09
January

The Choice

Written By: Tahir Mehmood

That tall brown-skinned man was sitting on a mountain top. Lost in deep thoughts his eyes were fixed on the city below where millions lived on the bosom-land of their ancestors. An all-time wanderer, that man once began his journey in search of truth, beauty and ‘life’ itself. He moved from place to place and to distant lands, lived in the ‘time’ and endured the pain of ‘knowing’. For years he lived in silence and isolation; an attribute of wisdom that only a few taste in life. In search of the absolute, he finally found out that: ideals define the living but people embody the life, too. Life which supposedly is governed by the unbending rules is also under continuous evolution, change and uncertainty. This clash, conflict and contradiction between the norm and the new put things mostly in grey than black-and-white. In this chaos lived the power of creation as static was stagnant. The challenge was opportunity, the pain was pleasure and the loss was gain.
The man has the power to give meaning to all known and unknown phenomena.
..........................................................................................................
He lived to know that pursuit of passion was to lead to troubled waters, but also found out that blind alleys often lead to hitherto unfound lands, too. Passion and courage combined are the essence of living never matched by mere counting of the days and years. It is beyond human dignity and ego to permanently live in fear. The living being have the option of free will to endeavour and conquer the fear; the fear of unknown and the fear of death. Free will and courage together shape new realities, construct new worlds, and the faculty of human creation is the essence of divine creation. He also came to know that courage, bravery and the will to suffer and sacrifice were deep-rooted emotions to expose to the ordinary. On surface these can be taught and inculcated, like soldiers doing it for duty and comradeship, but enduring courage is more an act of ‘knowing’ and conviction than intrinsic impulses.
Too powerful are those soldiers who personify the cause and willingly choose death over life!
.........................................................................................................
The ‘knowing’ phenomenon leads to the world where ‘self’ loses the meaning. The ‘knowing man’ transcends the life, stops fearing the unseen and traverses the valleys of death with absolute willingness. For there is no death to the Nature and man becomes the guardian rather than a meek tool of the Nature itself. Such men of integrity and character remain committed to the purpose and the assigned missions. They march-on with a high head, face the challenges of life-and-death and nothing deters them; neither the foe’s might nor their scarcity of resources! They move forward amidst voices of disbelief and timidity, and bear the brunt with fortitude. They fight with valour, die smilingly and win gracefully. The foes must know the potential of such a body of men before testing their resolve.
For fear the men who have nothing to lose, as loss is more a matter of perception than reality for the men of courage and will!
..........................................................................................................
The wandering man also learnt that justice, merit and equality are the best methods to tread the life of men and societies. The land itself has no value to be counted but the average happiness of the men living on it with fair opportunities to exploit their true potentials. There is always a need to work for bettering the lives of people. The ‘land’ bears the character of a mother that always endeavours to feed well, clothe well and shelter with a sense of dignity and belonging. While traversing the city and town dwellings, the wandering man did notice the demagogues who clamour for such dreams. Many have not the will nor the dedication to achieve such goals for others except raising their own value in the bargain. Few did fan the romanticism for nothing else but to break the will of the people to defend the land of their ancestors. They camouflaged the seeds of anarchy with aspirations of freedom and liberty; stability and order was criticised for the expression of sham. Notwithstanding the power of idealism in matters of wealth and opportunity, the wandering man also tasted the power of love.
Love transcends the logic of gain!
..............................................................................................................
The love of a mother does not depend on the beauty of the child, and a child’s love for the mother is not dependent upon the wealth of the latter. Their love is an act of Nature and does not count on cold logic of give-and-take. Love is such an ecstatic intoxication that conquers fear of death and loss. Those who love the land of their ancestors, call it mother-land, are actually the proponents of the love that knows no bounds. This abode called ‘motherland’ is their identity, pride and ego. Once the motherland is in danger, her sons respond with no care for the foe’s size of the armies nor his wealth and arrogance of power.
The men of courage stand firm, die in glory and live with honour.
……………………………………………………………
To fight and die for the motherland against a foreign aggressor is a perfectly rational and enlightened choice. No justification on any pretext should wink from this esteemed responsibility. As long as the sovereign Motherland exists, there is a hope to resolve internal discord.
Once Motherland is lost, all is lost!
……………………………………………………………
The wandering man on the mountain top suddenly shuddered. He had reached a decision. He descended the top and went down to the kinsmen. He spoke to the crowds with absolute humility and sincerity. The poor common folks in the streets responded to his call with cheers, slogans and pledges. These deprived yet uncomplaining men were worth gold who refused the intimidations by the foe. These men of courage were the pride of the land they lived in. They were absolutely rational in their response but the very rationale asked them to stand-up, forget the differences, and choose ‘death’ instead of humiliation by the foe. They were ready for a long-drawn struggle, hunger and strife! They all marched-on together being men of courage and glory. They had made their choice.
The choice was ‘Motherland’.

