08
February

Race for the NSG

Written By: Zamir Akram

Nevertheless, the discriminatory U.S. approach towards Pakistan’s nuclear and missile programs has continued with repeated demands on Pakistan to “cap” its strategic capabilities and to demonstrate “restraint”, while no such demands are being made from India. Moreover, the U.S. has not only denied the extension of a similar waiver to Pakistan as given to India but has also opposed Pakistan’s membership of the NSG.

Pakistan and India are currently in a race to join the Nuclear Suppliers Group (NSG), a cartel of 48 countries that regulates the trade in nuclear materials and technologies. Membership of the group is considered by both countries as acceptance into the nuclear mainstream and recognition of their status as responsible nuclear weapon states – a status that has been denied to them since their nuclear tests in 1998. Membership can also help them overcome their energy crises by easy access to nuclear energy. Since NSG decisions are taken by consensus, all NSG members have to agree to accept Pakistan and India as members but evolving such consensus is both complicated and contentious.

 

racefornsg.jpgNuclear technology is dual use – it can be used for civilian or peaceful purposes such as generating electricity and for developing nuclear weapons. To contain the spread of nuclear weapons or nuclear weapons 'proliferation', the major nuclear powers – the United States and the (then) Soviet Union – negotiated an international treaty, the Non-Proliferation Treaty or NPT in 1968 according to which the countries that had acquired nuclear weapons before 1968 were accepted as Nuclear Weapon States (NWS) and the others, the Non-Nuclear Weapon States (NNWS) undertook not to acquire nuclear weapons in return for assurances that they would receive international assistance for the peaceful uses of nuclear energy and that the NWS would engage in efforts towards ultimate nuclear disarmament. Apart from the U.S. and the Soviet Union, the UK, France and China, which had acquired nuclear weapons before 1968, were recognized as NWS by the NPT while the others were forbidden to cross the nuclear weapons threshold. At the time France and China refused to join the NPT while among the NNWS, India, Israel and Pakistan also refused to sign the NPT. Whereas India described the treaty as discriminatory, Pakistan argued that owing to its security concerns vis-a-vis India, it would join the treaty only if India did so. Meanwhile, the International Atomic Energy Agency (IAEA), created in 1957 to promote only peaceful uses of nuclear energy, was tasked to ensure implementation of the NPT.

 

This approach is part of a larger Indo-U.S. strategic partnership in which Washington has fully supported and assisted Indian strategic and conventional military build-up including development of short, medium and long range missiles, including submarine launched missiles, Ballistic Missile Defence (BMD) and even work on a hydrogen bomb, apart from increasing its arsenal of nuclear warheads. It is worth noting that this increase in nuclear weapons by India has been facilitated by the NSG waiver which, as has been documented by Harvard University’s Belfer Center, has enabled India to divert nuclear fuel from civilian to military uses apart from being able to use its indigenous sources of nuclear fuel for exclusive military use while using imported fuel for its civilian program.

However, the first Indian nuclear test in 1974 demonstrated that despite the NPT and the IAEA, a country could use its peaceful or civilian nuclear facilities to clandestinely develop nuclear weapons capability by illicitly diverting nuclear fuel and technology from civilian to military purposes. As a result, the 1974 Indian nuclear test led to the creation of the NSG in the same year to plug the gaps and prevent clandestine diversion of nuclear materials.


The Indian test also led to the enactment of several laws in the U.S. aimed at preventing further acts of nuclear proliferation through sanctions. However, neither the U.S. nor any other NWS did much in practical terms to punish Indian proliferation. The French even sent a congratulatory message to the Indians! On the other hand, focus shifted towards preventing Pakistan from acquiring nuclear weapons through such laws as the Glenn and Symington Amendments and then through the Pakistan-specific Pressler Amendment which was used to put sanctions on Pakistan in 1990. Earlier, the U.S. also extended extreme pressure on France to cancel its Reprocessing Plant agreement with Pakistan. This was the start of the discriminatory treatment of Pakistan compared to India by the U.S. and its Western partners which continues till today. Only China has extended cooperation to Pakistan in the civilian nuclear field, even after it joined the NPT and the NSG on the basis of the “grand father” clause that it signed before joining these organizations.


The next major Indian act of nuclear proliferation was the tests in May 1998. Washington was caught totally unaware by these tests as its focus had been entirely on Pakistan despite the newly elected BJP government’s declared intention of acquiring nuclear weapons as well as fore-warnings by Pakistan about the preparations for these tests by India. The Western reaction, led by the U.S., was to pressurize Pakistan not to respond by conducting its own tests. However, Pakistan’s compulsion to ensure the credibility of its deterrence in the face of dire Indian threats led to the tests by Pakistan a few days later. In response the U.S. and its partners made no distinction between the culprit and the victim, imposing sanctions on both and leading the international community in castigating the two countries through a UN Security Council resolution that called for discontinuing all forms of nuclear related cooperation with India and Pakistan.

 

For now, Pakistan, with the principled support of countries like China, Turkey and others, has scored a tactical success in its efforts to ensure that there is impartial treatment for the two applicants for NSG membership. But this race is far from over. We will need to continue with our out-reach efforts and engage in sustained diplomacy in our quest for NSG membership.

Within a couple of years, however, the global strategic dynamics, especially the growing American objective of containing a rising China, brought about a change in U.S. policy towards India motivated by the objective of using India as a counter-weight to China. This trend started by the Clinton administration was taken further by succeeding Presidents Bush and Obama. In a major departure from U.S. non-proliferation policy, Bush engineered changes in U.S. laws and pushed through in 2008 a country-specific waiver for India from the international non-proliferation and safe-guards regime including the NPT and the NSG, enabling India to engage in civilian nuclear cooperation with several countries. Obama has taken this policy even further, promising to ensure Indian membership of the NSG and other technology control cartels like the Missile Technology Control Regime (MTCR), the Australia Group and the Wassenaar Arrangement. It is, indeed, ironic that the U.S. is pushing Indian membership of the NSG despite the fact that this group was set up in response to the Indian nuclear test of 1974. This approach is part of a larger Indo-U.S. strategic partnership in which Washington has fully supported and assisted Indian strategic and conventional military build-up including development of short, medium and long range missiles, including submarine launched missiles, Ballistic Missile Defence (BMD) and even work on a hydrogen bomb, apart from increasing its arsenal of nuclear warheads. It is worth noting that this increase in nuclear weapons by India has been facilitated by the NSG waiver which, as has been documented by Harvard University’s Belfer Center, has enabled India to divert nuclear fuel from civilian to military uses apart from being able to use its indigenous sources of nuclear fuel for exclusive military use while using imported fuel for its civilian program.


Meanwhile, the nuclear sanctions against Pakistan were waived in view of the U.S. need for Pakistan’s assistance in its so-called War on Terror following the terrorist attacks in the U.S. on September 11, 2001. Nevertheless, the discriminatory U.S. approach towards Pakistan’s nuclear and missile programs has continued with repeated demands on Pakistan to “cap” its strategic capabilities and to demonstrate “restraint”, while no such demands are being made from India. Moreover, the U.S. has not only denied the extension of a similar waiver to Pakistan as given to India but has also opposed Pakistan’s membership of the NSG.

As for the safety and security of Pakistan’s nuclear assets, the fact is that Pakistan has the most robust system of safety, security and safeguards which has been recognized as such by the IAEA and even by U.S. President Obama in the context of the U.S. sponsored Nuclear Security Summit process. As such, the allegations against Pakistan in this negative narrative do not stand up to close scrutiny and lack credibility.

Such discrimination at the policy level has been supplemented by American/Western efforts to build-up a negative narrative about Pakistan’s strategic program through manipulation of the western media, academics and think-tanks. This alleges that Pakistan has the fastest growing nuclear weapons program, which is at risk of being taken over by terrorists and extremists and that is destabilizing security in South Asia. These wild allegations are not supported by facts nor are they consistent with existing realities. The fact is that compared to India, Pakistan has far less nuclear facilities and that India has been producing nuclear weapons and fissile material for nuclear weapons as well as their delivery system before 1974, much before Pakistan launched its own strategic program. Moreover, after the 2008 waiver for India, it has been able to use its indigenous sources of fissile material exclusively for nuclear weapons production without needing to divide it between civilian and military use as Pakistan is forced to do. Add to this the fact that India has also been clandestinely diverting nuclear fuel imported under the 2008 waiver from civilian to military purposes. As for the safety and security of Pakistan’s nuclear assets, the fact is that Pakistan has the most robust system of safety, security and safeguards which has been recognized as such by the IAEA and even by U.S. President Obama in the context of the U.S. sponsored Nuclear Security Summit process. As such, the allegations against Pakistan in this negative narrative do not stand up to close scrutiny and lack credibility.


The question, therefore, arises as to why this discrimination against Pakistan? In my personal view, the real reason is that the U.S. and the western powers in general are uncomfortable with a Muslim country like Pakistan possessing a nuclear weapons capability even though Pakistan has always stated that this capability is for its deterrence against India and not against any other country. With the change in the global strategic environment wherein the U.S. is trying to contain China, an added factor has become the U.S. need to build-up India against China, owing to which Washington is actually helping India’s military build-up while seeking “restraint” by Pakistan.


