18
December

Handling the Permanent UNSC Seat

Published in Hilal English Jan 2014

Written By: Ahmed Quraishi

By taking itself too seriously on the question of its claim to a permanent Security Council seat, it appears that India has set itself up for disappointment (amounting embarrass-ment) at the international level. The United Nations (UN) reform process should have been about equality, consensus and peace. Instead, it is becoming a narrow matter of national pride, at least in India's case since the other three nations claiming permanent membership status – Japan, Brazil and Germany – have not yet turned this issue into a test for national pride the way India is apparently doing. It is clear by now that New Delhi's claim to a berth with the veto-wielding world powers at the UN does not enjoy majority support within the international community. There are serious reservations on India's past record in maintaining peace in the region, and on its economic and military ability to ensure peace beyond the region.

In New Delhi, Indian diplomats, politicians and the media are convinced that their country has the strongest case for a permanent seat at the United Nations Security Council (UNSC). On social media, Indian citizens can be seen grouching in unison, 'Why is India not sitting with the P5, or the 'Permanent Five' – the United States, Russia, Britain, China, and France – on the UNSC?' India makes its case aggressively and does not miss any opportunity. Professional and trade delegations going abroad are briefed in advance; even student groups are coached to say the right things in front of a foreign audience. Indian commentators and social media activists appear as if reading from the same talking-points memo, probably written inside one of the dusty rooms of the archaic building of the Ministry of External Affairs in New Delhi.

But here is an irony: If India is qualified, well-backed by world powers, and has the strongest case, how come it failed to get elected to a non-permanent seat for nineteen consecutive years, from 1991 to 2010? For these years, most member states of the UN did not deem India fit for a rotational, two-year term on the Security Council. The irony does not end here. Despite years in pushing its case for recognition as a world power, India's record as a rotational non-permanent member barely beats that of Pakistan, a country five times smaller than India. Islamabad is not even offering itself as a contender for a permanent seat. Pakistan has been elected five times to the Security Council and the 2011-2013 term was the sixth. India pulled its seventh term a year earlier, in 2010-2012.

Compared to India's seven stints as a non-permanent member, Japan and Brazil were elected for nine terms each (three for Germany). What this shows is that a relatively smaller country like Pakistan can garner enough support within the United Nations member countries to sit on the Security Council and that this should not automatically translate into a claim to the permanent seat. The fact is that India's case for a permanent seat at the UNSC is not as strong as it seems. In fact, it could be the weakest case within the G4, the grouping created by Japan, Germany, India and Brazil to support each other's bid for a permanent seat. There is no denying that the Security Council needs reform to reflect the balance of power in today's world. The P5 need help in maintaining and enforcing peace worldwide. But the sales pitch of the G4, India included, is one that seeks to perpetuate the elitism that surrounds the P5 status and prolong the denial of equitable representation to important parts of the world, especially to Africa.

In fact, nothing illustrates how India and the G4 are on the wrong side of history than the success that Pakistan and Italy have met with their counter lobbying group, known as Uniting for Consensus, or UfC. The group includes Italy, Pakistan, Argentina, Indonesia, Canada, Iran, South Korea, Turkey, Egypt, Algeria, Spain, and Mexico. When Italy called for a meeting of UfC in Rome in May 2011, a staggering 120 member states of the UN, out of 193, attended.

So, India's bid for veto power on important global decisions at the UN is a long way coming. But even if it comes up for a vote, is India qualified to discharge the responsibilities of maintaining international peace and security? India had no case to permanent Security Council membership in 1945 when the Charter of United Nations was drafted by winning powers in World War II. India was a British colony then. After independence in 1947, India had little in terms of economic and military power to play any role in maintaining world peace. So, it is understandable why none of the WWII victorious powers invited India to the Security Council simply based on India's large geographic size and population.

Even today, if India were to become a part of an expanded UNSC along with Brazil, Germany and Japan, New Delhi would still be among the poorest permanent members of the Council with the lowest human development indicators, and the lowest ability to project economic or military power and influence on the world stage as P5 countries often have to do in pursuit of enforcing the decisions of the world body. If India gets past these questions, it has to answer tough questions about how it has conducted its foreign policy and whether that helped maintain peace and security in its region.

India fails this test. India introduced proxy warfare to South Asia in 1950, merely three years after its decolonization from Britain. It used the wild regions of Afghanistan to mount separatist insurgencies inside Pakistan's western provinces throughout the Cold War. Pakistan, however, never posed any level of threat to India.

In 1974, India introduced nuclear weapons to South Asia, again without provocation from anyone and without any demonstrable fatal threat from any country that could not have been neutralized through conventional means. India continues to have serious border disputes with almost every neighbour. It has gone to war or engaged in some form of armed conflict with most of its neighbours. Pakistan, China, Sri Lanka, Nepal, Bhutan and Bangladesh have all accused India at various times of meddling in those countries' internal affairs through proxy and covert action.

Probably nothing illustrates more the worrying aspects of Indian foreign policy than the 1971 Indian invasion of Pakistan and the subsequent war that ended with India helping break up Pakistan and create Bangladesh. In this international incident, New Delhi created and trained a proxy terror militia on its soil for at least two years with the mission to operate in Pakistan. It unleashed this terror militia when a strategic opportunity presented itself after a chaotic Pakistani election that led to violence and offered India a window to invade. So, basically, Pakistan was invaded by India in the middle of a democratic exercise in Pakistan that went violent, as elections often do in developing countries.

Far from solving world problems at the UNSC, India itself could come up as an agenda item in the Council. The country's entire northeast is wracked by dozens of violent insurgencies that seek independence for those regions from the Indian state. In August 2012, the situation got out of control when ethnic tensions erupted across several Indian cities resulting in a mass exodus. The Time magazine reported the incident with a well justified title, 'India's Northeast: How a Troubled Region May Be a Global Flashpoint.'

The case of Indian Deputy Consul General in New York city, Devyani Khobragade, and the Indian over-reaction to what is a clear case of visa fraud and maid abuse, has forced even the most India-friendly elements in the American establishment to pause and re-think. The episode has given many observers worldwide a chance to watch the Indian policy volatility up close. One of those watchers is Jeremy Carl, a research fellow at Hoover Institution, Stanford University. In an opinion piece for CNN, Carl writes that the case of the diplomat “shines an unflattering light on several elements of India's diplomacy and its politics of privilege.” He concludes: “The intemperate reaction of the Indian government in response shows that, despite its status as an aspiring great power, India still frequently lacks the maturity on the world stage to behave like one.”

We in Pakistan have experienced this aspect of Indian diplomacy many times but were often unfairly accused of inflexibility in resolving disputes with India. For example, consider how India occupied an inhospitable mountain peak in our Northern Areas, called Siachen Glacier, in 1984, violating an implicit understanding between the two countries that such areas will be left untouched. Today India loses dozens of soldiers to the cruel weather in what is known as the world's highest battlefield and has forced Pakistan to take countermeasures. The worst part is that a solution to this limited conflict has been negotiated to the last detail by both sides and is ready to be signed since 2006, but there is no logical explanation from India as to why it is delaying a resolution.

Last, there are the UN Security Council resolutions on Kashmir that India is in violation since 1948 despite solemn commitments to the Council by no less than India's Prime Ministers over a half-century. This is just the tip of the iceberg of issues that render India's race for a permanent seat on the Security Council a matter of concern for some of India's neighbours like Pakistan.

India has a long way to go to demonstrate that it can meet the responsibilities that a permanent seat at the table in the Security Council entails. India can start making amends by changing the way it deals with neighbours, by tempering its sometimes wild foreign policy impulses, and by resolving festering disputes. It is now for India to respond to peace initiatives positively and move away from the path of haughtiness and belligerency.

