09
February

My Shaheed Son- A Pride A Hero

Written By: Lt Col (Retd) Muhammad Sunawar

Lt Col (Retd) Muhammad Sunawar pens down an account of martyrdom of his son Capt Bilal Sunawar (Shaheed).

 

My son Capt Muhammad Bilal Sunawar embraced shahadat on November 20, 2009 while fighting vigorously with terrorists (Chechens, Uzbeks, and Tajiks) at Pash Ziarat, located approximately 30 km north of Sara Rogha in South Waziristan, known as a strong insurgent base and headquarters of the terrorist leader Baitullah Mehsud. It was here in 2007 when a commando platoon was almost wiped out and even a two battalion follow-up operation failed to clear out the terrorists hiding there.


On November 19, 2009 Capt Bilal was given the command of Alpha Company 4 AK Regiment and was tasked to establish a fire base for his unit at Ziarat – 4 km ahead of their base called Mana. His company operation was a prelude to the battalion operation against the terrorists. At 8 p.m. on November 19, he advanced with his company from Mana and successfully cleared all the major and minor opposition that he met enroute. The ground and weather conditions were very hostile during the hours of darkness and temperature went as low as minus 10 degrees below freezing point.

 

pridehero.jpgAbout 4 a.m. on November 20, 2009 the company established its fire base in the assigned area and sent ‘all clear’ green signal to the commanding officer so that the remaining unit could start its operation. Meanwhile Capt Bilal established and organized his new base and deployed his platoons in ‘all round defence’. He also sent few search parties to the surrounding areas to ensure that no terrorists were hiding there.


At around 10 a.m. Alpha Company position was suddenly subjected to intense attack by the terrorists with 12.7 mm guns and rocket fire from thickly forested ridge, east of their location. Capt Bilal, along with his company, immediately returned fire and he himself went to the forward most position to observe the enemy and direct the fire of his men. Despite intense enemy fire and misty weather conditions, he and his men brought such accurate fire on the terrorists that they were forced to retreat. However, in this process Capt Bilal received a direct hit by a rocket launcher which also blew away a portion of the left leg of his Platoon Commander Lieutenant Kaleem who was close by. My beloved son embraced shahadat on the spot but until the very end, Capt Bilal kept encouraging and exhorting his men to fight and destroy the enemy who had dared to threaten their motherland.


It is worth mentioning that Capt Bilal (shaheed) had topped the Basic Intelligence Course in 2008 and had opted for induction into Corps of Military Intelligence (CMI). Accordingly, on August 1, 2009, GHQ issued his posting order from 4 AK Regiment to Islamabad. He was required to report for his new assignment by December 1, 2009 but regardless of his posting order, Capt Bilal remained at the forefront of every operation of his unit and volunteered himself for this operation just as he had done in previous operations.


As a son he always told me that if Allah Almighty gave him an opportunity, he would bring honour not only for the family but also for Pakistan Army and the nation as well. His desire for martyrdom was evident when he volunteered to lead the unit in a challenging mission. To honour his sacrifice and as testament to his unprecedented valour, bravery and courage shown in the operation, the ridge where Capt Muhammad Bilal Sunawar shaheed bequeathed his final and ultimate debt to his regiment and country has been named after him as “Bilal Ridge.” Along with Shaheed Capt Bilal, six soldiers also embraced martyrdom with bullet wounds but my son was the only one hit by a rocket launcher.


Bilal loved his family very much especially his mother who died on April 30, 2008 after a prolonged illness. He loved his mother immensely and left no stone unturned in showing her to doctors in all over country, apart from CMH Rawalpindi where she was admitted. A few days before his martyrdom, he confidentially told his schoolmate, Umair that if he embraced martyrdom during the operation, he should be buried at the feet of his mother’s grave in Chaklala, Rawalpindi. After the demise of his beloved mother, he was extremely caring towards me, his brother and sisters. Capt Bilal was laid to rest on November 21, 2009 at the feet of his mother according to his last wish. Capt Bilal’s mother must have been proud to be known as martyr's mother today and that she instilled the highest virtues of bravery, passion and sacrifice in her son.


We had been looking for a decent family and compatible match for Bilal for years but we did not know that Allah Almighty has already decided his match and marriage in the heaven. My son has not only earned a worldly respect and honour, but he has willingly opted for a higher pedestal and thus attained eternity.


Before going to South Waziristan, he had served for two years with the 111 Brigade in Rawalpindi, where he usually commanded the ceremonial ‘Guards of Honours’ provided to visiting foreign dignitaries.


I am extremely proud and honoured that Allah Almighty has willed the martyrdom of my son I love so dearly. May Allah Almighty accept his supreme sacrifice and give us courage and patience to bear this irreparable loss of loving brother, and a very caring and obedient son. Amen.

 
11
February

شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن

تحریر: سیدہ شاہدہ شاہ

جہلم شہر سے راولپنڈی کی طرف بذریعہ سڑک آئیں تو جہلم شہر سے چند کلومیٹر دور ایک قصبہ کالاگوجراں آتا ہے۔ سڑک کے داہنے کنارے ایک اونچی سی بلڈنگ پر ایک بورڈ لگا ہوا ہے۔ جس پرجلی حروف میں لکھا ہے ’’کیپٹن معظم علی شہید ہسپتال۔‘‘جہلم شہر کی اس دھرتی پر وہ کڑیل جوان شہید معظم علی ابدی نیند سو رہا ہے۔ جو جب تک زندہ تھا تو سیاچن جیسے مشکل ترین اور سرد ترین محاذ پر دشمن کوناکوں چنے چبواتا رہا اور جب شہید ہوا تو دشمن نے وائرلیس پر اس پیغام سے شہید کو خراجِ تحسین پیش کیا کہ آج ہم نے اس آہنی انسان کو ایچ ائی ٹی کر لیا جو ہمیں بے حد تنگ کئے ہوئے تھا۔