thechoice.jpg

E-mail: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
 
11
January

ٹائم سکوائر کیا بیچتا ہے تکسیم سکوائر کے آگے

تحریر: مونا خان

ترکی استنبول کے مختصر دورے میں ہم نے بہت سی چیزیں نوٹس کیں گو کہ وقت کم تھا اور مقابلہ سخت ۔۔۔ لیکن پھر بھی کچھ نہ کچھ دیکھ ہی لیا ہم نے بھی۔ اسلامی تعاون تنظیم کے ہنگامی غیر معمولی اجلاس میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے جانے کی تیاری کی تو ہم نے بھی بوریا بستر باندھ لیا کہ بھیا ہم بھی ساتھ جائیں گے کہ آخر دیکھیں تو مسلم امہ ٹرمپ پر کیسے دبائو ڈالے گی۔لیکن ٹرمپ بھی نا۔ مجال ہے جو اس کے کان پر جوں بھی رینگی ہو مسلم امہ کے اعلامیے کی جس میں اس پر مشترکہ لعن طعن کی گئی۔ قصہ مختصر یہ کہ اجتماعی دعا میں اثر ہوتا ہے اس لئے اجلاس میں امریکہ کے لئے مشترکہ بدعائیں کی گئیں۔ اب دیکھیں یہ بدعائیں کب رنگ لاتی ہیں ۔ یہ تو تھا احوال اس مقصد کا جس کے لئے استنبول کا ہنگامی دورہ کرنا پڑا۔
پہلے دن تو بس گھوم پھر کر استنبول کا نظارہ کیا۔ سِم لی جو کہ بغیر پاسپورٹ دکھائے ہی مِل گئی۔ سِم ڈیٹا ایکٹو ہوا تو جان میں جان آئی۔ سوچا اب گوگل میپ کی مدد سے اِدھر ادھر آوارہ گردی کر سکوں گی۔

timesquarekia.jpg
استنبول اتنا مہنگا شہر بالکل نہیں ہے۔ایک لاکھ میں چار پانچ دن کا دورہ، ہوٹل کا قیام اور شاپنگ آرام سے کر سکتے ہیں۔ شاپنگ کی کوالٹی بہت اچھی ہے۔ ترکی میں استعمال ہونے والی کرنسی کو 'لیرا' کہتے ہیں۔ ایک لیرا پاکستان کے اٹھائیس روپے کے برابر ہے۔ شام کو ہم نے اپنا بیک پیک اٹھایا اور تکسیم سکوائر چلے گئے۔ میرا ہوٹل تکسیم سکوائر کے بالکل ساتھ تھا اس لئے میرے لئے ایسا ہی تھا کہ باہر نکلوں اور سامنے تکسیم سکوائر۔!!!


اب تک جتنے ملکوں میں جانے کا اتفاق ہوا ہے ترکی واحد جگہ ہے جہاں پاکستانی پاسپورٹ دِکھانے پر سامنے والا آپ سے محبت سے پیش آتا ہے۔ ترکی کا شہر استنبول حسین تو ہے ہی لیکن ترکی کی ہر لڑکی بیتر، حُورم اور لڑکے بہلول اور سلطان ہیں۔


حسین لوگ ہیں اور خوش اخلاق بھی۔ خاص طور پہ پاکستانیوں سے بہت پیار کرتے ہیں ۔ بس انہیں انگریزی نہیں آتی اور ہمیں ترکی زبان نہیں آتی اس لئے یہ رشتہ نہیں ہو سکتا۔ رشتہ کرنے کے لئے ترک زبان سیکھنی پڑے گی یا ان کو اردو یا انگریزی سیکھنی پڑے گی۔ دورے کے دوران بہت سے ہینڈسم ترک متوجہ ہوئے لیکن ہم نے اس لئے توجہ نہیں دی کہ اب ترک زبان کون سیکھے ۔ اس لئے متوجہ ہونے والوں کی نظروں سے بس محظوظ ہوتی رہی۔ انگریزوں اور ترک لوگوں میں بظاہر کوئی خاص فرق نہیں ۔ ویسے ہی ماڈرن لوگ۔


ونڈو شاپنگ اور گھومنے پھرنے کے لئے تکسیم سکوائر حسین جگہ ہے۔ شاپنگ بہت اچھی اور مناسب ہے۔ کپڑوں کی کوالٹی بہت اچھی ہے۔ تکسیم سکوائر میں ایک مقام پر سٹیج بنا کرمیوزک سسٹم نصب کیا گیا ہے جہاں روز شام کو کنسرٹ ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ تکسیم سکوائر کی روشنیوں سے مزّین گلیوں میں بھی بے تحاشا رش نظر آتا ہے ۔ لندن کی طرح استنبول میں بھی فٹ پاتھ ریسٹورنٹس کا رواج ہے۔ جہاں آپ بیٹھ کر چلتے پھرتے لوگوں کو دیکھتے ہوئے کافی انجوائے کر سکتے ہیں ۔ ۔


تکسیم سکوائر کی روشن گلیوں میں لمبی واک کرتے ہوئے ٹائم سکوائر کی واک یاد آگئی لیکن دونوں میں فرق یہ ہے کہ تکسیم سکوائر صاف ستھرا جبکہ ٹائم سکوائر پر واک کرتے ہوئے آپ کو اپنی ناک کو ڈھانپنا پڑتا ہے تاکہ بدبو کے بھبھکوں سے بچ سکیں لیکن رش کا عالم دونوں جگہوں پر ایک جیسا ہے۔


