09
January

The Rise of Nationalism in Europe

Written By: Saad Qamar Iqbal

Are EU’s Days Numbered?

Dramatic changes in the social and political landscape of EU pose serious doubts!

Brexit, and a gradual rise of nationalism in Europe is actively challenging the very idea of a merged European Union. The threat always existed in subtle forms of migration, financial and identity crisis. It has taken a more direct form as far-right, eurosceptic parties are gaining dramatic momentum. Far-right nationalists in Austria and Denmark have won their respective elections. Political entities openly denouncing the idea of European Union are gaining crucial support in Germany, Netherlands and elsewhere. Their progress varies across Europe; but France's Marine Le Pen, presently Europe’s most feared far-right politician is taking a good shot at the presidency, summing up the overall grim situation. With nationalism rearing its “ugly head”, is European Union past its partially-achieved prime?

 

theriseinnat1.jpgFrance and Frexit
France is of particular importance to EU’s integrity. Its historical role in the formation of EU in contrast to Britain’s which always appeared rather disgruntled and the current political might it possesses reinstates how Frexit could put EU in all sorts of jeopardy. What makes this even a possibility? Marine Le Pen, the nationalist leader contesting for presidency has openly attacked the idea of Euro and open borders. In 2015, her party, National Front bagged 6.8 million votes – their highest ever. The presidential elections are to be held in April 2017, and Le Pen is not facing a very convincing opposition. Most polls have rated her chances of success high: IPsos giving her a 14 points lead compared to Nicolas Sarkozy. She is known for anti-immigration policies and has often made headlines with her anti-Muslim remarks. The 48-years old re-established her strength as a politician in 2015 when she expelled the founder of the party, Jean-Marie Le Pen for his controversial statements.


Migration Crisis Forging Strong
Refugee influx is arguably the deepest-seated reason behind the consistent surge of nationalism in Europe. It is linked with other economic and social concerns like unemployment, weak law and order, and identity crisis in Europe. “Open borders” form an active part of rhetoric by the far-right politicians. Germany has been the refugee paradise for long, receiving more than a million refugees in 2015 – courtesy Angela Markel, the German Chancellor and apparently the last flag-bearer of Liberal Europe. The public perception is not equally welcoming. Markel will be seeking 4th term as the Chancellor but her party is losing ground to the opponents promising anti-migration policies.

 

theriseinnat.jpgThe refugee crisis is only getting worse with over 60 million people displaced worldwide. Europe is a relatively easy access for Syrians, with Germany being the favourite country. As Syrian crisis has no end in sight, Europe feels pressed to close the borders.


Anti-Establishment Sentiments
A strong public perception can make or break the government. The rising popularity of nationalistic views among people comes as the most discernible symptom of mounting nationalism in Europe. Interestingly, public sentiments do not always portray the situation on ground. They are often triggered taking little reality in account. Consider France as an example: the common belief is that Frenchmen are worse-off today. An overview of France’s performance suggests otherwise with a stable unemployment rate of 10%, lower than many other European nations. The other economic indicators are not bleak as suggested by the prevailing perception.


Mega Terrorist Attacks
The overall negativity in Europe fueling nationalism is largely augmented by major terrorist attacks since 2014. Charlie Hebdo, Paris; Nice and Brussels attacks reinforced the idea that Europe is gravely vulnerable. It fortifies a thorny opinion that this danger comes from the outsiders and has now seeped deep into the society. Revelations such as the Paris attack terrorists hailed from Brussels, reminded people how open borders are doing more harm than good. Nice attacker was a Tunisian-French, weakening the “multicultural Europe” stance and strengthening the anti-immigration belief now widely-held. Hate-incidents and Burkini bans are contributing to an exceedingly hostile atmosphere. The rising sense of insecurity is cashed-in by the far right political players. Terrorism, however, is not a simple phenomenon. It is a result of decades old policies and wars steering the situation into a vicious cycle. And a social boycott of a certain fraction in society is unlikely to get any favourable outcomes.


The Uncertainty of the Future
As evident from the case of Brexit; leaving EU cannot be an overnight matter. Legal obstacles and economic repercussions make it a lengthy bureaucratic process. Nationalist parties try maneuvering Brexit to their advantage, citing it as an example to follow. However, the subsequent economic crunch and the overall “guilt” sentiment in UK – at least in the short-term – may actually thwart their attempts. Frexit may seem a far-fetched idea, but so did Brexit at one time. Even if Frexit realizes, which is still quite improbable, the EU is likely to hold itself with Germany assuming the sole-leader role. Sub-blocs within EU may spring up and EU could lose its prominence in world politics. That being said, this strong wave of nationalism may recede before a major change is realized. In any case, Europeans remain unconvinced by years-old promises of how globalization will make their daily lives better than before. A rollback was thus imminent.

 

The writer is a visiting student at EDHEC Business School, France.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
09
February

بمقابلہ۔۔۔ بمقابلہ۔۔۔

Published in Hilal Urdu

تحریر: جویریہ صدیق

جنگی جنون میں مبتلا بھارت، جس کا دفاعی بجٹ 52 ارب ڈالر تک پہنچ گیا ہے بلکہ خطے میں ہتھیاروں کا سب سے بڑا خریدار بھی ہے ایک طرف تو 2008 سے 2015 تک اس نے ہتھیار خریدنے کے لئے 34ارب ڈالر کے معاہدے کئے جبکہ دوسری طرف اپنے فوجیوں کی فلاح و بہبود پر بہت کم خرچ کررہا ہے۔ بدانتظامی اور بے ایمانی اس قدر عروج پر ہے کہ بھارت کے فوجی بھوک، افلاس، تنگ دستی اور نامساعد حالات کی وجہ سے خودکشی پر مجبور ہوگئے ہیں ۔


بھارتی فوج اپنی حکومت اور اعلیٰ حکام کے ناروا رویے کے باعث بددلی کا شکار ہوتی جارہی ہے۔ مشکل حالات اور کم سہولیات میں ڈیوٹی بھارتی فوجیوں کے حوصلے پست کررہی ہے اور وہ خود کشیاں کرنے پر مجبور ہیں ۔جس وقت میں یہ سطور رقم کررہی تھی اس وقت بھی مقبوضہ کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے قریب 10 بھارتی فوج برفانی تودے تلے دب کر جاں بحق ہوگئے تھے۔کشمیر بھارتی فوجیوں کا قبرستان ثابت ہورہاہے ۔برہان وانی کی شہادت کے بعد سے بھارتی فوجی آزادی کے متوالوں کی وجہ سے مزید خوف کا شکار ہیں ۔


