06
November

CPEC and the Indo-American Axis

Published in Hilal English

Written By: Mushahid Hussain Syed


In no way is China 'dictating' OBOR to any country, which, in any case includes 65 countries spread all over Asia, the Middle East, Africa, Europe, all voluntarily part of OBOR, which is probably the single most important diplomatic and developmental initiative in the 21st Century. Only India in the region is out of it, since it sees itself as a 'rival' of China.

Actually, by opposing OBOR and echoing India on CPEC, the United States is sowing the seeds of another Cold War, a 'New Great Game' in the region, pitching its proxy, India, to 'counter and contain' China, destabilising the region further with a debilitating proxy war between India and Pakistan since India is already well embarked on the process of cross-border terrorism against Pakistan.

Following up on the unveiling of President Trump's flawed South Asian strategy on August 21, 2017, U.S. Defence Secretary, Jim Mattis told the Senate Armed Services Committee in Washington, DC, on October 3, 2017 that the U.S. has reservations on the 'One Belt, One Road' (OBOR) initiative of China.


Jim Mattis, in what is the first such public statement from an American high official on OBOR said that "In a globalised world, there are many belts and many roads, and no one nation should put itself in a position of dictating 'One Belt, One Road'." He added another ground for the U.S. opposition, when in an oblique reference to the China-Pakistan Economic Corridor (CPEC), which is the flagship and pilot project of OBOR, that 'OBOR also goes through disputed territory'.


The statement of Secretary Mattis is surprising and inexplicable as it is contrary to previous American policy and both his reservations are quite baseless. Three aspects are noteworthy.

 

cpecandindoame.jpgWhen China hosted the OBOR Summit in Beijing in May 2017, with 110 countries and international organisations in attendance, the United States sent an official delegation led by Matt Pottinger, Special Assistant to President Trump, and Senior Director in charge of East Asia in the National Security Council. His participation like that of other countries was an endorsement of OBOR and no reservations were expressed on this count.


Second, after the World Bank-brokered Indus Waters Treaty resulted in the decision to build new dams, the American government enlisted U.S. contractors to build the Mangla Dam in Azad Kashmir, and the U.S. then never expressed reservations that it is 'disputed territory'.


Third, in no way is China 'dictating' OBOR to any country, which, in any case includes 65 countries spread all over Asia, the Middle East, Africa, Europe – all voluntarily part of OBOR – which is probably the single most important diplomatic and developmental initiative in the 21st Century. Only India in the region is out of it, since it sees itself as a 'rival' of China.


Actually, by opposing OBOR and echoing India on CPEC, the United States is sowing the seeds of another Cold War, a 'New Great Game' in the region, pitching its proxy, India, to 'counter and contain' China, destabilising the region further with a debilitating proxy war between India and Pakistan since India is already well embarked on the process of cross-border terrorism against Pakistan.


Mattis’ statement of October 3, comes on the heels of President Trump's August 21 South Asia strategy, where Trump handed over the Afghan policy's execution to the Pentagon, which, in turn, is keen to rope in the Indians as their 'junior partners' in this 'New Great Game'.


The U.S. has already announced a troop surge in Afghanistan, and the intention to stay put in Afghanistan for the long haul.


The U.S. military presence of some 16,000 will be supplemented by another 10,000 from its NATO allies, plus a matching presence of armed military contractors hired by the Pentagon, which means 50,000 plus men under arms. This presence will be beefed up by the under-construction American Embassy in Kabul, one of the biggest in the world.

 

CPEC is all about inclusion, progress, connectivity that seeks development on the fast track, especially for those areas that are left behind, and it is an opportunity for the world's sixth most populous country to alleviate poverty and allow its talented people to seize the opening to build better and more prosperous lives.

What would the American presence be in Afghanistan for? Obviously, the force won't be big or strong enough to militarily defeat the Taliban, who already control 45% of Afghanistan, so what else could keep them busy? An educated guess can read the military minds of the Trump Administration.


With 400 American military bases already circling China in Asia, the U.S. military presence is vital to keep an eye on China next door, since its sensitive Xinjiang province has a 90-kilometre border with Afghanistan on the Wakhan Corridor.


Additionally, with Trump bent upon scuttling the Iran nuclear deal, keeping an eye on Tehran would be an added incentive. And then with Putin being constantly demonised, Russia's 'near abroad' (the Central Asian Republics that border Afghanistan like Turkmenistan, Tajikistan and Uzbekistan), would be another convenient target.

 

So the contrasting visions, paths and policies for the future are clear: Pakistan pursuing win-win cooperation and connectivity while India opts for conflict and confrontation. The U.S. and India are going against the tide of history because neither the U.S., having squandered $ 3 trillion in the quagmires in Iraq and Afghanistan, is in a position to sustain another Cold War, while, India, having failed to quell the popular, spontaneous, indigenous and widespread uprising in Occupied Kashmir, is mired in 16 other indigenous insurgencies.

Loud whispers from Washington also speak in hushed tones about what is being left unstated, namely, the Pakistan nuclear program. The American journalist, David Sanger, in his book 'Confront and Conceal', writes: "There was another reason to establish an 'enduring presence' in Afghanistan after 2014 – a reason the White House did not want to discuss. It was Pakistan. The United States could live with an Afghanistan that was messy, even with some parts of the country under de facto Taliban control once the international forces pulled back. But stability in Pakistan – and the security of the Pakistani nuclear arsenal – was another story. The American forces in Afghanistan had a role as a 'break the glass' emergency force if Pakistan and its (nuclear) arsenal, appeared to be coming apart at the seams".


In his analysis of the Trump strategy, informed American journalist David Ignatius wrote something similar in The Washington Post, August 23, 2017, about the prolonged U.S. military presence in Afghanistan: "It sustains a base that will allow the United States to keep watch on nearby Pakistani nuclear weapons".


With the balance of economic and political power shifting from the West to the East in the 21st Century, which is being talked about as the 'Asian Century', two clear trends are discernible, in fact, two distinctively different pathways to the future.

 

The one-fifth of humanity that resides in South Asia deserves a better tomorrow, with no overlords and no underdogs, not a return to a tried, tested, flawed and failed approach. Such a Washington-concocted and Delhi-executed recipe will not only be disastrous for themselves, but for Asia as a whole.

There is OBOR, which is promoting globalisation through corridors and connectivity with its centrepiece CPEC, seen as the hub of a new regionalism driven by economy and energy, ports and pipelines, roads and railways, pushing for progress and prosperity with win-win cooperation.


CPEC is all about inclusion, progress, connectivity that seeks development on the fast track, especially for those areas that are left behind, and it is an opportunity for the world's sixth most populous country to alleviate poverty and allow its talented people to seize the opportunity to build better and more prosperous lives.


Conversely, there is an attempt by the American military-industrial-complex to spark a new Cold War by conjuring up the 'China threat', seeking to contain China, whose centrepiece is the Logistics Exchange Memorandum of Agreement (LEMOA), a military pact, signed by the United States and India in August 2016, which, for the first time, allows American access to military bases in India, something which India had long derided Pakistan for. So, now the United States and India are formally military allies.


So the contrasting visions, paths and policies for the future are clear: Pakistan pursuing win-win cooperation and connectivity while India opts for conflict and confrontation. The U.S. and India are going against the tide of history because neither the U.S., having squandered $ 3 trillion in the quagmires in Iraq and Afghanistan, is in a position to sustain another Cold War, nor India, having failed to quell the popular, spontaneous, indigenous and widespread uprising in Occupied Kashmir, is mired in 16 other indigenous insurgencies.