ترکی کھانے بھی بہت اچھے اور منفرد ہیں۔ ترکی کے سیخ کباب بہت مشہور ہیں ۔ شوارما چکن بھی شوق سے کھایا جاتا ہے۔ ترکی کے کھانوں میں سفید اُبلے ہوئے چاول وافر مقدار میں نظر آتے ہیں جو کہ چکن یا پھر سیخ کبابوں کے ساتھ پیش کئے جاتے ہیں۔ اگر آپ کو بارگیننگ کی عادت ہے تو ترکی میں بارگین کر کے قیمت کم کروائی جا سکتی ہے خاص طور پہ یہ کہہ کر کہ میں پاکستان سے ہوں اوراتنی دُور صرف اس خوبصورت جگہ کو دیکھنے آیا ہوں۔ تو بس اس کے بعد سامنے والے کا مہمانانہ رویہ شروع ہو جائے گا۔ وقت کم تھا اور استنبول کے ساحل پہ تصویر بنوانا بھی بہت ضروری تھا۔ آخر فیس بک کو کیا منہ دکھاتی کہ کوئی ڈھنگ کی تصویر بھی نہ بنا پائی۔ بس پھر جو بھلا آدمی ہمیں ائیرپورٹ چھوڑنے جا رہا تھا۔ اس کی منتیں ترلے کئے کہ دیکھو بھائی! ساحل تک لے چلو وہاں فوٹو بنوائے بِنا ہم نہیں جائیں گے واپس۔ بیچارہ ہماری بسورتی شکل دیکھ کر ساحل پہ رکنے کے لئے تیار ہو گیا۔ ادھر اتر کر ابھی دو قدم ہی چلی تھی کہ ایک بوڑھی گوری اپنے دو عدد پالتو کتوں کے ساتھ نظر آئی اور وہ کتے تو ہمیں دیکھ کر ایسے لپکے جیسے ہمارا ہی انتظار کر رہے تھے۔ میں تو گاڑی کے پاس ہی رک گئی۔ عجیب کشمکش کا عالم تھا تصویر بھی ضروری تھی لیکن چودہ ٹیکے لگوانے کی ہمت بھی نہیں تھی۔ اتنے میں ایک سکیورٹی والا آیا اور ہمیں آگے جانے کو کہا اور خود ہمارے اور ان کتوں کے بیچ دیوار بن گیا۔ لیکن ہم پھر بھی گاڑی سے زیادہ دور نہیں گئے۔ اتنی دور کہ پیچھے سمندر کا پانی نظر آ جائے اور حملہ ہونے کی صورت میں جھٹ گاڑی تک بھی پہنچا جا سکے۔ یہ مرحلہ مکمل ہوا تو کچھ سکون آیا۔


ترکی میں بلیو مسجد بہت مشہور ہے اور وہاں دور دور سے لوگ جمعہ پڑھنے آتے ہیں۔ ترکی کی سب سے اچھی بات مجھے یہ لگی کہ ہم پاکستانیوں کی طرح ہر بات کو مذہب کی عینک سے نہیں دیکھتے اورنہ ہی وہاں ملا ازم کو فروغ حاصل ہے۔ ہر ایک کا اللہ سے اپنا رابطہ۔کوئی کسی کے دین پر انگلی نہیں اٹھاتا۔ اس لئے وہ ہم سے کہیں آگے ہیں اور بحیثیت قوم یہ بات بہت اہم ہے۔ ہم تو ذات پات، فرقوں میں بٹے ہیں جبکہ ترک عوام صرف ایک قوم ہیں۔ اللہ ہمیں بھی ایک قوم بننے کی توفیق عطا فرمائے۔آمین

مونا خان ایک نجی نیوز چینل سے منسلک ہیں۔ فارن افیئرز اور ڈیفنس کارسپونڈنٹ ہیں۔ قائداعظم یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہیں ۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

 
07
January

جنگ ،عورت اورعلامہ اقبال کی تین نظمیں

تحریر: حمیرا شہباز

ہر چند ابن آدم نے دنیا کے تقریباً تمام فسادات بلکہ جنگوں کی بنیادی وجہ حوا کی بیٹی کو قرار دیا ہے لیکن اس امر سے بھی مفر نہیں کہ ’’وار وکٹمز‘ یعنی ’’متاثرینِ جنگ‘‘ میں بہت بڑی تعداد خود خواتین کی شمار کی گئی ہے۔ جنگ کے نتیجے میں عورت کو کہیں زندگی کی بنیادی سہولیات کی عدم فراہمی درپیش ہے تو کہیں چادر اور چار دیواری سے محرومی کا سامنا ہے ۔ لیکن فقط جنگ کی وجہ‘ اور جنگ کے متاثرین ہونے کے علاوہ جنگ میں دفاعی محاذ پر ڈٹے رہنا بھی عورت کی زندگی کا ایک اہم پہلو ہے۔ بظاہر پاکستان میں کم و بیش گزشتہ ایک دہائی سے دہشتگردی کے خلاف لڑی جانے والی جنگ میں ظاہری محاذوں پر پاکستان کی دفاعی افواج کے دلیر جوان سینہ سپر ہیں۔ لیکن ان کے گھروں کی خواتین کو بھی ایک بڑے جہاد کا سامنا ہے۔


کلام اقبال کا معجزہ ہے کہ پڑھنے والے کو اپنے لئے اس سے ربط کا کوئی نہ کوئی حوالہ ضرور مل جاتا ہے۔ ہر محب وطن کو علامہ محمداقبال کی شاعر سے نسبت ضرور ہے۔ دفاع پاکستان میں اگر خواتین کے کردار پر نظر ڈالوں تو مجھے علامہ اقبال کی تین نظمیں خواتین کی شان میں دکھائی دیتی ہیں اور فکر اقبال کے عصری تناظر میں اُن کی اہمیت مجھ پر عیاں تر ہو جاتی ہے ۔ یوں لگتا ہے جیسے یہ نظمیں تقریباً ایک صدی قبل علامہ محترم نے آج کے پاکستان کے دفاع میں خواتین کے عسکری کردار کو ذہن میں رکھ کر لکھی ہوں۔


