19
August

In Love of Pakistan Capt Akash Aftab Rabbani Shaheed

Written By: Maj Farooq Feroze

The sudden beautiful drizzling marked with mystic fragrance brought a pleasant change in weather in the spacious ground of Frontier Force ( FF) Center Abbotabad, where mortal remains of Capt Akash Aftab Rabbani (Shaheed) was placed for Namaz-e- Janaza. The day will be remembered for many years  as everyone in the city  wanted to attend the funeral of shaheed, which caused massive traffic jam and the funeral turned into a big gathering.

A smartly turned-out contingent presented last salute and the burial was performed in local graveyard with full military honour and religious fervour.

It was my fifth day in Miranshah and I was acquainting myself with new environment before the commencement of Operation Zarb-e- Azb. After having brief round of the area, I entered into the office, where later on I spent most of the time during my stay. In the office, I saw a young, fair looking SSG officer, who was deeply busy in his laptop and was simultaneously getting information from another officer sitting across the table. I greeted in a loud voice and the young SSG Captain warmly returned my greetings with a smile and firm hand grip. His broad and curious eyes were looking quite attractive on his face. I sat beside him on the sofa and saw his name tag “Rabbani” on his commando uniform.

The other officer left the office for a while and we started informal talk. “Rabbani is your name,” I asked referring to his name tag on his uniform.  “No sir, this is my family surname and my name is Akash,” replied Capt. “Where are you from,” I again asked and not knowing the reason of my curiosity and taking unusual interest in his personality. “Sir ! I am from Abbotabad and passed out with 123 PMA Long Course,” he replied. We kept discussing various aspects of upcoming operation over a military-styled tea break until the other officer returned. Capt Rabbani stood up and told him about the marking of all important locations on the maps and offered his further help if needed.

After he left, my stream of thinking took me to probable outcomes of the operation which also included martyrdom of anyone among these young soldiers, who were determined to crush the ugly head of terrorism. Pak Army was all set to commence the operation in North Waziristan Agency (NWA), which had been turned into the epicenter of terrorism and hub of heinous crimes for the last decade or so.

Capt Akash Rabbani along with his Commando Battalion reached Miranshah three days before we met for the first time.  This short and memorable meeting established my strong relationship with Capt Rabbani. We would meet almost every day as operational activities were getting momentum. After air strikes in various areas of North Waziristan, ground offensive was launched on 30 June to clear the area in Miranshah.  Butt Marka was the last place known as the most notorious hideout of the terrorists in the city and Rabbani's Battalion was given responsibility to clear the area. It was 8th July and I reached there to embed my camera team with the troops so that live operational activity can be recorded. I saw Capt Rabbani, who was leading troops from the front. He warmly hugged me with a smile on his face after the operation was completed.

And in next phase of operation on 15th July, in Boya Degan (Mirali), Capt Rabbani was assigned a mission to clear off area from the terrorists. In completion of the assigned tasks, he led his men from the front and in due course, embraced shahadat while fighting fearlessly against the ferocious terrorists. He undoubtedly wrote a glorious chapter of Zarb-e-Azb with his blood and left lasting impression for others to follow.

I was listening to Dr. Aftab Rabbani, father of Capt Akash Rabbani, who was narrating various events of Akash's life in a very composed manner. Akash was born on 20th October 1990. He was very sharp and intelligent since childhood. His elder brother, Dr Danish is doing house job in Ayub Medical College, whereas younger sister is a student of 2nd year in the same college. Dr Aftab told that his father was inspired by Allama Iqbal therefore, when Akash was born, he was given this  name keeping in view the depth and universality coupled with a sweet sense of a romance. Following the foot prints of his family, Kashi (nick of Akash) also scored high marks in Matriculation and FSc and had a chance to easily clinch a seat in a medical college to become a doctor. But, he was destined to bring laurels for his parents, and the country, in a unique way therefore profession of arms turned his ultimate passion into his destiny. His performance was remarkable in PMA and he was commissioned on 19 April 2011 in 47 Field Artillery, which was stationed at Kharian. His performance remained outstanding during his basic course, but his motivation took him to Special Services Group (SSG) to pursue his carrier. He joined SSG in 2013 and after successful training, he joined 4 Commando at Tarbela. His unit was tasked to spearhead operation Zarb- e- Azb in North Waziristan Agency.

