانوں پر انہوں نے جو ظلم و ستم ڈھایا ہے۔ اسے ہم بھلا نہ پائیں گے اور نہ انہیں معاف کریں گے۔ ‘‘


’’پاکستان کے لوگوں نے گرمجوشی سے ہمیں گلے لگایا۔ جب گلہبار بارودی سرنگ سے زخمی ہوا، پاک فوج نے اپنے ہسپتال میں اچھی طرح اس کی دیکھ بھال کی۔ ایک مرتبہ پھر میں پاکستان کے لوگوں، پاکستان آرمی اور ہماری فلاح و بہبود اور بحالی کے لئے کام کرنے والے اداروں کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ میرے بچے حکومت پاکستان کے تعمیر کردہ سکول میں تعلیم حاصل کررہے ہیں۔ ہم وہاں ماہانہ صرف سو روپے کی علامتی فیس ادا کرتے ہیں جبکہ دوسرے بچوں کی فیس پانچ ہزار روپے ہے۔ تدریس کا معیار نہایت عمدہ ہے۔ ‘‘
’’بھارت میں ہندوؤں اور مسلمانوں سے یکساں سلوک رواں نہیں رکھا جاتا اور دنیا بھر میں جمہوریت کا دوسرا چہرہ دکھایا جاتا ہے۔ لیڈرز اپنے وعدے پورے نہیں کرتے، ہمارے حق خودارادیت پر اقوام متحدہ اپنی ہی قرارداد پر عملدرآمد نہیں کروا سکی ہے۔ وہ معصوم لوگوں کو مار رہے ہیں۔ یہ دہشت گردی ہے! ہم یہاں (آزاد کشمیرمیں) آزادی سے گھوم پھر سکتے ہیں، یہی ہم چاہتے ہیں۔ کوئی ہمارا تعاقب نہیں کرتا۔ ہم آزاد ہیں!‘‘


میں نے مظفر آباد کے دوسرے کیمپوں میں بھی اسی طرح کی داستانیں سنیں۔ کسی کی بہن کھو گئی، کسی کابھائی یا ماں نہ ملی۔ کسی کا باپ موت کے گھاٹ اتار دیا گیا جیسا کہ 33 سالہ یاسمین کے والد کے ساتھ ہوا۔ 90 کی دہائی میں اس نے اپنے والدین کے ساتھ مقبوضہ جموں و کشمیر سے آزاد کشمیر کے لئے رخت سفر باندھا۔ اُس نے بتایا: ’’ہم سری نگر کے قریب رہتے تھے۔ میرے والد ٹیلر ماسٹر تھے۔ بھارتی فوج نے میرے والد اور بھائیوں کو گرفتار کر لیا اور کئی روز تک ان سے پوچھ گچھ کرتے رہے۔ ہم شام کے بعد گھروں سے باہر نہیں نکل سکتے تھے۔ ہم نے سکول بھی اس وجہ سے چھوڑ دیا کیونکہ ہمارے والدین کو ڈر تھا کہ کہیں بھارتی فوج ہمیں پکڑ کر لاپتہ نہ کردے۔ایک رات، ہمیں ہنگامی طور پر اپنا گھر بار چھوڑنا پڑا۔ ہمارے پاس کچھ بھی نہ تھا حتی کہ سویٹر بھی نہ پہن سکے۔ ہمیں پتہ چلا تھا کہ بھارتی فوج ہمارے گھر پر ریڈ کی تیاری کررہی ہے۔ اس وقت میں سات سال کی تھی۔ ہم دو دن پیدل چلتے رہے۔ جب ہم کنٹرول لائن کی دوسری طرف اٹھمقام پہنچے، ایک خاندان نے ہمیں گلے لگایا۔ ہم نے وہاں ایک سال تک قیام کیا۔ دوسری طرف سے بھارتی فوج مسلسل فائرنگ کرتی رہتی۔ ایک روز ایک شیل میرے والد کو لگا اور وہ شہید ہوگئے۔‘‘
گلبہار اور اُس کے خاندان سے باتیں تو اتنی سنسنی خیز اور دلچسپ تھیں کہ مجھے احساس تک نہ رہا کہ رات کافی ڈھل چکی ہے۔ اُٹھ کر باہر دیکھا تو نیچے وادی اور سامنے پہاڑوں پر روشنی کے قمقمے جگمگا رہے تھے۔ یوں لگ رہا تھا جیسے ہزاروں ستارے آسمان پر چمک رہے ہوں۔ آج یہ بات سچ ثابت ہو رہی تھی کہ کشمیر کرۂ ارض کی خوبصورت وادیوں میں سے ایک وادی ہے گویا جنتِ ارضی ہے۔