Additionally, the Modi regime has proven to be divisive by actively promoting politics of hate, bigotry and extremism against liberal Hindus (some independent voices like Arundhati Roy are either being stifled or driven out of India), Muslims, Sikhs and Christians.


The one-fifth of humanity that resides in South Asia deserves a better tomorrow, with no overlords and no underdogs, not a return to a tried, tested, flawed and failed approach. Such a Washington-concocted and Delhi-executed recipe will not only be disastrous for themselves, but for Asia as a whole.

 

The writer is Chairman of Pakistan's Senate Defence Committee. He is an eminent scholar and practitioner of international repute on issues of security, international relations and politics. He has been the Editor of a prestigious national English daily, and author of three books. As Leader of Pakistan's Delegation to the United Nations Human Rights Commission at Geneva in 1993, he was proactive in promoting Pakistan's position on Kashmir and Siachen.

www.mushahidhussain.com

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
10
January

ہارٹ آف ایشیا کانفرنس میں بھارت کا منفی رویہ

تحریر: محمد اکرم ذکی

سابق سیکرٹری جنرل و وزیر مملکت وزارت خارجہ۔پاکستان

آف ایشیا کانفرنس میں پاکستان کے مشیر خارجہ کوہوٹل سے باہر نہ آنے دینا سفارتی آداب کی خلاف ورزی سے کہیں بڑھ کر حبس بے جا میں رکھنے کا مجرمانہ فعل ہے۔ اس فعل سے بھارت نے واضح طور پر اپنے اسی جارحانہ پیغام کو ایک مرتبہ پھر دہرایا ہے۔ دشمنی پر مبنی جو پیغام وہ تسلسل کے ساتھ پاکستان کو دے رہا ہے اور پاکستان خطے کے وسیع تر مفاد میں امن اور دوستی کی خواہشات کو مقدم رکھے ہوئے ہے۔ بھارت کے ساتھ خوشگوار تعلقات کا خواب دیکھنے والے مقتدر حلقے کی آنکھیں اب کھل جانی چاہئے اور انہیں اس تلخ حقیقت کا ادراک کرلینا چاہئے کہ پاکستان کی ترقی، استحکام،امن اور سب سے بڑھ کرپاکستان کے وجود کو بھارت کی جانب سے حقیقی و سنگین خطرات درپیش ہیں اور بھارت پاکستان کے خلاف اپنے مذموم عزائم کی تکمیل کی خاطر کسی بھی حد تک جاسکتا ہے۔ پاکستان کے خلاف جارحانہ و دشمنانہ کردار کی ایک بڑی وجہ یہ بھی ہے کہ بھارت اب علاقائی بالادستی کے خواب سے آگے بڑھ کر دنیا کی بڑی طاقتوں میں شمولیت کے پروگرام پر عمل پیرا ہے۔ اس مقصد کے حصول کے لئے وہ نہ صرف اپنی جنگی اور ایٹمی صلاحیت کو مسلسل بڑھا رہا ہے بلکہ خطے کے تمام ممالک کو اپنی تابعداری میں لینے کی کوشش بھی کررہا ہے۔بڑی جنگی طاقتوں میں اپنا شمار کرانے کے لئے بھارت نے جوہری پروگرام کو وسیع کرکے امریکہ ، جاپان اور آسٹریلیا سے جوہری معاہدے کئے ہیں۔نئے نیوکلیئر ڈاکٹر ائن کے تحت اپنی تینوں افواج کو ایٹمی صلاحیت سے لیس کیا ہے ۔ کسی بھی بحری فوج کے پاس ایٹمی قوت کی موجودگی اس حوالے سے زیادہ خطرناک سمجھی جاتی ہے ،کیونکہ اسے مارک کرکے نشانہ بنانا مشکل ہوتا ہے۔ سلامتی کونسل میں مستقل نشست،خطے پہ بالادستی و اجارہ داری اوربڑی طاقتوں میں شماربھارت کی ایسی خواہشات ہیں کہ جن کی تکمیل کی راہ میں وہ پاکستان کو رکاوٹ سمجھتا ہے۔ اس رکاوٹ کو ہٹانے یا ختم کرنے کے لئے بھارت پاکستان کے خلاف ایک باقاعدہ پروگرام پہ کاربند ہے۔

 

hartofasia.jpgاس پروگرام میں پاکستان کو داخلی و خارجی سطح پر عدم استحکام کا شکار کرنا، پاکستان کو تنہا کرنا، تعمیر و ترقی کے دروازے بند کرنا، خطے کے ممالک کے ساتھ تعلقات میں بگاڑ اور بالخصوص دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیوں کو نظرانداز کرانے کے لئے الزامات کا لامتناہی سلسلہ جاری رکھنا شامل ہے۔ پاکستان کے خلاف اس بھارتی پروگرام کو اگر امریکی حمایت حاصل ہے تو یہ کوئی اچنبھے کی بات نہیں۔ سوویت یونین کے ٹوٹنے کے بعد امریکہ نے اپنا مرکزی حریف چین کو قرار دیا اور اپنی پالیسی ترتیب دی جس میں بھارت کو چین کے مدمقابل لانا شامل تھا۔ اس پالیسی کے تحت امریکہ نے بھارت کے ساتھ بڑے دفاعی و جوہری معاہدے کئے ۔ 2001ء میں صدر بش نے بھارت کے ساتھ میزائل ڈیفنس سسٹم معاہدہ کیا۔ 2005میں نیوکلیئر ڈیل اور اس کے علاوہ بے تحاشہ اسلحہ دینے کے معاہدے کئے۔ اب امریکہ اور بھارت نے ایک دوسرے کے بیسز استعمال کرنے اور لاجسٹک امداد کے معاہدے کئے ہیں۔ بھارت چین کے خلاف امریکہ سے تعاون پر مبنی پالیسی کی قیمت پاکستان مخالف پالیسی میں امریکی حمایت و مدد کی صورت میں مانگتا ہے۔ چنانچہ پاکستان کے خلاف بھارتی جارحانہ و دشمنانہ رویے پہ عالمی خاموشی باعث حیرت نہیں ہونی چاہئے۔


پاکستان کے خلاف بھارت کے عزائم حالیہ دور حکومت یا موجودہ عشرے میں جارحانہ نہیں ہوئے بلکہ قیام پاکستان کے بعد سے ہی بھارت پاکستان کی سلامتی کے خلاف سرگرم تھا۔ پاکستان پر جنگیں مسلط کیں۔ پہلے کشمیر پہ قبضہ کیا، پھر مشرقی پاکستان کو الگ کرنے میں اپنا گھناؤنا کردار ادا کیا ۔ پاکستان کے پانیوں پر قبضے کی پالیسی اختیار کی۔ کشمیر میں ظلم و ستم کے پہاڑ ڈھائے۔ آزادئ کشمیر کے لئے جو تحریک اٹھی تو اسے دہشت گرد قرار دیا۔ نریندر مودی حکومت کے آنے کے بعد بھارتی کردار جارحانہ نہیں بلکہ بے نقاب ہوا۔ نریندر مودی نے بھارتی پالیسی کو واضح اور عیاں کیا۔ یہاں تک کہ پاکستان کو دولخت کرنے کا اقبال جرم بھی سینہ تان کر سابق مشرقی پاکستان میں کیا۔ پاکستان کو تقسیم در تقسیم کرنے کی دیرینہ بھارتی خواہش کو عملی جامہ پہناتے ہوئے مودی نے بلوچستان اور گلگت بلتستان کی آزادی کی بھی باتیں شروع کردیں۔ دہشت گردی کے نام سے پاکستان کے خلاف واویلا کرکے پہلے دباؤمیں رکھنے کی کوشش کی۔ جب پاک افواج نے دہشت گردوں کے خلاف فیصلہ کن آپریشن ضرب عضب شروع کیا تو بھارت نے ایک جانب مشرقی سرحد پر بلااشتعال فائرنگ اور شیلنگ کا سلسلہ وقفے وقفے سے شروع کردیا تو دوسری جانب لائن آف کنٹرول پر بھی جارحیت شروع کردی۔ اسی پر ہی اکتفا نہیں کیا بلکہ افغانستان کے ذریعے مغربی سرحد پر بھی پاک فوج کو مصروف کرنے کی کوشش کی۔ یہ پاک فوج کی پیشہ ورانہ مہارت اور اعلیٰ صلاحیتوں کا ہی مظہر ہے کہ بھارت کی جانب سے بیک وقت کھولے گئے کئی محاذوں پر افواج پاکستان نے دشمن کو دندان شکن جواب دیا۔ اجیت دوول ڈاکٹرائن کہ ’’پاکستان میں گھس کر اسے تباہ کرو‘‘ کو عملی طور پر پاک فوج نے اپنی مؤثر حکمتِ عملی سے توڑا ہے۔