دہلی سرکار کے جنگی جنون اور پاکستان سے دشمنی پر سیاست چمکانے میں قربانی کا بکرا صرف بھارتی فوجی بنتے ہیں ۔جنہیں ناکافی تربیت اور کم ساز و سامان کے ساتھ بارڈر اور مختلف آپریشنز میں بھیج دیا جاتا ہے اور جہاں انہیں منہ کی کھانی پڑتی ہے۔ اکثر اوقات دہلی سرکار خود بھی ڈرامے کرکے اپنی ہی فوج پر حملے کرواتی ہے خود اپنے فوجی مار کر الزام پاکستان پر دھر دیتی ہے ۔یہ طریقہ واردات بھی بھارتی فوجیوں کو بزدل بنا رہا ہے۔

bamuqablaba.jpgکم سہولتوں اور ناقص اسلحہ و ناکافی ساز و سامان کے باعث بھارتی فوجی نفسیاتی مسائل کا شکار ہورہے ہیں ۔خالی پیٹ جب وہ محاذوں پر ڈیوٹی سے اکتا جاتے ہیں تو چھٹی کی درخواست کرتے ہیں لیکن چھٹی نہیں ملتی ۔یہ وجہ بھارتی فوجیوں کو مزید چڑچڑا بنارہی ہے۔12 جنوری 2017 کو مشرقی بہار میں ایک سینئر اہلکار نے چھٹی نہ ملنے پر اپنے چار سینئر افسران پر گولیوں کی بوچھاڑ کردی۔ چاروں افسران اس واقعے میں جانبر نہیں ہوسکے۔یہ تمام سکیورٹی اہلکار سینٹرل انڈسٹریل سکیورٹی فورس سے تعلق رکھتے تھے ۔اس بھارتی فورس کا کام اٹیمی تنصیبات اور ائیر پورٹ کی سکیورٹی ہے۔اب آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ بھارتی اٹیمی تنصیبات کی سکیورٹی کیسے ہاتھوں میں ہے ۔یہ اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ نہیں ہے۔ فروری 2014 میں بھی ایک بھارتی فوجی نے سری نگر میں قائم ملٹری کیمپ میں اپنے 5 ساتھیوں کو موت کے گھاٹ اتار کر خود کشی کر لی تھی ۔وجہ یہی تھی کہ سینئر نے چھٹی دینے سے انکار کیا ۔فوجی لمبی ڈیوٹی، کم خوارک، سخت سردی اورنا مناسب رہائش کی وجہ سے اندرونی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگیا تھا اور جب اس نے دیکھا کہ چھٹی تو نہیں مل رہی تو اس نے موت کو گلے لگایا لیکن اس سے پہلے اپنے پانچ ساتھیوں کو بدلے کی آگ کی نذر کر دیا ۔


لائن آف کنٹرول پر حالیہ کشیدگی کے دوران بھی بھارت کو بھاری جانی نقصان ہوا ۔لیکن عیار و مکار دہلی سرکار اپنے فوجیوں کی لاشیں چھپا لیتی ہے اور ان کے لواحقین کو مجبور کرتی ہے کہ چپ چاپ ان کا انتم سنسکار کردو کسی کو کانوں کان خبر نہ ہو ۔یہ رویہ بھی بھارتی فوجیوں میں بددلی پھیلا رہا ہے ۔کیونکہ جب وہ دیکھتے ہیں کہ بھارت کے لئے جان دینے والوں کو رات کی تاریکی میں آگ دی جاتی ہے اور ان کے گھر والے مہینوں مرنے والوں کی پینشن کے لئے دھکے کھاتے ہیں تو بھارتی فوجیوں کی لڑنے کی ہمت مزید شکستہ ہو جاتی ہے۔2 نومبر 2016 کو سابق بھارتی فوجی رام کشن گریوال نے پینشن کے معاملات حل نہ ہونے پر خودکشی کرلی تھی ۔


مقبوضہ کشمیر میں2014سے 2016تک 125 بھارتی فوجی ہلاک ہوئے جن میں سے18 اوڑی حملے میں مارے گئے تھے۔بھارت کے اپنے ہمسایوں پر حملے اور ریاستوں پر قابض رہنے کے لئے جنونیت نے اس کے اپنے فوجیوں کی کمر توڑ دی ہے۔جنگ میں مرنے والوں سے زیادہ تعداد خودکشی کرنے والے بھارتی فوجیوں کی ہے ۔2009 سے 2014تک 597بھارتی فوجیوں نے خودکشی کی۔2015میں 69فوجیوں نے خود کو موت کی نیند سلا لیا۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں کی بڑی تعداد پاگل پن کا شکار ہو رہی ہے۔ اسی وجہ سے وہ اپنے ساتھیوں پر حملہ آور ہوجاتے ہیں ۔مقبوضہ کشمیر میں ڈیوٹی دینے والے تقریبا 375 کے قریب بھارتی فوجی پاگل پن کا شکار ہو چکے ہیں اوران کا علاج نفسیاتی طبی مراکز میں جاری ہے۔


بھارتی فوج اور سرکار کی رہی سہی عزت کا جنازہ اس ویڈیو نے نکال دیا جس میں ایک بھارتی فوجی جوان تیج بہادر نے عام سپاہیوں کو ملنے والی سہولیات کا پول کھول دیا۔کہیں شنوائی نہیں ہوئی تو سپاہی نے ویڈیو فیس بک پر ڈال دی اور ویڈیو وائرل ہوگئی ۔ویڈیو میں سپاہی جلی ہوئی روٹیاں اور پانی والی دال دکھا رہا ہے۔اس ویڈیو میں تیج نے کہا میں بی ایس ایف کی 29 بٹالین کا جوان ہوں یاد رہے یہ وہ بٹالین ہے جوکہ جموں و کشمیر میں فرائض انجام دیتی ہے۔


وہ کہتا ہے ہم برف، ٹھنڈ، طوفان میں روز گیارہ گھنٹے کی ڈیوٹی دیتے ہیں ۔تیج کہتاہے کہ نہ میڈیا ہماری صورتحال دکھاتا ہے نہ کوئی منسٹر ان کی بات سنتا ہے۔وہ کہتا ہے ہمارے حالات بہت خراب ہیں، ہمارے ساتھ بہت نا انصافی ہورہی ہے۔ہمیں اکثر بھوکے پیٹ سونا پڑتا ہے۔اکثر صبح ڈیوٹی بھی خالی پیٹ دینا پڑتی ہے۔ہمیں ناشتے میں ایک جلا ہوا پراٹھا ملتا ہے وہ بھی صرف چائے کے ساتھ۔ دوپہر میں صرف ہلدی، نمک والی دال ملتی ہے اور روٹیاں بھی جلی ہوئی ہوتی ہیں ۔


