30
December

Justice (Retired) Dr Javed Iqbal

Interview By: Asif Jehangir Raja

Question: I shall request you to share few memories of Allama Iqbal with us?

Answer: I was twelve years old when Allama Iqbal died in 1938. So I couldn't get much time to spend with him but his personality left a great impact on me which I still carry to this date. Dr Allama Iqbal was a man of values who took pride in own culture, own dress, own language and wanted me to retain my own identity. It was a time when the British were ruling the Subcontinent, so I wasn't allowed to wear English dress, hats and, anything that was English, was banned for me. He was a simple person and to inculcate similar characteristic in me, he had even fixed the price limit for me to purchase dresses, shoes and personal belongings. He had much focus on my character building and discipline and, didn't allow me to visit cinemas. I wasn't also allowed to stay out of home during dark hours.

He was polite in his handling and there was hardly a moment when I saw him angry or annoyed. To express his displeasure on my any action, he mostly used mild expressions and normally uttered these two words: Ahmaqq (foolish) and Bay-waqoof (moron). I was little naughty in my childhood and often moved out barefooted in the courtyard. He always forbade me from doing so. However, my mother was strict and at times subjected me to beating but never let my father to do that! (There was a definite glimpse of smile, fondness and respect in Dr Javed Iqbal eyes while recollecting these particular golden moments).

Dr Allama Iqbal was fond of music. He occasionally asked me to sing his poems to him. A person from 'Hijaz' (a Khush Ilhaan Hijazi), used to frequently visit him. Allama Iqbal would ask him to recite Holy Qur'aan and while he recited, Allama Iqbal used to weep. I was often asked to be present during this by Allama as he advised me to recite Qur'aan like him. He advocated simplicity and felt happy to know that I had slept on floor instead of bed on any day.

On the fateful night before he died at 5 a.m. on 21 April 1938, I went to him at about 10 p.m. His friend, Chaudhry Muhammad Hussain was sitting beside him. His eyesight had been affected by then due to cataract and was unable to even recognize me. As I entered the room, he asked “kaun hey” (Who is there?). I replied “mein Javed hoon” (I am Javed). He laughed and said “Javed baan kar dikhao” (be like Javed), because literal meanings of Javed are 'eternity'. He then asked Chaudhry Hussain to facilitate me to read his book 'Javed Nama' which is addressed to the younger generation of Muslims. This was probably his last advice to me before his sad demise.

Question: Quaid-i-Azam must be a frequent visitor to Allama Iqbal. Do you have any memories of him?

Answer: Meeting Mr. Jinnah was always an honour for me. During 1936, Quaid-i-Azam was due to visit our home. On that day, Allama asked me to be ready by 4 p.m. and also told me to bring an autograph book. He probably wanted to honour the Quaid and give him an impression of being a well known figure among all age groups. After meeting Quaid-i-Azam, I requested him for autograph that he granted. Then he asked me in English, “Do you also write poetry?” My reply was negative and he asked another question, “What are you going to do when you grow up?” I stayed quiet and while laughing he looked at my father and said, “He doesn't answer.” Allama Iqbal replied to him, “He won't answer. He is waiting for you to tell him what he is to do.” Personality of Jinnah left a great impact on me and I always took him as a role model.

Question: Please explain us the views of Allama Iqbal about the nature and type of a separate nation state for the Muslims of the Subcontinent?

Answer: In my opinion, thoughts of a separate state were floated much earlier than Iqbal's address at Allahabad. Sir Syed Ahmed Khan was the first Muslim leader who raised awareness about population divides between Hindus and Muslims. He gave his point of view through these distinct arguments;

• If democratic order is placed in order by British in the Subcontinent, Muslims shall be the one at loss being in minority.

• The situation between both communities can improve, if some formula of power sharing based on equality is evolved and implemented. But he was fearful of its non implementation owing to lack of population balance between the both.

brig javaid 1Iqbal claimed that he understood Sir Syed Ahmed Khan's concept completely. Iqbal went further ahead by suggesting that the areas of Muslim majority be amalgamated as a separate state. Allama suggested and advocated to initiate the movement to separate Sindh from Bombay Presidency and to introduce reforms in Balochistan and NWFP (now KPK).

When the 'Urdu-Hindi' controversy surfaced in Uttar Pradesh (UP) in 1867, where Hindus of Banaras presented a request to their government regarding the replacement of Urdu with Hindi. Sir Syed Ahmed Khan told the then Commissioner, Mr Shakespeare, that these two communities might never survive together because of their differences and owing to the negative attitude of the Hindus.

The attitude of Hindus towards the Muslims was one of the reasons that resulted in demand for a separate homeland, Pakistan. Muslim leadership was always friendly and initially talked of autonomy that later converted into demand of a separate Muslim state. Jinnah's Fourteen Points after the First Round Table Conference were rejected by Moti Lal Nehru (father of Pandit Jawaharlal Nehru). He didn't agree despite efforts by the British as well. Similarly same demands for autonomy were put forth in the Cabinet Mission Plan in 1946 which were accepted by Jinnah but rejected by Nehru. Even Nehru's attitude has of late been criticized by Jaswant Singh in his book, 'Jinnah: India-Partition-Independence' who has held him responsible for a partition that was against the interests of Hindus.

In nutshell, attitude of Hindus was the main reason that compelled our leaders to seriously think for a separate homeland. Quaid's presentation of 'Fourteen Points' and acceptance of the Cabinet Mission Plan bears testimony to the positivity of the then Muslim leadership but Hindus were not ready to accommodate Muslims in any way.

I am often asked a question that what did Muslims achieve through a separate homeland. And I always reply that even at a time when the Subcontinent was one, Hindus were not ready to tolerate and accommodate the demands of the Muslims in any way. Their attitude was likely to even become worst after departure of British.

Question: Do individual and collective interests interpreted in the domain of a modern nation state contradict or conflict with a higher ideology and philosophy that goes beyond these confines? Or in other words, how realpolitik responds to a sublime idealism?

Answer: Iqbal derived his concept of an Islamic democratic state from Meesaq-e-Madina. He wanted Pakistan to be model state for rest of the Muslim world. He neither wanted a secular democracy nor did he think of a theocracy.

Iqbal always thought of a 'Spiritual Democracy'. By spiritual democracy he meant a state which can accommodate and protect people from all religions and sects. As a member of Punjab Legislative Council, Allama Iqbal proposed formulation of a law which was meant to punish people committing “Toheen-e-Baniyan-e-Adiyaan”, means a law to punish anyone who commit blasphemous acts against any religion.

This concept was derived by Iqbal from Meesaq-e-Madina. It was that document in which the Prophet (PBUH) allowed religious freedom to everyone residing in Madina. Iqbal understands it as a Spiritual Democracy and wanted it to be basis of the separate Muslim state. I recently delivered a lecture in Oman on a related theme, 'What is an ideal Islamic democratic state'. I focused my opinions and ideas through the thoughts of Iqbal. Few leaders didn't agree to my point of view but some of them have invited me to discuss this theme further with their scholars. The much debated speech of Quaid-i-Azam delivered on 11 August 1947, which people interpret as his message and desire to establish a secular state, is basically based on Meesaq-e-Madina. Lord Mountbatten, the Last Viceroy of India, once asked Quaid-i-Azam about his idea to govern Pakistan based on the principles of Mughal Emperor Akbar. Jinnah replied him, “No, we have learnt and derived our democratic values from Holy Prophet (PBUH).” He was basically hinting at Meesaq-e-Madina.

Question: Please enlighten us about the concept of 'khudi'? Does it see a Man rising above any material concern and economic interdependence and existing as a self-survivor? How it responds to a present day society immersed in over consumption and gross production net?

Answer: The concept of Khudi is a metaphysical concept. Iqbal placed worth of a human being much above the status that we think ourselves to be at. Iqbal thought that Allah has breathed his soul in humans. The Man through rising from self can reach a sublime position that he becomes a part of eternal reality. The man is submerged in the reality in a way that he is not separated from the Divine Will. Citing example of Masjid-e-Qartaba in the same context, Iqbal believed that it wasn't humanly possible to construct such a masterpiece and thought of some Divine force assisting them. I always believe the same way. Similarly in the case of Hazrat Dawood who sang so well that even birds used to assemble to listen to him which is reflection of Divine manifestation.

Similarly Iqbal emphasized humans to be creative through his book Javed Nama where, in a poem, he delivers a message from Allah to the humans, that anyone who is not creative is a sinner for not having exercised the powers granted by Him. Iqbal emphasized on ‘change, change and change’ concept that brings an end to the jamood (status quo) and results in progress.

Question: Do human 'found truth', philosophy and ideals are limited to a particular time and space? How we see them relevant to changing realities and perceptions?

Answer: Philosophy is kind of an exercise which is related to the reason and consciousness. It is related to ideals and not directly to the everyday life. The thoughts and practical thinking of people like Iqbal does have linkage with some philosophical base. Basically philosophy is a loose term that includes metaphysics as well as ethics or, anything else. Philosophy isn't related to a particular time and space. People who make statues of their thinkers and heroes should actually try to study them and follow them. The process of change should be a regular feature.

Question: Does Allama's advocacy of Ijtihad meant rejection of tradition and to what extent?

Answer: Ijtihad doesn't mean to prevent changes in all matters. No. It means that the issues meriting change must undergo the requisite transformation. It is related to the Mu’amalat (routine affairs of a human life) but not with the Ibadat (religious obligations). The change is important to tackle the emerging realities of time and space. Human journey cannot remain tied to the antiquity for all the times. According to Allama the creativity and change for a better construction is the essence. It is through creativity that Man fulfils Divine manifestation. It is not through blindly following the tradition but through a constructive change commensurate with time and space that Man takes forward the journey according to God's Will. If we look around, there are many Muslim societies that have introduced many changes according to the needs of present times. We have examples of Tunisia, Indonesia etc. For example, Indonesia has brought so many changes in their day-to-day affairs in accordance with changing environments. Hillary Clinton, former US Secretary of State, has on record stated that women enjoy exemplary privileges and status in Indonesia which should be followed by other countries as well. It is through Ijtihad that a Muslim country, Indonesia, has introduced changes in rules other than basic religious obligations.

Question: How can we overcome challenges of intolerance and extremism?

Answer: Extremism has affected our society from every angle. Islam doesn't permit its people to kill others for whatever reasons. Writ of the State must be established and negotiations with these extremists must be made from the position of strength. All segments of the society have to play their role in transforming our society as tolerant and accommodative. We can never progress with the label of an extremist and intolerant society.

