26
December

Break Fast at Kan Mehtarzai

Published in Hilal English Jan 2014

Written By: Salman Rashid

Balochistan was the greatest railway adventure there was in Pakistan. It drubbed the much-flaunted Khyber Pass train by miles. I wish I could talk of it in the present tense, but sadly that is not the case. It was once a great railway adventure.

There was, for example, the magnificent line that ran north of Sibi through Harnai, into the Chappar Rift and on to Quetta. The marvel of engineering on this line was the Louise Margaret Bridge that stitched the gaping crack of the Rift. The line died back in July 1942 after it was washed out by a massive torrent during a rainstorm. This wasn't the first time such a thing had happened. The Chappar Rift was famous for recurrent maintenance problems and the question of dismantling it had been considered before. The war was on, steel was needed for munitions and in any case the Bolan route was in service. And so the line in the Rift was uprooted. Today all that remains of this glorious piece of railway engineering are bridge piers, line bed and abandoned railway stations.

The other great one was the Zhob Valley Railway (ZVR), so named for following the course of the Zhob River. While the Chappar Rift line was Broad Gauge (5'-6”), this one was the tiny Narrow Gauge (2'-6”). It ran northeast from Bostan on the Quetta-Chaman route to Zhob – or Fort Sandeman as it had been renamed by the British. Its length of three hundred kilometres made it the longest Narrow Gauge line in the Subcontinent. I had once thought that at 2224 metres above the sea, Kan Mehtarzai station was the highest Narrow Gauge railway station in the world. But I now know that it is Ghum on the line to Darjeeling in India. The latter being thirty-five metres higher than our Kan Mehtarzai.

The ZVR was laid during the First World War. But then it ran up only as far as the chrome mines of Hindubagh (renamed Muslimbagh in the 1960s) that was used in the manufacture of munitions. In the 1920s the line was extended to Zhob with dreams of it going across to connect with Bannu in the North West Frontier Province, KPK now. But that dream became a victim of the uncertainty of the 1930s and the Second World War. What Pakistan inherited at independence, few thought it was the sacred duty of her sons to undo. And so barely forty years down the line, ZVR has been successfully closed. The first time I travelled the length of the line in 1992, it was not by train but by car: the line had been dead for some six years or so. Whereas India draws train buffs from all over the world to its various railway lines, we have been great ones for shutting down our best showpieces. And so this line became a victim of part apathy and mostly inefficiency and corruption. Half-hearted attempts to revamp the line were made and the locomotives that rest and rust in the sheds at Bostan were overhauled some years ago. But no work was done on the civil works of the disintegrating line. For some time the refurbished locomotives were periodically fired to keep them work. Bye and bye all was forgotten and the last time I saw them in 1999, they were beginning to lose their shine once again.

As I stood on the platform at Kan Mehtarzai on that blustery November morning in 1992, I imagined myself in the First Class Sleeper on the NG-10 pulling in, enroute from Zhob to Bostan. And I had imagined myself making ready for the bearer to pop into the carriage with his stack of breakfast trays. The idea of toast and eggs at the highest Narrow Gauge station in the country (the world, as I then believed) had tickled me. I found myself wondering if, when the line worked, travellers had paused to consider the uniqueness of their situation.

In Bostan in 1992, Mirza Tahir, the Station Master remembered the glorious days of the ZVR. Winters were pretty hard on the tiny Narrow Gauge locomotives, he had told me, and it was not uncommon for trains to be caught in snowdrifts. Tahir remembered the great snowstorms of the winter of 1970. So deep was the snow that the snowplough in front of the locomotive just could not make way. The train foundered. The fireman built up steam while the driver tried again and again to nose through. But the snow was too deep – nearly two metres – it was said, and they had to give up. They dropped fire and waited.

While the passengers walked to the highroad that runs parallel to the line and got away as best as they could, the telegraph wires buzzed. Bostan was informed of the snow-bound train and requested for a rescue locomotive. Out came one steaming and puffing through the wintry landscape only to be caught in the snow a few hundred metres short of the stranded train. Bostan sent out yet another one and even that could not make it. Tahir said it took them a few days to clear the line and get it going again.

