جنگ ،عورت اورعلامہ اقبال کی تین نظمیں

Published in All Most Read Urdu

تحریر: حمیرا شہباز

ہر چند ابن آدم نے دنیا کے تقریباً تمام فسادات بلکہ جنگوں کی بنیادی وجہ حوا کی بیٹی کو قرار دیا ہے لیکن اس امر سے بھی مفر نہیں کہ ’’وار وکٹمز‘ یعنی ’’متاثرینِ جنگ‘‘ میں بہت بڑی تعداد خود خواتین کی شمار کی گئی ہے۔ جنگ کے نتیجے میں عورت کو کہیں زندگی کی بنیادی سہولیات کی عدم فراہمی درپیش ہے تو کہیں چادر اور چار دیواری سے محرومی کا سامنا ہے ۔ لیکن فقط جنگ کی وجہ‘ اور جنگ کے متاثرین ہونے کے علاوہ جنگ میں دفاعی محاذ پر ڈٹے رہنا بھی عورت کی زندگی کا ایک اہم پہلو ہے۔ بظاہر پاکستان میں کم و بیش گزشتہ ایک دہائی سے دہشتگردی کے خلاف لڑی جانے والی جنگ میں ظاہری محاذوں پر پاکستان کی دفاعی افواج کے دلیر جوان سینہ سپر ہیں۔ لیکن ان کے گھروں کی خواتین کو بھی ایک بڑے جہاد کا سامنا ہے۔


کلام اقبال کا معجزہ ہے کہ پڑھنے والے کو اپنے لئے اس سے ربط کا کوئی نہ کوئی حوالہ ضرور مل جاتا ہے۔ ہر محب وطن کو علامہ محمداقبال کی شاعر سے نسبت ضرور ہے۔ دفاع پاکستان میں اگر خواتین کے کردار پر نظر ڈالوں تو مجھے علامہ اقبال کی تین نظمیں خواتین کی شان میں دکھائی دیتی ہیں اور فکر اقبال کے عصری تناظر میں اُن کی اہمیت مجھ پر عیاں تر ہو جاتی ہے ۔ یوں لگتا ہے جیسے یہ نظمیں تقریباً ایک صدی قبل علامہ محترم نے آج کے پاکستان کے دفاع میں خواتین کے عسکری کردار کو ذہن میں رکھ کر لکھی ہوں۔


اگر دفاع پاکستان میں عسکری سطح پر عورت کے براہِ راست عمل دخل پر نظر ڈالی جائے تو وہ اس فوج کی ایک سپاہی معلوم ہوتی ہے جس کی سالار ’’فاطمہ بنت عبداللہ‘‘ ہے، جس کے نصیب میں حیاتِ جاوداں تو اس کی شہادت کے ثمر کے طور پر رقم کردی گئی تھی لیکن اقبال نے اس کو اپنی ایک نظم کا موضوع بنا کر زندہ تر پائندہ تر کردیا۔


فاطمہ! تو آبروئے امتِ مرحوم ہے
ذرہ ذرہ تیری مشتِ خاک کا معصوم ہے
یہ سعادت حورِ صحرائی! تری قسمت میں تھی
غازیانِ دیں کی سقائی تیری قسمت میں تھی
یہ جہاد اللہ کے رستے میں بے تیغ و سپر
ہے جسارت آفرین شوقِ شہادت کس قدر
یہ کلی بھی اس گلستانِ خزاں منظر میں تھی
ایسی چنگاری بھی یارب، اپنی خاکستر میں تھی!