اگر دفاع پاکستان میں عسکری سطح پر عورت کے براہِ راست عمل دخل پر نظر ڈالی جائے تو وہ اس فوج کی ایک سپاہی معلوم ہوتی ہے جس کی سالار ’’فاطمہ بنت عبداللہ‘‘ ہے، جس کے نصیب میں حیاتِ جاوداں تو اس کی شہادت کے ثمر کے طور پر رقم کردی گئی تھی لیکن اقبال نے اس کو اپنی ایک نظم کا موضوع بنا کر زندہ تر پائندہ تر کردیا۔


فاطمہ! تو آبروئے امتِ مرحوم ہے
ذرہ ذرہ تیری مشتِ خاک کا معصوم ہے
یہ سعادت حورِ صحرائی! تری قسمت میں تھی
غازیانِ دیں کی سقائی تیری قسمت میں تھی
یہ جہاد اللہ کے رستے میں بے تیغ و سپر
ہے جسارت آفرین شوقِ شہادت کس قدر
یہ کلی بھی اس گلستانِ خزاں منظر میں تھی
ایسی چنگاری بھی یارب، اپنی خاکستر میں تھی!

janaurataurallama.jpgفاطمہ بنتِ عبداللہ عرب کے قبیلہ البراعصہ کے سردار شیخ عبداللہ کی گیارہ سالہ بیٹی تھی جو1912 میں جنگ طرابلس میں غازیوں کو پانی پلاتی شہید ہوگئی تھی ۔ یہ قبیلہ اپنے اثرورسوخ میں دیگر قبائل سے بڑھ کر تھا۔ اس قبیلے کے تمام افراد جنگ طرابلس میں شہید ہوئے۔ اگرچہ بہت سی عرب خواتین نے اس جنگ میں حصہ لیا لیکن فاطمہ ان سب میں سے اس لئے ممتاز ہے کیونکہ وہ سب سے کمسن تھی۔ یہ جنگ جون1912 (دوسری روایت کے مطابق ستمبر1911) میں شروع ہوئی۔ جب بارہ ہزار اطالوی سپاہیوں نے زوارہ (طرابلس پر) حملہ کیا تو ان کے مقابلے میں عرب اور ترک سپاہیوں کی تعداد فقط تین ہزار تھی۔ لیکن اطالوی فوج کو شکست کا منہ دیکھنا پڑا۔ دوران جنگ فاطمہ بنت عبداللہ چار زخمی مجاہدوں کو پانی پلا رہی تھی کہ ایک اطالوی سپاہی نے اس کم سن مجاہدہ کو شہید کر دیا۔ علامہ اقبال نے اس کم سن دختر عرب کی شہادت سے متاثر ہو کر ایک نظم لکھی جو اب ’’بانگ درا‘‘ کی شان ہے۔ اس نظم نے دنیا میں اس کمسن شہید کا نام امر کر دیا۔


آج پاکستان میں دہشت گرد حملوں میں شہید ہونے والی ہر لڑکی فاطمہ بنت عبداﷲ کی سپاہ میں شامل ہے اور اس لشکر میں تازہ ترین بھرتی افواج پاکستان کی جنگجو ہواباز مریم مختار کی ہے جس نے اپنی تربیتی پرواز میں طیارے کو فنی خرابی کی بنا پر آبادی سے دور تر گرانے کی کوشش میں جام شہادت نوش کیا اور اقبال کی نظم ’’فاطمہ بنت عبداﷲ‘‘ کے یہ اشعار پاکستان کی فضائی دفاعی سرحدوں میں گونجتے سنائی دیتے ہیں۔


رقص تیری خاک کا کتنا نشاط انگیز ہے
ذرہ ذرہ زندگی کے سوز سے لبریز ہے
تازہ انجم کا فضائے آسماں میں ہے ظہور
دیدۂِ انساں سے نامحرم ہے جن کی موج نور
جو ابھی ابھرے ہیں ظلمت خانۂِ ایام سے
جن کی ضَو ناآشنا ہے قیدِ صبح و شام سے
جن کی تابانی میں انداز کہنِ نَو بھی ہے
اور تیرے کوکبِ تقدیر کا پرتوَ بھی ہے


ایک تو یہ بیٹیاں ہیں جو’’ قوموں کے کوکب تقدیر کا پرتوَ‘‘ ہیں اور حب الوطنی میں اپنے فرائض سے بخوبی سبکدوش ہوتی ہیں اور ایک وہ مائیں ہیں جن کے لخت جگر جنگ کی نذر ہو جاتے ہیں۔ ان ماؤں کو تو صبر آ جاتا ہے جن کے بیٹے اور بیٹیاں اپنے فرائض منصبی کے پیش نظر کسی نہ کسی جنگی محاذ پر اپنی جان جان آفریں کے سپرد کر دیتے ہیں۔ لیکن ان ماؤں کا کیا جن کے جگر گوشوں کو دہشت گردی کے عفریت نے بے سبب نگل لیا، جن بچوں کی معصومیت پر فرشتے بھی نازاں ہوں اور جن کی نوخیز جوانی پر خزاں کو بھی پیار آتا ہو، ان کی ماؤں کا کیا؟


16دسمبر 2014 کو اے پی ایس پشاور کے سانحے میں ماؤں نے اپنے لال بے سود گنوا دیئے۔ مجھے نہیں معلوم کہ جن ماؤں نے اپنے نور چشم کھوئے ہیں ان کی آنکھوں میں نیند کیوں کر آتی ہو گی۔ لیکن اگر آتی بھی ہو گی تو کچھ ایسے ہی خواب دکھاتی ہو گی جیسا کہ ’’ماں کا خواب‘‘ علامہ اقبال نے قلم بند کیا ہے:


