06
December

Rethinking National Security

Written By: Rasul Bakhsh Raees


The post-9/11 developments in the regional and on global level have negatively impacted Pakistan’s national security. Besides the debris of the unending Afghan war falling on Pakistan in the form of religious extremism, rise of militant groups and millions of refugees, we have been witnessing a gradual strategic shift in American policy in the region away from Pakistan towards India. In the background of war in Afghanistan, an evolving strategic partnership between India and U.S., whatever its justification, has created a negative effect on Pakistan’s security.

On a broader level, the geopolitical location of a country and regional dynamics of security, peace or war constitute the fundamental elements of national security. In this sense, geopolitical conditions can be benign or malignant, or these might change over time for good or worse depending on changes within the regional states or transformation of their ties from hostility to friendship and cooperation or from good neighbourliness to hostility.


Other equally broad set of influences on national security spring from the internal features of the state — the state-society relations, nature of politics, economy, social cohesion or slow integration, and most importantly the character of the political elites and their commitment and capacity to ensure political stability, order and satisfaction of the populations. Failure in governance and declining capacities of the state to deliver necessary services to the people in developing countries has often produced dangerous ethnic, religious and extremist movements.

rethinknationsec.jpgWith this brief preface, let us consider the basic elements of national security confronting Pakistan in the light of prevailing geopolitical conditions. Much of the internal national security threats and problems have connections to the geopolitical order both as proxy intervention by adversarial powers and the non-state actors. But at the same time, the state and society have accumulated problems of ungovernability – failure of the ruling elites to establish rule of law and justice or pursue consistent development policies to raise the standard of living of the common people. Therefore, we need to look at the elements of national security as an integrated set of factors, rather than see them in fragments or parts.


There are two external elements of geopolitics of Pakistan that constitute a constant factor in Pakistan’s national security thinking. First, it is north-western borderlands stretching from Chitral in Khyber Pakhtunkhwa to the border with Iran on the Arabian Sea. The peace and order along this long border and the neutrality of Afghanistan or its ‘buffer’ status had prompted the British colonialists to secure their imperial interests in British India. Pakistan inherited this geopolitical order without the power, influence or resources of the British global position. Worse, Pakistan, since independence, has seen the threats from the western border and beyond grow more complex than the British had faced. For instance, never did the British confront the Russians in Afghanistan; just the fear of it coming this way had prompted them to pursue ‘forward’ policy and wage self-destructive wars against Afghanistan. Pakistan has seen the predecessor of Russia, the Soviet Union, invade Afghanistan and stay in occupation for a decade. That event alone changed the fundamental dynamics of the conventional geopolitical order of Afghanistan and Pakistan. The millions of refugees, the rise of Mujahideen resistance, the American-led counter intervention of which our country was a frontline state and the mobilisation of Muslim youth by invoking sentiments of Jihad are the major factors causing the change.
In the 1980s, Pakistani State and society got sucked in to the Soviet-Afghan war in which imperatives of national security, Cold War politics and dangerous alliances with the non-state actors played a great role, leaving great negative imprint on the internal national security. As Pakistan was coming to grips with the post-Cold War regional realities, a new cycle of war — a third in row — began in Afghanistan with American-led military intervention in 2001. The war is now entering its 16th year, but the victory for the U.S. and its allies remains elusive.


Afghanistan has been, and will be, a strategic backyard of Pakistan. Its insecurity, instability, and wars have a direct impact on Pakistan’s stability and security. The militant groups on both sides of the borders as well as from Central Asia and the Middle East have found the empty spaces of Afghanistan a good refuge to hide and plan terrorist acts against Pakistan and other states/targets. Some of these terrorist groups have become proxy actors for hostile powers like India to destabilise Pakistan. The TTP leaders and militants are operating from sanctuaries within Afghanistan. Similarly, Baloch militants engaged in terrorist activities and those involved in sectarian targeting in Pakistan are also based in Afghanistan. Either the Kabul government is not in a position to control all its territories that allows anti-Pakistan militants to use its space or certain elements within its fragmented power structure are sponsoring these groups against Pakistan. In either case, threat from across the Western borders is real and has created a situation of two-front war with India.


The post-9/11 developments in the regional and on global level have negatively impacted Pakistan’s national security. Besides the debris of the unending Afghan war falling on Pakistan in the form of religious extremism, rise of militant groups and millions of refugees, we have been witnessing a gradual strategic shift in American policy in the region away from Pakistan towards India. In the background of war in Afghanistan, an evolving strategic partnership between India and U.S., whatever its justification, has created a negative effect on Pakistan’s security. The U.S. has encouraged India to play a much bigger role in Afghanistan in the name of trade and development assistance. India’s traditional influence with a certain constituency of Afghan leaders and groups now backed by the U.S. has weakened Pakistan’s relative advantage with the Afghan population. Despite cultural and historical ties, and enormous sacrifices in support of Afghanistan’s war against the former Soviet Union, Pakistan finds Afghanistan becoming increasingly under the influence of hostile intelligence agencies.

 

Pakistan has adequately prepared itself for meeting the challenge of Indian threat by maintaining a robust conventional defence and developing flexible nuclear deterrence capability. Our counter-force strategy has thwarted the Indian Cold Start Doctrine. This is one of the many reasons it has opted to use Baloch and Taliban proxies. Thus the situation at hand presents Pakistan with the challenge of an unconventional, low-intensity conflict. This might be a long and difficult war, but there is no escape from fighting it out by all means necessary. Not doing so or facing defeat is not an option.

It is, and will be, an enduring imperative of Pakistan’s national security to deny Afghanistan as a space for adversaries to plan and carry out hostile acts against our citizens, security forces and national security interests. The choices that the Afghan leaders make about their allies and partners will have to be carefully evaluated in terms of security impact, and adequately responded to in order to prevent the use of Afghanistan as a base against our interests. There is material evidence in the present situation as well as from the past that some of the Afghan leaders and regimes have connived with our adversaries to harm us. While we strive for a friendly, peaceful and unified Afghanistan, we will have to work hard with the government in Kabul to prevent hostile use of the Afghan territory.


There are unilateral security measures that Pakistan has rightly adopted to neutralise threats emanating from Afghanistan. Firstly, clearing the tribal regions bordering Afghanistan from the militants that had kept local populations hostage for many years was a painful but necessary first step towards ensuring national security. The TTP had been using the region as a sanctuary for militancy against the Pakistani state, citizens and security forces. With the cooperation of local population, which suffered enormous difficulties as internally displaced persons, the TTP has been defeated. However, its remnant elements have found safe havens in the adjacent tribal regions of Afghanistan.


Attacks by militants from across the border have influenced a new security paradigm: security along the international border, that had been left largely porous in the previous decades, would be the first line of defence against militants across the border. Pakistan has undertaken an ambitious, bold and much needed initiative to control the movements of peoples and contraband through this border. As a consequence of multiple sources of border control mechanism, after more than one-hundred and twenty years, the international border (old Durand Line) is going to change from soft to hard power. This will check smuggling, drug trafficking, inflow of terrorists and illegal immigrants from Afghanistan.