 

اس کہانی کے ہیرو کیپٹن معظم علی کی داستان کا آغاز اس وقت ہوتا ہے جب اس شہید کے والد ڈاکٹر میجریوسف اختر اپنی عسکری زندگی کے سلسلے میں اردن کے ایک شہر کرک میں تعینات تھے۔ ایک روز ڈاکٹر میجر یوسف کو اس کی ماموں زاد بہن کا خط ملا کہ انہوں نے خواب میں دیکھا کہ ایک بزرگ انہیں ملے ہیں جو کہہ رہے ہیں کہ میجر یوسف اختر کے گھر بیٹا پیدا ہو گا اس کا نام معظم علی رکھنا۔ چنانچہ 13اکتوبر 1972 کو میجر یوسف کے ہاں بیٹے کی ولادت ہوئی اور خواب کی بشارت کے مطابق اُس کا نام معظم علی رکھا گیا۔ بچپن کی دنیا بڑی ہی سہانی بڑی ہی خوبصورت ہوتی ہے۔ نہ فکر فردا‘ نہ غم روزگار‘ بس ہنسنے کھیلنے کے مستقبل کے سہانے سپنے دیکھنے کی عمر ہوتی ہے۔ مگر معظم علی کا رحجان شروع سے ہی دوسرے بچوں سے مختلف تھا۔ اتنی چھوٹی عمر میں ہی ان کی خوبصورت آنکھوں نے فوجی بننے کے خواب دیکھنا شروع کر دیئے تھے۔ ان کے دادا جو انجینئر تھے، ان کی بڑی خواہش تھی کہ ان کا یہ پیارا سا پوتا معظم علی بھی انجینئر بنے۔ مگر معظم علی نے اوائل عمری میں ہی اپنے آپ کو فوجی بننے کے لئے وقف کر دیا تھا۔ شہادت کا شوق لڑکپن سے ہی یوں بدرجہ اتم عود کر آیا تھا کہ پانچویں چھٹی میں ہی وہ اپنی کاپیوں پر جابجا علامہ اقبال کے اس شعر کو جلی حروف میں لکھا کرتے۔

 

شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن

نہ مال غنیمت نہ کشور کشائی

shadathay.jpg

7اکتوبر 1990کو پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں جائن کی 15اکتوبر 1992 کو اپنی عسکری تربیت مکمل کر کے پاک فوج میں شمولیت اختیار کی اور 35پنجاب رجمنٹ میں اپنے عسکری فرائض سرانجام دینے لگا۔ معظم علی کو بچپن سے ہی شہادت کا بڑا شوق تھا۔ شاید اس لئے کہ آنکھ کھولتے ہی معظم علی کو اپنے والدین کے ساتھ حضرت شعیب ؑ ، حضرت ہارونؑ ، حضرت زید بن حارثؓ، حضرت عبداﷲؓ اور حضرت جعفر طیارؓ کے مزارات پر حاضری کی سعادت حاصل ہوئی اور پھر جب ذرا ہوش سنبھالا اورسلطان صلاح الدین ایوبیؒ کے مزار پر جب حاضری کا موقع ملا تو وہ بری معصومیت اور حیرت سے اس دربار کو دیکھ رہا تھا۔ ان تمام برگزیدہ ہستیوں کا ہی فیضان تھا کہ دس گیارہ سال کی عمر میں ہی وطن کی محبت کا جذبہ اس کی رگ رگ میں یوں سرایت کر گیا تھا کہ جب بھی پاکستان کا قومی ترانہ بجتا تو وہ پورے اہتمام سے مٹھیاں بند کر کے سیدھا ساکت کھڑا ہو جاتا خواہ کوئی اور کھڑا ہو یا نہ ہو۔ پاکستان سے محبت کی یہ انتہا ہی تھی کہ وہ پاکستان کے خلاف کوئی معمولی سی بھی بات نہیں سن سکتا تھا اور لڑنے مرنے پر آ جاتا تھا۔

 

