08
December

A Media ‘Surgical Strike’

Written By: Shamshad Ahmed

Lately, India's Narendra Modi has been claiming that he will isolate Pakistan. What he doesn't know is that in this region if there is any country already suffering a congenital isolation, it is India which, because of its overbearing size and hegemonic clout, is generating many problems in the region including fear of domination among its smaller neighbours and a host of border conflicts and water disputes with them. It stands more or less alone as an 'exclusive' state without having to be identified in tandem with the rest of the countries in the region.


Ironically, all South Asian countries except Afghanistan share borders with India as the largest state of the region but not with each other. With this unique geographic feature seriously limiting its scope for genuine regional cooperation, SAARC even after three decades of its existence has not been able to deliver on its promise or potential. Now, in his typically belligerent mode, Modi has struck a fatal blow to SAARC by orchestrating the last minute cancellation of its summit meeting that was scheduled to be held last month in Islamabad.

 

amediasurg.jpgWhat else could one expect from a man who as chief minister of India's Gujarat State was responsible for the 2002 Gujarat riots that killed over 2000 Muslims and who for this reason was blacklisted as persona non grata by the EU and the U.S.? What now remains is SAARC's final burial and the best locale for the unceremonious event would be the place where it was born in 1985. Ironically, Modi's best partner in this inauspicious event could be none other than his Bangladeshi counterpart, known for her anti-Pakistan obsession. But when it comes to anti-Pakistan obsession, nobody can beat Modi.


His cold-blooded realpolitik has lately been manifesting in the ongoing Kashmir brutality. To divert global attention from this massive Kashmiri revolt against India's illegal military occupation of their state, he first engineered Pathankot incident and then the Uri drama. He also claimed an evidence-less 'surgical strike' allegedly somewhere across the Line of Control which turned out to be no more than a hoax. What is clear is that Modi's objective has been to destabilize Pakistan and weaken its armed forces which over the decades have emerged as the only cohesive force defending the country against external and internal threats.


Modi may have been kept from conducting a military 'surgical strike' across the Line of Control but surely did manage an intrusive media 'surgical strike' in the heart of Pakistan through a ‘false and fabricated story’ on the proceedings of an extraordinary high-level closed-door meeting planted in a major English daily of Pakistan. The PM office initially tried to deny the story but with the messenger refusing to disown it, came out with another statement expressing concern over the publication of a “fabricated news story” which was termed as "clearly violative of universally acknowledged principles of reporting on national security issues."


According to the statement, "the published story had risked the vital state interests through inclusion of inaccurate and misleading contents which had no relevance to actual discussion and facts.” Taking serious notice of the violation, the Prime Minister directed that those responsible should be identified for stern action. Meanwhile, a strongly worded statement issued by ISPR after former army chief Gen Raheel Sharif chaired a meeting of his Corps Commanders also expressed serious concern over what was claimed as "feeding of false and fabricated story of an important security meeting at PM House" and viewed it as “breach of national security”.


This statement clearly suggested the story in question was planted with malafide purpose and the reporter only played into the hands of vested interests who wanted to show the country in a poor light. To complicate things, the government having first tried to rubbish the report then quickly placed the reporter on Exit Control List. However, in next few days the travel ban was lifted with no explanation and the so-called reporter was allowed to leave the country. A delegation of the All Pakistan Newspapers Society (APNS) and the Council of Pakistan Newspaper Editors (CPNE) after a meeting with Interior Minister Chaudhry Nisar Ali Khan claimed they had persuaded him to withdraw the ban.


With media going into its usual frenzy, feigning anger and frustration, speculating outlandish scenarios and spinning all sorts of wild theories, one is left with a question as to who really was behind this 'false and fabricated' story drama, and why. While the government apparently was looking for the people who 'leaked' the story, the debate in Pakistan quickly turned to whether the newspaper and its reporter should have done the story at all. Most people were of the view that by accepting a story fed from vested interests both had either acted irresponsibly or had fallen into a trap laid out by the enemy. On its part, the newspaper in question insisted on record that "it handled the story in a professional manner and carried it only after verification from multiple sources."


A federal minister in charge of Information and Broadcasting was then suddenly asked to step down for what was stated as a 'lapse' on his part in preventing the false and fabricated story. A commission was then established to investigate the whole episode. Whatever the findings of investigation, one thing is beyond doubt; given the timing and overall backdrop of domestic as well as external security situation, the whole episode smacks of intrigue. If it is really so, there is nothing new for us because we have seen such intrigues before. The 2011 Memogate was perhaps the most sophisticated version of a Byzantine intrigue in which the state itself was seen conspiring against its own sovereignty and integrity.


The notorious 'Memo' purportedly had solicited Washington’s behind-the-scenes intervention to put the Pakistan Army on the spot. In the present case too, the planted story seemed to have been motivated by the same lurking desire that seeks to weaken the army. In fact, since 2008, ineptitude and vulnerability has been the order of the day, with efforts surreptitiously seeking to weaken the armed forces. These sorts of things are being done to keep the armed forces at bay. But such efforts are self-defeating as Pakistan's state institutions are strong enough to defend the national interest and guarantee the security of the motherland.


No wonder, debate on civil-military relations have been an integral part of our body politic. With frequent political breakdowns and overall deterioration of various institutions, the institution of Pakistan Armed Forces has emerged as a primus inter pares, or first among equals. If there have been instances of military intervention in the past, it was only due to effective governance issues and lack of requisite strategic vision or talent in the ruling cadres leaving a vacuum to be filled by whosoever had the power and strategic proficiency.


At least during the last ten years of rule, the armed forces remained steadfast in their constitutional role and in a way providing every opportunity to other state institutions to do their job. Not only restricting to this, the armed forces assisted other state institutions in doing good things.

