24
December

جرأت کے پیکر

کیپٹن عبدالسلام شہید کی داستان شہادت

جس قوم کے بیٹے اپنے عظیم ملک پر قربان ہونا جانتے ہوں اس قوم کو باوقار اور محفوظ قوموں کی صف میں کھڑا ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ کیپٹن عبدالسلام بھی انہی بیٹوں میں سے ایک ہیں جنہوں نے قوم کے لئے جان کا نذرانہ دے کر وطن کی لاج رکھی۔

ایک مسلمان کا یہ اعزاز ہے کہ اس کی شہادت کی موت قوم کی حیات ہوتی ہے اور شہید خود بھی حیات دائمی پاتا ہے۔ کیونکہ اﷲ تعالیٰ نے مسلمانوں کو منع کر دیا ہے کہ ’’وہ لوگ جو اﷲ کی راہ میں قربان ہو جائیں انہیں مردہ نہ کہو بلکہ وہ زندہ ہیں مگر تم ان کی زندگی کا شعور نہیں رکھتے۔‘‘ (القرآن) یہی وجہ ہے کہ ملت اسلامیہ اور وطن عزیز پاکستان کا بچہ بچہ شہادت کی تمنا لئے جوان ہوتا ہے۔ جنگ کے میدان میں وہ سپاہی بن کر اس طرح لڑتا ہے کہ اپنے اسلاف کی یاد تازہ کر دیتاہے۔

ہماری آزادی اور ترقی ان مخلص و بے لوث سپاہیوں کے مرہون منت ہے۔ جنہوں نے اپنا آج ہمارے کل کے لئے قربان کر کے ہمارے مستقبل کو محفوظ اور تابناک بنایا۔ وطن عزیز کی سرحدوں کے دفاع کی خاطر ہر خطرے میں کود جانے والے ہمارے یہ مجاہد وطن کا سرمایا ہیں۔ یہ اندھیری راہ میں روشن منزلوں کے نشان ہیں‘ جرأتوں کے کوہ گراں ہیں۔ انہی مجاہدوں میں سے ایک مجاہد کیپٹن عبدالسلام تھے جو 28مارچ 2011کو دہشت گردی کی کارروائی کا نشانہ بنے اور جام شہادت نوش کیا۔

خیبرپختونخوا کے علاقے خیبر ایجنسی میں دہشت گردی کا نشانہ بننے والے کیپٹن عبدالسلام 1980کو دوہا (قطر) میں پید ا ہوئے۔ابتدائی تعلیم قطر ہی میں حاصل کی۔ 1999میں گورنمنٹ کالج اصغرمال سے ایف ایس سی کیا۔ بچپن سے ہی افواج پاکستان کا حصہ بننے کا شوق تھا اور یہ شوق انہیں پاکستان آرمی میں لے آیا۔ 2003میں پاس آؤٹ ہو کر سگنل بٹالین میں شامل ہو گئے۔ 2009میں فرنٹیئر کور پشاور میں تبادلہ ہوا۔ 2009میں ہی ان کی شادی ہوئی۔ شادی کے 8 دن بعد ہی اپنی ڈیوٹی پر پہنچ گئے اور اپنے فرائض کو اپنی ذاتی خوشی پر مقدم سمجھا۔

گزشتہ 12برسوں میں پاکستان کو دہشت گردی کے خلاف جنگ میں مختلف مسائل کا سامنا کرنا پڑا۔ پاکستان کے جو علاقے شدید متاثر ہوئے ان میں سوات‘ قبائلی علاقہ جات اور وزیرستان شامل ہیں۔ ان علاقوں پر پاک فوج کے آپریشن سے پہلے دہشت گردوں نے بہت حد تک اپنا تسلط قائم کر رکھا تھا۔ جنہیں پاک فوج اور قوم نے باہم مل کر ان علاقوں سے نکال باہر کیا۔ اب بھی پاک افواج کے جوان اور افسران شمالی وزیرستان میں اپنی جانوں کے نذرانے پیش کر رہے ہیں اور پورے ملک میں دہشت گردوں کا قلع قمع کرنے کے لئے برسرپیکار ہیں۔