Since that journey along the ZVR thirteen years ago, I have passed through Kan Mehtarzai half a dozen times. Once or twice I detoured to the station just to check things out. But none of my trips had been in midwinter after a good fall of snow. Kan Mehtarzai station, as I knew it, was always dusty and wind-blown sitting in a treeless openness with a touch of a spaghetti western. I knew I was lucky when I got a chance recently to be there in the area in the grip of what many people would call bad weather: for several days there had been incessant rains and snow on higher altitudes. After years of drought, this was the best thing to happen to the Balochistan plateau and local farmers were joyous at the prospect of the harvest that the summer would eventually bring.

For me this was the chance to get to Kan Mehtarzai and imagine what it must have been like during the blizzards of 1970. The distant peaks and the rolling hills around the village were all nicely couched in deep snow and looked a darn sight better than their normal summer khaki. Snowmen being a Western partiality, there were none to be seen. Strange that when it snows, building a snowman does not come spontaneously to these people. Perhaps unprompted artistic expression is not part of our make-up. Or perhaps it is because we have not yet invented waterproof mittens that will keep the fingers from freezing while we attempt to flaunt our creativity. In town, business was shut and the few open doors showed shawl-wrapped men huddled around fires. Kan Mehtarzai seemed a bit of a ghost town.

Bordered by orchards where the apricot and almond trees were all undressed for the winter, the unpaved lane taking off to the south from the main highway was still unmistakable seven years after my last visit. The only difference was that it was under snow that a tractor gone before us had churned up into slush. We left the jeep short of the station and with snow crunching underfoot walked around a fencing, under the tall water tank and on to the platform.

I did not remember the set of three freight wagons, in their prescription reddish-brown, from my last visit. Surely they must have been abandoned there when the line worked. Only I had failed to register them. They were as bound in the snow as the trains in the winter of 1970. This time round, however, the snow was about a metre deep. On the ZVR, the cutest things on the entire pre-partition North Western Railway are the darling station buildings. I have not seen them duplicated anywhere else in Pakistan. They are, with only a couple of exceptions, all mud-plastered; they come with a pitched roof and, to one side, a neat octagonal tower-like structure with a conical roof. This was the ticket window. But only for those who cared to pay fare, for most travellers on this line considered it their birthright to go free. Indeed, that was one of the reasons for the line's untimely demise.

Icicles were draped along eaves that were shaded from the sun for most part of the day. Glass-less lamps that once lit up the platform at night emphasised the dereliction of the station. The mud plaster on the façade was beginning to crack and peel and the roof on the north side of the building had caved in. This portion, if I remember correctly, bore a sign in 1992 marking it as the Station Master's Office. The rest of the station had been taken over by a family for we could hear women and children behind the matting that shielded them from prying eyes. A young lad from this family came around to check out my friend Naeem and me. I wondered if others came around to photograph Kan Mehtarzai railway station or he thought we were a pair of loonies with nothing better to do than to have our ears fall off with cold.

Snow completely covered all signs of the platforms and the track. Years ago this is how it must have appeared to travellers on this line. And when in the winter of 1970 the train failed to show up, the Station Master must have sent out a patrol to see what had become of it. Now nothing happens at Kan Mehtarzai. They don't even build snowmen on the platform. Only the squatters bicker behind the matting.

I lament again the waste of a perfect showpiece of a railway line that could have helped Pakistan earn a few good tourist dollars. But that would have happened if the writ of the state held and if there were dedicated men in the railways. All those I had spoken to concerning the reopening of the ZVR as a tourist line had said it could not be done. There were too many problems and not enough finances. That I know to be untrue: we first permitted a working line to go to seed and now we complain of not enough funds to revitalise it.

India did much better with her Narrow Gauge show pieces in Simla and Darjeeling! If not emulation, then we should have preceded.
The writer is an avid tourist, has authored several books and contributes regularly for national and international media. This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
08
January

ہمارا کراچی

تحریر: ڈاکٹر ہمامیر

آداب! قارئین کو نیا سال مبارک ہو۔ 2016شروع ہو گیا ہے اور اپنے ساتھ نئی امیدیں‘ نئی امنگیں‘ نئی روشنی اور نئی تمنائیں لے کر آیا ہے۔ ہر سال کا آغاز عموماً اسی کیفیت میں ہوتا ہے۔ جب ہم نئی سوچ کو پروان چڑھا رہے ہوتے ہیں، نئے خواب آنکھوں میں بساتے ہیں اور ان کی تعبیر پانے کی کوشش کرتے ہیں۔ کیلنڈر میں نیا سال جنوری سے شروع ہوتا ہے مگر شاید اس نئے سال کی مسرت کی کرنیں دسمبر سے ہی دل میں پھوٹنے لگتی ہیں۔