Question: How can we achieve national integration?

Answer: There are many ways to achieve it. The language can play a very vital role in this. The Quaid-i-Azam, who himself couldn't speak Urdu properly, declared it as a national language. Iqbal always talked of unity. We need to promote Iqbalian thinking in ourselves. Unfortunately our universities do not have 'Iqbal Chairs' that can help people to understand his vision. Likewise Madrassas should also be affiliated with universities so that concept of unified syllabus can be promoted and unity can be achieved.

30
December

A Dialogue with Syed Anwar Mahmood on 1971 Debacle

Written By: Asif Jehangir Raja

Question: You spent most of your time in Bangladesh before and during 1971. How do you explain the environment of erstwhile East Pakistan in 1971?

Answer: Yes! I spent most part of my early life in East Pakistan and was brought up in that part of the country. I obtained my early education from Cadet College Faujdarhat, located near Chittagong (the institution was built in 1958 under President Ayub Khan). I was an employee of United Bank Limited (UBL) in East Pakistan before taking up my exams of Central Superior Services (CSS). I am a witness to whatever happened in East Pakistan in 1971. I was there till 15th November 1971 before boarding my flight to Karachi to take up my training in the Civil Services Academy. The people of East Pakistan were politically very aware. They were aware of their rights, could never easily be subjugated and were basically pro-Bengali and not pro-Indians. In short, they were for themselves.

The populace of pre-1971 East Pakistan can be categorized in three segments as: 1) A small minority of Hindus who opted to stay in East Pakistan after the partition. They were mostly pro-Indians and were also supported again by a very smaller minority within Muslims. 2) Pro-Pakistan people, and 3) A population that was pro-Bengali but not anti Pakistan. I am not ready to accept the fact that people of East Pakistan were pro-Indians. No! They were never. As I said earlier, they were up for their own cause. However, there is no denying to the fact that India benefitted from the situation and exploited it to her advantage. The environment during 1971 was very tense. Government was almost non-existent after 1st March 1971 and political workers of Awami League had taken over the control of East Pakistan beyond military cantonments whereas the strength of Pakistan Army, at that time, was little too less to handle the situation. People were no longer safe due to the law and order situation which had been created by Mukti Bahini and the Awami League activists.

Question: You were residing with family in East Pakistan in 1971. How do you recall those days?

Answer: It was a very tragic and traumatic time. Situation started getting tense from 1st March 1971 onward. My mother and siblings were in Chittagong whereas my father was in another town and I was in Dhaka. Two days later, on 3rd March, me and one of my cousins travelled to Chittagong via train to bring our family to Dhaka. The news coming from relatives and friends in different parts of the country were not good. Many known people went missing or were injured or killed in the mayhem.

Luckily our family was safe and while we were making efforts for our safe return to Dhaka, my two Bengali juniors of Cadet College days also joined in helping us. We reached back safely and after few days my family flew to Karachi, whereas I and my father stayed back. Later in November 1971, I moved to Karachi to join the Civil Services whereas my father also reached Karachi on two weeks Eid leave and then didn't get a chance to return. Those three weeks till 26th March were very tense and volatile. In sheer anger, any non Bengali or Punjabi (people of all other four provinces were called as Punjabi in East Pakistan) was attacked by Mukti Bahinis and their associates. In this wave, thousands of non Bengalis were killed. I and a friend made it a point to visit the Tejgaon Railway Station near Dhaka every evening to pick up the injured and displaced people. We used to drive them in our own car to the camps or hospitals. This continued until 26th March. By then more strength of Pakistan Army was flown to help and secure people and a crackdown was ordered on the night of 25/26 March.

I shall quote an incident of 1st March 1971. Pakistan was playing a four day cricket match against a Commonwealth XI at the Dhaka stadium. March 1st was the last day of the match. During the lunch break, we moved out to have food from the shops adjacent to the stadium. There was crowd of people at one of the pan shops listening to the radio. All of a sudden I noticed disturbance around that shop followed by slogans. Upon inquiring, it was revealed that Radio Pakistan, in its midday news bulletin, had just announced about President Yahya Khan's decision to postpone the inaugural session of the newly elected National Assembly which was to meet in Dhaka two days later. Due to the size of its population, East Pakistan had more number of seats in the parliament as against the combined seats of the four provinces in West Pakistan. Awami League, that had won majority of seats in the elections from East Pakistan, was in a position to form government in the centre without support of any other political party.

The postponement of National Assembly session was received by East Pakistanis (Bengalis) as a move to rob them of their right to form an elected government. It was a readymade crowd watching the match that moved across to the nearby Purbani Hotel, led by Tufail Ahmed, the President of Awami League's students' wing called 'Chatro League'. Sheikh Mujib Ur Rahman was in the hotel presiding over a session of Executive Council of his party. Tufail went in the hotel and brought out Sheikh Mujib Ur Rahman. He demanded Mujib to declare independence there and then, to hoist the flag of Bangladesh, and to address the crowd.

However, Sheikh Mujib Ur Rahman refused to do all three on 1st March 1971. He waved to the crowd and asked them to calm down. I believe that by asking the elected leader from East Pakistan to form the government at centre would have saved the situation. If we can now allow the unprecedented autonomy to the provinces under the 18th Amendment, why could not we let the party with the largest number of elected seats to form the government in 1971? Ironically, due to 18th Amendment the state has even transferred the responsibility of health and education to the provinces, the subjects of great importance, which are even kept at central level by a developed and large country like USA. Under this very 18th Amendment we have created a situation, where the provinces today are richer and stronger than the federation.

Question: On one side it is said that economic inequality created a sense of deprivation in East Pakistan that led to discontent and separation and on the other hand it has also been observed that government of Pakistan had undertaken massive developmental work in East Pakistan after 1947. What led to the situation that resulted in 1971 debacle?

Answer: Yes! The development did take place in East Pakistan but pace of the progress was much slower than that of West Pakistan. Bengalis always compared it with the progress that took place in West Pakistan and carried the feelings of deprivation. Bengalis believed that the pace of development in East Pakistan was much slower than in the Western Wing. The Indians skillfully exploited this sentiment and sense of deprivation. The country lacked in leadership after Quaid-i-Azam. The decisions were not taken with foresight and prudence. More so, many politically incorrect decisions were taken which provoked negative sentiments within the masses. First and foremost was in 1954 when the elected government of United Front in East Bengal was dissolved. In addition, why was then 'One Unit' created in 1955?

Then name of the province was changed from East Bengal to East Pakistan without any consultation with the leadership and people of the province. The government should have conducted referendum in East Bengal to know the willingness of the local populace which was never done. Recently the NWFP has been renamed as Khyber Pakhtunkhwa with consent of the Provincial Assembly and local people. It prompted Sheikh Mujeeb Ur Rehman to call on the floor of Constituent Assembly that word 'Bengal' was now left only in the 'Bay of Bengal'. In 1969, when the 'One Unit' was undone by the government, it should principally have reverted to the 1955 position which it did not.

Question: In your assessment, what was the role of foreign countries in turning situation against Pakistan in East Pakistan?

Answer: There was full scale involvement of India in East Pakistan. Indians exploited the already politically volatile situation to their benefit and facilitated the disintegration of Pakistan. Mukti Bahinis were trained by India. The Indians did not only train but also physically supported the sabotage and subversion activities inside the country. Indians left no stone unturned to damage Pakistan by exploiting our follies. I think Indians have not yet been able to forget and reconcile with the partition and their hatred towards us appears now and then in different shapes. When your own house is in disorder, enemy will surely take the advantage. The Indian political leadership, its army and its media joined hands to do exactly that and succeeded in dismembering Pakistan.

On 7th September 1965, a day after war broke out, there were huge anti India protests on the roads of Dhaka by students of almost all institutions. Thousands of people participated in these protests and I was also one of them, marching on the roads. This anti Indian sentiment was even multiplied when news of Indian bombardment at a town in East Pakistan spread among people. During that war, the people of Bengal stood fully behind the government of Pakistan.

However, I must say that even years after separating from Pakistan the sentiments against India have not subsided in what is now Bangladesh. Here I will quote few incidents.

I visited Bangladesh in 1985 for the first time after 1971 to witness final match of Asian Cup Hockey Tournament between Pakistan and India. Before start of the match, I went to a shopping mall with the name of Bait ul Mukarram with a friend. I asked the shopkeeper as to who would emerge as victorious from the match and he instantly replied in Bengali, “Amara jeet Bhoo – ”, meaning “we will win”. I was surprised and asked him that Bangladesh wasn’t playing, then whom was he referring to? He said, “Pakistan jeet Bhoo – ”, meaning “Pakistan will win”. So even after 14 years of disintegration, anti India feelings were prevalent. I also want to quote another incident of 1993, when I visited Bangladesh in connection with re-union of my Cadet College. I was taken on a drive-out by an old Bengali friend (a retired Major from Pakistan and later, Bangladesh Army) who used to be my room-mate at Dhaka University, and was later elected as the member of Bangladesh Parliament and had also served as a Minister. While we were driving in the suburbs of Dhaka in the month of January, we came across few units of Bangladesh Army busy in their field training. I cracked a joke with him that all Army exercises and training are carried out with a perception of an enemy, and then whom were they training against. And his instant reply was, “Don’t you know? Of course, it is India”.

Question: It is believed that the complete local population of the East Pakistan did not want to be separated and it was triggered by few. What are your comments at this?

Answer: Yes! It is true. As I said earlier, not all of the people wanted separation. But out of fear of Mukti Bahni, other militants and the prevalent political environment, they remained quiet. But now, as I interact with my friends from Bangladesh, they express great nostalgia for those days once the two Wings were one country and also quietly refer to the unfair deal that they are now being subjected to by their mighty neighbour and especially mention construction of huge dams by India that have dried up Bangladeshi rivers.

Question: Was Government of Pakistan allowed to function by Mukti Bahini after 1st March 1971? What was the situation on ground?