اس نے اپنے سینئرز کے بارے میں کہا کہ وہ چیزیں بیچ دیتے ہیں اسی وجہ سے اشیاء ان تک نہیں پہنچتی ۔اس نے سوال کیا ایسی خوارک کھا کر کیا دس گیارہ گھنٹے ڈیوٹی کی جاسکتی ہے؟تیج نے اس خدشے کا بھی اظہار کیا شاید اس ویڈیو کے بنانے کے بعد وہ غائب کردیا جائے کیونکہ اعلیٰ افسران کے ہاتھ بہت لمبے ہیں۔ باقی تین ویڈیوز میں اس نے پانی میں بنی دال دکھائی، جلی ہوئی روٹیاں دکھائیں۔ دہلی سرکار کی یہ ویڈیو دیکھ کر نیندیں اڑ گئیں۔کہاں 51 ارب ڈالر کا بجٹ اور کہاں بھوک سے بلبلاتے فوجی۔بی ایس ایف حکام یہ ویڈیو دیکھ کرسیخ پا ہوگئے اورالٹااس جوان کے خلاف انکوائری کاحکم دے دیا۔اس کے کیرئیر پر سوال اٹھا دیئے کہ اسکا کردار شروع سے ٹھیک نہیں، وہ نفسیاتی مسائل کا شکار ہے اور اسے شراب کی بھی لت ہے‘ اس کی بہت عرصہ کونسلنگ بھی کی گئی ہے ۔


تیج نے میڈیا پر آکر کہا اگر بھارتی فوجی جوانوں کا خیال رکھا جاتا تو وہ ایسی ویڈیو کیوں پوسٹ کرتا۔اس نے کہا یہ مجھ پر الزام ہے کہ میرا کردار ٹھیک نہیں۔ یہ سب الزام تراشی میرے خلاف سچ کو سامنے لانے پر کی جارہی ہے۔تیج بہادر یادیو کی بیوی شرمیلا یادیو نے بھی کہا روٹی مانگنا کوئی جرم تو نہیں ۔جو سچائی ہے وہی ان کے شوہر سامنے لائے ۔شرمیلا نے مزید بتایا تیج کو سچ بولنے کی سزا ملی ہے۔ اس کو پلمبر بنا کر دوسری یونٹ میں بھیج دیا گیا ہے اور اس کا موبائل بھی چھین لیا گیا۔ باڈر پر بیٹھے فوجی اب بھی بھوکے بیٹھے ہیں ۔
بی ایس ایف کے جوان کے بعد سی آر پی ایف کے جوان جیت سنگھ نے بھی اپنی ویڈیو بنا کراَپ لوڈ کردی اور اپنی تنخواہ اور مراعات میں اضافے اور چھٹی کا مطالبہ کرڈالا۔سلسلہ یہاں نہیں رکا بھارتی فوجی لانس نائیک یگیا پرتاب سنگھ نے بھی ویڈیو اپ لوڈ کردی جس میں اس نے کہا میں ایک سپاہی ہوں لیکن ہم سے افسروں کے گھر کے کام کروائے جاتے ہیں، ہم ان کے جوتے صاف کرتے ہیں ، ان کے کتوں کو سنبھالتے ہیں‘ ان کے گھروں میں ملازموں کی طرح کام کرتے ہیں۔


اس طرح کے ایک اور واقعے میں 29 ستمبر 2016 کو مقبوضہ کشمیر میں تعینات بھارتی فوجی چندو لال اپنے کمانڈر کے رویے سے نالاں ہوکر سرحد پار کرکے پاکستانی فوج کے پاس پہنچ گیا۔وہ اتنا بددل تھا کہ اپنے ملک واپس جانے کو تیار نہیں تھا۔تاہم پاکستان نے جذبہ خیر سگالی کے تحت چندو کو بہت سے تحائف کے ساتھ واہگہ کے راستے واپس بھارت بھیج دیا ۔16 دسمبر2016 کو خاتون فوجی انیتا کماری نے مقبوضہ کشمیر میں خود کو گولی مار کر ہلاک کر ڈالا تھا۔اس طرح کے سیکڑوں واقعات ہیں جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ بھارتی فوجی بھارتی سرکار کے جنگی جنون اور رویے سے اکتا گئے ہیں ۔


بھارتی سرکار اپنے جنگی جنون کی آگ میں اپنے فوجیوں کو جھونک رہی ہے۔فوجی چھٹی اور سہولیات نہ ملنے کے باعث مایوس ہوگئے ہیں نہ ان کی زندہ ہوتے ہوئے عزت ہے نہ ہی مر کر عزت و تکریم۔بھارتی فوج قطعی طور پر بھی جنگ کے لئے تیار نہیں ہے۔بھارتی سرکار کے جنگی جنون نے بھارتی فوجیوں کو چڑچڑا اور نفسیاتی مریض بناکررکھ دیاہے۔ بھارت کی تینوں فورسز میں کوآرڈینیشن بہت کم ہے اسلحے کی دیکھ بھال بھی مناسب طریقے سے نہیں ہو رہی۔ بھارتی فوج میں بدعنوانی عروج پر ہے۔ وزارت دفاع اور فوج میں خلیج حائل ہے جس کے باعث فوج کی کارکردگی متاثر ہورہی ہے۔ بھارتی فوجی خالی پیٹ اسلحہ اٹھا کر جنگ لڑنے سے قاصر ہیں ۔


