26
December

Sultan Shahab-ud-Din Ghori

Published in Hilal English Jan 2014

Written By: Brig Muhammad Khalil Dar

Rawalpindi is usually associated with Taxila when it comes to historical sites. But if one draws a circle of 100 kms (01:30 hour drive) around Rawalpindi, it is startling to find that there are many sites with echoes of history spread over thousands of years. Choha Saidan Shah, Sat Garha Mandar, Mirpur Fort and Rohtas Fort are few of the most famous. Yet another is the tomb of famous Sultan Shahab-ud-Din Ghori, whose name is as associated with Raja Pirthviraj and conquest of India as Alexander the Great's name is with Raja Porus for near similar reasons. The tomb itself is located at an hour and thirty minutes drive from Rawalpindi near the town of Sohawa, District Jhelum. A narrow but metalled road meanders off east to the village Dhamik at 12 kms from the GT Road.

On 15 Dec 2013, I along with my wife decided to visit the tomb and spend some time there, a kind of picnic cum history refresher. On reaching there, we found a four sided tomb majestically perched in a tranquil beauty of broken country side, next to the village Dhamik. Thanks to personal efforts of Dr Qadeer Khan, the architecture of tomb is fairly successful in reflecting the stature attributed to Sultan Shahab-ud-Din Ghori. The combined effect of architecture, isolation of the tomb from its surroundings and a feeling of proximity to such an imposing personality tends to captivate one’s thoughts, especially the one who draws pleasure through indulgence in history. The whirlwind of unstoppable thoughts seems agitating and exciting, throwing images and intriguing questions. One starts to ask oneself, what happened to the Ghori rule in India after his death? Where did he come from and what enabled him to accomplish which could not be achieved by Alexander, 1400 years ago and arguably by Sultan Mehmud Ghaznavi, 150 years before him, etc? And above all, what was the Muslim World elsewhere when he was conquering India?

A little research back home together with chronological arrangement of events lifted the cloak of mystery revealing some interesting history. Which, I thought, I am obligated to share, besides urging the reader to visit the tomb with children.

Shahab-ud-Din Ghori was born as Mu`izz-ud-Din in 1162 AD into a Persian-Turk family in Ghor – an isolated and desolate region located east of Herat. This remote and seemingly landlocked area is known to have been Islamized by Sultan Mehmud Ghaznavi in 1010 AD. At the time of Sultan Shahab-ud-Din's birth, his father, Sultan Baha-ud-Din Suri, was the local ruler of Ghors who were now challenging the then Ghaznavi Kingdom. Muhammad Ghori began his career as a General who assisted his brother in his conquests in the west against the expanding Khwarezimid Empire. It was also the prince, Mu`izz-ud-Din, who was destined to finally take the city of Ghazni in 1173, while his brother, Sultan Ghyias-ud-Din Ghori, succeeded his father as king of Ghors. It was after the successful takeover of Ghazni when he was bestowed upon the title of Shahab-ud-Din. Soon after the consolidation of his rule in Ghazni, his lashkars rode towards the Muslim states of Multan and the fortress of Uch; 1175-76. In 1179, similar attempts towards Gujrat proved unsuccessful but three years later, Sultan Shahab-ud-Din was back to take Peshawar and Sialkot, where he built a fort. In 1187, in alliance with the

Hindu Raja of Jammu, Vijaya Dev, he attacked Lahore and brought an eventual end to Ghaznavids' rule in India. He returned after 10 years to extend his rule beyond Bias River and faced the powerful Raja Prithviraj Chauhan, the ruler of Delhi, Ajmer and its allies. Ghori was injured and defeated in this battle i.e first battle of Tarain, 1191. The resilient and undaunted Sultan Ghori returned the very next year with vengeance and thoroughly defeated isolated Prithviraj Chauhan in 2nd battle of Tarain, 1192. This decisive victory came as a result of his unparallel speed in preparation and then returning to India i.e in merely one year, delay of other Hindu Rajas in joining Pirthviraj before the battle and an unconventional pre-dawn attack by Ghorid Army on orthodox Hindu Rajputs on the day of battle. He took the captured Prithviraj back with him to Ghazni, where he was executed the same year.

By 1194 his forces had captured areas beyond Delhi. Shahab-ud-Din Ghori became Sultan of the Ghorid Empire upon the death of his brother, Ghiyas-ud-Din, in 1202. This was the zenith of Ghorid Empire which now included areas from Herat to Ajmer. Their initial capital was in Firuzkuh in Ghor which was later replaced with Herat while Ghazni and Lahore served as regional / seasonal capitals. Besides being a strategic warrior, Shahab-ud-Din also had a lot of interest in art and culture, where he patronised scholars like Fakhr-ud-Din Razi and Nizami Uruzi. In 1204, Shahab-ud-Din Ghori had to repulse the advance of Muhammad II of Khwarzim close to Amu Darya; an evidence of his reach and resilience. However, his greatest success was the establishment of the Turkish Empire in India which added a fresh chapter in the Indian history. He himself chose to stay away from India and distributed conquered lands among his able Turkik Slaves; a common practice in that era among Turks.