A critical part of this U.S. strategy and a principal demand by India to partner with Washington is to ensure India’s inclusion and acceptance in the nuclear mainstream which would lead to India’s recognition as a de-facto if not de-jure member of the nuclear club – the P-5. Since Indian entry to the NPT as a nuclear weapon state is time barred and it is extremely difficult to amend the NPT deadline owing to opposition by the Non-Nuclear Weapon States (NNWS) and China, the next best option is to have India accepted as a member of the NSG. That is the real reason for the concentrated efforts by the Modi-Obama clique to push Indian membership of the NSG.


For this reason it is equally important for Pakistan to ensure its simultaneous membership of the NSG with India and to prevent yet another exemption for New Delhi and continuing discrimination towards Islamabad. If a country like India which has twice thrust nuclear proliferation in South Asia (in 1974 and 1998) can be admitted to the NSG, then Pakistan, which has been forced to react to Indian proliferation for ensuring its security, has a legitimate right as well to be accepted into the nuclear mainstream as a responsible nuclear weapon state and admitted to the NSG. For sure, Pakistan’s credentials for NSG membership are at least equal if not better than those of India. Pakistan did not introduce nuclear weapons in South Asia. It is not responsible for the nuclear and missile race in the region – in fact after the 1998 tests, it proposed a Strategic Restraint Regime in South Asia to prevent further development of de-stabilizing weapons – Ballistic Missile Defence (BMD), nuclear Sub-marine Launched Ballistic Missiles (SLBMs) and Inter-Continental Ballistic Missiles (ICBMs) – as is being done by India. Nor is Pakistan pursuing India’s lead in developing a hydrogen bomb which it is doing in Karnataka according to Adrian Levy in Foreign Policy (December 2015). Unlike India, Pakistan voted in favour of the Comprehensive Test Ban Treaty (CTBT) in the UN and observes a unilateral moratorium on nuclear testing. It has also offered a bilateral test ban arrangement to India which New Delhi has rejected. Pakistan also has a transparent and robust Command and Control System as well as effective fire-walls for the safety and security of its strategic assets consistent with IAEA guidelines. This has been recognized by the Director General of the IAEA. It is also noteworthy that Harvard University’s Belfer Center report of March 2016 quotes U.S. officials as stating that “India’s security measures are weaker than those of Pakistan” and that President Obama and U.S. Chairman of the Joint Chiefs of Staff have repeatedly expressed confidence in Pakistan’s nuclear safety arrangements. As regards the specific work of the NSG, Pakistan has been implementing comprehensive export controls that are fully harmonized with those of the NSG.

It is equally important for Pakistan to ensure its simultaneous membership of the NSG with India and to prevent yet another exemption for New Delhi and continuing discrimination towards Islamabad. If a country like India which has twice thrust nuclear proliferation in South Asia (in 1974 and 1998) can be admitted to the NSG, then Pakistan, which has been forced to react to Indian proliferation for ensuring its security, has a legitimate right as well to be accepted into the nuclear mainstream as a responsible nuclear weapon state and admitted to the NSG.

Since applying for membership last June, Pakistan has reached out to all NSG member states and called upon them to consider its request on the basis of equitable, impartial and non-discriminatory criteria. These countries, while considering requests from both India and Pakistan, confront the central issue of how to deal with countries that are nuclear weapon states but not parties to the NPT, which is the existing criteria for NSG membership. The Obama administration, in its hurry to push through Indian membership before end of its tenure in office, has argued that India is already “like-minded” and should be given membership on that basis. However, sensing reluctance of some states to accept such a biased approach, most notably China, the U.S. agreed to evolve new criteria but advocated that it be no more than the commitments India has already given for its 2008 waiver. Accordingly, using intense pressure, the Americans persuaded the outgoing Chair of the NSG, Ambassador Grossi of Argentina and the current Chair, Ambassador Song of South Korea, to put forward a proposal in December 2016 designed to suit India but exclude Pakistan. According to this formula, the applicant state must separate its civilian and military nuclear facilities; accept an Additional Protocol with the IAEA; not divert any imported nuclear material to unsafeguarded facilities; enter into a safeguards agreement with the IAEA covering all its existing and future civilian facilities; not to conduct any nuclear test and describe its policies in support of the CTBT. These are conditions that India has already accepted for the 2008 waiver or can give without compromising its nuclear program or position on the CTBT. The other elements of this proposal that are designed to virtually scuttle Pakistan’s membership are that it implicitly calls for Indian membership before Pakistan since it mentions that as a member India will not oppose other membership requests, an assurance that would be worthless for Pakistan; and, that even when Pakistan becomes a member it will still need to obtain waiver in order to be eligible for nuclear trade with other NSG members – a condition that can always be denied by India (or the U.S.) since the NSG works on the basis of consensus.


This formula is so fundamentally biased in India’s favour that more than 10 countries have expressed their opposition to it, including China, Brazil, New Zealand, Ireland, Switzerland and Turkey among others. Consequently, the NSG meeting scheduled for December last year had to be postponed till February-March 2017. These countries have also asked the ‘Chair’ to engage in a transparent consultative process with all NSG members and pursue the two stage process agreed at the Seoul NSG Plenary meeting in June 2016 according to which the group shall first agree by consensus on the membership criteria and then consider the applications of Pakistan and India.


Pakistan’s principled position on the need for an equitable and non-discriminatory criteria has, therefore, been vindicated and the attempt by the U.S. and other Indian supporters to give India preferential treatment has been defeated. President Obama will, therefore, not be able to fulfil his promise to his friend Modi. It remains to be seen whether the new U.S. President, Donald Trump, will carry on with this policy. Given the strategic convergence between the U.S. and India, it is likely that he will.


For now, Pakistan, with the principled support of countries like China, Turkey and others, has scored a tactical success in its efforts to ensure that there is impartial treatment for the two applicants for NSG membership. But this race is far from over. We will need to continue with our out-reach efforts and engage in sustained diplomacy in our quest for NSG membership.

 

Former ambassador Zamir Akram is currently Advisor to the Strategic Plans Division, Government of Pakistan. He remained Pakistan’s Ambassador and Permanent Representative to the UN and other international organizations.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
09
February

بمقابلہ۔۔۔ بمقابلہ۔۔۔

تحریر: جویریہ صدیق

جنگی جنون میں مبتلا بھارت، جس کا دفاعی بجٹ 52 ارب ڈالر تک پہنچ گیا ہے بلکہ خطے میں ہتھیاروں کا سب سے بڑا خریدار بھی ہے ایک طرف تو 2008 سے 2015 تک اس نے ہتھیار خریدنے کے لئے 34ارب ڈالر کے معاہدے کئے جبکہ دوسری طرف اپنے فوجیوں کی فلاح و بہبود پر بہت کم خرچ کررہا ہے۔ بدانتظامی اور بے ایمانی اس قدر عروج پر ہے کہ بھارت کے فوجی بھوک، افلاس، تنگ دستی اور نامساعد حالات کی وجہ سے خودکشی پر مجبور ہوگئے ہیں ۔


بھارتی فوج اپنی حکومت اور اعلیٰ حکام کے ناروا رویے کے باعث بددلی کا شکار ہوتی جارہی ہے۔ مشکل حالات اور کم سہولیات میں ڈیوٹی بھارتی فوجیوں کے حوصلے پست کررہی ہے اور وہ خود کشیاں کرنے پر مجبور ہیں ۔جس وقت میں یہ سطور رقم کررہی تھی اس وقت بھی مقبوضہ کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے قریب 10 بھارتی فوج برفانی تودے تلے دب کر جاں بحق ہوگئے تھے۔کشمیر بھارتی فوجیوں کا قبرستان ثابت ہورہاہے ۔برہان وانی کی شہادت کے بعد سے بھارتی فوجی آزادی کے متوالوں کی وجہ سے مزید خوف کا شکار ہیں ۔


دہلی سرکار کے جنگی جنون اور پاکستان سے دشمنی پر سیاست چمکانے میں قربانی کا بکرا صرف بھارتی فوجی بنتے ہیں ۔جنہیں ناکافی تربیت اور کم ساز و سامان کے ساتھ بارڈر اور مختلف آپریشنز میں بھیج دیا جاتا ہے اور جہاں انہیں منہ کی کھانی پڑتی ہے۔ اکثر اوقات دہلی سرکار خود بھی ڈرامے کرکے اپنی ہی فوج پر حملے کرواتی ہے خود اپنے فوجی مار کر الزام پاکستان پر دھر دیتی ہے ۔یہ طریقہ واردات بھی بھارتی فوجیوں کو بزدل بنا رہا ہے۔

bamuqablaba.jpgکم سہولتوں اور ناقص اسلحہ و ناکافی ساز و سامان کے باعث بھارتی فوجی نفسیاتی مسائل کا شکار ہورہے ہیں ۔خالی پیٹ جب وہ محاذوں پر ڈیوٹی سے اکتا جاتے ہیں تو چھٹی کی درخواست کرتے ہیں لیکن چھٹی نہیں ملتی ۔یہ وجہ بھارتی فوجیوں کو مزید چڑچڑا بنارہی ہے۔12 جنوری 2017 کو مشرقی بہار میں ایک سینئر اہلکار نے چھٹی نہ ملنے پر اپنے چار سینئر افسران پر گولیوں کی بوچھاڑ کردی۔ چاروں افسران اس واقعے میں جانبر نہیں ہوسکے۔یہ تمام سکیورٹی اہلکار سینٹرل انڈسٹریل سکیورٹی فورس سے تعلق رکھتے تھے ۔اس بھارتی فورس کا کام اٹیمی تنصیبات اور ائیر پورٹ کی سکیورٹی ہے۔اب آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ بھارتی اٹیمی تنصیبات کی سکیورٹی کیسے ہاتھوں میں ہے ۔یہ اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ نہیں ہے۔ فروری 2014 میں بھی ایک بھارتی فوجی نے سری نگر میں قائم ملٹری کیمپ میں اپنے 5 ساتھیوں کو موت کے گھاٹ اتار کر خود کشی کر لی تھی ۔وجہ یہی تھی کہ سینئر نے چھٹی دینے سے انکار کیا ۔فوجی لمبی ڈیوٹی، کم خوارک، سخت سردی اورنا مناسب رہائش کی وجہ سے اندرونی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگیا تھا اور جب اس نے دیکھا کہ چھٹی تو نہیں مل رہی تو اس نے موت کو گلے لگایا لیکن اس سے پہلے اپنے پانچ ساتھیوں کو بدلے کی آگ کی نذر کر دیا ۔