میں سوئی جو اک شب تو دیکھا یہ خواب
بڑھا اور جس سے مرا اضطراب
یہ دیکھا کہ میں جا رہی ہوں کہیں
اندھیرا ہے اور راہ ملتی نہیں
اس تاریک مقام میں اس ماں کو اپنا وہ بیٹا دکھائی دیتا ہے جس کو اس نے بے سبب کھو دیا۔
جو کچھ حوصلہ پا کے آگے بڑھی
تو دیکھا قطار ایک لڑکوں کی تھی
زمرد سی پوشاک پہنے ہوئے
دیئے سب کے ہاتھوں میں جلتے ہوئے
وہ چپ چاپ تھے آگے پیچھے رواں
خدا جانے جانا تھا ان کو کہاں
اسی سوچ میں تھی کہ میرا پسر
مجھے اس جماعت میں آیا نظر
وہ پیچھے تھا اور تیز چلتا نہ تھا
دیا اس کے ہاتھوں میں جلتا نہ تھا


اس ماں نے اپنا بیٹا کسی طبعی موت یا آسمانی آفت کے سبب نہیں کھویا بلکہ وہ جو شمع علم کو فروزاں رکھے ہوئے تھا، اس کی زندگی کے چراغ کو سفاکیت اور درندگی نے گل کیا تھا۔ اس بچے کی ماں خواب میں بھی اس بچے کے چراغ کو گل پاتی ہے۔ ماں اپنے بچے سے گلہ کرتی ہے:


کہا میں نے پہچان کر‘ میری جاں!
مجھے چھوڑ کر آ گئے تم کہاں!
جدائی میں رہتی ہوں میں بے قرار
پروتی ہوں ہر روز اشکوں کے ہار
نہ پروا ہماری ذرا تم نے کی
گئے چھوڑ‘ اچھی وفا تم نے کی!


وہ روشنی کا ہم سفر اس تاریکی میں دھکیلا گیا تھا لیکن وہ مطمئن ہے کہ وہ حیات ابدی کی جانب رواں دواں ہے‘ ہاں مگر اس کا دیا ضرور بجھا ہوا ہے اور وہ اپنی ماں سے یہ کہنے پر مجبور ہے کہ:


جو بچے نے دیکھا مرا پیچ و تاب
دیا اس نے منہ پھیر کر یوں جواب
رلاتی ہے تجھ کو جدائی مری
نہیں اس میں کچھ بھی بھلائی میری
یہ کہہ کر وہ کچھ دیر تک چپ رہا
دیا پھر دکھا کر یہ کہنے لگا
سمجھتی ہے تو ہو گیا کیا اسے؟
ترے آنسوؤں نے بجھایا اسے!


علامہ اقبال کی تیسری نظم ’’صبح کا ستارا‘‘ جنگ سے متاثرہ خواتین کے اس طبقے سے متعلق ہے جو شاید سب سے زیادہ مشکلات کا سامنا کرتی ہیں۔ اس نظم کے ادبی محاسن اپنی جگہ پر‘ مگر نظم کا مضمون نہایت منفرد اور بے نظیر ہے۔ اقبال کی سوچ کا جہاں بہت وسیع ہے۔ وہ بلندیوں کے مکین‘ سورج‘ چاند‘ ستاروں کے درد آشنا بھی ہیں۔ ’’صبح کے ستارے‘‘ کی داستان کچھ یوں ہے ۔ صبح کا پیامبر‘ صبح کا ستارہ جسے قرآن میں ’’نجم الثاقب‘‘ قرار دیاگیا ہے جو بظاہر اہل جہاں کے لئے ایک نئے روشن دن کی نوید لاتا ہے، کون جانتا ہے کہ اس کا دکھ کیا ہے؟ صبح کی آمد کا اعلان خود اس کے لئے پیام موت ہے۔ نوید سحر کا پیامبر اپنے مقام اور کام دونوں سے مطمئن نہیں۔ وہ اپنی بلندی سے بیزار ہے اور زمین والوں کی پستی پر رشک کرتا ہے۔ ہر روز کا مرنا جینا اس کا مقدر ہے۔


لطف ہمسائیگی شمس و قمر کو چھوڑوں
اور اس خدمت پیغامِ سحر کو چھوڑوں
میرے حق میں تو نہیں تاروں کی بستی اچھی
اس بلندی سے زمیں والوں کی پستی اچھی
آسمان کیا‘ عدم آباد وطن ہے میرا
صبح کا دامنِ صد چاک کفن ہے میرا
میری قسمت میں ہے ہر روز کا مرنا جینا
ساقیِ موت کے ہاتھوں سے صبوحی پینا
نہ یہ خدمت‘ نہ یہ عزت‘ نہ یہ رفعت اچھی
اس گھڑی بھر کے چمکنے سے تو ظلمت اچھی
میری قدرت میں جو ہوتاتو نہ اختر بنتا
قعر دریا میں چمکتا ہوا گوہر بنتا


صبح کا ستارہ خواہش کرتا ہے کہ کاش وہ اختر ہوتا‘ گوہر ہوتا‘ اور اک روز دریا کی گہرائیوں سے نکل کر کسی حسیں کے گلے کا ہار بن جاتا۔ یہ صبح کا ستارہ پہلے تو کسی ملکہ کے تاج کی زینت یا بادشاہ سلیمان کے ہاتھ کی انگشتری میں جڑے نگینے کی قسمت پر رشک کرتا ہے مگر پھر وہ سوچتا ہے کہ یہ نگینہ بھی تو آخر پتھر ہی ہے، جس کی قسمت میں ٹوٹنا ہے۔ صبح کا ستارہ ایسی زندگی کا خواہاں ہے جس میں موت کا تقاضا نہ ہو۔ اسے لگتا ہے کہ زینت عالم ہونے سے بہتر ہے کہ میں کسی پھول پر شبنم بن کر گر جاؤں۔