janaurataurallama.jpgفاطمہ بنتِ عبداللہ عرب کے قبیلہ البراعصہ کے سردار شیخ عبداللہ کی گیارہ سالہ بیٹی تھی جو1912 میں جنگ طرابلس میں غازیوں کو پانی پلاتی شہید ہوگئی تھی ۔ یہ قبیلہ اپنے اثرورسوخ میں دیگر قبائل سے بڑھ کر تھا۔ اس قبیلے کے تمام افراد جنگ طرابلس میں شہید ہوئے۔ اگرچہ بہت سی عرب خواتین نے اس جنگ میں حصہ لیا لیکن فاطمہ ان سب میں سے اس لئے ممتاز ہے کیونکہ وہ سب سے کمسن تھی۔ یہ جنگ جون1912 (دوسری روایت کے مطابق ستمبر1911) میں شروع ہوئی۔ جب بارہ ہزار اطالوی سپاہیوں نے زوارہ (طرابلس پر) حملہ کیا تو ان کے مقابلے میں عرب اور ترک سپاہیوں کی تعداد فقط تین ہزار تھی۔ لیکن اطالوی فوج کو شکست کا منہ دیکھنا پڑا۔ دوران جنگ فاطمہ بنت عبداللہ چار زخمی مجاہدوں کو پانی پلا رہی تھی کہ ایک اطالوی سپاہی نے اس کم سن مجاہدہ کو شہید کر دیا۔ علامہ اقبال نے اس کم سن دختر عرب کی شہادت سے متاثر ہو کر ایک نظم لکھی جو اب ’’بانگ درا‘‘ کی شان ہے۔ اس نظم نے دنیا میں اس کمسن شہید کا نام امر کر دیا۔


آج پاکستان میں دہشت گرد حملوں میں شہید ہونے والی ہر لڑکی فاطمہ بنت عبداﷲ کی سپاہ میں شامل ہے اور اس لشکر میں تازہ ترین بھرتی افواج پاکستان کی جنگجو ہواباز مریم مختار کی ہے جس نے اپنی تربیتی پرواز میں طیارے کو فنی خرابی کی بنا پر آبادی سے دور تر گرانے کی کوشش میں جام شہادت نوش کیا اور اقبال کی نظم ’’فاطمہ بنت عبداﷲ‘‘ کے یہ اشعار پاکستان کی فضائی دفاعی سرحدوں میں گونجتے سنائی دیتے ہیں۔


رقص تیری خاک کا کتنا نشاط انگیز ہے
ذرہ ذرہ زندگی کے سوز سے لبریز ہے
تازہ انجم کا فضائے آسماں میں ہے ظہور
دیدۂِ انساں سے نامحرم ہے جن کی موج نور
جو ابھی ابھرے ہیں ظلمت خانۂِ ایام سے
جن کی ضَو ناآشنا ہے قیدِ صبح و شام سے
جن کی تابانی میں انداز کہنِ نَو بھی ہے
اور تیرے کوکبِ تقدیر کا پرتوَ بھی ہے


ایک تو یہ بیٹیاں ہیں جو’’ قوموں کے کوکب تقدیر کا پرتوَ‘‘ ہیں اور حب الوطنی میں اپنے فرائض سے بخوبی سبکدوش ہوتی ہیں اور ایک وہ مائیں ہیں جن کے لخت جگر جنگ کی نذر ہو جاتے ہیں۔ ان ماؤں کو تو صبر آ جاتا ہے جن کے بیٹے اور بیٹیاں اپنے فرائض منصبی کے پیش نظر کسی نہ کسی جنگی محاذ پر اپنی جان جان آفریں کے سپرد کر دیتے ہیں۔ لیکن ان ماؤں کا کیا جن کے جگر گوشوں کو دہشت گردی کے عفریت نے بے سبب نگل لیا، جن بچوں کی معصومیت پر فرشتے بھی نازاں ہوں اور جن کی نوخیز جوانی پر خزاں کو بھی پیار آتا ہو، ان کی ماؤں کا کیا؟


16دسمبر 2014 کو اے پی ایس پشاور کے سانحے میں ماؤں نے اپنے لال بے سود گنوا دیئے۔ مجھے نہیں معلوم کہ جن ماؤں نے اپنے نور چشم کھوئے ہیں ان کی آنکھوں میں نیند کیوں کر آتی ہو گی۔ لیکن اگر آتی بھی ہو گی تو کچھ ایسے ہی خواب دکھاتی ہو گی جیسا کہ ’’ماں کا خواب‘‘ علامہ اقبال نے قلم بند کیا ہے:


میں سوئی جو اک شب تو دیکھا یہ خواب
بڑھا اور جس سے مرا اضطراب
یہ دیکھا کہ میں جا رہی ہوں کہیں
اندھیرا ہے اور راہ ملتی نہیں
اس تاریک مقام میں اس ماں کو اپنا وہ بیٹا دکھائی دیتا ہے جس کو اس نے بے سبب کھو دیا۔
جو کچھ حوصلہ پا کے آگے بڑھی
تو دیکھا قطار ایک لڑکوں کی تھی
زمرد سی پوشاک پہنے ہوئے
دیئے سب کے ہاتھوں میں جلتے ہوئے
وہ چپ چاپ تھے آگے پیچھے رواں
خدا جانے جانا تھا ان کو کہاں
اسی سوچ میں تھی کہ میرا پسر
مجھے اس جماعت میں آیا نظر
وہ پیچھے تھا اور تیز چلتا نہ تھا
دیا اس کے ہاتھوں میں جلتا نہ تھا


اس ماں نے اپنا بیٹا کسی طبعی موت یا آسمانی آفت کے سبب نہیں کھویا بلکہ وہ جو شمع علم کو فروزاں رکھے ہوئے تھا، اس کی زندگی کے چراغ کو سفاکیت اور درندگی نے گل کیا تھا۔ اس بچے کی ماں خواب میں بھی اس بچے کے چراغ کو گل پاتی ہے۔ ماں اپنے بچے سے گلہ کرتی ہے:


کہا میں نے پہچان کر‘ میری جاں!
مجھے چھوڑ کر آ گئے تم کہاں!
جدائی میں رہتی ہوں میں بے قرار
پروتی ہوں ہر روز اشکوں کے ہار
نہ پروا ہماری ذرا تم نے کی
گئے چھوڑ‘ اچھی وفا تم نے کی!


وہ روشنی کا ہم سفر اس تاریکی میں دھکیلا گیا تھا لیکن وہ مطمئن ہے کہ وہ حیات ابدی کی جانب رواں دواں ہے‘ ہاں مگر اس کا دیا ضرور بجھا ہوا ہے اور وہ اپنی ماں سے یہ کہنے پر مجبور ہے کہ:


جو بچے نے دیکھا مرا پیچ و تاب
دیا اس نے منہ پھیر کر یوں جواب
رلاتی ہے تجھ کو جدائی مری
نہیں اس میں کچھ بھی بھلائی میری
یہ کہہ کر وہ کچھ دیر تک چپ رہا
دیا پھر دکھا کر یہ کہنے لگا
سمجھتی ہے تو ہو گیا کیا اسے؟
ترے آنسوؤں نے بجھایا اسے!


علامہ اقبال کی تیسری نظم ’’صبح کا ستارا‘‘ جنگ سے متاثرہ خواتین کے اس طبقے سے متعلق ہے جو شاید سب سے زیادہ مشکلات کا سامنا کرتی ہیں۔ اس نظم کے ادبی محاسن اپنی جگہ پر‘ مگر نظم کا مضمون نہایت منفرد اور بے نظیر ہے۔ اقبال کی سوچ کا جہاں بہت وسیع ہے۔ وہ بلندیوں کے مکین‘ سورج‘ چاند‘ ستاروں کے درد آشنا بھی ہیں۔ ’’صبح کے ستارے‘‘ کی داستان کچھ یوں ہے ۔ صبح کا پیامبر‘ صبح کا ستارہ جسے قرآن میں ’’نجم الثاقب‘‘ قرار دیاگیا ہے جو بظاہر اہل جہاں کے لئے ایک نئے روشن دن کی نوید لاتا ہے، کون جانتا ہے کہ اس کا دکھ کیا ہے؟ صبح کی آمد کا اعلان خود اس کے لئے پیام موت ہے۔ نوید سحر کا پیامبر اپنے مقام اور کام دونوں سے مطمئن نہیں۔ وہ اپنی بلندی سے بیزار ہے اور زمین والوں کی پستی پر رشک کرتا ہے۔ ہر روز کا مرنا جینا اس کا مقدر ہے۔