The unending war in Afghanistan is the primary source of conflict spillovers into Pakistan. It is in our interest to help regional and global powers to end this war. Peace and security of Afghanistan will have positive effects on stability and social order around its neighbours. But Pakistan alone, and no single power for that reason can end the war in Afghanistan. The real change has to occur in the strategic outlook of the United States and allies with the realisation on their part that continued war will hurt their interests in the region around Afghanistan.


Hostility of India, its occupation of Jammu and Kashmir and regional designs remain at the heart of Pakistan’s security calculations. We have a long history of unresolved disputes, wars and proxy intervention by India. Its military intervention in the East Pakistan crisis in 1971 was a watershed event in the strategic outlook of Pakistan. India initially provided sanctuary and support to separatist elements that its intelligence agencies had nurtured, and when it saw them losing ground, it militarily attacked East Pakistan, separating it from rest of the country. This was yet another lesson for Pakistan in realpolitik and a demonstration of the Indian intentions toward the country.


Hardly has India’s security outlook toward Pakistan and the region changed. Rather, it has become more aggressive and expansionist in political designs and strategic calculations. Since Prime Minister Narendra Modi’s rise to power on the wings of Hindu nationalism with overly anti-Muslim and anti-Pakistan tones, relations have touched the lowest point in decades. India is pursuing a policy of destabilisation by supporting Baloch and Taliban terrorist factions, and it is investing heavily in groups inside Pakistan to work against the China-Pakistan Economic Corridor. There is considerable evidence to show that India is using Afghanistan as a base for supporting these elements to carry out its agenda of destabilisation — a proxy war through use from the ‘empty’ places of Afghanistan.


Pakistan has adequately prepared itself for meeting the challenge of Indian threat by maintaining a robust conventional defence and developing flexible nuclear deterrence capability. Our counter-force strategy has thwarted the Indian Cold Start Doctrine. This is one of the many reasons it has opted to use Baloch and Taliban proxies. Thus the situation at hand presents Pakistan with the challenge of an unconventional, low-intensity conflict. This might be a long and difficult war, but there is no escape from fighting it out by all means necessary. Not doing so or facing defeat is not an option.


Pakistan has been in a war against terrorism for more than a decade. We have succeeded in evicting the TTP from Swat and from all tribal agencies of FATA. Populations once displaced from these regions have been rehabilitated with the support of new road and infrastructural development. Insurgency in Balochistan has been withering away, wearing out in the face of resentment within the Baloch populations against the militants. There are positive signs of contribution to the development and integration of Balochistan under the extensive CPEC projects that would be linking larger part of the province with all other provinces and China. The geo-economics of the Corridor is futuristic, historic and a powerful new element in the national security order of Pakistan. It is also a symbol and reflection of shifting alliances and strategic partnerships for stability and prosperity in the region.

 

The writer is an eminent defence/political analyst who regularly contributes for print and electronic media. Presently he is on the faculty of LUMS.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
08
December

پاک ایران تعلّقات اور آرمی چیف کا حالیہ دورہ

تحریر: ڈاکٹر رشید احمد خان


چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمرجاوید باجوہ نے نومبر کے پہلے ہفتے میں ایران کا دورہ کیا ہے۔ پاکستان اور ایران کے درمیان حکومتی سطح پر اعلیٰ سول اور ملٹری قیادت کے دورے اکثر ہوتے رہتے ہیں لیکن جنرل باجوہ کا یہ دورہ تین وجوہات کی بناء پر خصوصی اہمیت کا حامل ہے۔ ایک تو یہ کہ مشرقِ وسطیٰ اور خلیج فارس کے خطوں میں سیاسی حالات تیزی سے کروٹ لے رہے ہیں۔'' داعش'' یا ''اسلامی خلافت'' جس کی افواج تین سال قبل عراق اور شام کے وسیع علاقوں پر قابض تھیں، عسکری لحاظ سے شکست کھا کر تتر بِتّر ہو رہی ہیں اور اس کے جنگجو اردگرد کے اسلامی ملکوں جن میں افغانستان اور پاکستان بھی شامل ہیں، میں پناہ لے رہے ہیں۔ اس وجہ سے اس خطے کی سلامتی کے لئے ایک نیا خطرہ پیدا ہو چکا ہے۔ ایران کے ساتھ تقریباً900 کلومیٹر لمبی سرحد اور آبنائے ہرُمز کے دہانے پر واقع ہونے کی وجہ سے پاکستان خلیج فارس کی دفاعی حکمتِ عملی کا ایک اہم پارٹنر ہے۔ خلیج فارس اور اس کے ملحقہ علاقوں میں ہونے والی تبدیلیوں سے پاکستان متاثر ہوئے بغیر نہیں رہ سکتا۔ خصوصاً ایران اور سعودی عرب کے درمیان کشیدگی پاکستان کے لئے انتہائی تشویش کا باعث ہے کیونکہ یہ دونوں پاکستان کے دوست ممالک ہیں۔ ان حالات کی روشنی میں پاکستان اور ایران کے درمیان اعلیٰ حکومتی سطح پر تبادلۂ خیال اور صلاح مشورہ ضروری ہے۔


جنرل باجوہ کا دورئہ ایران جس دوسری وجہ سے خصوصی اہمیت کا حامل ہے وہ یہ کہ حال ہی میں افغانستان نے بھارت سے درآمدات کے لئے ایران کی بندر گاہ چابہار کا استعمال شروع کیا ہے۔ اس کے تحت افغانستان کے لئے بھارتی گندم کی پہلی کھیپ حال ہی میں ایران کے راستے افغانستان پہنچی ہے۔ اس سے قبل افغانستان کی درآمدات بھارت سے کراچی کے راستے آتی تھیں۔ چابہار گوادر سے صرف72 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ اس کی تعمیر میں بھارت ایران کو مالی امداد فراہم کررہا ہے۔

 