28 مارچ 2011کو کیپٹن عبدالسلام اپنے ساتھیوں کے ہمراہ دہشت گردوں کے خلاف ایک آپریشن کے لئے نکلے۔ انہوں نے اس آپریشن میں نہ صرف دہشت گردوں کو مار بھگایا بلکہ ان کے قبضے سے اسلحہ اور گولہ بارود اپنے قبضے میں کیا۔ کیپٹن عبدالسلام نے جرأت اور دلیری سے اپنے ساتھیوں کی قیادت کرتے ہوئے کامیابی سے اپنا مشن مکمل کیا۔ مغرب کے بعد دہشت گردوں نے پھر حملہ کر دیا۔ وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ اس کمپاؤنڈ میں داخل ہو گئے جہاں آپ کو دہشت گردوں کے موجود ہونے کا شبہ تھا۔ اسی اثنا میں ایک مارٹر گولا اُنہیں لگا جس سے کیپٹن عبدالسلام موقع پر ہی شہید ہو گئے۔ کیپٹن عبدالسلام کے پسماندگان میں والدین‘ ایک بہن‘ ایک بھائی‘ بیوہ اور بیٹی ہیں۔ شہادت کے 10روز کے بعد آپ کی بیٹی پیدا ہوئی۔ کیپٹن عبدالسلام ہر وقت غریبوں کی مدد کے لئے تیار رہتے تھے۔ وہ ایک بہترین دوست فرماں بردار بیٹے اور بہادر فوجی جوان تھے۔ کیپٹن عبدالسلام کا جنازہ ریس کورس گراؤنڈ راولپنڈی میں ادا کیا گیا۔ عبدالسلام کی والدہ اپنے بیٹے کی شہادت پر فخر محسوس کرتی ہیں۔ ماں ہونے کے ناتے اُن کا دل اپنے جواں بیٹے کی جدائی کے غم میں نڈھال بھی ہے لیکن ان کا عزم جواں ہے۔ انہوں نے شہید کی بیوہ کے ساتھ مل کر کیپٹن عبدالسلام کے کمرے کو یتیم اور بے سہارا بچیوں کے لئے وقف کر دیا ہے۔ جہاں پر وہ عبدالسلام کی پنشن سے ان بچیوں کو سلائی کڑھائی سکھاتی ہیں اور ہر قسم کی امداد کرتی ہیں۔ یوں شہید کی پنشن سے غریب بچیوں کو باعزت زندگی گزارنے کا سہارا مل گیا ہے۔

شہیدوں کے لہو سے حُریت کے دیپ جلتے ہیں

انہی کے فیض سے ہم بھی سر اونچا کر کے چلتے ہیں

31
December

My Brother My Hero

A tribute to Capt Muhammad Bilal Sunawar Shaheed, TBt

Written By: Lubna Sunawar

History of Pakistan is replete with the sacrifices made by soldiers in defence of this motherland. Complete world has witnessed how our soldiers have risen to their towering heights in defence of their borders, their land and their nation against enemy aggression. Our heroes have always kept our flag high by successfully stopping the internal and external enemies in completing their nefarious designs.