The writer is a journalist who contributes regularly for print and electronic media and is a senior research fellow at Pakistan Federal Reorganisation Programme. This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
07
January

ایک ادھورا خواب

تحریر: ڈاکٹر یونس جاوید

محلے میں سب سے بڑے دروازے والا گھر سید سردار احمد شاہ کا تھا‘ اس گھر کا صحن بہت کشادہ اور پختہ تھا۔ البتہ کچھ حصہ درختوں ‘ پھولوں اور گلاب کی بیلوں کے لئے مخصوص تھا۔ بائیس مرلوں پہ پھیلا ہوا یہ گھر دومنزلوں پر مشتمل تھا مگر سب لوگ نیچے والی منزل کو ہی استعمال کرتے تھے۔ جوں جوں میں بڑا ہوتا گیا‘ اس گھر کے بارے میں میری معلومات ہلکی ہوتی گئیں۔ سید سردار احمد شاہ کے چار بیٹے تھے۔ ضیا نثار احمد (پی ٹی وی گئے) صادق۔ حامد مختار احمد اور لیاقت اسرار احمد۔


یہ گھر بچپن میں ہی میرے لئے نہایت خوش کن تھا کہ ’’ماں جی‘‘ اس گھر کا مرکز تھیں۔ سب لوگ‘ اپنے پرائے اور ہم بچے سب ان کو ’’ماں جی‘‘ ہی پکارتے تھے۔ وہ ہر ایک سے شفقت بھرا سلوک کیا کرتیں۔ یوں بھی یہ گھرانا باقی تمام گھرانوں سے مہذب اور کلچرڈ تھا۔ سیدسردار احمد شاہ نے تمام بچوں کو اعلیٰ تعلیم دلوائی تھی۔ اُنہیں مکمل توکیا ہی تھا ان کی تربیت بھی کی تھی۔ سب بچے باپ کے فیصلوں پر عمل کرتے کہ یہ گھرانااتحاد اور یگانگت کا مکمل نمونہ تھا۔ اس گھر کا سب سے چھوٹا بیٹا جو مجھ سے تھوڑا سینئر تھا‘ جب آرمی کے لئے منتخب ہوگیااور ٹریننگ کے بعد سیکنڈ لیفٹیننٹ کی یونیفارم پہن کر پہلی مرتبہ گھرلوٹا تو سب کو شہزادہ سالگا۔ اس وقت معلوم ہوا کہ اس کا نام لاکی نہیں (سید سردار احمد شاہ اسے پیار سے ’’لاکی‘‘ بلاتے تھے اور مجھے یونس کے بجائے یونی‘ بعد میں اس کا پورا نام لیاقت اسرار بخاری سامنے آیا۔)


آج کل بریگیڈیر(ر) لیاقت اسرار بخاری (ستارۂ جرأت)ہیں۔ یونیفارم میں لیاقت اسرار بخاری کو دیکھا تو جی مچل کر رہ گیا۔ جی چاہتا ابھی مجھے یونیفارم مل جائے اور میں آرمی جوائن کرلوں۔ اس وقت لیاقت اسرار ہی میرا آئیڈیل تھا۔ میں دن رات آرمی کے خواب دیکھنے لگا۔ تڑپنے لگا۔نماز کے بعد سجدوں میں دعائیں مانگنے لگا۔ یہ سب ممکن تھا مگر میرے ابا جی نے مجھے قرآن پاک حفظ کرانے والے مدرسے میں داخل کروا کے میرے تمام راستے مسدود کر دیئے تھے۔ میرا کیریئر ہی تبدیل ہو کر رہ گیا تھا۔ میرے اندر دن رات ابال اٹھتے تھے۔ مگر یہ نہ ہو سکتا تھا۔ بس اتنا ہوا کہ قومی رضاکاروں کی بھرتی شروع ہوگئی ۔ اُنہی قومی رضا کاروں میں جب والد صاحب بھی شامل ہوگئے اور انہوں نے یونیفارم پہن کر پریڈ کرنا شروع کی تو میری ضد بھی کام کر گئی۔ انہوں نے میرے سائز کی چھوٹی یونیفارم سلوا کر مجھے پہنا دی۔ اور پھر انسٹرکٹر تاجے خان کے پاس اچھرہ تھانہ لے گئے۔ تاجے خان انسٹرکٹر نے خوش آمدید کہا اور میرا شوق دیکھتے ہوئے مجھے پریڈ کرنے کی اجازت دے دی۔

aikadhorakh.jpg
ہماری پریڈ تھانہ اچھرہ کے سامنے والی گراؤنڈ میں ہوا کرتی تھی جسے آج کل شریف پارک کہا جاتا ہے۔ تاہم یہ شریف پارک موجودہ وزیرِاعظم نواز شریف یا ان کے والد کے نام پر نہیں تھا۔ یہ برج السید کے مالک میاں سعیدکے والد میاں شریف کے نام پر بنا تھا جن کی بہت سماجی خدمات تھیں۔


انسٹرکٹر تاجے خان سخت مزاج کا آدمی تھا۔ کھرا کھرا بولتا تھا۔ غلطی کرنے پر سخت بے عزت کرتا مگر پھرمحبت سے برابر بھی کردیا کرتا۔ شام کو وہ انار کلی ہماری دکان پر آجاتا۔ والد صاحب اس کی تواضع کرتے‘ جس طرح وہ اپنے اساتذہ کی کرتے تھے۔ نگینہ بیکری کے مکھن میں بنے ہوئے کیک رس ایک ٹرے میں بھر کر لائے جاتے۔ چائے کی بڑی چائے دانی اور شامی کباب۔ تاجے خان چائے سے زیادہ اس عزت افزائی پر بہت خوش ہوا کرتا۔ جب والد صاحب اُسے بتاتے ’’تاج صاحب آپ میرے استاد ہیں۔ آپ کا ہم پر بہت حق ہے۔ آپ ہمیں ایسے ہنر سکھارہے ہیں جو ہمارے لئے‘ ہمارے وطن کے لئے اور اپنی پاک سرزمین کے تحفظ کے لئے ضروری ہیں۔ لہٰذا آپ کا حق ہم سے ادا نہ ہوگا۔ یہ تو محبت کا اظہار ہے۔‘‘ تاجے خان بہت زور سے کہا کرتا’’ناں میاں صاحب آپ بہت زیادہ کرتے ہیں۔یہ نہ کیا کریں۔ زیادہ مٹھائی میں کیڑے ہوتے ہیں۔‘‘ ابا جی ہنس کر کر ٹال جاتے۔


میں نے دو مہینوں میں جس شوق‘ لگن اور محنت سے اپنی ٹریننگ مکمل کی اور اپنے اسباق یاد کئے وہ تمام دیگر پریڈ کرنے والوں کے لئے بھی حیران کن تھے۔ تاجے خان کبھی کبھی مثال دیتے ہوئے کہا کرتے ’’شوق پیدا کرو شوق۔ یونس کی طرح شوق۔ ورنہ ڈھیلا کام تو آرمی میں نہیں چلتا۔‘‘ چوتھے مہینے کے بعد ہمارا ٹیسٹ ہوا اور میں زیادہ نمبر لے کر پاس ہوگیا۔ سب سے زیادہ نمبر ہونے کی وجہ سے مجھے فی الحال عارضی طور پر پلاٹون کمانڈر بنادیا گیا۔ میں خوشی سے سرشار ہوگیا۔ اب کسی کسی دن 48 لوگوں کو میرے حوالے کرکے کہا جاتا انہیں کمانڈکرو۔ مثلاً ایک دن آرڈر دیا گیا کہ میں48 لوگوں کو تین منٹ سے ساڑھے چار منٹ کے اندر اندر مسلم ٹاؤن والی نہر کے پل پر لے جاؤں۔ اچھرہ تھانہ سے مسلم ٹاؤن والی نہر ایک میل کے فاصلے پرتھی مگر سمجھ گیا تھا کہ مجھے کیا کرنا ہے۔ میں نے سب کو ایکٹو کرکے کیوئیک مارچ کیا۔