Answer: No. Government of Pakistan wasn't allowed to function after 1st March. Government officials were forced to take orders from Sheikh Mujeeb or party leaders of Awami League. It was a mutiny against the State. Even within Army, Bengali soldiers were provoked by Mukti Bahini to take up arms against Punjabis (West Pakistanis). Army was confined to the cantonments due to their less strength. After arrival of more troops, Army started operations from 25/26th March onward and subsequently, managed to restore peace in major cities and towns. However, it was extremely difficult for the Army to completely check the cross-border movement. The Army troops were less in number whereas they were required to guard a very long porous border with India. The porous border was extremely conducive to a guerrilla like warfare that was fully backed by India. The difficult terrain, forests, rivers, lakes and climate all compounded the difficulties for Pakistan Army. It became extremely difficult to sustain the logistic support. Along with other difficulties, the logistics difficulties compounded by two factors: internally, due to sabotage activities it became extremely difficult to maintain a far stretched army, and, externally Indians denied a direct access between two parts of the country separated by 1000 miles. The PIA had to operate its flights to Dhaka via Sri Lanka. For any army to fight a successful war, the whole hearted support of the local population is very vital. Unfortunately, the fast paced events and the shortsightedness of our leadership was in no way helpful for Pakistan Army which was suddenly faced with hostile local population.

Question: In your opinion why we could not counter Indian propaganda effectively?

Answer: Indians had been working on various fronts for very long to promote their anti Pakistan agenda. Our own mistakes on ground helped Indians achieving their designs against us. The world appeared willing to believe stories of atrocities spun by Indian media. When military operation started against the people who had taken law in their hands, foreign journalists were asked to leave East Pakistan. As a result, they all packed up and camped in Calcutta. They did not have direct access to the information and were dependent on feed back by India which also facilitated in promotion of Indian perspective of this issue at international level and turned international sentiments against us.

Question: In your views, how we should have tackled Indian intrusion and subsequent aggression, and how could we have resolved domestic issues to avoid such a tragedy?

Answer: The best way was to hand over government to Awami League after their land slide victory in elections. There was no harm in having a Prime Minister from East Pakistan if the party had won majority. The interest of Pakistan would have been served better had East Pakistan been allocated more than its share to bridge the gap that existed in the income level of the two Wings. This would have served to create the goodwill among East Pakistanis for the people from West Pakistan. We must remember that domestic unrest paves the way for foreign intrusion. India was clever enough to exploit the situation. Muslims ruled the Subcontinent as a minority for almost eight centuries. Hindus always carry this grudge and it may take centuries to change their mindset.

Even now India is involved in unrest in Balochistan and other areas. But Indian propaganda and media is so strong that negative Indian role is never exposed. Everyone one in the media talks about Mumbai incident and maligns Pakistan, but we have heard very little of the Samjhota Express incident and the terrorism unleashed by Hindu extremists. Indian extremist attitude will grow further in the days to come as is evident from the rise of certain political elements and their brazen hostility towards Muslims living in India and Pakistan. We must have peace with India, but with dignity, honour and on the basis of sovereign equality.

We must remember that our forefathers left their homes, businesses and properties and came to Pakistan for the sake of respect and dignity that was difficult to maintain in a Hindu majority state. Their vision and sacrifices must not be forgotten so easily and so quickly. I fail to understand that why are we shy of exposing the accesses committed by India to the world community? The quest for peace is not a one way street. Both the countries should meet each other halfway.

Question: What lessons we should apply to bring peace in many troubled areas in Pakistan under present circumstances? Any suggestions for national integration and progress of the country.

Answer: To me, the most important factor to achieve national integration and progress is by following true democratic norms in the country. This can only be ensured through formation of democratic and empowered local governments at district and union council levels. Democratic culture will never take roots unless we raise the structure from bottom-up. This system should be made a permanent feature through constitutional amendments. The benefits of provincial autonomy must travel down to the people at the lowest administrative level of the province. We must carryout review of our governance system of last 65 years. The flaws that kept us away from progress must be reviewed in the best interest of the country.

Moreover, I support creation of more provinces on administrative grounds, not on ethnic basis. It shall bring more prosperity in all parts of Pakistan.

23
December

(حنا دلپذیر(مومو

 

اداکار کا کمال یہ ہے کہ آنسو کیریکٹر کی آنکھ سے نہیں بلکہ دیکھنے والے کی آنکھ سے گرنا چاہئے۔

ہر آرٹسٹ کو اپنے مشاہدے کو بڑھانے کے لئے اکیڈمی ضرور جوائن کرنی چاہئے یا پھر ریسرچ کرنی چاہئے۔

کائنات کی تخلیق کا مقصد ہی محبت ہے‘ اﷲ کی تمام مخلوقات سے محبت کریں۔

بچوں‘ بڑوں اور بوڑھوں کے پسندیدہ کردار ’’مو مو‘‘کی باتیں۔

 

ہر صبح ایک آواز میرے کانوں پر دستک دیتی ’’اُٹھو صاحبو!نماز نیند سے بہتر ہے۔ اپنے رب کو راضی کر لو۔‘ ‘ یہ آواز دل پر اثر کرتی اور نیند سے بوجھل آنکھیں ایک دم سے کھل جاتیں۔ اپنے رب کو راضی کرنے کی خواہش بستر سے اٹھا دیتی۔ ہم گھر میں اکثر ذکر کرتے کہ نجانے یہ کون ہے جس کی صدا گلیوں میں گونجتی ہے۔ اس راز کا پردہ میرے والد کی وفات کے بعد اُٹھا۔ جب ان کے ایک دوست ہمارے گھر آئے اور کہنے لگے کہ آج میں اکیلا رہ گیا ہوں۔ ورنہ ہر صبح دلپذیر صاحب اور میں لوگوں کو نماز کے جگانے کے لئے دور دور تک جایا کرتے تھے۔ میری والدہ اکثر والد صاحب سے پوچھتیں کہ نماز تو ساڑھے پانچ بجے ہوتی ہے۔ آپ چار بجے اٹھ کر کہاں چلے جاتے ہیں۔ تو وہ کوئی جواب نہ دیتے تھے۔ میرے والد صاحب خوش گلو تھے۔ وہ اذان دیتے تو جی چاہتا سنتے ہی رہیں۔

حنادل پذیر کی آواز ان کے والد کی محبت سے سرشار تھی۔ مومو کے کردار اور نام سے پہچانی جانے والی حنا دل پذیر کے اصل نام سے شاید اتنے لوگ واقف نہیں‘ لیکن مومو کو ساری دنیا جانتی، پہچانتی اور محبت کرتی ہے۔ فن کی دنیا میں قدم رکھتے ہی کامیابیوں سے ہمکنار ہونے والی شخصیت جن کا نام ڈرامے کی کامیابی کی ضمانت ہے۔ آیئے آج آپ کی ملاقات اعلیٰ تعلیم یافتہ، خوش گفتا ر اوربا وقار حنا دلپذیرسے کرواتے ہیں۔

س۔ آپ کے نام اور کام کو تو سب لوگ جانتے اور پہچانتے ہیں۔ لیکن ہم آپ کے بارے میں جاننا چاہتے ہیں؟

ج۔ میرے والد مرحوم کا تعلق ایبٹ آباد (ہزارہ)سے تھا۔ جبکہ میری والدہ کے آباء واجداد یوپی مراد آباد سے تھے۔ ہم چھ بہنیں ہیں اور ہمارا بھائی کوئی نہیں ہے۔ گھر کا ماحول بہت پر سکون تھا۔ والدین پڑھے لکھے انتہائی دانشمند تھے۔ انہوں نے ہمیں ہر قسم کے حالات میں مطمئن اور پر سکون رہناسکھایا۔ کتابیں پڑھنے کا بہت شوق تھا۔ والد صاحب کی اپنی بہت بڑی لائبریری تھی والدہ کی اپنی۔ ان کی دیکھا دیکھی ہم بہنوں نے بھی شیلفوں میں اپنی پسند کی کتابیں سجا کر اپنی لائبریریاں بنائی ہوئی تھیں۔ ہمارے گھر میں کھلونوں سے زیادہ کتابیں ہوتی تھیں۔ گھر پر میوزک اور مشاعرے کی محفلیں بھی ہوتی تھیں۔ لیکن نماز کا بہت زیادہ اہتمام کیا جاتا۔ بلکہ ہمارے خاندان میں نماز نہ پڑھنے والوں کو بڑی عجیب نظروں سے دیکھا جاتا ہے۔

س۔ آپ نے تعلیم کہاں سے حاصل کی؟

ج۔ میں نے کراچی سے میٹرک کیا۔ میرے والد پہلے PIA میں کام کرتے تھے۔ بعد میں انہوں نے ایمریٹس ایئر لائن جوائن کر لی اور ان کا تبادلہ دبئی میں ہو گیا‘ تو وہاں سکائی لائن کالج سے انٹر کیا۔ کلینیکل سائیکالوجی میں ماسٹرز کیا۔ آج کل میں کوانٹم فزکس میں ماسٹرز کر رہی ہوں۔ یہ میرا پسندیدہ سبجیکٹ ہے۔ سائیکالوجی میں ماسٹرز کرنے کے بعد بڑی کوشش کی کہ مجھے جاب مل جائے۔ لیکن نجانے مجھے جاب کیوں نہیں ملی۔

س۔ شادی کیسے ہوئی پسند کی تھی یا اریجنڈ؟

ج۔ شادی مکمل اریجنڈ تھی۔ انٹر کے بعد میری شادی ہو گئی تھی جو چھ سال چلی۔ پھر وہ ختم ہو گئی تو میں نے اپنی تعلیم مکمل کی۔ میرا چھوٹا سا بیٹا بھی تھا میرے ساتھ۔ اب تو ماشاء اللہ وہ بڑا ہو گیا ہے۔ اس نے میٹرک کا امتحان دیا ہے اور بہت اچھے نمبر لئے ہیں۔ اصل میں قصور میرے شوہر کا بھی نہیں تھا۔ جس نتیجے پر میں پہنچی ہوں کہ میرے سابقہ شوہر کی مینٹل گروتھ ان کی عمر کے مطابق نہیں تھی۔ جب آپ کی مینٹل اپروچ نہ ہو تو آپ سے غلطیاں ہوتی ہیں۔ ان کو خود بھی معلوم نہیں ہوتا کہ ان سے کیا ہو گیا ہے‘ وہ بُرے آدمی نہیں تھے‘ مجھے ان سے کوئی گلہ نہیں ہے۔ انہوں نے مجھے اچھے طریقے سے رکھا۔ ہاں مشکل وقت بھی آئے۔ لیکن میری والدین کی دعائیں تھیں کہ مطمئن رہ کر گزار دیا۔

