06
January

Maulana Muhammad Ali Jouhar - A Strategic Point in Indo-Muslim Politics

Written By: Prof. Sharif al Mujahid

(On the occasion of 84th death anniversary of Maulana Muhammad Ali Jouhar who died on Jan 4, 1931)

And, Maulana Muhammad Ali, was one such nerve-centre in Indo-Muslim society during the second and third decades of the twentieth century. Indeed, he was one such strategic point in the onward march of Indo-Muslim politics that eventually found culmination and crystallization in the emergence of Pakistan. Actually, no one else represented the tone, tenor and temper of the romanticist, Khilafatist era (in the 1910s and 1920s) as he did in his hectic life, his revolutionary activities, his numerous discomfitures, and in his tragic death.


Whether he led a hectic life, whether he took recourse to a revolutionary path, or whether he goaded himself to die a tragic death outside the frontiers of his motherland cataclysmically, in whatever he did, consciously or unconsciously, he carried forward the campaign of Indo-Muslim history: the redemption of Islam in India and abroad. In other words, he stood above all, for an honourable existence for Muslims in India and in the rest of the troubled Muslim world in the existential crisis that convulsed Muslim India and that world.


This campaign he had headed during the post-loyalist, Khilafat era, immediately before and after the First World War; and to this campaign he had dedicated himself wholeheartedly all through his life. "And of his greatness consists in [just] being there", in courageously directing it, in zealously dedicating himself to it, in joyously suffering for it – physically, psychologically and materially.


Early Phase
Born (Rampur, 1878) in purple, but cradled in adversity (his father having died a year later), young Muhammad Ali was educated and trained under the benign influence of his stolid and stoic mother, the Bi Amma of the Khilafat movement. After the fashion of the age in which he was born, he received education at the Maktab, later at the M.A.O. School and College at Aligarh, and, still later, at Oxford, but failed to secure a place in the Indian Civil Service.


Till 1911, when he entered public life, he held a number of important posts in various states, and was deeply involved with his alma mater, having belonged to its first generation. He was also associated with the All India Muslim League (AIML) since its founding in 1906 and had helped to popularize it. Much later (1913), he collaborated with Muhammad Ali Jinnah (1876-1948) and Wazir Hasan (1874-1947), the indefatigable and long serving AIML Secretary, to get the Muslim League disenchanted from its erstwhile loyalist embrace and, at Jinnah’s instance, got the twin goals of self government and Hindu-Muslim unity incorporated in its plank. Thus, the AIML was brought in line with the Indian National Congress (f. 1885).
Early in 1911 Muhammad Ali launched his weekly Comrade – "comrade of all and partisan of none" – from Calcutta, the then capital of India. Remarkably though, it was immediately acclaimed as a "new star in the firmament of Indian journalism". Later, he also founded the Hamdard to reach his message to the Urdu knowing public – the Muslim middle class. For their free and frank criticism of the bureaucracy and its "mad ways”, both these papers were first black-listed and, subsequently, their open and bold espousal of the Turkish cause during the First World War got them officially subjected to their suppression.


Radical Transformation
Interestingly though, Muhammad Ali did not start out on his public career with bitterness towards the British. But, erelong, he lost faith in British promises, British justice, British conduct, even as his co-religionists did. In retrospect, the annulment of the Partition of Bengal (1911), the British complicity in the Italo-Turkish (1911) and the Balkan (1912-14) wars, British opposition to the upgrading of the Aligarh Muslim College (1910-12) to university status, and, finally, the Cawnpore Mosque affair (1913) – all these had a hugely deleterious impact on Anglo-Muslim relations in India. The breaking of a plighted word on the partition issue, the gross injustice to the Turks, the setback to the onward march of Muslim education, and the misconduct in Cawnpore finally and irrevocably conspired to wean the Muslims away from Sir Syed Ahmad Khan and Muhsin-ul-Mulk’s loyalist plank and hurtled them headlong onto an unchartered anti-

 

British, pan-Islamic-cum-nationalist course.
The radical transformation that Indian Muslims had undergone during 1911-14 had turned Muhammad Ali into a revolutionary and the foremost symbol and spokesman of their revolutionary fervour. For good or ill, he was now in clash and conflict with the government, more often than not, and to his end. And he came to be widely acknowledged as the stormy petral of Indian politics.


Inevitably, he whole heartedly took up the cause of the Turks which, he thought, was Islam's, too. To its espousal he dedicated himself and his papers. The fate and choice of the Turks became the sole determinant of his future policy and programme. And he was obsessed with this and the dismaying fortunes of the fast crumbling Ottoman empire to a point that it goaded him inevitably and inexorably to a fire-eating revolutionary role, reach incomparable dizzy heights, and, consequently, to a hectic life of storm, strife and sacrifice.


Supreme Leader
This new phase came in the wake of the First World War when he (along with his brother, Shaukat Ali) was interned, and his paper suppressed for his bold, fiery and brilliant reply to the London Times’ leading article, "The Choice of the Turks". And by the time they were released on December 15, 1919, the Khilafat agitation was already in full swing. No wonder, they decided to ride the crest of the movement and were, in turn, readily accepted as the leaders. For the next four years Muhammad Ali became the supreme leader, and an idol par excellence. inspiring Muslims to endless strivings and supreme sacrifices in the cause of Islam, the Khilafat and Indian independence.