’’لیفٹ رائیٹ‘ لیفٹ رائیٹ دو سو گز تو اسی رفتار سے سب کو چلاتا رہا جب جسمانی طور پر پوری پلٹن گرم ہوگئی تو میں نے ڈبل مارچ کا آرڈرکر دیا۔ ڈبل مارچ کی رفتار صاف ظاہر ہے دُگنی بلکہ جوگنگ کی رفتار سے کچھ زیادہ تھی‘ میں تو ہلکا پھلکا دوڑتا رہا مگرپلاٹون میں لگ بھگ تیس لوگ عمررسیدہ تھے‘ وہ ایک منٹ بعد ہی ہانپنے لگے مگر مجھے آرڈر تھا کہ ہر صورت مقرر وقت کے اندر نہر کے پل پر سب کے ساتھ پہنچنا ہے۔ دِس از آرڈر‘ یہی آرمی کی ٹریننگ ہے‘ یہی ڈسپلن ہے۔ یہی آرڈرماننے کی روح ہے۔ جس کی نقل میں قومی رضاکاروں سے کرانا چاہ رہا تھا۔ موسم معتدل ہونے کے باوجود سب پسینے میں نہانے لگے۔ وہ بابے آنکھوں آنکھوں سے ایک دوسرے کو اشارے بھی کر رہے تھے کہ ’’ہالٹ‘‘ کروا کے سانس برابر کرایا جائے۔ مگر میں نے ڈسپلن کو پیشِ نظر رکھا۔ دوسرا یہ ہم سب کا امتحان بھی تھا۔ جس میں، میں ہی نہیں48 کے 48 لوگ کامیاب ہوئے۔ میں نے سب کو ساڑھے تین منٹ میں ہی نہر کے پل پر پہنچایا دیا تھا۔ سب لمبے لمبے سانس لے رہے تھے۔ نہر لبالب نہ تھی۔ آدھی تھی۔ اتنے میں ایک بہت موٹے مگر صحت مند بابا جی نے دھڑام سے نہر میں چھلانگ لگا دی اور سب کو حیران کردیا۔


بعد میں اس نے بتایا کہ ’’مجھے گرمی زیادہ لگ رہی تھی مگر میرے ساتھی نے مجھ سے شرط بھی لگائی تھی کہ جو نہر میں چھلانگ لگائے گا اسے پانچ روپے دوں گا۔(پانچ روپے اس زمانے میں بڑی رقم تھی) لہٰذا ایک تو میں نے خود کو ٹھنڈا کر لیا ہے دوسرا انعام جیت لیا ہے۔‘‘


تاجے خان انسٹرکٹر جو دیر بعد ہمارے تعاقب میں چلا تھا‘ ڈبل مارچ کرتا ہوا آپہنچا۔ اس نے گھڑی دیکھ کر پہلے میرے لئے ’’ویل ڈن‘ ویل ڈن‘‘ پھر سب کو کھل کر داد دی۔ مگر بابوں نے میری سخت مخالفت کی۔ تاجے خان نے سب کو سمجھاتے ہوئے کہ ’’جوانو! اس کے ’’جوانو‘‘ کہنے سے بہت سے بابے خوش ہوگئے ۔ تاجے خان نے بات بڑھا کر انہیں اور بھی خوش کردیااور کہا’’میرے سپاہیو! پلاٹون کمانڈر نے آرڈر کی تعمیل کی ہے اور ملکی دفاع میں آرڈر ہی سب کچھ ہے۔ آرڈر از آرڈر ‘یہ نہ ہو تو ہمارا ڈسپلن‘ ہماری جنگی حکمتِ عملی‘ ملکی دفاع کسی کام کا نہیں اور اگر یہ سب ہو تو پھرکامیابی ہی کامیابی‘ فتح ہی فتح۔ سو یونس نے جو کیا ہے وہ سب درست ہے۔ آپ سب کامیاب ہوئے ہیں۔‘‘ انہوں نے سب کو ’’سٹینڈ ایزی‘‘ کے بعد دوبارہ بتایا ’’دیکھو میرے جوانو! ہر چند کہ تم آرمی کی نقل کررہے ہو تو یہ بات دل پہ نوٹ کر لو آرمی کا مطلب ہے ’’دو ٹوک آرڈر‘‘ یہ تو معمولی بات تھی جس میں آپ نے کامیابی حاصل کر لی۔ یہاں کے امتحان بڑے سخت ہوتے ہیں۔ کوئلوں میں لال انگارہ ہونے والے لوہے کے ٹکڑے کو پکڑنے کا آرڈر ہوسکتا ہے یا اژدھے کے جبڑوں میں ہا تھ ڈالنے کا۔ جو آرڈر ’اوبے‘ کر گیا وہ منزل پا گیا۔ جو ڈر گیا وہ اِدھر کا رہا نہ اُدھر کا۔ یہی آرمی ڈسپلن ہے‘ ڈوآر ڈائی۔‘‘کوئی دلیل‘ کوئی جواز‘ کوئی جھجک کوئی اعتراض کوئی رکاوٹ برداشت ہوتی ہے، نہ کوئی متبادل فیصلہ۔ جب آرڈر ہو جاتا ہے تو اس کا مطلب ہے عمل۔یہی جنگ ہے۔ یہی جیت ہے۔ یہی فاتح کی پہچان ہے۔‘‘ اتنا کچھ سننے کے بعد بابے پھر بھی بڑبڑاتے رہے بلکہ بعض تو ابھی تک ہانپ رہے تھے۔


انسٹرکٹر تاجے خان نے دوسرے دن کے لئے تمام بابوں کو چن کر آرام کے لئے دو دن کی چھٹی دے دی۔ اور پلاٹون کو نئے سرے سے تربیت دے کر جوانوں سے بھر دیا۔ یہ اَن تھک پریڈ کرنے والی پلاٹون تھی۔ یہی وجہ ہے کہ ہم نے چودہ اگست یومِ پاکستان کو شریف پارک اچھرہ سے علامہ اقبال کے مزار تک سارے لاہور کے رضاکاروں کی پلٹنوں کے ساتھ لیفٹ رائیٹ کرتے تسلسل کے ساتھ منٹو پارک (مینارِ پاکستان) پہنچے تھے اور اس کے بعد علامہ اقبال کے مزار پر ۔کوئی نہ تھکا تھا‘ سب پُرجوش تھے‘ کوئی ایک لمحے کو بھی نہ رکا۔ سب ہشاش بشاش تھے اور میں تو خوش و خرم تھا۔۔مگر سارے جتن کرنے کے باوجود میں آرمی جوائن نہ کرسکتا تھا اور آج تک یہ خواب کانٹا بنائے سینے میں پروئے پھرتا ہوں۔
ایک روز ابا جی مجھے ایک بہت بڑے جلسے میں ساتھ لے گئے۔ چونکہ وہ جلسہ کرنے والوں کی انتظامیہ میں بھی تھے اس لئے انہوں نے بطورِ خاص دو ٹکٹ خریدے تھے جو دس دس روپے کے تھے۔ مگر سب کلاسوں سے مہنگے تھے کہ دریوں پر بیٹھ کر جلسہ سننے والوں کا ٹکٹ چار آنے تھا۔ پنڈال بہت بڑا تھا۔ روشنیاں تھیں اور ہجوم تاحدِ نگاہ۔ میں بچہ ہی تو تھا۔ بچے کی آنکھیں گاؤں کے راستوں کی طرح ہوتی ہیں۔ شام ہوئی اور بند۔ مجھے بہت نیند آرہی تھی‘ مگر مجھے جاگنا پڑ رہا تھا۔ تاہم نیند کا غلبہ شدید تھا۔ اسی اثنا میں شور مچ گیا۔ ’’شاہ جی آگئے‘ شاہ جی آگئے‘‘ پھر نعرے لگنے لگے۔ مجھے آج معلوم ہوا ہے کہ وہ شاہ جی جن کے لئے لوگ اہلِ جنوں کی طرح منتظر تھے‘ سید عطاء اﷲ شاہ بخاری تھے۔ بہر حال شاہ جی کی تقریر سے پہلے اعلان ہوا کہ فلاں فلاں اپنی نظم کشمیر پر پیش کرے گا۔ دیکھا تو سات آٹھ سال کا بچہ سٹیج پر آکر کھڑا ہوگیا۔ لوگوں نے اس کی نظم کو بے دلی سے سننا شروع کیا۔ بچے کا ترنم مسحور کن تھا پھر بھی لوگوں کو شاہ جی‘ کا انتظار تھا۔ اور لوگ نعرے لگا لگا کر اپنی خواہش کا اظہار کررہے تھے۔