واں بھی موجوں کی کشاکش سے جو دل گھبراتا
چھوڑ کر بحر کہیں زیب گلو ہو جاتا
ہے چمکنے میں مزا حسن کا زیور بن کر
زینتِ تاجِ سرِبانوئے قیصر بن کر
ایک پتھر کے جو ٹکڑے کا نصیبا جاگا
خاتمِ دستِ سلیماں کا نگین بن کے رہا
ایسی چیزوں کا مگر دہر میں ہے کام شکست
ہے گہرہائے گراں مایہ کا انجام شکست
زندگی وہ ہے کہ جو ہو نہ شناسائے اجل
کیا وہ جینا ہے کہ ہو جس میں تقاضائے اجل
ہے یہ انجام اگر زینتِ عالم ہو کر
کیوں نہ گر جاؤں کسی پھول پہ شبنم ہو کر!


وہ یہ بھی سوچتا ہے کہ کسی کی پیشانی پر افشاں بن کر چمکوں یا کس مظلوم کی آہوں کا شرارہ بن جاؤں۔ الغرض وہ اپنے لئے بہت سے نئے مقامات تلاش کرتاہے مگر اس کا شوق ’’ابدیت‘‘ کہیں پورا ہوتا دکھائی نہیں دیتا۔ بالآخر آسماں کے اس روشن ستارے کو اپنی منزل زمین پر دکھائی دیتی ہے۔ وہ اشک بن کر اس بیوی کی آنکھ سے ٹپک جانا چاہتا ہے جس کا شوہر حب الوطنی سے سرشار‘ زرہ میں مستور‘ میدان جنگ کی جانب رواں ہے۔ شوہر کی رضا نے اس بیوی کو تاب شکیبائی دی ہے اور آنکھوں کو حیا نے طاقت گویائی دی ہے۔ صبح کے اس ستارے کو اپنی منزل قریب دکھائی دیتی ہے کہ جب شوہر کو جنگ کے لئے رخصت کرتے ہوئے لاکھ ضبط کے باوجود اس بیوی کے دیدۂ پرنم سے وہ اشک بن کر ٹپک جائے اور خاک میں مل کر ابدی حیات پا جائے اور عشق کاسوز زمانے کو دکھا دے۔


کسی پیشانی کے افشاں کے ستاروں میں رہوں
کسی مظلوم کی آہوں کے شراروں میں رہوں
اشک بن کر سرمژگاں سے اٹک جاؤں میں
کیوں نہ اس بیوی کی آنکھوں سے ٹپک جاؤں میں
جس کا شوہر ہو رواں‘ ہو کے زرہ میں مستور
سوائے میدانِ وغا، حب وطن سے مجبور
یاس و امید کا نظارہ جو دکھلاتی ہو
جس کی خاموشی سے تقریر بھی شرماتی ہو
جس کو شوہر کی رضا تاب شکیبائی دے
اور نگاہوں کو حیا طاقت گویائی دے
زرد، رخصت کی گھڑی، عارضِ گلگوں ہو جائے
کشش حسن غم ہجر سے افزوں ہو جائے
لاکھ وہ ضبط کرے پر میں ٹپک ہی جاؤں
ساغر دیدہ پُرنم سے چھلک ہی جاؤں
خاک میں مل کے حیاتِ ابدی پا جاؤں
عشق کا سوز زمانے کو دکھاتا جاؤں


شاعروں نے عورت کو ماں اور بیٹی کی حیثیت سے تو بہت سراہا ہو گا لیکن کلام اقبال میں ایک بیوی کے سوز عشق کا بیان بے مثال ہے۔ آج پاکستان کے حالات میں افواج پاکستان کا کردار ہمیشہ سے زیادہ متحرک ہے۔ حب الوطنی سے سرشار پاکستان کا ہر وہ محافظ جو اپنی جان ہتھیلی پر سجائے رہتا ہے اور ہر نیا دن اس کے لئے عشق کے اور امتحان لاتا ہے، بے شک اس کا مقام ستاروں کی گزرگاہ سے بہت آگے ہے۔ ان فوجیوں کے بہتے خون کی سرخی ان کے اپنوں کے رخسار تو زرد کر دیتی ہے مگر صبح وطن کا ستارہ ہمیشہ روشن رہتا ہے۔
دفاع وطن تمام اہل وطن کا فریضہ ہے۔ کسی کے لئے یہ فرض منصبی ہیں تو کسی کے لئے نسبی۔ عورت بھی وطن کی بیٹی، محبان وطن کی ماں کی حیثیت سے یا محافظین وطن کی شریک حیات ہونے کی حیثیت میں دفاع وطن کی جنگ کو اپنی زندگی کی جنگ سمجھ کر بہت حوصلے اور ہمت سے لڑتی ہے۔ پاکستان کے ہر شہری کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی مصروف زندگی میں سے کبھی تھوڑا سا وقت نکال کر یہ سوچ سکے کہ جن والدین نے اپنی جانباز بیٹیاں وطن پر وار دیں‘ جن ماؤں نے اپنے مستقبل کے سہارے درندوں کے ہاتھوں بکھرتے دیکھے ہوں، جن بیویوں نے کمال ضبط سے حب وطن سے سرشار اپنی زندگی کے ساتھی جنگ پر رواں کئے ہوں ان کا کیا مقام ہے؟ اور یہ جان سکے کہ عورت فقط وجہ جنگ اور متاثرین جنگ ہی نہیں بلکہ مقابل و مدافع جنگ بھی ہے