Just four years after his takingover Ghorid Empire, on 25 March 1206, he was mysteriously killed at Dhamik while returning to Ghazni after crushing a revolt in Punjab. At the time of his regretful and untimely assassination, the Sultan was only 44 years old. Allegedly, his killers were Hindu Ghakhar or Hindu Khokher tribesmen of Pothohar or even radical Muslim Ismailies of Multan (to avenge the loss of their stronghold). Since he didn't have any offspring, Qutb-ud-Din Aibak, his loyal Mamluk Slave, became his successor and ruled over Delhi, who later not only broke away from main Empire in Ghaznavi, establishing independent Sultanate in Dehli, but also extended the rule east upto Bihar. By 1212 Ghorids' empire was reduced and marginalised, though, short-lived and petty, its remnant states remained in power until the arrival of Timurids in late 14th Century. In regional perspective, Ghorids mainly succeeded Ghaznavids, a hard fact that in the wars of conquest, both interfaith and intra-faith clashes are inevitable. Unfortunately, it was Ghazni which bore the brunt of Ghorid expansion when it was burnt by Ghorids for seven days. Ghaznavi - Ghori rivalry mainly meant that no restive regions of Khorasan and Ghazni.

But in all of this, what were the happenings in the contemporary Muslim World elsewhere? In 1192, when Sultan Ghori finally defeated Raja Pirthviraj, the seat of Abbasid Caliphate in Baghdad had become insignificant. Broke-away Kingdom of Khwarzim was expanding like many other petty states at the expense of the Caliph's authority. Sultan Salah-ud-Din had defeated the Crusaders and liberated Jerusalem ending the Christian occupation of 100 years, but his successors were unable to keep order. Fatimids, who challenged Abbasids, ruled Eygpt and the remnants of Umayyads who survived Abbasid persecution in Iraq were established far away in Spain. Internally, the Shia-Sunni divide was at its maximum, while externally, the entire northern portions of Islamic regions were under constant attacks of various tribes of Turks.

As a strange coincidence of history it was the year 1206, i.e Shahab-ud-Din's assassination near Jhelum, far away in Eastern Steppes of Mongolia, an unknown warrior adopted the title "Genghis Khan" by solidifying his authority over other tribes when he finally tamed the Kara Khatians, his last opponents in west. Mongols were now not only neighbours of Muslim lands but the Mongol horde was boiling to explode with all its ferocity and lightening speed. When it finally came in 1219, Indian Sultanate under Iltumash, a legacy of Ghorids chose to lay back in safety of Central India while a reduced Abbasid Caliphate in Baghdad adopted the strategy of self denial and watched the decimation of Khwarzim cities of Samarkand and Bukhara. In the next 50 years, Mongols would devour all Muslim lands one by one from Lahore to Aleppo via Baghdad. The last Abbasid Caliph was killed by Halagu Khan in 1258.

One cannot help but ponder: had history taken the same path if the brave and untiring Sultan Shahab-ud-Din was not stabbed at the age of 44 while offering prayers at the village of Dhamik? Genghis Khan died at the approximate age of 70 i.e 22 years after Sultan Shahab-ud-Din. The Mongol hordes later rode through the lands of opposing Ghorid and Khwarzim Empires towards heartlands of Muslim World. Alas! the Muslims were united

29
December

شہید اعتزازحسن

Published in Hilal Urdu Jan 2014

6جنوری کی ٹھٹھرتی صبح پروین بیگم نے بڑے پیار سے اپنے بیٹے کو سکول کے لئے بیدار کیا۔ بچہ لحاف اوڑھے سکول نہ جانے کی ضد کر رہا تھا، شائد کوئی قوت اسے آج گھر سے نکلنے سے روکنا چاہتی تھی لیکن ماں نے بچے کی تعلیم کی خاطر ایک نہ سنی، بچے نے مزیدار ناشتے کی فرمائش کی شائد اسی بہانے ماں اس کی بات مان لے۔پروین بیگم نے بڑے چاؤ سے بیٹے کے لئے پراٹھا اور انڈہ بنا دیا جسے کھا کر ننھا اعتزاز گورنمنٹ ہائی سکول ابراہیم زئی، ہنگو کے لئے روانہ ہوا۔ ضلع ہنگو پاکستان کے شمال میں صوبہ خیبرپختونخوا میں واقع ہے جس کی آبادی قریباً پانچ لاکھ نفوس پر مشتمل ہے، یہ مقام تازہ پانی کے ذخائر اور پھولوں کی کئی اقسام کی وجہ سے جانا جاتا ہے۔ اعتزاز جب اپنی والدہ کو الوداع کہہ کر سکول کی جانب روانہ ہوا تو سورج بادلوں کی اوٹ سے نکلنے کی ناکام کوشش کر رہا تھا۔ ہنگو روڈ کوہاٹ پر اِکا دُکا گاڑیاں چل رہی تھیں، قنبر عباس نے ابھی کریانہ سٹور کھولا ہی تھا۔ گورنمنٹ سکول ابراہیم زئی ہنگو کے لان میں ملیشیا شلوار قمیض اور کالی ٹوپی پہنے بچے سکول میں جمع ہو رہے تھے۔