آرمی جوائن کرنے کے بعد اس کی یونٹ سیاچن محاذ پر بھیج دی گئی۔ تمام دفاعی ماہرین اس بات پر متفق ہیں کہ سیاچن عسکری نقطہ نظر سے انتہائی خطرناک اور سردترین محاذ ہے۔ وہاں فوجی تو ایک دوسرے کے ساتھ برسرپیکار ہوتے ہی رہتے ہیں مگر موسم سب سے بڑا دشمن ہوتا ہے۔ جو بلاامتیاز ہر کس و ناکس کو نگلنے کے لئے تیار رہتا ہے۔ سیاچن کی خطرناک پوسٹوں میں ایک پوسٹ تابش بھی ہے۔ پاکستان آرمی کی یہ پوسٹ تقریباً بیس ہزار فٹ بلندی پر واقع ہے اور دشمن نے اس کو اپنی دو پوسٹوں اکبر اور رانا کے ذریعے جو کہ تابش پوسٹ سے بلند ہیں، گھیر رکھا ہے۔ حتیٰ کہ تابش پوسٹ سے بیس کیمپ کی طرف آنے کا راستہ بھی دشمن کی نظر میں ہے۔ معظم علی کو شہادت کی اتنی شدت سے تمنا تھی کہ جنوری 1995میں سیاہ چن سے جب معظم علی اپنی بڑی بہن اسماء کی شادی پر آیا تو اپنے آبائی گاؤں روہتاس میں دادا ابو کی قبر پر فاتحہ پڑھنے کے بعد بہن کو ایک طرف لے کر سرگوشی سے کہا کہ باجی جب میں شہید ہو جاؤں تو مجھے دادا ابو کی قبر کے ساتھ دفن کروانا۔ ایک روز اپنی ماں سے بڑے لاڈ سے کہنے لگا۔ ماں، اﷲتعالیٰ ماؤں کی دعائیں ضرور قبول فرماتا ہے، میری شہادت کی دعا کرنا۔ شہادت کا یہ متوالا ایک روز جب اس کے ابو میجر یوسف اختر مغرب کی نماز سے فارغ ہوئے، توکہنے لگا ابو میری شہادت کی دعا کریں۔ عملی زندگی میں کیپٹن معظم علی شہید ایک عظیم انسان تھا۔ سیاچن پر ہی ایک رات ایک سپاہی بیمار ہو گیا۔ اس کو آرام کرنے کے لئے خود رائفل پکڑ کر بطور سنتری ڈیوٹی دیتا رہا۔ شہادت کی شدت سے طلب اور سیاچن جہاں کی پوسٹنگ پر بڑے بڑوں کا پِتّہ پانی ہونے لگتا ہے،وہاں پر مستقل ڈٹے رہناکہ شہادت کی منزل پا لے، یہ دونوں وہ خواہشات تھیں جو معظم علی کی ترجیحات میں پہلے نمبر پر تھیں۔ تابش پوسٹ پر معظم علی کی ڈیوٹی کا عرصہ نومبر 1994میں پورا ہو چکا تھا اور وعدے کے مطابق اسے دوبارہ وہاں نہیں جانا تھا۔ مگر فروری 1995 میں سیاچن میں اپنی یونٹ میں چھٹی سے واپس جا کر پہلا کام اس نے یہ کیا کہ یونٹ کے سی او لیفٹیننٹ کرنل محمد محمود بٹ سے بہت اصرار کر کے اپنے آپ کو دوبارہ تابش پوسٹ پر تعینات کروا لیا۔ استفسار پر یہ بتایا کہ سچی بات یہ ہے کہ میرا دل یہاں سے کہیں اور جانے کو نہیں چاہتا۔ برف پوش پہاڑ اتنے بلند ہیں اور آسمان اتنا صاف اتنا نزدیک نظر آتا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ خدا بھی قریب بہت قریب ہے۔ اس ماحول میں اس فضا میں مجھے اتنی اپنائیت محسوس ہوتی ہے کہ شاید میری آرزو پوری ہو جائے مجھے شہادت نصیب ہو جائے۔

shadathay1.jpg

اور پھر وہ وقت آ ہی گیا جس کی آرزو بچپن سے ہی معظم علی کے دل میں مچل رہی تھی۔ 15مئی 1995کا وہ دن جب معظم علی ارض وطن کی حرمت کی خاطر برفیلے پہاڑوں کی بلندیوں پر وطن کے لئے قربان ہو گیا۔12مئی کو سیکٹر کمانڈر نے خبردار کیا کہ دشمن کا فائر آنے والا ہے۔ چنانچہ 14مئی کی صبح سے دشمن کا متوقع فائر آنا شروع ہو گیا۔معظم علی اپنی جان کی پروا نہ کرتے ہوئے دشمن کی پوزیشن تلاش کرنے کی کوشش کرتا رہا۔ 14مئی ہی کی شام دشمن نے فائر بند کر دیا۔ تمام وقت الرٹ رہنے اور فائر کروانے سے معظم علی کی آنکھیں سوج گئی تھیں۔ صبح سے کھایا پیا بھی کچھ نہ تھا۔ رات کو میجر افتخار کا فون آیا کہ صبح دشمن کا فائر پھر آئے گا، الرٹ رہیں۔ پندرہ مئی کی صبح طلوع ہوئی تو دس اور گیارہ بجے کی درمیان متوقع فائر آنے لگا۔ گیارہ بجے کے قریب معظم اپنے بنکر سے نکل کر بائیں ہاتھ گیا جدھر گن تھی۔ کچھ ہی دیر بعد ایک زوردار دھماکہ ہوا۔ دشمن نے راکٹ فائر کیا تھا۔ معظم علی شہید ہو چکا تھا۔ دایاں بازوں کندھے سے ذرا نیچے اڑ گیا تھا۔ پیٹ اور سینے پر ان گنت زخم تھے اور دونوں ٹانگیں گھٹنوں سے ذرا نیچے چور چور ہو چکی تھیں۔ اس طرح 15مئی 1995 کو دن گیارہ بج کر دو منٹ پر شہادت کی تلاش کا وہ سفر ختم ہو گیا جو 13اکتوبر 1972 رات نو بجے اس شہید نے اس دنیا میں آ کر شروع کیا تھا۔ شہید کا جسد خاکی جب جہلم لایا گیا تو جہلم گیریژن کے آفیسرز کے علاوہ پنڈی سے بہت سارے آفیسرز تشریف لائے جن میں کئی جنرل صاحبان بھی شامل تھے۔ ایک خلقت تھی جو نوجوان شہید کو خراج عقیدت پیش کرنے آئی تھی۔ ان میں ایک ایسا بوڑھا بھی تھا جو تابوت کے قریب کھڑا حسرت سے کہہ رہا تھا۔ ’’بیٹے جب تم رسول پاکﷺ کے سامنے جاؤ تو میرا بھی سلام کہنا‘‘ اور پھر وہ رو پڑا اور کہا ’’پتر تیری عمر مرنے کی نہیں تھی۔‘‘

 