افسوس! یہ تنازعہ اب تک90 ہزار انسانی جانیں لے چکا ہے۔ اَن گنت انسانی حقوق پامال ہوچکے ہیں۔ مقبوضہ کشمیر اور بے شمار مسلمانوں کا کوئی اتا پتا نہیں اُن کو آسمان کھاگیا یا زمین نگل گئی۔ کوئی نہیں جانتا۔ اے پی ڈی پی کی ایک رپورٹ کے مطابق آٹھ سے 10 ہزار نفوس صرف 1989ء تا2016ء کی دہائیوں میں غائب ہوئے کشمیریوں میں زیادہ تر تعداد نوجوانوں کی تھی۔ حالیہ برسوں میں گوکہ صورتِ حال بہترہوئی ہے لیکن بھارتی افواج کے مسلسل حملوں نے بے چارے کشمیریوں کی زندگی اجیرن کررکھی ہے۔ اس سے قبل یہاں 300 کے لگ بھگ عقوبت خانے تھے۔ ان میں 13تو رسوائے زمانہ تھے جنہیں اب دوبارہ کھول دیا گیا ہے۔ کشمیری نوجوانوں پر یہاں کس طرح کا انسانیت سوز سلوک روا رکھا جاتا تھا۔ سُن کر روح کانپ اُٹھتی ہے۔ ان عقوبت خانوں کے نام یکے بعد دیگرے ’’کارگو، پاپا2-اورہری نارا‘‘ بتائے جاتے ہیں۔ ’’کارگو‘‘ تو سائبر پولیس سٹیشن میں بدل دیا گیا ہے۔’’پاپا2-‘‘ مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیر کی سرکاری رہائش گاہ میں انسانیت سوز مظالم کی داستانیں رقم کررہا ہے۔2003ء سے لے کر اب تک نئی دہلی اور اسلام آباد کے درمیان فائر بندی پر عمل کیا جارہا ہے۔ لیکن اس کے باوجود مقبوضہ کشمیر میں سات اضلاع ایسے ہیں جو مستقل کرفیو کی زد میں ہیں۔


2005 ء میں دوستی بس کا آغاز ہوا جس نے بچھڑے ہوئے خاندانوں کو ملانا شروع کیا۔ یہ ہفتے میں ایک دفعہ پیر کے روز چکوٹھی کے راستے مظفرآباد اور سری نگر آتی جاتی ہے۔ لیکن اس میں صرف وہی مسافر سفر کرسکتے ہیں جن کے خاندان 1947ء‘1965ء اور1971ء کی جنگوں کے دوران بچھڑ گئے تھے۔ اس کے علاوہ خاندانوں کو اول تو بھارتی سرکار پاسپورٹ اور ویزہ ہی نہیں دیتی ۔ اگر چار و ناچار مل جائے تو کشمیر بس کی بجائے اُنہیں واہگہ کے راستے امرتسر سے لاہور کا سفر کرنا پڑتا ہے۔
اب بھی وادیِ کشمیر بہت بڑی خوفناک جگہ ہے جہاں دنیا کی سب سے بڑی فوج کشی کی گئی ہے۔ سات لاکھ باقاعدہ اور پیرا ملٹری افواج صرف ایک چھوٹی سی مقبوضہ وادی میں‘ حد ہے ! ابھی حال ہی میں فروری 2016 ء کے وسط میں بھارتی فوج نے دو کشمیری طالب علموں کو مظاہرے کے دوران قتل کردیا۔ ان میں22 سالہ دوشیزہ شائستہ حمید اور19 سالہ دانش فاروق میر شامل تھے۔ شائستہ حمید تو مظاہرے میں شریک بھی نہیں تھی۔ وہ اپنے گھر کی بالکونی میں کھڑی تھی کہ اچانک اُسے گولی آن لگی اور وہ موقع پر جاں بحق ہوگئی۔ پوری مقبوضہ وادی میں غصے کی لہر دوڑ گئی۔ اُن کے جنازے میں ہزاروں کشمیریوں نے شرکت کی۔ بھارتی فوج نے اس کا جواب کرفیو کے ایک نہ ختم ہونے والے سلسلے کے ساتھ دیا۔
ہر سال 5 فروری کو پاکستان یومِ یکجہتی کشمیر مناتا ہے۔ جسے مختصراً یومِ کشمیر بھی کہا جاتا ہے۔ پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف نے حال ہی میں اعلان کیا کہ مسئلہ کشمیر کو ہر طرح کی عالمی و سفارتی سطح پر اُجاگر کیا جائے گا۔ نواز شریف کے مشیرِ امورِ خارجہ نے بھی اقوامِ عالم پر زور دیا کہ کشمیر اقوامِ متحدہ کی منظور کردہ قراردادوں پر عملدرآمد کرانے کے لئے وہ اپنا بھرپور کردار ادا کریں۔