Recalling his memories, Dr. Aftab Rabbani, who is also a professor of medicines at Ayub Medical College, said Kashi was very loving son, caring brother and a sincere friend. He held a large social circle of friends, who always feel his absence and share his cherished memories.

While expressing his feelings Dr. Aftab told that initially it was extremely difficult to reconcile the reality of his Shahadat, but the respect and privilege rendered by the people and Army, has given a tremendous determination and sense of pride to Akash's mother and other family members. “Akash has become my introduction and identity, wherever I go,” he said proudly.

While concluding his remarks, he uttered with grief and sorrow that he feels pity about a section of society that try to confuse the nation regarding ongoing operation against terrorists to undermine the sacrifices of our sons. He wished that the whole nation should stand united behind the forces to bring lasting peace in Pakistan

04
September

Missing You Baba

Written By: Roshan Taj

(In the Memory of Lt Col Humayun Khanzada Shaheed) On special days like his birthday or Father's Day, I buy a card, write him a letter, tie it to a balloon and let it go; it takes my love up to him. Baba, I always pray for you. I feel proud when people (to this very day) still talk that what a fantastic man you were! How you always helped the needy people in the time of their distress. Your generosity and selflessness was inspiring and unmatched. I have created a facebook group in your honour as you were everything I ever needed in a perfect dady. When I dream about you, I feel happy and sad at the same time. Happy, that you were in my dream, and sad, that it ended too soon.

There is no greater sacrifice than giving one's life for the country. I am sharing my thoughts in loving memory of my respected and beloved father, Lt Col Humayun Khanzada Shaheed. I was four years old when he embraced shahadat on August 30, 1990 at Line of Control (Kel Sector). Father is an important figure in one’s life as he gives great feeling of strength and support. I was lucky enough to be able to spend few years with him though I have a faded memory of the time spent with him. I still remember him bringing chocolates at my 4th birthday when he held me in his hands and said, “When will you grow up my little princess.” Today when I have completed my M.Phil, I miss your company Baba, and wait for your call each moment to pat me for my achievements.

My father was commissioned in Army Services Corps (ASC) with 43 PMA Long Course and was Commanding Officer of 7 Animal Transport (AT) Regiment at the time of his Shahadat. Born in a respectable and educated Khattak family on December 1, 1950 in the Lachi village (District Kohat), my father joined ASC following his father, Major (Retd) Amir Nasrullah, who was also from ASC. Recalling his memories my grandmother tells us, “He was the best son, a mother could ever have.” My mother tells me that my father was very happy at my birth being his second daughter. “I want her to succeed in life and become my pride,” he shared with my mother after my birth. My family shares that he used to call me with the name of Guriya, though I don't remember much of that. Baba, it gives me a feeling of warmth inside to hear these things about you and inspires me to be the kind of daughter you'd be proud of. I wish, I could have spent more time with you.

mb2 Today, when all of us sit as a family, we get to look at photographs saved in a separate album by his name. My mother tells that he was very fond of outings and every Thursday night (being weekend), he would take us out for food or to watch movies. He was also a very good sportsman and we used to watch him while playing football. He taught me how to ride a bicycle and encouraged me to keep trying even after falling down and getting hurt occasionally. Being a family member whenever he got time, he took us out for picnics and enjoyed firing up the grill and cooking up steaks, chicken or fish. I remember my father lying on his bed in his bedroom narrating me stories which I never had the chance to listen again. He used to help me with my homework and his valuable wisdom left a lasting imprint in my mind to this day. On special days like his birthday or Father's Day, I buy a card, write him a letter, tie it to a balloon and let it go; it takes my love up to him. Baba, I always pray for you. I feel proud when people (to this very day) still talk that what a fantastic man you were! How you always helped the needy people in the time of their distress. Your generosity and selflessness was inspiring and unmatched. I have created a facebook group in your honour as you were everything I ever needed in a perfect dady. When I dream about you, I feel happy and sad at the same time. Happy, that you were in my dream, and sad, that it ended too soon. In his last conversation with my mother before his Shahadat on Thursday late night, he enquired about me as I wasn't feeling well and advised her to take care of herself and children. She told him that everything was going to be fine and he shouldn't worry much. He replied by saying, “the night which is meant to be in the grave cannot come at home. May Allah Almighty bless you all.” Lastly, I know you are beside me to this day and looking after me always from above. You are my inspiration, you are my role model. It's my constant desire to be like you, courageous, optimistic and very positive. I love and miss you dearly. May Allah grant you Jannah, (Aameen).
09
September