اعتزازحسن، شاہ زیب الحسن اور زاہد علی سکول میں داخل ہونے ہی والے تھے کہ اعتزازحسن کی نظر26سال کے نوجوان پر پڑی جو چادر اوڑھے مشکوک انداز میں سکول کی طرف بڑھ رہا تھا جس کا ایک ہاتھ چادر سے باہر تھا اور دوسرے ہاتھ سے اس نے چادر کے اندر کسی چیز کو مضبوطی سے پکڑ رکھا تھا۔ ننھے اعتزاز حسن نے جو پچھلے دس سال میں دہشت گردی کے ماحول میں بڑا ہوا تھا اور چھٹی جماعت کا طالب علم تھا فوراً خطرے کو بھانپ لیا، اس نے ایک طرف اپنے سکول کی طرف نظر دوڑائی‘ اظہر سکول اسمبلی کو لیڈ کرنے کے لئے تیار تھا، نوازش، منتظر، ۔۔۔ علی، علی حیدر اور محمد حسین ۔۔۔ پاک سر زمین شاد باد پڑھنے کی تیاری کر رہے تھے جبکہ علی اور حیدر‘ علامہ اقبال کی نظم ’’لب پہ آتی ہے دُعا بن کے تمنا میری‘‘ کی ریہرسل کر رہے تھے، دوسری جانب وہ مشکوک نوجوان تیزی سے سکول کی جانب بڑھ رہا تھا۔ ایک طرف اعتزاز حسن کے ساتھیوں کا ہجوم تھا جو سکول میں مستقبل کے سہانے خواب سجائے سکول کے صحن میں جمع تھے اور دوسری طرف اعتزاز حسن ایک کٹھن مرحلے سے دوچار تھا‘ اسے فیصلہ کرنا تھا کہ اپنی جان بچائے یا سکول کے بیسیوں ساتھیوں کی۔ علی حیدر کی آواز میں اقبال کی نظم اعتزازحسن کے کانوں سے ٹکرا رہی تھی ’’زندگی شمع کی صورت ہو خُدایا میری‘‘ اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے ننھا اعتزازحسن مشکوک نوجوان سے لپٹ گیا۔ قنبر عباس ابھی دُکان میں چیزیں ترتیب ہی دے رہا تھا، پروین بیگم نے تو ابھی بچے کے ناشتے کے برتن بھی نہ سنبھالے تھے کہ یکایک دھماکہ ہوا اور اعتزاز کی زندگی کا چراغ بجھ گیا، کلاس میں آخری بینچ پر بیٹھنے والا اعتزاز آج سب پر بازی لے گیا۔ ہنگو کی فضا میں ایک ہی آواز گونج رہی تھی ’’زندگی ہو میری پروانے کی صورت یا رب‘ علم کی شمع سے ہو مجھ کو محبت یارب۔‘‘ اعتزاز حسن خود تو شمع کی مانندجل گیا لیکن ابراہیم زئی کے سابق چیئرمین یونین کونسل پیش فرمان کے مطابق وہ ہمیں ایک نیا عزم اور حوصلہ دے گیا کہ ننھے بچے بھی اب تو دہشت گردی کے خلاف اُٹھ کھڑے ہوئے ہیں اور انشاء اللہ اِسے ختم کر کے ہی دم لیں گے۔

ننھے اعتزازحسن کا جسم جب ہوا میں اُچھلا تو اُس کی آنکھیں اپنے ہم مکتبوں کی طرف اُٹھیں ان میں چمک تھی جو کہہ رہی تھیں کہ میں نے اپنا آج تمہارے کل کے لئے قربان کر دیا۔ننھے اعتزازحسن نے شائد اپنی عمر اور اپنے قد سے بہت بڑا کارنامہ سر انجام دیا ہے۔ مؤرّخ جب بھی ہماری تاریخ لکھے گا تو وہ حیران ہو گا کہ یہ قوم کیسی کیسی مشکلات سے نہیں گزری، 2005کا زلزلہ ہو،2010کا سیلاب ہو یا دہشت گردی اس قوم کے حوصلے پست نہیں ہوئے، یہ قوم کل بھی متحد تھی اور آج بھی متحد ہے، دہشت گرد اس قوم کے حوصلے پست نہیں کر سکے۔ اس حقیقت سے کسے انکار ہے کہ دہشت گردوں کو ہتھیاروں کی کمی نہیں لیکن قوم کا حوصلہ سب سے بڑا ہتھیار ہے۔ اعتزاز شہید کے واقعے نے پوری قوم میں امید کی ایک نئی لہر پھونک دی ہے۔ اعتزازحسن کی قربانی کا اعتراف جہاں پوری قوم نے کیا ہے وہاں عسکری قیادت نے بھی اس کو قابلِ قدر قرار دیا ہے۔ چیف آف آرمی سٹاف، جنرل راحیل شریف نے بجا طور پر کہا کہ وطن کی خاطر جان نچھاور کرنے سے بڑی قربانی کوئی نہیں ہو سکتی۔ عالمی و ملکی ذرائع ابلاغ، پاکستانی قوم اور افواجِ پاکستان نے بجا طور پر اس ننھے ہیرو کو شاندار خراجِ تحسین پیش کیاہے۔شہید کی موت دراصل قوم کی حیات ہے اور زندہ قومیں اپنے ہیروز کو ہمیشہ یاد رکھتی ہیں۔ عموماً سوگ صرف 3 روز تک منایا جاتا ہے لیکن آج اتنے دنوں بعد بھی اعتزازحسن کا ہر زبان پر تذکرہ ہے۔ گورنمنٹ بوائز سکول ابراہیم زئی کے صحن میں پرنسپل لعل صاحب کے ارد گِرد طالب علم جمع ہیں۔ اظہر تلاوت کر چکا ہے، علی حیدر اور محمد حسین ڈائس پر اقبال کی نظم پڑھ رہے ہیں، شائد ایسے لگتا ہے