لطف ہمسائیگی شمس و قمر کو چھوڑوں
اور اس خدمت پیغامِ سحر کو چھوڑوں
میرے حق میں تو نہیں تاروں کی بستی اچھی
اس بلندی سے زمیں والوں کی پستی اچھی
آسمان کیا‘ عدم آباد وطن ہے میرا
صبح کا دامنِ صد چاک کفن ہے میرا
میری قسمت میں ہے ہر روز کا مرنا جینا
ساقیِ موت کے ہاتھوں سے صبوحی پینا
نہ یہ خدمت‘ نہ یہ عزت‘ نہ یہ رفعت اچھی
اس گھڑی بھر کے چمکنے سے تو ظلمت اچھی
میری قدرت میں جو ہوتاتو نہ اختر بنتا
قعر دریا میں چمکتا ہوا گوہر بنتا


صبح کا ستارہ خواہش کرتا ہے کہ کاش وہ اختر ہوتا‘ گوہر ہوتا‘ اور اک روز دریا کی گہرائیوں سے نکل کر کسی حسیں کے گلے کا ہار بن جاتا۔ یہ صبح کا ستارہ پہلے تو کسی ملکہ کے تاج کی زینت یا بادشاہ سلیمان کے ہاتھ کی انگشتری میں جڑے نگینے کی قسمت پر رشک کرتا ہے مگر پھر وہ سوچتا ہے کہ یہ نگینہ بھی تو آخر پتھر ہی ہے، جس کی قسمت میں ٹوٹنا ہے۔ صبح کا ستارہ ایسی زندگی کا خواہاں ہے جس میں موت کا تقاضا نہ ہو۔ اسے لگتا ہے کہ زینت عالم ہونے سے بہتر ہے کہ میں کسی پھول پر شبنم بن کر گر جاؤں۔


واں بھی موجوں کی کشاکش سے جو دل گھبراتا
چھوڑ کر بحر کہیں زیب گلو ہو جاتا
ہے چمکنے میں مزا حسن کا زیور بن کر
زینتِ تاجِ سرِبانوئے قیصر بن کر
ایک پتھر کے جو ٹکڑے کا نصیبا جاگا
خاتمِ دستِ سلیماں کا نگین بن کے رہا
ایسی چیزوں کا مگر دہر میں ہے کام شکست
ہے گہرہائے گراں مایہ کا انجام شکست
زندگی وہ ہے کہ جو ہو نہ شناسائے اجل
کیا وہ جینا ہے کہ ہو جس میں تقاضائے اجل
ہے یہ انجام اگر زینتِ عالم ہو کر
کیوں نہ گر جاؤں کسی پھول پہ شبنم ہو کر!


وہ یہ بھی سوچتا ہے کہ کسی کی پیشانی پر افشاں بن کر چمکوں یا کس مظلوم کی آہوں کا شرارہ بن جاؤں۔ الغرض وہ اپنے لئے بہت سے نئے مقامات تلاش کرتاہے مگر اس کا شوق ’’ابدیت‘‘ کہیں پورا ہوتا دکھائی نہیں دیتا۔ بالآخر آسماں کے اس روشن ستارے کو اپنی منزل زمین پر دکھائی دیتی ہے۔ وہ اشک بن کر اس بیوی کی آنکھ سے ٹپک جانا چاہتا ہے جس کا شوہر حب الوطنی سے سرشار‘ زرہ میں مستور‘ میدان جنگ کی جانب رواں ہے۔ شوہر کی رضا نے اس بیوی کو تاب شکیبائی دی ہے اور آنکھوں کو حیا نے طاقت گویائی دی ہے۔ صبح کے اس ستارے کو اپنی منزل قریب دکھائی دیتی ہے کہ جب شوہر کو جنگ کے لئے رخصت کرتے ہوئے لاکھ ضبط کے باوجود اس بیوی کے دیدۂ پرنم سے وہ اشک بن کر ٹپک جائے اور خاک میں مل کر ابدی حیات پا جائے اور عشق کاسوز زمانے کو دکھا دے۔