پاک زمیں کا ناز ہیں ہم

تحریر: یٰسین سروہی

کیپٹن فرحت حسیب حیدر شہید ستارہ جرأت کی داستانِ شجاعت محمد یٰسین سروہی کے قلم سے

کیپٹن فرحت حسیب حیدر نے پاکستان آرمی کی مایہ ناز بٹالین 9 پنجاب رجمنٹ میں کمیشن حاصل کیا۔ جب آپ نے یونٹ میں شمولیت اختیار کی تو 9 پنجاب رجمنٹ بہاولپور کینٹ میں اپنی خدمات سرانجام دے رہی تھی۔نئے آنے والے مہمان افسرکا فوجی روایات کے مطابق استقبال کیا گیا اور موصوف اس نئے مہمان افسر کی استقبالی ٹیم کا ایک حصہ تھا۔ انتہائی شاندار انداز میں استقبال کرنے کے بعد آپ کو میگزین گارڈ لے جایاگیا۔ ایک دن یہاں کی ڈیوٹیاں جاننے کے بعد آپ کو لانس نائیک کے عہدے پر ترقی دی گئی اور بعد میں آرمی کے تمام رینکس کا تجربہ دلایا گیا روزانہ آپ کا رتبہ تبدیل ہوتا رہا اور آپ کمپنی صوبیدار سے سیکنڈ لیفٹیننٹ بن گئے ،ان چند دنوں میں آپ کو ان تمام مراحل سے گزارا گیا جو ایک جوان کی زندگی کا معمول ہوا کرتا ہے تاکہ جب آپ ترقی کرکے یونٹ کمانڈر یا اس سے بڑے عہدے پر فائز ہوں تو آپ کو جوانوں کے تمام مسائل کا ادراک ہو، بعد ازاں نئے آنے والے ہونہار افسر کو الفا کمپنی میں پوسٹ کیا گیا اور جب یونٹ فیلڈ ایریا میں تربیتی مشقوں کے لئے موج گڑھ گئی تو آپ کو یونٹ انٹیلی جینس افسر متعین کیا گیا۔ بحیثیت نوجوان افسر آپ نے اپنی شاندار عسکری صلاحیتوں کابھر پور مظاہرہ کیا اور ہر چھوٹے اور بڑے تربیتی آپریشن میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔


1998 کی ابتدا میں آپ کی پوسٹنگ این ایل آئی رجمنٹ میں کی گئی۔ اس وقت 9 پنجاب رجمنٹ کوہاٹ سے کچھ فاصلے پر ایک سرحدی چھاونی ٹل میں تعینات تھی۔کیپٹن فرحت حسیب نے این ایل آئی رجمنٹ میں انتہائی پیشہ وارانہ مہارت کا مظاہرہ کیا اور اپنے جوانوں کی اچھے انداز میں تربیت کی۔ 1998 کے آخری ایام میں بھارتی افواج کی ہٹ دھرمی کا جواب دینے کے لئے ہمارے کچھ دستے اپنی سرحدوں کے دفاع کے لئے آگے بڑھے۔ روز بروز بڑھتی ہوئی بھارتی ہٹ دھرمی خطے کا امن و امان تباہ کررہی تھی اس کا بھرپور جواب دینا خطے کے امن کو برقرار رکھنے کے لئے لازمی تھا۔ پاکستانی سربکف سپوتوں نے اپنے آخری مورچوں پر جا کر صف بندی کرلی تاکہ دشمن کی ہر طرح کی جارحیت کا جواب دیا جا سکے۔انہی دستوں میں کیپٹن فرحت حسیب حیدر بھی اپنے جوانوں کے ساتھ اگلے مورچوں میں سینہ سپر تھے۔