مودی حکومت نے پاکستان کے خلاف دوسرا بڑا محاذ سفارتی سطح پر کھولا ، جس کا مقصد عالمی برادری میں پاکستان کو تنہا کرنا ہے۔ اس مقصد کے حصول کے لئے پاکستان کے تمام دوست جن میں چین، سعودی عرب، ایران، عرب امارات، افغانستان، وسطی ایشیائی ریاستیں وغیرہ شامل ہیں، ان تمام ممالک سے بھارت نے نہ صرف تجارت اور تعلقات کو فروغ دیا ہے بلکہ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے کے خلاف چین میں جاکرا حتجاج کیا ہے۔ اسی طرح پاکستان کو توانائی کے بحران میں مبتلا رکھنے کے لئے پہلے پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے میں سے نکل کراسے ناکام بنانے کی کوشش کی اور پھر ترکمانستان، افغانستان، پاکستان، انڈیاگیس منصوبے میں شامل ہوکر افغانستان سے پاکستان کے اندر دراندازی میں اضافہ کردیا۔ پاک افغان کشیدگی بڑھانے کے جہاں دیگر مقاصد ہیں وہاں ایک بڑا بھارتی مقصد یہ بھی ہے کہ ترکمانستان، افغانستان، پاکستان، انڈیا منصوبہ بھی کھٹائی میں پڑے۔ اگر کامیاب بھی ہو تو بھی پاکستان کی توانائی سپلائی لائن افغانستان میں بھارتی پیر کے نیچے رہے۔ اسی طرح بھارت نے سعودی عرب اور عرب امارات کے ساتھ کئی معاہدے کئے۔ بھارت نے بہار میں سرمایہ کاری اور ایران، افغانستان، بھارت کوریڈور بناکر وسطی ایشیائی ریاستوں تک رسائی کا وہ منصوبہ شروع کیا،جس میں پاکستان شامل نہیں ، حالانکہ وسطی ایشیائی ریاستوں کا سہل اور محفوظ راستہ پاکستان افغانستان سے گزرتا ہے۔ جس طرح پاک افغان تعلقات میں خرابی کے لئے بھارت افغانستان میں سرگرم ہے، اسی طرح پاک ایران تعلقات میں خرابی پیدا کرنے کا بھی کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتا ۔ اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی پاکستان کے دورے پر پاک چین اقتصادی کوریڈور میں شامل ہونے کی خواہش لے کر آئے تھے۔ عین اسی وقت کلبھوشن کا معاملہ سامنے آیا اور ایسا پہلی مرتبہ ہوا کہ بھارت نے نہ صرف کلبھوشن کو اپنا جاسوس تسلیم کیا بلکہ فوری طور پر اس کی فیملی کے افراد بھی میڈیا پر لے آیا۔میڈیا کے ذریعے تاثر یہ دینا مقصود تھا کہ پاک چین اقتصادی راہداری کے خلاف ایران اور بھارت ایک ہیں، حالانکہ بلوچستان کے معاملے پر پاکستان اور ایران ایک جبکہ بھارت اور اسرائیل مخالف صفحہ پر موجود ہیں، جبکہ گوادر اورسی پیک کا بنیادی تعلق بلوچستان سے ہے۔ جس طرح پاکستانی بلوچستان میں بھارت مداخلت کررہا ہے اور یہاں بغاوت کا بیج بونے کی کوششوں میں مصروف عمل ہے ، اسی طرح ایرانی بلوچستان کے خلاف اسرائیل سرگرم ہے اور اس مقصد کے لئے بھارتی زمین استعمال کررہا ہے۔حال ہی میں اسرائیلی صدر نے بھارت کا طویل ترین دورہ بھی کیا ہے۔چنانچہ سی پیک میں شامل ہونے کی ایرانی خواہش کا نہ صرف چین نے خیر مقدم کیا بلکہ پاکستان نے بھی اسے خوش آئند قرار دیا۔ یہی وجہ ہے کہ چند روز قبل سی پیک کی آفیشل ویب سائٹ کی افتتاحی تقریب میں چین اور ایران کے سفیروں نے خصوصی شرکت کی۔


سی پیک کو ناکام بنانے اور اس کی سکیورٹی مشکوک کرنے کے لئے دہشت گردانہ حملے جاری ہیں۔ چین سے گوادر کے لئے پہلے برآمد ی قافلے کی روانگی سے چار روز قبل پولیس ٹریننگ سکول کوئٹہ میں دہشت گردی کا اندوہناک سانحہ پیش آیا۔ برآمدی قافلے کے گوادر پہنچ جانے کے اگلے روز اور گوادر کی افتتاحی تقریب سے محض ایک روز قبل دربار شاہ نورانی میں خودکش حملہ ہوا۔ دہشت گردی کے دونوں واقعات میں بھارتی عنصر براہ راست ملوث پایا گیا ہے۔ اسی طرح پشاور، فاٹا، کراچی و ملک کے دیگر شہروں میں پیش آنے والے سانحات کا سرا افغانستان میں موجود کالعدم تنظیموں سے جاملتا ہے ۔ جو بھارتی چھتر چھایا میں پاکستان کے خلاف دہشت گردی کا بازار گرم کئے ہوئے ہیں۔ علاوہ ازیں پاک فوج کے جوانوں نے اسی عرصے میں آبی حدود کی خلاف ورزی کرنے والی سب میرین کا راستہ روکا اور پاک فضائی حدود کی خلاف ورزی کرنے والے ایک بھارتی ڈرون کو بھی مار گرایا۔


تیسرا قبیح عمل مقبوضہ وادی میں ریاستی طاقت کے حیوانی استعمال کی صورت میں بھارت سرانجام دے رہا ہے۔ مقبوضہ وادی میں برہان وانی کی المناک شہادت کے بعد کشمیری نوجوانوں کی جو تحریک آزادی کے نعرے کے ساتھ اٹھی اس کو کچلنے کے لئے بھارت ظلم و جبر کی تمام حدیں پار کرچکا ہے۔ وانی کی شہادت کے بعد بیسیوں نوجوان شہید، سینکڑوں نوجوان، بچے، خواتین پیلٹ گن کا نشانہ بن کر اپنی بینائی کھوچکے ہیں۔ نوجوان بچیاں، مستورات لاپتا ہیں۔ سینکڑوں نوجوان، طالب علم زیر حراست ہیں۔ بجائے اس ظلم پر شرمندگی محسوس کرنے کے بھارت مقبوضہ وادی میں آزادی کی اس تحریک کو بھی پاک بھارت مسئلہ بنا کر پیش کرنے میں مصروف عمل ہے۔