اس کے برعکس پاکستان میں حالات بالکل مختلف ہیں ۔پاکستانی فوج انتظامی امور بہترین طریقے سے چلا رہی ہے اور پاک فوج کے سپاہیوں اور افسران کو بہترین سہولیات فراہم کی جاتی ہیں ۔گزشتہ تین برس میں پاکستانی فوج نے بدترین دشمن اور سخت موسم کا مقابلہ کرتے ہوئے شمالی وزیرستان اور جنوبی وزیرستان سمیت باقی علاقوں میں حکومتی رٹ قائم کی۔ اس دوران ان کے حوصلے بلند رہے اور کوئی بھی ایسا نا خوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا جس میں سپاہیوں کو انتظامی طور پر کسی مشکل سے واسطہ پڑا ہو۔ الحمدللہ پاکستانی فوج میں خود کشی کی شرح زیرو فیصد ہے۔ محاذوں پر موجود پاکستانی سپاہیوں اور افسران کی تمام تر ضروریات کا خیال رکھا جاتا ہے۔پاکستانی دفاعی بجٹ بھارت کے مقابلے میں بہت کم ہے جہاں بھارت 51 ارب ڈالر دفاع پر خرچ کرتا ہے تو وہیں پاکستان6سے 8 ارب ڈالر اپنے دفاع پر خرچ کررہا ہے جوکہ ملکی بجٹ کا صرف 16سے 18فیصد ہوتا۔پاکستان کی پانچ لاکھ پر مشتمل فوج کو ہر طرح کی ضروری سہولیات فراہم کی جارہی ہیں۔پاک فوج کے افسران ہمیشہ اپنے جوانوں کے انتظام و انصرام کو اولین ترجیح دیتے ہیں۔ انتہائی ناگزیر حالات کے علاوہ پاک فوج ہمیشہ اپنے فوجیوں کے کھانے، چھٹی اور آرام کا خاطرخواہ انتظام کرتی ہے اور اونچے مورال اور بہترین ڈسپلن کو پہلی ترجیح دیتی آئی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مشکل حالات پڑنے پر پاکستانی فوجی اپنے پیٹ پر پتھر باندھ کر اور کئی کئی ماہ اپنے گھر والوں سے دُور رہنے کے باوجود اپنے حوصلے و عزم کو بلند رکھتا ہے۔ پاک فوج کے افسر اور سپاہی کا پکا یقین ہے کہ پاک فوج زندگی میں بھی اور مرنے کے بعد بھی اس کے خاندان اور گھر والوں کو بے یارومددگار نہیں چھوڑے گی۔ سیاچن گلیشیئر، کشمیر کے پہاڑ، تھر کے ریگستان، فاٹا اور بلوچستان کے سنگلاخ پہاڑ اور میدان ہوں، پاک فوج کے افسروں اور جوانوں نے ہمیشہ ثابت کیا ہے کہ ان کا مطمع نظر ذاتی یا دنیاوی منفعت نہیں ہے بلکہ پاکستان کا دفاع اور سلامتی باقی تمام فیکٹرز پر مقدم ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان آرمی کے سپہ سالار جنرل قمرجاوید باجوہ نے پاکستان فوج کو دنیا کی بہترین فوج سے تعبیر کیا ہے۔


پاکستانی فوجی جس وقت محاذ پر ہوتے ہیں انہیں اس بات کی فکر نہیں ہوتی کہ ان کے بیوی بچے پیچھے کس حال میں ہوں گے ۔فوجیوں کے خاندانوں کے لئے بہترین تعلیمی، طبی اور رہائشی سہولیات موجود ہیں ۔افسران یا سپاہیوں کے درمیان کوئی تفریق نہیں کی جاتی ۔اگر دوران جنگ کوئی فوجی، چاہے وہ سپاہی ہو یا افسر، شہید ہو جائے تو آرمی چیف اور کور کمانڈر خود اس کے جنازے میں شرکت کرتے ہیں۔ شہید ہونے والے فوجی کو پورے فوجی اعزاز کے ساتھ دفنایا جاتا ہے۔ تدفین اور جنازے کے اخراجات بھی آرمی کے ذمہ ہوتے ہیں ۔ان کے لواحقین کی مکمل داد رسی کی جاتی ہے۔شہید کے خاندان کو پینشن ملتی ہے، انشورنس کی رقم، بچوں کے لئے الاؤنس،بارہ ماہ کی سیلری، پلاٹ، زرعی اراضی، بیوہ اور بچوں کے لئے مفت طبی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں ۔یہ چیزیں اس قربانی کا نعم البدل بالکل نہیں جوکہ ایک فوجی اپنی جان کو وطنِ عزیز پر قربان کرکے دیتا ہے تاہم یہ سہولیات اس کے خاندان کی گزر بسر میں آسانی پیدا کر دیتی ہیں۔اسی طرح اگر کوئی بھی فوجی زخمی ہوکر لوٹتا ہے تو اس کا علاج معالجہ آرمی کے ذمے ہے۔اگر وہ اپنی صحت یابی کے بعد فیلڈ میں نہیں جاسکتا تو اس کو آرمی کے دیگر محکموں میں پوسٹ کردیا جاتا ہے ۔اس کی تنخواہ اور مراعات میں اضافہ کردیا جاتا ہے۔


پاکستان کے عوام اپنی فوج سے بہت محبت اور عقیدت رکھتے ہیں۔پاکستانی فوجی اپنے ملک اور عوام سے پیار کرتے ہیں۔ اس کے دفاع کے لئے ہر ممکن قربانیاں دیتے ہیں ۔افسران اور سپاہیوں کے مابین اخوت کا رشتہ مثالی ہے۔ جب وہ اپنے ساتھ اپنے سینئرز کو شانہ بشانہ جنگ لڑتے دیکھتے ہیں تو یہ ان کے جذبے اور ہمت کو دیتا ہے۔جب سپاہی اپنے سینئرز کو وہ کھانا کھاتا دیکھتے ہیں جو وہ خود کھاتے ہیں اور اپنی طرح کا رہن سہن تو یہ طبقاتی فرق کو مکمل طور پر ختم کردیتا ہے یہی بھائی چارہ پاک فوج کا اتحاد قائم رکھتا ہے۔بھارت جتنے بھی ہتھیار خرید لے لیکن اس کے فوجی اپنے اندر وہ جذبہ نہیں پیدا کرسکتے جو اسلام کے سپاہیوں، پاک فوج، میں موجود ہے ۔


کافر ہے تو شمشیر پہ کرتا ہے بھروسہ
مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ہے سپاہی