pakirantaluuk.jpgاس بندر گاہ کے راستے بھارت اور افغانستان کے درمیان تجارت کا اجراء صرف معاشی مضمرات کا حامل نہیں بلکہ سیاسی اور دفاعی لحاظ سے بھی خصوصی اہمیت کا حامل ہے۔ پاکستان اور ایران دوبرادر اسلامی ممالک ہیں۔ دونوں کے باہمی تعلقات ماضی میں بھی خوشگوار رہے ہیں اور اب بھی جذبۂ خیرسگالی، باہمی احترام اور تعاون کی سپرٹ سے مزّین ہیں۔ اس لئے یہ ایک بالکل قدرتی بات ہے کہ دونوں میں سے کسی کے لئے بھی اگر کوئی مسئلہ تشویش کا باعث ہو تو اُس پر بات چیت اور تبادلۂ خیال ہونا چاہئے۔ تیسرے، باوجود اس کے کہ دونوں ملکوں میں حکومتی اور عوامی سطح پر خوشگوار تعلقات قائم ہیں، پاکستان اور ایران کے درمیان بارڈر سکیورٹی کے شعبے میں مزید اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ بلوچستان میں دہشت گردوں، خصوصاً پاک طالبان اور ''داعش'' کے جنگجوئوں، کی موجودگی اور اُن کی بڑھتی ہوئی سرگرمیوں کے پیش نظر پاکستان اور ایران کی عسکری قیادت کے درمیان ملاقات کا سلسلہ لازمی ہے۔ جنرل باجوہ کے دورئہ ایران کا ایک اہم مقصد پاکستان اور ایران کی مشترکہ سرحد کی سکیورٹی کو اور بھی یقینی بنانا ہے تاکہ دہشت گرد، تخریب کار اور جرائم پیشہ افراد جن میں غیر قانونی طور پر سرحد پار کرنے والے لوگ، اسلحہ، منشیات اور انسانوں کی سمگلنگ میں ملوث لوگ شامل ہیں، اس سرحد کو اپنے مذموم مقاصد کے لئے استعمال نہ کرسکیں۔ بلوچستان میں فوج اور ایف سی کی نگرانی میں دونوں ملکوں کی سرحد کو محفوظ بنانے کے لئے متعدد اقدامات کئے گئے ہیں۔ ان میں پاکستان کی طرف سرحد کے ساتھ ساتھ گہری خندق اور چیک پوسٹوں کا قیام بھی شامل ہے۔ پاکستان نے ایران سے بھی سرحد کی دوسری طرف سے اقدامات کرنے کی درخواست کی ہے، جس طرح پاک۔ افغان بارڈر کی سکیورٹی کے لئے پاکستان نے اپنی طرف اہم اور مؤثر اقدامات کئے ہیں، اسی طرح پاکستان اور ایران کی مشترکہ سرحد پر بھی اقدامات کی ضرورت ہے۔جیسا کہ ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے تہران میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ اس بات کا خدشہ ہے کہ دہشت گرد پاک، ایران سرحد کو اپنی مذموم سرگرمیوں کے لئے استعمال کرسکتے ہیں۔ اس کی روک تھام کے لئے پاکستان اور ایران کی عسکری قیادت نے دوطرفہ بنیادوں پر باہمی روابط کو برقرار رکھنے اور سکیورٹی کے شعبے میں تعاون کو فروغ دینے پر اتفاق کیا ہے۔ پاک ایران سرحد پر سکیورٹی کی صورت حال کو بہتر اور مضبوط بنانا صرف اسی لئے ضروری نہیں کہ سرحدکے اُس پار سے دہشت گرد پاکستانی صوبہ بلوچستان میں داخل ہو کر تخریبی کارروائیاں کرسکتے ہیں بلکہ طویل سرحد کی مؤثر نگرانی نہ ہونے کی وجہ سے علاقے میںجرائم پیشہ افراد کی غیر قانونی سرگرمیوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔ ان سرگرمیوں میں انسانی سمگلنگ، منشیات اور سب سے نمایاں غیر قانونی طور پر پاکستان سے ایران جانے والوں کی تعداد میں اضافہ ہے۔ ان میں سے بہت سے سرحد پر دھر لئے جاتے ہیں اس کے باوجود ان غیر قانونی تارکینِ وطن کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے جو چوری چھپے پاکستان سے ایران میں داخل ہوتے ہیں۔ ایک اطلاع کے مطابق ایران نے 2015 میں ایسے 26,000 افراد کو گرفتار کرکے پاکستان کے حوالے کیا جبکہ اُس سے ایک سال قبل ایسے افراد کی تعداد 5218 تھی۔ اس طرح ایران سے غیر قانونی طور پر پاکستان میں میں داخل ہونے والے افراد کی تعداد میں بھی اضافہ ہورہا ہے۔ پاکستان اور ایران دونوں ممالک کی حکومتیں اس صورت حال سے پریشان ہیں کیونکہ غیر قانونی طور پر سرحد پار کرنے والے ان افراد میں سمگلر اور جرائم پیشہ افراد کے علاوہ دہشت گرد بھی ہوسکتے ہیں۔ بھارتی خفیہ ایجنسی ''را'' کے ایک افسر کلبھوشن یادیو کی مثال ہمارے سامنے ہے جسے ایران سے بلوچستان میں خفیہ طور پر داخل ہوتے وقت پاکستانی حکام نے گرفتار کیا تھا۔ سرحد کے آر پار غیر قانونی افراد کی نقل و حرکت کو روکنے اور مؤثر بارڈر کے لئے جو اقدامات کئے جارہے ہیں اُن میں دونوں ممالک کا تعاون شامل ہے یہی وجہ ہے کہ پاکستان ایران سرحد کو محفوظ بنانے کے لئے اقدامات میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔ کیونکہ پاکستان اور ایران دونوں اِن اقدامات کی افادیت اور اہمیت پر متفق ہیں۔ اس کا اظہار دونوں جانب سے جنرل باجوہ کے دورئہ ایران کے موقع پر کیا گیا تھا۔

 

باوجود اس کے کہ دونوں ملکوں میں حکومتی اور عوامی سطح پر خوشگوار تعلقات قائم ہیں، پاکستان اور ایران کے درمیان بارڈر سکیورٹی کے شعبے میں مزید اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ بلوچستان میں دہشت گردوں، خصوصاً پاک طالبان اور ''داعش'' کے جنگجوئوں، کی موجودگی اور اُن کی بڑھتی ہوئی سرگرمیوں کے پیش نظر پاکستان اور ایران کی عسکری قیادت کے درمیان ملاقات کا سلسلہ لازمی ہے۔