Capt Muhammad Bilal Sunawar Shaheed is one such officer who sacrificed his life for this country and made all of us proud. Commissioned in Pakistan Army with 108 PMA Long Course in 2003, a fourth generation officer, Capt Bilal was part of Operation 'Rah-e-Nijaat' that was successfully undertaken in 2009 by Pakistan Army. He was part of an operation that shall be remembered in golden words in the history of not only Pakistan, but all great armies of the world. Tables were turned and with minimum civil casualties, Taliban were evicted from that region. Peace and smiles returned to the locals. But the price was heavy. Deep behind the smiles of the people, red blood of our soldiers glittered.

my bro my hero 1My pen trembles as I begin to write about my brother, Bilal. My eyes get wet when recall his shining face. But I always smile with pride because he rose to the highest level of grace and laid his life. Whenever I'm asked to pen something for my brave brother, I don't know how to even begin to move on. How can I? He deserves more. As a sister, I know that my valiant brother was a very dedicated person prepared to take any risk and face any challenge. A proud father, Col (Retd) Muhammad Sunawar who has lost his brave son, feels proud for Bilal's supreme sacrifice for the motherland. Bilal's beloved mother is not alive as she passed away just a year before his Shahadat, but she must have been proud to be known as Martyr's mother today and that she instilled the highest virtues of bravery, passion and sacrifice in her son.

When I look back at our childhood period, we laughed together and cried together. My brother was the only person who could finish my sentences and knew what I thought when I was silent. Bilal was an amazing person - intelligent, thoughtful, loving, caring, giving, and understanding. He was my shoulder to cry on. My brother instilled some of the greatest lessons in life in me especially after Ammi's (my mother) sad and sudden demise. I love him and miss him with all of my being and with all that I am. Losing a wonderful relationship of a mother and a sibling is the hardest thing I have ever had to deal with in my life. It is something I never thought would happen.

While performing his duties at the time of his Shahadat, he was busy in a fierce battle with the Taliban at Pash Ziarat (Waziristan). He kept his cool, encircled the militants and boldly charged towards them with his troops while leading from the front. The terrorists were completely taken aback by the bold counter-attack by Capt Bilal and his troops. 2nd Lieutenant Kaleem who accompanied him during the operation narrates: “Capt Bilal was leading his troops from the front whilst trying to protect his men and showed extraordinary courage to close on a coward enemy.” His professionalism under pressure and ability to remain calm in what was a chaotic situation, is testament to his character. During the conduct of same operation, he was shot by Rocket Propelled Grenade (RPG) in his chest which resulted in his Shahadat. The troops narrate Capt Bilal Shaheed's performance as “Selfless, brave, courageous....” Words like these do not come close to what Capt Bilal demonstrated that day. He will be missed by all as a commander, but most of all a good mate. A real self-starter, he excelled in everything that he undertook.

Bilal was my closest sibling and a dear best friend, a real gentleman with a kind heart. It's so painful to know that he is gone and I keep thinking about all those things we did together as a family. If I could be granted one wish, it would be to kiss and hug him for the last time. Capt Bilal and his troops did a remarkable job. They have risen to defend Pakistan from the aggression of the enemy. They have sent a clear message to terrorists that they would never ever accomplish their objectives. They sacrificed their lives to defend the homeland against the evil designs of militants. Our heroes of the defence forces are battling with the extremists and not allowing them an inch of the country to be occupied. The nation is proud of sons like Bilal and it truly recognizes their sacrifices and repects them for their bravery.

Bilal is still my best friend and my inspiration. He still gives me the strength to go on when I feel I cannot. He still gives me encouragement, advice, and strength though it may be in his own little way – in a dream, in a song I hear, through the perfect sunset or blowing wind, he is still with me. We as a family miss him each and every day. There is not a minute that goes without him when he not in our thoughts. And with all of the wonderful things you taught me, you still live through me. In everything that I do, You will always stand by my side! “I call my brother Bilal – my true angel” who has always shown me the way in the darkness around.

As a foreign research scholar, I'm working on U.S. War on Terror and its implications for Pakistan. This has been my foremost effort to highlight sacrifices of Pak Army in front of diplomats, researchers and think tanks, and have always tried to prove the fact that our army has acted like an iron curtain against internal and external enemies. Captain Muhammad Bilal Sunawar Shaheed was awarded Tamgh-i-Bisalat (TBt) posthumously for his sustained display of conspicuous bravery and leadership. Bilal, you will be remembered as a gentleman, as a good leader, a loving and caring son and, the best brother in the world. The whole nation is indebted to you.