جویریہ صدیق ممتاز صحافی اور مصنفہ ہیں ۔ ان کی کتاب ’سانحہ آرمی پبلک سکول‘ شہدا کی یادداشتیں حال ہی میں شائع ہوئی ہے۔

twitter@ Javerias

پاکستانی سپاہی دنیا کا بہترین سپاہی ہے۔

maj_gen_asif_ghafoor_new.jpg

میجر جنرل آصف غفور

افواجِ پاکستان میں ملازمت محض نوکری نہیں ہے بلکہ یہ ایک جذبہ ہے۔ یہ ایک طرز زندگی ہے۔ ہمارا ساتھ اوپر کی سطح سے لے کر بٹالین اور کمپنی کی سطح تک جاتا ہے۔ سال میں کوئی افسر اور جوان کتنی چھٹی جاتا ہے؟ ہم سال میں گیارہ ماہ تو اکٹھے رہتے ہیں۔ سو ہم سب آپس میں جڑی ہوئی ایک مربوط فیملی کی طرح سے ہیں۔ ہماری کمانڈ اور سپاہی کا رشتہ فوجی زندگی کے ساتھ ساتھ ان کے گھر والوں سے بھی ہے۔ ہم اپنے سولجرز کے بچوں کی شادیوں اور خوشی غمی میں ان کے ساتھ رہتے ہیں۔ ان کے بچوں کی تعلیم و تربیت کے لئے اکٹھا کام کرتے ہیں۔ پاک فوج میں افسر اور سپاہی کا رشتہ سگے رشتوں سے بھی بڑھ کر ہے۔ ہم ایک بہت ہی مضبوط اور منظم فوج ہیں اور جب ایک فوج مربوط ہوتی ہے تب ہی وہ کامیاب اور لمبی جنگ لڑ سکتی ہے۔جہاں تک سولجر کی ویلفیئر کا تعلق ہے تو افسر کی یہ ذمہ داریوں میں شامل ہے کہ وہ اپنے سپاہی کا خیال رکھے۔ اگر سپاہی کو اپنے افسر سے محبت نہیں ہے تو اس کے اندر اپنے ملک کے لئے جان دینے کا جذبہ پیدا ہی نہیں ہو سکتا اور باہمی محبت ہمارے جذبے، عزم اور حوصلے کا بنیادی حصہ ہے۔ ہمارا سپاہی دنیا کا بہترین سپاہی ہے۔

 
10
February

مودی کے بھارت میں مفلسی کا راج

Published in Hilal Urdu

تحریر: عبد الستار اعوان

گزشتہ دنوں عالمی میڈیا پر ایک خبر گردش کرتی رہی کہ بھارتی ریاست اڑیسہ میں ایک غریب شخص کو اپنی بیوی کی لاش اٹھا کر 10 کلو میٹر تک طویل سفرکرنا پڑا کیونکہ ہسپتال انتظامیہ نے پیسے نہ ہونے کے باعث اسے ایمبو لنس فراہم کرنے سے انکار کردیا تھا۔ ریاست اڑیسہ کے علاقے کالا ہانڈی کا رہائشی دہارا ماجھی ٹی بی کی بیماری کے باعث بیوی کو سرکاری ہسپتال لے کر گیا جہاں ایک ہفتہ زیر علاج رہنے کے بعد وہ چل بسی، دہارا ماجھی نے ہسپتال انتظامیہ سے بیوی کی لاش گاؤں تک منتقل کرنے کے لئے ایمبولنس فراہم کرنے کی درخواست کی جسے رقم نہ ہونے کے باعث مسترد کردیاگیا۔انتظامیہ کی جانب سے ایمبولنس فراہم نہ کئے جانے پر دھارا ماجھی نے بیوی کی لاش کو ایک چادر میں لپیٹ کر کندھے پر اٹھایا اور60 کلومیٹر دوراپنے گاؤں کی طرف چل پڑا۔ تقریباً دس کلو میٹر کا فاصلہ طے کرنے کے بعد وہاں کی مقامی انتظامیہ نے مذکورہ شخص کی مدد کرتے ہوئے اسے ایمبولینس فراہم کی۔اس دلخراش واقعے کی ویڈیو اور تصاویر منظر عام پر آنے کے بعد پور ی دنیا میں بھارتی حکمرانوں پر شدید تنقید کی گئی ۔انہی دنوں ایک اور خبر آئی کہ بھارت میں ایک خاتون کھلاڑی نے غربت کے باعث خود کشی کرلی۔بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے نام لکھے گئے خط میں پوجا کا کہنا تھا کہ وہ غربت اور ہاسٹل کی فیس نہ ہونے کی وجہ سے خود کشی کر رہی ہے۔ پوجا نے اپنی خود کشی کی وجہ کالج کے ایک پروفیسر کو قرار دیتے ہوئے لکھا کہ انہوں نے مجھے ہاسٹل میں کمرہ دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ روز اپنے گھر سے کالج آیا کرو۔ پوجا نے لکھا کہ وہ اتنازیادہ کرایہ برداشت نہیں کر سکتی کیونکہ اس کے والد ایک غریب سبزی فروش ہیں۔ بیس سالہ ہینڈ بال کھلاڑی پوجا پٹیالہ کے گورنمنٹ خالصہ کالج میں زیر تعلیم تھی اور اس کا شمار قومی سطح کے کھلاڑیوں میں ہوتاتھا۔

modikbarat.jpgقارئین ! ایسے الم ناک اوردلخراش واقعات اس ریاست میں آئے روز پیش آتے ہیں جو ہر سال اپنے دفاعی بجٹ میں بے تحاشااضافہ کرتی ہے اور دن رات اس پر جدید اسلحے کی خریداری کا بھوت سوار رہتا ہے ۔ جس وقت میں یہ خبریں پڑ ھ رہا تھا میرے ذہن میں اچانک مودی جی کا ایک بیان گردش کرنے لگا ،ایک موقع پر انہوں نے کہاتھا کہ:’’ پاکستان کو بھارت سے سیکھنا چاہئے کہ غربت اور پسماندگی سے کیسے نبرد آزماہوا جا تا ہے ‘‘۔ ایک عام آدمی مودی جی کا یہ بیان سن کر حیرت زدہ رہ جاتاہے اوروہ سوچتاہے کہ شاید انہیں اپنے ملک میں پھیلی غربت اورا فلاس کا علم نہیں یاپھر جان بوجھ کر حقائق سے آنکھیں چرانا ان کی عادت سی بن گئی ہے۔
اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ پاکستان میں بھی غربت پائی جاتی ہے تاہم حقیقت یہ ہے کہ پاکستان سے زیادہ بھارت میں لوگ خطِ افلاس سے نیچے زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں۔عالمی بینک کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق پاکستان سے زیادہ غربت بھارت میں ہے ۔ایک مؤقر انگریزی جریدے نے غربت سے متعلق اپنی رپورٹ میں پاکستان کو ان ممالک کی فہرست میں رکھا جہاں غریب طبقے کی آمدنی میں قدرے اضافہ ہورہا ہے جبکہ بھارت کو ان ممالک میں شامل کیا گیا جہاں اس طبقے کی آمدنی اوسط سے بھی کم رفتار سے بڑھ رہی ہے ۔ جریدے کاکہنا ہے کہ اکیس فیصد بھارتی شہری عالمی بینک کے مقرر کردہ خطِ غربت، یومیہ 1.9 امریکی ڈالر فی کس آمدنی پر، یا اس سے نیچے، زندگی گزارنے پر مجبور ہیں جبکہ پاکستان میں اس کی شرح صرف آٹھ فیصد ہے۔