س۔ ڈرامے کی طرف کس طرح آئیں؟

میں سب سے پہلے سیلوٹ کرتی ہو ں اپنی فوج کو۔ یہ ہیں تو ہم ہیں۔ ہم چین کی نیند سوتے ہیں کیونکہ یہ سرحدوں پر جاگتے ہیں۔ ان کی زندگی بہت مشکل اور پُر خطر ہے۔ اپنی ملک کی عزت و آبرو کے لئے اپنی جان تک قربان کرنے کو تیار رہتے ہیں۔ اندھیری راتوں میں اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر یہ جاگ رہے ہوتے ہیں۔ تاکہ ہم اپنے گھروں میں سکون کی نیند سو سکیں۔ میرے پاس تو کچھ بھی نہیں ہے جو میں جواب میں انہیں دے سکوں۔ سوائے اس کے کہ اے راہِ حق کے شہیدو‘ وفا کی تصویرو تمہیں وطن کی ہوائیں سلا م کہتی ہیں یہی میرے جذبات ہیں۔ ہم اپنی فوج کی جتنی عزت کریں اس پر جتنا مان کریں کم ہے۔ ہم چھ بہنیں ہیں ہمارا کوئی بھائی نہیں ہے۔ تویہ سب فوجی بھائی میرے اپنے بھائی، میرا فخر، میرا مان ہیں۔ ان کے لئے میرے دل سے دعائیں نکلتی ہیں کہ اللہ تعالیٰ ان کو سلامتی دے ان کے حوصلے بلند رکھے۔ سب کے لئے بہت بہت محبت۔ میری دعائیں ان کے

ساتھ ہیں۔

momo2

ج۔ شادی ختم ہونے کے بعد جب میں واپس کراچی آئی تو مجھ پر ایک بچے کی ذمہ داری بھی تھی۔ میرے والدین ان دنوں امریکہ میں تھے۔ لیکن مجھے یہ گوارا نہیں تھا کہ کوئی میری مدد کرے۔ اس کے

لئے مجھے خود کام کرنا تھا۔ میں نے سکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیز ہر جگہ لیکچرر شپ کے لئے اپلائی کیا‘ لیکن مجھے کہیں ملازمت نہ ملی۔ کہیں سے کوئی جواب نہیں آیا۔ لکھنے کا مجھے بچپن سے شوق تھاتو میں نے ایک کہانی لکھی اور وہ دینے کے لئے ’’ہم‘ ‘ ٹی وی کے دفتر گئی۔ ہوا یہ کہ جب میں سکرپٹ دینے گئی تو بڑی مشکل سے آدھا راستہ پیدل چل کر گئی کیونکہ پیسے تو میرے پاس ہوتے نہیں تھے۔ اس دن بارش بھی تھی۔ جب وہاں پہنچی تو پتہ چلا کہ بارش کی وجہ سے زیادہ تر لوگ چھٹی کر چکے تھے۔ میں نے اس طرح سے کچھ کہاکہ بھئی یہ رکھا ہے میرا ڈرامہ، کرنا ہے یا نہیں، جو بھی ہے مجھے ابھی بتا دیں۔ میں اتنی تکلیف نہیں اُٹھا سکتی کہ بار باراتنی دور آؤں۔ تو بجائے کہانی لینے کے فصیح باری خان جنہوں نے ’’برنس روڈ کی نیلوفر ‘ ‘ لکھا تھا‘ کہنے لگے آپ ڈرامے میں کام کریں گی؟ میں نے کہا کہ میں نے تو کبھی ٹی وی پر کام نہیں کیا۔ (البتہ دبئی میں تھیٹر کیا ہواتھا۔ ریڈیو پر آٹھ سال کام کیا تھا۔ ریڈیو ایشیا،دبئی میں لکھنے، پروگرام اور ڈرامے کا مجھے تجربہ تھا۔ ) تو میں نے کہا کہ آپ نے اپنا ڈرامہ فلاپ کرواناہے۔ وہ بولے نہیں بس آپ نے یہ رول کرنا ہے۔ فی الحال ہم آپ کو پندرہ ہزار دیں گے۔ مجھے اپنے بیٹے کی فیس دینی تھی میں نے سوچاکہ کر لیتی ہوں۔ مجھے کس نے دیکھنا ہے۔ وہ ڈرامہ میں نے کیا پھر میں نے جیو کا ڈرامہ کیا ’’میری ادھوری محبت‘ ‘ نورالہدیٰ شاہ کا سکرپٹ تھا۔ اس میں ایک ہندو عورت کا کردار تھا۔ تو میں نے کہا کہ ہندو فیملی کو اتنی صاف اردو نہیں بولنی چاہئے‘ تو میں نے سارا سکرپٹ ہندی میں بدل دیا۔ سیریل’’یہ زندگی ہے‘ ‘ بھی لوگوں کو پسندآیا۔ بہت سارے ٹیلی پلے کئے۔ بہت ساری زندگیاں جینے میں بہت مزہ آتاہے۔

س۔ پہلے ڈرامے کا تجربہ کیسا رہا؟

ج۔ مجھے تو پہلے ڈرامے میں بھی یہی خوف تھا کہ میں نہیں کر پاؤں گی اور اب بھی یہ ہی حال ہوتا ہے۔ پہلی مرتبہ ہی اتنے بڑے بڑے لوگ میرے سامنے تھے۔ عابد علی جیسے بڑے انسان کے آگے اداکاری کرنا بہت مشکل تھا۔ مجھے تو ٹینشن سے بخارہی ہو گیا۔ ڈائیلاگ یاد نہیں ہو رہے تھے۔ بہت سے لوگوں نے کہا کہ یہ کس کو کاسٹ کر لیا ہے۔ اس کو ڈائیلاگ ہی یاد نہیں ہو رہے۔ خیر میں ڈرامہ کر کے آگئی اور جب یہ آن ایئر ہوا تو اگلے دن میرے فون کی گھنٹی رُک ہی نہیں رہی تھی۔

ہم امریکہ شو کرنے کے لئے جا رہے تھے۔ میں نے دیکھاکہ سب نے اپنے پاسپورٹ اپنی ہتھیلیوں میں اس طرح پکڑے تھے کہ وہ نظر نہ آئے مگر مجھے لگا کہ یہ ہی میری پہچان ہے۔ مجھے خوشی تھی کہ میں پاکستانی ہوں اور میرے ہاتھ میں ہرے رنگ کا پاسپورٹ ہے۔ وہاں جا کر شو کیا تو لوگوں کی اتنی محبت ملی کہ بیان نہیں کر سکتی اور وہ بچے جو اردو نہیں جانتے تھے وہ چیخ رہے تھے مومو آنٹی آئی لَوّْ یو۔ تومجھے اپنے دل کے اطمینان پر فخر ہوا۔

س۔ مومو کا کردار کیسے شروع ہوا؟

ج۔ بلبلے کی 25قسطیں چل چکی تھیں۔ چھبیسویں قسط میں مجھے نبیل کا فون آیا کہ آپ نے ایک قسط کرنی ہے۔ میری ماں کا کریکٹر ہے جو فیصل آباد سے آتی ہے۔ میرے ذہن میں ایک کیریکٹر ابھرا کہ ماں کو ایسا ہونا چاہئے جو بہت معصوم، سیدھی اوربیوقوف عورت ہو۔ جس کی اپنی سمارٹنس نہ ہو۔ پھر میں نے اس کا حلیہ ڈیزائن کیا۔ ایسا چشمہ منگوایا جس میں آنکھیں بڑی بڑی نظر آئیں۔ جب چشمہmomo3 لگایا تو مجھے کچھ نظر ہی نہ آیا۔ کبھی زمین قریب نظر آتی تھی اور کبھی کوئی گڑھا نظر آتا تھا۔ گرنے سے بچنے کے لئے میں پاؤں گھسیٹ کر چلتی تھی تو آٹومیٹیکلی وہ چال بن گئی جو بے حد پسند کی گئی۔ یہ انسپائیریشن میں نے ’’فائینڈنگ نیمو‘ ‘ کارٹون فلم میں ایک کیریکٹرسے لی تھی جو شارک کے منہ کے سامنے کھڑے ہوکر کہتی تھی ’’میں نے آپ کو کہیں دیکھا ہے‘ ‘ مجھے یہ بات بہت اچھی لگتی تھی۔ تو مومو بھی ایک ایسا کیریکٹر بن گیا‘ جسے ڈرخوف ہے ہی نہیں۔ جو اللہ توکل پر چلتی ہے۔ بعض اوقات میں نے کنگھی بھی نہیں کی ہوتی۔ سر پر دوپٹہ رکھا‘ لپ سٹک لگائی اور ڈرامہ کر دیا۔ اس سے مجھے فائدہ بہت ہوتا ہے کہ میرا وقت بچ جاتا ہے۔ لوگوں اور بچوں نے خاص طور پر اسے پسند کیا۔

ایک مرتبہ تھیلسیمیا کے مریض بچوں سے ملنے کے لئے مجھے بلایا گیا۔ ڈاکٹروں نے مجھے بتایا کہ ہم نے ان بچوں کو ڈرامہ بلبلے دکھایااور بچے خوب ہنسے‘ اس کے بعد ان کا بلڈ ٹیسٹ لیا گیا تو پتہ چلا ان کے ریڈ بلڈ سیلز(RVCs) کی گروتھ ہونا شروع ہو گئی ہے۔ تو میں اپنے اندر ہی سجدے میں گر گئی کہ میرے کام سے لوگ خوش ہوتے ہیں۔ یہ اللہ کی مہربانی ہے۔

س۔ کیا شاعری کی طرح اداکاری کا بھی نزول ہوتا ہے؟

ج۔ کچھ ایسا ہی لگتا ہے۔ میں نے قدوسی صاحب کی بیوہ کیا۔ وہ بہت مشکل ڈرامہ تھا۔ اس کے سب گیٹ اپ اور پروفائل ڈیزائننگ میں نے خود کی۔ میرے پاس کوئی گیٹ آپ آرٹسٹ نہیں ہوتا۔ پر فارمنگ آرٹ یا کوئی بھی کری ایشن یا انوویشن ایسی چیز ہے جو ہمارے وکیبلری میں نہیں ہوتی۔ اس کا نزول ہوتا ہے تو پھر لوگ کہتے ہیں کہ یہ کوئی ایجاد ہے۔ کوئی نئی بات ہے۔