ننھا اعتزاز حسن بھی پڑھ رہا ہو،

دُور دنیا کا میرے دم سے اندھیرا ہو جائے

ہر جگہ میرے چمکنے سے اُجالا ہو جائے

ہو میرے دم سے یُونہی میرے وطن کی زینت

جس طرح پھول سے ہوتی ہے چمن کی زینت

میرے اللہ ہر بُرائی سے بچانا مجھ کو

نیک جو راہ ہے اس راہ پہ چلانا مجھ کو

پورا سکول اشک بار ہے۔ محمد ہلال، ریاض علی کی گالوں پر آنسو بہہ رہے ہیں لیکن یہ آنسو کمزوری کے آنسو نہیں بلکہ یہ تشکر کے آنسو ہیں۔ درحقیقت یہ ایک نئے ولولے اور نئے عزم کا آغاز ہے اس مشن کو تکمیل تک پہنچایا جائے جس کے لئے اعتزاز حسن نے جان دی ہے۔ ماسٹر حبیب علی ویسے تو معمول کے مطابق کلاس ششم میں داخل ہوا کرتے تھے لیکن آج وہ ایک نئے عزم کے ساتھ کرسی پر براجمان ہیں‘ لیکن اعتزاز کا بنچ خالی ہے، شان اور عاکف بائیں جانب اعتزاز کی خالی نشست کی طرف دیکھتے ہیں جیسے وہ کہہ رہا ہو کہ میری قربانی رائیگاں نہیں جانے دینا۔ میں نے اپنے خواب تم سب پر قربان کر دئیے ہیں۔ قنبر عباس نےRIO بسکٹ اور Laysجو اعتزاز کو بہت پسند ہیں اور وہ ہر روز اس سے آ کر خریدتا تھا‘ سنبھال کر رکھے ہیں کہ ابھی اعتزاز اس سے لینے آئے گا۔ والدہ نے سبز مرچ کے ساتھ سالن تیار کر رکھا ہے، اعتزاز کے کالے دو تیتر خوش ہیں کہ ابھی اعتزاز انہیں آ کر دانہ کھلائے گا۔ مجتبیٰ، نازیہ اور زرشیہ بھائی کا انتظار کر رہے ہیں اور میں اعتزاز کے کزن آصف رضابنگش کی پشتو نظم کا اردو ترجمہ کر کے اُسے خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں اورپُر اُمید ہوں کہ یہ قوم اعتزاز کی اس قربانی کو ہمیشہ یاد رکھے گی۔ جب سے اعتزاز نے موت کو اپنے گلے لگایا،