لائن آف کنٹرول پر حالیہ کشیدگی کے دوران بھی بھارت کو بھاری جانی نقصان ہوا ۔لیکن عیار و مکار دہلی سرکار اپنے فوجیوں کی لاشیں چھپا لیتی ہے اور ان کے لواحقین کو مجبور کرتی ہے کہ چپ چاپ ان کا انتم سنسکار کردو کسی کو کانوں کان خبر نہ ہو ۔یہ رویہ بھی بھارتی فوجیوں میں بددلی پھیلا رہا ہے ۔کیونکہ جب وہ دیکھتے ہیں کہ بھارت کے لئے جان دینے والوں کو رات کی تاریکی میں آگ دی جاتی ہے اور ان کے گھر والے مہینوں مرنے والوں کی پینشن کے لئے دھکے کھاتے ہیں تو بھارتی فوجیوں کی لڑنے کی ہمت مزید شکستہ ہو جاتی ہے۔2 نومبر 2016 کو سابق بھارتی فوجی رام کشن گریوال نے پینشن کے معاملات حل نہ ہونے پر خودکشی کرلی تھی ۔


مقبوضہ کشمیر میں2014سے 2016تک 125 بھارتی فوجی ہلاک ہوئے جن میں سے18 اوڑی حملے میں مارے گئے تھے۔بھارت کے اپنے ہمسایوں پر حملے اور ریاستوں پر قابض رہنے کے لئے جنونیت نے اس کے اپنے فوجیوں کی کمر توڑ دی ہے۔جنگ میں مرنے والوں سے زیادہ تعداد خودکشی کرنے والے بھارتی فوجیوں کی ہے ۔2009 سے 2014تک 597بھارتی فوجیوں نے خودکشی کی۔2015میں 69فوجیوں نے خود کو موت کی نیند سلا لیا۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں کی بڑی تعداد پاگل پن کا شکار ہو رہی ہے۔ اسی وجہ سے وہ اپنے ساتھیوں پر حملہ آور ہوجاتے ہیں ۔مقبوضہ کشمیر میں ڈیوٹی دینے والے تقریبا 375 کے قریب بھارتی فوجی پاگل پن کا شکار ہو چکے ہیں اوران کا علاج نفسیاتی طبی مراکز میں جاری ہے۔


بھارتی فوج اور سرکار کی رہی سہی عزت کا جنازہ اس ویڈیو نے نکال دیا جس میں ایک بھارتی فوجی جوان تیج بہادر نے عام سپاہیوں کو ملنے والی سہولیات کا پول کھول دیا۔کہیں شنوائی نہیں ہوئی تو سپاہی نے ویڈیو فیس بک پر ڈال دی اور ویڈیو وائرل ہوگئی ۔ویڈیو میں سپاہی جلی ہوئی روٹیاں اور پانی والی دال دکھا رہا ہے۔اس ویڈیو میں تیج نے کہا میں بی ایس ایف کی 29 بٹالین کا جوان ہوں یاد رہے یہ وہ بٹالین ہے جوکہ جموں و کشمیر میں فرائض انجام دیتی ہے۔


وہ کہتا ہے ہم برف، ٹھنڈ، طوفان میں روز گیارہ گھنٹے کی ڈیوٹی دیتے ہیں ۔تیج کہتاہے کہ نہ میڈیا ہماری صورتحال دکھاتا ہے نہ کوئی منسٹر ان کی بات سنتا ہے۔وہ کہتا ہے ہمارے حالات بہت خراب ہیں، ہمارے ساتھ بہت نا انصافی ہورہی ہے۔ہمیں اکثر بھوکے پیٹ سونا پڑتا ہے۔اکثر صبح ڈیوٹی بھی خالی پیٹ دینا پڑتی ہے۔ہمیں ناشتے میں ایک جلا ہوا پراٹھا ملتا ہے وہ بھی صرف چائے کے ساتھ۔ دوپہر میں صرف ہلدی، نمک والی دال ملتی ہے اور روٹیاں بھی جلی ہوئی ہوتی ہیں ۔


اس نے اپنے سینئرز کے بارے میں کہا کہ وہ چیزیں بیچ دیتے ہیں اسی وجہ سے اشیاء ان تک نہیں پہنچتی ۔اس نے سوال کیا ایسی خوارک کھا کر کیا دس گیارہ گھنٹے ڈیوٹی کی جاسکتی ہے؟تیج نے اس خدشے کا بھی اظہار کیا شاید اس ویڈیو کے بنانے کے بعد وہ غائب کردیا جائے کیونکہ اعلیٰ افسران کے ہاتھ بہت لمبے ہیں۔ باقی تین ویڈیوز میں اس نے پانی میں بنی دال دکھائی، جلی ہوئی روٹیاں دکھائیں۔ دہلی سرکار کی یہ ویڈیو دیکھ کر نیندیں اڑ گئیں۔کہاں 51 ارب ڈالر کا بجٹ اور کہاں بھوک سے بلبلاتے فوجی۔بی ایس ایف حکام یہ ویڈیو دیکھ کرسیخ پا ہوگئے اورالٹااس جوان کے خلاف انکوائری کاحکم دے دیا۔اس کے کیرئیر پر سوال اٹھا دیئے کہ اسکا کردار شروع سے ٹھیک نہیں، وہ نفسیاتی مسائل کا شکار ہے اور اسے شراب کی بھی لت ہے‘ اس کی بہت عرصہ کونسلنگ بھی کی گئی ہے ۔


تیج نے میڈیا پر آکر کہا اگر بھارتی فوجی جوانوں کا خیال رکھا جاتا تو وہ ایسی ویڈیو کیوں پوسٹ کرتا۔اس نے کہا یہ مجھ پر الزام ہے کہ میرا کردار ٹھیک نہیں۔ یہ سب الزام تراشی میرے خلاف سچ کو سامنے لانے پر کی جارہی ہے۔تیج بہادر یادیو کی بیوی شرمیلا یادیو نے بھی کہا روٹی مانگنا کوئی جرم تو نہیں ۔جو سچائی ہے وہی ان کے شوہر سامنے لائے ۔شرمیلا نے مزید بتایا تیج کو سچ بولنے کی سزا ملی ہے۔ اس کو پلمبر بنا کر دوسری یونٹ میں بھیج دیا گیا ہے اور اس کا موبائل بھی چھین لیا گیا۔ باڈر پر بیٹھے فوجی اب بھی بھوکے بیٹھے ہیں ۔
بی ایس ایف کے جوان کے بعد سی آر پی ایف کے جوان جیت سنگھ نے بھی اپنی ویڈیو بنا کراَپ لوڈ کردی اور اپنی تنخواہ اور مراعات میں اضافے اور چھٹی کا مطالبہ کرڈالا۔سلسلہ یہاں نہیں رکا بھارتی فوجی لانس نائیک یگیا پرتاب سنگھ نے بھی ویڈیو اپ لوڈ کردی جس میں اس نے کہا میں ایک سپاہی ہوں لیکن ہم سے افسروں کے گھر کے کام کروائے جاتے ہیں، ہم ان کے جوتے صاف کرتے ہیں ، ان کے کتوں کو سنبھالتے ہیں‘ ان کے گھروں میں ملازموں کی طرح کام کرتے ہیں۔


اس طرح کے ایک اور واقعے میں 29 ستمبر 2016 کو مقبوضہ کشمیر میں تعینات بھارتی فوجی چندو لال اپنے کمانڈر کے رویے سے نالاں ہوکر سرحد پار کرکے پاکستانی فوج کے پاس پہنچ گیا۔وہ اتنا بددل تھا کہ اپنے ملک واپس جانے کو تیار نہیں تھا۔تاہم پاکستان نے جذبہ خیر سگالی کے تحت چندو کو بہت سے تحائف کے ساتھ واہگہ کے راستے واپس بھارت بھیج دیا ۔16 دسمبر2016 کو خاتون فوجی انیتا کماری نے مقبوضہ کشمیر میں خود کو گولی مار کر ہلاک کر ڈالا تھا۔اس طرح کے سیکڑوں واقعات ہیں جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ بھارتی فوجی بھارتی سرکار کے جنگی جنون اور رویے سے اکتا گئے ہیں ۔