ایک اور جائزے کے مطابق 26کے قریب غریب ترین افریقی ممالک میں سب سے زیادہ غریب ملک بھارت کو قرار دیا گیا ۔ اوکسفورڈ پاورٹی اینڈ ہیومن ڈویلپمنٹ انِشی اے ٹیو
(Oxford Poverty and Human Development Initiative)
نے اپنی ایک رپورٹ میں غربت کے حوالے سے بھارت کو پسماندہ ریاست دکھا یا ہے ۔ غربت کی پیمائش کے لئے مرتب کی گئی اس رپورٹ میں صحت ، تعلیم ، پینے کے صاف پانی تک رسائی اور بجلی کی دستیابی جیسے مختلف پہلوؤں کو سامنے رکھا گیا ہے جس میں کہا گیا کہ بھارت ایک پسماندہ ملک ہے۔ آکسفورڈ پاورٹی اینڈ ہیومن ڈویلپمنٹ انِشی اے ٹیو کی ڈائریکٹر سبینا الکائرے
(Sahina ALKirey)

کہتی ہیں کہ دنیا کے تقریباً ایک چوتھائی غریب براعظم افریقہ میں رہتے ہیں۔ ان کا کہناتھا کہ جب ہم افریقہ کے 26 غریب ترین ملکوں سے بھارت کا موازنہ کرتے ہیں تو ہم دیکھتے ہیں کہ اس ملک میں بھی لوگ اتنے ہی زیادہ غریب اور محرومی کا شکار ہیں جتنا کہ افریقہ میں ‘بلکہ بھارت میں غربت کی شدت افریقی ممالک سے کہیں زیادہ ہے اور یہ پہلو بہت چونکادینے والا اور توجہ طلب ہے۔
جدید اسلحے ، مذہبی تنگ نظری اور دہشت گردوں کی پشت پناہی کی دوڑمیں شامل بھارت جیسے ملک میں پسماندگی، مفلسی اور غربت کااندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ اب بھارتی شہر اورنگزیب آباد اور مہاراشٹروغیرہ میں بڑھتی ہوئی غربت کے باعث مخیر حضرات کی طرف سے اپنی مدد آپ کے تحت غریب افراد کے لئے ’’روٹی بینک‘‘ کھلنے لگے ہیں جہاں سے غریبوں کو مفت روٹی ملتی ہے۔ایسا اس لئے ہے کہ ریاست اپنے ا ن شہریوں کی بنیاد ی ترین ضروریات پوری کرنے سے قاصر ہے ۔
ایک بھارتی جریدے نے لکھا ہے کہ اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام
UNDP
(یونائیٹڈ نیشنز ڈویلپمنٹ پروگرام ) کے وضع کردہ پیمانے کے مطابق بھارت کی آدھی سے زیادہ آبادی غربت میں زندگی گزارتی ہے ۔برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کا کہنا ہے کہ عا لمی اداروں نے انسانی ترقی کے حوالے سے کہا ہے کہ بھارت میں غربت کی شرح بہت زیادہ ہے اور غربت کے حوالے سے اعداد و شمار بھارتی حکومت کے تخمینوں سے کہیں زیادہ ہیں۔ یو این ڈی پی کے مطابق بھارتی ریاستوں گجرات، یوپی، مغربی بنگال اور آسام کے دیہی علاقوں میں بسنے والے مسلمانوں میں غربت کی شرح سب سے زیادہ ہے۔بھارت میں اقوام متحدہ کے اس ادارے کی کنٹری ڈائریکٹر نے بھارت کے قومی ادارہ برائے دیہی ترقیات کے ایک پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ یوں تو بھارت مجموعی طور پر غربت میں کمی کے اپنے ہدف کو پورا کرنے میں لگا ہے لیکن دیہی علاقوں میں غربت و افلاس کئی شکلوں میں نظر آتا ہے، کاشتکاری کے شعبے میں حالات انتہائی ناگفتہ بہ ہیں اور دیہی لوگوں کے لئے روزگار و معاشی ترقی کے مواقع توقع کے مطابق بہتر نہیں ہورہے۔


انہوں نے بھارتی حکمرانوں کے مسلمانوں سے متعلق متعصبانہ اور شدت پسندانہ رویوں کا پردہ چاک کرتے ہوئے بتایا کہ جہاں تک مذہبی بنیادوں پر غربت کا سوال ہے تو بھارت میں مسلمانوں میں یہ شرح سب سے زیادہ نظر آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں میں غربت کی یہ شرح آسام، اتر پردیش، مغربی بنگال اور گجرات کے دیہی علاقوں میں بہت زیادہ ہے ۔واضح رہے کہ اس سے قبل سال 2015ء میں بھارت کے منصوبہ بندی کمیشن نے بھی د عویٰ کیا تھا کہ ملک میں غریبوں کی modikbarat1.jpgتعداد میں غیر معمولی کمی ہوئی ہے لیکن شہری علاقوں میں تناسب کے لحاظ سے مسلمانوں میں بدستور غربت بڑھ رہی ہے۔سروے میں مذہب کی بنیاد پر بھی معلومات یکجا کی گئی تھیں جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ شہری علاقوں میں مسلمان آبادی سب سے زیادہ غریب ، پسماندہ اور بنیادی انسانی حقوق سے محروم ہے ۔ نوبل انعام یافتہ اور معروف معاشی دانشور امرت سین نے نئی دہلی میں منعقد ایک پروگرام جو حکومت کی طرف سے غربا کو نقد رقم تقسیم کرنے کے منصوبے پر تھا‘کے موقع پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا تھا کہ پیسے دینے کی یہ سکیمیں غریبوں کو غذا فراہم کرنے کے حق میں کبھی بہتر نہیں ہو سکتیں جب تک کہ اس ضمن میں کوئی ٹھوس پالیسی مرتب نہ کی جائے ۔
یونی سیف
(United Nations International Children's Emergency Fund)
بچوں کے حقوق کے حوالے سے کام کرنے والا ایک معروف عالمی ادارہ ہے ۔ اس نے
``Children in Urban World``
کے عنوان سے جاری کر دہ اپنی ایک رپورٹ میں کہا کہ شہری علاقوں میں رہنے والے غریب بچوں کی حالت دیہی علاقوں کے بچوں سے بھی زیادہ خراب ہوتی ہے۔ یونی سیف نے بھارت کے بڑے شہروں میں نہایت غریب افراد پر مشتمل تقریباً پچاس ہزار گندی بستیوں کے متعلق اپنے سروے میں بتایا کہ ان بستیوں میں ہر تین میں سے ایک شخص یا توگندے نالے یا پھر ریلوے لائن کے پاس رہتا ہے جبکہ ان گندی بستیوں اور ان کے آس پاس رہنے والے بچوں کی حالت گاؤں کے بچوں سے بھی بہت بری ہے اور ان بچوں کی پرورش صحیح طریقے سے نہیں ہو پاتی۔ رپورٹ کے مطابق بیشتر گندی بستیاں ریاست مہاراشٹر، آندھرا پردیش، مغربی بنگال، تامل ناڈو اور گجرات میں ہیں۔بھارت میں بڑھتی غربت اور غریب بچوں کی حالتِ زار پر توجہ دلاتے ہوئے ممبئی کے ٹاٹا انسٹی ٹیوٹ آف سوشل سائنسزکے سربراہ ڈاکٹر پرسو رام کا کہنا ہے کہ بھارت میں غربت کے سبب کم عمر بچوں کی اموات زیادہ ہوتی ہیں ۔ڈاکٹر پرسو رام کے مطابق بھارت میں تیزی سے پھیلتی ہوئی غربت سے سب سے زیادہ دلت اور مسلمانوں کے بچے متاثر ہورہے ہیں۔