کینیڈا میں دسمبر کا مہینہ کرسمس اور نیوائر منانے سے موسوم ہے۔ اوائل دسمبر سے ہی شاپنگ مال سجائے جاتے ہیں۔ بڑی بڑی سیل لگتی ہے اور سانتاکلاز بچوں میں چاکلیٹ و دیگر تحائف تقسیم کرتے ہیں۔ کرسمس عیسائیوں کا مذہبی تہوار ہے۔ اس موقع پر اشیاء خاص طور پر سستی کر دی جاتی ہیں تاکہ ہر خاص و عام اس موقعے کو خوشی سے منا سکے۔ 50سے لے کر 70فیصد تک کی کمی عام استعمال کی چیزوں پر کی جاتی ہے۔ نیز تحائف دینے کے لئے چاکلیٹ‘ پروفیوم اور دیگر اشیاء بھی سیل پر ہوتی ہیں۔ گراں فروشی‘ ذخیرہ اندوزی کا دور دور تک نام و نشان نہیں ہوتا۔


دسمبر میں کینیڈا میں سردی بھی خوب پڑتی ہے۔ برف کی دبیز تہیں موسم کی سختی کا احساس دلاتی ہیں۔ اس ٹھنڈے موسم میں ہم نے وطن عزیز جانے کا قصد کیا اور کراچی جانے کے لئے رختِ سفر باندھا جہاں سال کے بارہ مہینے گرمی پڑتی ہے۔ موسم کو تو ایک طرف رکھئے، ہمارے کراچی جانے کے اصل میں کئی اسباب تھے۔ سب سے پہلے تو ہمیں آرٹس کونسل میں ہونے والی سالانہ اُردو کانفرنس میں شرکت کرنی تھی جو عالمی سطح پر اُردو کے حوالے سے سب سے بڑی کانفرنس ہوتی ہے۔ اس عالیشان کانفرنس کی نظامت ہم پچھلے کئی برسوں سے کرتے چلے آ رہے ہیں اور اس مرتبہ بھی یہ ذمہ داری ہمارے کندھوں پر تھی۔ چار روزہ آٹھویں عالمی اردو کانفرنس میں شرکت بے شک ہمارے لئے بڑا اعزاز تھا۔ اس کے علاوہ ہمیں بین الاقوامی شہرت یافتہ گلوکار راحت فتح علی کے ایک میوزک شو کی کمپیئرنگ بھی کرنی تھی۔ ان وجوہات کے ساتھ ساتھ ایک اور اہم، اور ہمارا خیال ہے سب سے بڑی وجہ، یہ تھی کہ ہماری شدید خواہش تھی کہ 2015کے آخری غروب آفتاب اور 2016کے پہلے طلوع آفتاب کو اپنی سرزمین‘ اپنے وطن‘ اپنے پیارے پاکستان میں دیکھیں۔
وطن جانے کی خواہش بھی کیا کمال شئے ہے۔ سمجھ میں نہیںآتا کن الفاظ میں اس جذبے کو تحریر کریں جو دل میں ہمک ہمک کر پورے وجود میں سرشاری بھر دیتا ہے۔ قریبی عزیز و اقارب کے لئے تحائف کی خریداری‘ سامان کی پیکنگ‘ اپنوں کے پاس جانے کی لگن سب کا اپنا الگ مزا ہے۔