جو نہی لڑکے نے نظم کا یہ مصرعہ پڑھا
کشمیر میں جنت بکتی ہے
کشمیر میں جنت بکتی ہے
سات مرتبہ اس بچے نے مختلف زاویوں سے یہ مصرعہ گا گا کر لوگوں کو گرفت میں لے لیا تھا۔جونہی اس نے اگلا مصرعہ پڑھا یعنی
کشمیر میں جنت بکتی ہے
اور جان کے بدلے سستی ہے


تو لگ بھگ ڈیڑھ لاکھ کے ہجوم میں سمندر کی طرح لہریں جل تھل ہونے لگیں۔ لوگوں نے اس بچے پر نوٹوں اور سکوں کی بارش کردی اور مصرع پڑھنے کے لئے اصرار کرتے رہے۔ سب لوگ اس قدر جوش میں تھے کہ وقتی طور پر سب لوگ اسی نظم میں ڈوب گئے اور شاہ جی کے نعرے مدہم پڑ گئے۔ ایسا محسوس ہونے لگا تھا کہ ابھی سارا ہجوم کشمیر کو غلامی سے نجات دلانے کے لئے اٹھ کھڑا ہوگا۔ لوگ چیخ رہے تھے‘ نعرے لگا رہے تھے۔ بچے کو سٹیج پر جا جا کر پیار کررہے تھے۔ اتنا ہنگامہ تھا کہ تقریر سے پہلے مجھ پر نیند نے غلبہ پا لیا اور ابا جی نے بھی ہجوم کی جل تھل دیکھتے ہوئے مجھے ملازم کے سپرد کر دیا جس نے مجھے پنڈال سے باہر لا کر ایک چھوٹے خیمے میں سلا دیا جو صرف بچوں کے لئے مخصوص تھا۔ معلوم ہوا کہ شاہ جی کی تقریر رات بھر جاری رہی اور صبح کی اذان ہوتے ہی تمام ہوگئی۔ مگر لوگوں کی پیاس کم نہ ہوئی۔ شاید اسی کا اثر تھا کہ دوسرے ہی دن ایک بہت بڑا جلوس مال روڈ پر آگیا اور ہمارا کاروبار چونکہ انار کلی میں تھا اور والد صاحب کو کشمیر سے خصوصی لگاؤ تھا‘ لہٰذا وہ کشمیر کے لئے ترتیب دیئے گئے اس جلوس کو دیکھنے اور مجھے دکھانے کے لئے مال روڈ پر آگئے۔


میں نے دیکھا جلوس رات والے ہجوم سے کچھ ہی کم تھا۔ ہر عمر اور ہر قبیلے کے لوگ اس میں شامل تھے اور سوائے ہمارے کہ ہمیں اس جلوس کی پہلے سے بالکل خبر نہ تھی‘ سب لوگوں نے سرپر سفید کپڑے لپیٹ رکھے تھے۔ اباجی نے مجھے بتایا کہ ہر شخص نے اپنے سر پر کفن باندھ رکھا ہے اور سب اونچی آواز میں ایک ہی نعرہ لگا رہے تھے ’’کشمیر کی آزادی یا شہادت‘‘ جلوس آہستہ آہستہ آگے بڑھتا گیا‘ میں دیر تک اور دُور تک اس جلوس کو جاتا ہوا دیکھتا رہا اور آج تک دیکھ رہا ہوں۔


ہم وہیں کھڑے ہیں۔ جلوس اسی رفتار سے چل رہا ہے۔ نعرے بھی ہیں۔ کفن بھی ہیں۔ سبھی کچھ جوں کا توں ہے‘ آج بھی میرے تخیل اور تصور میں وہ جلوس تابندہ اور فروزاں ہے‘ جوش بھی ہے‘ حرارت بھی ہے مگر آدھی صدی گزر جانے کے باوجود ہم قدم نہیں اٹھاپائے۔
کہ حرکت تیز تر ہے اور سفر آہستہ آہستہ


میری ضد یہ تھی کہ مجھے بھی ایک اپنے سائز کا کفن لے کر دیا جائے جسے میں سر پر باندھ کر ایسے کسی جلوس میں شریک ہو سکوں مگر ابا جی نے مجھے قومی رضا کاروں والی ایک اور یونیفارم سلوا کر خوش کرنے کا جتن کرلیا اور مجھے ہر صبح شریف پارک میں تاجے خان کی شاگردی تک محدود کردیا۔اور میرے وہ خواب جولیاقت اسرار بخاری کو دیکھ کر پروان چڑھے تھے‘ ادھورے ہی رہے اور سسک سسک کر دم توڑ گئے کہ مجھے اس کٹھن راستے پر چلایا ہی نہ گیا جو میرا آئیڈیل تھا۔


میں آج بھی اس چھوٹی سی وردی کونکال کر دیکھتا ہوں اور آہ بھر کر اٹیچی میں کتابوں میں رکھے پھولوں کی طرح بند کر دیتا ہوں۔
اور مجھے محسوس ہوتا ہے کہ
عمر میری تھی مگر اس کو بسر اُس نے کیا

مضمون نگار ممتازدانشور‘ ادیب اور ’’اندھیرا اجالا‘‘ سمیت کئی معروف ڈارموں کے خالق بھی ہیں۔
انسٹرکٹر تاجے خان نے دوسرے دن کے لئے تمام بابوں کو چن کر آرام کے لئے دو دن کی چھٹی دے دی۔ اور پلاٹون کو نئے سرے سے تربیت دے کر جوانوں سے بھر دیا۔ یہ اَن تھک پریڈ کرنے والی پلاٹون تھی۔ یہی وجہ ہے کہ ہم نے چودہ اگست یومِ پاکستان کو شریف پارک اچھرہ سے علامہ اقبال کے مزار تک سارے لاہور کے رضاکاروں کی پلٹنوں کے ساتھ لیفٹ رائیٹ کرتے تسلسل کے ساتھ منٹو پارک (مینارِ پاکستان) پہنچے تھے اور اس کے بعد علامہ اقبال کے مزار پر ۔کوئی نہ تھکا تھا‘ سب پُرجوش تھے‘ کوئی ایک لمحے کو بھی نہ رکا۔ سب ہشاش بشاش تھے اور میں تو خوش و خرم تھا۔۔مگر سارے جتن کرنے کے باوجود میں آرمی جوائن نہ کرسکتا تھا اور آج تک یہ خواب کانٹا بنائے سینے میں پروئے پھرتا ہوں۔

*****

سات آٹھ سال کا بچہ سٹیج پر آکر کھڑا ہوگیا۔ لوگوں نے اس کی نظم کو بے دلی سے سننا شروع کیا۔ بچے کا ترنم مسحور کن تھا پھر بھی لوگوں کو شاہ جی کا انتظار تھا۔ اور لوگ نعرے لگا لگا کر اپنی خواہش کا اظہار کررہے تھے۔ جو نہی لڑکے نے نظم کا یہ مصرعہ پڑھا