بھارتی سرکار اپنے جنگی جنون کی آگ میں اپنے فوجیوں کو جھونک رہی ہے۔فوجی چھٹی اور سہولیات نہ ملنے کے باعث مایوس ہوگئے ہیں نہ ان کی زندہ ہوتے ہوئے عزت ہے نہ ہی مر کر عزت و تکریم۔بھارتی فوج قطعی طور پر بھی جنگ کے لئے تیار نہیں ہے۔بھارتی سرکار کے جنگی جنون نے بھارتی فوجیوں کو چڑچڑا اور نفسیاتی مریض بناکررکھ دیاہے۔ بھارت کی تینوں فورسز میں کوآرڈینیشن بہت کم ہے اسلحے کی دیکھ بھال بھی مناسب طریقے سے نہیں ہو رہی۔ بھارتی فوج میں بدعنوانی عروج پر ہے۔ وزارت دفاع اور فوج میں خلیج حائل ہے جس کے باعث فوج کی کارکردگی متاثر ہورہی ہے۔ بھارتی فوجی خالی پیٹ اسلحہ اٹھا کر جنگ لڑنے سے قاصر ہیں ۔


اس کے برعکس پاکستان میں حالات بالکل مختلف ہیں ۔پاکستانی فوج انتظامی امور بہترین طریقے سے چلا رہی ہے اور پاک فوج کے سپاہیوں اور افسران کو بہترین سہولیات فراہم کی جاتی ہیں ۔گزشتہ تین برس میں پاکستانی فوج نے بدترین دشمن اور سخت موسم کا مقابلہ کرتے ہوئے شمالی وزیرستان اور جنوبی وزیرستان سمیت باقی علاقوں میں حکومتی رٹ قائم کی۔ اس دوران ان کے حوصلے بلند رہے اور کوئی بھی ایسا نا خوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا جس میں سپاہیوں کو انتظامی طور پر کسی مشکل سے واسطہ پڑا ہو۔ الحمدللہ پاکستانی فوج میں خود کشی کی شرح زیرو فیصد ہے۔ محاذوں پر موجود پاکستانی سپاہیوں اور افسران کی تمام تر ضروریات کا خیال رکھا جاتا ہے۔پاکستانی دفاعی بجٹ بھارت کے مقابلے میں بہت کم ہے جہاں بھارت 51 ارب ڈالر دفاع پر خرچ کرتا ہے تو وہیں پاکستان6سے 8 ارب ڈالر اپنے دفاع پر خرچ کررہا ہے جوکہ ملکی بجٹ کا صرف 16سے 18فیصد ہوتا۔پاکستان کی پانچ لاکھ پر مشتمل فوج کو ہر طرح کی ضروری سہولیات فراہم کی جارہی ہیں۔پاک فوج کے افسران ہمیشہ اپنے جوانوں کے انتظام و انصرام کو اولین ترجیح دیتے ہیں۔ انتہائی ناگزیر حالات کے علاوہ پاک فوج ہمیشہ اپنے فوجیوں کے کھانے، چھٹی اور آرام کا خاطرخواہ انتظام کرتی ہے اور اونچے مورال اور بہترین ڈسپلن کو پہلی ترجیح دیتی آئی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مشکل حالات پڑنے پر پاکستانی فوجی اپنے پیٹ پر پتھر باندھ کر اور کئی کئی ماہ اپنے گھر والوں سے دُور رہنے کے باوجود اپنے حوصلے و عزم کو بلند رکھتا ہے۔ پاک فوج کے افسر اور سپاہی کا پکا یقین ہے کہ پاک فوج زندگی میں بھی اور مرنے کے بعد بھی اس کے خاندان اور گھر والوں کو بے یارومددگار نہیں چھوڑے گی۔ سیاچن گلیشیئر، کشمیر کے پہاڑ، تھر کے ریگستان، فاٹا اور بلوچستان کے سنگلاخ پہاڑ اور میدان ہوں، پاک فوج کے افسروں اور جوانوں نے ہمیشہ ثابت کیا ہے کہ ان کا مطمع نظر ذاتی یا دنیاوی منفعت نہیں ہے بلکہ پاکستان کا دفاع اور سلامتی باقی تمام فیکٹرز پر مقدم ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان آرمی کے سپہ سالار جنرل قمرجاوید باجوہ نے پاکستان فوج کو دنیا کی بہترین فوج سے تعبیر کیا ہے۔


پاکستانی فوجی جس وقت محاذ پر ہوتے ہیں انہیں اس بات کی فکر نہیں ہوتی کہ ان کے بیوی بچے پیچھے کس حال میں ہوں گے ۔فوجیوں کے خاندانوں کے لئے بہترین تعلیمی، طبی اور رہائشی سہولیات موجود ہیں ۔افسران یا سپاہیوں کے درمیان کوئی تفریق نہیں کی جاتی ۔اگر دوران جنگ کوئی فوجی، چاہے وہ سپاہی ہو یا افسر، شہید ہو جائے تو آرمی چیف اور کور کمانڈر خود اس کے جنازے میں شرکت کرتے ہیں۔ شہید ہونے والے فوجی کو پورے فوجی اعزاز کے ساتھ دفنایا جاتا ہے۔ تدفین اور جنازے کے اخراجات بھی آرمی کے ذمہ ہوتے ہیں ۔ان کے لواحقین کی مکمل داد رسی کی جاتی ہے۔شہید کے خاندان کو پینشن ملتی ہے، انشورنس کی رقم، بچوں کے لئے الاؤنس،بارہ ماہ کی سیلری، پلاٹ، زرعی اراضی، بیوہ اور بچوں کے لئے مفت طبی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں ۔یہ چیزیں اس قربانی کا نعم البدل بالکل نہیں جوکہ ایک فوجی اپنی جان کو وطنِ عزیز پر قربان کرکے دیتا ہے تاہم یہ سہولیات اس کے خاندان کی گزر بسر میں آسانی پیدا کر دیتی ہیں۔اسی طرح اگر کوئی بھی فوجی زخمی ہوکر لوٹتا ہے تو اس کا علاج معالجہ آرمی کے ذمے ہے۔اگر وہ اپنی صحت یابی کے بعد فیلڈ میں نہیں جاسکتا تو اس کو آرمی کے دیگر محکموں میں پوسٹ کردیا جاتا ہے ۔اس کی تنخواہ اور مراعات میں اضافہ کردیا جاتا ہے۔


پاکستان کے عوام اپنی فوج سے بہت محبت اور عقیدت رکھتے ہیں۔پاکستانی فوجی اپنے ملک اور عوام سے پیار کرتے ہیں۔ اس کے دفاع کے لئے ہر ممکن قربانیاں دیتے ہیں ۔افسران اور سپاہیوں کے مابین اخوت کا رشتہ مثالی ہے۔ جب وہ اپنے ساتھ اپنے سینئرز کو شانہ بشانہ جنگ لڑتے دیکھتے ہیں تو یہ ان کے جذبے اور ہمت کو دیتا ہے۔جب سپاہی اپنے سینئرز کو وہ کھانا کھاتا دیکھتے ہیں جو وہ خود کھاتے ہیں اور اپنی طرح کا رہن سہن تو یہ طبقاتی فرق کو مکمل طور پر ختم کردیتا ہے یہی بھائی چارہ پاک فوج کا اتحاد قائم رکھتا ہے۔بھارت جتنے بھی ہتھیار خرید لے لیکن اس کے فوجی اپنے اندر وہ جذبہ نہیں پیدا کرسکتے جو اسلام کے سپاہیوں، پاک فوج، میں موجود ہے ۔


کافر ہے تو شمشیر پہ کرتا ہے بھروسہ
مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ہے سپاہی

جویریہ صدیق ممتاز صحافی اور مصنفہ ہیں ۔ ان کی کتاب ’سانحہ آرمی پبلک سکول‘ شہدا کی یادداشتیں حال ہی میں شائع ہوئی ہے۔

twitter@ Javerias

پاکستانی سپاہی دنیا کا بہترین سپاہی ہے۔

maj_gen_asif_ghafoor_new.jpg

میجر جنرل آصف غفور

افواجِ پاکستان میں ملازمت محض نوکری نہیں ہے بلکہ یہ ایک جذبہ ہے۔ یہ ایک طرز زندگی ہے۔ ہمارا ساتھ اوپر کی سطح سے لے کر بٹالین اور کمپنی کی سطح تک جاتا ہے۔ سال میں کوئی افسر اور جوان کتنی چھٹی جاتا ہے؟ ہم سال میں گیارہ ماہ تو اکٹھے رہتے ہیں۔ سو ہم سب آپس میں جڑی ہوئی ایک مربوط فیملی کی طرح سے ہیں۔ ہماری کمانڈ اور سپاہی کا رشتہ فوجی زندگی کے ساتھ ساتھ ان کے گھر والوں سے بھی ہے۔ ہم اپنے سولجرز کے بچوں کی شادیوں اور خوشی غمی میں ان کے ساتھ رہتے ہیں۔ ان کے بچوں کی تعلیم و تربیت کے لئے اکٹھا کام کرتے ہیں۔ پاک فوج میں افسر اور سپاہی کا رشتہ سگے رشتوں سے بھی بڑھ کر ہے۔ ہم ایک بہت ہی مضبوط اور منظم فوج ہیں اور جب ایک فوج مربوط ہوتی ہے تب ہی وہ کامیاب اور لمبی جنگ لڑ سکتی ہے۔جہاں تک سولجر کی ویلفیئر کا تعلق ہے تو افسر کی یہ ذمہ داریوں میں شامل ہے کہ وہ اپنے سپاہی کا خیال رکھے۔ اگر سپاہی کو اپنے افسر سے محبت نہیں ہے تو اس کے اندر اپنے ملک کے لئے جان دینے کا جذبہ پیدا ہی نہیں ہو سکتا اور باہمی محبت ہمارے جذبے، عزم اور حوصلے کا بنیادی حصہ ہے۔ ہمارا سپاہی دنیا کا بہترین سپاہی ہے۔