May you live in the eternal Peace and Happiness always. Ameen

The writer is a PhD Scholar at National Defence University Islamabad and is on a Fellowship Program at American Graduate School (AGS), Paris (France). This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
14
December

She Makes the History: Maryam Mukhtiar, the First Female Pilot of PAF, Embraced Martyrdom

Written By: Syed Sajid Bukhari

“No one can defeat a nation that has daughters like Marium,” said Air Chief Marshal Sohail Aman on Marium’s martyrdom. Marium Mukhtiar was born on May 18, 1992 in Karachi and she was the second eldest among her two siblings – a brother and a sister. She was the daughter of Col. (R) Mukhtiar Ahmed Shaikh and brought up in a sacred environment where passion for martyrdom always prevailed. After graduating in Civil Engineering from NED Karachi, she expressed her wish to join Air Force as GD Pilot. Her father knew the hard work involved in joining and serving the armed forces and knew it would not be easy. Marium was resilient and passionate so she refused to back down because she wanted to rule the skies. She joined PAF as an Aviation Cadet in the 132 GD (P) course in 2011.mariammukhtar.jpg She went to PAF Academy Risalpur with seven other female Pakistani cadets who underwent training and graduated as pilot officers. Pakistan is infact among the few Muslim countries in the world who has been employing women as fighter pilots and offering them the same training as their male counterparts since 2006.

Flying Officer Marium Mukhtiar was commissioned in PAF Academy Risalpur on September 24, 2014 – the day she recalled as the most fortunate and jubilant day of her life. She was posted to PAF Base MM ALAM to get trained as a fighter pilot. She started to get this hard and rigorous training with full zeal and zest. On November 24, 2015 Flying Officer Marium Mukhtiar and her instructor-pilot Squadron Leader Saqib Abbasi were on their routine operational training mission in a PAF F-7PG aircraft. Over the Kundian, Mianwali area, about 175 kilometres southwest of Islamabad, the aircraft developed a serious technical malfunction.mariammukhtar1.jpg That was the critical time to decide, “to be or not to be”. The situation so developed that she and her co-pilot, Squadron Leader Saqib Abbasi had to eject from the aircraft. She lost her life during the process as she was forced to eject at low height to clear a populated area. Both pilots took care of the crisis with polished methodology and strength to save the aircraft till the last possible time, guaranteeing security of property and the human life. Maryam embraced Shahadat and became the first ever female pilot of Pakistan Air Force, who embraced martyrdom. She rightly said to her father, “When a pilot embraces martyrdom, you only find the ashes, not the pilot.”

In a condolence message, COAS General Raheel Sharif said, “She was indeed a role model for women and pride of Pakistan.” The martyred lady pilot has made history and we can only hope that her example will encourage other females to follow in her footsteps. The sombre loss of Flying Officer Marium Mukhtiar made the entire nation gloomy but proud as martyrdom does not end something, it is only the beginning.

Marium Mukhtiar, the first female fighter pilot to die on operational service, lost the appropriate height required for ejection as she stayed in the aircraft to maneuver it clear of the populated area.

*****

 
13
December

اے جذبہ دل گر میں چاہوں

تحریر : میجر (ر) ندیم نصیب

1971 کی جنگ میں شہادت کا رتبہ پانے والیمیجر نصیب اﷲ خان شہید کی شہادت کے حوالے سے اُن کے بیٹے میجر (ر) ندیم نصیب کی تحریر

ayjazbadil.jpg

خود اعتمادی اور کچھ کر گزرنے کا جذبہ ہی وہ نعمت ہے جو انسان کو مثبت سوچ اور آگے بڑھنے پر آمادہ کرتی ہے۔ یہ سوچ اپنے وطن کے لئے ہو توعظیم قوم کو جنم دیتی ہے اور ایسے سپوت پیدا کرتی ہے جو ہر مشکل سے مشکل گھڑی میں اپنے ملک و ملت کے لئے بڑی سے بڑی قربانی دینے کے لئے بھی ہمہ وقت تیار رہتے ہیں۔ میجر نصیب اﷲ خان (شہید) بھی اس قوم کے ایک ایسے ہی بہادر سپوت ہیں جنہوں نے اپنی محنت سے نہصرف مقام بنایا بلکہ وقت آنے پر اپنی مٹی کو اپنے خون سے بھی سینچا۔