کشمیر میں جنت بکتی ہے

کشمیر میں جنت بکتی ہے

سات مرتبہ اس بچے نے مختلف زاویوں سے یہ مصرعہ گا گا کر لوگوں کو گرفت میں لے لیا تھا۔جونہی اس نے اگلا مصرعہ پڑھا یعنی

کشمیر میں جنت بکتی ہے

اور جان کے بدلے سستی ہے

تو لگ بھگ ڈیڑھ لاکھ کے ہجوم میں سمندر کی طرح لہریں جل تھل ہونے لگیں۔ لوگوں نے اس بچے پر نوٹوں اور سکوں کی بارش کردی اور مصرع پڑھنے کے لئے اصرار کرتے رہے۔ سب لوگ اس قدر جوش میں تھے کہ وقتی طور پر سب لوگ اسی نظم میں ڈوب گئے اور شاہ جی کے نعرے مدہم پڑ گئے۔ ایسا محسوس ہونے لگا تھا کہ ابھی سارا ہجوم کشمیر کو غلامی سے نجات دلانے کے لئے اٹھ کھڑا ہوگا۔ لوگ چیخ رہے تھے‘ نعرے لگا رہے تھے۔ بچے کو سٹیج پر جا جا کر پیار کررہے تھے۔

*****

 
07
January

جنگ ،عورت اورعلامہ اقبال کی تین نظمیں

تحریر: حمیرا شہباز

ہر چند ابن آدم نے دنیا کے تقریباً تمام فسادات بلکہ جنگوں کی بنیادی وجہ حوا کی بیٹی کو قرار دیا ہے لیکن اس امر سے بھی مفر نہیں کہ ’’وار وکٹمز‘ یعنی ’’متاثرینِ جنگ‘‘ میں بہت بڑی تعداد خود خواتین کی شمار کی گئی ہے۔ جنگ کے نتیجے میں عورت کو کہیں زندگی کی بنیادی سہولیات کی عدم فراہمی درپیش ہے تو کہیں چادر اور چار دیواری سے محرومی کا سامنا ہے ۔ لیکن فقط جنگ کی وجہ‘ اور جنگ کے متاثرین ہونے کے علاوہ جنگ میں دفاعی محاذ پر ڈٹے رہنا بھی عورت کی زندگی کا ایک اہم پہلو ہے۔ بظاہر پاکستان میں کم و بیش گزشتہ ایک دہائی سے دہشتگردی کے خلاف لڑی جانے والی جنگ میں ظاہری محاذوں پر پاکستان کی دفاعی افواج کے دلیر جوان سینہ سپر ہیں۔ لیکن ان کے گھروں کی خواتین کو بھی ایک بڑے جہاد کا سامنا ہے۔


کلام اقبال کا معجزہ ہے کہ پڑھنے والے کو اپنے لئے اس سے ربط کا کوئی نہ کوئی حوالہ ضرور مل جاتا ہے۔ ہر محب وطن کو علامہ محمداقبال کی شاعر سے نسبت ضرور ہے۔ دفاع پاکستان میں اگر خواتین کے کردار پر نظر ڈالوں تو مجھے علامہ اقبال کی تین نظمیں خواتین کی شان میں دکھائی دیتی ہیں اور فکر اقبال کے عصری تناظر میں اُن کی اہمیت مجھ پر عیاں تر ہو جاتی ہے ۔ یوں لگتا ہے جیسے یہ نظمیں تقریباً ایک صدی قبل علامہ محترم نے آج کے پاکستان کے دفاع میں خواتین کے عسکری کردار کو ذہن میں رکھ کر لکھی ہوں۔


اگر دفاع پاکستان میں عسکری سطح پر عورت کے براہِ راست عمل دخل پر نظر ڈالی جائے تو وہ اس فوج کی ایک سپاہی معلوم ہوتی ہے جس کی سالار ’’فاطمہ بنت عبداللہ‘‘ ہے، جس کے نصیب میں حیاتِ جاوداں تو اس کی شہادت کے ثمر کے طور پر رقم کردی گئی تھی لیکن اقبال نے اس کو اپنی ایک نظم کا موضوع بنا کر زندہ تر پائندہ تر کردیا۔


فاطمہ! تو آبروئے امتِ مرحوم ہے
ذرہ ذرہ تیری مشتِ خاک کا معصوم ہے
یہ سعادت حورِ صحرائی! تری قسمت میں تھی
غازیانِ دیں کی سقائی تیری قسمت میں تھی
یہ جہاد اللہ کے رستے میں بے تیغ و سپر
ہے جسارت آفرین شوقِ شہادت کس قدر
یہ کلی بھی اس گلستانِ خزاں منظر میں تھی
ایسی چنگاری بھی یارب، اپنی خاکستر میں تھی!

janaurataurallama.jpgفاطمہ بنتِ عبداللہ عرب کے قبیلہ البراعصہ کے سردار شیخ عبداللہ کی گیارہ سالہ بیٹی تھی جو1912 میں جنگ طرابلس میں غازیوں کو پانی پلاتی شہید ہوگئی تھی ۔ یہ قبیلہ اپنے اثرورسوخ میں دیگر قبائل سے بڑھ کر تھا۔ اس قبیلے کے تمام افراد جنگ طرابلس میں شہید ہوئے۔ اگرچہ بہت سی عرب خواتین نے اس جنگ میں حصہ لیا لیکن فاطمہ ان سب میں سے اس لئے ممتاز ہے کیونکہ وہ سب سے کمسن تھی۔ یہ جنگ جون1912 (دوسری روایت کے مطابق ستمبر1911) میں شروع ہوئی۔ جب بارہ ہزار اطالوی سپاہیوں نے زوارہ (طرابلس پر) حملہ کیا تو ان کے مقابلے میں عرب اور ترک سپاہیوں کی تعداد فقط تین ہزار تھی۔ لیکن اطالوی فوج کو شکست کا منہ دیکھنا پڑا۔ دوران جنگ فاطمہ بنت عبداللہ چار زخمی مجاہدوں کو پانی پلا رہی تھی کہ ایک اطالوی سپاہی نے اس کم سن مجاہدہ کو شہید کر دیا۔ علامہ اقبال نے اس کم سن دختر عرب کی شہادت سے متاثر ہو کر ایک نظم لکھی جو اب ’’بانگ درا‘‘ کی شان ہے۔ اس نظم نے دنیا میں اس کمسن شہید کا نام امر کر دیا۔


آج پاکستان میں دہشت گرد حملوں میں شہید ہونے والی ہر لڑکی فاطمہ بنت عبداﷲ کی سپاہ میں شامل ہے اور اس لشکر میں تازہ ترین بھرتی افواج پاکستان کی جنگجو ہواباز مریم مختار کی ہے جس نے اپنی تربیتی پرواز میں طیارے کو فنی خرابی کی بنا پر آبادی سے دور تر گرانے کی کوشش میں جام شہادت نوش کیا اور اقبال کی نظم ’’فاطمہ بنت عبداﷲ‘‘ کے یہ اشعار پاکستان کی فضائی دفاعی سرحدوں میں گونجتے سنائی دیتے ہیں۔


رقص تیری خاک کا کتنا نشاط انگیز ہے
ذرہ ذرہ زندگی کے سوز سے لبریز ہے
تازہ انجم کا فضائے آسماں میں ہے ظہور
دیدۂِ انساں سے نامحرم ہے جن کی موج نور
جو ابھی ابھرے ہیں ظلمت خانۂِ ایام سے
جن کی ضَو ناآشنا ہے قیدِ صبح و شام سے
جن کی تابانی میں انداز کہنِ نَو بھی ہے
اور تیرے کوکبِ تقدیر کا پرتوَ بھی ہے