 
06
October

پاک چین دوستی زندہ باد

Published in Hilal Urdu

تحریر: ڈاکٹر شائستہ تبسم


پاک چین دوستی زندہ باد۔ وان سوئے وان سوئے

Wang Waye

ایک ایسی دنیا میں جہاں تشدد، جنگ و دشمنی کا ماحول ہو ایسے میں دو ممالک جو نظریاتی لحاظ سے یکسر مختلف ہوںلیکن ان کی دوستی دنیا بھر کے لئے ایک مثال ہو وہ پاک چین دوستی ہے۔ پاکستان اور چین نہایت قریبی، سیاسی، معاشرتی، معاشی تعلقات کی بنا پر دنیا بھر میں جانے اور پہچانے جاتے ہیں۔ یہ تعلقات پچھلی سات دہائیوں پر محیط ہیں۔ اس تعلق کی جڑیں نہایت گہری اور پائیدار ہیں جو کہ یقیناً دونوں ممالک کی قیادت کی سمجھ بوجھ اور مستقبل کے مشترکہ نقطہ نظر کی وجہ سے ممکن ہوسکی ہے۔


پاک چین دوستی کی ابتداء 21 مئی 1951 سے ہوئی ۔ پاکستان مسلم دنیا کا پہلا ملک تھا جس نے چین کو تسلیم کیا۔ اس سفارتی پیش قدمی کو چین نے کبھی نہ بھلایا۔ باضابطہ سفارتی تعلقات قائم ہونے کے بعد دوطرفہ تعلقات کا ایسا سلسلہ شروع ہوا جو تمام موسموں اور حالات کے اتار چڑھائو کے باوجود قائم و دائم ہے۔ دراصل اس تعلق کو شروع ہی سے ایک دوسرے کی عزت اور ملکی مفادات کو محترم رکھنے کی بنیاد پر قائم کیا گیا تھا۔ لہٰذا دونوں ممالک نے ہمیشہ ایک دوسرے کی علاقائی اور بین الاقوامی پالیسیوں کی حمایت کی۔


بھارت کی چین کے ہاتھوں 1962 کی جنگ میں شکست سے جنوبی ایشیا کی سیاست میں تبدیلیاں رونما ہوئیں۔ اسی زمانے میں پاکستان اور چین کے درمیان سرحدی حد بندی کی بات چیت شروع ہوئی۔ دراصل اس وقت چین بھی دنیا کو یہ باور کرانا چاہتا تھا کہ وہ اپنے تمام ہمسایوں کے ساتھ مناسب اور دوستانہ تعلقات رکھنا چاہتا ہے۔ جبکہ امریکہ کی بھارت کو فوجی امداد نے پاکستان کو اتحادی بننے کی پالیسی سے بیزار کر دیا تھا۔ پاکستان یہ جان چکا تھا کہ بھارت کے امریکی ہتھیار نہ صرف چین بلکہ پاکستان کے خلاف بھی استعمال کئے جائیں گے اس کے ساتھ ساتھ پاکستان دنیا میں ایک آزاد اور خود مختار خارجہ پالیسی اپنانے کا خواہشمند بھی تھا۔ انہی ساری وجوہات نے پاکستان اور چین کو بہت قریب لانے میں اہم کردار ادا کیا۔ سرحدی حد بندی کے معاہدے پر مارچ1963 میں دستخط ہوئے۔ جس کے تحت پاکستان نے1,942کلومیٹر مربع میل کا سرسبز علاقہ حاصل کیا۔ اس معاہدے پر بھارت نے سخت اعتراض کیا۔ پاکستان اور چین نے فضائی تعاون کا معاہدہ بھی کیا جس کے تحت ڈھاکہ کینٹن
(Guangzhou)
شنگھائی فضائی سروسز کا قیام عمل میں لایا گیا۔اس معاہدے کی اہمیت اس لئے بھی بہت زیادہ تھی کیوںکہ پاکستان سے اس معاہدے کی بنا پر چین نے ان تمام کوششوں کو پسِ پشت ڈال دیا تھا جو بین الاقوامی سطح پر چین کو تنہا کرنے کے لئے کی جارہی تھیں۔

pakchendostia.jpg
1965کی جنگ میں پاکستان کی چین سے دوستی نے بھارت پر ایک دبائو رکھا۔ جب 16ستمبر کو چین نے بھارت کو الٹی میٹم دیا کہ اگر تین دن کے اندر بھارت نے سکم چین سرحد سے اپنی فوج نہ ہٹائی تو نتائج کا ذمہ دار وہ خود ہو گا۔ اس وقت چینی الٹی میٹم نے مغربی پاکستان کے سیالکوٹ سیکٹر سے فوجی دبائو کم کرنے میں مدد کی۔ اس چینی پالیسی سے روس اور امریکہ کے رویے میں بھی تبدیلی آئی اور دونوں ممالک نے پاکستان اور بھارت پر زور ڈالا کہ وہ سلامتی کونسل کی قرارداد کے تحت جنگ بندی پر عمل کریں ۔ چین کی اس پالیسی سے جنوبی ایشیا میں امن کی کوششوں کو تقویت ملی۔


صرف یہی نہیں 1966 میں جب امریکہ نے پاکستان پر فوجی سازوسامان کی ترسیل بند کی اس وقت بڑی تعداد میں چینی ہتھیار جن میں ایم آئی جی 15
اور ٹینک شامل ہیں یومِ پاکستان کی پریڈ میں نمائش کے لئے پیش کئے گئے۔ ساتھ ہی1966 میں دونوں ممالک کے درمیان120 ملین کی فوجی امداد کے معاہدے پر دستخط بھی ہوئے۔ دراصل ان سارے تعلقات سے دنیا کو اور خاص طور پر پاکستان کے دشمن بھارت کو ایک واضح پیغام دیا گیا تھا کہ پاکستان چین کے ساتھ کھڑا ہے۔
تعلقات میں اہم سنگِ میل شاہراہ ریشم کا راستہ کھلنا تھا۔ جس نے چین کے صوبہ
(Xinjiang)
سنکیانگ کو وادی ہنزہ سے ملادیا تھا۔1969 تک شاہراہ قراقرم پر کام جاری تھا۔ اس شاہراہ پر تقریباً15000 پاکستانی اور چینی مزدوروں نے صبح شام کی انتھک محنت کے بعد تقریباً774کلومیٹر اور16,072 فٹ اونچائی پر کام مکمل کیا۔ شاہراہ قراقرم نے تعلقات کو مزید وسعت دی جو سیاسی تعلقات کے بعد معاشی ، فوجی اور معاشرتی تعلق کی صورت میں وسیع تر ہوگئی۔


پاکستان کی سفارتی تاریخ کا ایک عظیم حصہ وہ تاریخی کردار ہے جس کو نہ صرف چین نے بلکہ دوسرے ممالک خاص طور پر امریکہ نے بھی سراہا۔ پاکستان نے امریکی سیکرٹری خارجہ ہنری کسنجر
(Henry Kissinger)
کے بیجنگ کے خفیہ دورے کے انتظامات کئے۔ جس کی وجہ سے بالآخر چین امریکہ سفارتی تعلقات قائم ہوسکے۔ انہی تعلقات کی وجہ سے امریکہ نے چین کی اقوامِ متحدہ میں رکنیت کی مخالفت ترک کی اور چین اقوامِ متحدہ کا ممبر اور سلامتی کونسل کا مستقل ممبر بن سکا۔ اس کے علاوہ پاکستان نے چین اور عرب دنیا خاص طور پر سعودی عرب کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کرنے میں ایک کلیدی کردار ادا کیا۔ اس پاکستانی کردارکو چین نے کبھی فراموش نہیںکیا۔ چین نے شروع ہی سے مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے مؤقف کی حمایت کی ۔ خاص طور پر اقوامِ متحدہ اور دوسرے بین الاقوامی فورمز پر مسئلہ کشمیر کو اقوامِ متحدہ کی قرارداد کی روشنی میں حل کرنے کی اہمیت پر زور دیا اور بار بار پاکستان کی اقوامِ متحدہ اور سلامتی کونسل میں حمایت کی۔ خاص طور پر جب امریکہ نے بھارت کو سلامتی کونسل کا ممبر بنانے کی کوششیں شروع کیں تو چین نے شروع ہی سے اس کی شدید مخالفت کی۔


1971 کی پاک بھارت جنگ کی چین نے مخالفت کی کیونکہ چین جنوبی ایشیا میں تسلط کی سیاست کی مخالفت کرتا آرہا تھا۔ چاہے وہ تسلط کسی عالمی طاقت کا ہو یا اس کے کسی اتحادی کا۔1971 کی جنگ میں چینی کردار صرف ہتھیاروں کی ترسیل تک محدود رہا۔