اب تک ہزاروں خاندان ایک دوسرے سے بچھڑ چکے ہیں۔ آج جب کہ یہ رپورٹ شائع ہو کر آپ کے ہاتھوں میں ہے۔ مقبوضہ کشمیر پچھلے 50 دن سے ایک بار پھر سخت ترین دباؤ میں ہے۔ اس کی وجہ سے بھارتی فوج کے ہاتھوں کشمیریوں کے انتہائی مقبول نوجوان رہنما برہان وانی کی شہادت ہے۔17 اگست تک بھارتی بربریت66 افراد کی جان لے چکی ہے۔4500 نہتے شہری زخمی ہو چکے ہیں جن میں سیکڑوں ایسے ہیں جو اپنی آنکھوں سے ہاتھ دھوچکے ہیں‘ بھارتی فوج ایسی رائفلوں اور گولیوں کا استعمال کررہی ہے۔ جس کے چھرے آنکھوں اورچہرے میں پیوست ہو کر مستقل اندھا کر دیتے ہیں۔

مضمون نگار نے فرنچ یونیورسٹی پیرس سے پی ایچ ڈی کی۔ وہ گزشتہ 16برس سے صحافت کے شعبے سے وابستہ ہیں اور

Societe Asiatique

کی ممبر بھی ہیں۔
 

رکھنا پاکستان سلامت


رکھنا پاکستان سلامت یااللہ!
رکھنا پاکستان سلامت یااللہ!
پاک وطن کی شان سلامت یااللہ

سندھ، خیبر، پنجاب رہے مہران آباد
تیرے کرم سے گلگت بلتستان آباد
دھرتی کی پہچان سلامت یااللہ
رکھنا پاکستان سلامت یااللہ!

دیس کے شہروں قصبوں صحراؤں کی خیر
اِس کے پہاڑوں ، وادیوں ، دریاؤں کی خیر
گلشن کی ہر آن سلامت یااللہ
رکھنا پاکستان سلامت یااللہ

مٹّی سونا کرنے والے شاد رہیں
محنت کش مزدُور سدا آباد رہیں
رکھ میرے دہقان سلامت یااللہ
پاک وطن کی شان سلامت یااللہ
رکھنا پاکستان سلامت یااللہ

 

ڈاکٹر اختر شمار

اب تک ہزاروں خاندان ایک دوسرے سے بچھڑ چکے ہیں۔ آج جب کہ یہ رپورٹ شائع ہو کر آپ کے ہاتھوں میں ہے۔ مقبوضہ کشمیر پچھلے 50 دن سے ایک بار پھر سخت ترین دباؤ میں ہے۔ اس کی وجہ بھارتی فوج کے ہاتھوں کشمیریوں کے انتہائی مقبول نوجوان رہنما برہان وانی کی شہادت ہے۔17 اگست تک بھارتی بربریت66 افراد کی جان لے چکی ہے۔4500 نہتے شہری زخمی ہو چکے ہیں جن میں سیکڑوں ایسے ہیں جو اپنی آنکھوں سے ہاتھ دھوچکے ہیں‘ بھارتی فوج ایسی رائفلوں اور گولیوں کا استعمال کررہی ہے۔ جس کے چھرے آنکھوں اورچہرے میں پیوست ہو کر مستقل اندھا کر دیتے ہیں۔

*****

تب وہ لائن آف کنٹرول کی دوسری طرف (مقبوضہ کشمیر) روانہ ہوجائیں گی اور ممکن ہے پھر کبھی لوٹ کر نہ آسکیں۔۔۔ ان کے رابطے کا واحد ذریعہ فون ہوگا۔ ہمیشہ کی طرح گلبہار ہی کو رابطہ کرنا پڑے گا۔ کیونکہ ’’صرف پاکستان سے ہی وہ کال کرسکتے ہیں۔بھارت سے یہاں کال نہیں ہوسکتی۔