In 1920 he led a delegation to England to present the Indian Muslim viewpoint on the Allied Turkish treaty of Severs and the Khilafat. Disappointed in his mission and back from the continent, he, in concert with Mahatma Gandhi (1869-1948), launched the Khilafat-cum-non-cooperation movement. He toured the country far and wide, reaching the Khilafat message to the farthest corner, and the people readily responded to his call as never before. Indeed, a revolution had overtaken India: people not only said quit to government sponsored educational institutions, to government service, to courts, to titles, but they also demonstrated, and joyously courted arrests. Muhammad Ali himself was arrested, tried for “sedition" at Khaliqdina Hall, Karachi, and gaoded.


However, romantic and out of tune with the objective realities as the movement was, it was in its very nature that it should not succeed. To his eternal credit, Gandhi, to whom the Muslims had deliberately surrendered the movement’s supreme leadership, if only in order to win over Hindu cooperation, kept the emotion-laden movement peaceful and non-violent, keeping a close check on violence, whether physical or verbal. And when it did finally go out of hand, as in the bloody Chauri Chaura incident on February 5, 1922, when an agitated mob burnt alive a dozen or more policemen who had taken refuge in a police station, he had to call off the movement on February 12. Once disbanded, however temporarily, the movement lost its tempo, and could never be revived. Most of Gandhi’s colleagues have disagreed with him, for his critical decision, castigating him for having lost a moment of opportunity for dismantling the British citadel. But, in retrospect, Gandhi was not too far wrong in his assessment, and in damming the movement in time, to preclude its spiralling itself into unmitigated violence and unremitted anarchy.


But, perhaps, what pained Muhammad Ali more was the bleak situation as it presently developed in India and in the rest of the Muslim world. For, by 1924, the Turks had decided upon a nationalist dispensation for themselves while the Arabs had opted for such a dispensation eight years earlier – in the Arab Revolt of 1916. For now, the Arabs faced a division of their lands between France and Britain (under whose inspiration and encouragement the Arabs had insisted upon their separation from the Ottoman Empire during the First World War) and the spectre of the creation of a Jewish national home in Palestine, while Ghazi Mustafa Kemal Pasha, the hero of the Turkish "war of liberation" (1919-22), abolished the institution of Khilafat itself and sent the last caliph into exile, with bag and baggage, on March 3, 1924. All this much to the chagrin of Indian Muslims and the rest of the Muslim world. In any case, the Turkish decision (1924) was a stab in the back of the Indian Khilafat Movement, denuding it of its very raison de'etre and the Khilafat leaders of their most basic and telling appeal.


But the Khilafat Conference, of which Muhammad Ali was the supremo, lingered on and met periodically till his death. The Conference in Lahore in late December 1929 caused a stir and registered a major contribution when its Reception Committee Chairman, Nawab Sir Muhammad Zulfikar Ali Khan (1875-1933) proposed exclusion of demographically dominant non-Muslim areas such as Ambala to get the Muslim provinces more homogeneous and more Muslim concentrated. He also called for partition of the subcontinent into Muslim majority and Hindu majority regions. This was the first time that the partition proposal was raised formally from a political platform. Allama Iqbal, besides a host of Muslim luminaries, was present on the occasion. This address, which was reported extensively in Inqilab (Lahore) on January 3, 1930, came one year before the consolidated north-western state proposal was presented by Iqbal at the Muslim League’s Allahabad session in December 1930.


Huseyn Shaheed Suhrawardy’s rise to the echelon of Muslim League’s leadership in Bengal in the 1930s also underlines the popularity of the Khilafat Conference long after Ataturk had aborted the Khilafat institution itself, since Suhrawardy owed his popularity for his role as the Khilafat Committee’s Secretary in Bengal.


Even so much to his dismay, Muhammad Ali found his erstwhile Hindu colleagues and non-cooperators launching upon, or openly supporting, or at least tacitly approving the anti-Muslim Shuddhi and Sanghatan movements. More tragic: the two communities which he, along with Gandhi, had done so much to bring on a common platform in the Khilafat Movement, had become antagonistic as never before, flying at each other's throats on an ever-increasing scale. Above all, he found that the Congress itself had, in the meantime, disowned its "national" credo and grown exceedingly communal.


Dawn of Realism
Tragic indeed was this and his situation. In order to serve Islam, both abroad and inside the country, he had taken up the cause of Khilafat, and of Hindu-Muslim unity, which he along with others considered the condition for Indian freedom. But, for now, in the Muslim world, his Khilafat ideal stood repudiated, and in India, his Hindu-Muslim unity plank surrendered. This two-pronged disillusionment awakened him (and Muslim India) to a new sense of realism. And they finally came to the conclusion that should Muslims wish to carve out a destiny of their own, a destiny commensurate with their due status under the Indian cosmos, they should take to the path of self-reliance and should become the sole arbiters of their destiny. This led to the calling, among others, of the All-Parties Muslim Conference (APMC) on January 1, 1929 under the redoubtable Aga Khan at Lahore, and the formulation of minimum Muslim demands in more precise terms. This as a counter to the Nehru Report (1928), the Congress’ blue print for the future Indian constitution, which inter alia had repudiated the Lucknow Pact of 1916 and the Muslim right to separate electorate. For now the Maulana owned up the APMC resolution and, later, Jinnah’s Fourteen Points (1929). His views on the Hindu-Muslim question and on the future polity of India were succinctly set forth, among others, in his addresses to the (first) Round Table Conference (1930-31) and his letter to the Prime Minister on January 1, 1930.