 

The disgraceful Memogate and now the surreptitious handling of the news leak (feed) issue only show insecurity at best or malafide at worst. What should be clear by now is that on vital security-related issues in a perilously-located country as ours, the pivotal role of so-called ‘establishment’ is indispensable for the preservation of the state's independence and integrity on which is predicated survival and growth of other institutions.


There is a need that other state institutions should be looking at the country's armed forces as their strength and an asset, not an adversary. Pakistan cannot afford any institutional clashes; these weaken the state. Vested foreign and local interests exploit the situation. A country remains vulnerable externally if it is weak domestically. Today, Pakistan is facing an exceptionally dangerous challenge with aggressive rhetoric as well as belligerent threats from India with equally hostile and ominous narratives emanating from Afghanistan and Washington.


As we remain engaged in a decisive battle for our security and survival, Pakistan is being subverted from within. Instead of walking into the traps, we should be joining together in reinforcing the elements of our nationhood. We badly need domestic cohesion and mutual confidence among the state institutions. To keep our country strong and stable, we must root out from our body politic the mindset of heresy, sedition and treachery that provides fertile ground for enemy maneuvers against Pakistan. It is also time our mainstream media owned its national responsibility by upholding our national ethos and defending the country’s independence, security and national integrity.

 

The writer is a former foreign secretary.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
13
December

آٹھ نومبر2016کے بعد

تحریر: خورشید ندیم

8نومبر کو امریکہ میں صدارتی انتخابات ہوئے۔ کیا یہ تاریخ 9/11کی طرح انسانی تاریخ کو قبل از اور بعد از دو ادوار میں تقسیم کر دے گی؟
تاریخ میں پیش آنے والا کوئی واقعہ منفرد نہیں ہوتا۔ یہ سلسلۂ روز و شب کی ایک کڑی ہوتا ہے۔ ناگہانی آفات کا معاملہ دوسرا ہے۔ زلزلہ اور سونامی جیسے واقعات بھی زندگی کا رخ بدل دیتے ہیں لیکن ان کا تعلق کائنات میں جاری ان قدرتی قوانین سے ہوتا ہے جو سماجی زندگی میں اپنی کوئی اساس نہیں رکھتے۔ مذہبی تعبیرات اگرچہ ان واقعات کو بھی سماج کے اخلاق سے متعلق کرتی ہیں لیکن اس وقت ما بعد الطبیعاتی پہلو اس مضمون کا موضوع نہیں۔ یہاں ان واقعات کا بیان مقصود ہے جن کا تعلق سماجی زندگی سے ہے اور جن کا صدور معاشرتی تبدیلیوں کے جلو میں ہوتا ہے۔
کارل مارکس نے اپنے عہد میں سرمایہ داری نظام کا تجزیہ کیا اور یوں اسے اس طبقاتی کشمکش کے پس منظر میں دیکھا جو اس کے خیال میں تاریخ کے عمل پر ہر دور میں اثر انداز ہوتا رہا ہے۔ اسی طرح مذہبی سکالرز نے تاریخی عمل کو مابعد الطبیعاتی پہلو سے دیکھا۔ آدم سمتھ جیسے اہل علم نے سرمائے کی مرکزیت کو بیان کیا۔ مارکس بھی اگرچہ ہیگل کی روایت ہی سے متعلق ہے لیکن کچھ لوگوں نے خالصتاً فلسفے کے تناظر میں تاریخی عمل کو نظریہ یاردِ نظریہ اور پھرامتزاج کے حوالے سے بیان کیا ہے۔دور حاضر پر جب اس تصور کا اطلاق کیا گیا تو کہا گیا کہ انسان کے سماجی ارتقاء کا سفر ایک سرمایہ دارانہ جمہوری معاشرے کی تشکیل پر تھم جانا چاہئے۔ اگرچہ ’’ اختتامِ تاریخ ‘‘ کا تصور پیش کرنے والوں کو خود اس پر نظر ثانی کی ضرورت محسوس ہوئی۔


9/11کا دن اس لئے اہم شمار ہوتا ہے کہ ایک عالمی قوت کے علاماتی مراکز کو ہدف بنا کر یہ پیغام دیا گیا کہ یہ نظام ناقابل تسخیر نہیں ہے۔یہ بھی زوال آشنا ہو سکتا ہے اور خود اس کے داخل میں اتنے خلا ہیں جو اس کی سلامتی کے لئے خطرہ بن سکتے ہیں۔جن لوگوں نے ان واقعات کا تجزیہ کیا، انہوں نے اسے زیادہ تر انتظامی پہلو سے دیکھا۔ امریکہ میں اس کے بعد جو کچھ ہوا، اس میں انسانی آزادی پر قدغنیں لگائی گئیں۔ سکیورٹی کے لئے نئے ادارے بنے۔ موجود اداروں کے اختیارات میں اضافہ کیا گیا اور اس بات کو بڑی حد تک یقینی بنایا گیا کہ کوئی ایسا واقعہ نہ ہو جو اس سرمایہ دارانہ نظام کے لئے کسی طرح بھی خطرے کا باعث ہو۔ اس میں شبہ نہیں کہ امریکہ اس میں بڑی حد تک کامیاب رہا۔ دنیا ایسے واقعات کی زد میں رہی لیکن امریکہ میں 9/11 کے بعد کوئی بڑا واقعہ نہیں ہوا۔
11/8کو لیکن امریکہ میں ایک اور دھماکہ ہو گیا۔ یہ بھی اس کے اندر سے ہوا۔ اس کا سبب بھی اس کے داخلی نظام کے خلا تھے جن سے ایک ایسا فرد منصب صدارت تک پہنچ گیا، جس کا راستہ روکنے کے لئے امریکی ریاستی نظام نے ممکن حد تک کوشش کی تھی۔ وہ تمام قوتیں جو موجودہ امریکی نظام کی بقا اور تسلسل کے لئے سرگرم ہیں، وہ اس دھماکے کو روک نہیں سکیں۔ ڈونلڈ ٹرمپ صدر بن گئے اور ریاستی نظام9/11 کے بعد ایک بار پھر بے بس دکھائی دیا۔ سوال یہ ہے کہ کسی خارجی تائید کے بغیر یہ واقعہ کیسے ہو گیا؟