پیش کردہ حالات و واقعات اتنے پرانے نہیں ہیں کہ جو اس سے قبل کسی عالمی یا علاقائی فورم پر پاکستان کی جانب سے پیش نہ کئے گئے ہوں۔ ہارٹ آف ایشیا کانفرنس میں بھارت کی جانب سے سفارتی آداب کی خلاف ورزی سے بڑھ کر مجرمانہ رویہ اپنانے کی وجہ یوں بھی سمجھ میں آتی ہے کہ بھارت’’الٹا چور کوتوال کو ڈانٹے ‘‘ کے مصداق اپنے جرائم پر پردہ ڈال کے پاکستان کو ’’مجرم‘‘ثابت کرنے پر کمربستہ ہے۔ شائد یہی وجہ ہے کہ پاکستانی مشیر خارجہ کو حبس بے جا میں رکھا نہ تو انہیں ترجمان سے ملنے دیا گیا اور نہ ہی گنے چنے موجود پاکستانی صحافیوں سے۔ حالانکہ ابھی نریندر مودی کو پاکستانی حکمرانوں کی میزبانی سے لطف اندوز ہوئے پورا ایک سال بھی مکمل نہیں ہواتھا۔


ضرورت اس امر کی ہے کہ سب سے پہلے ہم خود یہ باور کریں کہ بھارت کی پاکستان دشمنی ایک حقیقت ہے۔ پاکستان کو بھارت کی جانب سے مستقل، طویل المدت اور سنجیدہ خطرے کا سامنا ہے ۔ جس سے نمٹنے کے لئے عسکری ، سیاسی قوتوں کے ساتھ ساتھ سول سوسائٹی ، میڈیا کو بھی اپنا مستقل اور ذمہ دارانہ کردار ادا کرنا ہوگا۔ پاکستان کو مربوط، جامع ،مستقل اور طویل المدت پالیسی اپنا نی ہوگی۔ سول ملٹری قیادت کو مشترکہ حکمت عملی اپنانی ہوگی۔ دشمن کا مقابلہ کرنے کے لئے عسکری قوت کو مضبوط سے مضبوط تر کرنا ہوگا۔ سول انتظامیہ و پولیس کے ذریعے اندرونی انتشاریوں سے سخت رویہ اپنا نا ہوگا۔ بھارتی میڈیا ایک بمبئی سانحہ کو لے کر دنیا میں پاکستان دشمنی کا ڈھول پیٹ رہا ہے جبکہ ہمارا آزاد میڈیا سمجھوتہ ایکسپریس، مالگاؤں کویاد کرنا تو درکنار اے پی ایس، سانحہ چارسدہ یونیورسٹی، کوئٹہ کچہری حملہ، پولیس لائن حملے ودیگر بیسیوں ایسے سانحات کو فراموش کرچکا ہے جن میں بھارت براہِ راست ملوث تھا۔ ہمارے میڈیا کو بھی سلامتی کے امور میں قدم بہ قدم ملک و قوم کی ترجمانی کرنی ہوگی۔ بیرونی ممالک میں موجود ہمارے سفارتخانوں کو بھی موثرانداز میں اپنا نقطہ نظر دنیا پر واضح کرنا ہوگا، اور دنیاکو یہ باور کرانا ہوگا کہ پاکستان میں جاری دہشت گردی کی سرپرستی بھارت کررہا ہے اور پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بیش بہا قربانی دے رہا ہے۔ عمومی طور پر بھارت کے حوالے سے ہماری پالیسی ردعمل یاسستی کا شکار رہتی ہے مگر اب اس بات کی شدید ضرورت ہے کہ ردعمل سے نکل کر سفارتی و سیاسی محاذپر پیش قدمی کریں۔ بھارتی رعونت اور جارحیت کے خلاف ایک جامع، مربوط اور طویل المدت پالیسی ترتیب دیں جس پر صبر و تحمل سے عمل پیرا ہوکر بھارتی عزائم کو ناکام بنایا جائے۔
(آمین)

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
ضرورت اس امر کی ہے کہ سب سے پہلے ہم خود یہ باور کریں کہ بھارت کی پاکستان دشمنی ایک حقیقت ہے۔ پاکستان کو بھارت کی جانب سے مستقل، طویل المدت اور سنجیدہ خطرے کا سامنا ہے ۔ جس سے نمٹنے کے لئے عسکری ، سیاسی قوتوں کے ساتھ ساتھ سول سوسائٹی ، میڈیا کو بھی اپنا مستقل اور ذمہ دارانہ کردار ادا کرنا ہوگا۔

*****

 
09
January

Reigniting the Water Wars

Written By: Dr. Huma Baqai

In the event of a war, states are entitled to suspend treaties, including diplomatic relations by invoking Article 62 of the Vienna Convention. If India or Pakistan consider revoking the treaty, it is itself signaling an act of war. This will equip both the countries with the right under international law to take up any other coercive or non-coercive measure as an act of reprisal. This is not a pretty picture. Perhaps India should also be mindful of the fact that China is an upper-riparian country in Indus and Brahmaputra basins.

What’s ticking between Pakistan and India is not the nuclear bomb, but the water bomb. For years international relations strategists have warned that wars in the future would be over resources. Post-recent tensions in South Asia, Prime Minister Narendera Modi suspended meetings of the committee that oversees water sharing between India and Pakistan, using water as a diplomatic weapon. International experts are of the view that Delhi is using the water issue to put pressure on Pakistan in the dispute over Kashmir. The Indian strategy is to build huge storage facilities and canals over and around the rivers that flow through Indian administered Kashmir but most of the water is allotted to Pakistan under the Indus Water Treaty. The 56 year old treaty is under strain, and Modi’s stance and strategy is not conducive to its continuity. Like it is said, sharing the waters of the Cauvery has been an issue for decades but it is particularly contentious now. The latest development is that Pakistan has yet again approached the World Bank to address the violation of the Treaty by India. India has successfully stalled the appointment of the chairman of the Arbitration Court of Justice, which Pakistan had requested, by immediately moving in with a request for a neutral expert.


This new twist to the treaty has come at a time when Modi government has chosen to publicly threaten Pakistan with the abrogation of the treaty. India is threatening to cut Pakistan’s water access. The 56 year-old water sharing agreement has run into trouble as tensions have escalated between the rivals, post-Uri attack. Statements by Prime Minister Modi calling for a review of the Treaty where he said that blood and water cannot flow together, and then hinting at revoking the treaty were seen as confirmation of these apprehension.


However, this is not new. India has been following a policy of ‘dewatering Pakistan’ since long. India already has 20 hydro projects on the three western rivers allocated to Pakistan. It is now building another 10 and more are being planned.


In the past also, Islamabad has complained to the international court that the dam in the Gurez Valley, one of dozens planned by India, will affect Pakistan’s river flow and is illegal. The court had halted any permanent work on the river for the moment but India got the permission to continue tunneling and building other associated projects. In 1987, upon Pakistan’s objection, Delhi had to suspend the Tulbul Navigation Project on the Jhelum River. As per a BBC report, sources within Indian Water Resources Ministry have hinted that the project could now be revived. As part of Modi’s aggressive water policy, this will directly have an impact on Pakistan’s agriculture.