حمیرا شہباز ڈھاکہ یونیورسٹی بنگلہ دیش سے فارسی میں ایم فل ہیں۔ان دنوں وہ نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز کے شعبہ فارسی میں لیکچرار کے فرائض انجام دے رہی ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

janaurataurallama1.jpg
 
07
January

عقل بمقابلہ عشق

تحریر: یاسر پیرزادہ

حسن البصری اپنے شاگردوں کو مسجد میں لیکچر دے رہے تھے لیکچر اپنے اختتام کو تھا کہ اچانک ایک طالب علم نے عجیب ساسوال داغ دیا ۔کہنے لگا: ’’استاد محترم! ہمارے ہاں ایک جماعت ایسی پیدا ہو چکی ہے جس کا ماننا ہے کہ گناہ کبیرہ کرنے والا شخص دائرہ اسلام سے خارج ہو جاتا ہے جبکہ دوسری طرف لوگوں کا ایک گروہ ایسا بھی ہے جو یہ کہتا ہے کہ گناہ کبیرہ کا مرتکب ہونے والے کے لئے بھی نجات کا دروازہ کھلا ہے۔ ان کی دلیل یہ ہے کہ جیسے کسی کافر کی عبادت اسے کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکتی اسی طرح کسی مسلمان کا گناہ اسے کوئی ایسا نقصان نہیں پہنچا سکتا جس کی تلافی نہ ہوسکے ‘آپ کی رائے میں سچائی کا راستہ کیا ہے ؟‘‘اس سے پہلے کہ حسن البصری جواب دیتے ‘حاضرین میں سے ایک نوجوان اٹھا اور بولا:’’گناہ کبیرہ کا مرتکب ہونے والا شخص ایمان کے دائرے سے باہر سمجھا جائے گااور نہ ہی وہ سچا مسلمان مانا جائے گا‘اسے ایمان اور کفر کے درمیان کی ایک ’’منزل‘‘ میں رکھا جائے گا ۔‘‘ یہ کہنے کے بعد وہ نوجوا ن مسجد کے دوسرے سرے کی جانب گیا اور وہاں موجود طلبا کو اپنا نقطہ نظر سمجھانے لگا۔ نوجوان کا نام واصل ابن عطا تھا۔حسن البصری نے ایک نگاہ اس کی جانب ڈالی اور بولے ’’ یہ شخص ہم میں سے نکل گیا‘‘۔اس وقت سے واصل ابن عطا اور ان کے پیروکاروں کو ’’معتزلین‘‘کہا جاتا ہے ‘ واصل ابن عطا ’’المعتزلہ‘‘ تحریک کا بانی ہے۔

 

یہ شخص بلا کا ذہین تھا ‘ اس نے مذہب کو عقلی بنیاد پر پرکھنے کی روایت ڈالی اور دقیق دینی اور فلسفیانہ موضوعات پر ایسی رائے دی جس نے عام مسلمان کو بے حد متاثر کیا ۔واصل کی گردن ذرا لمبی تھی جسے دیکھ کر عمر ابن عبید نے ایک مرتبہ کہا تھا کہ ’’ایسی لمبی گردن والے شخص میں کوئی خیر نہیں ہو سکتی۔‘‘واصل عربی کا حرف ’’ر‘‘ نہیں بول سکتا تھا لہٰذا گفتگو میں اس بات کاخاص خیال رکھتا کہ زبان سے کوئی ایسا لفظ نہ پھسل جائے جس میں ’’ر‘‘ آتا ہو‘ مگر اس کے باوجود اس قدر روانی سے بولتاکہ سننے والے دنگ رہ جاتے۔اس نے ایک ضخیم مقالہ بھی تحریر کیا مگر اس پورے مقالے میں کہیں ایک جگہ بھی ’’ر‘‘ کا استعمال نہیں کیا۔واصل کی عقلیت پسندی اس کے عقائد میں جا بجا جھلکتی ہے۔مثلاً انسان کی مجبوری و مختاری کے مسئلے پر وہ اپنی رائے یوں دیتا ہے کہ خدا عاقل اور انصاف پسند ہے ‘شر اور نا انصافی اس کی صفات میں شامل کی ہی نہیں جا سکتیں ‘اس بات کا جواز کیسے ممکن ہے کہ وہ اپنی مخلوق کو جس بات کا حکم دے اس کی مرضی اس کے بر عکس ہو‘ لہٰذا خیر اور شر‘کفر و الحاد‘ فرمانبرداری اور گناہ اس کی مخلوق کے اعمال ہیں ‘یعنی مخلوق ہی اپنے اعمال کی خالق و مختارہے لہٰذا انہی کی بنیاد پر اسے سزا و جزا کا حقدار ٹھہرایا جائے گا‘یہ ناممکن ہے کہ غلام کو آقا کی طرف سے کوئی ایسا حکم بجا لانے کو کہا جائے جو اس کے بس سے باہر ہو‘بندے کو وہی کرنے کو کہا جاتا ہے جس کی وہ استطاعت رکھتا ہے۔ اسلامی تاریخ کے عظیم مفکر ابن حزم نے واصل کے ان خیالات کے بارے میں کہا تھا کہ معتزلین نے انسان کی مجبوری و مختاری کے مسئلے پر نہایت عمدہ کام کیا ہے ‘اگر انسان کو اپنے معاملات میں کلی طور پر مختار مان لیا جائے تو شریعت کی عمارت کا وجود قائم نہیں رہ سکتا۔