 

میجر نصیب اﷲ خان (شہید) 21جون 1939کو آزادکشمیر کوٹلی کے ایک گاؤں کنیات میں پیدا ہوئے۔ 1951 میں آٹھویں جماعت میں ملٹری کالج جہلم سرائے عالمگیر میں منتخب ہوئے۔ تاہم ابتدا میں انہوں نے آرمی میں اپنی خدمات کا آغاز سگنل کور میں بطورسپاہی کیا۔ مگر آگے بڑھنے کی لگن رنگ لائی اور 1962میں اُنہیںآئی ایس ایس بی کلیئر کرنے کے بعد پی ایم اے کاکول بھیج دیا گیا۔ پی ایم اے کاکول سے پاس آؤٹ ہونے کے بعد سی او ڈی کالا، پوسٹ کر دیئے گئے۔ عملی زندگی کے عسکری ادارے سے آغاز اور پی ایم اے کی ٹریننگ کے بعد ان کی صلاحیتوں میں نکھار پیدا ہو چکا تھا۔ اayjazbadil1.jpgس سوچ کی بنا پر انہوں نے پاک آرمی کے ایس ایس جی گروپ کو اپنانے کا فیصلہ کیا اور 9ماہ کی پُرمشقت تربیت کے بعد وہ اب بطور کمانڈو وطن کی خدمات انجام دینے کے لئے تیار تھے۔ جب مشرقی پاکستان کے حالات روزبہ روز ابتر ہوتے جا رہے تھے تب میجر نصیب اﷲ (شہید) کو آرڈر ملا کہ وہ ایس ایس جی کمپنی کے ساتھ موو کریں۔ جسے انہوں نے بخوشی قبول کر لیا۔