یہ ممکن ہے کہ اس کے نتیجے میں امریکہ میں خود احتسابی کا عمل آگے بڑھے۔ 9/11 کے بعد جو کمیشن بنا اور اس کے بعد بھی تحقیقات کے لئے جو کوششیں ہوئیں، ان میں خارجی قوتوں یا پھر داخلی سطح پر انتظامی معاملات کے نقائص کو موضوع بنایا گیا۔ ’سیاسی اسلام‘ کے تصور میں اس واقعے کے اسباب تلاش کرتے کرتے لوگ ابن تیمیہ تک جا پہنچے، لیکن وہ اس پر غور کرنے کے لئے آمادہ نہیں ہوئے کہ ان کی وہ کون سی حکمت عملی ہے جس نے انہیں اس حادثے سے دوچار کیا۔ صدارتی انتخابات چونکہ سو فی صد داخلی واقعہ ہے، اس لئے امید کی جا سکتی ہے کہ یہ امریکہ پر خود احتسابی کا دروازہ کھول دے۔


واقعہ یہ ہے کہ امریکہ میں جو کچھ ہوا، وہ محض ایک ملک تک محدود عمل نہیں ہے بلکہ سرمایہ دارانہ نظام میں موجود اس پیدائشی نقص کا نیا ظہور ہے جو غریب کو غریب تر اور امیر کو امیر تر کرتا ہے۔ یہ دولت کو چند ہاتھوں میں محدود کر دیتا ہے۔ عام آدمی چونکہ فلسفیانہ بحثوں میں نہیں الجھتا اس لئے جب کوئی سرمایہ دارانہ نظام کے اس نقص کو نمایاں کرتا اور عوام کو سبز باغ دکھاتا ہے تو وہ اس کا شکار ہو جاتے ہیں اور اس غلط فہمی میں مبتلا ہو جاتے ہیں کہ ان کا نجات دہندہ آگیا۔ حالانکہ وہ اس پر غور نہیں کرتے کہ نجات دہندہ خود اس نظام کی عطا ہے، وہ جس کے خلاف آواز اٹھا رہا ہے۔


9/11 کے حادثے کے بعد امریکہ میں ذمہ دار لوگوں نے جس طرح اسباب کا کھوج لگانے میں غلطی کی‘ اسی طرح معلوم یہ ہوتا ہے کہ اس بار عامۃ الناس نے بھی غلطی کی۔ صدر ٹرمپ نے امریکی مسائل کے جو اسباب تلاش کئے، ان میں وہ تارکین وطن سر فہرست ہیں جو ان کے خیال میں امریکی معیشت پر بوجھ ہیں۔ اسی طرح وہ مسلمانوں اور عربوں کو ہدف بنانا چاہتے ہیں۔ اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ امریکہ کی اشرافیہ ایک بار پھر تجزیے میں غلطی کی مرتکب ہو رہی ہے۔ صدر ٹرمپ نے اگر اپنے اس تجزیے کی بنیاد پر ریاستی حکمت عملی تشکیل دینے کی کوشش کی تو یہ عمل امریکہ کو نئی طرز کے مسائل سے دوچار کر دے گا۔


سرمایہ دارانہ نظام کو پہلا چیلنج اشتراکیت کی صورت میں پیش آیا۔ اس کا سامنا کرتے وقت کم از کم اس حد تک مسئلہ کا درست تجزیہ کیا گیا کہ مزدور اور کسان کو اگر کارخانے اور کھیت کی آمدن سے حصہ نہ دیا گیا تو اس کے نتیجے میں پھیلنے والی بغاوت اہل سرمایہ کو لے ڈوبے گی۔ لہٰذا انہوں نے ویلفیئر ریاست کا تصور دے کر کارخانے اور کھیت کے منافع میں مزدور اور کسان کو اس حد تک شریک کر لیا کہ وہ زندہ رہنے کے قابل ہو گیا۔ یوں اس بغاوت کا خطرہ ٹل گیا جو سرمایہ داری کے سفینے کو ڈبونے کے درپے تھی۔ اس بار ایسا ہوتا دکھائی نہیں دے رہا۔ اگر اس نظام کے داخلی نقائص کو دور کرنے کے بجائے، امریکی مسائل کا ذمہ دار دوسروں کو قرار دینے کی کوشش جاری رہی تو امریکہ کو داخلی سطح پر بڑی مشکلات پیش آ سکتی ہیں۔
بعض لوگوں کا خیال ہے کہ ماضی کی طرح اس بار بھی سرمایہ دارانہ نظام اپنے تحفظ میں کامیاب ہو جائے گا۔ صدر ٹرمپ وہ کچھ نہیں کر پائیں گے جن کا انہوں نے وعدہ کیا۔ زمینی حقائق انہیں مجبور کریں گے کہ وہ ان کا لحاظ رکھیں۔ تارکین وطن کو ذمہ دار ٹھہرانے کے بجائے، امریکی صدر کو داخلی اصلاح پر توجہ دینا ہو گی۔ ان عوامل کو تلاش کرنا ہو گا جنہوں نے امیر لوگوں کو امیر تر بنا دیا ہے۔ سب سے اہم سوال یہ ہے کہ کیا صدر ٹرمپ یہ سب کچھ کر پائیں گے، جب کہ خود ان کا اپنا تعلق اسی سرمایہ دار استحصالی گروہ سے ہے۔ اس سوال کا جواب تاریخ کے پاس ہے لیکن قوموں کے باب میں ایک سنت مسلسل کار فرما ہے جسے علامہ اقبال نے بیان کیا ہے۔