ایک تو یہ بیٹیاں ہیں جو’’ قوموں کے کوکب تقدیر کا پرتوَ‘‘ ہیں اور حب الوطنی میں اپنے فرائض سے بخوبی سبکدوش ہوتی ہیں اور ایک وہ مائیں ہیں جن کے لخت جگر جنگ کی نذر ہو جاتے ہیں۔ ان ماؤں کو تو صبر آ جاتا ہے جن کے بیٹے اور بیٹیاں اپنے فرائض منصبی کے پیش نظر کسی نہ کسی جنگی محاذ پر اپنی جان جان آفریں کے سپرد کر دیتے ہیں۔ لیکن ان ماؤں کا کیا جن کے جگر گوشوں کو دہشت گردی کے عفریت نے بے سبب نگل لیا، جن بچوں کی معصومیت پر فرشتے بھی نازاں ہوں اور جن کی نوخیز جوانی پر خزاں کو بھی پیار آتا ہو، ان کی ماؤں کا کیا؟


16دسمبر 2014 کو اے پی ایس پشاور کے سانحے میں ماؤں نے اپنے لال بے سود گنوا دیئے۔ مجھے نہیں معلوم کہ جن ماؤں نے اپنے نور چشم کھوئے ہیں ان کی آنکھوں میں نیند کیوں کر آتی ہو گی۔ لیکن اگر آتی بھی ہو گی تو کچھ ایسے ہی خواب دکھاتی ہو گی جیسا کہ ’’ماں کا خواب‘‘ علامہ اقبال نے قلم بند کیا ہے:


میں سوئی جو اک شب تو دیکھا یہ خواب
بڑھا اور جس سے مرا اضطراب
یہ دیکھا کہ میں جا رہی ہوں کہیں
اندھیرا ہے اور راہ ملتی نہیں
اس تاریک مقام میں اس ماں کو اپنا وہ بیٹا دکھائی دیتا ہے جس کو اس نے بے سبب کھو دیا۔
جو کچھ حوصلہ پا کے آگے بڑھی
تو دیکھا قطار ایک لڑکوں کی تھی
زمرد سی پوشاک پہنے ہوئے
دیئے سب کے ہاتھوں میں جلتے ہوئے
وہ چپ چاپ تھے آگے پیچھے رواں
خدا جانے جانا تھا ان کو کہاں
اسی سوچ میں تھی کہ میرا پسر
مجھے اس جماعت میں آیا نظر
وہ پیچھے تھا اور تیز چلتا نہ تھا
دیا اس کے ہاتھوں میں جلتا نہ تھا


اس ماں نے اپنا بیٹا کسی طبعی موت یا آسمانی آفت کے سبب نہیں کھویا بلکہ وہ جو شمع علم کو فروزاں رکھے ہوئے تھا، اس کی زندگی کے چراغ کو سفاکیت اور درندگی نے گل کیا تھا۔ اس بچے کی ماں خواب میں بھی اس بچے کے چراغ کو گل پاتی ہے۔ ماں اپنے بچے سے گلہ کرتی ہے:


کہا میں نے پہچان کر‘ میری جاں!
مجھے چھوڑ کر آ گئے تم کہاں!
جدائی میں رہتی ہوں میں بے قرار
پروتی ہوں ہر روز اشکوں کے ہار
نہ پروا ہماری ذرا تم نے کی
گئے چھوڑ‘ اچھی وفا تم نے کی!


وہ روشنی کا ہم سفر اس تاریکی میں دھکیلا گیا تھا لیکن وہ مطمئن ہے کہ وہ حیات ابدی کی جانب رواں دواں ہے‘ ہاں مگر اس کا دیا ضرور بجھا ہوا ہے اور وہ اپنی ماں سے یہ کہنے پر مجبور ہے کہ:


جو بچے نے دیکھا مرا پیچ و تاب
دیا اس نے منہ پھیر کر یوں جواب
رلاتی ہے تجھ کو جدائی مری
نہیں اس میں کچھ بھی بھلائی میری
یہ کہہ کر وہ کچھ دیر تک چپ رہا
دیا پھر دکھا کر یہ کہنے لگا
سمجھتی ہے تو ہو گیا کیا اسے؟
ترے آنسوؤں نے بجھایا اسے!


علامہ اقبال کی تیسری نظم ’’صبح کا ستارا‘‘ جنگ سے متاثرہ خواتین کے اس طبقے سے متعلق ہے جو شاید سب سے زیادہ مشکلات کا سامنا کرتی ہیں۔ اس نظم کے ادبی محاسن اپنی جگہ پر‘ مگر نظم کا مضمون نہایت منفرد اور بے نظیر ہے۔ اقبال کی سوچ کا جہاں بہت وسیع ہے۔ وہ بلندیوں کے مکین‘ سورج‘ چاند‘ ستاروں کے درد آشنا بھی ہیں۔ ’’صبح کے ستارے‘‘ کی داستان کچھ یوں ہے ۔ صبح کا پیامبر‘ صبح کا ستارہ جسے قرآن میں ’’نجم الثاقب‘‘ قرار دیاگیا ہے جو بظاہر اہل جہاں کے لئے ایک نئے روشن دن کی نوید لاتا ہے، کون جانتا ہے کہ اس کا دکھ کیا ہے؟ صبح کی آمد کا اعلان خود اس کے لئے پیام موت ہے۔ نوید سحر کا پیامبر اپنے مقام اور کام دونوں سے مطمئن نہیں۔ وہ اپنی بلندی سے بیزار ہے اور زمین والوں کی پستی پر رشک کرتا ہے۔ ہر روز کا مرنا جینا اس کا مقدر ہے۔


لطف ہمسائیگی شمس و قمر کو چھوڑوں
اور اس خدمت پیغامِ سحر کو چھوڑوں
میرے حق میں تو نہیں تاروں کی بستی اچھی
اس بلندی سے زمیں والوں کی پستی اچھی
آسمان کیا‘ عدم آباد وطن ہے میرا
صبح کا دامنِ صد چاک کفن ہے میرا
میری قسمت میں ہے ہر روز کا مرنا جینا
ساقیِ موت کے ہاتھوں سے صبوحی پینا
نہ یہ خدمت‘ نہ یہ عزت‘ نہ یہ رفعت اچھی
اس گھڑی بھر کے چمکنے سے تو ظلمت اچھی
میری قدرت میں جو ہوتاتو نہ اختر بنتا
قعر دریا میں چمکتا ہوا گوہر بنتا


صبح کا ستارہ خواہش کرتا ہے کہ کاش وہ اختر ہوتا‘ گوہر ہوتا‘ اور اک روز دریا کی گہرائیوں سے نکل کر کسی حسیں کے گلے کا ہار بن جاتا۔ یہ صبح کا ستارہ پہلے تو کسی ملکہ کے تاج کی زینت یا بادشاہ سلیمان کے ہاتھ کی انگشتری میں جڑے نگینے کی قسمت پر رشک کرتا ہے مگر پھر وہ سوچتا ہے کہ یہ نگینہ بھی تو آخر پتھر ہی ہے، جس کی قسمت میں ٹوٹنا ہے۔ صبح کا ستارہ ایسی زندگی کا خواہاں ہے جس میں موت کا تقاضا نہ ہو۔ اسے لگتا ہے کہ زینت عالم ہونے سے بہتر ہے کہ میں کسی پھول پر شبنم بن کر گر جاؤں۔


واں بھی موجوں کی کشاکش سے جو دل گھبراتا
چھوڑ کر بحر کہیں زیب گلو ہو جاتا
ہے چمکنے میں مزا حسن کا زیور بن کر
زینتِ تاجِ سرِبانوئے قیصر بن کر
ایک پتھر کے جو ٹکڑے کا نصیبا جاگا
خاتمِ دستِ سلیماں کا نگین بن کے رہا
ایسی چیزوں کا مگر دہر میں ہے کام شکست
ہے گہرہائے گراں مایہ کا انجام شکست
زندگی وہ ہے کہ جو ہو نہ شناسائے اجل
کیا وہ جینا ہے کہ ہو جس میں تقاضائے اجل
ہے یہ انجام اگر زینتِ عالم ہو کر
کیوں نہ گر جاؤں کسی پھول پہ شبنم ہو کر!