hamarakarachi.jpg
ہم نے گرم کپڑے کینیڈا میں ہی چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔ بس ایک چمڑے کی جیکٹ احتیاطاً ساتھ رکھ لی۔ تحائف کی بات کریں تو چاکلیٹ‘ کاسمیٹکس اور پرفیوم ہم نے خوب خریدے اپنی بہن اور بھائی کے لئے دو دو سویٹر بھی لئے۔ پیکنگ مکمل ہونے کے بعد جب ہم نے اپنے دو بھاری سوٹ کیسز کا وزن کیاتو ہم حیران ہی رہ گئے کہ آخر کیا پتھر ہم نے بھر لئے ہیں جو اتنا زیادہ وزن ہو گیا۔ وزن مقررہ حد سے زیادہ ہو تو اضافی پیسے لگتے ہیں جس کی ہماری جیب اجازت نہیں دیتی، لہٰذا ہم بہت کھینچ کھانچ کے بالآخر مقررہ وزن تک اپنے بیگز کو لے آئے۔ بس اتنا ضرور ہوا کہ ہمیں اپنا بہت سا سامان نکالنا پڑا۔ ایک ڈر یہ بھی تھا کہ کہیں خدانخواستہ بیگ اِدھر اُدھر نہ ہو جائے کیونکہ گزشتہ برس ہم اس تلخ تجربے سے بھی گزر چکے ہیں۔ جب ٹورنٹو سے براستہ دبئی کراچی پہنچے تو ہمیں پتہ چلا کہ ہمارا ایک بیگ لاپتہ ہے۔ ہم نے متعلقہ ایئر لائن میں شکایت درج کرائی مگر بیگ کا سراغ نہ مل سکا۔ خیر ہم صبر کر کے بیٹھ گئے مگر اس بار ہمیں دھڑکا تھا کہ اگر بیگ کھو گیا تو ساری شاپنگ غارت ہو جائے گی۔ رشتہ داروں کو بھی یقین ہو جائے گا کہ یہ خالی ہاتھ آتی ہے اور بہانہ یہ بناتی ہے کہ بیگ کھو گیا۔


خیر صاحبو! ہم ونکوور سے براستہ امریکی شہر سیاٹل اور پھر دبئی سے ہوتے کراچی پہنچ گئے۔ راستے بھر مسلسل جاگنے اور لگاتار فلمیں دیکھنے کے باعث سردرد کر رہا تھا۔ ہوائی جہاز میں ہمیں بالکل نیند نہیں آتی۔ سفر کے دوران ہمیں ان لوگوں پر رشک آ رہا تھا کہ جو ماحول سے بے خبر‘ بچوں کے شور اور رونے دھونے سے غافل آرام سے کمبل تانے خراٹے لے رہے تھے۔


33گھنٹے کے طویل سفر کے بعد جب تھکے ہارے کراچی کے جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر اترے تو سوچا ذرا واش روم جا کے فریش ہو جائیں۔ وہاں گئے تو دیکھا فرش پہ پانی پھیلا ہوا تھا۔ کاکروچ چاروں طرف آزادی سے گھوم رہے تھے۔ ٹشو پیپر بھی موجود نہ تھا۔ اور صفائی پر مامور خاتون ایک کونے میں آرام سے لیٹی خواب خرگوش کے مزے لے رہی تھیں۔ ان کے اونچے خراٹے سمع خراشی کر رہے تھے۔ ہم نے سوچا کہیں ہمارے آنے سے محترمہ کی نیند خراب نہ ہو جائے اور ویسے بھی واش روم گندگی کے باعث قابل استعمال نہ تھا، چنانچہ ہم الٹے پاؤں باہر نکل آئے۔ امیگریشن سے فارغ ہوئے تو پھر اگلا مرحلہ سامان کی وصولی کا تھا ہم بیلٹ کے پاس کھڑے ہو گئے، کافی دیر ہو گئی ہمارا سامان نہ آیا۔ ہمیں تشویش ہونے لگی سب کا سامان آ گیا ہمارا آنے کا نام ہی نہیں لے رہا تھا۔ برا حال تھا ہمارا۔ کہیں پھر غائب نہ ہو گیا ہو۔ ہزار طرح کے وسوسے آ رہے تھے۔ اور پھر بالآخر یوں ہوا کہ سب سے آخر میں بہت دیر کے بعد ہمارا سامان آ ہی گیا مگر اس حال میں کہ نہ ہی پوچھیں تو بہتر ہے۔ مال اڑانے کے لئے کسی نے بے دردی سے بیگ کا تیاپانچا کر دیا تھا۔ یہ دوسرا دھچکا تھا۔ سمجھ میں نہیں آتا کس سے کہیں۔ کیا کہیں۔۔۔۔؟