صورتِ شمشیر ہے دست قضا میں وہ قوم
کرتی ہے جو ہر زماں اپنے عمل کا حساب
اب دیکھنا یہ ہے کہ امریکی قوم اپنے عمل کا حساب کرتی ہے یا نہیں۔

مضمون نگار معروف دانشور ،سینئر تجزیہ نگار اور کالم نویس ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

شہدائے وطن کی نذر


ہے پیشِ نظر، یہ کیا مَنظر
اِک مردِ مُجاہد، لَڑ لَڑ کر
بازخمی دل و باخُونیں جگر
کہتا ہے سُنو! یہ رَہ رَہ کر
لو جامِ شہادت پیتا ہوں
اب تا بہ قیامت جیتا ہوں!
یہ جان تو آنی جانی ہے
یہ گویا ایک کہانی ہے
یہ دُنیا دارِ فانی ہے
اِک دائم ذات رَبانی ہے
اے پیکر جُود و صدق و صفا!
اے جانِ وفا! تسلیم و رضا!
یہ لالہ و گُل،یہ رنگِ چمن
یہ سُنبل و ریحاں، سَرو و سمن
یہ اِن کی مہک، یہ اِن کا پھبن
سب تیرا ہی صدقہ، تیری لگن
اے فخرِ وطن! اے شانِ سپاہ!
باحُکمِ خدا، تو اَمر ہوا!


خواجہ اصغر پرےؔ

*****

 
08
December

Pak-U.S. Relations in Emerging Dynamics

Written By: Dr. Zafar Nawaz Jaspal

Donald Trump has been elected as the 45th President of the United States on November 8, 2016. The triumph of Trump was unexpected for many analysts and thereby they avowed it ‘a great upset of electoral politics.’ Conversely, for many his triumph was likely due to a few trends in the United States domestic politics. Hillary Clinton was a popular presidential candidate, yet with many handicaps. Indeed, the constituents voted for a change, which they consider imperative for their betterment. Therefore, the revamp in Washington’s internal and external affairs is plausible. Whether Trump Administration realizes the dreams of the Americans or not, is a lesser concern for other nations. The allies, partners and above all strategic competitors are more concerned about the foreign policy of Trump Administration.


During the campaign, candidate Trump paid little attention to foreign policy. Moreover, he took several, sometimes contradictory, positions on the few issues that he addressed during his election speeches. His slogan “Make America Great Again,” contradicts his opinion that ‘the problems in Europe, Asia, NATO, and Syria, are for others to worry about.’ Though Trump Administration’s foreign policy would be the continuity of its domestic policies, yet drastic changes in the United States external affairs are not expected. It’s because Washington’s foreign policy is based on issues, not personalities. The literature on foreign policy analysis, however, confirms the role of individual/personality in both chalking out and execution of foreign policy. Hence, the pertinent question is; ‘what would President Trump do?’

 

pakusrelin.jpgToday, the two interlinked important questions for the Pakistani ruling elite are that what would be the foreign policy of Trump Administration? How would it shape Islamabad and Washington’s relations? Perhaps, it is too soon to make precise predictions about the Trump Administration’s approach towards Pakistan. For the sake of adequate analysis, the following discussion is divided into two sections. The first section precisely underscores the factors that contributed in Trump’s triumph. The understanding of these factors seems significant for professing about Trump Administration’s worldview in general and relations with Pakistan in particular. It is followed by forethought on Pakistan and United States bilateral relations.


Trump’s Triumph
According to election results, Hillary Clinton received 228 electoral votes (60,827,933 votes—47.8%) and Donald Trump got 290 (60,261,913 votes—47.3%). The winning candidate required minimum 270. Hence, Trump won the 2016 U.S. Presidential election. Interestingly, he secured majority electoral vote in spite of “characterizing Mexican immigrants as criminals, doubting the allegiances of Muslim-Americans, denigrating women and emboldening white supremacists” during his election campaign. Many analysts expressed their doubts about his victory prior to the polling day (November 8, 2016) because they were convinced that in the American society a leader who publicizes segregation and xenophobia enjoys very limited support. Moreover, they were overwhelmed by Clinton’s popularity.


Trump’s slogans ‘Make America Great Again’ and ‘Take Back Your Country’ certainly, were very attractive for both nationalists as well as jobless Americans. He outflanked his rival by moving decisively to the left on economic issues and also succeeded in painting Hillary Clinton as the agent of the rich and uncaring American elite. In addition, many other factors contributed in Donald Trump’s triumph in the 2016 U.S. Presidential election. Since the very beginning of 2016 Presidential campaign Hillary Clinton was encountering the email controversy. She made the mistake of using a private e-mail server while she was U.S. Secretary of State. She failed to settle this issue prior to her announcement as a presidential candidate. Consequently, James Comey’s (FBI Director’s) unprecedented decision to restart the e-mail investigation ten days before the vote, contributed significantly in ruining her bid to become the first female President of the United States. Perhaps, Comey’s bombshell had a decisive effect at a time when Mrs. Clinton was hoping to win the election. It refreshed the memories of those who believe that she could act insouciantly or irresponsible in the national security matters.