پاکستان اور ایران کے تعلقات اتنے گہرے، ہمہ گیر، دیرینہ اور مضبوط ہیں کہ انہیں محض بارڈر سکیورٹی تک محدود نہیں رکھا گیا ۔ پاکستان اور ایران محض ہمسایہ ملک نہیں، بلکہ ایک دوسرے کے لئے اس جغرافیائی حقیقت سے آگے بھی بہت کچھ ہیں۔ ماضی میں جب ایک دوسرے کی مدد کی ضرورت پیش آئی، تو دونوں میں سے کسی نے بخل سے کام نہیں لیا۔ 1971میں مشرقی پاکستان کی علیحدگی سے پاکستانی معیشت خصوصاً برآمدات پر سخت دبائو پڑا تو ایران نے پاکستانی برآمدت کے لئے اپنی منڈیوں کے دروازے کھول دیئے تھے اور صرف تین سال کے عرصے میں دونوں ملکوں کے درمیان تجارت کے حُجم میںگیارہ گنا اضافہ ہوگیا تھا۔ اسی طرح 1979کے اسلامی انقلاب اور اس کے ساتھ ہی عراق کے ساتھ جنگ کے نتیجے میں جب ایرانی بھائی مشکلات کا شکار ہوئے تو پاکستان نے اپنے وسائل کے مطابق ایران کو اشیائے خورو نوش، اناج اور دیگر ضروری اشیاء کی فراہمی جاری رکھی۔ پاکستان اور ایران دو آزاد اور خود مختار علیحدہ ممالک ہیں اوران میںسے ہر ایک کی علاقائی اور عالمی پالیسی اُس کے قومی مفادات کے تابع ہے لیکن دونوں نے ایسا کرتے وقت کسی کے بنیادی مفاد کو نقصان پہنچانے کی اجازت نہیں دی۔ اسی سلسلے میں ایران کی طرف سے کشمیریوں کے حقِ خود ارادیت کی حمایت ایک نمایاں مثال ہے۔ اسی طرح پاکستان نے یمن میں اپنی فوجیں بھیجنے سے انکار کرکے یہ ثابت کیا ہے کہ پاکستان کسی ایسے اقدام کا سوچ بھی نہیں سکتا جس کی وجہ سے ہمسایہ اسلامی ملکوں کے مفاد پر زد پڑتی ہو۔ حکومتی سطح پر پاکستان اور ایران میں ایک دوسرے کے لئے خیر سگالی اور محبت کی کوئی کمی نہیں۔ تاہم ایران پر عالمی اقتصادی پابندیوں کی وجہ سے پاک ایران دوطرفہ تجارت کے حجم میں نمایاں کمی واقع ہوگئی تھی۔ لیکن دوسال قبل ایران اور مغربی ممالک کے درمیان ایٹمی سمجھوتے کے بعد ایران کے خلاف پابندیاں آہستہ آہستہ ختم ہو رہی ہیں۔ اس کے نتیجے میں دنیا بھر کے ممالک ایران کے ساتھ تجارتی تعلقات کو وسیع کررہے ہیں۔ کیونکہ ایران تیل اور گیس کے وسیع ذخائر کا مالک ہے۔ پاکستان نے بھی اس سمت پیش رفت کی ہے۔ مارچ 2016 میں پاکستان کے اُس وقت کے وزیرِ تجارت خرم دستگیر نے ایران کا دورہ کیا تھا۔ اس دورے کے دوران دونوں ممالک نے باہمی تجارت کو آئندہ پانچ برسوں میں ایک بلین ڈالر سے بڑھا کر 5بلین ڈالر کی سطح تک لے جانے کا فیصلہ کیا تھا۔ اُسی برس ایران کے صدر حسن روحانی نے پاکستان کا دورہ کیا۔ اُن کے دورے کے دوران اس مقصد کے لئے مفاہمت کی ایک یادداشت
MOU
پر بھی دستخط کئے گئے تھے۔ دوطرفہ تجارت میں فروغ کے علاوہ پاکستان اور ایران نے حال ہی میں عوامی سطح پر روابط میں اضافہ کرنے کے لئے اقدامات کئے ہیں۔ ان میں دونوںملکوں کے درمیان مزید دو کراسنگ پوائنٹس کا قیام ہے۔ یہ کراسنگ پوائنٹس گید اور مند پاکستان میں اورایمدان اور پشین سرحد کی دوسری طرف ایران میں ہیں۔ ان کراسنگ پوائنٹس سے دونوں ملکوں کے درمیان تجارت بھی بڑھے گی اور لوگوں کی آمد و رفت میں بھی اضافہ ہوگا۔ سفری سہولتوں کو مزید آسان اور سستا بنانے کے لئے پاکستان اور ایران نے ایک فیری سروس شروع کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ پاکستان اور ایران کے درمیان تجارت اورآمدو رفت کا سب سے قدیم راستہ تفتان سے گزرتا ہے۔ اس کو وسیع کیا گیا ہے اور اسے نئی سہولتوں سے مزّین کیا گیا ہے۔ اس پر ایک شاندار گیٹ تعمیر کیا گیاہے جس کا افتتاح دسمبر2016 میں کیا گیا تھا۔ اسی تناظر میںآرمی چیف جنرل باجوہ کے دورے کو خصوصی اہمیت حاصل ہوجاتی ہے کیونکہ اس سے ان سہولتوں کو مستحکم کرنے اور مزید وسعت دینے کے امکانات پیدا ہو جائیں گے۔

مضمون نگار: معروف ماہر تعلیم اور کالم نویس ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
08
December

جلال آباد میں پاکستانی سفارتکار پر حملے کے اثرات

تحریر: عقیل یوسف زئی


افغانستان کے مشرقی شہر اور صوبہ ننگر ہار کے دارالحکومت جلال آباد میں نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے پچھلے دنوں پاکستانی قونصلیٹ کے اسسٹنٹ نیئر اقبال رانا کو ان کی رہائش گاہ کے سامنے چھ گولیوں کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں وہ جاں بحق ہوگئے۔ اس سے قبل اسی شہر سے پاکستانی سفارتی عملے کے ایک اور اہلکار کو اغوأ کیا گیا تھا جنہیں بعد ازاں افغان اداروں نے کئی روز کی کوششوں کے نتیجے میں باز یاب کرایا تھا۔ جبکہ گزشتہ 17 برسوں کے دوران افغانستان میں نہ صرف ایسے کئی واقعات ہوتے رہے ہیں بلکہ کئی بار پاکستانی، دیگر ممالک کے سفارتخانوںکے اہلکاروں اور قونصلیٹس کو حملوں کا نشانہ بھی بنایا جاتا رہا ہے۔ پاکستانی حکام کے مطابق نیئر اقبال رانا اور بعض دیگر کو دھمکیاں دی جارہی تھیں اور یہ صورت حال متعلقہ افغان حکام کے نوٹس میں لائی جا چکی تھی۔ افغان صدر ڈاکٹر اشرف غنی اور قومی سلامتی کے مشیر حنیف اتمرسمیت متعدد دیگر اعلیٰ شخصیات نے اس واقعے پر جہاں ایک طرف پاکستانی حکومت سے رابطہ کر کے اظہارِ افسوس کیا ہے وہاں افغان صدر نے واقعے کی تحقیقات کا بذاتِ خود حکم دے کر ملزمان کی نشاندہی اور گرفتاری کی ہدایات جاری کی ہیں۔ واقعے کے دوسرے روز حنیف اتمر نے قومی سلامتی کے پاکستانی مشیر ناصر خان جنجوعہ سے رابطہ کرکے اس واقعے پر افسوس ظاہر کیا اور یقین دلایا کہ مجرموں کی گرفتاری کے علاوہ سفارتکاروں کے مکمل تحفظ کے لئے عملی اقدامات کئے جائیں گے۔ دوسری طرف اشرف غنی نے وزیرِاعظم شاہدخاقان عباسی سے ٹیلی فونک رابطہ کرکے ہر ممکن تعاون کے علاوہ واقعے پر اظہارِ افسوس کرنے میں کوئی تاخیر نہیںکی جو کہ بدلتے حالات کے تناظر میں ایک خوش آئند اقدام اور طرزِ عمل ہے۔


قبل ازیں افغان حکام نے مقتول کی نعش کو پورے احترام، عزت اور پروٹوکول کے ساتھ طورخم بارڈر پر پہنچایا جہاں نعش ایف سی حکام کے حوالے کردی گئی۔ ان کی نعش اور تابوت پر پھولوں کے گلدستے چڑھائے گئے تھے اور اسے پاکستانی پرچم میں لپیٹا گیا تھا۔

 

خطے کا امن دونوں ممالک کی دوستی اور اعتماد سازی کے ساتھ مشروط ہے۔ بدلتے حالات میں بعض قوتیں کوشش کریں گی کہ کشیدگی اور تصادم کی فضا کو فروغ دیا جائے۔ تاہم دونوں ممالک کو ٹھنڈے دل سے ایک دوسرے کی بعض مجبوریوں کا ادراک کرتے ہوئے معاملات کو آگے لے کر جانا ہوگا۔