کسی پیشانی کے افشاں کے ستاروں میں رہوں
کسی مظلوم کی آہوں کے شراروں میں رہوں
اشک بن کر سرمژگاں سے اٹک جاؤں میں
کیوں نہ اس بیوی کی آنکھوں سے ٹپک جاؤں میں
جس کا شوہر ہو رواں‘ ہو کے زرہ میں مستور
سوائے میدانِ وغا، حب وطن سے مجبور
یاس و امید کا نظارہ جو دکھلاتی ہو
جس کی خاموشی سے تقریر بھی شرماتی ہو
جس کو شوہر کی رضا تاب شکیبائی دے
اور نگاہوں کو حیا طاقت گویائی دے
زرد، رخصت کی گھڑی، عارضِ گلگوں ہو جائے
کشش حسن غم ہجر سے افزوں ہو جائے
لاکھ وہ ضبط کرے پر میں ٹپک ہی جاؤں
ساغر دیدہ پُرنم سے چھلک ہی جاؤں
خاک میں مل کے حیاتِ ابدی پا جاؤں
عشق کا سوز زمانے کو دکھاتا جاؤں


شاعروں نے عورت کو ماں اور بیٹی کی حیثیت سے تو بہت سراہا ہو گا لیکن کلام اقبال میں ایک بیوی کے سوز عشق کا بیان بے مثال ہے۔ آج پاکستان کے حالات میں افواج پاکستان کا کردار ہمیشہ سے زیادہ متحرک ہے۔ حب الوطنی سے سرشار پاکستان کا ہر وہ محافظ جو اپنی جان ہتھیلی پر سجائے رہتا ہے اور ہر نیا دن اس کے لئے عشق کے اور امتحان لاتا ہے، بے شک اس کا مقام ستاروں کی گزرگاہ سے بہت آگے ہے۔ ان فوجیوں کے بہتے خون کی سرخی ان کے اپنوں کے رخسار تو زرد کر دیتی ہے مگر صبح وطن کا ستارہ ہمیشہ روشن رہتا ہے۔
دفاع وطن تمام اہل وطن کا فریضہ ہے۔ کسی کے لئے یہ فرض منصبی ہیں تو کسی کے لئے نسبی۔ عورت بھی وطن کی بیٹی، محبان وطن کی ماں کی حیثیت سے یا محافظین وطن کی شریک حیات ہونے کی حیثیت میں دفاع وطن کی جنگ کو اپنی زندگی کی جنگ سمجھ کر بہت حوصلے اور ہمت سے لڑتی ہے۔ پاکستان کے ہر شہری کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی مصروف زندگی میں سے کبھی تھوڑا سا وقت نکال کر یہ سوچ سکے کہ جن والدین نے اپنی جانباز بیٹیاں وطن پر وار دیں‘ جن ماؤں نے اپنے مستقبل کے سہارے درندوں کے ہاتھوں بکھرتے دیکھے ہوں، جن بیویوں نے کمال ضبط سے حب وطن سے سرشار اپنی زندگی کے ساتھی جنگ پر رواں کئے ہوں ان کا کیا مقام ہے؟ اور یہ جان سکے کہ عورت فقط وجہ جنگ اور متاثرین جنگ ہی نہیں بلکہ مقابل و مدافع جنگ بھی ہے

حمیرا شہباز ڈھاکہ یونیورسٹی بنگلہ دیش سے فارسی میں ایم فل ہیں۔ان دنوں وہ نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز کے شعبہ فارسی میں لیکچرار کے فرائض انجام دے رہی ہیں۔

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

janaurataurallama1.jpg
 
Read 1076 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Follow Us On Twitter