Secondly, Mrs. Clinton’s supporters wrongly expected too much from Barack Obama’s coalition of the suburban women, young adults, Black and Hispanic voters. According to exit polls, ‘one-third of Hispanic men voted for Trump despite his vow to build a wall on the Mexican border’. It seems that she also failed to muster the support of women. In addition, voter turnout manifests that Democrats either did not participate wholeheartedly or they rejected Clinton. For instance, according to reports she received 5–6 million votes less than President Barack Obama in 2012.


Thirdly, Mr. Trump successfully exploited the issues of a common man in the U.S., i.e., lost jobs, lost wages and lost stature. He severely criticized her policies as the Secretary of State. He often stated; “This is the legacy of Hillary Clinton: death, destruction and weakness.” He intelligently used American nationalism to muster the support of the jobless, especially those who wanted their jobs back. In his election campaign speeches, he promised to terminate all the trade agreements that damaged the U.S. industry and left Americans jobless and assured to throw out illegal immigrants.


Fourthly, candidate Trump insisted that the NATO allies would pay their security bills. He also opined that instead of spending on the security of Japan, South Korea and other allies, U.S. needed to spend at home, ‘to fix’ America’s problems. In this context, he suggested that South Korea and Japan should develop their own nuclear weapons. In the words of Professor Scott Sagan: “These kinds of statements are having an effect. A number of political leaders, mostly from the very conservative sides of the parties, are openly calling for nuclear weapons.” The common man in the United States seems less cognizant of the advantages which United States reap from Euro-Atlantic alliance and by providing security umbrella to Japan and South Korea. Therefore, his isolationist approach towards Europeans and Asian allies and reconciliatory approach towards the Russian Federation had a positive impact on many electors.


Fifthly, candidate Clinton was viewed as an agent of continuity, whereas, common Americans were aspiring for change. They were not in favor of status quo due to several policies of Obama Administration. That’s why they preferred an inexperienced Presidential candidate, Donald Trump, over the experienced candidate Hillary Clinton. Despite the fact that the latter forcefully highlighted throughout her campaign that she had a vast experience of governance. Many analysts have been interpreting the defeat of Hillary as a revolt against the establishment. The critics opined that United States is a ‘Republic’ instead of ‘Dynasty’ and thereby dynastic politics were not acceptable in a participatory political culture. The defeat of Hillary Clinton manifests that American voters were not eager to support the dynasties in American politics.


Although, theoretically, the projects such as building a wall along the U.S.-Mexican border; imposing severe curbs on immigration from Muslim countries; dismantling Obama-care; rewriting major trade deals; ramping up the fight against alleged Islamist militants, etc., seem feasible yet practically realizing them is a hard task. Moreover, his promise to adopt Mercantilist approach, which ensures protectionist barriers and punitive duties on imports to uplift the American industrial units, sounds rational but such an approach also has its own intrinsic adverse fallouts for the national economy.


The Trump Administration would be in an advantageous position due the Republican majority in both houses of the Congress i.e., the Senate and the House of Representatives. Thanks to the Republican majority, President Trump would be able to carry out his reform agenda through legislative power. Perhaps, he would sincerely focus on reforms for accomplishing his election manifesto to win the Presidential election in 2022.


Trump Administration and Pakistan
For decades, Pakistan has been a beneficiary of the U.S. aid, which the latter has always used as a strategic lever to pursue its global strategic pursuits. During the Cold War, for instance, assistance was provided to Pakistan as part of the former Soviet Union containment strategy. Presently, Islamabad is receiving U.S. aid due to its relevance in U.S. strategy to win the war on terror. Hence, the engagement between Islamabad and Washington would continue due to the ongoing war against terrorism and U.S. presence in Afghanistan. However, the situation would be different if Trump decides to pull out of Afghanistan.


Donald Trump is a Republican. Historically, Republicans have maintained a soft corner for Pakistan. Republican Presidents such as Nixon, Reagan, senior Bush and his son were closer to Pakistani establishment, not because of ideology but due to strategic developments in the neighbourhood of Pakistan. Realistically, they provided aid to Pakistan for the sake of U.S. national interest and kept a distance, when they felt that assisting Pakistan diplomatically and economically was not in their national interest. For instance, in 1971 Nixon Administration did not stop India from forcibly dismembering Pakistan. Similarly, after the withdrawal of Soviets from Afghanistan, President H.W. Bush, immediately imposed Pressler Amendment sanctions on Pakistan. Importantly, his predecessor President Reagan ignored Pakistan’s cold test of nuclear weapons in March 1983 because he needed Pakistan to end the Soviet occupation in Afghanistan.


The prevalent strategic environment is completely different. Trump acknowledged India as a ‘geopolitical ally’. Moreover, since the beginning of the twenty-first century, Republicans have been treating India as an important ally in Asia. Therefore, expecting inclination of the Republicans towards Pakistan in the prevalent global strategic environment would be an error of judgement. Donald Trump’s election speeches and trends in the American South Asian policy indicated that the new American administration would sustain Obama Administration’s Indo-U.S. strategic partnership and encourage New Delhi to increase its presence in the Indian Ocean. Trump Administration would facilitate New Delhi in purchasing American military hardware for supporting United States military industrial complex and also checking China in the Asia-Pacific.


Pakistan’s cementing strategic partnership with China would undoubtedly be unacceptable for Trump Administration. Therefore, it would incessantly reiterate the Obama Administration’s mantra of ‘Do More’ in case of eliminating the menace of terrorist organizations; pressurize Pakistan for capping its nuclear program, maintain explicit neutrality and implicit opposition to Islamabad’s entry into the voluntary technological cartels, i.e., Nuclear Suppliers Group, Missile Technology Control Regime, Wassenaar Arrangement, and Australia Group.