 

معتزلین کی عقلیت پسندی میں بظاہر بڑی کشش نظر آتی ہے مگر ان کے ناقدین کی رائے میں ان سے یہ غلطی ہوئی کہ انہوں نے ان تمام تصورات کو رد کر دیا جو عقل کے پیمانے میں سموتے نہیں تھے ۔وہ یہ بات نظر انداز کر گئے کہ عقل انسانی بھی اسی طرح خدا کا ایک تحفہ ہے جیسے انسان کو ودیعت کی گئیں دیگر حسیات۔جس طرح انسان کے دیگر ذرائع علم کی اپنی حدود ہیں اسی طرح عقل کی بھی کچھ حدود ہیں اور ضروری نہیں کہ آفاقی سچائی عقل سے ہی سمجھ میں آ جائے۔ بقول شیکسپئیر :

"There are more things in heavan and earth, Horatio, than are dreamt of in your philosophy"

 

عباسی حکمرانوں ‘خاص طور سے خلیفہ مامون الرشید ‘نے معتزلین کی کافی سرپرستی کی اور عقلیت پسندی کو عوامی سطح پر روشناس کروایا۔معتزلین سچائی اور حقیقت کو محض عقل کی کسوٹی

پر ہی پرکھنے پر مصر رہے جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ انہوں نے ایمان کوبھی خالصتاً فلسفے کے انداز میں جانچنا شروع کر دیا۔ انہوں نے یہ حقیقت یکسر بھلا دی کہ مذہب کے بنیادی عقائد کو کبھی بھی عملاً منطقی اعتبار سے جانچا نہیں جا سکتااور نہ ہی ان کا عقلی ثبوت مہیا کیا جا سکتا ہے ۔مذہب کے بنیادی عقائد کا تعلق چندفوق الادراک سچائیوں سے ہے جنہیں پہلے ہمیں وحی کی بنیادپر ماننا پڑے گا ‘اس کے بعد انسانی عقل کی حدود شروع ہوں گی۔ اگر ہم ہر عقیدے کو ہی عقل کی کسوٹی پر جانچیں گے تو یہ کسوٹی اس کے لئے درست نہیں ہوگی کیونکہ عقل ایمان کا احاطہ کرنے سے قاصر ہے ۔اس ضمن میں کانٹ کی دلیل دلچسپ ہے۔ ‘کانٹ کے زمانے میں چرچ خدا کے بیٹے کا وجود ثابت کرنے کے لئے عقلی دلائل تلاش کر رہا تھا مگر کامیاب نہیں ہو پایا۔کانٹ نے پادریوں کی مشکل حل کر دی۔ اس نے کہا کہ خدا نے انسان کو پیور ریزن دی ہے پیور ریزن ودیعت نہیں کی‘ پریکٹیکل ریزن ہمارے مسائل تو حل کر سکتی ہے مگر خدا کی ذات کا تعلق پیور ریزن سے ہے اور وہ ہمیں نہیں ملی۔

 

عارف اور عالم دونوں ہی سچائی کے راستے تک لے جاتے ہیں مگر عارف کا ذریعہ عرفان ہے جبکہ عالم کا عقل ‘یہ ذرائع درست بھی ہو سکتے ہیں اور غلط بھی۔ مولانا روم کے بقول عقلی استدلال شیطانی بھی ہو سکتا ہے اور رحمانی بھی ‘مگر غلطی کے امکان کے باوجود انسان نے ترقی کی ہے ۔چونکہ یہ دنیا احساسات کی دنیا ہے اس لئے علم کے اس ذریعے کو فوقیت دی جاتی ہے جو عقل پر مبنی ہے ۔دوسری طرف عرفان کا تعلق صرف مذہب سے نہیں بلکہ دنیاوی معاملات میں بھی وجدان سے کام لیا جاتا ہے ‘یہی وجہ ہے کہ بعض اوقات ہم کوئی فیصلہ عقلی اعتبار سے درست معلوم ہونے کے باوجود اس لئے نہیں کرتے کہ دل نہیں مانتا حالانکہ اس کی کوئی عقلی توجیح نہیں ہوتی۔

 

عقل و عشق کے معرکے کی دلچسپ بات یہ ہے کہ ہم وجدان کا قائل ہونے کے لئے بھی بہرحال عقلی دلائل کا ہی سہارا لیتے ہیں‘تاہم اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ عقل اور عشق دونوں کی منزل ایک ہی ہے مگر بقو ل اقبال ‘عقل ہمیں دھیرے دھیر ے اس مقام تک لے جاتی ہے جبکہ عشق ایک ہی جست میں تمام منازل پار کر لیتا ہے ‘ اسی لئے روز مرہ زندگی کے فیصلے ہمیں عقل کی رو سے کرنے چاہئیں جبکہ بڑے فیصلے دل سے کرنے چاہئیں ۔وہ مقام کب آتا ہے جب دل سے فیصلہ کرنا ضروری ہوتا ہے ‘اس کا ذکر پھر کبھی۔

نوٹ :اس کالم میں معتزلین کے بارے میں حقائق ‘پروفیسر میر ولی الدین‘ عثمانیہ یونیورسٹی ‘ حیدر آباد دکن‘کے مقالے سے حاصل کئے گئے ہیں۔

مضمون نگار معروف کالم نویس اور تجزیہ نگار ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

aqalbmaqbla.jpg
 

Follow Us On Twitter