ہماری فیملی باہر لاؤنج میں ہماری منتظر تھی اور بار بار ہمیں موبائل پہ فون کر رہی تھی۔ ہم دوڑ کے ان کے پاس جانا چاہتے تھے مگر بوجھل قدموں سے بمشکل ٹرالی گھسیٹتے ان کی جانب چلے۔ والدہ سامنے ہی کھڑی نظر آ گئیں۔ ان کو دیکھا تو صحرا سے نخلستان میں آ گئے۔ گلے لگ کر محسوس ہوا کہ روح ہلکی پھلکی ہو گئی ہے۔ سفر کی تھکن‘ سردرد‘ کوفت‘ سب کچھ پل بھر میں غائب ہو گیا۔ اپنے وطن آنے کا‘ اپنے خاندان سے ملنے کا احساس ہر چیز سے زیادہ پیارا ہے۔ دل جیسے خوشی کھل گیا۔
کینیڈا سے کراچی تو ہم پہنچ گئے۔ بس اب ایک مشکل مرحلہ باقی تھا یعنی ہوائی اڈے سے گھر پہنچنا۔ اہلیان کراچی جانتے ہیں کہ رات کو ایئرپورٹ کے راستے میں اکثر مسافر ڈاکوؤں کے ہاتھ لٹ جاتے ہیں۔ الحمدﷲ رینجرز کے آپریشن کے باعث جہاں شہر میں امن و امان کی صورت حال بہتر ہوئی ہے وہیں راہزنی کی وارداتیں بھی کم ہو گئی ہیں۔ ہم نے آیت الکرسی کا حصار باندھا او رگھر کو روانہ ہوئے۔ راستے بھر سفر کی تفصیلات بتاتے رہے اور لگاتار بولتے رہے۔ آدھے پونے گھنٹے کے بعد گھر پہنچے تو خدا کا شکر ادا کیا کہ سفر بخیروخوبی تمام ہوا۔

مصنفہ ‘ مشہور ادا کارہ‘ کمپیئر اوردو کتابوں کی مصنفہ ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

وطن جانے کی خواہش بھی کیا کمال شئے ہے۔ سمجھ میں نہیںآتا کن الفاظ میں اس جذبے کو تحریر کریں جو دل میں ہمک ہمک کر پورے وجود میں سرشاری بھر دیتا ہے۔ قریبی عزیز و اقارب کے لئے تحائف کی خریداری‘ سامان کی پیکنگ‘ اپنوں کے پاس جانے کی لگن سب کا اپنا الگ مزا ہے۔

*****

ہماری فیملی باہر لاؤنج میں ہماری منتظر تھی اور بار بار ہمیں موبائل پہ فون کر رہی تھی۔ ہم دوڑ کے ان کے پاس جانا چاہتے تھے مگر بوجھل قدموں سے بمشکل ٹرالی گھسیٹتے ان کی جانب چلے۔ والدہ سامنے ہی کھڑی نظر آ گئیں۔ ان کو دیکھا تو صحرا سے نخلستان میں آ گئے۔ گلے لگ کر محسوس ہوا کہ روح ہلکی پھلکی ہو گئی ہے۔ سفر کی تھکن‘ سردرد‘ کوفت‘ سب کچھ پل بھر میں غائب ہو گیا۔ اپنے وطن آنے کا‘ اپنے خاندان سے ملنے کا احساس ہر چیز سے زیادہ پیارا ہے۔ دل جیسے خوشی کھل گیا۔

*****

 
08
January

لطف یہ ہے کہ آدمی عام کرے بہار کو

تحریر: طاہر بھٹی

سردیوں کی شام کو بے منزل آوارگی سے گزارنا ہر کسی کا نصیب بھی نہیں اور ذوق بھی نہیں ہوتا۔۔۔۔
ہمیں ایک طویل عرصے سے یہ ’علت‘ نصیب ہے۔ کل شام ایک دوست کے ساتھ فورسہائیم کی سیر کو نکلے توکئی جگہوں پر کرسمس کی تیاری کے شاندار انتظامات دیکھے جو اس شہر کی خوبصورتی کو چار چاند لگا رہے ہیں۔ ان مناظر نے مجھے بہت کچھ سوچنے پر مجبور کر دیا ہے۔