س۔ ڈرامہ سائن کرتے وقت کیا چیز دیکھتی ہیں؟

ج۔ کہانیاں تو سب ایک جیسی ہوتی ہیں۔ میرے لئے اہم بات یہ ہے کہ سکرپٹ کس طرح سے لکھا گیاہے جو بھی سٹوری آتی ہے ایسا نہیں ہوتا کہ ہم نے اس کو پہلے کبھی سنا نہ ہو۔ لیکن اپنا اپنا اسلوب، اپنا طرزِ تحریر ہوتا ہے۔ جو بات کو ایک نیا رنگ دیتا ہے۔ ہمارے پاس رائٹرز کی کمی ہے۔ ایک زمانہ تھا پی ٹی وی کے دور میں بہت اچھے رائٹرز ہوا کرتے تھے۔ اب تو بہت کم لوگ ہیں۔ میں سکرپٹ پر سمجھوتا نہیں کر سکتی۔ ورنہ میرا تو ایک دن بھی فارغ نہ گزرے۔

س۔ اداکاری اور نخرہ لازم و ملزوم ہے۔ آپ بھی نخرے کرتی ہیں؟

ج۔ نہیں۔ اگر نخرہ کریں گے پھر اداکاری نہیں ہو سکتی۔ اس شعبے میں اپنے آپ کو مٹانا پڑتا ہے اور جب اپنے آپ کو مٹا دیتے ہیں تو پھر نخرے بھی چلے جاتے ہیں۔ اگر آپ اندر سے مٹے ہوئے نہ ہوں تو دنیا آپ کو مٹا دیتی ہے۔

س۔ کہا جاتا ہے کہ اس فیلڈ میں پیسہ بہت ہے،کیا واقعی ایسا ہے؟

ج۔ جی ہاں، پیسہ بہت ہے۔ لیکن اس کی خاص بات یہ ہے کہ جب کسی کوپیسے کی حرص ہوتی ہے‘ پیسہ اس سے بھاگ جاتا ہے۔ یہ بڑی negative energy ہے۔ ورنہ تو ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ گاڑی سے پیٹرول اور کچن میں سے آٹا کبھی ختم نہ ہو۔ کیونکہ رزق کا وعدہ تو اللہ نے کیا ہوا ہے۔ مگر ہمارایہ خوف کہ آٹا اور پیٹرول ختم نہ ہو جائیں‘ اس کو ختم کر دیتا ہے اور جو اس کے پیچھے نہیں بھاگتے ان کے مقدر کا لکھا ان کے پیچھے آتا ہے۔ <ْ/p>

س۔ آپ کا ہر کردار سپر ہٹ ہوتا ہے ؟کیا اچھی اداکاری کے لئے مشاہدہ اہمیت رکھتا ہے؟

ج۔ اصل میں ہر کردار کی ڈیمانڈ ہوتی ہے۔ کیونکہ میں نے کیریکٹر بیسڈ ڈرامے زیادہ کئے ہیں اور میری کوشش ہوتی ہے کہ اس میں ایک پوائنٹ کی بھی کمی نہ رہے۔ اگر میں گاؤں کی عورت بنی ہوں اور میں نے ہاتھوں اور ناخنوں پر فرینچ مینی کیور کیا ہوا ہے تو وہ مجھے اندر سے کھا جائے گا۔ ایک عورت چا ہے وہ کچھ بھی ہو ‘ سبزی یا کھلونے بیچنے والی‘ اس کو کیسا ہونا چاہئے‘ کون سا وقت اس پر کیسا گزرا ہوگا، کیاکیا اس کے دل پر گزری ہو گی‘ کس چیز کو اس نے کیسا محسوس کیا ہو گا‘ یہ سوچنے میں بڑا وقت لگتا ہے۔ جوچیز جیسی ہو اس کو ویسا ہی لگناچاہئے۔ ہم چیزوں کو بہت خوبصورت بھی کر سکتے ہیں۔ لیکن مجھے زیادہ اچھا لگتا ہے کہ چیزیں اپنے اصل کی طرح ہوں۔ ڈرامہ مٹھو اور آپا میں مٹھو کے کیریکٹر کے لئے مجھے دس جوڑے دیئے گئے۔ میں نے کہا کہ مٹھو ایک غریب عورت ہے۔ جس کوبھائی نے اپنے گھر میں رکھا ہوا ہے۔ اس کاکوئی ذریعہِ آمدن نہیں ہے۔ عید کے عید بھائی جوڑا بنا دیتا ہو گا۔ میں نے چار جوڑے رکھ کر باقی واپس کر دیئے۔

س۔ کیا ٹریننگ سے اداکاری سکھائی جا سکتی ہے؟

ج۔ نہیں، اداکاری سکھائی نہیں جا سکتی۔ یہ ٹیلنٹ یا تو ہوتاہے یا نہیں ہوتا۔ ہا ں جس میں ہو اس کو اس کی ایتھیکس(ethics) اور کنٹرول سکھایا جا سکتا ہے۔ اگرآپ کوئی بہت مظلوم کردار ادا کر رہے ہوں جس پر بہت ظلم ہو رہا ہے اداکار کا کمال یہ ہے کہ آنسو کیریکٹر کی آنکھ سے نہیں بلکہ دیکھنے والے کی آنکھ سے گرنا چاہئے۔ ہر آرٹسٹ کو اپنے مشاہدے کو بڑھانے کے لئے اکیڈمی ضرورجوائن کرنی چاہئے یا پھر ریسرچ کرنی چاہئے۔

س۔ زندگی کا وہ لمحہ جب خود پر فخر محسوس ہوا ہو؟

ج۔ ہم امریکہ شو کرنے کے لئے جا رہے تھے۔ میں نے دیکھاکہ سب نے اپنے پاسپورٹ اپنی ہتھیلیوں میں اس طرح پکڑے تھے کہ وہ نظر نہ آئے مگر مجھے لگا کہ یہ ہی میری پہچان ہے۔ مجھے خوشی تھی کہ میں پاکستانی ہوں اور میرے ہاتھ میں ہرے رنگ کا پاسپورٹ ہے۔ وہاں جا کر شو کیا تو لوگوں کی اتنی محبت ملی کہ بیان نہیں کر سکتی اور وہ بچے جو اردو نہیں جانتے تھے وہ چیخ رہے تھے مومو آنٹی آئی لَوّْ یو۔ تومجھے اپنے دل کے اطمینان پر فخر ہوا۔

س۔ زندگی کا یادگار واقعہ؟

ج۔ اسلام آباد اور کراچی کے ٹائم میں تھوڑا فرق ہے۔ ایک دفعہ میں اسلام آباد سے کراچی جارہی تھی۔ میں اپنے ٹائم کے حساب سے کاؤنٹر پر پہنچی تووہاں موجود خاتون بولیں کہ پلین توچل پڑا ہے آپ لیٹ ہو گئی ہیں۔ اتنے میں ایک صاحب دوڑے دوڑے آئے کہ ’’مومو اپنا بورڈنگ کارڈدیجئے جلدی سے‘ ‘ پھر میں نے دیکھا کہ جہاز واپس مڑا، سیڑھی لگی اور جب میں جہاز میں گئی تو کیپٹن نے اعلان کیا کہ ’’اور ہمارے ساتھ موجود ہیں مومو۔ ویلکم مومو‘ ‘ ۔ لوگوں نے تالیاں بجائیںیہ سب ان کی محبت ہے۔ اسی طرح ایدھی صاحب کے ریٹائرڈ ہوم میں ہم کچھ سین کرنے کے لئے گئے تو وہاں موجود ہوش و حواس سے بیگانہ خواتین مومو ، مومو کہہ کر مجھ سے لپٹ گئیں۔

س۔ آپ کی کامیابی کا راز ؟

ج۔ صبر،قناعت اور خوش رہنا۔ مجھے لگتا ہے کہ یہ سب آپ لوگوں کی دعا ئیں ہیں۔ میری کوشش ہوتی ہے کہ نماز بر وقت ادا کروں مگر ہاں یہ ضرور ہے کہ کوشش کرتی ہوں کہ میرا قلب ہر وقت میرے رب کی طرف رہے۔ اللہ کی قدرت لامحدود ہے جو اس نے دیا میں اس پر خدا کا شکر ادا کرتی ہوں اور جو نہیں ملتا اس کے لئے یہ سوچ کر کہ یہ میرے لئے بہتر نہیں ہوگا یہ وہی جانتا ہے۔ اس کے لئے بھی خدا کی شکر گزار رہتی ہوں۔

س۔ فلموں میں کام کرنے کا ارادہ ہے؟

ج۔ ارادہ تو نہیں ہے۔ لیکن اگر کوئی پسند کا سکرپٹ ملا تو کر بھی لوں گی۔

س۔ ہر اداکارآپ کے ساتھ کام کرنا چاہتا ہے۔ آپ کس کے ساتھ کرنا چاہتی ہیں؟

ج۔ مجھے ہمیشہ بہت اچھے لوگ ملے ہیں۔ عظمیٰ گیلانی بہت پیاری لگتی ہیں‘ ان کی ادا کاری میں بہت ڈیپتھ ہے‘ ان کے ساتھ کام کرنے کو جی چاہتا ہے۔ ہمارے ہاں بہت اچھے اورٹیلنٹڈ لوگ ہیں۔ اگر ان کو اچھے سکرپٹ مل جائیں تو بہت اچھا کام کریں۔

س۔ پسندید اداکار

ج۔ انتھونی کوئین کی ادا کاری بہت پسند ہے۔ وہ اللہ کے بہت نوازے ہوئے انسان لگتے ہیں۔

س۔ کتنے ملکوں کی سیر کی؟

ج۔ بہت زیادہ۔ ٹریولنگ کا بہت شوق ہے۔ بے تحاشہ جگہوں پر گئی ہوں۔ کسی بھی ملک میں جا کر میری خواہش ہوتی ہے کہ میں سب سے پہلے وہاں کے میوزیم دیکھوں۔ اس کے بعد میں کوشش کرتی ہوں کہ ان کی گلی محلے کی زندگی کا مشاہدہ کروں۔ مجھے تفریح گاہوں میں جانے کی خواہش نہیں ہوتی۔ ترکی بہت پسند ہے۔ پاکستان کا مقابلہ کسی ملک سے نہیں کر پاتی۔ کیونکہ جہاں بھی جاؤں دس پندرہ دن بعد بے چین ہوجاتی ہوں کہ اپنے ملک واپس جاؤں۔

س۔ پسندیدہ رائٹر؟

ج۔ قدرت اللہ شہاب کا ’’شہاب نامہ‘ ‘ بہت پسند ہے۔ اشفاق احمد ،بانو آپا ،ڈپٹی نذیراحمد، عصمت چغتائی اور منٹو سب بہت با کمال ہیں‘ سب کی کتابیں پڑھتی ہوں۔