شہادت کے دس دن بعد اس کے بھائی ہارون کو خواب میں معظم علی نظر آیا تو بھائی نے پوچھا سناؤ بھائی معظم اس دنیا سے جانے کے بعد تجھ پر کیا بیتی۔ معظم نے جواب دیا کہ شہید ہو کر جب وہ اﷲ کے حضور پہنچا تو وہاں حضرت امام حسینؓ نے اسے شربت کا پیالا دیا اور حضرت فاطمہؓ نے اسے کہا کہ یہ لو خزانے کی چابیاں۔ دو سال قبل شہید کے والدکو ان کے ایک دوست ملے جنہوں نے بڑے وثوق سے انہیں یہ بتایا کہ وہ حج کے لئے گئے تھے تو وہاں معظم علی نے اس کے ساتھ حج کیا ہے۔

 

شہادت سے کچھ دن پہلے شہید معظم علی نے اپنے والد میجر (ر) یوسف اختر سے کہا کہ جب میں شہید ہو جاؤں تو میرے جو واجبات ملیں ان کو کسی ایسے کام میں خرچ کریں جو صدقہ جاریہ ہو۔ چنانچہ ان کے واجبات جو کہ ساڑھے آٹھ لاکھ بنتے تھے، ان سے الصادق میموریل کے نام سے ایک ٹرسٹ کا آغاز کیا گیا جہاں خواتین کو سلائی کڑھائی اور دیگر فنون دستکاری سکھائے جاتے ہیں۔

یوں تقریباً بائیس سالہ معظم علی شہید عہد شباب میں شہداء کے اس قافلے کا راہرو بن گیا جن کی منزلیں کہکشاؤں کے دیس میں نیلے آسمانوں کے اس پار ہوا کرتی ہیں جہاں وہ ہمیشہ ہمیشہ زندہ رہتے ہیں۔

 
 
20
February

وہ جو راہِ حق کے مسافر ہوئے

میجر طیب عزیز شہید کی اہلیہ محترمہ عائشہ طیب کے قلم سے ہلال کے لئے خصوصی تحریر

طیب شہید کا رتبہ بلند‘ اُن کا مقام اعلیٰ ہے یہی ایک سوچ ہے جو ہمیں حوصلہ دیتی ہے کہ آنسو نہ بہائیں۔ یہی وجہ تھی کہ شہادت پہ نہ کسی کو بین کرنے دیا اور نہ زور سے رونے دیا کہ یہ رتبہ ہر کسی کا مقدر نہیں۔ اسی سوچ نے ہر مشکل گھڑی میں کھڑے رہنے اور ہمت نہ ہارنے کا حوصلہ دیا۔ ہر لمحہ جب اُن کی اشد ضرورت محسوس ہوئی تو اسی جذبے سے دل کی ڈھارس بندھی کہ ہم شہدا ء کے وارث ہیں۔

26 ستمبر2008 جمعۃ المبارک اور ماہِ رمضان عام لوگوں کے لئے محض ایک تاریخ ہے جو آئی اور گزر گئی‘ مگرہمارے لئے اس کے معانی بہت کٹھن اور انمٹ ہیں کہ یہ ایسا دن اور ایسی تاریخ ثابت ہوئی جس نے ہمارے زندگی کا رُخ ہی موڑ دیا۔ میرے لئے 26ستمبر عام دن نہیں۔ یہ وہ دن ہے جس دن میرے ہم سفر طیب نے جامِ شہادت نوش کیا۔ ان کی شہادت برحق ہے وہ تو اس عظیم مرتبے پرفائز ہو گئے کہ ہم اُن کی شہادت پررشک کرتے ہیں۔ لیکن آنکھ کا اشک بار ہونا ایک فطری عمل ہے۔ ان کی شہادت بھی ایک حقیقت ہے مگر اس دل کا کیا کیجئے جو مانتا ہی نہیں کہ ہم اس ہستی سے محروم ہوگئے ہیں جو انتہائی شفیق‘ ملنسار اور پیار کرنے والی تھی۔ فاطمہ اورعنائیہ ( وہ بیٹی جو دنیا میں اُن کی شہادت کے بعد آئی) نہیں جانتیں کہ باپ کی شفقت کسے کہتے ہیں اور باپ کیسا ہوتا ہے۔ اُن کے وہم و گمان میں بھی وہ الفت نہ ہوگی جو باپ اپنی بیٹیوں سے کرتے ہیں۔ مگر نہیں ان کا باپ زندہ ہے کہ وہ شہید ہے۔ ہمیں شعور بھلے نہ ہو‘ مگر حق یہی ہے کہ وہ امر ہے۔

ترجمہ: اور جو لوگ اﷲ کی راہ میں مارے جائیں انہیں مردہ نہ کہو بلکہ وہ زندہ ہیں لیکن تمہیں ان کا شعور نہیں۔

(سورۃ البقرہ آیت 154)

طیب عزیز اپنے نام کی تفسیر اور اپنوں کا عزیز اور پیارا تھا اور ہمیشہ رہے گا۔

طیب 12مارچ1977 کو باغ آزاد کشمیر کے ایک فوجی گھرانے میں پیدا ہوئے۔ اُن کے والد کرنل محمد عزیز خان بھی ایک فوجی افسر تھے جو اُن کے بچپن میں ہی وفات پا گئے تھے‘ ہر فوجی گھرانے کی روایت کی طرح اُن کے بڑے (مرحوم) بھائی کی شدید خواہش تھی کہ طیب بھی آرمی آفیسر بنیں۔ طیب نے بھی انتہائی جانفشانی اور محنت سے اُن کی اس آرزو کو پورا کرنے کے لئے دن رات محنت کی اور برن ہال سے اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعدPMA کے لئے منتخب ہو گئے۔پاسنگ آؤٹ کا دن والدہ اور گھر والوں کے لئے باعثِ فخر تھا۔ طیب نے پاس آؤٹ ہونے کے بعد اپنے والد کی پیروی کرتے ہوئے اُن کی یونٹ 10 اے کے رجمنٹ جوائن کی جو اُن ایام میں بجوات سیکٹر میں تعینات تھی۔ اُن دنوں دشمن کے تیور کافی بگڑے ہوئے تھے اور گولہ باری روزانہ کا معمول تھا۔ یوں آغاز سے ہی وہ معرکہ حق و باطل میں حصہ دار بنے اور اپنی یونٹ کے ساتھ دشمن کا مردانہ وار مقابلہ کیا۔