امر واقعہ تو یہ ہے کہ جس اہتمام کے ساتھ افغان حکام اور فورسز نے سفارتکار کے تابوت کو طورخم پہنچایا اور جو انتظامات کئے گئے، ہمارے ہاں اس نوعیت کے کوئی انتظامات نہیں تھے۔ غالباً یہ وہ واحد نعش تھی جس کو افغان فورسز نے اتنی عزت، دکھ اور اہتمام کے ساتھ پاکستانی اہلکاروں کے سپرد کیا جس سے ثابت یہ ہو رہا تھا کہ سانحے پر اعلیٰ ترین افغان شخصیات، اداروں اور حکام بھی رنجیدہ ہیں۔ یہ افسوسناک واقعہ ایک ایسے وقت میں پیش آیا جب پاکستان اور افغانستان کی حکومتوں کو ایک سال کی دوری، لاتعلقی اور کشیدگی کے بعد پھر سے قریب لانے کی کوششیں آخری مراحل میں داخل ہورہی تھیں اور جنرل قمرجاوید باجوہ کے یکم اکتوبر کے دورئہ کابل کے بعد دونوں ممالک کے درمیان برف پگھلنی شروع ہوگئی تھی۔ یہ محض ایک اتفاق نہیں ہے کہ جنرل باجوہ کے کامیاب دورے کے بعد نادیدہ قوتوں نے مسلسل کوشش کی کہ بداعتمادی اور کشیدگی پیدا کرنے کے لئے کابل اور دوسرے شہروں پر حملے تیز کئے جائیں اور افغان صدر اشرف غنی کے متوقع دورئہ اسلام آباد کا راستہ روکاجائے۔ جنرل باجوہ کے دورئہ کابل کے بعد کراس بارڈر ٹیررازم کے خاتمے کے لئے عملی اقدامات کا آغاز ہو چکا تھا اور دونوں ممالک قریب آرہے تھے کہ کابل سمیت دوسرے شہروں کو بدترین حملوں کا نشانہ بنانے کی مہم چل نکلی جو کہ ایک باقاعدہ پلاننگ کا حصہ تھی۔ جنرل باجوہ یکم اکتوبر کو کابل گئے تو اس کے بعد ایک مہینے کے دوران افغانستان کے تقریباً 15صوبوں پر طالبان، داعش اور دیگر نے تقریباً 21بڑے حملے کئے جن میںگیارہ خود کش حملے بھی شامل ہیں۔ صرف کابل کو ایک ماہ کے اندر 6 حملوں کانشانہ بنایا گیا۔ ان حملوں کے نتیجے میں 16 افسران اور فورسز کے 123 اہلکاروں سمیت300 لوگ مارے گئے۔ کابل کے 6 حملوں میں سے 4 ہائی پروفائل سکیورٹی زون میں کرائے گئے جہاں اہم دفاتر کے علاوہ متعدد سفارتخانے بھی موجود ہیں۔ اس صورت حال کا واحد مقصد یہ تھا کہ ان حملوں کی آڑ اور دبائو میں بہتر ہوتے تعلقات کا راستہ پھر سے روکا جائے اور ماضی کی طرح مجوزہ مفاہمتی اور مشترکہ کارروائیوں کے آپشن کا راستہ مسدود کیا جائے۔ وقتی طور پر حملہ آور یا اُن کے منصوبہ ساز اس کوشش میں کامیاب بھی ہوگئے کیونکہ افغان صدر کا دورئہ اسلام آباد تعطل کا شکار ہوا اور ان پر دبائو میں حسبِ سابق اضافہ ہونے لگا۔ اسی دوران پشاور آئے ہوئے افغان ڈپٹی گورنر محمدنبی احمدی لاپتہ ہوگئے اور کہا گیا کہ ان کو مسلح افراد نے ڈبگری گارڈن سے اٹھایا ہے۔ تادمِ تحریر ان کا سراغ نہیں ملا ہے۔ اس سے قبل اسی شہر میں بعض دیگر کے علاوہ ماضی قریب میں ایک افغان قونصل جنرل اور ایرانی قونصل جنرل کو بھی اغوا ء کیا گیا تھا جبکہ بعض اہم لوگوں کی ہلاکتیں بھی ہوتی رہی ہیں۔ ان واقعات کو محض اتفاق قرار نہیں دیا جاسکتا کہ اس قسم کے واقعات ایک مستقل اور مسلسل پالیسی کا نتیجہ ہیں اور اس کا مقصد بدگمانیوں اور فاصلوں میں اضافہ کرنا ہے اس لئے یہ کہنا کہ ایسے واقعات کو اتفاق، حادثہ یا حکومتی اداروں کا نتیجہ قرار دیا جائے، زمینی حقائق کے تناظر میں درست اپروچ نہیں ہے۔ شواہد بتاتے ہیں کہ جب بھی دونوں پڑوسی ممالک قریب آنے کی کوشش کرتے ہیں، ایسے واقعات کی شرح میں اضافہ ہو جاتا ہے۔ اس لئے ضرورت اس بات کی ہے کہ دونوں حکومتیں ایسے واقعات اور معاملات پر سخت ردِ عمل اورجذباتی بیانات کے بجائے ٹھنڈے دل سے ان ہاتھوں کا سراغ لگائیں جو کہ مسلسل پالیسی کے ذریعے ایسے واقعات کی آڑ میں کشیدگی کا راستہ ہموار کرتے آئے ہیں۔ یہ بات خوش آئند ہے کہ افغان حکمران ماضی کے مقابلے میں حملوں یا دیگر واقعات کے بعد پاکستان پر روایتی الزامات لگانے سے گریز کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں اور پاکستان کا رویہ بھی مثبت ہے تاہم ایسے واقعات ہوتے رہیں گے کیونکہ مفاہمتی عمل اور ریاستوں کے درمیان قربت دہشت گردوں کے علاوہ بعض ان عالمی اور علاقائی قوتوں کے لئے بھی قابلِ قبول اور سود مند نہیں ہے جو کہ افغانستان اور پاکستان کو قریب آنے نہیں دے رہے ہیں اور ان کے مفادات کشیدگی اور بداعتمادی سے جڑے ہوئے ہیں۔ افغانستان کی حکومت کو حالیہ واقعے کے ذریعے دیوار سے لگانے کی کامیاب سازش کی گئی ہے کیونکہ اس بات کا اعتراف جناب اشرف غنی خود کر چکے ہیں کہ سفارتکاروں کو سکیورٹی فراہم کرنا ان کی ریاستی ذمہ داری ہے۔ ایسے میں پاکستان کو ذمہ داری کا احساس کرتے ہوئے افغانستان کی مجبوریوں اور کمزوریوں کو مدِ نظر رکھ کر اس قسم کی سازشوں کو ٹھنڈے دل اور بہتر طرزِ عمل کے ساتھ ڈیل کرنا ہوگا ۔ یہ بھی ممکن ہے کہ افغان ڈپٹی گورنر کا اغواء اور پاکستانی سفارت کار کے قتل کے محرکات ذاتی یا مجرمانہ پسِ منظررکھتے ہوں۔ ایسے میں لازمی ہے کہ حملہ آوروں کے مقاصد کو سامنے رکھ کر ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کیا جائے اور اعتماد سازی کو سبوتاژ کرنے والی قوتوں کے عزائم کو ناکام بنایا جائے۔