س۔ شعروشاعری سے دلچسپی؟

ج۔ شاعری بہت پسند ہے۔ غالب پسندیدہ شاعر ہیں۔ ان جیسا تو کوئی ہے ہی نہیں۔

س۔ لوگوں کو ہنسانے والی خود کب ہنستی ہے؟

ج۔ آرام سے، چھوٹی چھوٹی باتوں پر، بہت آسانی سے۔

س۔ زندگی کا دکھ؟

ج۔ کوئی نہیں۔ ہاں یہ خیال ضرور آتا ہے۔ کہ والد اگر زندہ ہوتے تو ان کی خدمت کرتی۔

س۔ مستقبل کے ارادے؟

ج۔ جو ابھی آیا نہیں اس کے بارے میں کیا کہوں۔ یہی ایک لمحہ زندگی ہے جو میرے پاس ہے وہی اچھا ہے۔

س۔ زندگی میں محبت کی؟

ج۔ سب سے کی۔ محبت بہت ضروری ہے۔ کائنات کی تخلیق کا مقصد ہی محبت ہے۔ اللہ کی تمام مخلوقات سے محبت۔

س۔ آج کل ہمارے اداکار اینکر پرسن بن کر بھی پروگرام کر رہے ہیں۔ آپ کا بھی ایسا کوئی ارادہ؟

ج۔ اگر ایساکچھ ہو ا تو ضرور کروں گی‘ شایدکچھ ٹاک شو کروں۔

س۔ ملکی صورتِ حال کو بہتر بنانے کے لئے کیا کرنا چاہئے؟

ج۔ ہمیں باہمی اتفاق کی ضرورت ہے۔ یہ جو گڑ بڑ پھیلی ہوئی ہے۔ سب ایک دوسرے کو بُرا بھلا کہتے ہیں۔ مجھے اس سے اختلاف ہے۔ جب ہر کوئی یہ دعویٰ کرتا ہے کہ ہمارا مقصد پاکستان کی بقا ہے تو آپس میں لڑتے کیوں ہیں۔

س۔ فوجی بھائیوں کے نام کوئی پیغام؟

ج۔ میں سب سے پہلے سیلوٹ کرتی ہو ں اپنی فوج کو۔ یہ ہیں تو ہم ہیں۔ ہم چین کی نیند سوتے ہیں کیونکہ یہ سرحدوں پر جاگتے ہیں۔ ان کی زندگی بہت مشکل اور پُر خطر ہے۔ اپنی ملک کی عزت و آبرو کے لئے اپنی جان تک قربان کرنے کو تیار رہتے ہیں۔ اندھیری راتوں میں اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر یہ جاگ رہے ہوتے ہیں۔ تاکہ ہم اپنے گھروں میں سکون کی نیند سو سکیں۔ میرے پاس تو کچھ بھی نہیں ہے جو میں جواب میں انہیں دے سکوں۔ سوائے اس کے کہ اے راہِ حق کے شہیدو‘ وفا کی تصویرو تمہیں وطن کی ہوائیں سلا م کہتی ہیں

یہی میرے جذبات ہیں۔ ہم اپنی فوج کی جتنی عزت کریں اس پر جتنا مان کریں کم ہے۔ ہم چھ بہنیں ہیں ہمارا کوئی بھائی نہیں ہے۔ تویہ سب فوجی بھائی میرے اپنے بھائی، میرا فخر، میرا مان ہیں۔ ان کے لئے میرے دل سے دعائیں نکلتی ہیں کہ اللہ تعالیٰ ان کو سلامتی دے ان کے حوصلے بلند رکھے۔ سب کے لئے بہت بہت محبت۔ میری دعائیں ان کے ساتھ ہیں۔

 

15
December

یوسف کمال سے شکیل تک

تحریر: خدیجہ محمود

ویسے تو دیو مالائی کہانیوں کو انسانی تخیل کی اختراع سمجھا جاتا ہے۔ لیکن کچھ لوگوں کی شخصیت ایسی ہوتی ہے کہ ان کو دیکھ کر، ان سے مل کر یوں محسوس ہوتا ہے کہ دیومالائی کہانیوں کے کسی کردار نے حقیقت کا روپ لے لیا ہے اور انہیں اس بات کا ادراک ہی نہیں ہوتا کہ قدرت نے ان کو کتنے حسین رنگ اور کتنے دلکش روپ سے نوازا ہے۔ میں بات کر رہی ہوں اداکار شکیل کی جن کا اصل نام یوسف کمال ہے۔ یوسف کمال سے شکیل تک کے سفر کی روداد ہلال کے قارئین تک پہنچانے کے لئے ہم نے اُن سے جو گفتگو کی وہ پیش خدمت ہے۔

 

intyousafkamal.jpgسوال: شکیل ہمیں اپنے اب تک کے سفر کے حوالے سے کچھ بتائیے؟
جواب: میرا پیدائشی نام یوسف کمال ہے۔ جب شوبز میں آیا تو اﷲ بخشے میرے استاد یوسف صاحب جنہوں نے مجھے فلموں میں متعارف کروایا تھا انہوں نے مجھے یہ نام دیا جس سے آپ سب مجھے جانتے ہیں۔ دنیا مجھے شکیل کے نام سے جانتی ہے ماسوائے میرے گھر والوں کے۔ پیدائش میری بھوپال کی ہے۔ آبائی وطن میرا لکھنؤ ہے۔ والدہ کی طرف سے میں آدھا پٹھان ہوں۔ ننھیال کا بتاتا چلوں کہ میرے چارماموں ہیں اور سب کے سب فوجی، اس کے بعد ان کی اولاد وہ بھی فوج میں ہے۔ تو میرے خانوادے کا ایک بڑا حصہ فوج سے تعلق رکھتا ہے۔ میرے نانا جان کا تعلق بھوپال سے تھا۔ ایک خاص عرصے کے بعد وہ بھوپال کے
Army Chief
ہو گئے تھے۔ اس زمانے میں اس عہدے پر
Brigadier General
رینک کے افسر کو فائز کیاجاتا تھا۔کہا جاتا تھا میرے نانا بریگیڈیئر جنرل عبدالقیوم خان عرف صولت تھے،آج بھی بھوپال میں میراآبائی مکان صولت منزل آباد ہے۔ میرے تایا بھی فوج میں میجر تھے۔ شادی ہوئی تو وہ بھی فوجی خاندان میں ہوئی۔ میری بیوی ایک فوجی کی intyousafkamal1.jpgبیٹی اور ایک شہید کی بہن ہیں۔ 1952 میں ہم ہجرت کر کے پاکستان آئے۔ اس کے بعد سے اب تک سارا وقت کراچی میں گزارا۔ یہیں ابتدائی تعلیم حاصل کی اور پھر اس پیشے سے وابستہ ہو گیا۔ ابتدا ریڈیو پاکستان میں بچوں کے پروگرام سے کی۔ اس کے بعد پھر تھیٹر۔ ریڈیو میں میرے استاد مشہور کالم نگار اور ڈرامہ نگار مرحوم نصراﷲ خان صاحب تھے۔ میں بہت خوش قسمت رہا ہوں کہ مجھے زندگی کے ہر موڑ پر بہترین لوگ ملے۔ اساتذہ، دوست سبھی بہت قابل ملے۔ یہ بھی اﷲ کا بڑا کرم ہے کہ کالج لائف کے بعد تشہیر کے شعبے سے بھی وابستہ رہا۔ ریڈیو اور تھیٹر میں اپنی صلاحیتوں کو آزمانے کے بعد فلم میں قدم رکھا۔ میں نے فلم میں کام کرنے سے پہلے اپنے استاد کے سامنے یہ شرط رکھی تھی کہ میں اپنی جاب نہیں چھوڑوں گا۔ کیونکہ مجھے نہیں پتا تھا کہ میں فلم میں کامیاب ہوتا ہوں کہ نہیں لہٰذ اس وقت میری بات مان لی گئی۔ فلم کا نام تھا ’’ہونہار‘‘ اس فلم میں میرا کردار بگڑے بھائی کا تھا بڑا بھائی پڑھ لکھ کر اعلیٰ عہدے پر فائز ہو جاتا ہے۔ اس کے بعد میں ٹیلی ویژن میں آیا اور اب تک جو میری شناخت ہوئی ہے وہ ٹی وی کی وجہ سے ہوئی ہے۔ کیونکہ شوبزکے اندر کئی شعبے ہیں ریڈیو، تھیٹر، فلم، ٹی وی، ماڈلنگ وغیرہ۔اﷲ تعالیٰ نے بہت عزت سے نوازا ہے۔ اس تمام سفر میں لوگوں سے بہت محبت اورعزت ملی۔ان پانچ دہائیوں میں جو میں نے کام کئے اس کے صلے میں حکومت پاکستان سے مجھے تمغہ حسن کارکردگی، اس کے بعد لائف ٹائم، اس کے بعد ستارۂ امتیاز اور اب اسی سال صدر پاکستان نے اعترف فن کا ایوارڈ دیا۔ یہ سب اﷲ کا کرم ہی تو ہے زندگی بہت اطمینان سے گزر رہی ہے۔