کارگل کا علاقہ بھارتی کی فوج کے لئے بہت زیادہ اہمیت کاحامل تھا، ان کو معلوم تھا کہ اگر کارگل پر چند مجاہدین بیٹھ جائیں تو اگلے علاقوں میں متعین انڈین فوج بغیر کسی لڑائی کے ہی مر جائے گی۔ لداخ اور سری نگر کا واحد زمینی راستہ کارگل سے گزرتا ہے۔ سیا چین پر موجود بھارتی فوج کی کمک و رسد اور جوانوں کی تبدیلی کے لئے کارگل سب سے بہتر راستہ ہے۔ یہ راستہ سال کے دس مہینے برف سے ڈھکا رہتا ہے۔ یہاں قائم آرمی چیک پوسٹوں کی اونچائی 5000 میٹر یا اس سے زائد ہے۔ بھارتی فوج کو انہی دو مہینوں میں سیاچن میں زندہ رہنے کے لئے اپنا راشن پانی اور صف بدلی کرنا ہوتی ہے۔ سیاچین جانے والی اس شاہراہ کو این ایچ ون ڈی کہا جاتا ہے۔ اسی شاہراہ سے اگلے مدفوعہ علاقوں کے لئے بھاری سازوسامان لے جایا جاتاہے۔یہاں مجاہدین کے قبضے کے بعد جہازوں کے ذریعے بھی اپنی سپلائیز کو جاری رکھنا انڈیا کے لئے ممکن نہیں تھا۔ اس لئے یہ راستہ انڈیا کے لئے زندگی اور موت کی حیثیت رکھتا تھا۔
کہا جاتا ہے کہ کارگل کی چوٹیوں پرکشمیری مجاہدین نے یہ آپریشن کرنے کا فیصلہ انڈیا کے سیاچن پر قبضے کرنے کے فوراً بعد کر لیا تھا اور قبضے کرنے کے لئے بالکل انڈیا والا طریقہ اختیار کیا تھا۔ جب موسم کی سختی کے باعث انڈین فوجوں نے اپنی پوسٹیں خالی کیں تو کشمیری مجاہدین نے ان پر قبضہ کر لیا۔ جب بھارتی فوجی واپس مورچوں میں آنے لگے تو ان کااستقبال مجاہدین نے گولیوں سے کیا اور بھارتی قیادت اس سے بوکھلا گئی،خطے میں بڑھتی ہوئی بے چینی اور دشمنان پاکستان کی حرکتوں کو لگام دینے کے لئے پاک آرمی کے چند سو سپوت اورسرحدی پیرا ملٹری فورسز حرکت میں آئی اوردشمن سے لڑائی شروع ہوگئی۔ 

 

pakzamenkanaz.jpgبھارت کو جب مجاہدین کے اس قبضے کی خبر ملی تو اس نے کشمیری مجاہدین سے کارگل دوبارہ حاصل کرنے لئے اپنی کافی فوج استعمال کی جن کی تعداد 2 لاکھ سے زائد تھی۔ جس کو انڈین ائیر فورس کے 60،70 جنگی طیاروں کی پوری مدد حاصل تھی۔ ان کے مقابلے میں پہاڑوں کی چوٹیوں پر موجود مجاہدین اورباڈر پر متعین پاک فوج کے پاس دستی ہتھیار ہلکی توپیں اور مارٹر گنیں تھیں۔ بھارت نے دوران جنگ جدید ترین بوفرتوپیں استعمال کیں جو بالکل درست نشانہ لگانے کے لئے مشہور ہیں۔اس کے باوجود ان چوٹیوں کا دوبارہ قبضہ حاصل کرنے کی کوشش میں انڈیا کو بہت بھاری جانی نقصان برداشت کرنا پڑا۔ خاص کر ٹائیگر ہل کی چوٹی پوائنٹ4590 پر حملے میں انڈیا کی تاریخ کی کسی بھی جھڑپ میں سب سے زیادہ فوجی مارے گئے۔انڈیا کو زیادہ کامیابی نہ مل سکی۔اسی دوران پاکستان نے انڈیا کے مگ 27اور مگ21فائٹر جہاز مار گرائے۔ اسی طرح انڈیا کا ایک ایم آئی 8 ہیلی کاپٹر بھی گرایا گیا جو پاکستانی سٹنگرز کا نشانہ بنا۔ پاک فوج کے دستوں نے ایک انڈین جہاز بٹالک سیکٹر میں بھی گرایا۔