The former chairman of Indus River System Authority, Engineer Fateh Ullah Khan Gandapur said on record that India is using water as a ‘weapon of mass destruction’ to convert Pakistan into a desert and is diverting the entire flow into the Indian territory of Rajasthan. Salman Bashir, former foreign secretary of Pakistan, categorically said that diversion of Indus water by India will lead to war. Prime Minister Modi in one of his pre-election speeches in Batinda said that water that belongs to India should remain in India. Diverting the waters of Indus is not realistically possible, and cannot be done without triggering a war between the two countries.


Pakistan, India and Afghanistan Water Triangle
India has also tried to use its influence to start interfering with the flow of water from Afghanistan to Pakistan. Islamabad has shown its concern over New Delhi’s increased help to Kabul for development of a number of storages on the Kabul River without addressing Pakistan’s concerns. The Indian Prime Minister Manmohan Singh in his visit to Afghanistan back in 2011 had pledged $1.5bn in development assistance, with special interest in dam-building on the Kabul River. This commitment, apart from other heads, is meant for building 14 small and medium dams with total water storage capacity of 7.4MAF. International financial institutions including the World Bank have agreed to provide $7.079bn for these projects. In 2016, Indian experts completed the feasibility and detailed engineering of 12 projects to be built on River Kabul. If these 12 projects are completed, they will store 4.7 million acre feet of water, squeezing river flows to Pakistan. Moreover, in the absence of major dams in Pakistan, Pakistan will eventually end up buying electricity from Afghanistan, which may be the underlying purpose of this extensive 12 dam plan of the Afghan government with Indian collaboration. India and Afghanistan are actively exploring Chenab like run of the river projects on Afghanistan eastern rivers as a strategic offensive against Pakistan. Pakistan does not have any water treaty with Afghanistan. The rules governing flow of Afghanistan’s eastern rivers, mainly Kabul, Kunar and Chitral into Pakistan are just some internationally accepted principles. Pakistan in retaliation had hinted at diverting Chitral River before its entry into Afghanistan in the event of attempts made to deprive it of its due share. The strained relations between Pakistan and Afghanistan and the constant Indian manipulation of the conflict also has Pakistan’s water security at stake. A latest policy brief by Leadership for Environment and Development (LEAD) Pakistan titled “Hydro-diplomacy between Pakistan and Afghanistan” says “planned water projects on Kabul River by upper-riparian Afghanistan will adversely affect lower-riparian Pakistan. It is critically important to arrive at a consensus by understanding issues, maintaining historical rights and arriving at benefit sharing options for both countries through the use of Kabul River waters.”

 

We need to showcase our water vision for the future which includes not only raising objections to what India is doing but having a water conservation plan and a strategy to respond to climate change. Pakistan’s water security is intrinsically linked to its food security. In Pakistan little or no dams are being constructed and to add insult to injury the two largest dams are silting.

India has never underestimated the significance of river waters to strengthen its geostrategic interests in the region. It is now working on a double-squeeze water policy against Pakistan by constantly building on the western rivers in occupied Kashmir and facilitating projects on the Kabul River. The establishment in Delhi has a very aggressive water mindset towards Pakistan. It has under successive governments, talked about reviewing the Treaty “to teach Pakistan a lesson”. Modi is just more vocal about it.


The statement by P.M. Modi was not taken lightly by Pakistan, and it immediately approached the World Bank to appoint a chairman for the Court of Arbitration because Pakistan claims that the design of the 330 MW Kishanganga Project violated the treaty. India followed with the demand for the appointment of a neutral expert. The World Bank’s take on the situation is that both processes initiated by the respective countries were advancing at the same time, creating a risk of contradictory outcomes that potentially endanger the Treaty. Thus, the pause is to address this impasse. Arbitration has been halted over two Indian hydro-electric projects on the Chenab River; 850 MW Ratle and 330 MW Kishanganga. The World Bank has counseled bilateral negotiations between India and Pakistan. It has urged both the countries to sort out differences and problems by January 2017. The bank had initially agreed to initiate both the processes simultaneously, but decided to pause them post Indian objection.


India has welcomed the decision and is ready to talk to Pakistan bilaterally to resolve the issue. This sudden desire to talk to Pakistan over water has arised because it suits India for several reasons to achieve its end objectives. One; India has initiated this new twist in the Treaty by continuous violation and hurling threats at Pakistan. Two; India has been stonewalling all initiative for dialogue except on the Treaty, this happened only after the issue was taken to the World Bank. More interestingly, India has habitually sidelined the permanent Indus Commission, established under Article VIII of the Indus Water Treaty (IWT), the primary channel of communication between the two countries. Now the question arises why this sudden desire to resolve the water issue through dialogue? It is also important to note here that India, which is ready for bilateral negotiation with Pakistan after Pakistan approached the World Bank, had even suspended routine bi-annual talks between the Indus Commissions of the two countries, and had taken a principle decision to restart work on the Tulbul Navigation Project on the Jhelum.


The last time bilateral dialogue on the Treaty brought some success was in 1978. The situation between India and Pakistan is different today and we are in state of dispute paralysis. The trust deficit between the two countries is at its highest level. The LoC keeps blowing hot and cold. The theatre of conflict now also includes Afghanistan. Indian opposition to CPEC is an open secret. The atmospherics for dialogue to resolve a contentious issue, like water seem unlikely.


The Indian strategy of continuous building of projects and at the same time, threatening Pakistan with revoking of the Treaty and resorting to dialogue only are a time-gaining strategy because of international pressure to achieve its nefarious designs, does not induce any confidence. Pakistan has made it clear that it will not accept any modification or changes in the IWT. Pakistan’s reaction to the World Bank brokered pause is not positive. Since it is seen as an Indian strategy of gaining time to continue building, till it becomes fate accomplished. A review of the Treaty is also not acceptable to Pakistan. The review, as already stated by Indian experts, is aimed at more rights over the western rivers, which is Pakistan’s agriculture’s lifeline.


Legal status of the Treaty
Ahmer Bilal Soofi, an eminent Pakistani lawyer’s take on the Treaty is that “The Treaty has no provision for unilateral “suspension”. It is of an indefinite duration and was never intended to be time-specific, event-specific or regime-specific — but rather state-specific. It will not expire with regime change. It is binding on both the states equally and offers no exit provision. The Treaty survived the two wars as well as other Pakistan-India conflicts because none of them was termed a war under international law.


In the event of a war, states are entitled to suspend treaties, including diplomatic relations by invoking Article 62 of the Vienna Convention. If India or Pakistan consider revoking the Treaty, it is itself signaling an act of war. This will equip both the countries with the right under international law to take up any other coercive or non-coercive measure as an act of reprisal”. This is not a pretty picture. Perhaps India should also be mindful of the fact that China is an upper-riparian country in Indus and Brahmaputra basins.


India is playing with fire using water as a tool of aggressive diplomacy to mount pressure on Pakistan. Using a mutually used resource to gain geo-strategic advantage is a recipe for trouble. On the other hand Pakistan should not take this lightly. India has time and again successfully manipulated the World Bank brokerage to its advantage because of Pakistan’s delayed response and weak water diplomacy. Pakistan needs to put its act together now, both internally and externally. Giving foreign policy statements, largely just for the consumption of the internal audience without any real plan on the ground, will not work. We need to showcase our water vision for the future which includes not only raising objections to what India is doing but having a water conservation plan and a strategy to respond to climate change. Pakistan’s water security is intrinsically linked to its food security. In Pakistan little or no dams are being constructed and to add insult to injury the two largest dams are silting. Pakistani authorities have so far done nothing to develop water uses on River Kabul. There is also no progress on the Munda dam. It paints a very grim picture of our water resources, like it is said, wars in today’s world are not fought on the conventional front but on the diplomatic, intellectual and economic front.