فاطمہ اورعنائیہ ( وہ بیٹی جو دنیا میں اُن کی شہادت کے بعد آئی) نہیں جانتیں کہ باپ کی شفقت کسے کہتے ہیں اور باپ کیسا ہوتا ہے۔ اُن کے وہم و گمان میں بھی وہ الفت نہ ہوگی جو باپ اپنی بیٹیوں سے کرتے ہیں۔ مگر نہیں ان کا باپ زندہ ہے کہ وہ شہید ہے۔ ہمیں شعور بھلے نہ ہو‘ مگر حق یہی ہے کہ وہ امر ہے۔

اپنی عسکری زندگی کے شروع سے ہی طیب انتہائی جاں فشانی سے اپنے فرائضِ منصبی کی ادائیگی میں مصروف رہے۔ 2004 تک اپنی یونٹ کے ساتھ پنوں عاقل میں بھی رہے۔ بعد ازاں 2 سال کی مدت کے لئے یو این مشن کے ساتھ لائبیریا میں تعینات رہے۔ اسی دوران اکتوبر2005 میں جب قیامت خیززلزلہ آیا تو آزاد کشمیر سے تعلق رکھنے کی بناء پر رخصت پر واپس آئے۔ ان دنوں 10 اے کے رجمنٹ ریلیف ورک کا حصہ تھی۔ چنانچہ طیب نے بھی امدادی کارروائیوں میں دن رات ایک کرکے اپنے لوگوں سے تعلق کا حق صحیح معنوں میں ادا کیا جس کا ثبوت اُن کی شہادت پر اُن تمام دور دراز کے رہائشی لوگوں کا اجتماع تھا جو اپنے سپوت کو آخری نذرانہ پیش کرنے اور اُن کا آخری دیدار کرنے کے لئے اُن کا جسدِ خاکی باغ پہنچنے سے پہلے موجود تھے۔

یواین سے واپسی کے بعد2006 میں ان کی پوسٹنگ سکول آف انفنٹری اینڈ ٹیکٹکس کوئٹہ میں بطورِ انسٹرکٹر ہوئی۔ جہاں سے ان کو اکتوبر2007 میں یونٹ کے ساتھ بنوں پوسٹ کیا گیا جو اُن کے فوجی کیریئر کی آخری پوسٹنگ ثابت ہوئی۔ وہیں سے باجوڑ آپریشن کے لئے روانہ ہوئے اور ایسے گئے کہ جامِ شہادت نوش کرکے ہی پلٹے۔ باجوڑ میں لوئی سم وہ مقام ہے جہاں انہوں نے جامِ شہادت نوش کیا۔ اس مقام پر اُن سے منسوب ایک چیک پوسٹ ہے۔ جس دن سے طیب باجوڑ کے لئے بنوں سے روانہ ہوئے اُس دن سے کسی لمحہ قرار نہ تھا۔ ہر رات اُن کی خیریت کے فون کا انتظار اور پھر فون کے بعد چند لمحوں کا قرار اور پھر سارا دن اگلی کال کا انتظار جو بالآخر26 ستمبر2008 بمطابق 25رمضان المبارک کے افطار سے کچھ دیر پہلے اُن کی شہادت کی اطلاع پر اختتام پذیر ہوا۔

طیب شہید کا رتبہ بلند‘ اُن کا مقام اعلیٰ ہے یہی ایک سوچ ہے جو ہمیں حوصلہ دیتی ہے کہ آنسو نہ بہائیں۔ یہی وجہ تھی کہ شہادت پہ نہ کسی کو بین کرنے دیا اور نہ زور سے رونے دیا کہ یہ رتبہ ہر کسی کا مقدر نہیں۔ اسی سوچ نے ہر مشکل گھڑی میں کھڑے رہنے اور ہمت نہ ہارنے کا حوصلہ دیا۔ ہر لمحہ جب اُن کی اشد ضرورت محسوس ہوئی تو اسی جذبے سے دل کی ڈھارس بندھی کہ ہم شہدا ء کے وارث ہیں اور یہ رتبہ بھی متقاضی ہے کہ ہم اپنے شہید کی طرح اُن مسائل اور مشکلات کے آگے ڈٹ جائیں جیسے وہ دشمنوں کے آگے سینہ سپر ہوئے۔ طیب کی شہادت کے بعد2010 میں انہیں حکومت کی طرف سے ستارۂ بسالت سے نوازا گیا۔ جو ہم سب کے لئے عزت و وقار کا باعث ہے۔