70کی دہائی کے آخری حصے میںبھارت کے ساتھ چین کے تعلقات کی بہتری سے پاکستان کچھ پریشان ضرور ہوا لیکن چین کے ساتھ اس کے تعلقات میں کمی نہ آئی۔ ٹھیک اسی زمانے میں جنوبی اور وسطی ایشیا کی سیاست میں تبدیلیاں رونما ہوئیں۔ سوویت یونین کی افغانستان میں آمد اور جواب میں افغان مجاہدین کی جنگ، امریکہ کا اس خطے میں ساز وسامان کے ساتھ مدد اور پاکستان کا افغانستان جنگ میں کردار اور اس کے ساتھ ہی خطے میں ایرانی انقلاب کی وجہ سے پاکستان اپنے داخلی اور بیرونی مسائل میں شدت سے گِھر گیا۔ امریکی امداد کی وجہ سے کچھ عرصے کے لئے چین بھارت تعلقات میں بہتری پیداہونے لگی لیکن یہ بہتری وقتی ثابت ہوئی۔
90کی دہائی میںپاک چین تعلقات میں وقتی تعطل ختم ہوا اور ایک بار پھر گرم جوشی پیدا ہوئی۔ چین نے پاکستان کی تقریباً ہر شعبے میں مدد کی۔ اس وقت چین پاکستان کا دوسرا بڑا تجارتی شراکت دار ہے۔ نہ صرف یہ بلکہ چین کی اس وقت سب سے بڑی سرمایہ کاری پاکستان میں ہے۔ دونوں ممالک کی مشترکہ تجارت کا حجم 18بلین ڈالر تک پہنچ چکا ہے۔

پاکستان اور چین نظریاتی طور پر دو مختلف ممالک ہیں۔ پاکستان کی اساس دو قومی نظریہ اور اسلام کے نام پر رکھی گئی ۔ جبکہ چین میں کمیونسٹ انقلاب کی کامیابی پر مائوزے تنگ نے عوامی جمہوریہ چین کی بنیاد 21ستمبر 1949 میں رکھی۔ 1950 کے بعد یکم اکتوبر چین کے قومی دن کے طور پر منایا جاتا ہے اور اس سنہری ہفتے

(Golden Week)

کی تقریبات مرکزی

Tiananmen Square

میں منعقد ہوتی ہیں۔


دفاعی شعبے میں چین نے پاکستان کی تینوں مسلح افواج کی مختلف شعبوں میں امداد کی۔ خاص کر پاکستان کی دفاعی ضروریات کو مد نظر رکھتے ہوئے
(Heavy Mechanical Complex)
ٹیکسلا کا قیام عمل میں لایا گیا۔ اس کے علاوہ چینی معاونت سے کامرہ میں ٹینک اور
Arms Plant
بھی لگایا گیا جبکہ 1986 میں
Heavy Electrical Complex
کا منصوبہ ہری پور میں شروع کیا گیا۔ پاکستانی افواج کی تینوں شعبوں میں چینی ہتھیاروں کی درآمد ہوئی جس میں بری اور بحری، زمین سے فضا میں نشانہ مارنے والے میزائل، ہلکے اور بھاری ہتھیار اور گولہ بارود شامل ہیں۔ نہ صرف یہ بلکہ ٹینک کی صنعت میں خاص پیش رفت ہوئی اور نئی ٹینک ٹیکنالوجی خاص کر الخالد ٹینک چینی مشاورت اور معاونت سے تیار کیاگیا۔ دنیا کی تنقید کے باوجود پاک چین اشتراک سے مختلف میزائلوں کی ٹیکنالوجی کی بہتری میں بھی اہم پیش رفت ہوتی رہی۔
امریکہ بھارت نیوکلیئر ٹیکنالوجی برائے امن معاہدے کے بعد پاکستان نے چین کے ساتھ اس مخصوص نیوکلیئر ٹیکنالوجی کے حصول کے لئے بات چیت کی جو بہت کامیاب رہی۔ چین نے پاکستان کے لئے نیوکلیئر توانائی کے پرامن استعمال کی پالیسی کی حمایت بھی کی اور اس کے حصول میں مدد کی۔
CHASNUPP-I
کا ایک پلانٹ پنجاب میں قائم کیا گیا۔ جبکہ
CHASNUPP-II
پروجیکٹ پر کام دسمبر 2005میں شروع ہوا۔
چین کی پاکستان میں سب سے بڑی سرمایہ کاری پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ کی شکل میں شروع ہوئی ہے۔ سی پیک سے پاکستان کا چین کے مغربی سنکیانگ صوبے سے بذریعہ شاہراہ رابطہ ہو جائے گا۔ جس سے معاشی ترقی کا ایک نیا دور منسلک ہے اور امید کی جا رہی ہے کہ سی پیک منصوبہ سے پاکستان کے توانائی کے مسائل حل ہو جائیں گے اور اس کے ساتھ یہ منصوبہ شاہراہوں اور ریلویز کا ایک جال بچھا دے گا۔
سی پیک کے منصوبے کی بنیاد 2013میں رکھی گئی اور نومبر 2016 میں اس بڑے پروجیکٹ کے ایک حصے نے کام شروع کر دیا جب کہ کچھ اشیاء ٹرک کے ذریعے چین سے گوادر کی بندرگاہ کے ذریعے مغربی ایشیا اور افریقہ کی منڈی میں بھیجی گئیں۔ اس کامیابی کے بعد چین نے اس منصوبے پر سرمایہ کاری میں اضافے کا عندیہ دیا جو اب 62بلین تک پہنچ گیا ہے۔ پاکستان کی سول اور فوجی قیادت سی پیک کی کامیابی کے لئے پرامید ہے اور یہ توقع کی جا رہی ہے کہ سی پیک پاک چین دوستی میں ایک سنگ میل ثابت ہو گا اور دونوں ممالک کو اس منصوبے کی تکمیل سے بے انتہا معاشی فوائد ہوں گے۔


معاشی تعلقات کی بنا پر چین پاکستان ایک ایسے سیاسی بندھن میں بندھ گئے ہیں جس کو سیاسی زبان میں اتحاد کہا جاتا ہے۔ اس منصوبے کی مخالفت بھارت اور امریکہ کی طرف سے شدت سے آئی کیوںکہ یہ دونوں ممالک چین کی بڑھتی ہوئی معاشی اور سیاسی طاقت سے خوفزدہ ہیں۔ بھارت کے لئے پاکستان کی سرزمین سے راستہ اس خوف میں مزید اضافہ ہے۔ پاکستان کے جغرافیائی محل وقوع کی وجہ سے یہ چین سے مشرق وسطیٰ اور وسطی ایشیا کے ممالک کا راستہ رہا ہے۔ ان علاقوں تک آسان رسائی براستہ پاکستان کم خرچ اور آسان ہے۔


پاکستان اور چین نظریاتی طور پر دو مختلف ممالک ہیں۔ پاکستان کی اساس دو قومی نظریہ اور اسلام کے نام پر رکھی گئی ۔ جبکہ چین میں کمیونسٹ انقلاب کی کامیابی پر مائوزے تنگ نے عوامی جمہوریہ چین کی بنیاد 21ستمبر 1949 میں رکھی۔ 1950 کے بعد یکم اکتوبر چین کے قومی دن کے طور پر منایا جاتا ہے اور اس سنہری ہفتے
(Golden Week)
کی تقریبات مرکزی
Tiananmen Square
میں منعقد ہوتی ہیں۔
پاکستان نے چین کے ابتدائی سالوں میں سیاسی حمایت کی۔ پاکستان نے اپنی تمام تر مشکلات کے باوجود بھارت کو اس کی مغربی سرحدوں میں مستقل مصروف رکھا جس کی وجہ سے چین اس طرف نسبتاً کم مصروف رہا اور اس نے اپنا دھیان جنوب مغربی علاقوں کی طرف مبذول کیا۔ پاکستان کے ساتھ چین کو بھی اس دوستی سے فائدہ ہوا ہے۔ جس کی وجہ سے جنوبی ایشیا میں طاقت کا توازن کبھی بھی بھارت کی طرف نہ جھک سکا اور بھارت کا وہ خواب جس میں وہ خود کو جنوبی ایشیا کے علاقے پر اپنا تسلط یا علاقائی طاقت سمجھتا ہے کبھی شرمندہ تعبیر نہ ہو سکے گا۔


حالیہ تناظر میں جبکہ امریکی صدر نے پاکستان کو افغانستان میں امریکی ناکامی کا ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے سخت پالیسی کا اظہار کیا اور بھارت کو پاکستان کی جگہ افغانستان میں ایک اہم کردا دینے کی بات کی تو سب سے پہلے چینی سخت رد عمل سامنے آیا۔ جس نے پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں قربانیوں اور نقصانات پر پاکستان کے کردار کو سراہا اور پاکستان کی پالیسی کی تعریف کی۔ یہی حمایت اور حوصلہ افزائی ہے جس سے اس دوستی کی گہرائی اور پائیداری کا پتہ چلتا ہے۔ ایسے وقت میں چین کی حمایت نے جو اقوام متحدہ کا مستقل ممبر بھی ہے ان تمام امکانات کو بالکل محدود کر دیا ہے جس کے ذریعے پاکستان پر کسی قسم کی پابندی کا معاملہ زیربحث آ سکتا تھا۔ اسی لئے بھارت نے اس پالیسی بیان کو جو چین کی وزارت خارجہ نے پاکستان کی حمایت میں دیا، دہری اور دوغلی پالیسی قرار دیا۔