"It is a misnomer to call the Hindu-Muslim question a question of minorities", he declared. "A community that in India alone must now be numbering more than 70 million", he argued, "cannot easily be called a minority in the sense of Geneva minorities...." Moreover, he demanded that "in Muslim provinces, Muslims should be allowed to have their majority...as the Hindus have everywhere else"; and that "the Central Unitary Government should not over-ride them [Muslims] everywhere."


This was Maulana Muhammad Ali's last political testament, as he discussed the Indian constitutional problem on his death-bed at the Round Table Conference on January 1, 1931. Three days later, this ailing delegate to the Conference was dead. And with him had passed away the foremost Muslim revolutionary of the age. In concurrence with the Mufti of Jerusalem, his mortal remains were later taken to Palestine and buried in the Masjid al-Aqsa; obviously in recognition of his services to Islam, and Palestine.


Conclusion
Great as Maulana Muhammad Ali was as an orator and writer, as a leader of men and as a freedom fighter, he was equally great as a man. The Maulana had such “a juxtaposition of grace and brilliance with tremendous and deadly earnestness” that it induced Sir C. P. Ramswamy Iyer, one-time Dewan of Travancore, to hail him in eloquent terms: “A man of varied learning, a fine and effective speaker, and wielder of a style which can be delicate as well as trenchant, above all, an idealist who strove to revivify Muhammadan public life and breathe reality into its political activities, Muhammad Ali will always be counted as one of the creators of the New Islamic spirit in India”.


The Maulana, it is rightly said, “had the heart of Napoleon, the tongue of Burke and the pen of Macaulay”, but, above all, he was every inch a Muslim. This is the key to his personality, to his achievements as well as to his actions, however misguided they might seem – as, for instance, his agitation for the shut-down of Aligarh, the premier Muslim educational institution. In the early 1920s, no one else had wielded such an enormous influence over the Muslim masses, inspired them to such energetic action and goaded them to such supreme sacrifices. He was the man of the hour, the man of their destiny. And his contribution to the evolution of Indo-Muslim politics was such that.

…till the future dares
Forget the past, his fate and fame shall be,
An echo and a light unto eternity.

The writer is an HEC Distinguished National Professor, who has recently co-edited Unesco's History of Humanity, vol. VI, and The Jinnah Anthology (2010) and edited In Quest of Jinnah (2007), the only oral history on Pakistan's Founding Father.
"A great man", says Justice Oliver Wendell, Jr., "represents a great ganglion in the nerves of society, or to vary the figure, a strategic point in the campaign of history, and part of his greatness consists in being there.”

*****

 
10
January

عظیم انسان عظیم شہادت

تحریر: ناصر اقبال خٹک

لیفٹیننٹ کرنل فیض اﷲ خٹک

پاک فوج کا ہر جوان اپنی زندگی اپنے ملک و قوم کی حفاظت کے لئے وقف کر دیتاہے۔ اسے اپنی اِس زندگی سے زیادہ اُس زندگی کی خواہش ہوتی ہے جو اُسے شہادت کے بعد ملتی ہے۔ لیفٹیننٹ کرنل فیض اﷲ خٹک ایسے ہی انسان تھے جن کی زندگی کا مقصد اپنے وطن کی خاطر اپنی جان قربان کرنا تھا۔