*****

بھارتی فوج کو کسی کا پاس نہیں تھا۔انہوں نے کھڑکیاں توڑ دیں۔ دروازوں کواکھاڑ دیا۔ حتیٰ کہ وہ عمر یا کسی اور چیز کا لحاظ رکھے بغیر بچوں اور عورتوں کو مارتے پیٹتے۔ بھارتی فوج کو ماؤں کی پروا تھی نہ بہنوں کی۔۔۔ پوچھ گچھ کے دوران انہوں نے ہم سے ایساسلوک روا رکھا کہ جیسے کہ ہم مرد ہوں۔ایک دن وہ ہماری ایک ہمسائی کو گرفتار کرکے لے گئے‘ ہم نے اُسے دوبارہ کبھی نہیں دیکھا۔

*****

’’پاکستان کے لوگوں نے گرمجوشی سے ہمیں گلے لگایا۔ جب گلہبار بارودی سرنگ سے زخمی ہوا، پاک فوج نے اپنے ہسپتال میں اچھی طرح اس کی دیکھ بھال کی۔ ایک مرتبہ پھر میں پاکستان کے لوگوں، پاکستان آرمی اور ہماری فلاح و بہبود اور بحالی کے لئے کام کرنے والے اداروں کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ میرے بچے حکومت پاکستان کے تعمیر کردہ سکول میں تعلیم حاصل کررہے ہیں۔ ہم وہاں ماہانہ صرف سو روپے کی علامتی فیس ادا کرتے ہیں جبکہ دوسرے بچوں کی فیس پانچ ہزار روپے ہے۔ تدریس کا معیار نہایت عمدہ ہے۔‘‘

*****

’’ یہ تمام ہتھکنڈے ہمارا راستہ تو نہ روک سکے البتہ ہمارے دلوں میں بھارتی فوج کے خلاف مزید نفرت اور حق خودارادیت کے لئے لڑ مرنے کے ہمارے جذبے میں اضافے کا باعث ضرور بنے۔ ہم اپنے بنیادی حقوق کے حصول تک اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے۔ انہوں نے ہمارے گھر بار تباہ کردیئے، ہماری خواتین سے بدسلوکی کی اور ہمیں قتل کررہے ہیں۔۔۔ ظلم و بربریت نے ہمارے جذبوں کو اور بھی بڑھا دیا ہے۔ پچیس سال سے ہم جدوجہد کررہے ہیں، اگر ہم اپنی منزل حاصل نہ کرسکے، تو ہمارے بچے ہمارے مشن کو جاری رکھیں گے۔ ہمارے خاندانوں پر انہوں نے جو ظلم و ستم ڈھایا ہے۔ اسے ہم بھلا نہ پائیں گے اور نہ انہیں معاف کریں گے۔‘‘

*****

تب وہ لائن آف کنٹرول کی دوسری طرف (مقبوضہ کشمیر) روانہ ہوجائیں گی اور ممکن ہے پھر کبھی لوٹ کر نہ آسکیں۔۔۔ ان کے رابطے کا واحد ذریعہ فون ہوگا۔ ہمیشہ کی طرح گلبہار ہی کو رابطہ کرنا پڑے گا۔ کیونکہ ’’صرف پاکستان سے ہی وہ کال کرسکتے ہیں۔بھارت سے یہاں کال نہیں ہوسکتی۔‘‘

*****

اس سانحے میں زندہ بچ جانے والوں کی داستانیں بڑی درناک ہیں۔ بھارتی فوجی زمین پر گرے زخمیوں کو قتل کر رہے تھے۔ جان بچانے کے لئے پل سے چھلانگ لگانے والوں کو ہمیشہ ہمیشہ کے لئے پانی نے اپنے دامن میں لے لیا۔ سرکاری اعداد و شمار میں صرف 28 افراد ہی قتل کے زمرے میں لکھے گئے۔ لیکن مختلف ذرائع کے مطابق جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 50 سے 287 تک تھی۔ اگلے مہینوں میں کشمیر میں غیرملکی ذرائع ابلاغ پر پابندی عائد کردی گئی۔

*****

 

Follow Us On Twitter