چین نے پاکستان کے ساتھ دوستی نبھائی۔ پاکستان کی ٹیکنالوجی، ہتھیار اور سرمایہ کاری کی فراہمی اور مختلف بحرانوں سے نکلنے میںخلوص سے مدد کی۔ اسی لئے پاک چین دوستی کے بارے میں یہ کہا جاتا ہے کہ کوئی موسم یا وقت اسے کم نہیں کر سکا ہے۔بلکہ یہ دوستی سمندر سے گہری ہمالیہ سے اونچی شہد سے زیادہ میٹھی اور اب سی پیک معاہدے کے بعد اسٹیل سے زیادہ پائیدار اور مضبوط ہے۔

مضمون نگار کراچی یونیورسٹی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کی چیئر پرسن ہیں

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
06
October

پاک افغان تعلقات کی بحالی کے لئے سنجیدہ کوششیں

Published in Hilal Urdu

تحریر: عقیل یوسف زئی


مقبول عام تجزیوں اور زمینی حقائق کے برعکس پاکستان اور افغانستان کے تعلقات باوجود اس کے بہتر ہوتے جارہے ہیںمگر امریکہ اور بعض دیگر ممالک کی کوشش ہے کہ ان پڑوسی اور ایک دوسرے کے لئے ناگزیر ممالک کو کسی بھی جواز کی آڑ میں مزید بداعتمادی اورتصادم کی راہ پر ڈال دیا جائے۔ کراس بارڈر ٹیررازم کے معاملے پر پائی جانے والی بدگمانیوں ہی کا نتیجہ ہے کہ معاملات اس انداز سے بہتر نہیں ہو پا رہے، جس کی خطے کو ضرورت ہے۔ اس کے باوجود کہ نائن الیون کے بعد امریکی سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کی اپنی رپورٹ کے مطابق عالمی دہشت گردی میں کمی کے بجائے اضافہ ہوا ہے اور گزشتہ چند برسوں کے دوران 110 ممالک میں دہشت گردکارروائیاں ہوئی ہیں، عالمی برادری اور ہمارے بعض اتحادی یہ ماننے کو تیار نہیں ہیں کہ جنگ اور طاقت کا استعمال اس مسئلے کا مستقل حل نہیں ہے۔ اگر ایسا ہوتا تو افغانستان میں کب کا امن آچکا ہوتا کیونکہ وہاں40 سے زائد ممالک ایک دہائی سے زائد کے عرصے تک لڑتے رہے ہیں۔ امریکہ نے بوجوہ جو غلطیاں کیں وہ ان کو مان نہیں رہا۔ سب سے بڑی کوتاہی ان سے یہ ہوئی کہ انہوں نے افرادپر انحصار کیا اور اداروں کی بحالی کے علاوہ سیاسی عمل کے آغاز یا سرپرستی کے علاوہ تعمیرِ نو کو مسلسل نظر انداز کئے رکھا۔ دوسرا مسئلہ یہ درپیش رہا کہ وہ روس، ایران اور چین کے لئے افغانستان کو بیس کیمپ بنا بیٹھا اور اس مقصد کے لئے اندرون خانہ وہ وار لارڈز اور ان کے گروپس کی معاونت کرتا رہا۔ امریکہ پاکستان پر طالبان کے خلاف کارروائیوں کے لئے مسلسل دبائو تو ڈالتا رہا مگر اس کی اپنی پالیسی کا یہ حال رہا کہ اس نے افغان طالبان کو ابھی تک دہشت گرد تنظیم ڈیکلیئر نہیں کیا ہے۔ بلکہ امریکیوں کی نظر میں طالبان محض مزاحمت کار ہیں۔ امریکہ نے القاعدہ کے خلاف تو مؤثر کارروائیاں کیں مگر طالبان کے ساتھ وہ دوطرفہ مگر متضاد رویے پر گامزن رہا۔ طالبان کو نہ ختم کرنے کی سنجیدہ کوشش کی گئی اور نہ اُن کو سیاسی عمل کا حصہ بننے دیا۔ المیہ یہ ہے کہ پاکستان سے غیر ضروری توقعات وابستہ کی گئیں اور نجیب الطرفین ناکامیوں کا ذمے دار اسے قرار دیا جاتا رہا حالانکہ دہشت گردی ان ممالک میں بھی تواتر کے ساتھ ہوتی رہی ہے جو کہ پاکستان سے ہزاروں کلو میٹر دور واقع ہیں۔ امریکہ قطر دفتر کے ذریعے طالبان کے ساتھ رابطے میں رہا مگر پاکستان کے لئے اس قسم کے رابطے قابلِ جرم ٹھہرائے گئے۔ یہ درست ہے کہ پاکستان نے بھی بعض مواقع پر شاید خاطرخواہ توقعات پرپورا نہ اتر سکا۔ تاہم پورے کاپورا ملبہ اس کے سر ڈالنا اور دوسروں کی غلطیوں پر پردہ ڈالنا بھی مناسب طرزِ عمل نہیں ہے۔

 

بہت سے تجزیہ کار پُرامید ہیں کہ امریکی دبائو کے باوجود خطے کے حالات بتدریج بہتر ہونے کے امکانات ہیں۔ آئی ایس آئی کے سابق سٹیشن ڈائریکٹر میجر (ر) محمدعامر نے کہا ہے کہ پاکستان پر امریکہ کے لگائے گئے الزامات زمینی حقائق کے بالکل برعکس ہیں۔ امریکہ کے ساتھ موجودہ نام نہاد اتحاد کے خاتمے سے نہ صرف یہ کہ پاکستان کے حالات بہتر ہوں گے، اس کا انحصار ختم ہو جائے گا بلکہ ہمارے لئے مہذب اور پاکستان دوست ممالک کے ساتھ نئے تعلقات کے ایک بہترین دور کا آغاز بھی ہو گا۔

شائد اسی کا نتیجہ ہے کہ ٹرمپ کی پالیسی سٹیٹمنٹ کے بعد یہ بحث پھر سے چل نکلی ہے کہ اس تمام گیم میں امریکہ کا کیا رول رہا ہے اور یہ کہ پاکستان اور افغانستان اپنے طور پر کیا کرنا چاہ رہے ہیں۔ متعدد امریکی حکام اور تجزیہ کار بھی کہہ چکے ہیں کہ 2004-6 کے دوران حامد کرزئی کی بھی خواہش تھی کہ طالبان کو سیاسی عمل کا حصہ بنایا جائے اور ان کے ساتھ براہِ راست رابطے کئے جائیں۔ مگر امریکیوں نے اس کی اجازت نہیں دی اور اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ افغان طالبان اور ان کے اتحادیوں نے2004 کے بعد پھرسے مزاحمت کا آغاز کرلیا۔2004 تک حالات کافی پرامن تھے اور پیشنگوئی کی جارہی تھی کہ امریکہ اور اس کے اتحادی واقعتا افغانستان سے طالبان کا خاتمہ کرچکے ہیںمگر عملاً ایسا ہوا نہیں تھا۔ طالبان نے ایک پالیسی کے تحت پسپائی اختیار کر لی تھی اور شاید وہ بدلتے حالات میں ایک مجوزہ یا ممکنہ مفاہمتی عمل کے منتظر بھی تھے۔ یہ بات بھی کئی حوالوںسے ثابت ہو چکی ہے کہ امریکہ عملاً امن قائم کرنے کی نیت سے نہیں آیا تھا بلکہ اس کے پالیسی سازوں نے افغان سرزمین پر اپنے اڈے بنانے کی پلاننگ نائن الیون سے کئی برس قبل کی ہوئی تھی اور وہ افغانستان میں بیٹھ کر ایک پرانے فارمولے کو آگے بڑھانے آیا تھا۔ اب جا کر معلوم ہوگیا کہ امریکی مقاصد کچھ اور تھے، اور اس نے افغانستان کو ایک کمزور اور زیردست ملک کے طور پر اپنے مقاصد اور ترجیحات کے لئے استعمال کرنا تھا اور غالباً یہی وجہ تھی کہ امریکی حکام نے مفاہمتی کوشش اور خواہش کو مسترد کرکے2004-5 کے دوران افغان طالبان کوپھر سے مزاحمت پر مجبور کیا کیونکہ مزاحمت کی جنگ کے بہانے امریکیوں نے افغانستان کو کمزور اور خود کو ناگزیر بنا کر رکھناتھا۔ بعد میں جب طالبان کی کامیابیوں کا سلسلہ چل نکلا تو حالات سنگین ہوتے گئے اور اس پر کنٹرول برقرار رکھنا افغان فورسز اور امریکیوں کے لئے بھی ممکن نہیں رہا۔کچھ عرصہ قبل افغان طالبان کے سربراہ نے مفاہمتی کوششوں کا خیرمقدم کیا ہے تو افغان حکومت کو اس سے فائدہ اٹھانا چاہئے کیونکہ طالبان کی قوت اور حملوں کی تعداد میں روز بروز اضافہ ہوتا جارہاہے اور ان کو بعض معاشرتی عوامل کے باعث عوام کی حمایت بھی حاصل ہے۔ طالبان سربراہ نے اپنے بیان میں آدھے افغانستان پر قبضے کا دعویٰ کیا ہے اور ساتھ میں انہوںنے یہ بھی کہا ہے کہ جن علاقوں پر ان کا کنٹرول ہے وہاں امن ہے، تعمیر و ترقی کا سلسلہ جاری ہے اور عوام مطمئن ہیں۔ اگرچہ اس دعوے کو کلی طور پر درست قرار نہیں دیا جاسکتا تاہم یہ حقیقت ماننی پڑے گی کہ طالبان ایک زندہ حقیقت ہیں اور اگر ان کو مکمل شکست نہیں دی جاسکتی ہے تو ان کے ساتھ بات چیت میں کیا برائی ہے۔ اگر حزبِ اسلامی بوجوہ سیاسی عمل کا حصہ بن سکتی ہے تو طالبان کو بدلتے حالات کے تناظر میں ایڈجسٹ کیوں نہیں کیا جاسکتا۔ اس ضمن میں پاکستان کو بھی اپنا کردار ادا کرنا چاہئے کیونکہ مفاہمت کی صورت میں پاکستان پر ڈالے جانے والے عالمی دبائو میں کمی واقع ہوگی اور اس کے ممکنہ گھیرائو کے خدشات کم پڑ جائیں گے۔ یہ اطلاعات خوش آئند ہیں کہ افغان حکومت اور پاکستان کے درمیان روس اور چین کی کوششوں سے فاصلے کم ہوتے جارہے ہیں اور اندرون خانہ بہت سے عملی اقدامات اور اعتماد سازی پر کام جاری ہے۔ علاقائی کشیدگی کا خاتمہ نہ صرف افغانستان بلکہ پاکستان کی بھی ضرورت ہے اس لئے ماضی کی غلطیوں اور تلخیوں سے نکل کر ایک بہتر اور پُرامن مستقبل کے تمام امکانات پر سنجیدگی کے ساتھ غور کرنے کی اشد ضرورت ہے تاکہ خطے کو درپیش خطرات سے نمٹا اور نکالا جاسکے۔