 

The writer is an eminent analyst and anchor person. She is currently an Associate Professor at Department of Social Sciences and Liberal Arts at IBA, Karachi.

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
10
January

باہمی تعاون مگر پاکستان کی قیمت پر نہیں

تحریر: ڈاکٹر ماریہ سلطان

نیوکلیئر سپلائیرز گروپ اگرچہ ایک غیر روایتی نظام ہے تاہم ٹیکنالوجی کو کنٹرول میں رکھنے کا ایک اہم ذریعہ ہے۔روایتی طور پر اس سے نہ صرف حساس ٹیکنالوجی کی تجارت کو منضبط کیا جاتا رہا ہے بلکہ اسی نظام کے ذریعے تمام ہائی ٹیک مواد کی بین الاقوامی تجارت بھی ضابطہ کار میں لائی جاتی رہی ہے۔ دو الگ الگ فہرستوں میں تقسیم اس نظام کا ایک حصہ نیوکلیائی ٹیکنالوجی اور نیوکلیائی ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ کی صراحت کرتا ہے جب کہ دوسرے حصے میں بنیادی خام مال اور اہم مادوں ،جیسے بسمتھ، ایلومینیم وغیرہ، کی تجارت کا کنٹرول شامل ہے۔ مذکورہ دھاتیں اور دیگر نیوکلیائی مواد اور ٹیکنالوجی کسی بھی ملک کی ہائی ٹیک صنعت کی بقا کے لئے انتہائی اہمیت کی حامل ہیں۔ اس لئے نیوکلیئر سپلائیرز گروپ کی اہمیت اور اندیشے ان دونوں درجوں میں آزادانہ تجارت سے جڑے ہوئے ہیں۔


تاہم گزشتہ چند سالوں سے اس ادارے کی غیر جانب داری اور موثر رہنے کے بارے میں شکوک و شبہات جنم لے رہے ہیں۔ ان شکوک کی بنیادی وجہ ہندوستان کو اس گروپ کا ممبر بنانے کے لئے کی جانے والی امریکہ کی جانب سے کوششوں کا بہت عمل دخل ہے۔ گزشتہ چند سالوں میں امریکہ نے انتہائی جانبداری اور لاپروائی کا مظاہرہ کرتے ہوئے انڈیا کے ساتھ نہ صرف نیوکلیئر کے میدان میں باہمی تعاون کے معاہدے کئے اور اس کو نیوکلیئرسپلائیر گروپ کی ممبر شب دلانے کے لئے پہلے سے طے شدہ قوانین کو بائی پاس کرنے کی کوشش کی بلکہ اس باہمی تعاون کے منفی اثرات پاکستان کے نیوکلیئر پروگرام پر بھی پڑنے شروع ہو گئے۔اب نہ صرف پاکستان کو نیوکلیئرسپلائیر گروپ کا ممبر بنانے کی، میڈیا بشمول سوشل میڈیا کے ایک مذموم مہم شروع کر دی گئی ہے بلکہ پاکستان کے نیوکلیئر پروگرام، جس کی سکیورٹی ایک مسلمہ امر ہے، اس پر بھی حملے کئے جا رہے ہیں۔


ایک طرف تو بھارت کو نیوکلیئر سیفٹی کے ضمن میں بدترین ریکارڈ اور جوہری عدمِ پھیلاؤ کے عالمی معاہدے پر دستخط نہ کرنے کے باوجود نیوکلیئرسپلائیر گروپ کی رکنیت دی جارہی ہے جب کہ دوسری طرف پاکستان کے صنعتی اداروں کو غیرروایتی ذرائع استعمال کرتے ہوئے اپاہج کرنے کی منصوبہ بندی کی جارہی ہے۔ سوشل میڈیا اور غیر روایتی پروپیگنڈے کا مذموم مقاصد کے لئے استعمال نہ صرف شرمناک بلکہ معتبر عالمی اداروں کی ساکھ پر سوالیہ نشان کا باعث بھی بنے گا۔ پاکستان کے لئے یہ قطعی طور پر ناقابلِ قبول اور غیر منصفانہ طرزِ عمل ہے۔ اس سے جہاں ہماری مختصر اور طویل مدتی صنعتی ضروریات اور توانائی کے حصول کی کوششوں کو زِک پہنچے گی اس کے ساتھ ساتھ پاکستان کے دفاع کے لئے انتہائی اہم نیوکلیئر صلاحیت کو مذموم پروپیگنڈے کے ذریعے داغ دار کرنے کی کوشش اور نیوکلیئر سپلائیرز گروپ کی اتفاقِ رائے کی روایت ، اس کی دوہری ٹیکنالوجی کی تجارت کو متاثر کرنے کی اہلیت اور بھارت امریکہ کا گٹھ جوڑ، پاکستان کی ترقی کی کوششوں پر بری طرح اثر انداز ہو سکتا ہے۔دونوں ملکوں کی جانب سے نیوکلیئرسپلائیرز گروپ کے پلیٹ فارم کو استعمال کرنے کے یہ خدشات نہ صرف ترقی کے لئے ہمارے مشرق کے ساتھ اشتراک کو متاثر کریں گے بلکہ ہمارے ملک کی مستقبل میں تجارت نیز پاکستان اور امریکہ کے باہمی تعلقات پر بھی بُرے اثرات ڈالیں گے۔


جنیوا میں این ایس جی کے حوالے سے گفت و شنید اور بھارتی وزیرِاعظم کی این ایس جی میں شمولیت کی شاطرانہ کوششوں کو اس وقت شدید دھچکا لگا جب یہ انکشاف ہوا کہ نو بھارتی ادارے نیوکلیئرٹیکنالوجی کے حوالے سے خلاف ورزیوں کی وجہ سے حالیہ عرصے میں امریکہ کی درآمدی کنٹرول کی فہرست کا حصہ تھے۔ اس تمام کے باوجود موجودہ اوبامہ انتظامیہ اپنے آخری ایام میں بھارت کی نیوکلیئرسپلائیرز گروپ کی رکنیت کے حصول میں مدد کر رہی ہے۔ ساتھ ہی پاکستان کے نیوکلیئرپروگرام کے خلاف کسی معتبر شہادت کے بغیر ہی سوشل میڈیا اور انٹیلی جنس رپورٹوں کی بنیاد پرپاکستان کی جانب سے اٹھائے گئے اہم اقدامات کے بارے میں شکوک و شبہات پیدا کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔


نیوکلیئرسپلائیر گروپ میں شمولیت ہو یا دیگر نیوکلیئر سے متعلق معاملات پاکستانی قوم کے خدشات بے بنیاد نہیں بلکہ اس کی ایک تازہ مثال اوبامہ انتظامیہ کی جانب سے سات پاکستانی گروپس اور اداروں پر پابندی کا اعلان ہے۔ یو ایس ڈیپارٹمنٹ آف کامرس نے ان سات
Entities
کو ایک نوٹیفکیشن کے تحت
Export Administration Regulations (EAR)
کی فہرست میں شامل کیا ہے۔ تاہم یہ امر باعث تشویش اورمجرمانہ تعصب کی نشاندہی کرتا ہے کہ اس پابندی کا باعث بننے والی کسی بھی وجوہ کا ذکر نہیں کیا گیا ہے۔ موجودہ امریکی انتظامیہ کی جانب سے اپنے آخری مہینوں میں برتے گئے اس تعصب سے مستقبل میں دونوں ملکوں کے تعلقات شدید متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔ اس لئے پاکستانی اداروں کی فہرست میں شمولیت کا ازسرِ نو جائزہ لینے کی اشد ضرورت ہے۔