بھارت کی ہٹ دھرمی کو دیکھ کر پاک فوج نے بھی اپنے نیم فوجی دستوں اور پیر املٹری ٹروپس کو حرکت دی تاکہ کشمیری مجاہدین کی مدد کی جاسکے اور اپنی سرحدوں میں بین الاقوامی دہشت گردوں کو گھسنے نہ دیا جائے۔بھارت نے 1971کی جنگ کے بعد پہلی دفعہ اپنی فضائیہ کو استعمال کرنے کا فیصلہ کیا۔ جس طرح بھارت کی بری افواج درپیش چیلنجز کے مقابلے پر بہت بڑی تعداد میں مقبوضہ کشمیر میں سال ہا سال سے تعینات ہیں۔ اسی طرح کارگل سیکٹر سے مجاہدین آزادی کے چیلنجزکا مقابلہ کرنے کے لئے بھارت نے درجنوں لڑاکا طیارے اور گن شپ ہیلی کاپٹر استعمال کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس نے اپنے آپریشن کو وجے کا نام دیا۔ جب دشمن کی جارحیت حد سے زیادہ بڑھ گئی تو پاک آرمی کے سپوتوں نے خود کو پیش کیا اور دشمن کو سبق سکھانے کے لئے دشمن کی طرف رخ کیا۔ 4 جون کو دشمن پوری طاقت کے ساتھ آگے بڑھا تو سامنے فرحت حسیب اور راقم اپنے مورچوں میں مورچہ زن تھے، اس روز ہمارے جوانوں نے جی بھر کر دشمن کو نقصان پہنچایا اور یوں دشمن کا ایک حملہ پسپا ہوگیا اور اب کسی بڑے حملے کی توقع کی جا رہی تھی۔ حسب توقع7جون کو دشمن نے ایک بہت بڑی افرادی قوت کے ساتھ کیپٹن فرحت حسیب کے مورچوں پر حملہ کر ڈالا اس بار دشمن کو آرٹلری اور فضائی حمائت حاصل تھی جس سے پاک آرمی کا کچھ نقصان ہوا مگر ہم اپنی خامیوں کو دور کرکے مزید اچھے انداز میں دشمن کو خوش آمدید کرنے کے لئے تیار ہوگئے مگر اس دورا ن ہماری سپلائی لائن میں کچھ خلل پیدا ہوا اس کا دشمن نے بھر پور فائدہ اٹھایا اور خوب آتش برسائی۔9 جون کی صبح کو دشمن نے مارٹروں اور بھاری توپ خانے سے دوبارہ حسیب حیدر کی پوسٹ پر بمباری کی اوراسی جھڑپ میں سخت لڑائی کے دوران کیپٹن فرحت اور ان کے ساتھیوں نے جامِ شہادت نوش کیا۔ جب تک ہمارے شہیدان چمن کی رگوں میں لہو اور آنکھوں میں نور رہا دشمن ہماری طرف آگے نہ بڑھ سکا۔ 29جون کو کچھ فاصلے پر میجر وہاب اور آپ کے ساتھیوں نے وطن عزیز پر اپنا سب کچھ قربان کردیا ۔گلتری سیکٹر میں لالک جان نے دادشجاعت دی اور مادر وطن پر قربان ہوگیا اور یوں ان فرزندان وطن نے اپنا لہو بہا کر وطن کی مٹی کی حفاظت کا حق ادا کردیا۔