سوال: یہ تو پروفیشنل زندگی کی بات ہو گئی۔ ذاتی زندگی کے بارے میں بھی قارئین ہلال کو بتائیے۔
جواب: میرے دو بچے ہیں حرا اور حیدر، دونوں ماشاء ﷲ سے تعلیم یافتہ ہیں۔ شادیاں ہو گئی ہیں۔ اب صرف اتنی خواہش ہے کہ جتنی زندگی باقی رہ گئی ہے اس میں اﷲ کو راضی کروں۔ اور اﷲ کو راضی کرنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ اس کی خلق کو راضی کرو۔ ویسے میں اپنے منہ میاں مٹھو نہیں بننا چاہتا۔ لیکن گاہے بگاہے میں فلاحی کاموں میں حصہ لیتا رہا ہوں۔ اس ملک پر جب بھی افتاد پڑی اپنے تئیں، اپنی بساط کے مطابق میں نے ہاتھ پیر مارے۔ جب 2005 میں زلزلہ آیا تو اس وقت بھی اپنی پاک فوج کے تعاون سے ہی میں مختلف علاقوں میں گیا۔
کوئی میری اس بات سے اتفاق کرے یا نہ کرے مجھے اس کی کوئی پروا بھی نہیں ہے کہ اگر اس ملک میں کوئی ادارہ ہے جو جو ادارہ کہلانے کے لائق ہے تو وہ فوج ہے۔ یہ سب میں اپنے ذاتی تجربات کی بناء پر ہی کہہ رہا ہوں ہماری فوج میں لوگ بہت پروفیشنل ہیں ذہنی طور پر بھی اور عملی طور پر بھی۔ زبان کے بھی پکے اور عمل کے بھی۔ اور یہ سب میں نے آزمایا ہوا ہے۔ میرا فوج سے لگاؤ اور ان کی جانب جھکاؤ اسی وجہ سے ہے۔

intyousafkamal2.jpgسوال: آپ کا اتنا لگاؤ اور جھکاؤ فوج کی طرف ہے تو آپ نے خود فوج کیوں نہیں جوائن کی۔
جواب: یہ کوئی ضروری تو نہیں کہ اگر میں نے فوج جوائن نہیں کی تو میرالگاؤ اور جھکاؤ فوج کی جانب نہیں ہو سکتا۔ میرے سسر کی بڑی خواہش تھی کہ ان کے تینوں بیٹے فوج میں جائیں کیونکہ وہ خود فوجی تھے بڑا بیٹا فوج میں بھیج دیا۔ جو 22سال کی عمر میں 71کی جنگ میں شہید ہو گیا۔ اس کے باوجود ان کا اصرار تھا کہ وہ دوسرے بیٹے کو بھی فوج میں بھیجیں گے اور انہوں نے دوسرے بیٹے کو بھی بھیج دیا۔ وہ کور آف سگنلز میں میجر تھے کہ بیماری کی وجہ سے اﷲ کو پیارے ہو گئے۔ میرے سسر بلوچ رجمنٹ کے سب سے سینئر آفیسر تھے۔ ان کا 92 سال کی عمر میں انتقال ہوا۔ بلوچ رجمنٹ نے ان کو ان کے انتقال سے کچھ عرصہ قبل بلایا تھا۔ اور ان کے لئے بہت بڑی تقریب منعقد کی گئی تھی۔ فوج اپنے سینئرز کو بے تحاشا عزت دیتی ہے اور پھر جب ان کا انتقال ہوا تو آخری رسومات کا سارا انتظام بلوچ رجمنٹ نے سنبھالا اور ہمیں کچھ بھی نہیں کرنا پڑا تھا۔ انہوں نے خود اپنے فوجی کو جس شان سے اﷲ کے سپرد کیا وہ شاید الفاظ میں بیان نہ ہو پائے۔


سوال: آپ اپنے شعبے سے کسی حد تک مطمئن ہیں جس سے آپ وابستہ ہیں؟
جواب: اپنے پروفیشن میں کام کرتے ہوئے مجھے ایک اندرونی اطمینان سا ہوتا ہے۔ انگریزی میں کہتے ہیں
Inner Satisfaction
جو آپ کے اندر تسکین کی خواہش ہوتی ہے تو مجھے بھی تسکین کا احساس ہوتا ہے کیونکہ میں جو کام کرتاہوں دل سے کرتا ہوں۔ اگر آپ کسی کام میں انوالو نہ ہوں اور اُس میں آپ کا جنون شامل نہ ہو تو بات نہیں بنتی۔


سوال: ایک ڈرامہ ’’اس گلی نہ جاویں‘‘ پرفارم کرتے ہوئے آپ پر ایک کیفیت طاری ہو گئی تھی ایسے لگتا تھا جیسے آپ اس کردار میں کھو گئے ہوں۔ ایسا کوئی اور کردار بھی ہے جس کو کرتے ہوئے آپ اسی طرح کھو گئے ہوں۔؟
جواب: جب پی ٹی وی واحد چینل ہوا کرتا تھا تو اس وقت کم و بیش میں نے جتنے بھی کھیل کئے ان میں سے کوئی بھی کھیل ایسا نہیں کہوں گا کہ جبراً کیا ہو۔ جو کردار بھی کیا دل سے کیا اور اﷲ کا ہمیشہ مجھ پر یہی کرم رہا ہے کہ مجھے ہمیشہ بہترین رائٹر اور بہترین ڈائریکٹر کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا ہے۔ یہ میری خوش قسمتی رہی ہے کہ مجھے ہمیشہ اچھے کردار ملے۔ اتنے عرصے میں کبھی یکسانیت کا شکار نہیں ہوا مجھ پر ایک خاص قسم کی چھاپ نہیں لگی۔

intyousafkamal3.jpg
سوال: چھاپ تو نہیں لیکن پرنس چارمنگ، چاکلیٹی ہیرو اس طرح کے القابات تو ہمیشہ ہی آپ کو ملے ہیں۔
جواب: ہاں چھاپ لگی بھی تھی کہہ سکتی ہو۔ جب میں نے کام کی ابتدا کی تھی یعنی ٹی وی اور فلموں میں آیا تو اس وقت عمر کے حساب سے ہیرو کے ہی زمرے میں آتے تھے اس لئے میں نے ہمیشہ ہیرو کا ہی رول کیا۔ اس کے بعد جب مستقل ہی یہ رول ملے تو میں تنگ آ گیا جو ابھی آپ سے کہا کہ جو القابات تھے، چاکلیٹی ہیرو اور دوسرے القابات تو اس زمانے میں ایک چینل پی ٹی وی ہی تھا اور پرنٹ میڈیا بہت
Strong
تھا انہوں نے مجھ پر یہ لیبل چسپاں کرنا شروع کر دیئے ۔ گلیمربوائے ، رومانٹک پرنس چارمنگ، میں کہتا تھا کہ بھائی میں ایک سنجیدہ ایکٹر ہوں اﷲ تعالیٰ نے یہ کرم کر دیا کہ ان دنوں اﷲبخشے شیریں عظیم کو وہ حسینہ معین کا ایک سیریل کر رہی تھیں، ’انکل عرفی‘ اس میں انہوں نے مجھے کاسٹ کر لیا۔


سوال: سب سے پہلا کھیل کون سا تھا، وہاں سے شروع کرتے ہیں۔
جواب: سب سے پہلا ٹی وی پر میرا کھیل محترمہ حسینہ معین کا لکھا ہوا تھا، ’’نیا راستہ‘‘۔ نیلوفر عباسی جو اس زمانے میں نیلوفر علیم ہوتی تھیں، وہ میرے ساتھ رول میں تھیں پھر حسینہ کاہی لکھا ہوا’’تمہیں عید مبارک‘‘ کیا پھر ’شہزوری‘ کیا وہ بھی حسینہ معین کا ہی لکھا ہوا اور ان تینوں میں میرے ساتھ نیلوفر عباسی ہی تھیں۔ میرا اور حسینہ کا ٹی وی کا سفر ایک ساتھ ہی شروع ہوا۔ ان کا سب سے پہلا کھیل میں نے کیا۔ سب سے پہلا سیریل بھی میں نے کیا اور بحیثیت اداکار ان کے لکھے ہوئے سب سے زیادہ کھیل میں نے ہی کئے تو جب انکل عرفی کی باری آئی تو اس زمانے میں میری عمر انکل والی تو تھی ہی نہیں۔ مگر میں داد دیتا ہوں ان لوگوں کو کہ ان کی سوچ تھی کہ ایک ایسے آدمی کو ہم نے لے کر آنا ہے جو انکل بھی لگے اور اس میں ایک خاص قسم کی رومانیت بھی ہونی چاہئے۔ جب مجھ سے یہ کردار ڈسکس کیا گیا تو میں نے نام تجویز کئے کہ محمود علی بھائی ہیں۔ قوی خان صاحب ہیں تو شیریں عظیم نے مجھے کہا کہ شکیل اگر آپ نے یہ تجاویز دینی ہیں توآپ باہر چلے جائیں۔ ہم سوچ لیتے ہیں۔ آپ جا سکتے ہیں۔ میں باہر چلا آیا۔ یہ سوچتا ہوا کہ کمال کی خواتین ہیں۔ مشورہ بھی لے رہی ہیں اور جب میں نے مشورہ دیا تو یہ سننے کو ملا۔ ایک ہفتے کے بعد مجھے پی ٹی وی سے فون آیا۔ جب میں پہنچا تو مجھے بتایا گیا کہ انکل عرفی کا رول آپ کر رہے ہیں۔ میں حیرت زدہ تھا کہ اب یہ کیا ہوا۔ خیر پھر سب کچھ طے ہوا کہ کیا کرنا ہے۔ میک اپ کیا ہو گا ۔

Get up

intyousafkamal4.jpg

کیا ہو گا۔ انکل عرفی کا جو کردار تھا اس نے میرے کیریئر کو بدل کر رکھ دیا۔ چھاپ جو مجھ پر تھی وہ اﷲ کے کرم سے مٹ گئی اور میں لوگوں کو یہ بتانے میں کامیاب ہو گیا کہ میں صرف ایک رومانٹک ہیرو ہی نہیں ہوں بلکہ ایک سنجیدہ اداکار بھی ہوں۔ وہ سیریل بھی بہت ہٹ ہوا۔ جو میری فرنچ کٹ تھی وہ فیشن میں آ گئی اور لوگ فرنچ کٹ ڈاڑھی رکھنے لگے۔ بس پھر سلسلہ چلتا ہی رہا۔ مجھے مختلف قسم کے کردار ملے اور ایک سے ایک بڑھیا لکھے والے جن میں اشفاق احمد‘ بانو قدسیہ‘ فاطمہ ثریا بجیا‘ حسینہ معین‘ امجد اسلام امجد‘ اصغر ندیم سید ہیں اور ایک نام انور مقصود۔ میں سمجھتا ہوں کہ بہت خوش قسمت ہوتے ہیں وہ اداکار جن کو اس طرح کے لوگوں کے تخلیق کئے ہوئے کردار کرنے کو ملتے ہیں اس طرح ہر کردار ایک پہچان بن جاتا ہے۔ آنگن ٹیڑھا کے محبوب صاحب اور انور مقصود کا ہی ایک اور تحریر کردہ کھیل ’کالونی 52‘ میں نانا خالو کا رول کیا تھاجس نے میرے گلیمر کی چھاپ کو مٹا دیا اور نہایت ہی خوفناک قسم کا آدمی نانا خالو بنا دیا اور یقین مانیں کہ وہ کردار کرتے ہوئے مجھے بے انتہا لطف آیا۔ میرے کیرئیر کے بہترین کرداروں میں نانا خالو ایک یادگار کردار ہے۔ لیکن باقی کردار بھی اﷲ کے فضل سے بہترین تھے۔ شہزوری کا طیفی‘ زیر زبر پیش کا کھلنڈرا سا لڑکا‘ انکل عرفی، ان کہی کا تیمور، لیکن میںیہ سارا کریڈٹ اپنے ساتھیوں کو دوں گا کیونکہ مجھے ٹیم لاجواب ملی اور ان سب سے مجھے اتنی محبتیں ملی ہیں۔ فن اور عشق میں سچائی ضروری ہے۔ سچائی اور لگن وہ جذبے ہیں جو ناممکن کو ممکن بنا دیتے ہیں۔ ڈرامہ معاشرے کی عکاسی کرتا ہے مگر اس کی تشکیل میں بھی اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ آج ضروری ہے کہ فن کی دنیا امن کی دنیا کے حصول میں اپنا کردار ادا کرے۔