غیرمصدقہ اور مشکوک ذرائع جیسا کہ سوشل میڈیا، تجارتی ویب سائٹوں، انٹیلی جنس رپورٹوں اور وکی لیکس کی بنیاد پر تیار کردہ الفا پروجیکٹ پر شکوک کے بادل چھائے ہوئے ہیں۔ اس مشکوک رپورٹ کی بنیاد پاکستان کے پروگرام کے بارے میں شکوک و شبہات اور خدشات پیدا کئے جار ہے ہیں۔ ایسی رپورٹوں سے نہ صرف پاکستان کی نیوکلیئرسپلائر گروپ میں شمولیت کا کیس پیچیدہ ہوجائے گابلکہ نئی امریکی انتظامیہ کے ساتھ باہمی تعاون کی کوششوں کو بھی نقصان پہنچے گا۔ ایسے ذرائع پر بھروسہ کرکے تشکیل دی گئی رپورٹ میں کالعدم اداروں کی فہرست میں شمولیت یا پاکستان کے نیوکلیئرپروگرام کے بارے میں تشویش پیدا کرنے کا جواز نہیں بنایا جانا چاہئے۔ پاکستانی کمپنیوں کی امریکہ کے کالعدم اداروں کی فہرست میں شمولیت ، جیسا کہ الفا رپورٹ میں تذکرہ کیا گیا، پاکستان کی دفاعی ، نیوکلیائی اور عمومی صنعتوں کو بری طرح متاثر کرے گی۔


مذکورہ پروجیکٹ کا بظاہر مذموم مقصد مخصوص عناصر کے ایما پر پروپیگنڈا کو بنیاد بنا کر پاکستانی معیشت کے لئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھنے والی صنعتوں کو نشانہ بنانا ہے۔ مزید برآں یہ رپورٹ موجودہ امریکی انتظامیہ کی جانب سے مستقبل کی امریکی انتظامیہ کے ساتھ پاکستان کے تعلقات پیچیدہ تر بنانے کی کوشش بھی ہے۔
پاکستان امریکہ کے ساتھ باہمی تعاون پر مبنی تعلقات قائم کرنے کا خواہش مند ہے اور پاکستان نیوکلیئرسپلائیرز گروپ کے معیارِ اہلیت پر پورا اترتا ہے۔ بے بنیاد،کمزور اور مشکوک معلومات کو بنیاد بنا کر امریکہ کی جانب سے پابندیوں کے شکار اداروں کی فہرست میں توسیع پاکستان کی تجارت اور ترقی پر منفی اثرات ڈالے گی۔ اس طریقے سے بغیر کسی اصول اور معیار کے بین الاقوامی برآمدی کنٹرولز کو سیاسی مقاصد کے حصول کے لئے استعمال کرنا باعثِ تشویش ہے۔ اسی طرح اگر بھارت کو ایٹمی ہتھیاروں کا پھیلاؤ روکنے کا قانوناً پابند نہیں کیا جاتا تو اس سے سب سے زیادہ نقصان نان این پی ٹی ممالک کو ہی ہو گا۔


پروجیکٹ الفا کے ذریعے یہ کوشش کی جا رہی ہے کہ پاکستان کو این ایس جی کی ممبرشپ نہ دی جائے اور یہ بے بنیاد تاثر دیا جارہا ہے کہ پاکستان خفیہ طور پر ایٹمی اور میزائل ٹیکنالوجی کے حصول کے لئے کوشاں ہے۔ پروجیکٹ الفا نہ صرف ٹھوس مواد سے محروم ہے بلکہ اس میں توازن کا خیال بھی نہیں رکھا گیا اور بظاہر اس پروجیکٹ کے ذریعے امریکہ۔ بھارت دفاعی صنعتوں کے مابین تعاون میں اضافے کے لئے راہ ہموار کرنا اور بھارت کو نیوکلیئرسپلائیرز گروپ کی رکنیت دینے کی کوشش ہے۔غیر روایتی نیٹ ورکس اور میڈیا میں چلائی جار ہی اس مسلسل مہم کا مقصد پاکستان کے دفاع،نیوکلیئر اور ہائی ٹیک صنعت کے خلاف پروپیگنڈا کرنا ہے جو کہ اصل حقائق سے قطعی مختلف ہے۔


بدقسمتی سے بھارت اور امریکہ کا باہمی تعاون بھارت کے لئے این ایس جی کی رکنیت کی درخواست تک محدود نہیں ہے بلکہ اس کاپس پردہ محرک دونوں ملکوں کے مابین دفاعی تجارت اور ٹیکنالوجی میں تعاون بھی ہے۔ اس تعاون کی چار جہتیں ہیں یعنی یو اے ویز
(Unmanned Aerial Vehicles)
کی بھارت میں پیداوار،بحرِ ہند میں بھارتی بالادستی کے لئے اقدامات،ایف سولہ کی فراہمی کا دفاعی معاہدہ اور جیٹ پروپلژن سسٹم جس سے بھارت اور امریکہ کے درمیان ہمیشہ کے لئے دفاعی معاہدہ تشکیل پا جائے گا۔


اسی طرح بھارت اور اسرائیل کا بری ،فضائی اور بحری فوجی تعاون بشمول انٹیلی جنس کا تبادلہ بھی جاری ہے۔ موساد اور را کے مابین تعاون صرف انٹیلی جنس کے تبادلے تک محدود نہیں بلکہ اسرائیل بھارتی فوجیوں کو سرجیکل سٹرائیکس کا اہل بنانے کے لئے تربیت بھی دے رہا ہے۔ دونوں ملکوں کے دفاعی اور سکیورٹی مفادات مشترکہ ہوتے جارہے ہیں جس کے نتیجے میں دونوں ملک وسیع پیمانے پر تعاون کررہے ہیں۔ جن میں بھارتی فضائیہ کے لئے جدید لڑاکا سسٹمز کی فراہمی،طویل فاصلے تک نشاندہی کرنے والے ٹریکنگ راڈار، زمین سے فضا میں طویل فاصلے تک مار کرنے والے میزائل،بحریہ کو جدید جنگی کشتیوں کی فراہمی اور بہتری میں تعاون، اینٹی سب میرین ہیلی کاپٹروں کے لئے تعاون،جاسوس سٹیلائٹ اور اینٹی بالسٹک میزائل ٹیکنالوجی میں تعاون شامل ہے۔ بھارت اور اسرائیل کے درمیان دفاعی اور ہائی ٹیک صنعتوں میں تعاون تقریباً نو ارب ڈالر تک پہنچ چکا ہے۔ دونوں ملک کشمیر میں مشترکہ طور پرپُر امن جدوجہدِ آزادی کو دبانے کے لئے کوشاں ہیں۔ سوشل میڈیا کے ذریعے پاکستان کو نیوکلیئر دھمکیاں انتہائی غیر ذمہ دارانہ طرزِ عمل ہے۔ اپنے مقاصد کے حصول کے لئے پروپیگنڈا مہم اور سوشل میڈیا کواستعمال کرنے میں ماہر اسرائیل کی وزارتِ دفاع کو چاہئے تھا کہ اسلام آباد کی طرف سے ردِ عمل آنے سے قبل ہی پاکستان کو دی جانے والی دھمکیوں سے لاتعلقی کا اعلان کردیتی۔ تاہم جس
Website
نے اسرائیلی دھمکی والی خبر دی تھی اس کی تردید کرنے میں اسرائیل نے 96گھنٹے کی تاخیر کی۔ یہ تاخیر معاملے کی حساسیت کو دیکھتے ہوئے بلاوجہ نہیں تھی بلکہ حالیہ دھمکی سوشل میڈیا کو بطورِ ذریعہ استعمال کرنے اور اسے علمی مباحثے کا حصہ بنا کر حقیقی صورتِ حال کا تاثر دینے کی بہترین مثال ہے۔