The military buildup of India is acceptable for United States in the current global strategic environment. Therefore, Trump Administration would have an affirmative approach towards India’s armed forces modernization and entry into technological cartels. Indeed, the Indian armed forces advancement would be perilous for the national security of Pakistan. It necessitates matching responses from Islamabad. The counter-measures for solidifying Pakistan’s defensive shield is likely to magnify arms race between the South Asian belligerent neighbours. Thus, Trump administration courting with India would neither be in the interest of Pakistan nor have constructive consequences for the South Asian strategic stability.


To conclude, our policy makers need to be more realistic in charting out a strategy to engage Trump Administration after January 20, 2017.

 

The writer is Associate Professor at School of Politics and International Relations at Quaid-i-Azam University, Islamabad.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
13
December

سفارت کاری اور ملکی دفاع

تحریر: جاوید حفیظ

سفارت کاری اور دفاع بظاہر بالکل مختلف پیشے نظر آتے ہیں لیکن دونوں ایک دوسرے کے لئے لازم و ملزوم ہیں۔ یہ دونوں اہم پیشے اس وقت وجود میں آئے جب اقوام کا تصور اجاگر ہوا۔ قومی ریاستیں بنیں۔ ان ریاستوں میں مسابقت کا عنصر لازمی امر تھا۔ لہٰذا جارحیت اور دفاع دونوں کا آغازہوا اور دفاع کے لئے منظم عسکری قوت لازمی ٹھہری۔ جنگوں کو روکنے کے لئے سفارت کاری کا استعمال ضروری تھا۔ کسی بڑی اور جارحانہ ریاست کا مقابلہ کرنے کے لئے دو یا زیادہ ملک دوستی کا معاہدہ کرتے تھے۔ ایسے معاہدوں کے لئے دوسرے ملکوں میں ایکچی بھیجے جاتے تھے۔ انسانی تاریخ میں یہ اولین سفیر تھے۔ مصر میں دریافت کی گئی چکنی مٹی کی تختیوں کی تحریر سے پتا چلتا ہے کہ آج سے ساڑھے تین ہزار سال پہلے فراعین مصر نے ایسے ایلچی کنعان( فلسطین) اور دیگر ریاستوں میں بھیجے۔ یہ ایلچی اپنا مشن مکمل کرنے کے بعد واپس آ جاتے تھے۔ مستقل سفارت خانے بہت عرصے کے بعد یورپ میں شروع ہوئے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ترکی زبان میں سفیر کے لئے آج بھی ایلچی کا لفظ مستعمل ہے۔


جس طرح دفاع کا شعبہ تیر اور تلوار سے ہوتا ہوا ایٹمی ہتھیاروں اور سٹار وارز تک پہنچ گیا ہے۔ اسی طرح سے سفارت کاری بھی ارتقاء کی کئی منازل سے گزری ہے۔ آج کے اکثر سفارت خانے ہمہ وقت میزبان ملک میں موجود رہتے ہیں جس طرح سے افواج میں مختلف رینک یعنی لیفٹیننٹ، کیپٹن اور میجر وغیرہ تمام دنیا میں تقریباً یکساں ہیں اسی طرح سے سفارت کاروں کے عہدے بھی مشابہت رکھتے ہیں۔ جونیئر ترین سفارت کار، تھرڈ سیکرٹری ہوتا ہے جبکہ سب سے سینئر سفیر۔


سفارت کار دو ملکوں کے درمیان پل کی حیثیت رکھتا ہے۔ ایک زمانہ تھا کہ سفیر کا بنیادی کام اپنے میزبان ملک کے بارے میں رپورٹیں بھیجنا ہوتا تھا۔ پچھلے پچاس سال میں کمیونیکیشن کے ذرائع میں انقلاب آیاہے۔ آج کا الیکٹرانک میڈیا ہمیں دنیا کے کونے کونے سے پل پل کی خبریں دیتا رہتا ہے۔ لہٰذا سفارت خانے کا رول خاصا بدل گیا ہے۔ آج کے سفارت خانے تجارت کے فروغ کے لئے کام کرتے ہیں۔ دوست ممالک کے ساتھ دفاعی تعاون بڑھانے میں مشغول نظر آتے ہیں۔ میڈیا کے نمائندوں سے تعلقات استوار کر کے اپنے ملک کا امیج بہتر کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ اپنے کلچر کی تشہیر کے لئے فلم فیسٹیول اور میوزک کنسرٹ کراتے ہیں۔ اپنی کمیونٹی کی ویلفیئر کے لئے کام کرتے ہیں۔ سفارت کار کا بنیادی کام زمانہ قدیم سے ایلچی کا رہا ہے۔ دو ملکوں کے درمیان پیغام رساں کا کام کرنے والے کے لئے ضروری ہے کہ اسے مکمل تحفظ حاصل ہو۔ یوں تو سفارتی مشن کا تصور پرانا ہے لیکن 1961 میں دیانا کنونش کے ذریعے اسے باقاعدہ معاہدے کی شکل دے دی گئی۔ یہ معاہدہ خاصا جامع ہے لیکن بنیادی بات یہی ہے کہ سفارت کاروں کو مکمل تحفظ دینا میزبان ریاست کا فرض ہے اور مقامی فوجداری قوانین سفارت کاروں پر لاگو نہیں ہوں گے۔ اس معاہدے کی روح یہی ہے کہ سفارت کار بلاخوف خطر اپنا کام جاری رکھ سکیں۔ سفارت کاروں کا براہ راست تعلق فارن منسٹری سے ہوتا ہے جو بوقت ضرورت انہیں بلانے کا اختیار بھی رکھتی ہے۔
دفاع اور قومی سلامتی کا تصور بھی خاصا بدل گیا ہے۔ آج اقتصادی ترقی نیشنل سکیورٹی کا اہم جزو ہے۔ اگر اقتصادی حالت اچھی ہو گی تب ہی کوئی ملک جدید ہتھیار خریدنے کے قابل ہو گا۔ اپنے فوجی دستوں کی اچھی ٹریننگ کر سکے گا۔ دوست ممالک کے ساتھ اعلیٰ لیول کی مشترکہ حربی مشقیں باقاعدگی سے کر سکے گا۔