وہ یہ بھی سوچتا ہے کہ کسی کی پیشانی پر افشاں بن کر چمکوں یا کس مظلوم کی آہوں کا شرارہ بن جاؤں۔ الغرض وہ اپنے لئے بہت سے نئے مقامات تلاش کرتاہے مگر اس کا شوق ’’ابدیت‘‘ کہیں پورا ہوتا دکھائی نہیں دیتا۔ بالآخر آسماں کے اس روشن ستارے کو اپنی منزل زمین پر دکھائی دیتی ہے۔ وہ اشک بن کر اس بیوی کی آنکھ سے ٹپک جانا چاہتا ہے جس کا شوہر حب الوطنی سے سرشار‘ زرہ میں مستور‘ میدان جنگ کی جانب رواں ہے۔ شوہر کی رضا نے اس بیوی کو تاب شکیبائی دی ہے اور آنکھوں کو حیا نے طاقت گویائی دی ہے۔ صبح کے اس ستارے کو اپنی منزل قریب دکھائی دیتی ہے کہ جب شوہر کو جنگ کے لئے رخصت کرتے ہوئے لاکھ ضبط کے باوجود اس بیوی کے دیدۂ پرنم سے وہ اشک بن کر ٹپک جائے اور خاک میں مل کر ابدی حیات پا جائے اور عشق کاسوز زمانے کو دکھا دے۔


کسی پیشانی کے افشاں کے ستاروں میں رہوں
کسی مظلوم کی آہوں کے شراروں میں رہوں
اشک بن کر سرمژگاں سے اٹک جاؤں میں
کیوں نہ اس بیوی کی آنکھوں سے ٹپک جاؤں میں
جس کا شوہر ہو رواں‘ ہو کے زرہ میں مستور
سوائے میدانِ وغا، حب وطن سے مجبور
یاس و امید کا نظارہ جو دکھلاتی ہو
جس کی خاموشی سے تقریر بھی شرماتی ہو
جس کو شوہر کی رضا تاب شکیبائی دے
اور نگاہوں کو حیا طاقت گویائی دے
زرد، رخصت کی گھڑی، عارضِ گلگوں ہو جائے
کشش حسن غم ہجر سے افزوں ہو جائے
لاکھ وہ ضبط کرے پر میں ٹپک ہی جاؤں
ساغر دیدہ پُرنم سے چھلک ہی جاؤں
خاک میں مل کے حیاتِ ابدی پا جاؤں
عشق کا سوز زمانے کو دکھاتا جاؤں


شاعروں نے عورت کو ماں اور بیٹی کی حیثیت سے تو بہت سراہا ہو گا لیکن کلام اقبال میں ایک بیوی کے سوز عشق کا بیان بے مثال ہے۔ آج پاکستان کے حالات میں افواج پاکستان کا کردار ہمیشہ سے زیادہ متحرک ہے۔ حب الوطنی سے سرشار پاکستان کا ہر وہ محافظ جو اپنی جان ہتھیلی پر سجائے رہتا ہے اور ہر نیا دن اس کے لئے عشق کے اور امتحان لاتا ہے، بے شک اس کا مقام ستاروں کی گزرگاہ سے بہت آگے ہے۔ ان فوجیوں کے بہتے خون کی سرخی ان کے اپنوں کے رخسار تو زرد کر دیتی ہے مگر صبح وطن کا ستارہ ہمیشہ روشن رہتا ہے۔
دفاع وطن تمام اہل وطن کا فریضہ ہے۔ کسی کے لئے یہ فرض منصبی ہیں تو کسی کے لئے نسبی۔ عورت بھی وطن کی بیٹی، محبان وطن کی ماں کی حیثیت سے یا محافظین وطن کی شریک حیات ہونے کی حیثیت میں دفاع وطن کی جنگ کو اپنی زندگی کی جنگ سمجھ کر بہت حوصلے اور ہمت سے لڑتی ہے۔ پاکستان کے ہر شہری کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی مصروف زندگی میں سے کبھی تھوڑا سا وقت نکال کر یہ سوچ سکے کہ جن والدین نے اپنی جانباز بیٹیاں وطن پر وار دیں‘ جن ماؤں نے اپنے مستقبل کے سہارے درندوں کے ہاتھوں بکھرتے دیکھے ہوں، جن بیویوں نے کمال ضبط سے حب وطن سے سرشار اپنی زندگی کے ساتھی جنگ پر رواں کئے ہوں ان کا کیا مقام ہے؟ اور یہ جان سکے کہ عورت فقط وجہ جنگ اور متاثرین جنگ ہی نہیں بلکہ مقابل و مدافع جنگ بھی ہے

حمیرا شہباز ڈھاکہ یونیورسٹی بنگلہ دیش سے فارسی میں ایم فل ہیں۔ان دنوں وہ نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز کے شعبہ فارسی میں لیکچرار کے فرائض انجام دے رہی ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

janaurataurallama1.jpg
 
07
January

عقل بمقابلہ عشق

تحریر: یاسر پیرزادہ

حسن البصری اپنے شاگردوں کو مسجد میں لیکچر دے رہے تھے لیکچر اپنے اختتام کو تھا کہ اچانک ایک طالب علم نے عجیب ساسوال داغ دیا ۔کہنے لگا: ’’استاد محترم! ہمارے ہاں ایک جماعت ایسی پیدا ہو چکی ہے جس کا ماننا ہے کہ گناہ کبیرہ کرنے والا شخص دائرہ اسلام سے خارج ہو جاتا ہے جبکہ دوسری طرف لوگوں کا ایک گروہ ایسا بھی ہے جو یہ کہتا ہے کہ گناہ کبیرہ کا مرتکب ہونے والے کے لئے بھی نجات کا دروازہ کھلا ہے۔ ان کی دلیل یہ ہے کہ جیسے کسی کافر کی عبادت اسے کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکتی اسی طرح کسی مسلمان کا گناہ اسے کوئی ایسا نقصان نہیں پہنچا سکتا جس کی تلافی نہ ہوسکے ‘آپ کی رائے میں سچائی کا راستہ کیا ہے ؟‘‘اس سے پہلے کہ حسن البصری جواب دیتے ‘حاضرین میں سے ایک نوجوان اٹھا اور بولا:’’گناہ کبیرہ کا مرتکب ہونے والا شخص ایمان کے دائرے سے باہر سمجھا جائے گااور نہ ہی وہ سچا مسلمان مانا جائے گا‘اسے ایمان اور کفر کے درمیان کی ایک ’’منزل‘‘ میں رکھا جائے گا ۔‘‘ یہ کہنے کے بعد وہ نوجوا ن مسجد کے دوسرے سرے کی جانب گیا اور وہاں موجود طلبا کو اپنا نقطہ نظر سمجھانے لگا۔ نوجوان کا نام واصل ابن عطا تھا۔حسن البصری نے ایک نگاہ اس کی جانب ڈالی اور بولے ’’ یہ شخص ہم میں سے نکل گیا‘‘۔اس وقت سے واصل ابن عطا اور ان کے پیروکاروں کو ’’معتزلین‘‘کہا جاتا ہے ‘ واصل ابن عطا ’’المعتزلہ‘‘ تحریک کا بانی ہے۔

 