jalalabadmain.jpg
یہ بات بھی تشویشناک ہے کہ بعض افغان حکام کی بداحتیاطی بھی بدمزگی کی وجہ بنتی رہی ہے، مثلاً اعلیٰ افغان حکام کی پشاوراور دیگر شہروں سے گمشدگی اور بعض ذمہ داران کی غیر قانونی سرگرمیوں نے افغانستان اور پاکستان کے سفارتی تعلقات کو پھر سے مشکوک اور تلخ بنایا ہے جس پر پاکستانی ادارے بھی تشویش کا اظہار کرنے لگے ہیں۔ گزشتہ برس اسلام آباد میں صوبہ کنڑ کے گورنر لاپتہ ہوگئے تھے جن کی بازیابی کے لئے کئی روز کارروائیاں ہوتی رہیں اور تلخی بڑھتی گئی۔ چند روز قبل پشاور میں افغانستان کے نئے قونصل جنرل معین مرستیال کے پرسنل سیکرٹری اور سابق ٹریڈ کمشنر میرویس یوسفزئی نے پشاور کے علاقے شیخ کلی میں چند دیگر افراد کے ہمراہ رحمان اﷲ ولد رحمان الدین پر حملہ کرکے فائرنگ کی جس کو دو گولیاں لگیں اور وہ شدید زخمی ہوگیا۔ ان کی رپورٹ پر پشاور پولیس نے میر ویس کو گرفتار کرلیا۔ اس تنازعے کی وجہ یہ بتائی جارہی ہے کہ موصوف نے چند برس قبل پشاور میں افغان سفارتی عملے کا رُکن ہوتے ہوئے غیرقانونی طور پر جائیداد خریدی اور اس کے بعد کاغذات کے معاملہ پر تنازعہ پیدا ہوگیا۔ اسی عرصے کے دوران انکشاف ہوا کہ موصوف نے نہ صرف افغان تاجروں سے بھاری رشوت لی بلکہ سٹاف کی تنخواہوں میں غبن بھی کیا۔ مسلسل شکایات کے بعد گزشتہ برس سابق قونصلر ڈاکٹر عبداﷲ پویان نے ان کو برطرف کردیا اور تلخی اتنی بڑھی کہ ان پر افغان قونصلیٹ میں داخلے پر باقاعدہ پابندی لگائی گئی اور ایک بار ان کو قونصلیٹ کی حدود سے گارڈز کے ذریعے باہر نکلوایا گیا۔ نئے قونصل جنرل معین مرستیال نے چند ہفتے بعد چارج سنبھالا تو میرویس یوسفزئی کو انہوں نے تمام سابقہ شکایات اور کارروائیوں کے باوجود اپنا پرسنل سیکرٹری مقرر کیا۔ اس دوران شکایات آئیں کہ وہ بعض دیگر کارندوں کے ذریعے ویزے جاری کرنے پر 10 سے 20ہزار تک کی رشوت لینے میں ملوث ہے اور بعض مشکوک لوگوں کو ویزے جاری کررہا ہے جس پر متعدد انکوائریاں بھی ہوئیں۔ یہ سکینڈل زیرِ بحث تھا کہ اس نے جائیداد کے تنازعے پر ایک شخص پر فائرنگ کا انتہائی اقدام بھی اٹھایا۔ ابھی یہ مسئلہ حل نہیں ہوا تھا کہ دیگری گارڈز سے صوبہ کنڑ کے ڈپٹی گورنر نبی احمدی لاپتہ ہوگئے جو کہ نجی دورے پر علاج کی غرض سے پشاور آئے تھے۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ افغان سفارتی عملہ بھی اُن کی آمد سے لاعلم دکھائی دیا۔ اس سے کئی برس قبل حیات آباد پشاور سے بداحتیاطی کے باعث افغان قونصلر جنرل خرامی بھی اٹھائے گئے تھے جن کی بازیابی کے لئے کروڑوں کی ادائیگی کی گئی تھی۔ تاہم حالیہ واقعات نے صورتحال کو اور بھی گمبھیر بنادیا ہے۔


سب سے اہم سوال یہ ہے کہ جب دونوں ممالک کے اعلیٰ حکام کو یہ علم ہے کہ بعض نادیدہ قوتیں اور تیسرے ہاتھ جیسے عوامل نہیں چاہتے کہ بحالی تعلقات کی کوششوں کو کامیاب ہونے دیا جائے تو ایسے میں فریقین احتیاط اور ذمہ داری کا مظاہرہ کیوں نہیں کرتے؟ یہ نکتہ بھی بہت اہم ہے کہ سکیورٹی کی مخدوش صورت حال کے تناظر میں خصوصی اقدامات کیوں نہیںکئے جاتے اور مزید بدگمانیوں کا راستہ کیوں نہیں روکا جاتا۔ خیبر ایجنسی کے وہ 17 لوگ تاحال لاپتہ ہیں جن کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ان کو افغانستان میں رکھاگیا ہے۔ حال ہی میں جب افغان سرزمین سے آئے بعض دہشت گردوں نے باجوڑ کی ایک فوجی چیک پوسٹ پر حملہ کیا اور کیپٹن سمیت متعدد افراد کو نشانہ بنایا تو وہ متعدد زخمی پھر آسانی سے واپس افغانستان چلے گئے جن کو جوابی کارروائی میں پاک فوج نے نشانہ بنایا تھا۔اس واقعے کی اطلاع دوسری سائیڈ کو دی گئی مگر وہاں سے کوئی مثبت جواب نہیں آیا۔ اس کے برعکس افغان تجزیہ کار مسلسل الزام لگارہے ہیں کہ پاکستان کی جانب سے بعض سرحدی صوبوں پر گولہ باری کی جاتی رہی ہے۔ پاکستانی حکام کا مؤقف ہے کہ وہ عام آبادی کو نہیں بلکہ ان مبینہ ٹھکانوںکو کبھی کبھار نشانہ بناتے ہیں جہاں پاکستان سے بھاگے ہوئے دہشت گرد چھپے ہوتے ہیں۔ اس مسئلے کا حل بھی بات چیت کے ذریعے نکالنا لازمی ہے تاکہ ان عناصر کے پروپیگنڈے کا راستہ روکا جاسکے جو ایسے اقدامات یا کارروائیوں کی آڑ میں بدگمانی پھیلانے کی کوشش کرتے ہیں۔


اس ضمن میں سابق سفارتکار رستم شاہ مہمند نے رابطے پر بتایا کہ بعض افسوسناک واقعات کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہے کہ دونوں ممالک کے تعلقات کی بحالی کی کوششیں رک جائیں۔ ان کے مطابق افغانستان نہ صرف حالتِ جنگ میں ہے بلکہ جاری جنگ کے کھلاڑیوں کی تعداد بھی بڑھ گئی ہے۔ ایسے میں یہ بات یقینی ہے کہ پاکستان اور افغانستان کی مشترکہ کوششوں کا راستہ مختلف سازشیں کرکے روکا جائے گااور بعض ایسے واقعات کا راستہ ہموار کیا جائے گاجن سے تلخیاں بڑھیںگی۔ اس کے باوجود دونوں ممالک کی قیادت کو یہ بات سمجھنی چاہئے کہ ایسے واقعات ہوتے رہیں گے اور ساتھ میں صلح اور امن کی ریاستی کوششیں بھی جاری رکھنی ہوں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ سفارتکار کی ہلاکت میں حکومت ملوث نہیں ہوسکتی۔