فیض اﷲ 10فروری 1962میں ضلع کرک کے ایک نواحی گاؤں میں پیدا ہوئے۔ فیض اﷲ بچپن ہی سے ذہین اور کسی حد تک شرارتی تھے۔ فیض کو اُن کے والد محترم نے گورنمنٹ پرائمری سکول متوڑ میں داخل کروا دیا۔ ننھا فیض ہر کلاس میں ہر سال بہتر سے بہتر کارکردگی دکھاتا رہا۔ پڑھائی کے ساتھ مال مویشی بھی چراتا تھا۔ غلیل ہی اس کا پہلا ہتھیار تھا اور چھوٹے پرندے اس کا شکار تھے اور شکار میں اس کا کتا اس کا ساتھی تھا۔ کچھ عرصے تک بھیڑ بکریاں بھی چرائیں لیکن اس کے والد محترم نے زیادہ توجہ اس کی تعلیم پر ہی دی۔ پھر ایک دن فیض نے گورنمنٹ ہائی سکول صابر آباد سے میٹرک کا امتحان پاس کیا۔ گورنمنٹ کالج کرک سے 1980 میں ایف ایس سی کیا۔ ایک دن اچانک فیض نے اپنے والد صاحب سے فوج میں جانے کی اجازت طلب کی تو انہوں نے بھی انکار نہیں کیا کیونکہ والد پہلے ہی ملک کا سپاہی تھا۔ پھر اپنے بیٹے کو کیسے منع کر سکتا تھا۔ 1982کو آرمی میں بحیثیت کمیشنڈ آفیسر 69پی ایم اے لانگ کورس میں شمولیت اختیار کی۔ دو سال کی ٹریننگ مکمل کرنے کے بعد
29FF
میں پوسٹ کر دیئے گئے۔ جہاں سے بطور سیکنڈ لیفٹیننٹ عسکری زندگی شروع کی۔ وہ شروع ہی سے بہت محنتی تھے۔ ایمانداری ان کی رگوں میں شامل تھی۔ وہ ہمیشہ اچھی سوچ کے مالک رہے،ان کا ملٹری کیریئر ہمیشہ شاندار رہا۔ وہ دن بھی آ گیا جب وہ کمانڈنگ آفیسر بن گئے۔ اپنی ہی پیرنٹ یونٹ کے کرنل بن گئے۔ ان کے کرنل بننے پر پورے گاؤں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی۔ صدقے خیرات بھی کئے ہر طرف خوشیوں کا سماں تھا۔ جب میجر تھے تو شادی کے بندھن میں بھی بندھ گئے۔ کرنل بننے پر اﷲ نے لخت جگر حمزہ کے روپ میں دیا اور اُن کی خوشیاں دوبالا ہو گئیں۔ حمزہ ان کی پہلی نرینہ اولاد تھی۔ جس کا نام فیض نے خود حمزہ رکھا تھا۔ فیض بہت محبت کرنے والے باپ تھے۔ ہمیشہ اولاد کی اچھی پرورش اور بے لوث محبت کرنے والوں میں سے تھے۔

azeeminsanltcol.jpg
2002میں گوجرانوالہ میں اپنی یونٹ کی کمانڈ ختم کرنے کے بعد بحیثیت سٹاف آفیسر
(UN)
سیرالیون میں سلیکٹ ہوئے۔ بالآخر یو این مشن سرالیون چلے گئے۔ وہاں وہ پوری ایمانداری سے اپنی ڈیوٹی سرانجام دے رہے تھے۔ وہ اپنی ڈیوٹی میں کوتاہی کبھی نہیں کرتے تھے۔وہ اپنے فرض کو اچھی طرح نبھاتے تھے۔ وہ ہمیشہ کہتے تھے کہ اپنی قابلیت پر بھرتی ہوا ہوں۔ نہ سفارش کروائی ہے اور نہ سفارش مانتا ہوں۔ جو بہتر لگے گا جو قانون کہے گا وہی مانوں گا۔ ہمیشہ سے سفارش کے خلاف تھے۔ سب کو ایک نظر سے دیکھتے تھے۔ سپاہی سے آفیسر تک سب طبقوں کو ایک ہی نظر سے دیکھتے تھے۔ 29جون 2004 کی صبح فوجی مورچوں کے ایریا کی آسمانی نگرانی کے لئے
(MI-8)
ہیلی کاپٹر پر جانا تھا۔ صبح ٹھیک 9بجے ہیلی کاپٹر نے اپنے ہدف کی طرف پرواز کی۔ 45منٹ کے بعد ہیلی کاپٹر کا کنٹرول روم سے رابطہ منقطع ہو گیا۔ لینڈ کرتے وقت ہیلی کاپٹر اچانک حادثے کا شکار ہوا اور جنگل میں گر کر تباہ ہو گیا۔ بروقت کارروائی بھی نہ ہو سکی کیونکہ اچانک بارش بھی شروع ہو گئی اور ہیلی کاپٹر میں ایک فیض اﷲ کے ساتھ 16فیض اور بھی شامل تھے۔


غرض شہادت فیض کا مقدر ٹھہری۔ وہ فرض کی ادائیگی میں پاک فوج کے اس امن دستے کا حصہ تھے جسے اقوام متحدہ کے زیرنگرانی عالمی امن کو یقینی بنانا تھا۔ فیض کی فرض سے لگن اور شہادت نہ صرف پاکستان کے لئے سرمایہ افتخار ہے بلکہ پوری دنیا کے امن پسندوں کے لئے بھی باعث افتخار ہے۔ وہ جس گاؤں کے رہنے والے تھے اُس کی زیادہ تر آبادی غریب لوگوں پر مشتمل تھی اور اُن کی اپنے گاؤں میں روشنیاں بحال کرنے کی امیدیں فیض سے ہی تھیں۔ جس نے اس گاؤں میں جنم لیا تھا۔ جب اس کی لاش اس کے آبائی گاؤں لائی گئی تو ہر طرف غم کا ماحول اور مایوسی کے بادل تھے۔ ہر آنکھ اشکبار تھی ہر طرف لاالہ الا اﷲ کا ورد تھا۔ لیکن ایک ان کے والد شاہ جہاں تھے جو اس منظر کو چپ چاپ نظروں سے دیکھ رہے تھے۔ ان کا لخت جگر ایک نئے سفرپر گامزن ہو چکا تھا اور انہیں اس پر فخر تھا۔ لیفٹیننٹ کرنل فیض اﷲ کی نماز جنازہ ان کے آبائی گاؤں میں انتہائی فخر اور شان سے ادا کی گئی اوراُنہیں فوجی اعزاز کے ساتھ سپردخاک کر دیاگیا۔