ایک اور غلط تصور یہ بھی ہے کہ افواج کا کام صرف جنگ یا جنگ کی تیاری ہے۔ آج کل امن دستے اقوام متحدہ کے تحت مختلف ممالک میں بھیجے جاتے ہیں جہاں تناؤ زیادہ ہو اور امن کو خطرات درپیش ہوں۔ پاکستان دنیا بھر میں امن دستے بھیجنے والے ممالک میں ممتاز مقام رکھتا ہے۔ اسی طرح سے نیول جہاز مختلف ممالک میں دوستانہ دورے کرتے رہتے ہیں۔ ان دوروں کے مختلف مقاصد ہوتے ہیں لیکن سب سے بڑا مقصد باہمی دوستی اور تعاون کا فروغ ہوتا ہے۔ مجھے یاد ہے کہ جب میں سلطنت عمان میں سفیر تھا تو سمندری طوفان سونامی آیا تھا۔ اس طوفان سے تھائی لینڈ اور سری لنکا کے ساحلی علاقوں میں بڑی تباہی آئی تھی۔ ہمارا نیول جہاز پی این ایس طارق اُن دنوں خیرسگالی کے دورے پر جزائر مالدیپ کے آس پاس تھا۔ مالدیپ کے جزیروں میں طوفان نے تباہی پھیلا دی کئی لوگ سمندر کی خوفناک لہروں کی نذر ہوئے۔ اس خطرناک صورت حال میں پی این ایس طارق کے کپتان اور عملے نے اپنی جانوں کی پروا کئے بغیر سیکڑوں لوگوں کو محفوظ مقامات پر پہنچایا۔ یہ انسانی دوستی کا شاندار مظاہرہ تھا۔ چند روز بعد ہمارا جہاز مسقط کی پورٹ پر لنگر انداز ہوا تو سفارت خانے نے نہ صرف جہازوں کے کپتان اور دیگر افسروں کے لئے شاندار ڈنر کا اہتمام کیا بلکہ لوکل میڈیا کے ذریعے ان کے کارنامے کی تشہیر بھی کی۔


ایک اہم سوال یہ ہے کہ اچھا سفارت کار کن خوبیوں کا حامل ہونا چاہئے۔ بہت پہلے کی بات ہے کہ برطانیہ کے ایک سفیر نے یورپ کے کسی ملک میں کہا کہ سفیر وہ جنٹلمین (شریف آدمی) ہوتا ہے جو اپنے ملک کے فائدے کے لئے دوسرے ملک میں جھوٹ بولتا ہے۔ روایت ہے کہ سفیر صاحب کی اس بات کو لندن میں بالکل پسند نہیں کیا گیا اور حقیقت بھی یہ ہے کہ سفارت کار اگر ہمہ وقت جھوٹ بولنے لگیں تو ان کا بھرم یعنی اعتماد
(credibility)
ختم ہوجائے۔ اچھا سفیر ہمہ وقت اپنے ملک کے مفادات کے حصول میں سرگرم نظر آتا ہے۔ وہ میزبان ملک میں حکمران طبقے میڈیا سرمایہ کاروں اور اہم فوجی افسروں سے قریبی تعلقات استوار کرتا ہے۔ دوطرفہ بات چیت کے لئے بنائے گئے اداروں مثلاً جائنٹ وزارتی کمشن یا فارن سیکرٹری لیول پر بنائی گئی کمیٹی کو مصروف رکھتا ہے۔ سفارت کار کے ہتھیار اس کی دوستانہ شخصیت، اعلیٰ علمی قابلیت، لوکل کلچر اور زبان کا علم ہوتے ہیں۔ اچھے سفیر کو درجنوں اہم شخصیات کے نہ صرف نام اور کوائف معلوم ہونا چاہئیں بلکہ اُن تک رسائی حاصل کرنا بھی ضروری ہوتاہے۔


کسی بھی اہم ملک میں سفیر کا کام ہے کہ وہ رسمی دو طرفہ بات چیت کا لیول سٹریٹیجک ڈائیلاگ تک لے جائے۔ امریکہ اور یورپی یونین میں ہمارے سفیروں نے یہ ہدف حاصل کیا ہے۔ سول میںیہ کام فارن سروس سرانجام دیتی ہے۔ مسلح افواج کی جانب سے جائنٹ چیفس کمیٹی کے چیئرمین مختلف ممالک کا دورہ کر کے علاقائی اور بین الاقوامی صورت حال پر تبادلہ خیال کرتے ہیں اور دو طرفہ دفاع مضبوط کرنے کی بات بھی دوستانہ ممالک میں کرتے ہیں۔ میرا ذاتی تجربہ ہے کہ دفاعی طرز کی یہ اعلیٰ لیول کی ملاقاتیں بے حد مفید ہوتی ہیں اور ا گر اس ملک میں سفیر اور ڈیفنس اتاشی اچھے پروفیشنل افسر ہوں اور سفارت خانے نے اپنا ہوم ورک اچھا کیا ہو تو یہ ملاقاتیں مفید تر ہو جاتی ہیں۔ عین ممکن ہے کہ آپ کے ذہن میں یہ سوال آئے کہ وہ میزبان ملک جس کا رویہ مخاصمانہ ہو وہاں سفارت کار کیا کر سکتا ہے اور جواب یہ ہے کہ سفارت کار دشمن ملک میں بھی دوست ڈھونڈتا ہے۔ اچھا سفارت کار ٹھنڈے مزاج کا دانا شخص ہوتا ہے۔ وہ 1965کی جنگ کے فوراً بعد تاشقند معاہدے کے لئے کام شروع کر دیتا ہے۔ 1971 کی جنگ کے بعد شملہ معاہدے کی تیاری کرتا ہے۔ کوئی تین عشرے پہلے کی بات ہے کہ نئی دہلی میں منیر شیخ مرحوم ہمارے انفارمیشن کونسلر تھے۔ وہ خود شاعر تھے اور انڈین شعراء کو باقاعدگی سے گھر بلا کر شعر و شاعری کی محفلیں سجاتے تھے۔ آہستہ آہستہ انڈیا کی ادبی تنظیمیں بھی شیخ صاحب کو مدعو کرنے لگیں۔ جب اُن کی نیو دہلی سے پاکستان ٹرانسفر ہوئی تو انڈین ادیبوں نے الوداعی فنکشن کیا۔ ایک انڈین ادیب نے اپنی تقریر میں کہا کہ شیخ صاحب کے پاکستانی ہائی کمیشن میں آنے سے پہلے ہم سمجھتے تھے کہ وہاں صرف ویزے ایشو ہوتے ہیں۔