پاکستان کے دفاع، ہائی ٹیک صنعتوں اور نیوکلیئرپروگرام کے خلاف ایسے غیرمحفوظ ذرائع سے قائم کیا گیا تاثر قطعی ناقابلِ قبول ہے۔ سیاسی بنیادوں پر پابندیوں کو وسعت دینا اور بھارت امریکہ اور بھارت اسرائیل دفاعی تعاون پاکستان کے لئے مزید پیچیدگیاں پیدا کر رہا ہے۔ بھارت اور امریکہ کا یہ تعاون اپنے مقاصد کو عملی جامہ پہنانے کے لئے کسی بھی ملک کو دہشت گردی کے نام پر نشانہ بنانے کے لئے بھی استعمال ہو سکتا ہے۔ مزید برآں امریکہ کی جانب سے بھارت کو ہائی ٹیک تجارت اور حساس ٹیکنالوجی کے میدان میں تعاون فراہم کیا جارہا ہے اور دوسری طرف پاکستان کو نان ٹیرف اور ٹیرف رکاوٹوں کے ذریعے ننانوے اعشاریہ آٹھ فیصد رسائی سے محروم کیا جا رہاہے۔


دلچسپ امر یہ ہے کہ امریکہ نے بھارت کے اصرار پر ان نو بھارتی اداروں کو پابندی کے شکار اداروں کی فہرست سے نکال دیا ہے جونیوکلیئر ٹیکنالوجی کے حوالے سے غیر قانونی سرگرمیوں میں ملوث رہے ہیں۔ جس سے بھارت پر عائد تجارتی پابندیاں ہٹا لی گئی ہیں۔ یہ تمام ادارے بھارت کے میزائل اور خلائی پروگرام پر دن رات عمل پیرا ہیں۔
بھارت کی این ایس جی میں شمولیت کے لئے امریکہ اس لئے بھی بھرپور کوششیں کر رہا ہے کہ بھارت اور امریکہ کی صنعت مشترک ہوگی جس سے بھارت کے بغیر ایس سی او ممالک کے مابین دفاعی تعاون کم موثر ہوجائے گا۔لگتا یہی ہے کہ ایشیاکی سطح پر بھارت کے ساتھ امریکہ اور دیگر چائنا مخالف ممالک کا ایک علاقائی بلاک بننے جا رہاہے۔ موجودہ امریکہ انتظامیہ کا بھارت کی طرف بے پناہ جھکاؤ امریکہ کے اپنے مفادات کو بھی ساؤتھ ایشیا میں زک پہنچائے گا کیونکہ اس خطے میں امریکہ تیزی سے صرف ایک ملک کے ساتھ تعاون کی جانب بڑھ رہا ہے۔


ماضی میں بھارت کو این ایس جی میں دی گئی رعایت عدم پھیلاؤ کے مقاصد کے لئے اچھی ثابت ہوئی، نہ ہی اس سے جنوبی ایشیا میں استحکام آسکا۔ ایٹمی و کیمیائی ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤکو یقینی بنانے کے لئے علاقائی استحکام اہم ترین عنصر ہے۔ نان این پی ٹی ممالک کو رکنیت دینے کے حوالے سے اس کلب کے تمام (اڑتالیس) ممالک کو غیر امتیازی طریقہ کار اپنانا چاہئے۔ نہ کہ صرف ایک ملک کو استثنا دینے کی کوشش۔ پاکستان دیگر نان این پی ٹی ممالک کے ساتھ بیک وقت این ایس جی میں شمولیت کا خواہش مند ہے۔ جس کے لئے ضروری ہے کہ رکنیت کے لئے نان این پی ٹی ممالک کی جانب سے دی گئی دونوں درخواستوں کا منصفانہ اور بیک وقت جائزہ لیا جائے۔ ایسا منصفانہ اور بے تعصبانہ طریقہ اختیار کرنے سے نیوکلیائی پھیلاؤ کو روکنے میں بہت زیادہ مدد ملے گی۔ پاکستان تقریباً ایک عشرے سے این ایس جی کے ساتھ کام کر رہاہے اور اب باقاعدہ طور پر گروپ میں شمولیت کے لئے تیار ہے۔


اس تمام صورت حال میں جس کو نیوکلیئر سکیورٹی اور تجارت کے نام پر پاکستان کے خلاف استعمال کیا جا رہا ہے ایک اور پہلو کو بھی نظرانداز نہیں کرنا چاہئے۔ وہ پہلو پاکستان کی صنعتی ترقی کے لئے ٹیکنالوجی کا استعمال ہے۔ پاکستان اور چین سی پیک منصوبے کو صرف تجارتی راہداری کے معنوں میں نہیں لیا جانا چاہئے بلکہ پاکستان، آنے والی دہائیوں میں، اس کو ایک مکمل معاشی و صنعتی منصوبہ کے طور پر دیکھتا ہے۔ پاکستان میں صنعتی ترقی کے لئے ٹیکنالوجی کا حصول بہت اہم ہو گا اور کسی طرح کی قدغن ہمارے بہتر مستقبل میں ایک رکاوٹ تصور کی جائے گی۔

مضمون نگار ساؤتھ ایشین سٹریٹجک سٹیبلٹی انسٹی ٹیوٹ اور

SASSI

یونیورسٹی کی ڈائریکٹر جنرل اور چیئرپرسن ہیں۔ مصنفہ جنوبی ایشیا کے نیو کلیئر آرمز کنٹرول اور ڈس آرمامنٹ معاملات اور دفاع کی ماہر تجزیہ نگارہیں۔ ان کے تحقیقی مضامین مختلف جرنلز‘ اخبارات اور کتابوں میں شائع ہوتے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

وجیکٹ الفا کے ذریعے یہ کوشش کی جا رہی ہے کہ پاکستان کو این ایس جی کی ممبرشپ نہ دی جائے اور یہ بے بنیاد تاثر دیا جارہا ہے کہ پاکستان خفیہ طور پر ایٹمی اور میزائل ٹیکنالوجی کے حصول کے لئے کوشاں ہے۔ پروجیکٹ الفا نہ صرف ٹھوس مواد سے محروم ہے بلکہ اس میں توازن کا خیال بھی نہیں رکھا گیا اور بظاہر اس پروجیکٹ کے ذریعے امریکہ ۔بھارت دفاعی صنعتوں کے مابین تعاون میں اضافے کے لئے راہ ہموار کرنا اور بھارت کو نیوکلیئرسپلائیرز گروپ کی رکنیت دینے کی کوشش ہے۔غیر روایتی نیٹ ورکس اور میڈیا میں چلائی جار ہی اس مسلسل مہم کا مقصد پاکستان کے دفاع،نیوکلیئر اور ہائی ٹیک صنعت کے خلاف پروپیگنڈا کرنا ہے جو کہ اصل حقائق سے قطعی مختلف ہے۔

*****

 

Follow Us On Twitter