باخبر سفارتی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ امریکی صدر کی افغان پالیسی کے اعلان سے پیدا شدہ صورت حال کے باوجود پاکستان اور افغانستان کے درمیان بہتر تعلقات، اعتماد سازی اور اداروں کے درمیان کوآرڈی نیشن پر مشتمل ایک پلان پر اتفاق رائے کی کوششیں حتمی مراحل میں ہیں اور اس ضمن میں تاجکستان میں منعقدہ حالیہ کانفرنس کے دوران مذکورہ ذرائع نے واضح انداز میں عندیہ دیا کہ اگر چین پاکستان اور افغانستان کے درمیان تنازعات اور اختلافات کے خاتمے کے لئے ثالثی کا کردار ادا کرنے کو تیار ہے تو افغان حکومت امریکی دبائو کو خاطر میں لائے بغیر قیامِ امن کے لئے اپنے طور پر بھرپور تعاون کرے گی۔سفارتی حلقوں کے مطابق اسی پیشرفت کے نتیجے میںبعد میں دونوں ممالک نہ صرف مذاکراتی عمل کے ایک مجوزہ طریقہ کار پر متفق ہوگئے بلکہ افواج کی سطح پر کوآرڈی نیشن کے لئے بھی علانیہ طور پر طریقہ وضع کیاگیا۔ ذرائع کے مطابق تاجکستان کانفرنس کے دوران علاقائی تعاون یا کائونٹر ٹیررازم کے ممکنہ کوآرڈی نیشن کی مختلف تجاویز پر تبادلہ خیال کے علاوہ اتفاق رائے کا اظہار کیا جاچکا ہے اور کسی بھی متوقع عمل میں چین ثالث کا کردار ادا کرے گا۔ جبکہ اس تمام پراسس کو روس کی حمایت اور معاونت بھی حاصل رہے گی۔ صورت حال پر تبصرہ کرتے ہوئے پاک امریکہ تعلقات کے ماہر ڈاکٹر حسین شہید سہروردی نے رابطے پر بتایا کہ ایک نئے علاقائی بلاک کے قیام کی کوششیں کافی عرصہ سے جاری تھیں اور اس میں چین کا بنیادی کردار تھا کیونکہ چین خطے کے حالات اور امریکی رویے کے اثرات سے خود کو الگ نہیں رکھ سکتا۔ ان کے مطابق پاکستان حالیہ پیش رفت کا بنیادی کردار ہے تاہم اس کے لئے یہ قطعاً ضروری نہیں کہ امریکہ سے تعلقات بگاڑے جائیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوںنے کہا کہ علاقائی ترقی اور متعدد بڑے منصوبوں کے لئے خطے کا امن لازمی ہے۔ اگر امریکہ پاکستان پر پابندیاں لگاتا ہے تو اس سے کوئی بڑا فرق نہیں پڑے گا کیونکہ پاکستان نے اپنے لئے نئے اتحادی تلاش کرلئے ہیں۔بہرحال تمام تر خدشات کے باوجود یہ اطلاعات کافی خوش آئند ہیں کہ دونوں ممالک ایک دوسرے کے قریب آنے کے تمام امکانات میں سنجیدہ ہیں۔


بہت سے تجزیہ کار پُرامید ہیں کہ امریکی دبائو کے باوجود خطے کے حالات بتدریج بہتر ہونے کے امکانات ہیں۔ آئی ایس آئی کے سابق سٹیشن ڈائریکٹر میجر (ر) محمدعامر نے کہا ہے کہ پاکستان پر امریکہ کے لگائے گئے الزامات زمینی حقائق کے بالکل برعکس ہیں۔ امریکہ کے ساتھ موجودہ نام نہاد اتحاد کے خاتمے سے نہ صرف یہ کہ پاکستان کے حالات بہتر ہوں گے، اس کا انحصار ختم ہو جائے گا بلکہ ہمارے لئے مہذب اور پاکستان دوست ممالک کے ساتھ نئے تعلقات کے ایک بہترین دور کا آغاز بھی ہو گا۔ ایک خصوصی انٹرویو میں انہوں کہا کہ امریکہ کے اپنے سابق سٹیشن ڈائریکٹر اور سی آئی اے کے ایک سابق سربراہ نے اپنی کتابوں میں تحریر کیا ہے کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے ہمارے ساتھ جو تعاون کیا، اسی کی بدولت ہم افغانستان سے طالبان حکومت اور القاعدہ ختم کرنے میں کامیاب ہوئے جبکہ ہم نے بدلے میں پاکستان کو نظرانداز کیا، اس پر شک کیا اور اس کے ساتھ تعاون کے کئے گئے وعدے پورے نہیں کئے۔ انہوں نے کہا کہ آپریشن المیزان سے لے کر بعد کی تمام کارروائیوں کے دوران پاکستان نے کسی بھی مرحلے پر بیان کردہ ڈبل گیم کا ریاستی سطح پر مظاہرہ نہیں کیا۔ ان کے مطابق افغانستان کا امن سرے سے امریکی ترجیحات میں شامل ہی نہیں تھا اور نہ ہی وہ اب چاہتا ہے کہ وہاں امن اور استحکام ہو۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان اور یہاں کے عوام کبھی بھی افغانستان کے مخالف نہیں رہے اور نہ ہی افغان حکمرانوں اور عوام نے پاکستان کو کبھی اپنا دشمن سمجھا۔ اس کی بڑی مثال دو جنگوں کے دوران افغانستان کا بھارت کے مقابلے میں پاکستان کے ساتھ وہ رویہ ہے جب افغانستان نے مغربی سرحدوں کو محفوظ رکھا اور بھارت کو کوئی سہولت یا معاونت فراہم نہیںکی۔ ان کا کہنا تھا کہ اب بھی دونوں برادر ممالک کو ایک دوسرے سے بدظن اور دُور کرنے کی تمام کوششیںناکام ہوں گی اور پاکستان نہ صرف ایک پرامن اور مستحکم افغانستان کے قیام میں اپنے طور پر اپنا مؤثر کردار ادا کرے گا بلکہ اپنے عملی اقدامات کے ذریعے ناراض بھائیوں کو گلے سے لگا کر امریکی اور بھارتی عزائم کو بھی ناکام بنائے گا۔ ان کہنا تھا کہ امریکہ کے رویے نے پاکستان کے لئے عالمی اور علاقائی سطح پر نئے دور کے نئے دروازے کھول دیئے ہیں۔ ہم اب چین اور روس سمیت بعض دوسرے اہم ممالک کے نہ صرف اتحادی ہیں بلکہ ہم امریکہ کے چنگل،حصار اور دبائو سے نکل آئے ہیں۔ انہوں مزید بتایا کہ نئے علاقائی منظر نامے کے تعین کے معاملے پر تمام ادارے، پارٹیاں اور عوام ایک صفحے پر ہیں اور ہم ایک نئے سفر کا آغاز کرنے والے ہیں۔ ضرورت صرف اس بات کی ہے کہ خود اعتمادی اورخودانحصاری کا مظاہرہ کرکے افغانستان کے عوام کو بھائی سمجھ کر گلے لگایا جائے اور اس مقصد کے لئے کسی اور کی ترجیحات یا مفادات کے بجائے افغانستان اور پاکستان کے مفادات کو مقدم رکھا جائے۔ اس سلسلے میں میڈیا بہت اہم کردار ادا کرسکتا ہے تاکہ دوریوں اور خدشات کو ختم کیا جاسکے۔ ان کہنا تھا کہ کسی کو اس خوش فہمی میں نہیں رہنا چاہئے کہ پاکستان اور افغانستان کو آپس میں لڑانے کی کوشش کامیاب ہوسکتی ہے۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
 

Follow Us On Twitter