بیٹے کی یاد میں

میجر خالد شہید کی اہلیہ محترمہ عطیہ خالد کی پشاور کے شہداء کے لئے ایک نظم

دیکھ کے خالی بچپن کا وہ جھولا تیرا

چھو کے ہر ایک ایک کھلونا تیرا

بیتے حسین لمحوں کو یاد کرتی ہے

کہ تیری یاد مجھے سرشار کرتی ہے

گرنا وہ اٹھا کے پہلے قدم کا تیرا

ماں کہہ کر پکارنا وہ ہردم تیرا

ماں تجھے یاد کرتی ہے

تو کہیں سے آ جائے فریاد کرتی ہے

بستہ‘ یونیفارم اور وہ لنچ بکس تیرا

ہر دم دکھائی دیتا ہے مجھے عکس تیرا

انجینئر بن کے خدمت کرنے کا وہ عزم تیرا

مگر چھوڑ کے یوں چلے جانا وہ بزم تیرا

لمحہ لمحہ وہ دن یاد کرتی ہے

توکہیں سے آ جائے یہ فریاد کرتی ہے

رائیگاں نہ جائے خون کا کوئی قطرہ تیرا

عطیۂ خداوندی ہے شہادت کا رتبہ تیرا

قوم کی حیات کہہ کے تجھے یاد کرتی ہے

کہ تیری یاد مجھے سرشار کرتی ہے

ماں تجھے یاد کرتی ہے

تو کہیں سے آ جائے فریاد کرتی ہے

10
May

زندگی عبادت ہو جیسے

Published in Hilal Urdu

تحریر: جبار مرزا

مشیت الرحمن ملک تمغۂ قائداعظم کے ذکر سے پہلے مجھے جوان دنوں کا اپنا ہی قول یاد آ گیا کہ ’’مر جانا کوئی بڑی بات نہیں زندہ رہنا کمال ہے۔‘‘ بعض لوگ کبھی نہیں مرتے۔ ہمیشہ زندہ رہتے ہیں۔


کیپٹن مشیت الرحمن ملک کا شمار انہی لوگوں میں ہوتا ہے۔ وہ پاکستان آرمی کی انجینئرنگ کور سے تعلق رکھتے تھے۔ 1952 میں بطور سیکنڈ لیفٹیننٹ فوج میں گئے کوہاٹ ٹریننگ سے فارغ ہوئے تو پہلی پوسٹنگ ہزارہ ڈویژن کے مارشل ایریا شنکیاری میں ہوئی جہاں وہ جون 1957 تک کیپٹن ایڈجوٹنٹ رہے۔یکم جون 1961 میں وہ ملتان میں تھے۔وہاں وہ نوجوان افسروں کو دستی بم کی ٹریننگ دے رہے تھے۔ پن نکالنا سکھا رہے تھے، پن نکالی ہی تھی کہ بم کیپٹن مشیت الرحمن کے ہاتھ میں ہی پھٹ گیا۔ سی ایم ایچ ملتان میں ان کی بیگم عصمت، جو ان کی پھوپھی زاد بھی تھیں، جن سے 1960میں جھنگ میں شادی ہوئی اور دونوں کی ثمر نامی بیٹی بھی تھی، کی اجازت سے کیپٹن مشیت کی زندگی بچانے کے لئے ان کے دونوں بازو کاٹ دیئے گئے ۔ کٹے ہوئے بازو اور آنکھوں پر بندھی پٹی کے ساتھ کیپٹن ملک کو راولپنڈی سی ایم ایچ شفٹ کر دیا گیا۔ جب پٹی کھلی تو کیپٹن مشیت پر کھلاکہ وہ آنکھوں جیسی عظیم نعمت سے بھی محروم ہو چکے ہیں۔ کسی بھی انسان کے لئے کس قدر کربناک لمحات ہیں جب اسے پتہ ہو کہ وہ آدھے سے زیادہ کٹ چکا ہے اور بچا ہوا جسم اندھیروں میں ڈوبا ہوا ہے، جو دن اور رات میں امتیاز کرنے کی صلاحیت سے محروم ہو چکا ہے۔ لیکن وہ کیا ہے کہ اﷲ پاک کسی شخص کو بھی اس کی برداشت سے زیادہ آزمائش میں نہیں ڈالتے۔
کیپٹن مشیت الرحمن ملک ایک حوصلہ مند جوان اور روائتی فوجی تھے جن کا مقصد ہی خطرات سے کھیلنا ہوتا ہے۔ جو ہر وقت ناموس وطن اور دھرتی کی حفاظت کے لئے دشمن کے خلاف مورچوں میں اترے ہوتے ہیں۔ کیپٹن مشیت الرحمن کی زندگی یکسر تبدیل ہو گئی تھی۔ وہ فوج کے چھوٹے مورچے سے نکل کر زندگی کے بڑے محاذ پر اولوالعزم شخصیت کا روپ دھار چکے تھے۔ ہرے زخم جب بھر گئے تو ایک آنکھ میں روشنی کی واپسی کی امید پیدا ہوئی۔ آئی سپیشلسٹ بریگیڈیئر پیرزادہ نے کیپٹن مشیت لرحمن کی برطانیہ روانگی کا اہتمام کیا۔ فوج اپنے غازیوں اور شہیدوں کو بہت عزیز رکھتی ہے۔ قرنیہ لگا دیا گیا۔ رتی برابر دکھائی دینے لگ گیا جب دروبام چمک اٹھتے تو وہ جان جاتے کہ صبح ہو گئی ہے اور بقول فیض صاحب زندگی کا زندان تاریک ہوتا تو وہ سمجھ جایا کرتے کہ اب میرے وطن کی مانگ ستاروں سے بھر گئی ہے۔