سینیئر تجزیہ کار طاہر خان نے صورت حال پر تبصرہ کرتے ہوئے بتایا کہ خطے کا امن دونوں ممالک کی دوستی اور اعتماد سازی کے ساتھ مشروط ہے۔ بدلتے حالات میں بعض قوتیں کوشش کریں گی کہ کشیدگی اور تصادم کی فضا کو فروغ دیا جائے۔ تاہم دونوں ممالک کو ٹھنڈے دل سے ایک دوسرے کی بعض مجبوریوں کا ادراک کرتے ہوئے معاملات کو آگے لے کر جانا ہوگا۔ ان کے مطابق ایک دوسرے کے سفارتکاروں کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے خصوصی اقدامات کی اشد ضرورت ہے اور یہ بات خوش آئند ہے کہ ماضی کے برعکس اس بار الزامات کے بجائے صبر اور تحمل کا مظاہرہ کیا جارہا ہے اور اعلیٰ حکام دوطرفہ طور پر بعض واقعات کے بعد ایک دوسرے کو اعتماد میں لینے بھی لگے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
 
07
November

The Myth of Indian Exceptionalism and the Concept of Strategic Autonomy: Attempts to Isolate Pakistan

Written By: Dr. Minhas Majeed Khan

The former Indian Ambassador to the U.S., Arun K. Singh remarked in 2015 to a gathering in the U.S.:


“America has its idea of Exceptionalism. We also have a notion of Indian Exceptionalism.” He further said, “India has realised that its partnership with the U.S. is the most important. India’s strategic policy is driven by its development needs and no, India has not abandoned the concept of strategic autonomy.”1


In the above statement, two significant terms – ‘Indian Exceptionalism’ and ‘Strategic Autonomy’ are the focus of this article. The current aggression of India against Pakistan and these remarks demand an analysis of India’s hegemonic designs and its aspirations to dictate regional and global policies. While India has yet to achieve its dream to become a ‘global hegemon’, it is striving hard to manipulate regional affairs in its favour and hence influence regional politics. Of the regional countries, Pakistan is one that India has always seen as a threat despite Pakistan’s multiple attempts to bring India to table to resolve bilateral issues for the peace and prosperity of not only the region but the world at large, keeping in view that both are nuclear states. India on the other hand is “obsessively campaigning across the globe to have Pakistan recognised as a ‘rogue terrorist state’ and subsequently isolated” whereas, portraying itself as a thriving democracy with Modi’s slogans, such as equality for all. His statement during the election campaign to adopt a muscular policy towards Pakistan reflects this mindset. Modi and RSS with a history of Hindutva never accepted the very existence of Pakistan. These are dangerous developments, however, within India Modi’s opponents see him as a ‘demagogue’ and ‘hatemonger’ for his discriminatory domestic and foreign policy.

 

It is a fact that India has always ignored the concept of neighbourhood, taking into account, its relations with most of its neighbours. At the same time it wants to dominate the policies of major powers that want an enhanced level of interaction with Pakistan. India’s opposition to CPEC is an attempt to hamper economic development of the region, which is in sharp contrast to regionalism. Modi and RSS ideology is not only intensifying communal violence and anti-Muslim activities within India which is gross violation of human rights but his aggressive foreign policy will also destabilise the fragile deterrence stability in the region.

To begin with, the idea of American Exceptionalism, has ‘gone viral as it serves for the most part as a term of polarisation that divides liberals from conservatives’. American Exceptionalism refers to the theory that the U.S. is qualitatively different from other nations with a special role based on liberty, egalitarianism, populism and laissez faire, to lead the world. Walt described this as: “over the last two centuries, prominent Americans have described the U.S. as an ‘empire of liberty’, a ‘shining city on a hill’, the ‘last best hope of earth’, the ‘leader of the free world’ and the ‘indispensible nation’. Adherents of this ideology hold an ingrained belief that “the country’s unique geography and place on historical timeline endows its leadership with the right to proselytise (even militarily, if needed) its governing, economic and social models all across the globe.”


Taking a note of the above quote of the Indian diplomat, it is important to understand how Indian Exceptionalism is defined. Mahajan explains Indian Exceptionalism or Indian model of Exceptionalism as one that accommodates and respects cultural, religious and language diversities and ensuring that minorities have freedom to live in accordance with their cultural and religious practices.

 

It is high time that the international community intervene and send a strong message to India to abandon its irresponsible behaviour, which has put regional peace and security at risk. More importantly, the international community should take the hyperbolic statements of Modi and his hawkish officials, like Dovel, seriously. It is very unfortunate that Modi who was once not authorised to enter the U.S. because of his brutalities in Gujarat, is now acceptable to the U.S. The U.S. should assert itself and pressurise India being a strategic partner to resolve not only Kashmir issue amicably but also take notice of the human rights violations in India under the International Religious Freedom Act (1998) and put India on the list of Country of Particular Concern (CPC).

The debate is not whether Exceptionalism may fit in well with the U.S. or not, but to examine whether India under Narendera Modi truly upholds this idea and will act as a responsible ‘international stakeholder’ according to the U.S. definition of ‘international stakeholder’. Particularly so when none other than the U.S. itself has commended Indian Exceptionalism. Modi’s poll slogan “sabka saath, sabka vikas” (harmony for all, development for all) was endorsed by Secretary of State John Kerry when he visited India in July 2014. However, Gujarat under his Chief Ministership and Indian Occupied Kashmir under his Premiership present a different picture about the secular credentials of India.


Interestingly, Amartya Sen views Modi’s understanding and pledges of economic development as wrong, because for him, development is a process in which human beings are at the centre. Sen opposed his election as the Prime Minister for the persistent Hindutva element in his agenda. It can be argued that Hindutva in terms of religious dominance over political decision is a reality in India under Modi despite the fact that India claims to be a secular state.


According to Human Rights Watch’s World Report 2016, even when the Prime Minister was celebrating democracy abroad, back home civil society groups and government critics faced harassment, intimidation and lawsuits. Modi’s government, despite its pledges, failed to improve respect for religious freedom, protect the rights of women and children and end abuses against marginalised communities. Particularly Muslims and Christians were harassed, threatened and in some cases attacked by right-wing Hindu fringe groups.

 

themystindia.jpgIt is also important to mention here that Modi and RSS ideology has not only alienated Muslims, Sikhs, Christians and Dalits but is also one of the reasons of the growing Nexalite insurgency in India. It is also denying the right of self-determination to Kashmiri people by abrogating Article 370 of the Indian Constitution, which would merge Indian Occupied Kashmir (IOK) into the Indian Union. Having said that, one cannot forget the recent atrocities in IOK where since July hundreds of Kashmiris have been martyred, hundreds of others injured and young girls and women were raped.