اُس کی ماں فخر کرتی ہے اور میں اُس کو سلام پیش کرتا ہوں،

شہید مرتا نہیں یہ قرآن کا فیصلہ ہے،

میں ہر وقت اس قرآنی آیت کو سلام کرتا ہوں،

ساری دنیا جب اعتزاز پہ فخر کرتی ہے،

جب خزاں آتی ہے پھر میں اس کے بعد بہار کو سلام کرتا ہوں،

پاکستان کی فوج نے ہر منزل پہ قربانی دی ہے،

میں اپنی طرف سے پاک فوج کے ہر جوان کو سلام پیش کر تا ہوں

ہم نے پاک فوج کو ماں کا درجہ دیا ہے،

ہم سب کی طرف سے ہر فوجی کو سلام

اس کا کارنامہ رہتی دنیا تک باقی رہے گا

<میں ہر وقت کم سن شہید کو سلام پیش کرتا ہوں

جب اعتزاز کو اللہ نے اعزاز عطا کیا ہے،

میں معصوم کی شہادت کو سلام پیش کرتا ہوں،

اے علی خانان اپنے رب سے شہادت مانگو،

میں ہر شہید کے زخمی سینے کو سلام کرتا ہوں

10
January

قوم کا گمشدہ ہیرو

تحریر: پروفیسر ڈاکٹر معین الدین

ایک ناتواں کمزور اور لاغر بوڑھا 52سال کی قید بامشقت دشمن کے ملک میں گزار کر واپس اپنے ہیڈکوارٹر آتا ہے، وہاں موجود فوجی افسر کو فولادی استقلال کے ساتھ سلیوٹ کرتا ہے۔ اس کی کٹی ہوئی زبان کچھ کہنے سے قاصر ہوتی ہے۔ مگر عقابی چمک دار آنکھیں کہتی ہیں کہ سپاہی مقبول حسین اپنی ڈیوٹی پر حاضر ہے سر! سپاہی مقبول حسین ایک گمشدہ قوم کا سپاہی ہے۔ یہ وہ زمانہ تھا جب پاکستان میں سندھی، مہاجر، پنجابی، بنگالی اور بلوچ جیسی نسلیں آباد نہ تھیں صرف اور صرف پاکستانی قوم بستی تھی۔ اس ملک کا نام دنیا میں روشن تھا۔ پاکستان تعلیم، صنعت، زراعت میں تیزی سے ترقی کر رہا تھا۔ ملک کی بیورکریسی میں تعلیم یافتہ نوجوان جو پبلک کمیشن کا کڑا امتحان پاس کر سکتے تھے، موجود تھے۔ سفارش، اقرباء پروری، لسانیت اور رشوت ستانی میں کم لوگ مبتلا تھے مگر یہ بھی شرمائے شرمائے اور سہمے سہمے سے رہتے تھے کہ کسی محلہ دار کو رشتہ دار کو اور عام لوگوں کی اس کی بھنک نہ پڑ جائے۔ لوگ عزت کے لئے مرتے تھے، پیسے کو ہاتھ کا میل سمجھتے تھے۔ شرمساروں کے لئے چلو بھر پانی کافی ہوتا تھا۔ یہ وہ وقت تھا جب پاکستان اور پاکستانیوں کی عزت سمندر پار بھی کی جاتی تھی۔ پاکستان یورپ کے اکثر ممالک سے زیادہ ترقی یافتہ تھا۔ جرمنی جیسا ملک تک پاکستانی امداد کا شکر گزار تھا۔

gumshudahero.jpg


کشمیر کی آزادی کے لئے پاکستان کشمیریوں کی بھرپور مدد کرنے کی پوزیشن میں تھا اور کر بھی رہا تھا۔ ایسے میں نام نہاد اقوام متحدہ کی مسلسل کوتاہیوں، نظر انداز کرنے اور کشمیریوں پر ظلم کے خلاف لائن آف کنٹرول پر جنگ چھڑ گئی۔ اس موقع پر پاکستان کے چند عیار دوستوں نے پاکستان کو یقین دلایا کہ جنگ صرف متنازعہ علاقے تک محدود رہے گی اور انڈیا بین الاقوامی سرحد ہر گز پار نہ کرے گا اور بدقسمتی سے ہم نے یقین بھی کر لیا۔ پاکستان نے پیش قدمی شروع کی، دریائے توی ایک جھٹکے میں پار ہو گیا۔ چھمب جوڑیاں فتح ہوا اور پٹھان کوٹ پر قبضہ ہوا ہی چاہتا تھا کہ 5گنا بڑے دشمن نے جب اپنی دال کشمیر میں نہ گلتی دیکھی تو لاہور پر اچانک حملہ کر دیا۔ انہیں اپنی فتح کا اتنا یقین تھا کہ شام کو انہوں نے لاہورپر قبضے کی فتح کا جشن لاہور جم خانہ میں شراب پی کر منانے کا اعلان بھی کر دیا تھا۔ دشمن کی ایک جیپ بی آر بی نہر کو کراس کر کے شالامار باغ تک پہنچ گئی کہ اﷲتعالیٰ نے پاکستان کی مدد کی۔ اس جیپ کے افسر نے سوچا کہ ہمیں کہیں بھی پاکستانی فوج کی حرکت نظر نہیں آئی کہیں یہ اس کی چال نہ ہو اور وہ ہم کو گھیر کر مارنا چاہتا ہو۔ لہٰذا انڈین فوج کو بی آر بی نہر کراس نہ کرنے کا مشورہ دیا۔ بس اس دوران پاکستانی فوج کشمیر کے محاذ سے وہاں پہنچ گئی اور شام کو لاہور جم خانہ میں فتح کا جشن منانے والے 17روز تک بی آر بی نہر کا پانی پیتے رہے اور دھول چاٹتے رہے۔ بی آر بی نہر پاکستان کا اسٹالن گراڈ بن گئی جہاں سے دوسری جنگ عظیم میں جرمنی کی افواج کی شکست کا آغاز ہوا تھا۔ ایسے ہی بی آر بی سے دشمن کی شکست کا آغاز ہوا۔


پاکستانی قوم سیسہ پلائی ہوئی دیوار بن گئی۔ لاہور کے باسی ہاتھوں میں ڈنڈے لئے سرحدوں کی طرف نکل پڑے۔ بڑی مشکل سے ان کو واپس کیا گیا کہ ان کی فوج دشمن کے لئے کافی ہے۔ سیالکوٹ کے محاذ پر دوسری جنگ عظیم کے بعد دنیا کی سب سے بڑی ٹینکوں کی جنگ لڑی گئی۔ جس میں 450انڈین ٹینک کا مقابلہ 150پاکستانی ٹینکوں نے کیا۔ نوجوانوں نے اپنے سینوں پر بم باندھے اور ٹینکوں کے نیچے لیٹ گئے اور چونڈہ کے میدان کو دشمن کے ٹینکوں کا قبرستان بنا دیا۔ ہوائی فوج نے دشمن کے ہوائی اڈوں اور بحری فوج نے دوارکا کے قلعہ کو قبرستان میں تبدیل کر دیا۔ نوجوان جوق در جوق فوج میں شامل ہونے لگے۔ بیٹیوں نے اپنا تمام زیور اور جہیز دفاعی فنڈز کو دے دیا اور بچوں نے اپنا جیب خرچ۔ پیر صاحب پگاڑا کے بہادر ''حر'' ہاتھ میں بیلچہ لے کر فوج کے ساتھ کھڑے ہو گئے۔ شاعروں نے ایسی شاعری کی اور گُلو کاروں نے ایسی گُلوکاری کی جو امر ہو گئی اور آج تک ایسی شاعری اور گلوکاری پھر نہ سنی گئی۔ ہماری فوج کے افسران نے سپاہیوں کے ساتھ اگلے مورچوں پر جام شہادت نوش کیا۔ آج بی آر بی نہر کے کنارے کنارے میلوں تک شہیدوں کے مزارات اس کی گواہی دیتے ہیں کہ جنگیں اسلحے کی بنیاد پر نہیں شہادت کے جذبے سے لڑی جاتی ہیں۔ ہماری فتح یہ کیا کم تھی کہ ہم نے اپنے سے پانچ گنا بڑے دشمن کے عزائم خاک میں ملا دیئے تھے اور اس کو منہ کی کھانے پر مجبور کر دیا تھا۔