 
19
January

معصوم شہداء

صبح کا وقت تھا‘ پشاور کے آرمی پبلک سکول کے گراؤنڈ میں سارے بچے اسمبلی کے لئے جمع تھے‘ شاعر مشرق علامہ اقبال کی مشہور نظم ’’لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری‘‘ جوش و خروش سے پڑھی جا رہی تھی ۔ ایک جانب تمام اساتذہ کرام سنجیدگی اور متانت کے ساتھ کھڑے تھے اور طلبہ و طالبات امید کے دیے آنکھوں میں روشن کئے سنہرے مستقبل کا خواب دیکھ رہے تھے۔ چمکتے دمکتے چہروں کو دیکھ کر کون کہہ سکتا تھا کہ چند گھنٹوں بعد یہ پھول سے چہرے خاک و خون میں لتھڑ جائیں گے۔ ان کے اجلے یونیفارم ان کے اپنے ہی لہو میں تر ہو کے سرخ ہو جائیں گے اور 43سال بعد پھر 16دسمبر کو قوم کو ایک بڑے صدمہ سے دوچار ہونا پڑے گا۔ 1971میں وطن عزیز دولخت ہوا تھا۔ آج اتنے برسوں بعد ٹھیک اسی دن پاکستان کی تاریخ کا بدترین المیہ رونما ہوا۔ ظلم اور درندگی کی ایسی داستان رقم ہوئی کہ جس کی مثال نہیں ملتی۔ پاکستان کے صوبے خیبرپختونخوا کے دارالحکومت پشاور کے آرمی پبلک سکول میں بچوں کا قتل عام کیا گیا۔

آہ! معصوم کلیوں کو مسل دیاگیا‘ غنچوں کو چٹکنے سے پہلے ہی نوچ کے پھینک دیا گیا‘ اساتذہ کو زندہ جلا دیا گیا‘ نازک جسموں کو بموں سے اڑایا گیا اور قوم کے معماروں کو اندھا دھند فائرنگ کر کے خون میں نہلا دیا گیا۔ چشم فلک حیران ہے‘ پوری دنیا گنگ ہے‘ انسانیت منہ چھپاتی پھر رہی ہے‘ دماغ جیسے ماؤف ہو رہاہے‘ کیا کوئی اتنا بھی ظالم ہو سکتا ہے؟ آخروہ کون سا مذہب ہے ‘ وہ کون سا نظریہ ہے‘ وہ کون سا عذر یا تاویل ہے جو اس بھیانک عمل کو درست قرار دیتا ہے؟ جنگ کے بھی کچھ اصول ہوتے ہیں‘ اسپتالوں‘ سکولوں‘ عورتوں‘ بچوں‘ بزرگوں‘ کھیت میں کام کرنے والے دہقانوں پر کوئی حملہ نہیں کرتا‘ کوئی چاہے کتنا ہی شقی القلب کیوں نہ ہو‘ ایسی وحشت و درندگی کا تصور بھی نہیں کر سکتا کہ جس کا مظاہرہ پشاور میں ہوا۔ تفصیلات کے مطابق اس افسوس ناک واقعے کی منصوبہ بندی افغانستان میں کی گئی۔ حملہ آوروں نے باقاعدہ پلاننگ کے تحت سکول پہ حملہ کیا۔ وہ چوری کی گاڑی میں آئے‘ پہلے گاڑی کو آگ لگا کر لوگوں کی توجہ اس جانب منذول کرائی‘ پھر عقبی دیوار پھلانگ کر سکول کے احاطے میں داخل ہو گئے۔ دہشت گرد غیرملکی تھے اور زبان بھی غیر ملکی بول رہے تھے۔ ان کو افغانستان سے مانیٹر کیا جا رہا تھا اور وہ وہاں سے باقاعدہ ہدایات بھی لے رہے تھے۔ صبح سے شام تک معصوم بچوں کے خون سے ہولی کھیلی گئی۔ پہلے سکول کے آڈیٹوریم میں گھس کے بچوں کو مارا‘ پھر لیبارٹری‘ کلاس رومز اور کاریڈورز کو مقتل بنا دیا گیا۔ ہر طرف بارود کی بو پھیل گئی‘ معصوم بچوں کے خون سے فرش رنگین ہو گیا‘ جو بچے ڈر کے مارے بنچوں کے نیچے چھپ گئے تھے‘ انہیں بالوں سے پکڑ کر گھسیٹ کر نکالا گیا۔ ان کے سر اور گردن میں گولیاں ماری گئیں۔ جس بچے پہ شبہ ہوتا کہ اس میں جان باقی ہے۔ اسے ٹھوکر مار مار کے چیک کیا گیا اور اس پر بھی تشفی نہ ہوئی تو مردہ بچوں پر فائرنگ کی گئی۔ ہائے بے بس ماں نے کس پیار سے اپنے جگر کے ٹکڑے کو پالا ہو گا‘ کس محبت سے سکول بھیجا ہو گا‘ اس بدنصیب کو کیا معلوم تھا کہ اس کا لال سکول نہیں بلکہ قتل گاہ جا رہا ہے جہاں سے وہ نہیں بلکہ اس کا خون آلود بستہ اور کتابیں ہی واپس آئیں گی۔