قارئین ! مندرجہ بالا سطور میں ہم نے مستند عالمی اور بھارتی اداروں اور ماہرین کی چند ہوشربا رپورٹس اور تازہ خبروں کی روشنی میں نریندر مودی کے بھارت میں غربت،افلاس ، تنگدستی، بنیادی انسانی حقوق کی عدم فراہمی اور پسماندگی کا ایک مختصر سا جائزہ لیا ہے، ہمارے خیال سے ان اداروں کی رپورٹس اور جائزوں کویکسر مسترد کرنا قرین انصاف نہیں ہوگا ۔ ان رپورٹس کی بابت جب پڑوسی ملک کے چند صحافیوں سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے ان پر مہر تصدیق ثبت کرتے ہوئے کہا کہ بھارت میں پھیلی غربت اورمفلسی کے حوالے سے انہیں کافی قرار نہیں دیا جا سکتا اور اس عنوان پرابھی بہت زیادہ کام کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ پور ی ریاست میں پسماندگی کی صورتحال اس سے بھی بری ہے،بالخصوص دیہات اور دو ر دراز کے علاقوں کا تو کوئی پرسان حال نہیں۔یہاں یہ امر بھی توجہ طلب ہے کہ یہ حالت ایک ایسے ملک کی ہے جس کے حکمرانوں کا دعویٰ ہے کہ یہ ایک مضبوط ترین جمہوری ، فوجی، معاشی اور اقتصادی ریاست ہے اور اگر کسی ملک نے غربت اور پسماندگی سے نبرد آزماہونا ہے تو وہ بھارت کو رول ماڈل قرار دیتے ہوئے اور اس سے کچھ سیکھ کر ان چیلنجز سے نمٹ سکتا ہے ۔


بہر کیف پڑوسی ملک کی مودی سرکار اوراس کے ساتھیوں کو چاہئے کہ اپنے بھاری بھر کم فوجی بجٹ اور دہشت گرد ہندو تنظیموں کو نوازنے کے لئے مختص رقم میں سے کچھ حصہ غریبوں کی روٹی اور ان کے بنیادی انسانی حقوق کے لئے بھی نکالیں۔اپنے ملک سے دہشت گرد اور تنگ نظر ہندو تنظیموں کو ختم کرکے صحت ، روزگار اور تعلیم کے معاملات پرتوجہ دینے کے ساتھ ساتھ نفرت آمیز رویوں کا خاتمہ کرکے اقلیتوں اور غریبوں کو جینے کا حق دیجئے وگرنہ زمینی حقائق یہ بتارہے ہیں کہ اگر تختِ دلی نے ان اہم بنیادی انسانی مسائل کی جانب توجہ نہ دی تو اس کی یہ مجرمانہ غفلت اس کے گلے کاپھندا بن جائے گی اور حکمرانوں کے انسانیت دشمن اور مسلم، عیسائی ، سکھ دشمن اقدامات آخر ایک دن بھارتی وجود کے لئے خطرہ بن جائیں گے۔ یوں اس ریاست کے لئے اپنی بقاکی جنگ لڑنا بھی مشکل ہو جائے گا۔

مضمون نگار ایک قومی اخبار میں کالم نویس ہیں

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
10
February

بحرہند میں امن کا فروغ

Published in Hilal Urdu

تحریر: محمد اعظم خان

سمندر کے ذریعے بڑی تعداد میں نقل و حمل نہ صرف کم خرچ ہے بلکہ فضائی نقل و حمل سے تقریباً 163گنا سستی بھی ہے۔ 90 فیصد بین البراعظمی سامان کی تجارت سمندر کے ذریعے ہوتی ہے جو کہ تقریباً 15ملین کنٹینرز کے ذریعے ممکن ہوتی ہے اور یہ کنٹینرز سا لانہ 200ملین سے زائد مرتبہ بحری سفر کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ دنیا کے 38ہزار سے زائد تجارتی جہاز سمندری راستوں کے ذریعے 4500سے زائدبین الاقوامی بندرگاہوں کے درمیان ایک عالمگیر رابطے کا باعث بنتے ہیں۔
68.56ملین مربع کلومیٹر پر پھیلا ہوا بحرہند دنیامیں تیسرا بڑا بحر ہے جو زمین کی سطح کے تقریباً 20فی صد حصے کو ڈھانپے ہوئے ہے۔47ممالک کے ساحلوں اور کئی جزیروں کا مسکن بحر ہند جغرافیائی خدوخال کی وجہ سے بہت اہم ہے۔