سپاہی مقبول حسین بھی اسی دور کا سپاہی تھا جو دشمن کے ہتھے چڑھ گیا۔ بزدل دشمن نے اس کی زندگی موت سے بدتر کر دی۔ تمام اخلاقی اور جنگی قوانین کو نظر انداز کر کے اس پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑ دیئے اور اپنی جھوٹی تسکین کے لئے اس کی زبان سے پاکستان مخالف نعرہ لگوانے کی ناکام کوشش کی مگر یہ مردآہن اقبال کا سپاہی تھا، زبان کٹوا لی مگر اپنی زبان کو پاکستان کی مخالفت میں استعمال نہ کیا۔


جب ظلم کی انتہا ہو گئی تو بادل نخواستہ اس کو پاکستان بھجوا دیا گیا۔ پاکستان کا ہیرو گمشدہ قوم کا ہیرو اور بہادر سپوت جس کو عیار اور بزدل دشمن نے غیرقانونی طور پر 52سال جنگی قیدی بنائے رکھا، واپس آ گیا۔ فوج کا بندہ تھا فوج نے اس کو ستارۂ جرأت سے نوازا۔ مگر وہ جس دور میں واپس آیا وہ تو کوئی نئی دنیا ہے۔ لہٰذا کسی اخبار کے اولین صفحہ پر اس کی تصویر کو جگہ نہ ملی۔ نہ اس کی زندگی پر کسی نے لکھا نہ شاعری کی نہ کسی گلوکار نے کوئی نغمہ گایا نہ کسی ٹی وی پروگرام کی زینت بنایا گیا۔ نہ کسی ٹاک شوز کا حصہ ہوا نہ رمضان کے کسی پروگرام میں وہ بلایا گیا۔ کیونکہ وہ تو صرف ایک سپاہی ہے اور اپنے وطن کی عزت اور محبت میں مر مٹنے والے ایسے انسان سے کسی ٹی وی کی ریٹنگ کہاں بڑھ سکتی ہے۔ کسی نے اس کی خاموش زبان مگر باتیں کرتی آنکھوں کا تعارف نہیں کروایا۔ کوئی اور ملک ہوتا تو ہفتوں اس کے تذکرے ہوتے۔ اس کی جرأت بہادری کے قصے بچے بچے کی زبان پر آتے، اس پر ڈرامے بنتے، فلم بنتی، دشمن کے ظلم کے چرچے ہوتے۔ عیار دشمن کے بزدلانہ رویے سے دنیا کو رُوشناس کروایا جاتا۔ پوچھا جاتا کس قانون کے تحت جنگی قیدی کی زبان کاٹی گئی، اور 52سال تک قید رکھا گیا۔ ظالموں سے حساب مانگا جاتا۔ مگر افسوس صد افسوس یہ ہو نہ سکا۔ سپاہی مقبول حسین اس گمشدہ دور کا انسان ہے کہ جب ایک بیٹے نے فوج کی نوکری چھو ڑ کر تجارت کی ٹھانی اور اپنے باپ کے منصب سے فائدہ اٹھایا تو قوم یہ برداشت نہ کر پائی اور اٹھ کھڑی ہوئی اور وہ باپ جس نے جب اپنے بارے میں عوام کو گالی دیتے سنا تو اس کی غیرت نے صدارت کی کرسی پر بیٹھنا گوارا نہ کیا اور الگ ہو گیا۔ آج کے دور سے اس گمشدہ دور کا موازنہ ناممکن ہے۔ آج وہ قوم کہیں گم ہو چکی ہے اب تو صرف لسانیت، ناانصافی، بے شرمی، ظلم، رشوت ستانی اور جھوٹ کا راج ہے۔ آج کے دور میں غیرت آنی جانی چیز ہے۔ سپاہی مقبول حسین ایک غلط دور میں آ گیا۔ میں ڈرتا ہوں کہیں اس کی آنکھیں یہ سوال نہ کر لیں کہ کیا اس نے اور ہزاروں شہیدوں نے یہ قربانی آج کے دورکے پاکستان اور ان بکھرے تنکوں کے لئے دی تھی۔