149معصوم زندگیوں کے چراغ بجھا دئے گئے‘ اساتذہ کو بھی نہ بخشا گیا‘ سکول کے عملے کو بھی شہید کیا گیا‘ دہشت گردوں نے خواتین ٹیچرز کو نذر آتش کیا‘ سکول کی پرنسپل جنہوں نے بچوں کو تنہا چھوڑنے سے انکار کیا‘ انہیں بھی شہید کر دیا‘ خدا جانے اس سفاک عمل کے پیچھے کیا محرکات تھے؟ اس بہیمانہ قتل عام کو کس سے تعبیر کریں‘ سمجھ میں نہیں آتا۔ یہ دہشت گرد انسان نہیں‘ وحشی درندے ہیں‘ ان کی درندگی پر ابلیس نے ان کو اپنے سے بڑا شیطان مان لیا ہے۔ بچوں اور بڑوں کو بے رحمی سے شہید کرنے والے جہنمی یقیناًاپنے حصے کا عذاب بھگتیں گے مگر وہ والدین جن کے بچے اس سانحے میں جاں سے گزر گئے‘ جب تک زندہ ہیں اولاد کی اچانک اور تکلیف دہ موت کا صدمہ جھیلتے رہیں گے۔ اپنے سرمایہ حیات کو یوں دہشت گردوں کے ہاتھ لٹا کر کون سا خاندان سکون سے جی پائے گا۔۔۔؟ جدائی کا داغ مٹ نہ سکے گا‘ خون کے دھبے دھل نہ سکیں گے‘ زندگی کی آخری سانس تک بچوں کی معصوم شکلیں اور ان کے ننھے کفن ماؤں کو رلاتے رہیں گے۔ کتنے افسوس کی بات ہے کہ برسوں سے سزائے موت پانے والے قیدیوں کو جیلوں میں رکھا گیا اور پھانسی کی سزا پر عملدرآمد نہ ہو سکا۔ خدا کا شکر ہے کہ اب اس سزا کو بحال کر دیا گیا ہے۔ اس سے دہشت گردی کے خاتمے میں مدد ملے گی۔ دوسری اہم بات چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف کی افغانستان روانگی اور افغان صدر سے ملاقات ہے جس میں انہوں نے تمام ثبوت و شواہد مہیا کئے اور مطالبہ کیا کہ دہشت گردوں کو انجام تک پہنچایا جائے۔ امید ہے کہ اس حوالے سے قوم کو جلد خوشخبری ملے گی۔ پوری قوم پاک فوج کے ساتھ ہے اور آپریشن ضرب عضب کی حمایت کرتی ہے۔ ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل عاصم سلیم باجوہ نے پریس کانفرنس میں واضح الفاظ میں کہا ہے کہ دہشت گردوں اور ان کے سہولت کاروں کو نہیں چھوڑیں گے۔ ایسے وقت میں جب پورا ملک سوگ میں ڈوبا ہے سیاسی جماعتیں بھی ایک پلیٹ فارم پہ جمع اور متحد ہیں۔ سانحہ پشاور میں شہید ہونے والے اب واپس تو نہیں آ سکتے۔ مگر مجھے یقین ہے کہ فردوس بریں میں ان کا مقام ہو گا۔اﷲتعالیٰ ان کے لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے۔ زخمی ہونے والے بچے ہسپتالوں میں زیرعلاج ہیں۔ بہت سے بچے عمر بھر کے لئے معذور ہو چکے ہیں‘ زخموں سے چور معصوم بچوں کے گھاؤ خدا کرے بھر جائیں مگر ان کے ذہن و دل پہ جو وار ہوا ہے وہ جانے کیسے ٹھیک ہو گا؟ یہ بچے پاکستان کے بلند ہمت اور بہادر سپوت ہیں جو گولیاں کھانے کے بعد بھی دہشت گردی سے لڑنے کا‘ علم حاصل کرنے کا اور دوبارہ زندگی کے دھارے میں شامل ہونے کا عزم رکھتے ہیں۔ اے عظیم ماؤں کے عظیم بیٹو! ہمیں تم پر فخر ہے۔

خدا کرے کہ مری ارضِ پاک پہ اترے

وہ فصلِ گل جسے اندیشۂ زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھلے وہ کھلا رہے صدیوں

یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

09
January

خاندان ِشہداء کا عظیم سپوت

تحریر: انور شمیم

حوالدار شیر دراز خان شہید کے حوالے سے ان کے بھائی انور شمیم کی خصوصی تحریر


مملکتِ خداداد پاکستان کا قیام ہمارے آباء واجداد کی بے شمار قربانیوں کا ثمر ہے۔ اسی تسلسل میں استحکام وطن کے لئے ہمارے جانباز ہمیشہ اپنا آج قوم کے کل کے لئے قربان کرتے چلے آئے ہیں۔ دشمن چاہے کھل کر سامنے آئے یا دہشت گردی کے پردے میں چھپ کر وار کرے، افواج پاکستان کے جری جوانوں نے ہر محاذ پر سیسہ پلائی دیوار بن کر اس کے مذموم عزائم کو ہمیشہ ناکام بنایا ہے۔ وطن عزیز کی سلامتی کے لئے قوم کے ان بہادر سپوتوں نے قربانیوں کی لازوال داستانیں رقم کیں اور اپنے جیتے جی وطن کی حرمت پر آنچ تک نہ آنے دی۔ آج کل اسی جذبے کے حامل، شوقِ شہادت سے سرشار ہمارے بہادر جوان قبائلی علاقوں سے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے سر دھڑ کی بازی لگانے میں مصروف ہیں۔
قوم کے اِن نڈر سپوتوں میں شامل ایک عظیم نام حوالدار شیر دراز خان شہید کا بھی ہے جنہوں نے وادٔ شوال کے مشکل ترین محاذ پر یکم دسمبر 2017کو جام شہادت نوش کر کے اپنی خاندانی روایت کی پاسداری کی۔ حوالدار شیردراز خان (شہید) کا خاندان شہادت کی تابندہ روایت کا امین ہے۔ اس سے قبل ان کے دو بھائی اور دو بھانجے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اپنی قیمتی جانوں کا نذرانہ پیش کر چکے ہیں۔ ان کے بھائی سپاہی محمد خورشید خان طوفان نومبر 1994 میں 2 ونگ مہمند رائفلز کی جانب سے سوات میں شدت پسندوں کے خلاف مہم میں حصہ لیتے ہوئے شہادت سے ہمکنار ہوئے۔ ان کے دوسرے بھائی نائب صوبیدار عمردراز خان شہید کا تعلق مہمند رائفلز کے 3 ونگ سے تھا۔ وہ اکتوبر 2012 میں محمد خوزئی مومن پوسٹ پر دہشت گردوں کے خلاف بے جگری سے لڑتے ہوئے شہادت کے عظیم منصب پر فائز ہوئے۔ ان کے ایک بھانجے، سپاہی حضرت علی(12 فرنٹئیر فورس رجمنٹ) اور دوسرے بھانجے، سپاہی لال مرجان (14فرنٹئیر فورس رجمنٹ )نے 2012 میں وادٔ شوال میں دہشت گردی کے خلاف کارروائیوں میں یکے بعد دیگرے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ اس سے قبل ان کے دو اور کزن بھی پاک فوج کی جانب سے مختلف معرکوں میں شہادت کا عظیم رتبہ حاصل کر چکے ہیں۔

khandanshudaka.jpg
شہداء کی اس درخشندہ روایت کے امین، حوالدار شیر دراز خان نے ضلع کرک کے گائوں غرکلے کے ایک معزز گھرانے میں20 جنوری 1979 کو آنکھ کھولی۔ ان کے والد ملک محمد علی خان برسوں سے بحیثیت نمبردار اور کسان کونسلر خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔ حوالدار شیر دراز خان8بھائیوں اور5بہنوں میں پانچویں نمبر پر تھے۔ انہوں نے میٹرک تک تعلیم گورنمنٹ ہائی سکول میٹھا خیل سے حاصل کی اور اس کے بعد شوق شہادت انہیں پاکستان آرمی میں کھینچ لایا۔ انہوں نے 10 فروری 1998 کو پاکستان آرمی میں شمولیت اختیار کی اور فرنٹئیر فورس سینٹرایبٹ آباد میں بنیادی عسکری تربیت کی تکمیل کے بعد 14فرنٹئیر فورس رجمنٹ (نو بارہ بٹالین) میں مستقل طور پر تعینات کئے گئے۔


حوالدار شیردراز خان شہید نے انیس سالوں پر محیط عسکری کیرئیر کے دوران ہر میدان میں مثالی کارکردگی کے جھنڈے گاڑ کر اپنے افسروں اور جوانوں کے دل جیتے۔ یونٹ میں شمولیت اختیار کرنے کے بعد وہ مختلف تربیتی مقابلوں میں نہایت دلچسپی سے شریک ہوا کرتے تھے ۔ وہ ابتدا ہی سے یونٹ کی نشانہ باز ٹیم کا مستقل حصہ تھے اور فائرنگ کے سالانہ مقابلوں میں یونٹ کے لئے ٹرافی کا حصول ہمیشہ ان کا مطمع نظر ہوا کرتا تھا۔ اس کے علاوہ وہ یونٹ کی کبڈی، ہینڈ بال اور کشتی کی ٹیموں میں بھی وقتاً فوقتاً اعلیٰ کارکردگی کے جوہر دکھاkhandanshudaka1.jpg کر تمغوں اور انعامات کے حقدار ٹھہرتے رہے ۔ اپنے تابناک کیرئیر کے دوران انہوں نے تمام تربیتی امتحانات بھی امتیازی حیثیت میں پاس کئے۔ ان کی اسی بہترین کارکردگی کے پیش نظر انہیں دس سال کی قلیل سروس میں حوالدار کے عہدے پر ترقی دے دی گئی۔ انہوں نے انتہائی جانفشانی سے فرائض سرانجام دے کر خود کو اس منصب کا اہل ثابت کیا اور ہمیشہ اپنے افسران کے اعتماد پر پورا اترے۔ حوالدار شیردراز خان شہید نے 2014 میں یونٹ کے ہمراہ اقوام متحدہ کے امن مشن لائبیریا میں بھی خدمات سرانجام دیں جہاں ان کی کارکردگی کو بے حد سراہا گیا۔