کیپٹن فرحت حسیب حیدر نے جس دلیری، بے باکی اور جرأت مندی کا ثبوت دیتے ہوئے وطن کی آبرو پر اپنی جان نچھاور کی اس کی مثال کم ہی ملتی ہے۔آپ نے وطن کے دفاع کی خاطر پندرہ سے سترہ ہزار فٹ بلند ی پر واقع برف پوش چوٹیوں اور انتہائی نا مساعد موسمی حالات میں انتہائی جانفشانی سے کام کیا۔ اس معرکے میں آپ اور آپ کے جوانوں نے بے خوفی کی ایسی داستانیں رقم کیں کہ جھپٹ کر پلٹنا اور پلٹ کر جھپٹنا صفاتی اعتبار سے پاکستان کے عساکر کی پہچان بن گیا۔ آپ اپنے مٹھی بھر سپاہیوں کے ساتھ اپنے علاقے میں مورچہ زن رہے اور جب تک آپ کی رگوں میں خون دوڑتارہا دشمن آپ کی طرف میلی آنکھ سے نہ دیکھ سکا۔ کیپٹن فرحت حسیب حیدر کی جرأت اور بہادری کے اعتراف میں حکومت پاکستان نے آپ کو بعد از شہادت ستارہ جرأت سے نوازا۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
 
09
September

سعادت کی زندگی شہادت کی موت

تحریر: رسالدار (ریٹائرڈ) بغداد شاہ

سپاہی سہیل خان کے والدگرامی رسالدار (ریٹائرڈ) بغداد شاہ کی آپریشن المیزان میں شہید ہونے والے اپنے بیٹے کے بارے میں ایک تحریر

زندہ قوموں کی ایک پہچان قوم کے بہادر اور بے باک بیٹے ہیں جو اپنے وطن کی خاطر اپنی جان کا نذرانہ دینے سے بھی گریز نہیں کرتے۔ ایسے بیٹے قوم کے سر کا تاج ہوتے ہیں اور قوم انہیں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے فخر محسوس کرتی ہے۔ ایسا ہی ایک بیٹا سپاہی سہیل خان ہے جنہوں نے اپنی جان وطن کی حرمت پر قربان کر دی۔


سہیل خان نے میٹرک تک تعلیم آبائی گاؤں محب بانڈہ میں حاصل کی۔ وہ پڑھائی کے ساتھ ساتھ کھیل کا بھی بہت شوقین تھا اور والی بال کا بہت اچھا کھلاڑی تھا۔ سہیل خان پاک فوج میں شامل ہونے کا از حد متمنی تھا۔ کبھی کبھی مجھے کہتا تھا کہ ابو مجھے فوج میں بھرتی کروائیں کیونکہ آپ توخود بھی آرمی میں رسالدار ہیں۔ میں نے اُس کو کہا کہ ٹھیک ہے چونکہ میں خود اس وقت کوئٹہ ڈویژن میں 13لانسرز (آرمڈکور) میں سروس کررہا تھا تو میں نے سہیل خان کی پری ٹریننگ کے لئے یونٹ کمانڈنٹ سے بات کی۔ انہوں نے مجھے اجازت دے دی۔ پھر سہیل خان میری یونٹ سے پری ٹریننگ مکمل کرنے کے بعد گھر واپس چلا گیا۔ میرے نقشِ قدم پر چلتے ہوئے سہیل خان نے بھی وطن کے محافظوں کی صف میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا اور کوہاٹ بھرتی دفتر چلا گیا۔ تربیت کے دوران ایبٹ آباد ریکروٹمنٹ سنٹر کے مختلف ٹورنامنٹس میں حصہ لیا۔ جس میں سہیل خان نے بہترین کارکردگی پر سنٹر کمانڈنٹ سے انعامات بھی حاصل کئے۔