The general perception in India about Modi is that he would divide and damage India because of pursuing RSS agenda. It was also acknowledged by Christophe Jaffrelot, who is an expert in extremism in South Asia, that even though Modi may have emancipated himself from RSS high command, yet “Modi may well do anyway what the RSS has wanted to do for decades because he is perfectly in tune with their ideology”.


The person behind India’s aggressive policies based on RSS ideology is Ajit Doval, the most powerful National Security Advisor who pushed for India’s abandonment of ‘non-alignment’ policy in favour of ‘multi alignment’. Having abandoned its geopolitical tradition with a change in India’s strategic calculations, Modi is all set to partner with the U.S. keeping in view that the common factor behind this alliance is China. The bilateral relations between Russia and India are closer, “yet disturbingly, so too are India’s ties with the U.S., which have been advanced at the obvious expense of China’s security.” It is the palpable Sinophobia that is pushing India to interfere in the internal affairs of China. It is accused of extending visas to some political figures that are supporting Uighur terrorist movement and other anti-Chinese groups from Xinjiang, Inner Mongolia and some pro-democracy groups to attend gathering of anti-Chinese separatist and regime change groups.


Various scholarly writings point out the innate double standards of India, justifying its ‘multi-alignment’ for its closer relations with the U.S. but at the same time it warns its multipolar partners in BRICS from adopting a ‘multi-alignment’ approach towards Pakistan. It is easy to understand that India’s harsh language is not just reactionary rhetoric towards Pakistan, but has broader significance for major powers and in present scenario – Russia and China. India is indicating that its bilateral relationship with each of the two will be irrevocably marred if they continue their strategic relations with Pakistan. This is where India is flaunting its Exceptionalism and Strategic Autonomy.


Korybko presents Indian Exceptionalism and Strategic Autonomy case by arguing that for diplomatic reasons and to save its international image India will ‘plausibly deny’ but it is leading the hybrid war on CPEC, the $46 billion Chinese-led investment corridor through Pakistan and Beijing’s only reliable non-Malacca route to the Indian Ocean, in such an obsessive and aggressive manner that it has come to fully dominate the country’s regional policy. International observers were also stunned by the reports of prominent Indian news channel CNN-News 18 that claimed that Russia had decided to snub Pakistan due to the Uri attack and had cancelled the joint military exercise “Druzhba-2016," with Pakistan, as a sign of solidarity with India. It was a major international embarrassment for India because the news proved baseless and its strategy to diplomatically isolate Pakistan fell flat. Despite Indian Ministry of External Affairs suggestion to cancel it, Moscow went ahead with the planned joint military exercise. It did not stop there; India has once again conveyed its opposition to Russia over its joint exercise with Pakistan.


It is important to mention India’s joint military exercise with the U.S. in the Himalayas within close proximity to the Chinese border, which is not seen as a problem by its leadership. Surprisingly, India applies ‘Strategic Autonomy’ to itself only but opposes when Moscow practices it as part of its military diplomacy and wider balancing act in Asia which, therefore, makes this double standard the defining characteristic of ‘Indian Exceptionalism’.


Taking an account of the Uri Attack, which occurred before the 71st opening of the UN General Assembly, India crossed the limits of international norms. To counter Pakistan’s stance on Kashmir, India raised the issue of Balochistan at the UN to harm Pakistan’s image globally posing its geopolitical stratagem under the cover of ‘democratic-humanitarian concern’. The naivety exhibited here is that Balochistan is entirely a domestic issue for Pakistan, but Kashmir is an agenda of the UN with various resolutions behind it to which India has blatantly refused to act upon. India also decided to pull out of the SAARC Summit in Islamabad. Bangladesh, Afghanistan, and Bhutan joined India by announcing not to attend the summit. It is not only a blow to the concept of regional integration but also hampers cooperation among regional states – all because of Indian aggressive designs.


It is an open secret that India is sponsoring Baloch separatism in Pakistan. The arrest of RAW chief operative Kulbushan Yadav in Quetta and his confession is but one instance of Indian involvement in the unrest in Balochistan. Pakistan had shared three dossiers containing evidences of Indian role in fuelling terrorism in Balochistan, Karachi and Tribal Areas of Pakistan to the U.S. and UN Secretary General Ban Ki-moon. India was hoping that its strategy of diatribes and fierce information warfare at the UN will isolate Pakistan but it abysmally failed. Pakistan’s position on Kashmir was supported by OIC, Iranian President Rouhani who also agree to work together with China and Pakistan on CPEC and recently by Azerbaijan’s President Ilham Aliyev in Baku – a humiliating blow for India.


Another major embarrassment was India’s misleading claim to have conducted surgical strikes. Infact India committed a ceasefire violation by resorting to unprovoked firing at some border point, which was responded effectively but two soldiers were martyred in Indian mortar shelling. However, the lies were exposed before the world as the United Nations told that its mission tasked with monitoring the LOC “has not directly observed” any firing along the LOC. While much has been said and written about the Indian lie, mentioning a report published in a Japanese magazine, ‘The Diplomat’ is very important that reported that the Indian Army does not possess the capability of surgical strikes inside Pakistan.


To conclude, India without any doubt is pursuing a policy of Exceptionalism and Strategic Autonomy. It is a fact that India has always ignored the concept of neighbourhood, taking into account, its relations with most of its neighbours. At the same time it wants to dominate the policies of major powers that want an enhanced level of interaction with Pakistan. India’s opposition to CPEC is an attempt to hamper economic development of the region, which is in sharp contrast to regionalism. Modi and RSS ideology is not only intensifying communal violence and anti-Muslim activities within India which is gross violation of human rights but his aggressive foreign policy will also destabilise the fragile deterrence stability in the region.


It is high time that the international community intervenes and sends a strong message to India to abandon its irresponsible behaviour, which has put regional peace and security at risk. More importantly, the international community should take the hyperbolic statements of Modi and his hawkish officials like Doval seriously. It is very unfortunate that Modi who was once not authorised to enter the U.S. because of his brutalities in Gujarat, is now acceptable to the U.S. The U.S. should assert itself and pressurise India being a strategic partner to resolve not only Kashmir issue amicably but also take notice of the human rights violations in India under the International Religious Freedom Act (1998) and put India on the list of Country of Particular Concern (CPC).


For Pakistan, it is important to invest in lobbying abroad to counter India’s venomous anti-Pakistan rhetoric. It is now more important that Pakistan should strengthen its economic and strategic relations not only with China, Russia and other neighbouring countries but also with Central Asian states, European Union, African states, Latin and Central America. Finally, not to let India exploit Pakistan’s internal vulnerabilities, it is important that state institutions are explicit in their claims that they are on one page and we as a nation stand united.

 

The writer is an Assistant Professor at the Department of International Relations at University of Peshawar, Pakistan.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

1 http://www.thehindu.com/todays-paper/tp- national/india-us- manage-differences- better-now- says-retired-envoy/article9142944.ece

2 http://katehon.com/article/heres-what- uri-attack- kashmir-has- do-russia- and-china

 

Follow Us On Twitter