zindagiebadta.jpg
کیپٹن مشیت الرحمن ملک برطانیہ سے پلٹے تو مصنوعی بازو لگے ہوئے تھے۔ فوج نے جھنگ میں ایک کنال کا رہائشی پلاٹ الاٹ کیا تو انہوں نے وہ پلاٹ اپنی بیگم عصمت کے نام کر دیا۔ اسی عرصے میں بیٹے حمیت الرحمن کی ولادت ہوئی۔ کیپٹن مشیت کی بیگم عصمت ڈاکٹر تھیں۔ جن سے بعدازاں اُن کی علیٰحدگی ہوگئی۔ بہرکیف کیپٹن مشیت نے معاشتی طور پر خود کو سنبھالا دینے کی بہت کوششیں کیں۔ فوج کی طرف سے معقول پنشن ملنے کے باوجود دیگر ضروریات سے نبرد آزما ہونے کے لئے مختلف کاروبار کرنے کی کوشش کی‘ پرنٹنگ پریس لگائی کیونکہ فوج میں کمشن حاصل کرنے سے پہلے مشیت الرحمن فیصل آباد کے روزنامہ’سعادت وغریب‘ اور ’عوام‘ کے ساتھ وابستہ رہ چکے تھے۔ جہاں وہ لائیلپور کی ڈائری لکھا کرتے تھے۔ اس تمام مہارت تجربے اور صحافتی جان پہچان کے باوجود وہ پرنٹنگ پریس بھی نہ چلا سکے۔ فوج میں جانے سے پہلے وہ لاہور باٹاپور شو کمپنی میں ملازمت بھی کرتے رہے۔ یعنی زندگی کی ساری دھوپ چھاؤں سے گزرے مگر کوئی بھی کام وہ پورا نہ کر پائے۔ آخرکار 1965میں انہوں نے فیصل آباد میں اپنے گھر کے گیراج میں ہی نابیناؤں کے لئے ایک ادارہ قائم کیا۔ اس کا نام پاکستان ایسوسی ایشن آف دا بلائنڈ رکھا۔ اس کی بنیاد رکھنے میں کراچی کی ڈاکٹر فاطمہ شاہ نے بہت ساتھ دیا۔ فاطمہ شاہ جو1916 میں بھیرہ میں پیدا ہوئی تھیں، میڈیکل ڈاکٹر تھیں۔ 1948میں اپوا کی سیکرٹری ہیلتھ رہیں۔ 1956میں ان کی بینائی یک دم ختم ہو گئی تھی۔ انہوں نے 1960میں پاکستان ایسوسی ایشن آف دا بلائنڈ قائم کی اور اس کی بانی ہونے کے ساتھ ساتھ 19سال تک اس کی صدر رہیں۔ سکولوں کالجوں میں بریل
(Braille)
کواضافی مضمون کی طرح پڑھنے کا انتظام کروایا۔ 1974میں پیرس اور برلن میں انٹرنیشنل فیڈریشن آف بلائنڈ کی صدر منتخب ہوئیں۔ الغرض ڈاکٹر فاطمہ شاہ نے کیپٹن مشیت الرحمن کا بہت ساتھ دیا اور یہی وجہ تھی کہ کیپٹن مشیت الرحمن جن کی زندگی میں اندھیروں کے سوا کچھ نہ رہا تھا، وہ فاطمہ شاہ کی حوصلہ افزائی سے پھر سے توانا ہو گئے اور 1965میں گیراج میں شروع کئے گئے پاکستان ایسوسی ایشن آف دا بلائنڈ سرگودھا ڈویژن کے بعد 1967 میں فیصل آباد کی جناح کالونی میں ایک کمرہ کرائے پر لے کر نابیناؤں کے لئے کرسیاں بنائی کی تربیت شروع کر دی۔ یوں کیپٹن مشیت الرحمن دن بھر بازاروں اور گلیوں میں بھیک مانگتے نابینوں کو اکٹھا کرتے اور انہیں مختلف ہنر سکھاتے اور معاشرے میں باعزت زندگی اور محنت میں عظمت کی تحریک دینے لگ گئے۔ کیپٹن ملک نے اپنا ادارہ رجسٹر بھی کروا لیا تھا پھر 1970 میں باقاعدہ تعلیمی شعبے کا آغاز کر دیا گیا۔ نابینا بچوں اور بالغوں کے لئے بریل کے ذریعے تعلیم کا حصول ممکن بنایا۔ 1971 میں مقامی لائنز کلب کی مدد سے صوتی کتب
(Electronic Books)
کی لائبریری قائم کی جس میں پہلی نابینا بچی کا داخلہ ہوا۔ پھر فیصل آباد کے گورنمنٹ کالج اور دیگر سکولوں میں مربوط تعلیم پروگرام شروع کیا۔ 1977میں محکمہ اوقاف نے گورونانک پورہ چک نمبر 279نادر خان والی میں ایک گرودوارے کی عمارت کیپٹن مشیت الرحمن کے حوالے کر دی۔ جہاں جناح کالونی والا ایک کرائے کا کمرہ چھوڑ کر وہ اپنا ادارہ گرودوارے میں لے گئے اور اس کا نام اتحاد مرکز نابینا رکھا جو بعد میں المینار مرکز نابینا ہو گیا۔


جنرل ضیا الحق 1978 میں فیصل آباد گئے تو کیپٹن مشیت الرحمن کی محنت اور نابیناؤں کی زندگی سنوارنے کے عمل سے بہت متاثر ہوئے اور فیصل آبادمیں ادارے کے لئے کوئی مناسب جگہ دینے کا حکم دیا۔ یوں پھر فیصل آباد کے اقبال سٹیڈیم کے نزدیک 1979 میں کیپٹن مشیت الرحمن کچھ اراضی اور ادارے کی تعمیر کے لئے رقم بھی دی گئی۔ علاقے کے مخیر لوگوں نے بھی ادارے سے مالی تعاون کیا۔ لڑکیوں کی تعلیم کا علیحدہ شعبہ اور قیام کے لئے گرلز ہاسٹل بھی تعمیر کیا گیا۔ نابیناؤں کو پہلے میٹرک تک باقاعدہ تعلیم و تربیت اور ہنر سکھانے کا آغاز ہوا۔ مقامی طلباء کے لئے پک اینڈ ڈراپ کی سہولت بھی ادارے نے دینا شروع کر دی اور دوسرے شہروں کے طلباء و طالبات کے لئے علیحدہ علیحدہ ہاسٹل بنائے گئے۔ ادارے کا نظام ایک بورڈ کے سپرد کیا گیا۔