یہ شخص بلا کا ذہین تھا ‘ اس نے مذہب کو عقلی بنیاد پر پرکھنے کی روایت ڈالی اور دقیق دینی اور فلسفیانہ موضوعات پر ایسی رائے دی جس نے عام مسلمان کو بے حد متاثر کیا ۔واصل کی گردن ذرا لمبی تھی جسے دیکھ کر عمر ابن عبید نے ایک مرتبہ کہا تھا کہ ’’ایسی لمبی گردن والے شخص میں کوئی خیر نہیں ہو سکتی۔‘‘واصل عربی کا حرف ’’ر‘‘ نہیں بول سکتا تھا لہٰذا گفتگو میں اس بات کاخاص خیال رکھتا کہ زبان سے کوئی ایسا لفظ نہ پھسل جائے جس میں ’’ر‘‘ آتا ہو‘ مگر اس کے باوجود اس قدر روانی سے بولتاکہ سننے والے دنگ رہ جاتے۔اس نے ایک ضخیم مقالہ بھی تحریر کیا مگر اس پورے مقالے میں کہیں ایک جگہ بھی ’’ر‘‘ کا استعمال نہیں کیا۔واصل کی عقلیت پسندی اس کے عقائد میں جا بجا جھلکتی ہے۔مثلاً انسان کی مجبوری و مختاری کے مسئلے پر وہ اپنی رائے یوں دیتا ہے کہ خدا عاقل اور انصاف پسند ہے ‘شر اور نا انصافی اس کی صفات میں شامل کی ہی نہیں جا سکتیں ‘اس بات کا جواز کیسے ممکن ہے کہ وہ اپنی مخلوق کو جس بات کا حکم دے اس کی مرضی اس کے بر عکس ہو‘ لہٰذا خیر اور شر‘کفر و الحاد‘ فرمانبرداری اور گناہ اس کی مخلوق کے اعمال ہیں ‘یعنی مخلوق ہی اپنے اعمال کی خالق و مختارہے لہٰذا انہی کی بنیاد پر اسے سزا و جزا کا حقدار ٹھہرایا جائے گا‘یہ ناممکن ہے کہ غلام کو آقا کی طرف سے کوئی ایسا حکم بجا لانے کو کہا جائے جو اس کے بس سے باہر ہو‘بندے کو وہی کرنے کو کہا جاتا ہے جس کی وہ استطاعت رکھتا ہے۔ اسلامی تاریخ کے عظیم مفکر ابن حزم نے واصل کے ان خیالات کے بارے میں کہا تھا کہ معتزلین نے انسان کی مجبوری و مختاری کے مسئلے پر نہایت عمدہ کام کیا ہے ‘اگر انسان کو اپنے معاملات میں کلی طور پر مختار مان لیا جائے تو شریعت کی عمارت کا وجود قائم نہیں رہ سکتا۔

 

معتزلین کی عقلیت پسندی میں بظاہر بڑی کشش نظر آتی ہے مگر ان کے ناقدین کی رائے میں ان سے یہ غلطی ہوئی کہ انہوں نے ان تمام تصورات کو رد کر دیا جو عقل کے پیمانے میں سموتے نہیں تھے ۔وہ یہ بات نظر انداز کر گئے کہ عقل انسانی بھی اسی طرح خدا کا ایک تحفہ ہے جیسے انسان کو ودیعت کی گئیں دیگر حسیات۔جس طرح انسان کے دیگر ذرائع علم کی اپنی حدود ہیں اسی طرح عقل کی بھی کچھ حدود ہیں اور ضروری نہیں کہ آفاقی سچائی عقل سے ہی سمجھ میں آ جائے۔ بقول شیکسپئیر :

"There are more things in heavan and earth, Horatio, than are dreamt of in your philosophy"

 

عباسی حکمرانوں ‘خاص طور سے خلیفہ مامون الرشید ‘نے معتزلین کی کافی سرپرستی کی اور عقلیت پسندی کو عوامی سطح پر روشناس کروایا۔معتزلین سچائی اور حقیقت کو محض عقل کی کسوٹی

پر ہی پرکھنے پر مصر رہے جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ انہوں نے ایمان کوبھی خالصتاً فلسفے کے انداز میں جانچنا شروع کر دیا۔ انہوں نے یہ حقیقت یکسر بھلا دی کہ مذہب کے بنیادی عقائد کو کبھی بھی عملاً منطقی اعتبار سے جانچا نہیں جا سکتااور نہ ہی ان کا عقلی ثبوت مہیا کیا جا سکتا ہے ۔مذہب کے بنیادی عقائد کا تعلق چندفوق الادراک سچائیوں سے ہے جنہیں پہلے ہمیں وحی کی بنیادپر ماننا پڑے گا ‘اس کے بعد انسانی عقل کی حدود شروع ہوں گی۔ اگر ہم ہر عقیدے کو ہی عقل کی کسوٹی پر جانچیں گے تو یہ کسوٹی اس کے لئے درست نہیں ہوگی کیونکہ عقل ایمان کا احاطہ کرنے سے قاصر ہے ۔اس ضمن میں کانٹ کی دلیل دلچسپ ہے۔ ‘کانٹ کے زمانے میں چرچ خدا کے بیٹے کا وجود ثابت کرنے کے لئے عقلی دلائل تلاش کر رہا تھا مگر کامیاب نہیں ہو پایا۔کانٹ نے پادریوں کی مشکل حل کر دی۔ اس نے کہا کہ خدا نے انسان کو پیور ریزن دی ہے پیور ریزن ودیعت نہیں کی‘ پریکٹیکل ریزن ہمارے مسائل تو حل کر سکتی ہے مگر خدا کی ذات کا تعلق پیور ریزن سے ہے اور وہ ہمیں نہیں ملی۔

 

عارف اور عالم دونوں ہی سچائی کے راستے تک لے جاتے ہیں مگر عارف کا ذریعہ عرفان ہے جبکہ عالم کا عقل ‘یہ ذرائع درست بھی ہو سکتے ہیں اور غلط بھی۔ مولانا روم کے بقول عقلی استدلال شیطانی بھی ہو سکتا ہے اور رحمانی بھی ‘مگر غلطی کے امکان کے باوجود انسان نے ترقی کی ہے ۔چونکہ یہ دنیا احساسات کی دنیا ہے اس لئے علم کے اس ذریعے کو فوقیت دی جاتی ہے جو عقل پر مبنی ہے ۔دوسری طرف عرفان کا تعلق صرف مذہب سے نہیں بلکہ دنیاوی معاملات میں بھی وجدان سے کام لیا جاتا ہے ‘یہی وجہ ہے کہ بعض اوقات ہم کوئی فیصلہ عقلی اعتبار سے درست معلوم ہونے کے باوجود اس لئے نہیں کرتے کہ دل نہیں مانتا حالانکہ اس کی کوئی عقلی توجیح نہیں ہوتی۔

 

عقل و عشق کے معرکے کی دلچسپ بات یہ ہے کہ ہم وجدان کا قائل ہونے کے لئے بھی بہرحال عقلی دلائل کا ہی سہارا لیتے ہیں‘تاہم اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ عقل اور عشق دونوں کی منزل ایک ہی ہے مگر بقو ل اقبال ‘عقل ہمیں دھیرے دھیر ے اس مقام تک لے جاتی ہے جبکہ عشق ایک ہی جست میں تمام منازل پار کر لیتا ہے ‘ اسی لئے روز مرہ زندگی کے فیصلے ہمیں عقل کی رو سے کرنے چاہئیں جبکہ بڑے فیصلے دل سے کرنے چاہئیں ۔وہ مقام کب آتا ہے جب دل سے فیصلہ کرنا ضروری ہوتا ہے ‘اس کا ذکر پھر کبھی۔

نوٹ :اس کالم میں معتزلین کے بارے میں حقائق ‘پروفیسر میر ولی الدین‘ عثمانیہ یونیورسٹی ‘ حیدر آباد دکن‘کے مقالے سے حاصل کئے گئے ہیں۔

مضمون نگار معروف کالم نویس اور تجزیہ نگار ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

aqalbmaqbla.jpg
 

Follow Us On Twitter