جرمنی کے اس شہر کا پرانا نام گولڈ سٹڈ ہے اور اس کی دولت اور ثروت کی وجہ سے جنگ عظیم میں اس کو تباہ کرنے کی خاص کوشش کی گئی جو اس وقت تو کامیاب رہی اور اس کو ملبے کا ڈھیر بنا دیا گیا مگر جرمن قوم کی تعمیری قوت نے اس تباہی کو شکست دی اور ملبے کو ایک جگہ پہاڑی کی شکل میں اکٹھا کر کے آنے والی نسلوں کے لئے اپنی قوت ارادی کی یادگار بنا دی اور جیتا جاگتا، فعال اور باوقار شہر پھر سے کھڑا کر دیا۔ اسی شہر کے مرکزی بازار کو کرسمس کے لئے سجایا گیا ہے اور تصویریں اسی سر خوشی کا اظہار کر رہی ہیں۔
دوسری خاص بات یہ کہ ایسے خوشی کے تہواروں پر سامان ’ضرورت‘ سے سٹور لدے ہوتے ہیں مگر اشیا کی قیمتیں 20% سے لے کر 70% تک کم کر دی جاتی ہیں تا کہ لوگ تہوار کی خوشی کو صرف دیکھیں نہیں بلکہ اس میں سے اپنا حصہ بھی لے سکیں۔


جاپان میں ایک زمانے میں یہ دستور تھا کہ کوئی جاپانی دنیا میں کوئی مفید یا خوشنما پودا بھی دیکھتا تو وہ اس کا بیج یا پنیری اپنے ملک کے لئے ضرور ساتھ واپس لاتا تھا۔۔۔۔۔کچھ ایسا ہی جذبہ خاکسار کا بھی ہے کہ جرمنی کی ہر ترقی اور آسودگی کا بیج اور پودا اہل پاکستان کے لئے بھجوایا جائے۔


کراچی روشنیوں کا شہر،
اسلام آباد خوبصورتی میں بین الاقوامی شہرت کا حامل،
لاہور کلچر کا گہوارہ،
کوئٹہ قبائلی رواج کا امین
پشاور سرحدی رسوم کا گڑھ
کشمیر۔۔۔۔۔جنت نظیر اور

lutfhaykadmi.jpg
شمالی علاقہ جات کے حسن کے بیان کے لئے الفاظ کم پڑ جائیں۔۔۔۔لیکن
کسی لمحۂ نا سپاس میں ہم نے اپنا منہ شکران نعمت سے ناشکری کی طرف موڑ لیا اور اپنے بگڑے ہوئے فہم کا نام اچھا سا رکھ کے پوری قوت سے بربادی کی منزل کی طرف بھاگ کھڑے ہوئے۔۔۔۔خدا کا احسان ہے کی ابتدائی قربانیوں اور مخلصین کی دعا سے ہمیں وہ’ منزل‘ ابھی تک نہیں ملی۔۔


بھرا پُرا کراچی۔۔۔مگر رہنے کے لئے غیر محفو٭۔۔۔کھلا ڈلا لاہور۔۔۔مگر دھماکے۔ سر سبز اسلام آباد مگر ناکے اور بیرئیر۔
امن سے رہنے اور محبت سے ملنے والے لوگوں کو کیا ہوا؟


مسجدیں خدا کا گھر کہلا تی تھیں مگر وہاں سے نفرت کی منادی شروع ہو گئی۔۔۔اور خدا اور خدا کے رسول کے نام پر ہوئی۔۔
جہاد مسلمانوں کی قومی اور ملی غیرت کا امتیاز تھا جس کی روح کا رعب ہمیشہ کفار پر پڑتا تھا۔۔۔اب وہ اہم اسلامی امتیاز جہلاء کے ہاتھ کھلونا بن گیا اور ریاست منہ تکتی رہی کہ یا اللہ یہ مسلمان اپنی قوم سے جو لڑ مر رہا ہے اسے جہاد کیسے کہیں۔ جس نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا نام رحمت عالم ہے اس کے نام پر انسانوں کا بے دریغ قتل عام؟
جس موت یعنی خودکشی کو اسلام میں حرام کہا گیا ہے اس کو خود کش بمبار جنت کی ضمانت سمجھ رہا ہے۔


اللہ کی تائید نے منہ موڑ لیا۔۔۔
کبھی رحمتیں تھیں نازل اسی خطۂ زمیں پر۔
وہی خطۂ زمیں ہے کہ عذاب اتر رہے ہیں۔


پچھلے کچھ برسوں کا نقشہ ہے۔۔۔میں نے پنسل سکیچ بنایا ہے رنگ جان بوجھ کے نہیں بھرے۔۔۔۔یہی بہت خوفناک ہے!!
میری آنکھوں کے سامنے اس شہر کے مناظر ہیں جو بہت روشن اور ’دل کش‘ ہیں۔ان بازاروں میں بچے بوڑھے، امیر غریب، مومن کافر، لوکل مہاجر، عوام خواص، مسلمان اور عیسائی سب کے سب بے خوف و خطر گھومیں پھریں گے اور ایک دوسرے کو کرسمس کی مبارکبادیں دیں گے۔۔۔ہم عیدوں پہ اب اپنوں کو یہ کہتے ہیں کہ۔۔۔حالات ٹھیک نہیں۔۔رش والی جگہوں پہ نہ جانا۔۔۔اور جلدی واپس آ جانا۔