جیسا کہ سطور بالا میں کہا گیا ہے کس بھی سفیر کا اولین فرض اپنے ملک کے مفادات کا ممکنہ حصول ہوتا ہے۔ اس مقصد کے حصول میں تمام افسر بشمول فرسٹ سیکرٹری قونصلر ڈیفنس اتاشی ٹریڈ اتاشی انفارمیشن قونصلر سب سفیر کی معاونت کرتے ہیں۔ 2002کی بات ہے کہ پی آئی اے نے نئے جہاز خریدنا تھے۔ چوائس بوئنگ اور ایئربس کے درمیان تھی۔ بوئنگ ایئر بس سے خاصا مہنگا جہاز ہے۔ ایئر بس کے انجن بھی بوئنگ 777سے زیادہ تھے۔ لہٰذا فلائٹ سیفٹی کے اعتبار سے بھی ایئربس بہتر تصور ہوتا تھا۔ پی آئی اے کے انجینئر بھی ایئربس کی حمایت کر رہے تھے۔ لیکن اسلام آباد میں مقیم امریکی سفیر حکومت پاکستان سے بار بار کہہ رہے تھے کہ بوئنگ کہیں بہتر طیارہ ہے۔ بالآخر حکومت پاکستان نے بوئنگ طیارے خریدے۔


ایک زمانہ تھا کہ فرنچ کو سفارت کاری کی زبان کہا جاتا تھا۔ اٹھارویں اور انیسویں صدی میں اکثر سفیرحضرات بادشاہوں کے قریبی عزیز ہوتے تھے۔ اپنے اپنے ممالک کی شان و شوکت ثابت کرنے کے لئے وہ بڑے بڑے گھروں میں رہتے تھے۔ شاندار ڈنر کرتے تھے۔ اکثر کہا جاتا تھا کہ سفیر کی کامیابی میں ماہر باورچی کلیدی رول ادا کرتے ہیں۔ اب حالات کافی بدل گئے ہیں۔ سفارت کار مقابلے کے امتحان کے ذریعے سیلیکٹ ہوتے ہیں لہٰذا اس پیشے میں بھی اب مڈل کلاس کے لوگ عام ہیں۔ فرانسیسی زبان کی جگہ انگریزی نے لے لی ہے۔ میں نے یونان میں چند سفیروں کو اپارٹمنس میں رہتے بھی دیکھا ہے۔


مشہور مقولہ ہے کہ اچھی عسکری تیاری امن کی بہترین ضمانت ہے اور اگر اچھی عسکری تیاری کے ساتھ اعلیٰ پائے کی سفارت کاری بھی میسر ہو تو دفاع اور بھی مضبوط ہو جاتاہے۔ اسی وجہ سے سفارت خانوں کو فرسٹ لائن آف ڈیفنس بھی کہا جاتا ہے۔ یہ بات بھی اب راز نہیں رہی کہ بعض اہم سفارت خانوں میں حساس اداروں کے لوگ بھی ہوتے ہیں۔ اگر یہ لوگ اپنے کام میں ماہر ہوں تو سفیر کی خاصی مدد ہو جاتی ہے۔ دوسری جانب اچھے سفیر ان افسران کی رہنمائی بھی کرتے ہیں۔ عام تصور یہ ہے کہ سفارت کار دنیا کی سیر کرتے ہیں اور مزے کرتے ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ اس پیشے کو بھی اب خطرات لاحق ہیں مگر صرف اُن ملکوں میں جہاں حالات خراب ہیں۔ چند سال پہلے لیبیا کے شہر بن غازی میں امریکہ کے سفیر مارے گئے تھے۔ لیکن خطرات تو ہر پیشے میں ہوتے ہیں ملک کے سپاہی مادر وطن کے دفاع کے لئے ہر وقت جان ہتھیلی پر لئے پھرتے ہیں۔


اس بات میں اب کوئی شک نہیں رہا کہ ہمارا ہمسایہ ملک پاکستان کو اندرونی طور پر کمزور کرنے کے لئے مختلف حربے استعمال کر رہا ہے۔ اسی طرح سے وہ ہمیں دنیا میں تنہا کرنا چاہتا ہے۔ ان عزائم کو ناکام بنانے کے لئے ضروری ہے کہ ملکی سلامتی کے ادارے اور وزارتِ خارجہ دن رات مل کر کام کریں۔

مضمون نگار مختلف ممالک میں پاکستان کے سفیررہے ہیں اور آج کل کالم نگاری کرتے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 

Follow Us On Twitter