لیکن ذرا توقف کیجئے۔ فضا گھمبیر ہے مگر مکمل تاریک نہیں۔ دیکھئے تو سپاہی مقبول کے قبیلے کے لوگ اب بھی اپنے جنوں میں ڈوبے ہوئے ہیں۔ وطن کی محبت سے سرشار ہیں۔ سرکٹانے کو کل بھی تیار تھے اور آج بھی جوشِ جنوں میں کوئی کمی نہیں آئی۔پاکستان کی محبت میں پاک افواج کے افسراور جوان آج بھی شہادت درشہادت کے سلسلے کو جاری رکھے ہوئے ہیں۔ وہ کشمیر کا محاذ ہو ، بین الاقوامی سرحد ہو یا اندرونی صفوں میں پوشیدہ دہشت گرد۔ پاک افواج کے بہادر افسران اور جوان تمام محاذوں پر چومُکھی لڑائی نہایت کامیابی سے لڑ رہے ہیں۔ یہ سرفروش پاکستان کے دفاع اور سلامتی کے ضامن ہیں۔ پوری پاکستانی قوم بھی اپنی افواج کے ساتھ ہے۔ ذرا غور سے دیکھئے تو مایوسی، بے جاتنقید، انتشار اور نفاق کے بیج بونا چند لوگوں کا ایجنڈا ہے۔ کچھ کو تو بیرونی عناصر کی پشت پناہی حاصل ہے اورکچھ بزعمِ خود انصاف اور امن کے علمبردار بن بیٹھے ہیں۔ ان نادان دوستوں کو دنیا میں اسلحہ کے ڈھیر لگانے والے ممالک، دوسرے ملکوں پر قبضہ کرنے والی افواج، فلسطین اور کشمیر کے بے بس عوام اور دنیا میں کروڑوں انسانوں کا معاشی استحصال نظر نہیں آتا۔ نظر جا کر ٹھہرتی ہے تو صرف اور صرف پاکستانی افواج اور انٹیلی جنس کے اداروں پر کہ اُن پر تنقید صاحبِ علم ہونے کی سند جو ٹھہری۔


سپاہی مقبول کی گمشدہ قوم آج بھی پوری توانائی اور طاقت سے موجود ہے۔ وطن کی محبت سے آج بھی سرشار ہے۔ اُسے اپنی پاک افواج پر آج بھی ناز ہے۔ بس دیکھنے والی آنکھ چاہئے۔ ایک عرفان چاہئے۔ یقین اور ایمان کی دولت چاہئے کہ بقول قائداعظم ''دنیا کی کوئی ایسی طاقت نہیں جو پاکستان کو مٹا سکے۔''

پروفیسر ڈاکٹر معین الدین احمد عرصہ دراز سے تعلیم اور تحقیق سے وابستہ ہیں۔ 7کتابوں کے مصنف اور تقریباً 200تحقیقی پرچے بین الاقوامی اور قومی سائنسی جرنلز میں چھپوا چکے ہیں۔ وفاقی اردو یونیورسٹی کراچی میں فارن پروفیسر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔
 
08
January

اے جذبہء دل گر میں چاہوں

تحریر: نزاکت علی شاہ

وزیرستان میں فرائض کی انجام دہی کے دوران شہادت کا رتبہ پانے والے مبشرحسین شاہ (شہید) کے حالات زندگی کے بارے میں ایک تحریر

 

مبشر حسین شاہ 13مارچ 1990کو شب قدر کے موقع پر تحصیل مری کے ایک غریب سادات گھرانے میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد نزاکت علی شاہ پرائمری سکول کے استاد ہیں۔ دینی تعلیم گھر میں والدہ

سے حاصل کی اور قرآن مجید پڑھنا سیکھا۔ اپریل 1995 کو گورنمنٹ پرائمری سکول لارنس کالج گھوڑا گلی مری میں داخل ہوئے جہاں سے مارچ2004 کو پرائمری پاس کرنے کے بعد گورنمنٹ ہائی سکول مری میں داخلہ لیا اور میٹرک کا امتحان 2007میں اسی سکول سے پاس کرنے کے بعد گورنمنٹ کالج مری میں داخل ہو گئے۔


سچ بولنا‘ انسانی ہمدردی‘ محنت‘ دیانتداری‘ ملکی و ملی اخوت اور بے باکی جیسے اوصاف مبشر حسین شاہ کی گھٹی میں پڑے ہوئے تھے۔ ابتدائی عمر ہی سے فرمانبرداری اور فرض شناسی کو اپنا شعار بنا لیا۔ تعلیمی زندگی میں گھریلو کام کاج میں خوب حصہ لیتے اور ہمیشہ ماں باپ کا خیال رکھتے تھے۔ گھر میں بہن بھائیوں سے چھوٹا ہونے کے سبب اکثر والدین اور بہن بھائی گھریلو کاموں کے لئے مبشر کو کہہ دیتے تھے مگر زندگی بھر کبھی کسی کام سے ان کی زبان سے انکار نہ سنا۔