کیپٹن مشیت الرحمن نے نہ صرف نابیناؤں کو ہنر اور زیور تعلیم سے آراستہ کرنے میں کردار ادا کیا بلکہ بے روزگار نابیناؤں کو سرکاری ملازمتیں بھی دلوائیں ۔ بعضوں کی آپس میں شادیوں کا بندوبست اور ان کی اگلی نسلوں کے محفوظ مستقبل کے لئے بھی اقدامات کئے۔ کیپٹن مشیت الرحمن جنہیں نصف درجن سے زیادہ زبانوں پر عبور حاصل تھا، جو کئی مذاہب اور ثقافتوں کا مطالعہ بھی کر چکے تھے۔ ایک چلتا پھرتا انسائیکلوپیڈیا تھے۔ پہلی نظر میں انہیں دیکھ کر گوشت پوست کا معذور سا شخص سمجھ کر ہر کوئی اپنے تئیں ترس کھانے لگتالیکن جب ان سے گفتگو کرتا اوران کے عزائم سے آگاہی پاتا تو ترس کھانے والا شخص عقیدت سے ان کے ہاتھ چوم کر رخصت ہوتا۔


8جون 1974 کو کیپٹن مشیت نے خالدہ بانو سے دوسری شادی کرلی۔ انہوں نے شادی کے بعد اپنی اہلیہ کو ایم اے اردو اور بی ایڈبھی کروایا۔
ان کے دو بیٹے ہیں۔ ودیعت الرحمن بیٹا اور سحر مشیت بیٹی ہے جو اسلام آباد میں بحریہ کالج میں گونگے بہروں کو پڑھاتی ہیں وہ شاعر ادیب اور معروف قانون دان رائے اظہر تمغۂ شجاعت کی شریک سفر ہیں۔


خالدہ بانونے شادی کے بعد جہاں کیپٹن مشیت کی دیکھ بھال کی ان کے اداروں کا انتظامی کنڑول سنبھالا، اپنی تعلیم مکمل کی وہاں ایران، فرانس، جرمنی اور برطانیہ کے علاوہ ملکوں ملکوں کیپٹن مشیت کے ساتھ بین الاقوامی نابیناؤں کی کانفرنسز اور خصوصی اجلاسوں میں شریک بھی ہوئیں اور فروری 1977میں کیپٹن مشیت کے ہمراہ شاہ فیصل سے بھی ملیں۔ آٹھ غیرملکی دوروں کی طویل کہانی، کامیابیاں اور کارنامے اور بھی طولانی ہیں۔ کیپٹن مشیت نے ایک کتاب بھی لکھی تھی۔ ’’انسانی آنکھیں‘‘ یہ آنکھوں کی ابتدائی بیماریوں اور مسائل سے لے کر نابیناپن اور بصارت کی بحالی تک محیط ہے اور مستند مانی جاتی ہے۔ خالدہ بانو دو کتابوں کی مصنفہ ہیں ایک ان کی سوانح ہے’ سفر حیات‘ اور دوسری اس طویل اور ضخیم کتاب کی تلخیص ہے۔ کیپٹن مشیت الرحمن ملک صدارتی تمغۂ قائداعظم پانے والے معذور ہوتے ہوئے بھی بھرپور زندگی گزارنے اور اپنے مشن کی تکمیل کے بعد 20نومبر2011 کو اکیاسی برس کی عمر میں رحلت فرماگئے اور فیصل آباد کے محمد پورہ والے قبرستان میں ان کی تدفین ہوئی۔

جبار مرزا ایک معروف صحافی اور مصنف ہیں۔ ایک قومی اخبار کے لئے کالم بھی لکھتے ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

نعت

آقاؐ میری بس اتنی تمنا قبول ہو
مجھ پہ تیری نگاہِ کرم کا نزول ہو
دیکھوں میں جس طرف نظر آئے تُو مجھے
عشقِ نبیؐ کا لازم یہ مجھ پر اصول ہو
آلِ رسولِؐ پاک کا ہوجائے یوں کرم
بخشش میری جو ہو تو وصیلہ بتول ہو
ہو جائے یوں علاج میرا اے شافیِ اُمم
خاکِ شفا میری تیرے قدموں کی دھول ہو
گرمجھ سے طلب ہو اِ ک نذرانہ حضورؐ کو
ہاتھوں میں میرے گلشنِ زہرہ کا پھول ہو
حاصل میری وفاؤں کا اے کاتبِ تقدیر
لکھ دے مِرا نصیب میں خدا کا رسولؐ ہو
مسکن میرا ہو گنبدِ خضریٰ کے آس پاس
پیشِ نظر پھر میرے سجدوں کا طول ہو
وقعت کہاں ہے مجھ میں کہ مدحت کروں تری
بخش دیجئے گا مجھ سے سرزد جو بھول ہو
اِ ک نعتِ رسولِ کبریاؐ میری پہچان ہے عتیقؔ
رحمتوں کا کیوں نہ میرے سخن میں شمول ہو
میجر عتیق الرحمن

*****

 

Follow Us On Twitter