سوال: ساتھی فنکاروں میں سب سے زیادہ کس سے سیکھنے کا موقع ملا۔
جواب: بیگم خورشید مرزا کے ساتھ کے میں نے بہت کام کیا تھا اور میں نے ان کو بہت
Idealize
کیا تھا۔ اﷲ بخشے اس عمر میں بھی ان کی بہت
Professional
اپروچ تھی جب
Set
پر آتی تھیں تو ان کو پورا ڈرامہ ازبر ہوتا تھا صرف اپنا کردار ہی نہیں پورا ڈرامہ، اس کے علاوہ اﷲ بخشے کمال احمد رضوی صاحب کے ساتھ میں نے بہت کم کام کیا ہے۔ دو اسٹیج ڈرامے کئے۔ میرے ٹی وی کیرئیر میں دو خواتین کا بہت بڑا حصہ ہے اور ان پر اعتراضات بھی ہوئے کہ یہ ان کا من پسند ہیرو ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ حسینہ نے جتنے بھی کھیل لکھے ہیں ان میں سب سے زیادہ کھیل میں نے ہی کئے ہیں اور سب ہی کھیل مقبول ہوئے اور حسینہ کا ہی تحریر کردہ کھیل پرچھائیاں جو پاکستان ٹیلی ویژن کا سب سے پہلا کلرڈ کھیل بھی ہے، میں نے ہی کیا۔ یعنی جب بھی پی ٹی وی کی تاریخ لکھی جائے گی کہیں نہ کہیں میں ضرور ہوں گا۔ اسی طرح سے بجیا کے کھیل جو میں نے کئے افشاں، انا، عروسہ، آگہی، ساوری ، سسی پنوں اور بہت سارے سٹیج کے کھیل۔


سوال: کس ساتھی فنکار کے ساتھ کام کرتے آپ کو زیادہ اچھا لگا۔
جواب: سب سے پہلے تو نیلوفر عباسی کے ساتھ کام کیا تو بہت ہی مختصر وقت میں ہماری اتنی اچھی
Chemistry
اور ذہنی ہم آہنگی ہو گئی تھی کہ میں یہ اعتراف فخریہ کرتا ہوں کہ میں نے نیلوفر عباسی سے بہت کچھ سیکھا ہے کیونکہ نیلوفر ریڈیو کی بہت اچھی آواز ہے۔ ان کی ادائیگی میں جو بے ساختگی تھی اس نے مجھے بڑا
Inspire
کیا۔ ایک بات میں ضرور شیئر کروں گا اپنے پڑھنے والوں سے کہ جب ہم شروع شروع میں ٹی وی پر آئے تو بطور ہیرو ہیروئن آئے، اس وقت کنور آفتاب صاحب نے کہا کہ یہ فلم انڈسٹری نہیں ہے کہ جوڑی ہٹ جا رہی ہے بلکہ کیوں نہ یہ کہا جائے کہ یہ
Pair
بہت مقبول ہو گیا ہے۔ تو تھوڑے دنوں کے بعد ہی ہمیں ایک ڈرامے میں کاسٹ کیا گیا اور اس میں ہم بطور بہن بھائی کے سامنے آئے تو ہم نے وہ کردار بھی اتنی ہی خوبی سے نبھائے۔ بعد میں انکل عرفی میں شہلا اور ان کہی میں شہناز شیخ کے ساتھ بھی اچھی ہم آہنگی رہی۔

intyousafkamal5.jpg
سوال: آج کے ڈرامے اور اس وقت کے ڈرامے میں آپ کیا فرق محسوس کرتے ہیں۔
جواب: میں نے اس وقت بھی کام کیا ۔ اﷲ کا کرم ہے۔ میں آج بھی کام کر رہا ہوں۔ لیکن یہ ضرور کہوں گا کہ
Black and White
والا فرق ہو گیا ہے۔ اس وقت سب لوگ اس بات سے بے نیاز ہو کر کام کرتے تھے کہ اس کا بڑا رول ہے اور اس کی زیادہ مقبولیت ہے یا میری مقبولیت ہے۔ مطلب نمبر 1 کی دوڑ اور ایک دوسرے سے مقابلہ نہیں کیا جاتا تھا۔ سب ایک ٹیم کے طور پر کام کرتے تھے اور سب کے ذہن میں یہی بات ہوتی تھی کہ پروگرام اچھا ہونا چاہئے۔ اب بھی اچھا کام ہو رہا ہے نئے لکھنے والے آ رہے ہیں اوربہت اچھا کام کر رہے ہیں۔ لیکن کبھی کبھی اس پرانے وقت کا ٹیم ورک جو تھا اس کی کمی محسوس ہوتی ہے۔


سوال: آپ شوبز میں تھے جہاں آپ کے پاس مواقع تھے کہ شادی پسند کی کر سکتے کیا آپ نے شادی اپنی پسندسے ہی کی؟
جواب: خالص ارینج میرج ہے۔ میری والدہ کی پسند سے ہوئی لیکن میری والدہ حیات نہیں رہیں میری شادی تک۔ میں اﷲ کا بہت شکرگزار ہوں کہ اﷲ تعالیٰ نے مجھے زندگی کا بہترین ہمسفر عطا کیا ہے۔ بہت اچھا ساتھ مل گیا۔ دونوں بچوں کی شادی ہو گئی۔ ماشاء اﷲ میرے 3نواسے نواسیاں ہیں۔ بڑی نواسی
O-level
کر رہی ہے ۔ 14سال کی ہے۔ اﷲ نے زندگی میں سب کچھ عطا کیا ہے کسی چیز کی کمی نہیں ہے زندگی میں۔


سوال: فون پر آپ نے بتایا تھا کہ آپ نے پاک فوج کے لئے بھی کھیل کئے ہیں وہ کون سے ہیں؟
جواب : ہاں اچھا یاد دلایا۔ پی ٹی وی نے جب یہ سلسلہ شروع کیا تو نشانِ حیدر کا جو سب سے پہلا کھیل تھا کیپٹن سرور شہید اس میں لیڈنگ رول سلیم ناصر نے کیا تھا۔ ہم اس بات پر فخر کر رہے تھے کہ ہم اس کھیل میں کام کر رہے ہیں جو ہماری پاک فوج کے ایک شہید پر بن رہا ہے۔ میں تھا طلعت حسین تھے، عثمان پیرزادہ تھے۔ پھر پاکستان نیوی کے لئے دو کھیل تھے۔ ایک سیریل تھا، سمندر جاگ اٹھا اور دوسرا ہماری 1965 کی فتح کا معرکہ ’’آپریشن دوارکا‘‘ ہاں ایئرفورس کے لئے میں نے ابھی تک کوئی کھیل نہیں کیا۔ خواہش ضرور ہے لیکن مجھے یہ خوشی ہے کہ یہ تھوڑا بہت جو میر
اContribution
ہے یہ ایک طرح سے میری پاک فوج کے لئے اظہار عقیدت ہے۔


سوال: کیا محسوسات تھے آپریشن دوارکا کرتے ہوئے کیونکہ ایک تو پاک افواج سے آپ کی عقیدت اور پھر اس ڈرامہ میں کمانڈنٹ کا رول اور وہ بھی اپنی فتح کی داستان۔
جواب : محسوسات کیا بتاؤں ایک تو میں 1965کی جنگ دیکھ چکا تھا۔ 71کی جنگ دیکھ چکا تھا۔ وہ ولولہ اور جوش جو اس زمانے میں میں نے دیکھا تھا اور خود
Experience
کیا تھا وہ ساری چیزیں میرے ذہن میں تھیں۔ میں خوفناک حد تک
Nationalist
ہوں، ابھی بھی اگر کہیں پاکستان کی بات آ جاتی ہے کوئی ملی نغمہ جس میں میرے پاکستان کی بات ہو۔ قومی ترانہ ہو میری آنکھوں میں آنسو آ جاتے ہیں۔میں اپنے ملک کے لئے بہت جذباتی انسان ہوں۔


سوال: پاک فوج کے لئے آپ کا کوئی پیغام دینا چاہیں گے؟
جواب: (مسکراتے ہوئے) اپنوں کے لئے پیغام نہیں دیا جاتا ان کو دعائیں دی جاتی ہیں۔ اﷲ کے بعد اگر کوئی اس ملک کی حفاظت کر رہا ہے تو وہ ہے ہماری پاک فوج اور میرا رواں رواں ان کے لئے دعا گو ہے۔

خدیجہ محمود میڈیا سائیکالوجسٹ اور رائٹر ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

کوئی میری اس بات سے اتفاق کرے یا نہ کرے مجھے اس کی کوئی پروا بھی نہیں ہے کہ اگر اس ملک میں کوئی ادارہ ہے جو جو ادارہ کہلانے کے لائق ہے تو وہ فوج ہے۔ یہ سب میں اپنے ذاتی تجربات کی بناء پر ہی کہہ رہا ہوں ہماری فوج میں لوگ بہت پروفیشنل ہیں ذہنی طور پر بھی اور عملی طور پر بھی۔ زبان کے بھی پکے اور عمل کے بھی۔ اور یہ سب میں نے آزمایا ہوا ہے۔ میرا فوج سے لگاؤ اور ان کی جانب جھکاؤ اسی وجہ سے ہے۔

*****

فن اور عشق میں سچائی ضروری ہے۔ سچائی اور لگن وہ جذبے ہیں جو ناممکن کو ممکن بنا دیتے ہیں۔ ڈرامہ معاشرے کی عکاسی کرتا ہے مگر اس کی تشکیل میں بھی اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ آج ضروری ہے کہ فن کی دنیا امن کی دنیا کے حصول میں اپنا کردار ادا کرے۔

*****

 

Follow Us On Twitter