یہ خوف اپنے گھر میں کیوں؟
یہ وطن ہمارا ہے۔۔۔ہم ہیں پاسباں اس کے۔۔۔
چاند میری زمیں پھول میرا وطن۔۔۔


اس لئے اب ایسا کچھ کریں کہ یہ ترانے سچ لگیں اور پاکستان ہمارا ہو۔۔۔ہر پاکستانی کا۔۔۔۔ہر شہری کا ہر دیہاتی کا۔۔۔ہر مسلمان کا اورہر عیسائی کا۔
ملک قوموں کی ملکیت اور میراث ہوتے ہیں۔۔۔۔دھڑوں، گروہوں اور فرقوں کے نہیں۔اور قوم یکجہتی سے بنتی ہے باہم دست و گریبان ہجوم پر’ قوم‘ جیسا باوقار لفظ اطلاق ہی نہیں پاتا۔
لاہور پہنچنے کا ارادہ رکھنے والا شخص کتنا ہی بڑا مسلمان اور نیک کیوں نہ ہو وہ پشاور کی سمت سفر کر کے لاہور نہیں پہنچ سکتا۔
اپنی سمت درست کریں۔۔۔محبت سب کے لئے۔۔۔عام کریں۔ انسانوں کے لئے رحمت بنیں۔۔۔بلا امتیاز مذہب و ملت دکھ سکھ میں شریک ہونا سیکھیں اور اسلام کی سلامتی کے پیغام کے ساتھ غیر مسلموں کا اعتماد بحال کریں تو ہمارے شہر بھی امن۔سلامتی اور محبت کا گہوارہ بن سکتے ہیں۔۔۔بقول مولانا حالی۔۔


فرشتے سے بہتر ہے انسان بننا
مگر اس میں لگتی ہے محنت زیادہ


شہر نفرتوں سے بستے نہیں اجڑتے ہیں اور ملک نفرتوں سے ترقی نہیں کرتے۔ انبیاء علیہم السلام میں سے ایک کا نام بھی نہیں لیا جا سکتا جو اپنی سچائی کی وجہ سے انسانوں پر جبر اور قہر کی تعلیم دیتے ہوں۔۔۔۔تو آپ اگر نفرت کے بیج بو رہے ہیں تو تعارف کروائیں کہ آپ ہیں کون؟ اور اس کام کے لئے آپ نے پاکستان کو کیوں چنا ہے۔
عام پاکستانی جب زلزلے اور آفات میں ننگے پاوں مدد کے لئے بھاگ کھڑا ہوتا ہے تو عام پاکستانی کو درحقیقت نفرت کسی سے نہیں۔۔اس کے جذبات، اس کی محبت، اس کی خیرخواہی کچھ نادیدہ ہاتھ اچک کے لے گئے ہیں۔۔۔ان عیسائی اقوام کے ملکوں میں جب عید آتی ہے تو یہ ہمیں بڑی خوشدلی سے عید مبارک کہتے ہیں۔ پاکستان سب کا ہے اور عام پاکستانی محبت کا متلاشی بھی ہے اور محبت کو عام بھی کرنا چاہتا ہے۔ نئے سال کی آمد آمد ہے۔ ہلال میگزین مسلح افواج ہی کا نہیں پاکستان کے عوام کا بھی نمائندہ ہے۔۔میں اس کی وساطت سے اہل پاکستان کو محبت کو عام کرنے اور نفرت کو ختم کرنے کی دعوت دیتا ہوں۔ پاکستان کے شہروں اور دیہات میں امن، اخوت،ہمدردی، تعمیر نو، اور باہمی غیر مشروط ہمدردی کی شجر کاری کی مہم چلانے کی دعوت دیتا ہوں۔

یہ جہاد کیوں نہیں کرتے؟؟؟


لطف یہ ہے کہ آدمی عام کرے بہار کو
موجِ ہوائے رنگ میں آپ نہا لئے تو کیا

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
 

Follow Us On Twitter