 

sahadatkizin.jpgپاسنگ آؤٹ کے بعد جب سہیل خان اپنے فرائض پر مامور ہوئے اس وقت اس کی یونٹ 16ایف ایف رجمنٹ پشاور کینٹ میں تھی جب کرم ایجنسی میں حالات خراب ہوئے تو ملک کے دفاع کے لئے 16ایف ایف کو کرم ایجنسی جانے کا حکم ملا۔ وہ کرم ایجنسی میں تعینات اپنی یونٹ کے ساتھ پیشہ ورانہ فرائض انجام دیتا رہا۔ وہ وہاں سے ایک ماہ کی چھٹی آیا تو ہم نے اُس کی شادی کرا دی۔ وہ اپنی چھٹی گزار کر واپس چلا گیا۔ میرے بیٹے نے جاتے وقت اپنی والدہ محترمہ سے کہا تھا کہ ماں ہمیں دعاؤں میں یاد رکھنا انشاء اﷲ والدہ کی دعاؤں سے ضرور کامیاب ہوں گے۔ یہ میرے بیٹے کے والدہ محترمہ سے آخری الفاظ تھے۔ سپاہی سہیل خان جب اپنی یونٹ کے ساتھ آپریشن ایریا پہنچا تو کچھ دن گزرنے کے بعد ہمارے ملک کے خلاف شدت پسندوں نے چوگی قلعہ پرحملہ کیا جس کا پاک فوج نے ان شرپسندوں کو مؤثر جواب دیا اس وقت سخت سردی کا موسم تھا اور اس جوابی کارروائی کے دوران کچھ سپاہی زخمی بھی ہوئے۔ مگر میرے بیٹے نے اپنے حوصلے کو بلند رکھا اوردشمن کو مزید آگے نہیں بڑھنے دیا۔ سپاہی سہیل خان شدت پسندوں سے ڈٹ کر مقابلہ کر رہا تھا۔ اس دوران دشمن کی طرف سے شدید فائرنگ جاری رہی۔ خراب موسم کی وجہ سے ہتھیاروں کی رکاوٹیں پیش آتی رہیں جو بھی ہتھیار فائر نگ کے دوران رک جاتا تھا تو سپاہی سہیل خان ان ہتھیاروں کی صفائی اور رکاوٹیں دور بھی کرتا تھا۔اس نے اپنا اور اپنے ساتھیوں کا حوصلہ بلند رکھا اور دشمن کو آگے بڑھنے نہیں دیا۔


31جنوری2012 کو شدید فائرنگ جاری تھی۔ اس دوران دشمن کی جانب سے کی گئی گولیوں کی بوچھاڑ سپاہی سہیل خان کو شہادت سے ہمکنار کر گئی۔ سپاہی سہیل خان (شہید) میرا سب سے بڑا بیٹا تھا۔ جب مجھے شہادت کی خبر ملی تومیری زبان پرالحمد ﷲ اور انا ﷲوانا الیہ راجعون کے الفاظ تھے۔


وہ وقت اور دن کبھی نہیں بھول سکتا۔ وہ میری زندگی کا ناقابلِ فراموش دن تھا۔ اس دن مجھے اپنے بیٹے سپاہی سہیل خان کی شہادت کی اطلاع موبائل فون پر رجمنٹ کے صوبیدار میجر نے دی تھی۔
قومی پرچم میں ملبوس شہید کے جسدِ خاکی کو تدفین کے لئے گاؤں محب بانڈہ لایا گیا تو پاک فوج کے ایک چاق چوبند دستے نے اسے سلامی دی۔ مجھے اپنے بیٹے کی شہادت پر فخر ہے‘ موت تو برحق ہے اور سب نے مرنا ہے لیکن شہادت والی زندگی ہر ایک کامقدر نہیں ہوتی۔ اگرچہ مجھے بیٹے کی جدائی کا دُکھ ضرور ہے مگر مجھے ملک اور قوم کے لئے اپنے بیٹے کی شہادت کا رتبہ اور بھی اچھالگا میری دعا ہے اﷲ تعالیٰ ایسے بیٹے سب ماؤں کو دے۔میرے بیٹے کی بہادری پر حکومت پاکستان نے اعتراف کرتے ہوئے ان کو بعد از شہادت تمغۂ بسالت عطا کیاہے۔

 

Follow Us On Twitter