behrhindmainmut.jpgبحر ہندمیں سالانہ تقریباً ایک لاکھ جہاز ایک وسیع علاقے کا سفر کرتے ہیں اور یہ بحر دنیا میں‘ وزن کے اعتبار سے‘ سامان کی بڑی مقدار میں نقل و حرکت کا بحر مانا جاتا ہے۔ یہ بحر دنیا کے طویل سفر کرنے والے مال بردار جہازوں کی نقل و حمل کے لئے ایک اہم آبی گزر گاہ ہے۔ دنیا کی تقریباً نصف بحری آمدو رفت اور پیٹرولیم مصنوعات کی80 فیصد سے زائد نقل و حمل اسی بحر کے ذریعے ہوتی ہے۔ دنیا کے تیل کا 65فیصد حصہ اور گیس کے 35فیصد ذخائر بحر ہند کے ساحلی ممالک میں واقع ہیں۔ کئی ممالک کی تجارتی آمدو رفت اسی بحرکے ذریعے ہوتی ہے۔ امریکہ ، فرانس اور جاپان، خلیج سے توانائی کے بڑے درآمد کنندگان ہیں ۔ مشرق سے مغرب کابحری تجارتی راستہ جو عین شمالی بحرِ ہند سے گزرتا ہے، دنیا کا اہم ترین تجارتی راستہ ہے اور ہزاروں جہاز ہر وقت اس پر رواں رہتے ہیں ۔
اکیسویں صدی اپنے ساتھ ترقی اور خوشحالی کے بے مثال مواقع لائی ہے لیکن یہ مواقع سیاسی اور معاشی بد نظمی اور عدم استحکام جیسے خطرات سے دوچار ہیں ۔ دنیا کی قومی معیشتوں کے حوالے سے ان میں سے 80کی دہائی میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے ، توانائی اور صنعتی خام مال کی طلب میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے ۔نتیجہ یہ کہ اس صورت حال نے بین الاقوامی تجارت کو بہت تیزی کے ساتھ بحری تجارتی راستوں کی جانب منتقل کر دیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ دہشت گردی، بحری قزاقی، سمندری وسائل کے استحصال،معاشی نظام میں بگاڑ اورعالمی سطح پر درجہ حرارت میں اضافے کے پس منظر میں عالمی سکیورٹی، اقتصادیات اور ماحول کو لاحق مختلف النوع خطرات میں اضافہ دیکھا جاسکتا ہے،جس کے لئے مشترکہ اورزیرک سوچ کی ضرورت ہے۔ بحری تجارت میں ہر ملک شامل ہے اور اس کی حفاظت تمام شراکت داروں کی مربوط حکمت عملی کے ذریعے ہی یقینی بنائی جا سکتی ہے۔


سا ل2007سے پاک بحریہ کی جانب سے منعقد ہ امن مشقیں اور انٹرنیشنل میری ٹائم کانفرنس مغربی بحرہند میں میری ٹائم سکیورٹی کو بہتر بنانے کی جانب ایک غیر معمولی قد م ہے۔ ’’امن‘‘ اردو زبان کا لفظ ہے جس کے معنی انگریزی میں
’’Peace‘‘
کے ہیں۔اس مشق کا سلوگن ’’ امن کے لئے متحد
، Together for Peace‘‘
ہے جو اس مشق کی بنیاد بنا۔2007 سے منعقدہ ہرمشق میں عالمی بحری افواج اور مندوبین کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہوا ہے۔مشق امن 2007میں عالمی بحری افواج کے14 جہازوں، اسپیشل آپریشنز فورسز/دھماکہ خیز مواد کو ناکارہ بنانے والی 2ٹیموں اور 21ممالک کے مندوبین نے شرکت کی۔ سال 2009میں منعقدہ دوسری امن مشق میں14جہازوں، 2 ایئرکرافٹ، اسپیشل آپریشنز فورسزکی9ٹیموں اور 27ممالک کے مندوبین نے شرکت کی۔ مارچ2011میں منعقد ہونے والی تیسری امن مشق میں 11 جہازوں، 3 ایئرکرافٹ، اسپیشل آپریشنز فورسز/دھماکہ خیز مواد کو ناکارہ بنانے والی اور میرینز کی 3 ٹیموں اور 28ممالک کے43مندوبین نے شرکت کی۔ امن مشقوں کے سلسلے کی چوتھی مشق امن 2013میں 12جہازوں ،2ایئر کرافٹ، اسپیشل آپریشنز فورسز/دھماکہ خیز مواد کو ناکارہ بنانے والی6ٹیموں اور29ممالک کے 36 مندوبین نے شرکت کی۔
امن مشقوں کے انعقادکامقصد معلومات کے تبادلے اور باہمی دلچسپی کے اُمور بشمول میری ٹائم سکیورٹی کے مسائل ،دہشت گردی کے خاتمے اور انسانیت کی مدد جیسے آپریشنزپر یکساں سوچ کوفروغ دینا ہے۔ مشترکہ آپریشنز کرنے کی صلاحیتوں میں اضافے کے ساتھ ساتھ فضا،سمندر اور زیر سمندر خطرات سے نبردآزمائی کے لئے مشترکہ مہارتوں کے فروغ اور مختلف مشقوں کے ذریعے سپیشل آپریشنز فورسز کی مہارتوں میں اضافے کا حصول بھی ان مشقوں کے انعقاد کے مقاصد میں شامل ہے۔


امن مشقوں کا انعقاد پاکستان نیوی کا ایک غیر معمولی اقدام ہے۔ کثیر مقاصد کے حصول کی حامل یہ مشقیں خطے میں امن و استحکام کے قیام کے ساتھ ساتھ علاقائی اور عالمی بحری افواج کے ساتھ پاک بحریہ کے تعلقات کو مزید مضبوط بنانے کا ایک بہترین ذریعہ بھی ہیں ۔ امن مشقوں کے انعقاد سے نہ صرف علاقائی قوت کے طور پرپاک بحریہ کے قد کاٹھ میں اضافہ ہوا ہے بلکہ اتحادی ممالک کا پاک بحریہ پر اعتماد بھی بڑھا ہے۔مشق امن 2017کا انعقاد اس اعتمادمیں مزید اضافے کا باعث ہوگا ۔مشق امن 2017 میں 35ممالک سے زائد جہاز، ایئرکرافٹ، ہیلی کاپٹرز، سپیشل آپریشنز فورسز/دھماکہ خیز مواد کو نا کا رہ بنانے والی ٹیمیں، میرینز پر مشتمل ٹیمیں اور مندوبین شرکت کریں گے۔ مشق امن 2017 میں اتنی بڑی تعداد میں ممالک کی شرکت پاکستان کی جانب سے خطے میں امن اور استحکام کے لئے کی جانے والی کوششوں پر عالمی برادری کے اعتماد و یقین اور مستقبل میں پاکستان اور پاک بحریہ کے ساتھ مل کر کام کرنے کے عزم کا مظہر ہے۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it. 

Follow Us On Twitter