اپنے گھر میں گزاری ہوئی مبشر حسین شاہ کی کوئی رات ایسی نہ تھی جس میں رات سونے سے قبل اور صبح اٹھنے کے بعد اپنے ماں باپ کی خوشنودی نہ حاصل کی ہو۔ رات اپنی چارپائی پر جانے سے پہلے ماں باپ کے پاؤں، ٹانگیں، بازو، کندھے دبا کر سوتے اور صبح جاگتے ہی اس عمل کو دہرانے کے بعد وضو کے لئے پانی لوٹے میں رکھ کر دیتے۔کبھی ماں باپ کو رنجیدہ پاتے تو اُن کے پاؤں پر سر رکھ دیتے اور انہیں خوش کرنے تک سر، پاؤں سے نہ اٹھاتے تھے۔

 

ayjazbaedil.jpgقومی شناختی کارڈ ملتے ہی کالج میں ابھی سال دوم کے طالب علم تھے کہ جون 2008 میں اپنے بابا سے اجازت لے کر پنجاب رجمنٹ سنٹر مردان بھرتی ہونے چلے گئے۔ مگر اپنے شوق کو ساتھ لئے ناکام واپس ہو کر تعلیمی سلسلہ جاری رکھا۔ پاک آرمی جوائن کرنے کا شوق پورا کرنے کے لئے دسمبر 2008 کو دوبارہ مردان سنٹر پہنچے اور پنجاب رجمنٹ میں بھرتی ہو گئے۔جولائی 2009 میں اپنی تربیت مکمل کر کے 33پنجاب رجمنٹ میں سپاہی کی حیثیت سے خدمات سرانجام دینے لگے۔ 33پنجاب رجمنٹ اس وقت گوادر میں تھی جہاں دوران خدمات ان کا دایاں پاؤں ٹوٹ گیا اور طویل عرصہ تک الشفاء ٹرسٹ کراچی ‘ سی ایم ایچ مری اور سی ایم ایچ اوکاڑہ میں زیرعلاج رہے۔ طویل علاج کے بعد رو بصحت ہوئے اور یونٹ گوادر سے اوکاڑہ چھاؤنی منتقل ہوئی تو 18 پنجاب رجمنٹ کو شمالی وزیرستان جانے اور دشمنان ملک و ملت کے خلاف آپریشنل کارروائی کا حکم ملا۔ اسی عظیم کارنامے کو سرانجام دینے کے لئے 18پنجاب رجمنٹ کو مزید نفری کی ضرورت تھی جو دیگر پنجاب رجمنٹس سے ڈیمانڈ کی گئی۔ ایسی صورت حال میں سپاہی مبشر حسین شاہ نے رضاکارانہ طور پر 18پنجاب رجمنٹ میں شامل ہو کر اس جہاد میں حصہ لینے کا اظہار کیا سینئر افسران نے اسے کم عمری کے باعث اس شوق سے روکا۔ مگر اس کے باوجود انہوں نے یہ ضد پوری کی اور 18پنجاب رجمنٹ میں شامل ہو کر شمالی وزیرستان چلے گئے۔ اس کارروائی کا حصہ بنے تقریباً پانچ ماہ کا عرصہ گزرا تھا کہ جنوری 2013 کو نصف شب مبشر نے اپنے والد کو زندگی کا آخری فون کیا۔’’جس میں اپنے لئے شہادت کی دعا کرنے کو کہا۔‘‘


پاک آرمی کے سیکڑوں جوان معمول کے مطابق فوجی گاڑیوں میں سوار قافلے کی صورت میں 13جنوری 2013 بروز اتوار وزیرستان سے بنوں جا رہے تھے کہ دن تقریباً دیڑھ بجے اس قافلے کی ایک فوجی گاڑی کو میران شاہ کے مقام پر بم دھماکہ سے اڑا دیا گیا جس میں سپاہی مبشرحسین شاہ کے علاوہ دیگر جوان بھی سوار تھے۔


اس بم دھماکے کے نتیجے میں کئی فوجی جوان موقع پر شہید ہو گئے اور مبشر حسین شاہ سمیت چند جوان شدید زخمی ہوئے۔ شدید زخمیوں کو میران شاہ سے بنوں اور وہاں سے بذریعہ ہیلی کاپٹر اسی شام سی ایم ایچ پشاور لایا گیا جہاں زخمیوں کی جان بچانے کی سرتوڑ کوشش کی گئی مگر سر پر لگے ہوئے گہرے زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے 23جنوری2013ء بمطابق 10ربیع الاول 1434ہجری بدھ کی دوپہر سپاہی مبشرحسین شاہ جام شہادت نوش کر تے ہوئے اپنے خالق حقیقی سے جا ملے۔


اسی شام پشاور سی ایم ایچ سے جسد خاکی نماز جنازہ ادا کرنے کے بعد ان کے آبائی علاقہ روانہ کر دی گئی۔ 24جنوری بروز جمعرات بوقت دس بجے بوائز سکاؤٹس گراؤنڈ میں فوجی اور سول افسران سمیت ہزاروں کی تعداد نے شہید کی نماز جنازہ ادا کی اور فوجی اعزازات کے ساتھ شہید کو گھر کے قریب دفن کر دیا گیا۔
شہید کے جذبہ حب الوطنی اور بہادری کے اعتراف کے صلہ میں پاک فوج اور حکومت پاکستان نے انہیں تمغہ بسالت کا اعزاز عطا کیا۔

Follow Us On Twitter