حوالدار شیردراز خان دہشت گردی کے معاملے میں شروع ہی سے انتہائی حساس واقع ہوئے تھے۔وہ جب بھی کسی شدت پسندانہ کارروائی کے بارے میں سنتے تو ان کا خون کھول اٹھتا تھا۔ وہ دہشت گردی کو فساد فی الارض اور معاشرے کے ناسور سے تشبیہہ دیتے اور اپنے رفقائے کار کو ہمیشہ اس کے خلاف ثابت قدم رہنے کی تلقین کیا کرتے تھے۔ ان کی یونٹ شوال آپریشن کے لئے منتخب ہوئی تو وہ بخوشی اس کے ہراول دستے کا حصہ بنے۔ دو سال کے عرصے میں انہوں نے اپنے رفقاء کے شانہ بشانہ دس ہزار فٹ بلند برفانی چوٹیوں کو دہشت گردوں کے چنگل سے وا گزار کروانے کے لئے خون پسینہ ایک کردیا اور فقید المثال کامیابیاں حاصل کیں۔ انہوں نے دہشت گردی کے خلاف جنگ کو اپنی زندگی کا مقصد بنا لیا تھا اور اس دوران یونٹ میں ان کی فرض شناسی، بے خوفی اور ایثار و قربانی ایک ضرب المثل کی سی حیثیت اختیار کر چکی تھیں۔


حال ہی میں ان کی یونٹ شمالی وزیرستان میں اپنا مشن کامیابی سے مکمل کرنے کے بعد واپسی کے مراحل سے گزر رہی تھی۔ حوالدار شیردراز خان حسب معمول افغان سرحد پر واقع اگلے مورچوں میں عسکری فرائض سرانجام دے رہے تھے کہ یکم دسمبر 2017 کو سوا بارہ بجے کے قریب دشمن کا ایک مسلح جتھا ان کی پوسٹ پر حملہ آور ہوا۔ ان کی جانب سے دشمن کی کارروائی کا دلیرانہ انداز میں جواب دیا گیا اور کچھ ہی دیر میں اسے پسپائی پر مجبور کر دیا گیا تاہم فائرنگ کے تبادلے کے دوران ایک گولہ ان کے بالکل نزدیک آ کر پھٹا جس کے نتیجہ میں وہ شدید زخمی ہوگئے۔ انہیں فوری طور پر ہیلی کاپٹر کے ذریعے سی ایم ایچ پہنچایا گیا لیکن انہوں نے راستے میں ہی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے جان جانِ آفرین کے سپرد کردی۔ افواج پاکستان کا یہ تابندہ ستارہ 12 ربیع الاول کو جمعة المبارک کی مبارک گھڑی میں شہادت کے عظیم منصب پر فائز ہوا۔ بقول شاعر ''یہ رتبہء بلند ملا جس کو مل گیا'' انہیں 2 دسمبر 2017 کوغرکلے گائوں میں واقع ان کے آبائی قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا۔ نماز جنازہ میں افواج پاکستان سے تعلق رکھنے والے بے شمار حاضر سروس اور ریٹائرڈ افراد کے ہمراہ اہل علاقہ کی کثیر تعداد نے شرکت فرما کر شہید کی پاک روح کو جنت الفردوس کی طرف الوداع کیا۔


حوالدار شیردراز خان شہید تین بیٹوں اور دو بیٹیوں کے شفیق باپ تھے۔ وہ اپنے بچوں کو اعلیٰ تعلیم دلانا چاہتے تھے۔ ان کی شدید خواہش تھی کہ ان کے بچے انہی کی مانند فوج میں شامل ہو کر ملک کی حفاظت میں اپنا کردار ادا کریں۔ حوالدار شیر دراز خان شہید کے اہل خانہ کو ان کی شہادت پر فخر ہے اور ان کا عزم ہے کہ وہ ہر قیمت پر ان کے خوابوں کو حقیقت کا روپ دیں گے۔


بلاشبہ آج ہماری آزادی حوالدار شیردراز خان شہید اور ان جیسے ہزاروں مخلص اور بے لوث شہداء ہی کی مرہون منت ہے جو اپنا آج ہمارے کل کے لئے قربان کر کے آئندہ نسلوں کے محفوظ اور تابناک مستقبل کے ضامن ٹھہرے ہیں۔ دفاع وطن کی خاطر ہر خطرے کا بے دھڑک سامنا کرنے والے یہ بے لوث مجاہد بلا شبہ پاک فوج کا سرمایہ اور جرأتوں کے تابندہ نشان ہیں۔ حوالدار شیردراز خان شہید اور ان کے ساتھیوں نے اپنے پاکیزہ لہو سے جو مقدس شمع روشن کی ہے اس کی روشنی تا ابد افواج پاکستان کے جوانوں کے لئے نشان منزل کا کام دیتی رہے گی۔
صلہ شہید کیا ہے، تب و تاب جاودانہ۔


 

 

Follow Us On Twitter