مجھے یاد ہے وہ دن جب میرے والد مشرقی پاکستان جا رہے تھے۔ میری ماں بہنیں بھائی اور سب احباب بہت پریشان تھے۔ میرے والد نے کھڑے ہو کر مجھے اپنے سینے سے لگایا۔ میرے دادا کی آنکھوں میں آنسو دیکھ کر بولے کہ ابوجان آپ تو پدری محبت کی بدولت آنکھوں میں آنسو لئے بیٹھے ہیں مگر میرا کردار آپ کی تربیت کا نتیجہ ہے جس نے مجھے یہ سکھایا تھا کہ وقت پڑنے پر اپنے ملک و قوم کے لئے جان کی قربانی دینے سے بھی دریغ نہیں کرنا چاہئے۔ آج میرا دیس مجھے پکار رہا ہے تو میں کیسے رُک سکتا ہوں میں اپنے بچے بھی آپ کے حوالے کرکے جارہاہوں اور یوں وہ یکم دسمبر 1971کو مشرقی پاکستان چلے گئے۔ میجر نصیب اﷲ خان (شہید) کمال کمپنی ایس ایس جی کی کمانڈ کر رہے تھے۔ جنگ چھڑنے کے بعد اپنے دشمن کے خلاف بھرپور کارروائیاں کرتے رہے لیکن آخر کار 16دسمبر 1971کے موقع پر بہت سے پاکستانی فوجیوں کو قیدی بنا لیا گیا اُن میں میرے والدِ محترم میجر نصیب اﷲخان (شہید) بھی شامل تھے۔ ان کو بھارتی فوج نے گرفتار کیا اور کیمپ نمبر 44 میں بھیج دیا۔ پہلے ہی ہفتے انہوں نے اور ان کے ساتھیوں نے کیمپ سے فرار ہونے کی کوشش کی اور اس مقصد کے لئے ایک سرنگ کھودی جو مکمل ہونے کے آخری مرحلے میں پکڑی گئی۔ میجر نصیب اﷲ خان کو کیمپ میں سینئر آفیسر ہونے کی بنیاد پر اس پلان کا ماسٹر مائنڈ قرار دیا گیا اور خطرناک ترین قیدیوں کی فہرست میں شامل کر کے انہیں اعلیٰ کمانڈ کے کہنے پر 40دن کے لئے کوٹھڑی میں بند کرنے کا حکم دیا گیا۔ جون 1972کو انڈین حکام نے اُنہیں مزید محفوظ جیل رانچی ریل گاڑی کے ذریعے منتقل کرنے کا فیصلہ کیا۔ راستے میں ان کے ایک ساتھی قیدی کیپٹن شجاعت جن کا تعلق 15 ایف ایف سے تھا واش روم گیا۔ اس امید پر کہ ہو سکتا ہے کہ فرار کی کوئی راہ ممکن ہو۔ اس نے ریل کی کھڑکی کی گرل کاٹی اور باہر چھلانگ لگا دی۔ یہ 30جون 1972کا دن تھا۔ میجر نصیب اﷲ خان (شہید) نے وضو کیا اور نماز ادا کرنے لگے۔ انڈین گارڈز نے اس کا ذمہ دار میجر نصیب اﷲ خان (شہید) کو ٹھہرایا کہ انہوں نے کیپٹن شجاعت کو فرار کرنے میں اس کی مدد کی ہے اور اب یہ بھی موقع پاتے ہی فرار ہوجائیں گے ۔ بھارتی فوج نے تمام بین الاقوامی قوانین کو بالاطاق رکھتے ہوئے دوران نماز ہی اُن پر فائر کھول دیا اور ان کے سینے کو چھلنی کر دیا۔ ا ن کے جسد خاکی کو پاکستان کے حوالے نہیں کیا گیا۔ہمارے ابو میجر نصیب تو شہید ہوگئے لیکن اُن کی شہادت کے بعد جس طرح ہماری والدہ محترمہ نے ہماری تربیت کی اور ہر کٹھن وقت میں ہمارے لئے ایک آہنی دیوار ثابت ہوئیں وہ بے مثال ہے۔ یہ امی جان کی تربیت ہی تھی کہ میری دو بہن ڈاکٹر بنیں۔ بڑی بہن ڈاکٹر ناہید نصیب نے کھاریاں میں نصیب شہید میموریل ہسپتال قائم کیا۔ چھوٹی بہن نبیلہ پاک فوج میں میجر ڈاکٹر ہیں۔ ہم دونوں بھائی میں اور کیپٹن ریٹائرڈ نعیم نصیب ملٹری کالج جہلم کے لئے سلیکٹ ہوئے اور پاک فوج میں کمیشن حاصل کیااور ملک کی اُسی انداز میں خدمت کی جس طرح ہمارے والد چاہتے تھے۔ میرا بیٹا ساھم نصیب بھی ملٹری کالج سے ابتدائی تعلیم حاصل کرکے پی ایم اے کے لئے سلیکٹ ہوا اور اب الحمدﷲ پاک فوج میں بطورِ سیکنڈ لیفٹیننٹ خدمات سرانجام دے رہا ہے۔ مجھے یوں لگتا ہے جسے ہم اپنے ابومیجر نصیب شہید کے اُس جذبے کے رکھوالے ہیں جو وہ اپنے ملک اور قوم کے لئے رکھتے تھے۔ پاکستان ہمیشہ سلامت رہے ہمارے خاندان کے خون کا ایک ایک قطرہ اس کی حفاظت کے لئے حاضر ہے۔

 

Follow Us On Twitter